Mera Ishq Teri Anayat Novel by Faiza Ahmed – Episode 30

0
میرا عشق تیری عنایت از فائزہ احمد – قسط نمبر 30

–**–**–

ردا کے بولنے پر پنار جھٹکے سے اس سے دور ہوئی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔ردا ابھی بھی دروازے میں ہی کھڑی تھی ۔۔۔۔۔۔۔مس ردا آپ سندر ہی آ جائیں ۔رومینس کا تو ویسے بھی ستاناس مار دیا ہے ۔۔۔۔کباب میں تو ہڈی آپ ویسے بھی بن ہی چکی ہیں سو کم ان۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے ردا کو وہی کھڑے دیکھ کر کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔جس پر پنار نے تو اسے گھورا ۔۔۔۔۔۔لیکن ردا ہنس پڑی۔۔۔۔۔۔۔۔۔اف میں تو یہاں یہ تصور کر کے آئی تھی کہ ہرمان صاحب بیڈ پڑے کراہ رہے ہوں گئے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور پنار میڈم میڈیسن وغیرہ کے چکر میں ہوں گئی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔لیکن یہاں تو الٹ ہے ۔۔۔۔۔۔ردا نے سریس ہوتے ہوئے ہرمان سے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہاہاہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔وہ اور لوگ ہوتے ہوں گے مس ردا ۔۔۔۔۔۔یہ میں ہوں ہرمان اسد جڈون ۔۔۔۔۔۔۔۔۔جس کے اپنے طریقے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ردا تمہیں کس نے بتایا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے بات بدلتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔ میں نے انٹی کو فون کیا تھا شادی پر انوائٹ کرنے کے لیے۔۔۔۔۔۔۔تبھی انہوں ممجھے ہرمان کو گولی لگنے اور اس کی سریس کنڈیشن کے بارے میں بتایا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔لیکن شکر ہے ہرمان بہتر لگ رہا ہے ۔۔۔۔۔۔ ورنہ گولی کا سن کر میں تو ڈر ہی گئی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ردا کی عادت تھی ہر بات کو تفصیل سے بتانا کی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اچھا بیٹھو تو ۔۔۔۔پنار نے اسے چیئر پر بیٹھنے کا اشارا کرتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔ردا سر ہلا کر بیٹھی ۔۔۔۔۔۔”اب کیسی طبیعت ہے تمہاری ۔۔۔۔۔۔۔ردا کو اب اسکی طبیعت پوچھنے کا خیال آیا تھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔بس آپ کی دوست نظروں کے سامنے رہے تو بہتر ۔۔۔۔۔۔ورنہ طبیعت میری کا کوئی بھروسہ نہیں۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے پنار کو دیکھتے ہوئے ردا کو جواب دیا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اچھا تو پھر میں چاہوں گئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔کہ آپ کی بیوی آپکی نظروں کے سامنے ہی رہے ۔۔۔۔۔۔۔ ردا نے پنار کو دیکھتے شرارتی انداز میں کہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔تم دونوں باز آجاو گے یا میں باہر چلی جاوں ۔۔۔۔۔۔۔پنار نے دونوں کو گھورتے ہوئے کہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔ارے باہر مت جانا وائف ۔۔۔۔۔۔میری طبیت خراب ہو جائے گئی ۔۔۔۔۔ہرمان نے مسکراتے ہوئے اسے زچ کیا۔ ۔۔۔۔۔۔ردا بھی کھلکھلا کر ہنس دی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار جواباً پیر پٹخ کر سامنے رکھے صوفے پر بیٹھ گئی۔ ۔۔۔۔۔ویسے یار مجھے نہیں لگ رہا کہ میں کسی کی عیادت کرنے آئی ہوں۔ ۔۔۔۔ردا نے پہلا ایسا مریض دیکھا تھا جو۔۔۔ہسپٹل بیڈ پر بھی اپنی شرارتوں سے باز نہیں آرہا تھا ۔۔۔۔۔۔ہرمان نے مسکراتے ہوئے کندھے اچکائے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁
ویسے یار بہت لکی ہو تم ۔۔۔۔جو تمہیں ہرمان جیسا ہسبنڈ ملا یار اس کی قدر کرو اسکی محبت کا جواب محبت سے دو ہرمان ہی تمہارا نصیب تھا ۔۔۔۔۔۔رمیز نہیں۔۔۔۔۔پنار ردا کو باہر چھوڑنے آئی تھی جب ردا نے کہا۔۔۔۔۔۔کیا مطلب ہے تمہارا ہمم ۔۔۔۔۔۔میرا ۔۔۔۔۔۔۔جو بھی مطلب ہے آئی تھنک ہرمان کی مس ہنار سمجھ چکی ہو گئی۔۔۔۔۔۔ اچھا چلتی ہوں میں ۔۔۔۔ڈے آور ڈیوٹی ہے میری ۔۔۔۔۔ردا نے کلائی پر بندھی گھڑی پر ٹائم دیکھتے ہوئےکہا۔۔۔۔۔۔۔۔اچھا خدا حافظ۔۔۔۔۔۔ردا نے اس کے گلے لگ کر کہا۔۔۔۔۔۔اور پھر ہاتھ ہلاتی چلی گئی۔۔۔۔۔۔۔”پنار کافی دیر وہی کھڑی رہی ۔۔۔۔پھر ہمت کر کے کمرے میں آئی۔۔۔۔۔جہاں ڈاکٹر اس کی پٹی چینج کر رہے تھے۔۔۔۔۔۔۔ہرمان تکیے سے کمر ٹکائے بیٹھا ہوا تھا۔۔۔۔۔۔۔اور ڈاکٹر اس کی ڈریسنگ وغیرہ چینج کر رہے تھے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ڈاکٹر شرٹ آپ رہنے دے ۔۔۔۔۔۔میں اپنی بیوی سے پہنوں گا۔۔۔۔۔۔پنار نے اسے گھورا ۔۔۔۔۔ڈاکٹر نے اس کی بات پر مسکرا کر سر ہلایا اور باہر چلا گیا۔۔۔۔۔۔۔اب صرف نرس اور پنار ہی تھی ۔۔۔۔۔۔پنار نے نرس کو دیکھا۔۔۔۔یہ شاید کوئی اور نرس تھی۔۔۔۔۔۔جو اسکے شوہر کو گھورے جا رہی تھی۔۔۔۔۔ہنار نے نرس کو گھورا ۔۔۔۔۔اور پھر ہرمان کو دیکھا جو بنا شرٹ اور ورزشی جسم کے ساتھ بہت ہی خوبصورت لگ رہا تھا۔۔۔۔۔۔۔اس میں نرس بے چاری کا بھی کوئی قصور نہیں تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔اس کا شوہر تھا ہی انتہائی خوبصورت ۔۔۔۔۔۔۔۔۔نرس آپ جاو ۔۔۔۔۔میں یہی ہوں ۔۔۔۔۔نرس نے سر ہلایا پھر فائل پکڑے باہر چلی گئی۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے اب فرصت سے اپنی بیوی کو دیکھا۔۔۔۔۔جو شرٹ پکڑے اسی کی طرف آرہی تھی۔۔۔۔۔۔۔ہرمان اس کے لال ہوتے چہرے کو دیکھ کر مسکرایا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔مجھے نہیں پتا تھا کہ گولی لگنے سے آ پ میری اتنی خدمت کریں گئی۔۔۔۔۔۔۔۔۔اگر پتا ہوتا تو ایک اور گولی کھا لیتا۔۔۔۔۔۔ہرمان نے اس کا ہاتھ پکڑ کر اپنے پاس بٹھاتے ہوئے کہا۔۔۔۔بکواس نا کرو ۔۔۔۔پنار نے اسے گھورا۔۔۔۔۔اور شرٹ اسکی طرف بڑھائی۔۔۔۔۔۔ہرمان اسکے پاس کھسکا ۔۔۔۔۔۔۔یار مجھے ایسا کیوں لگ رہا یے کہ آپ کو عشق ہو گیا مجھ سے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار ان لڑکیوں میں سے نہیں تھی جو شرہر کو صرف شرما کر ہی دیکھتی رہتی ہیں بلکہ وہ گھورنے والیوں میں سے تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔تم چپ نہیں کرو گے نا ۔۔۔۔۔ہاں ۔۔پنار نے زبردستی اس کا بازو پکڑ کر آہستہ سے شرٹ کی بازو میں ڈالا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔نہیں ہرمان نے اپنا چہرہ اس کے چہرے کے قریب کیا ہی تھا جب عمر اور حارث بنا نوک کے کمرے میں آئے تھے۔ ۔۔۔۔۔۔پنار ایک دم پیچھے ہوئی پھر جلدی سے کھڑی ہو گئی۔ ۔۔۔۔۔ہرمان نے دانت پیستے ہوئے ان دونوں کو گھورا ۔۔۔جو کباب میں ہڈی بنے چلے آئے تھے۔۔۔۔ان کے تو دانت ہی اندر نہیں جارہے تھے۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔بھابھی ۔۔۔۔۔۔اسد انکل نے آپ کو لینے کے لیے ڈرائیور کو بھیجا ہے ۔۔۔۔۔وہ خود بھی تھوڑی دیر میں پہنچ رہے ہیں ۔۔۔۔۔عمر نے سر جھکائے اخترام سے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار کیوں جارہی ہیں آپ۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے اسے بیگ پکڑتے دیکھ کر کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے گھورا ۔۔۔۔۔۔پنار بیٹا ڈرائیور باہر ویٹ کر رہا ہے ۔۔۔۔۔گھر جائیں اور آرام کریں ۔۔۔۔۔۔۔اسد نے کمرے میں آکر پنار کو مخاطب کیا۔۔۔۔۔۔جی انکل بس نکل ہی رہی تھی ۔۔۔۔۔ہنار نے ہرمان کی طرف دیکھ کر اپنی مسکراہٹ روکتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔ہنسی تو عمر اور حارث کی بھی نکل رہی تھی ۔۔۔۔کیوں کہ یرمان کی شکل ہی کچھ ایسی بنی ہوئی تھی۔۔۔۔۔۔۔اللہ حافظ۔۔۔۔۔۔پنار کہتے ہوئے باہر چلی گئی۔۔۔۔۔۔۔۔وہ خود بھی بہت تھک گئی تھی ۔۔۔۔۔ااور اب اس کا نیند سے برا حال تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔وہ گھر جاکر صرف سونا چاہتی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁
رائمہ مجھے تم سے ایک ضروری بات کرنی ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔مرینہ نے رائمہ کے کمرے میں آکر کہا ۔۔۔رائمہ سونے کی تیاری کر رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔جب مرینہ نے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔”کہیں امی ۔۔۔۔۔۔۔بیٹا وہ آسیہ لوگ ْآئے تھے ۔۔۔۔۔۔مرینہ اتنا کہہ کر چپ ہوئی۔۔۔۔۔۔۔۔تو ؟ رائمہ نے سوالیہ پوچھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔دراصل وہ تمہارے لیے رمیز کا رشتہ لے کر آئے تھے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔مرینہ نے ڈرتے ڈرتے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔جانتی تھی اپنی اکھڑ مزاج بیٹی کو کہ وہ کبھی نہیں مانے گئی۔۔۔۔۔۔ کیاااا۔۔۔۔۔۔رائمہ نے سیدھے ہوتے ہوئے خیرانی سے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔تو آپ لوگوں نے کیا کہا۔۔۔۔رائمہ نے خیرانی سے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔کہنا کیا تھا۔۔۔۔۔۔لوگ تو وہ اچھے ہیں ۔۔۔۔لیکن ہمیں پتا ہے تم نہیں مانوں گئی۔۔۔۔۔۔۔مرینہ نے تپے تپے انداز میں کہا۔۔۔۔۔۔۔امی اب میں اتنی بھی بری نہیں ہوں ۔۔۔۔آپ لوگوں کواگر اس رشتے سے کوئی اعتراض نہیں تو مجھے بھی نہیں ہو گا ۔۔۔۔۔۔۔۔رائمہ نے سعادت مند انداز لیے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔”کیا تم سچ کہہ رہی ہو ۔۔۔مرینہ نے خیرانی سے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔جی امی ۔۔۔۔رائمہ نے اپنی خوشی چھپاتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔دل خوش کر دیا میری بچی۔۔۔۔۔۔۔میں کل ہی بات کرتی ہوں تمہارے ابو سے۔۔۔مرینہ اس کے سپ پیار دیتی ہوئی چلی گئی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔مرینہ کے جانے کے بعد ۔۔۔۔رائمہ ایک دم بیڈ پر کھڑی ہوئی ۔۔۔۔۔اور پھر چھلانگیں لگانے لگی۔۔۔۔۔۔۔۔۔اللہ اللہ ۔۔۔۔۔ٹھینکس آپ نے میری سن لی ۔۔۔۔۔مجھے نہیں پتا تھا دعائیں ایسے بھی قبول ہوتی ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔رائمہ ایک دم بیڈ پر چھلانگ لگا کر بیٹھتے ہوئے خوشی سے پر لہجے میں کہا۔۔۔۔۔۔۔”
رائمہ ۔۔۔۔۔رمیز کو آج سے نہیں بلکہ پچھلے تین سال سے چاہتی آئی تھی ۔۔۔۔۔جب ایک دوبار وہ ان کے گھر آیا تھا۔۔۔۔۔۔ایک بار اس نے رائمہ کو سیڑیوں سے گرنے کو بچایا تھا تب سے ہی وہ اس کے دل میں بس گیا تھا۔۔۔۔۔۔وہ جب بھی آتا وہ اسے چوڑی چوڑی دیکھتی ۔۔۔۔۔۔لیکن ستم یہ ہوا کہ اس کا رشتہ آیا بھی تو کس کے لیے ۔۔۔پنار کے لیے۔۔۔۔۔۔۔۔۔جو اس سے شکل میں کئی درجے کم تھی ۔۔۔۔۔۔۔تب سے ہی وہ پنار سے خار کھانے لگی تھی۔۔۔۔۔کہ کاش وہ بڑی ہوتی تو یہ رشتہ اس کے لیے آتا پنار کے لیے نہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔”جب اس کے ملنے کی امید چھوڑ دی تھی تو۔۔۔۔۔۔کیسے وہ اسے مل گیا تھا۔۔۔۔۔۔اس یقین نہیں آرہا تھا”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁
پنار گھر آ کر کچھ دیر دادی کے پاس بیٹھی انہین ہرمان کی طبیعت کے بارے میں بتایا ۔۔۔۔اور پھر رومم میں آگئی چینج کیا اور بیڈ پر دھرام سے گری ۔۔۔۔افف آج تو میں بہت تھک گئی۔۔۔۔۔پنار نے جلتی آنکھیں بند کی ۔۔۔۔۔۔۔لیکن یہ کیا ۔۔۔۔۔۔۔پنار کیوں جارہی ہیں آپ ۔۔۔۔۔ہرمان کا التجایا انداز پنار کے کانوں میں گھونجا۔۔۔۔۔۔پنار نے پٹ سے آنکھیں کھولی اور ادھر ادھر دیکھنے لگی جیسے ہرمان کو تلاش کر رہی ہو ۔۔۔۔۔افف اس لڑکے نے تو مجھے بھی پاگل کر دیا ہے ۔۔۔۔۔۔پنار نے بے بسی سے کہا۔۔۔۔۔وہ پھر سے سونے کی کوشش کرنے لگی
لیکن ۔۔۔۔اب ہرمان کی ہنسی پورے کمرے میں گھونج رہی تھی۔۔۔۔۔۔تو کبھی ہرمان کے ہونٹوں کا لمس اسے اپنے ماتھے اور ناک پر محسوس ہونے لگتا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”کیا کروں میں ،یہ کیا ہو رہا ہے میرے ساتھ ۔۔۔۔۔۔۔پنار نے تکیہ نیچے پھینکتے ہوئے بے بسی سے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁
پنار کی آنکھ رات کو دیر سے لگنے پر صبح دیر سے ہی کھلی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اف اتنی دیر ہو گئی۔۔۔۔۔پنار نے جلدی سے کبڈ میں سے کپڑے نکالے ۔۔۔۔اور شاور لینے چلی گئی۔۔۔۔۔۔۔پندرہ منٹ میں وہ نیچے تھی۔۔۔۔۔۔۔السلام عليكم ،پنار نے ڈائنگ ہال میں آکر ناہید سے کہا۔۔۔۔۔۔اجاو بیٹا۔۔۔۔۔ناہید نے اسلام کا جواب دے کر کہا۔۔۔۔۔اس واقعہ کے بعد سے ناہید کا رویہ پنار سے اچھا ہو گیا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔آج جاو گئی ہسپتال ۔۔۔۔۔۔ناہید نے ہسپتال لیجانے کے لیے ٹفن تیار کرتے ہوئے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔جی جاوں گئی ۔۔۔۔۔اچھا ٹھیک ہے پھر تم لیجانا ٹفن۔۔۔۔۔۔گھر پر تو جس جس کو پتا چل رہا ہے وہ ہرمان کے بارے میں پوچھنے آرہے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔کسی کا نا کسی گھر ہر بھی ہونا ضروری ہے ۔۔۔۔۔۔۔جی ٹھیک ہے ۔۔۔ٹھوری دیر تک نکلتی ہوں. ۔۔۔۔۔پنار نے چائے کے سپ لیتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔ہوں یہ ٹفن میں نے ریڈی کر دیا ہے لے جانا ۔۔۔۔۔۔ تین بجے تک میں بھی آجاوں گئی۔۔۔۔۔۔۔۔۔ناہید کہہ کر اپنے کمرے کی طرف چلی گئی ۔۔۔۔۔۔۔پیچھے پنار سامنے رکھے چائے کے کپ کو گھورے جارہی تھی۔۔۔۔۔اس نے انگلی سے سر کو دبایا تھا۔۔۔۔۔۔نیند نا پوری ہونے کی وجہ سے اس کا سر درد کر رہا تھا۔۔۔۔لیکن نیند تھی کہ آ ہی نہیں رہی تھی ۔۔۔بے چینی میں ہی گزر گئی تھی ساری رات
پنار اپنی اس کیفیت کو سمجھ نہیں پا رہی تھی کہ یہ اچانک سے کیا ہونے لگا تھا اس کے ساتھ جو پہلے کبھی نہیں ہوا تھا۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁
ویسے آپ جتنی خوبصورت ڈاکٹر میں نے آج تک نہیں دیکھی۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے ڈریسنگ کرتی ہوئی ڈاکٹر کو کہا۔۔۔۔۔۔۔جواباً ڈاکٹر نے مسکرا کر اپنی تعریف وصول کی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار جو اندر آرہی تھی ہرمان کی بات سن کر وہی رک گئی۔۔۔۔۔اس نے فیمیل ڈاکٹر کو گھور کر دیکھا۔۔۔۔۔۔ویسے آپس کی بات ہے میں نے بھی آپ سا پیشنٹ اپنی لائف میں نہیں دیکھا۔۔۔۔۔واوا کتنے ملتے جلتے خیالات ہیں ہمارے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے پنار کو دیکھ کر ڈاکٹر کو کہا۔۔۔۔۔. . ہاہاہا۔۔۔۔۔۔۔ویسے اگر میری رات کو ڈیوٹی نا ہوتی تو میں آپ جسے انسان سے ملنے سے محروم ہی رہ جاتی ۔۔۔۔۔۔۔۔تو کیا آپ کی آج بھی نائٹ ڈیوٹی ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے پنار کو تنگ کرنے کا پورا موڈ بنا لیا ہوا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہاں ابھی میری ڈیوٹی آف ہونے والی ہے ۔۔۔پھر رات کو ملاقات ہو گئی۔۔۔۔۔۔۔۔ڈاکٹر عائشہ آپ بہت اچھی ڈاکٹر ہیں آپ۔۔۔۔۔۔ہممم۔۔۔۔۔۔پنار نے دونوں کو اپنی طرف متوجہ کیا۔۔۔۔۔اور غصے سے ڈاکٹر کو گھورا۔۔۔۔۔۔جو کچھ ریادہ ہی خوش اخلاقی کا مظاہرہ کر رہی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔ٹھینکس ڈاکٹر میرے ہسبنڈ کو اتنا اچھا ٹریٹ کرنے کے لیے ۔۔۔۔۔۔پنار نے ڈاکٹر کے سامنے آ کر سینے پر ہاتھ باندھ کر کہا۔۔۔۔۔۔۔آپ ان کی وائف ہیں ۔۔۔۔۔۔۔ڈاکٹر نے اشتیاق سے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔جی ۔۔۔۔۔پنار نے کہہ کر ڈاکٹر کو اگنور کیا اور سامنے رکھے صوفے پر بیٹھی ۔۔۔اور پاس رکھا میگزین اٹھا کر اس کی ورق گردانی کرنے لگی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”ڈاکٹر نے مسکراتے ہوئے ۔۔۔۔ہرمان کو دیکھا ۔۔۔۔۔۔۔اور باہر چلی گئی۔۔۔۔۔۔۔۔اب ہرمان نے فرصت سے جیلس ہوتی اپنی بیوی کو یکھا ۔۔۔۔جو سرخ چہرے سے میگزین کو گھور رہی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔آپ آج میرے لیے سوپ نہیں بنا کر لائی۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے اسے متوجہ کرنے کی کوشش کی ۔۔۔۔جو کہ ناکام ثابت ہوئی۔۔۔۔۔۔وہ ہنوز میگزین پر جھکی ہوئی تھی۔۔۔۔۔۔۔یار قسم سے بہت بھوک لگی ہے۔۔۔۔۔پنار نے اب کی دفعہ صرف اسے گھورنے پر ہی اکتفا کیا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔لگتا ہے ڈاکٹر عائشہ کو ہی کہنا پڑے گا۔۔۔۔۔وہ مجھے اپنا نمبر دے گئی تھی۔۔۔۔۔ان سے ہی کہتا ہوں کینٹین سے کچھ لا دیں۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے اونچی آواز میں خود کلامی کی۔۔۔۔۔۔۔خبر دار ۔۔۔۔جو اس مرچ کی شکل والی کو فون کرنے کی کوشش کی ۔۔۔ورنہ مجھ سے برا کوئی نہیں ہو گا۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے میگ پٹخ کر کہا۔۔۔۔۔اور غصے سے چلتی اس کے پاس آئی۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے ہونٹ بھینچ کر اپنی مسکراہٹ روکی اور اپنی بیوی کا تفصیلی جائزہ لیا۔۔۔۔۔

پیرٹ شرٹ ۔۔۔۔اور بلیک کیپری میں بہت اچھی لگ رہی تھی وہ ۔۔۔۔بالوں کی حسب معمول پونی ٹیل بنائے ۔۔۔۔اس اپنے اندر گھستی محسوس ہوئی تھی۔۔۔۔۔۔کیوں فلرٹ کر رہے تھے اس سے۔۔۔۔۔پنار نے کمر پر ہاتھ رکھ کر آئی بروز اچکاتے ہوئے غصے سے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔نہیں کروں گا اگر آپ میرے پاس رہیں گئی تو۔۔۔۔۔۔ہرمان نے اس کی کلائی کھینچ کر اسے اپنے پاس بیٹھتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے حفگی سے اسے دیکھا۔۔۔۔۔اور پھر ہاتھ چھڑا کر ٹفن باکس کھولا ۔۔۔۔سوپ نکال کے اس کے سامنے رکھا۔۔۔۔۔۔۔۔اور اسے آنکھوں سے کھانے کا اشارہ کیا۔۔۔۔۔۔ہرمان نے دائیں کندھے کی طرف اشارہ کیا کہ۔۔۔۔میں خود نہیں کھا سکتا آپ کو ہی کھلانا ہو گا۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے گہرہ سانس لیتے ہوئے سوپ کا پیالہ پکڑا اور اس کی طرف چمچ بڑھایا۔۔

ہسپتال میں ہرمان کو چار دن بعد ڈسچارج کردیا گیا تھا۔۔۔۔۔۔۔اسد صاحب آپ کے بیٹے نے بہت جلدی ریکور کیا ہے۔۔۔۔۔ورنہ ایسے کیسسز میں ایک ہفتہ تو لگ ہی جاتا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پٹی وغیرہ آپ لوگ خود چینج کر سکتے ہیں ہاں تین چار دن بعد آپ ان کا چیک اپ لازمی کروائں گا۔۔۔۔۔ڈاکٹر نے ہرمان کا تفصیلی چیک اپ کرتے ہوئے اسد کو کہا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔آج ہرمان کے کمرے میں خوب رونق لگی ہوئی تھی۔۔۔۔۔۔۔پنار کی فیملی،عمر کی فیملی ،خلیل سر اور انکی وائف ۔۔۔۔۔۔۔پنار اور عذوبہ سب کو چائے پیش کر رہی تھیں ۔۔۔۔۔۔۔۔عمر کا تو بلیک سوٹ میں بیٹھی ژالے سے تو دھیان ہی نہیں ہٹ رہا تھا۔۔۔۔۔۔۔ایک گھونٹ چائے کا بھڑتا۔۔۔۔۔اور ایک نظر ہائمہ سے بات کرتی ژالے پر ڈالتا۔۔۔۔۔۔۔یہ چوری اور کسی نے تو نہیں ۔۔۔۔۔ہاں ہرمان نے بہت واضع محسوس کی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔”ہرمان نے ایک نظر پنار کو دیکھا جو اونچا جوڑا کیے سب کو کچھ نا کچھ سرو کر رہی تھی۔۔۔۔۔۔کافی دیر تک یہ محفل جمی رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”سب کے جانے کے بعد سب اپنے اپنے کمرے میں چلے گئے تھے۔۔۔۔۔۔۔”پنار کا دل دال چاول کھانے کا کر رہا تھا کتنے دن ہو گئے تھے اس اپنی فیورٹ ڈش کھائے ۔۔۔۔۔اس لیے وہ کچن میں کھڑی اپنے لیے دال چاول بنا رہی تھی۔۔۔۔۔۔۔ہرمان اندر بور ہو رہا تھا۔۔۔۔۔۔ابھی وہ اٹھنے کا سوچ ہی رہا تھا جب پنار ٹرے پکڑے روم میں آئی۔۔۔۔۔۔۔۔۔ٹرے ٹیبل پر رکھ کر اس نے ہرمان کو دودھ کا گلاس پکڑایا۔۔۔۔۔۔۔۔میں نہیں پیوں گا یہ دودھ ۔۔۔۔۔ہرمان نے حفگی سے پُر لہجے میں کہا۔۔۔۔۔۔۔۔کیوں نہیں پیو گے ڈاکٹر نے تمہیں لازمی دودھ دینے کا کہا ہے۔۔۔۔۔۔۔۔میں نہیں پیوں گا ۔۔۔۔۔میں وہ چاول کھاوں گا جو آپ نے سامنے رکھے ہوئے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے بچوں سے انداز میں کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کیا۔۔۔۔۔۔۔لیکن ڈاکٹر نے تمہیں اس طرح کی چیزیں کھانے سے منع کیا ہے۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے ایک نظر ٹرے کی جانب دیکھتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔بھار میں جائے ڈاکٹر میں نے کہہ دیا کہ چاول کھاوں گا تو بس میں چاول ہی کھاوں گا۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے اپنے محسوس ضدی انداز میں کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔”پنار نے غصے سے دودھ کا گلاس سائیڈ ٹیبل پر پٹخا ۔۔۔۔۔اور ٹرے اٹھا کر اس کے پاس پٹخی ۔۔۔۔۔۔خود ہی کھلا دیں ۔۔۔یونو میں دائیں ہاتھ کو زیادہ خرکت نہیں دے سکتا نا۔۔۔۔۔۔معصوم انداز میں کہا گیا۔۔۔۔۔۔۔۔اچھا موبائیل یوز کرتے وقت تو درد نہیں کرتا تمہارا بازو ۔۔۔۔۔۔کھانے ہیں تو کھاو ۔۔۔۔ورنہ مت کھاو ۔۔۔۔۔۔پنار نے ہنوز غصے میں کہا۔۔۔۔۔۔۔۔اس بار ہرمان نے بھی گھورا۔۔۔۔۔۔اور چاول کا چمچ اٹھا کر منہ میں ڈالا ۔۔۔۔۔پنار اسے گھورے جارہی تھی ۔۔۔۔جو آدھی پلیٹ خالی کر چکا تھا۔۔۔۔۔۔پنار سے اب رہا نا گیا تو پلیٹ اس کے آگے سے اٹھا ئی ۔۔۔چمچ بھی اس کے ہاتھ سے چھینا ۔۔۔اور صوفے پر دونوں پاوں رکھے بیٹھی۔۔۔گود میں پلیٹ رکھ کر کھانے لگی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ایک گھوری ہرمان پر بھی ڈال لیتی جو مسکراتی نظروں سے اسے ہی دیکھے جارہا تھا۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
اشعر ہم جانتے ہیں اس میں پنار کی کوئی غلطی نہیں تھی ۔۔۔۔۔اس وقت خالات ہی کچھ ایسے ہو گئے تھے کہ اسے یہ سٹیپ اٹھانا ہی پڑا۔۔۔۔۔۔۔۔ظفر نے بات کرنے سے پہلے تمہید باندھی۔۔۔۔۔ایک منتھ تک رمیز باہر چلا جائے گا ۔۔۔ہم چاہتے ہیں اسکی اب شادی کردیں ۔۔۔۔۔۔ہم آج ہاں میں ہی جواب لے کر جائیں گے۔۔۔۔۔ظفر نے چائے کا کپ رکھتے ہوئے اشعر اور یاسر سے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔ان تک رائمہ کی راضامندی پہنچ چکی تھی ۔۔۔اس لیے انہوں نے ہاں کرنے میں دیر نہیں کی ۔۔۔ایسے رشتے کونسا روز روز ملتے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ان کی ہاں کرتے ہی آسیہ نے مرینہ اور عافیہ کو مٹھائی کھلائی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور شادی کی ڈیٹ بیس تاریخ تک رکھی گئی ۔۔۔۔۔تاکہ ۔۔۔ہرمان بھی اچھے سے ریکور ہو جائے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور ساتھ ہی رومان اور ہائمہ کی بھی ایک دن بعد کی ڈیٹ رکھی گئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
🍁🍁🍁🍁🍁🍁
ژالے کب سے ہائمہ کو چھیڑ جا رہی تھی۔۔۔۔۔۔۔وہ کبھی تو اسے گھورتی اور کبھی شرما جاتی۔۔۔۔۔۔۔۔۔اللہ اللہ کتنا مزہ آئے گا ۔۔۔دو دو شادی مطلب ڈبل کپڑے ملیں گئے۔۔۔۔۔کیوں رائمہ آپا ۔۔۔۔۔آج رائمہ کا بھی موڈ کافی خوشگوار تھا۔۔۔۔۔۔۔اس لیے ژالے کے مزاق کو انجواے کر رہی تھی۔۔۔۔۔ہممم ٹھیک کہہ رہی ہو ۔۔۔رائمہ نے ریمور سے ناخن صاف کرتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔ہائمہ سن لو شادی کے بعد تم مجھے ایک روائتی نند کے روپ میں ہی پاو گئی۔۔۔۔جو اپنے سارے کام اپنی بھابھی سے کرواتی ہے اور اگر انکار کریے تو بھائی سے کہہ کر ایک آدھ تھپر بھی مروا دیتی ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔ژالے نے روب جھارتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔جس سن کر رائمہ تو ہنسی تھی۔۔۔۔۔۔۔لیکن ہائمہ نے اسے گھورا ۔۔۔۔ڈرتی نہیں ہوں میں تم سے اور تمہارے بھائی سے ایک آدھ تھپر میں بھی مار دیتی ہوں سمجھی تم ۔۔۔۔۔بڑی آئی مجھ پر روب جمانے والی ہمم۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہائمہ نے غصے سے سر جھٹک کر کہا۔۔۔۔۔۔۔یہ کس پر روب جمانے کی بات ہو رہی ہے زرا میں بھی تو سنوں۔۔۔۔۔۔رومان دروازے کے فریم میں کھڑے اس نے ۔۔۔۔ہائمہ سے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔جس کی رومان کی آواز سن کر ہی سٹی گھم ہو گئی تھی۔۔۔۔۔بھائی ۔۔۔۔۔ہائمہ کہہ رہی ہے کہ وہ۔۔۔۔۔کچ کچھ نہیں کہہ رہی میں جھوٹ بول رہی ہے یہ ژالے کی بچی۔۔۔۔۔۔۔ہائمہ نے بوکھلاتے ہوئے جو منہ میں بول گئی۔۔۔۔۔۔ہمم تھیک ہے۔۔۔۔۔۔۔۔ہائمہ گڑیا زرا اپنی نگرانی میں ملازمہ سے میرے کمرے کی صفائی تو کروا دینا میں زرا باہر کام سے جا رہا ہوں۔۔۔.۔۔۔۔۔رومان کہہ کر پلٹ گیا۔۔۔۔۔ ۔۔۔بنا ہائمہ کے ایکسپریشن دیکھے۔۔۔۔۔ اف انہیں ہمیشہ کام کے لیے میں ہی کیوں نظر آتی ہوں ۔۔۔۔۔۔ہائمہ نے منہ بناتے ہوئے کہا۔۔۔۔.۔۔۔۔۔۔”ظاہر ہے انہیں پتہ ہے ۔۔۔۔۔کہ ژالے بی بی خود تو ہل کر پانی پی لے یہ بڑی بات ہے کجا کے کمرے کی صاف کرے ۔۔۔۔اس لیے وہ مجھ سے تو کہنے سے رہی۔۔۔۔۔۔۔ژالے نے اس کے سوال پر جواب دیا۔۔۔۔۔۔۔ہائمہ نے کھینچ کر کشن اس کے منہ پر مارا۔۔۔۔۔۔۔۔جس نے کھلکھلا کر منہ ڈھانپا تھا
🍁🍁🍁🍁🍁🍁
پنار نے اپنے سارے کپڑے بیڈ پر ڈھیر کیے ہوئے تھے ۔۔۔۔۔۔ردا کی شادی پر پہنے کے لیے دیکھ رہی تھی۔۔۔۔۔۔۔ہرمان سامنے لیٹا آنکھیں موندھے سونے کی ناکام کوشش کر رہا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔اف کیا پہنوں میں شادی پر یہ سب تو پرانے ہو گئے ہیں۔۔۔۔۔۔ہرمان آنکھیں موندھے ہی اس کی بڑبراہٹ پر مسکرایا۔۔۔۔۔۔۔ایسا کرتی ہوں کل عذوبہ کے ساتھ شاپنگ پر چلی جاتی ہوں ۔۔۔۔۔ہاں یہ تھیک رہے گا۔۔۔۔۔۔پنار نے خود سے ہی کہتے ہوئے کپڑے سمیٹے۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے آنکھیں کھول کر اسے دیکھا اور پھر بیڈ سے اٹھا۔۔۔۔۔اور آہستہ آہستہ چلتا اس تک آیا ۔۔۔۔۔۔۔ہمم میں کچھ مدد کروں ۔۔۔۔۔ہرمان نے اس کے پاس بیٹھتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔پنار نے سوالیہ آئی بروز اٹھاے ۔۔۔۔۔۔ہرمان نے مسکراتے ہوئے ایک ریڈ ڈوپٹہ اٹھایا ۔۔۔۔اور پنار کے سر پر اُڑایا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے خیرت سے اپنے سر پر اُوڑے ڈوپٹے کو دیکھا ۔۔۔۔۔ہرمان نے اس کا چہرہ اپنے ہاتضوں کے پیالے میں تھاما۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔آپ کچھ بھی پہنے ۔۔۔۔ائی ایم شیور ۔۔۔۔۔مجھے آپ دل میں ہی گھستی محسوس ہوتی ہیں ۔۔۔۔۔۔پنار نے اس کے محبت سے پُر لہجے کو دیکھا۔۔۔۔۔۔پنار نے سچائی جاننے کے لیے اسکی آنکھوں میں دیکھا۔۔۔۔۔۔۔جہاں اس وقت اسے اپنا ہی عکس دیکھا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے اس کے یوں اپنے طرف دیکھنے پر مسکرایا۔۔۔۔۔اور پھر چاہت سے اس کے ماتھے پر بوسہ دیا ۔۔۔۔۔۔۔جسے پنار نے آنکھیں بند کر کے وصول کیا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے پھر ریڈ ڈوپٹے کے اوپر سے ہی اس کے سر کو چوما۔۔۔۔۔۔یار کیوں اتنا دیوانہ بنا دیا ہے مجھے۔۔۔وائے۔۔۔۔۔ہرمان نے دھیمی آواز میں کہتے یوئے اسکے چہرے سے اپنا چہرہ مس کیا۔۔۔۔۔۔۔پنار آہستہ سے اسے پیچھے کیا۔۔۔۔پتا نہیں کیوں اسے ہرمان کی قربت بری نہیں لگ رہی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔پنار کو وہ اس وقت اتنا پیارلگا کہ اس نے بھی آہستہ سے اپنے ہونٹ اسکے پٹی لگے ماتھے پر رکھے ۔۔۔۔۔۔ہرمان نے اس تبدیلی کو مسکرا کر دیکھا۔۔۔۔۔۔۔میں جانتا ہوں اس دل پر اب صرف اور صرف میرا ہی نام ہے ۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے اس کا سر اپنے سینے ہر رکھ کر کہا۔۔۔۔۔۔تم تھیک نہیں کیا تھا میرے ساتھ۔۔۔۔۔۔۔پنار نے اپنا سر اوپر اتھا کے خفگی سے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔.ہوں ۔۔۔میں کسی اور کا آپ کو ہونے بھی تو نہیں دے سکتا تھا نا۔۔۔۔۔۔آپ کو پانے کے لیے میں کچھ بھی کر سکتا ہوں کچھ بھی۔۔۔۔۔ہرمان نے شدت سے پُر لہجے میں کہا۔۔۔۔۔۔۔۔”

–**–**–
جاری ہے
——
آپکو یہ ناول کیسا لگا؟
کمنٹس میں اپنی رائے سے ضرور آگاہ کریں۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Subscribe For Latest Novels

Signup for Novels and get notified when we publish new Novel for free!




%d bloggers like this: