Mera Ishq Teri Anayat Novel by Faiza Ahmed – Episode 3

0
میرا عشق تیری عنایت از فائزہ احمد – قسط نمبر 3

–**–**–

“مل گیی فرصت تمہیں اپنی بوڑھی ماں سے ملنے کی دادی نے اپنے چھو ٹے بیٹے احد سے نہ ملنے کا شکوہ ہمیشہ کی طرح کیا ۔۔۔۔۔۔۔
اماں آپ کو کیسے بھول سکتے ہیں ہم آپ ہیں تو ہم ہیں احد نے انکے ہاتھ پر عقیدت سے بوسہ دیتے ہوے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“رہنے دو میاں سب منہ دیکھے کی باتیں ہیں دادی نے منہ بسورتے ہوے کہا ۔۔۔۔۔۔۔
” اماں آج کل بہت برڈن ہے ِان پر کام کا ہم تو خود ِان سے بات کرنے کے لیے ترس جاتے ہیں منیبہ (احد کی بیوی) نے کہا۔ ۔۔۔۔
“ارے بی بی تم تو چپ ہی رہو وہ تو مصروف ہوتا ہے، کیا تم بھی مصروف رہتی ہو جو کبھی اپنی بوڑھی ساس کی خبر نہیں لی ، دادی نے منیبہ کو بھی باتیں سنا دی تھیں۔۔۔۔۔۔۔
“ارے نہیں اماں آجکل بوتیک کا کام زیادہ ہوتا ہے تو مجھے فرصت نہیں مل رہی اس لیے میں آپ کو اور گھر کو ٹائم نہیں دے پاتیں مجھے معاف کیجیے گا آئندہ آپ کو شکایت کا موقع نہیں دوں گی !منیبہ نے ان کے ہاتھ تھامتے ہوئے محبت سے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اچھا اماں اب تو غصہ تھوک دیجئے احد نے اماں کو مناتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔
اتنے میں ناہید چائے اور دیگر لوازمات لے کر آگئی اور ان کو پیش کرنے لگی ۔۔۔۔۔۔۔۔
بھابی یہ ہرمان کہاں ہے دو دن سے ہمارے گھر نہیں آیا منیبہ نے ناہید سے چائے کا کپ پکڑتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔
” ہاں بھابی وہ مجھے بھی نہیں ملا ایک دو دن سے کہاں مصروف ہوتا ہے وہ سارا دن احد نے بھی پوچھا ۔۔۔۔۔۔
ارے بیٹا کہاں مصروف ہونا ہے اسنے صبح کالج چلا جاتا ہے آکر ذرا آرام کرتا ہے تو پھراس کے دوست آ جاتے ہیں اور پڑھنے بیٹھ جاتے ہیں ، بچارے بچے کو تو بالکل بھی فرصت نہیں ملتی کھانے پینے کی اتنا سا منہ نکل آیا ناہید کے بولنے سے پہلے ہی دادی نے ان کو ہرمان کے بارے میں تفصیل سے بتایا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دادی کی بات پر وہ تینوں مسکراے ایسے کیسے ہوسکتا تھا کہ دادی ہرمان کے بارے میں کسی کو کچھ غلط بولنے دے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“اچھا بھابی میں کہہ رہی تھی کہ رات کا کھانا آپ ہماری طرف کھائیں اسی بہانے تھوڑی سی گیدرنگ بھی ہو جائے گی ، منیبہ نے ناہید اور اماں سے پوچھتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہاں ہاں کیوں نہیں آجائیں گے ہم سب دادی نے احد اور منیبہ کی طرف دیکھتے ہوئے کہا ،۔۔۔۔۔۔،۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
🌷🌷🌷🌷🌷🌷🌷🌷
“تو کلاس آپ ریڈی ہیں اپنا اسائنمنٹ جمع کروانے کے لیے پنار نے کلاس کی طرف دیکھتے ہوئے پوچھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“جی مس ہم سب ریڈی ہیں اپنا اسائنمنٹ جمع کروانے کے لیے ساری کلاس نے ایک ساتھ کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“تو پھر ٹھیک ہے سب باری باری آکر اپنا اسائنمنٹ جمع کرواتے جائیں پنار نے چیئر پر بیٹھتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔ ۔ ۔
“تم تینوں نے اپنا اسائنمنٹ جمع کروانا ہے یا نہیں پنار نے ان تینوں سے پوچھا جو اپنی جگہ پر جمع کر بیٹھے ہوئے تھے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“مس پنارمیری طبیعت کل بہت خراب تھی تو اسائنمنٹ نہیں بنا پایا ہرمان نے اپنے چہرے پر نقاہت والے تاثرات سجاتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
اچھا تو اتنی جلدی تم ٹھیک بھی ہوگئے پنار نے ٹھوڑی پر ہاتھ رکھتے ہوئے کہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہاں کبھی کبھی میں بیمار ہو جاتا ہوں پر جلدی ٹھیک ہو جاتا ہوں ہرمان نے مصومیت سے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اچھا تو وہ کونسی ایسی بیماری ہے جو اتنی جلدی ٹھیک بھی ہوجاتی ہے
پنار نے غصے پر کنٹرول کرتے ہوئے اس سے پوچھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ مس پنار میرے سر میں بہت زیادہ درد تھا اسی لیے نہیں بنا پایا اسائنمنٹ ہرمان نے پنار کی طرف دیکھتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اوکے تمہارے سر میں درد تھا اور تم دونوں کو کیا پرابلم تھی پنار نے عمر اور حارث کی طرف رخ کرتے ہوئے پوچھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“وہ مس ہماری دادی کی طبیعت ٹھیک نہیں تھی اسی لیے عمر نے نیچے کی طرف دیکھتے ہوئے غمگین لہجے میں کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ویسے اچھے بہانے بنا لیتے ہو تم تینوں
لیکن افسوس کہ مجھ پر انکا کوئی اثر نہیں ہوگا ۔۔۔۔۔۔۔
“تم تینوں ابھی کے ابھی میری کلاس سے باہر چلے جاؤ پنار نے باہر کی طرف اشارہ کرتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
لیکن مس مینار میرا مطلب ہے مس پنار ہم تینوں کی کوئی نہ کوئی مجبوری تھی، اس لیے تو ہم اپنا اسائنمنٹ نہیں بنا پاے، ہرمان نےدائم کی طرف دیکھتے ہوئے کہا جس کے بہت دانت نکل رہے تھے اُس کا دل کر رہا تھا کہ اس دائم کے بچے کے سارے کہ سارے دانت توڑ دے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“تم تینوں میری کلاس سے باہر جا رہے ہو یا نہیں پنار نے غصے کو کنٹرول کرتے ہوئے پوچھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
چل کیوں بےعزتی کروا رہا ہے ہماری اور اپنی بھی حارث نے اس کا بازو کھینچتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جو اپنی جگہ سے ٹس سے مس نہیں ہو رہا تھا اور پنار کی طرف دیکھے جا رہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔
ہرمان تم نے سنا نہیں میں نے کیا کہا ہے کلاس سے باہر جاؤ اور اپنی نظریں نیچی رکھو پنار نے اسے غصے سے گھورا جو اس کی طرف دیکھے جا رہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔
اچھا اچھا ، آپ اتنا غصہ نہ کریں جا رہا ہوں میں باہر ہرمان نے ایسے کہا جیسے پنار پر بہت بڑا احسان کررہا ہو ، اور دائم کو ہاتھ سے اشعارہ کرتے ہوئے باہر چلا گیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اس کے جانے کے بعد پنار نے ٹھنڈی سانس بھری اور چیئر پر بیٹھ گئی ۔۔۔۔اتنا بدتمیز سٹوڈنٹ میں نے اپنی زندگی میں نہیں دیکھا وہ بڑبڑا کر رہ گئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
🌷🌷🌷🌷🌷🌷🌷🌷
“ہاے دادی کیسی ہیں آپ یہ ہر مان ابھی تک کالج سے نہیں آیا کیا ؟
شیزہ نے دادی کے کمرے میں اینٹر ہوتے ہوئے پوچھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دادی نے شیزہ کو گھورا نہ پہلے تو تُو مجھے یہ بتا کہ تو نے پہنا کیا ہوا ہے ہاں !جو تنگ جینز پر ٹاپ پہنے ہوے تھی۔ ۔۔۔۔۔
اف دادی یہ آج کل کا فیشن ہے آپ کو تو فیشن کے بارے میں کچھ پتہ ہی نہیں، شیزہ نے منہ بناتے ہوئے دادی سے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“ارے اللہ معاف کرے ہمیں تو اس فیشن سے جس میں پہننے اوڑنے کی سمجھ ہی باقی نہ رہے دادی نے جواباً شیزہ کو گھورتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
” دادی میں آپ سے ہرمان کے بارے میں پوچھ رہی تھی نہ کہ اپنے فیشن کے بارے میں شیزا نے یہاں سے چلے جانا ہی بہتر سمجھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اف پتا نہیں کیا ہو گیا آج کل کی نسل کو ، فیشن کے نام پر عجیب سے حلیے میں گھومتیں رہتیں ہیں دادی پیچھے سے بڑبرا کر رہ گئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
🌷🌷🌷🌷🌷🌷🌷
“یار آج تو کلاس میں بہت بےعزتی ہوگی ہے اوروہ دائم دیکھا تھا کیسے ہنس رہا تھا جب ہماری واٹ لگ رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔
عمر نے ہتھیلی پر مکا مارتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“اس دائم کے بہت پر نکل آئے ہیں اس کا کچھ نہ کچھ تو کرنا ہی پڑے گا ہرمان نے کلاس روم کی طرف دیکھتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔ . . . .
کیوں نہ پھر آج اس سے نبٹ ہی لیا جائے کیا کہتے ہو تم دونوں عمر نے دونوں سے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہوں چلو پھر پارکنگ میں چلتے ہیں وہی اس کا انتظار کرتے ہیں ہرمان نے پارکنگ کی طرف جاتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔
🌷🌷🌷🌷🌷🌷🌷🌷
” دائم اور اس کے دوست جب پارکنگ میں آے تو وہاں پہلے سے ہی ہرمان لوگ ان کا انتظار کر رہے تھے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“اؤ اؤ بڑی دیر کردی مہرباں آتے آتے ۔۔۔۔ہرمان کیز کو انگلی میں گھماتے ہوئے دائم لوگوں کے پاس آیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
” ہمارا انتظار کیوں کر رہے تھے تم لوگ، دائم نے ان کے پاس آتے ہوئے حیرت سے پوچھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کیونکہ آج کل تم لوگوں کے کچھ زیادہ ہی دانت نکل رہے ہیں سوچ رہا ہوں کچھ ایسا کرو جس سے تم لوگوں کے دانت ہمیشہ اندر رہیں ہرمان نے دائم کے منہ پر زور سے مکہ مارا ۔۔۔۔۔۔۔۔
“دائم منہ پر ہاتھ رکھتے ہوے نیچے جھکا تھا ۔جوابًا دونوں گروپس میں کافی ہاتھا پائی ہوئی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“کافی لوگ وہاں پر جمع ہوگئے تھے اور ان کو آپس میں سے چھڑانے کی کوشش کرنے لگے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“تمہیں تو میں دیکھ لوں گا دائم نے ہونٹوں سے خون صاف کرتے ہوئے ہرمان کو وارننگ دی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ؑبلکل دیکھ لینا یہی پر ہوں میں جب چاہے آ جانا جوابًا ہرمان نے بھی دائم کو کڑارا سا جواب دیا اور شرٹ کو ٹھیک کرتے ہوئے اپنی بائیک پر بیٹھ گیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
🌷🌷🌷🌷🌷🌷🌷
“ویسے آپا میں سوچ رہی تھی کہ کیوں نہ ہم تینوں شاپنگ پر چلیں سنا ہے گرمیوں کی کلیکشن پر سیل لگی ہوئی ہے ، ابھی میری ایک فرینڈ نے فون پر بتایا ہے، ژالے نے پنار اور ہائمہ سے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
” میں بھی کافی دنوں سے سوچ رہی تھی کہ کچھ گرمیوں کے کپڑے لے لوں ہائمہ نے بھی بات میں حصہ لیا ۔۔۔۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ٹھیک ہے پھرکل چلتے ہیں صبح اتوار بھی ہے اور مجھے کالج سے چھٹی ہے،پنار نے کافی پیتے ہوے کہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہوں! ویسے تم تینوں کو کونسا شوپنگ سینس ہے مجھے ساتھ لے کر جانا، میں جانتی ہوں آج کل کیا فیشن میں ان ہے۔ رائمہ نے بالوں کو ایک ادا سے جھٹکا دیتے ہوے کہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ تینوں ایک دوسرے کو دیکھ کر رہ گئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ٹھیک ہے تم بھی چلنا ہمارے ساتھ اچھا ہے چاروں مل کر خوب انجوے کریں گیئی پنار نے رائمہ کو دیکھتے ہوے مسکرا کر کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“ارے لڑکیو، تم لوگوں کو شاپنگ کے علاوہ کچھ اور آتا بھی کیا ہے ہاں ، رومان نے انکو چھڑتے ہوے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔……….
“ویسے رومان بھائی ہم لڑکیوں کو اگر شاپنگ کے علاوہ کچھ نہیں آتا تو آپ لڑکے ہم لڑکیوں سے اتنا جیلسی فیل کیوں ہوتے ہیں ہاں ،ہائمہ نے رومان کو ٹکا سا جواب دیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اف تم لڑکیوں کو نہ اگر کوئی شاپنگ پر لیکچر دے دیں تو تم لڑکیوں کے منہ سوج جاتے ہیں ویسے تم جتنا مرضی فیشن کر لو کونسا کسی کو نظر آ ؤگی ٹڈی سی تو ہو ،رومان نے ہائمہ کے چھوٹے سے قد پر چوٹ کرتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
” تم لوگ آپس میں پھر سے شروع ہو گئے!اور رومان چھوٹی بہنوں سے ایسے بات کرتے ہیں ہاں ،عافیہ نے رومان کے کان پکڑتے ہوئے کہا ،۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اوفففف امی، میر ے کان تو چھوڑد یں ، اس ٹڈی نے پہلے لڑائی شروع کی تھی ۔رومان نے ہائمہ کی طرف انگلی سے اشارہ کرتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“وہ تینوں ہنس رہی تھی رومان کی حالت دیکھ کر ۔۔۔۔۔۔امی اس کی سزا یہی ہے کہ یہ ہمیں کل شاپنگ پر لےکر جائے ،پنار نے ہنستے ہوئے امی سے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کیوں میں کیوں جاؤں ایک ہی دن ہوتا ہے چھوٹی کا ، میں وه تم لوگوں کے ساتھ برباد کر دوں ،رومان نے منہ بناتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بیٹا لے جانا بہنیں ہیں تمہاری، تمہارے ساتھ نہیں جائیں گے تو کس کے ساتھ جائینگی ،تھوڑا سا وقت نکالو اور انہیں چھوڑ آنا اور آتے وقت ساتھ لے آنا،عافیہ نے رومان کو سمجھاتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ٹھیک ہے آپ کہہ رہی ہیں تو میں انہیں ساتھ لے جاؤنگا لیکن انہیں کہیں کہ زیادہ ٹائم نہیں لگائیں گئیی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“رومان نے عافیہ کے کندھے پر سر رکھتے ہوئے لاڈ سے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
🌷🌷🌷🌷🌷🌷🌷
آج احد جڈون پیلس میں بہت رونق تھی ،سب بڑے اندر ڈرائنگ روم میں بیٹھے باتیں کر رہے تھے، اور بچّے باہر گراؤنڈ میں کرکٹ کھیلنے میں مصروف تھے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہرمان بھائی آپ ہمیشہ چیٹنگ کرتے ہیں اس بار آپ کی چیٹنگ نہیں چل گیئی ۔۔۔۔۔۔۔عتبہ نے بال پھینکتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔
ارے چل موٹے میں نے کب چیٹنگ کی تم خود چیٹنگ کرتے ہو موٹے کہیں کہ ہرمان نے بیٹنگ کرتے ہوئے عتبہ کو چڑایا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بھائی عتبہ بالکل ٹھیک کہ رہا ہے، آپ ہمیشہ چیٹنگ کر کے جیت جاتے ہیں ،عضوبہ نے بال کے پیچھے دوڑتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہاں اب تو تم لوگ چیٹنگ ہی کہو جب کھیلنا نہیں آتا تو دوسرے بندے پر چیٹنگ کا الزام لگا دیتے ہو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
شیزہ نے ہرمان کی سائڈ لیتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
انہوں نے دو ٹیمیں بنائی ہوئی تھی عتبہ اور عضوبہ، ہرمان اور شیزہ ،
“لیکن جیت ہمیشہ ہرمان کی ہوتی تھی، کیونکہ وہ چیٹنگ کر کے جیت جاتا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہم دونوں نے نہیں کھیلنا آپ کے ساتھ، آپ چیٹنگ کر رہے ہیں، آپ ایک بار آؤٹ ہوگیے ہیں، پھر بھی نہیں مانے، ہم نے نہیں کھیلنا آپ کے ساتھ۔ ۔۔۔۔۔۔
عتبہ نے منہ بسورتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اچھا اچھا لو تم کھیلو میرے پیارے چھوٹے سے موٹے، ہرمان نے عتبہ کے بال بکیھرتے ہوئے اور گالوں کو کھینچتے ہوئے کہا ۔۔۔،۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“ہرمان بھائی آپ کو کیا مسئلہ ہے میرے بالوں اور گالوں سے ہمیشہ کھینچتے رہتے ہو عتبہ نے پیر پٹہتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہرمان ابھی کچھ کہنے ہی والا تھا کہ، منیبہ نے سب کو کھانا لگنے کی اطلاح دی۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آجاؤ بچو، کھا نا لگ گیا ہے !جلدی سے سب ڈائننگ ٹیبل پر آجاو۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کھانے کی طلاع پر سب سے پہلے عتبہ نے پرجوش انداز میں نعرہ لگایا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ارے موٹے، تم کہاں جارہے ہو ہاں پہلے ہی کھا کھا کر پہلوان بنتے جا رہے ہو اب اور کھا کر پہاڑ بنا ہے کیا ” ۔۔
ہرمان نے اس کے گال کھینچتے ہوئے کہا پھر اندر کی طرف دوڑ لگا دی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پیچھے سے عتبہ بیچارا پیچ و تاب کھا کر رہ گیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

–**–**–
جاری ہے
——
آپکو یہ ناول کیسا لگا؟
کمنٹس میں اپنی رائے سے ضرور آگاہ کریں۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Subscribe For Latest Novels

Signup for Novels and get notified when we publish new Novel for free!




%d bloggers like this: