Mera Ishq Teri Anayat Novel by Faiza Ahmed – Episode 31

0
میرا عشق تیری عنایت از فائزہ احمد – قسط نمبر 31

–**–**–

عذوبہ ْکیا آج تم کالج سے جلدی آجاو گئی۔۔۔۔۔۔۔پنار نے عذوبہ کو کالج کے لیے تیار دیکھ کر استفسار کیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کوئی کام تھا آپ کو۔۔۔۔۔۔۔عذوبہ نے سوالیہ انداز میں پوچھا ۔۔۔۔۔۔۔ہاں ردا کی شادی ہے کل تو اس کے لیے کچھ گفٹ وغیرہ اور اپنا ڈریس وغیرہ خریدنا ہے۔۔۔۔۔۔۔او ہاں ! اچھا میں ایسا کروں گئی کہ ہاف لیو لے کر آجاوں گئی پھر چلے جائیں گے۔۔۔۔۔۔عذوبہ نے بیگ کندھے پر رکھتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہمم یہ تھیک رہے گا۔۔۔۔۔۔۔پنار کو بھی یہ ائیڈیا پسند آیا تھا۔۔۔۔۔۔۔اوکے پھر اللہ حافظ ۔۔۔۔عذوبہ کہہ کر باہر چلی گئی۔۔۔۔۔۔اللہ حافظ ۔۔۔۔۔پنار نے بھی پیچھے سے اونچی آواز میں کہا۔۔۔۔۔۔۔اور نوری کے ساتھ ناشتے کے برتن وغیرہ سمیٹنے میں اس کی مدد کرنے لگی۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁
ہائمہ اور ژالے کچن میں کھڑی یو ٹیوب سے دیکھ کر کوئی ڈش بنا رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔کیا بات ہے آج تو بہت خوشبوئیں پھیلی ہوئی ہے کچن میں ۔۔۔۔۔رومان نے کچن میں آتے ،ان دونوں کو مصروف دیکھ کر کہا۔۔۔۔۔۔۔ہائمہ اور ژالے نے ایک ساتھ پلٹ کر اسے دیکھا۔۔۔۔۔جو وائٹ شرٹ کی سلیوز کہنیوں تک موڑے ہوئے کافی ہینڈسم لگ رہا تھا.۔۔۔۔۔۔۔رومان نے دونوں کو مسکرا کر دیکھا۔۔۔۔۔۔۔ژالے میری بچی جاو میری بلیک نئی شرٹ پریس کرو جاو شاباش۔۔۔۔۔۔۔رومان نے دنیا بھر کا پیار سمو کر ژالے کو یہاں سے بیجنے کا کہا۔۔۔۔۔۔۔اف میں نہیں کرنے والی۔۔۔۔۔ژالے نے ناک منہ چڑاتے ہوئے بچوں سے انداز میں کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔سوچ لو اگر نہیں گئی تو مال نہیں لے کر جاوں گا آج۔۔۔۔۔۔۔بھائی۔۔۔۔۔ژالے نے خفگی سے کہا۔۔۔۔۔جا رہی ہو یا کینسل کروں آج کا پروگرام ۔۔۔۔۔۔رومان نے اس بار دھمکی سے کام لیا۔۔۔۔۔۔جا رہی ہوں میں ہمم ۔۔۔۔۔۔ژالے پیر پٹخ کر چلی گئی ۔۔۔۔اب رومان نے کوکنگ میں مصروف ہائمہ کو دیکھا۔۔۔۔جو بخوبی اس کی نظریں اپنی پشت پر محسوس کر رہی تھی۔۔۔۔۔۔۔رومان آہستہ سے چلتا اس تک آیا تھا، کیا بنا رہی ہو ،رومان نے اس کے کان کے قریب جھک کر کہا۔۔۔۔۔۔۔۔ہائمہ ایک دم پلٹی جس سے دونوں کا اچھا خاصہ تصادم ہوا تھا۔۔۔۔۔۔۔یہ کیا طریقہ ہے بات کرنے کا ہاں ۔۔۔۔۔ہائمہ نے اپنا ماتھا سہلاتے ہوئے خفگی سے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔میرا تو یہی طریقہ یے ۔۔۔۔رومان نے اس کا ماتھا سہلا کر کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔یہ کیا کر رہیں ہیں کوئی آجائے گا۔۔۔۔۔ہائمہ نے اس کا ہاتھ پیچھے کرتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔اتا ہے تو آئے میں کونسا کسی پروسن سے بات کر رہا ہوں جو ڈروں اپنی ہونے والی بیوی سے ہی تو بات کر رہا ہوں۔۔۔۔۔۔۔رومان نے اب اس کا ہاتھ اپنے ہاتھوں میں لیتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔ہمم !ژالے نے دونوں کے رومینس کی پٹری کو روکنے کیے ہلکا سا ہنکار بھرا۔۔۔۔۔۔۔۔رومان نے ایک دم اس کا ہاتھ چھوڑ کر ژالے کی طرف پلٹ کر دیکھا۔۔۔۔۔۔۔اور اسے گھورا۔۔۔۔۔یہ تم اتنی جلدی شرٹ پریس کر آئی ہو۔۔۔۔۔رومان نے بنا شرمندہ ہوئے اسے لتارا ۔۔۔۔۔۔۔ہاں تو آپ کو تو شرٹ پریس سے غرض ہے نا ۔۔۔۔میں ثروت کو دے آئی ہوں شرٹ پریس کرنے کے لیے۔۔۔۔۔۔۔۔کیاا، ژالے کی بچی تم میری نئی شرٹ ثروت کو دے آئی ہو ۔۔۔۔۔پہلے اس نے میری کونسی سی شرٹ ثابت چھوڑی ہے جو تم اسے میری نئی شرٹ پکڑا آئی ہو۔۔۔۔۔۔تم سے تو میں آکر نبٹتا ہوں پہلے ثروت سے نبٹ آوں۔۔۔۔۔۔۔۔رومان عجلت سے کہتے ہوئے باہر کی طرف بڑھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ژالے تم نا ایک نمبر کی کام چور ہو ۔۔۔۔۔۔تم جانتی ہو ثروت کو ٹھیک سے کپڑے پریس کرنے نہیں آتے پھر بھی اسے دے آئی۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہائمہ نے ژالے کو گھوری سے نوازتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔ہاں تاکے تم دونوں کو رومینس کرنے کا ایک اور موقع مل جاتا۔۔۔۔۔ژالے نے مسکراہٹ دباتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔شٹ اپ ۔۔۔۔۔اور یہ دھنیہ کاٹو ۔۔۔۔۔ہائمہ نے اس کے آگے دھنیہ پٹختے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔
🍁🍁🍁🍁🍁🍁
رومان دادی کی گود میں سر رکھے ان سے لاڈ کروانے میں مصروف تھا۔۔۔۔۔ناہید کسی جاننے والی کے پاس بیٹھی ہوئی تھی جو ہرمان کی عیادت کرنے آئی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار اس کے لیے دلیہ بنا کر لائی تھی۔۔۔اور وہ جناب منہ ناک چڑھائے دادی کے ساتھ مصروف تھے۔۔۔۔دادی میں اتنی محنت سے بنا کرلائی ہوں ۔۔۔۔۔لیکن یہ کھا نہیں رہا ۔۔۔۔پنار نے دادی سے اسکی شکایت کی ۔۔۔۔۔۔ہرمان بیٹا یہ تمہاری صحت کے لیے ضروری ہے کھا لو۔۔۔۔نہرے پھر کسی دن کے لیے چھوڑ دو ۔۔۔۔دادی نے اس کا سر اپنی گود سے اٹھاتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اوکے تو پھر اپنی بہو سے کہیں کہ یہ جن ہاتھوں سے بنا کر لائی ہیں انہی ہاتھوں سے مجھےکھلا بھی دیں ہرمان نے پنار کی طرف دیکھ کر معنی خیز انداز میں کہا۔۔۔۔۔۔”پنار نے آنکھیں نکالتے ہوئے اسے باز رہنے کا کہا تھا۔۔۔۔۔لیکن وہ ہرمان ہی کیا۔۔۔۔۔۔جو اپنا ڈیٹھ پن چھوڑ دے اور کسی اور کی بات مان لے۔۔۔۔۔۔۔لاو ادھر میں کھلا دیتی ہوں۔۔۔۔۔دادی نے اس کی بات پر دلیے کا باول پکڑتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔پنار نے اپنی مسکراہٹ روکی۔۔۔۔ہرمان نے دادی کی بات پر منہ بسورا۔۔۔۔۔۔۔دادی بات کو سمجھے مجھے اپنی بیوی کے ہاتھوں سے ہی کھانا ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے بنا کسی لخاظ کے کہا۔۔۔۔۔۔۔دادی میں کمرے میں چلتی ہوں عذوبہ آنے ہی والی ہوگئی۔۔۔۔۔۔۔پنار نے کمرے میں ہی چلے جانا بہتر سمجھا۔۔۔۔۔۔۔۔دادی نے سر ہلایا۔۔۔۔۔۔پنار جلدی سے سیڑیاں چڑ گئی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور کمرے میں آکر ہی سانس لی۔۔۔۔۔۔۔۔بے شرم انسان ۔۔۔۔۔پنار نے اسے کوسا۔۔۔۔۔اور چینج کرنے کے لیے کپڑے نکالے ۔۔۔۔پنار جب ڈریس چینج کر کے باہر آئی تو جناب بیڈ پر بیٹھے سامنے دلیے کا باول رکھے بیٹھے تھے۔۔۔۔۔ہاں کھایا اب بھی نہیں تھا۔۔۔۔۔۔۔پنار نے اسے اگنور کر کیے مرر کے سامنے کھڑی پونی پھر سے بنانی لگی۔۔۔۔۔۔ہرمان نے ایک چمچ دلیہ کا لیا۔۔۔۔اور پھر برا سامنہ بنا کر اسے واپس رکھا۔۔۔۔۔۔۔اور بیڈ سے کھڑا ہو کر پنار کے پیچھے کھڑا ہوا۔۔۔۔۔۔اور آہستہ سے اس پیچھے سے اپنی باہوں میں لیا اس کے کندھے پر ہتھوڑی ٹکائے اسے سیریس موڈ میں گھورا۔۔۔۔۔۔پنار نے اس کا حصار توڑنے کی کوشش کی ۔۔۔۔لیکن یہ ہرمان کا حصار تھا۔۔۔۔کوئی عام حصار نہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کیا مسلہ ہے تمہارے ساتھ ہاں۔۔۔۔پنار نے خفگی سے پُر لہجے میں کہا۔۔۔۔۔ہرمان نے جواب دینے کی بجائے کندھے اچکائے۔۔۔۔۔۔پنار ابھی غصے میں کچھ اور کہتی جب ڈور نوک ہوا۔۔۔۔۔۔۔پنار نے نوک کی آواز پر اسے پیچھے کرنے کی نا کام۔کوشش کی۔۔۔۔۔۔۔۔چھوڑو مجھے دروازے میں کوئی کھڑا ہے۔۔۔۔۔۔۔۔ہممم ،ہرمان نے نا میں سر ہلا کر اسے بازو میں زور سے کس لیکن پھر اس کا بے بس چہرہ دیکھ کر چھوڑ دیا۔۔۔۔۔پنار نے اسے آہستہ سے دھکا مارا اور دروازے کی طرف بڑھی۔۔۔۔۔۔۔۔بھابھی یہ آپ کے لیے پارسل آئیں ہیں۔۔۔۔۔۔۔پنار کے ڈور کھولنے پر عذوبہ نے کہا۔۔۔۔۔۔۔میرا پارسل لیکن کہاں سے ۔۔۔۔۔۔۔پنار نے الجھ کر اس سے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔پتا نہیں ۔۔۔۔۔لیکن کافی بھاری۔۔۔۔۔۔۔ایک اور بھی ہے ۔۔۔۔وہ نوری لیکر آرہی ہے وہ دیکھیں آگئی۔۔۔۔۔۔۔ عذوبہ نے پارسل بیڈ پر رکھ کر کہا۔۔۔۔۔نوری نے بھی بھاری پارسل بیڈ پر رکھ دیا۔۔۔۔۔اور باہر چلی گئی۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے نا سمجھی سے ہرمان کی طرف دیکھا۔۔۔جس نے کندھے اچکاتے ہوئے فون پر اپنی توجہ مرکوز کی۔۔۔۔۔۔۔آئیں بھابھی کھول کر تو دیکھیں کہ کیا ہے اس میں۔۔۔۔۔۔۔عذوبہ نے تجسس سے کہا۔۔۔۔پنار نے سر ہلا کر باکس کو کھولنا شروع کیا۔۔۔۔۔۔۔واوا۔۔۔۔۔۔عذوبہ نے باکس کے کھلتے ہی کہا۔۔۔۔۔۔۔پنار نے بھی خیرت سے باکس کے اندر سے پیک شدہ ڈریس نکالا۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے ڈریس کی پیکنگ کھولی۔۔۔۔۔۔یہ ایک باٹل گرین شارٹ فراک تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔جس کے بارڈر پر وائٹ موتیوں اور نگوں کا کام کیا گیا تھا۔۔۔۔۔۔۔سلیوز بھی باڈر کی طرح فل کام سے بوجھل تھی۔۔۔۔۔۔گول گلہ جو سادہ تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔پنار اور عذوبہ نے ستائش سے ڈریس کو دیکھا۔۔۔۔۔۔۔اور پھر اس کے اندر سے دوسری اسیسریز نکالی ڈریس کے میچ کی سینڈل اور ہینڈ بیگ بھی تھا۔۔۔۔۔۔۔ساتھ ہی وائٹ جیولری۔۔۔۔۔پنار اور عذوبہ کا تو خیرت کے مارے برا حال تھا۔۔۔۔۔۔جس کی بھی پسند تھی لا جواب تھی۔۔۔۔۔۔۔پنار نے چونک کر ہرمان کی طرف دیکھا۔۔۔جو اسی کی طرف مسکراتی نظروں سے دیکھ رہا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔پنار ایک منٹ میں سمجھ گئی تھی۔۔۔۔۔۔یہ کس نے بھیجا ہے ۔۔۔بلکہ منگوایا ہے۔۔۔۔۔۔۔۔عذوبہ نے بھی مسکراتے ہوئے اپنے بھائی کی طرف دیکھا۔۔۔۔۔۔۔اور پھر کچھ سوچتے ہوئے ان دونوں کو اکیلے چھوڑے روم سے چلی گئی۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار اور ہرمان اب بھی ایک دوسرے کی آنکھوں میں دیکھ ریے تھے۔۔۔۔۔۔یہ سب پنار نے صرف اتنا ہی کہا۔۔۔۔۔۔ہرمان نے فون رکھا اور اس کے پاس آکر بیٹھا۔۔۔۔۔۔۔پھر اسکی کمر میں ہاتھ ڈال کر اسے اپنے قریب ترین کیا۔۔۔۔۔۔۔پنار نے کوئی مزاحمت نہیں کی۔۔۔۔۔۔۔سب کچھ آپ کے لیے ۔۔۔۔۔بلکہ آئی ایم سوری۔۔۔۔۔۔مجھے ان سب چیزوں کا پہلے ہی دھیان رکھنا چاہئیے تھا ۔۔۔۔۔۔ہرمان نے اپنے ہونٹ اسکی ناک پر رکھ کر کہا۔۔۔۔۔۔اور اس میں کیا ہے ۔۔۔پنسر نے دوسرےباکس کی طرف اشارہ کیا۔۔۔۔۔۔۔ہممم اس میں ردا کے لیے کچھ تحائف ہیں ۔۔۔۔تاکہ آپ کو بازار وغیرہ نا جانا پڑے ۔۔۔۔اور ناہی میری نظروں سے ۔۔۔۔۔دور۔۔۔۔۔۔ہرمان نے ہلکی سی مسکان سے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کیوں چاہتے ہو تم مجھے اتنا میں تو اتنی خاص بھی نہیں ہوں۔۔۔ایک عام س شکل و صورت کی مالک ہوں ۔۔۔۔پھر کیوں اتنا چاہتے ہو مجھے۔۔۔۔۔۔ہاہاہا۔۔۔۔پاگل ہیں آپ۔۔۔۔۔۔جو محبت شکل سے کی جاتی ہے وہ محبت کب ہوتی ہے ۔۔۔۔۔۔۔مجھے صرف آپ کے وجود سے ہی نہیں ۔۔۔۔۔بلکہ آپ کی روح سے بھی عشق ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے ایک افسوں سا پھونکا تھا پنار پر۔۔۔۔۔۔۔۔جس میں وہ کھینچتی چلی گئی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
اف آج تو ہم بہت تھک گئے۔۔۔۔۔۔۔ژالے نے سارے بیگ صوفے پر ڈھیر کرتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔ہائمہ بھی صوفے پر اس کے ساتھ گری۔۔۔۔۔۔۔نہیں گھومنا تھا نا سارا بازار ۔۔۔۔۔۔جب تک سارا بازار نا گھوم لو تم دونوں کی کونسی شاپنگ مکمل ہوتی ہے۔۔۔۔۔۔۔عافیہ نے سبزی کی ٹوکری سے سبزی چونتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔کیا کیا لیا ہے ۔۔۔۔مرینہ نے دونوں کو پانی دیتے ہوئے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔زیادہ کچھ نہیں ۔۔۔۔۔۔۔ردا آپا کے لیے دو ڈریس ۔۔۔۔اور جیولری وغیرہ ہے اور
ہم دونوں کا ایک ایک ڈریس ۔۔۔۔۔۔۔۔ہائمہ نے پانی پیتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔”تم دونوں کا لینا ضروری تھا۔۔۔۔۔۔ابھی کل ہی تم دونوں نے پنار کی شادی پر ڈھیر سارے کپڑے بنوائے تھے۔۔۔۔۔وہ کس کام آئیں گے۔۔۔۔۔۔۔۔عافیہ نے دونوں کو جھڑکتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔”کیا امی وہ تو سب نے دیکھے ہوئے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔ژالے نے منہ بنایا۔۔۔۔۔۔ایک تو ان آج کل کی لڑکیوں کے کپڑوں سے تو دل ہی نہیں بھڑتا۔۔۔۔۔۔مرینہ نے بھی دونوں کو گھورتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔”ژالے نے اشارے سے ہائمہ کو یہاں سے اٹھنے کو کہا۔۔۔۔۔۔۔کہ یہاں سے اٹھ جانا ہی بہتر تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
پنار شادی پر جانے کے لیے پارلر سے تیار ہوئی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور جب تیار ہو کر باہر آئی تو ہرمان نے خیرت سے اس کے خوبصورت لک کو دیکھا۔۔۔۔۔۔۔اس نے بالوں کو کرل کیا ہوا تھا۔۔۔۔۔پنک ڈارک لپ سٹک لگائے اسی کے دئیے ڈریس میں بہت ڈفرینٹ لگ رہی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کیسی لگ رہی ہوں پنار نے ۔۔۔۔۔۔۔اسکے پاس آکر ایکسائٹڈ سے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔”ہمم۔۔۔۔ہرمان نے اس کے پاس آکر سوچنے والے انداز میں کہا۔۔۔۔۔۔کیا ہمم ۔۔۔۔۔میں نے کوئی الجبرا کا سوال نہیں پوچھ لیا جو تم سوچ رہے ہو۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے اسے آنکھیں دیکھاتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہاں تھیک ہے ۔۔۔۔لیکن میں آپ کی تعریف بیڈ روم میں کروں گا اپنے انداز میں ۔۔۔۔۔۔ہرمان نے اسے آنکھ مارتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔پنار نے مسکراتے ہوئے اس ایک مکہ مارا۔۔۔۔۔۔۔۔اور پھر دونوں ۔۔۔۔۔گاڑی میں بیٹھ ردا کے گھر چلے گے ردا کے گھر والوں نے شادی کا فنکشن گھر پر ہی رکھا ہوا تھا۔۔۔۔۔۔گاڑی ڈرائیور ڈرائیو کر رہا تھا۔۔۔۔۔۔پیچھے ایک اور گاڑی بھی تھی ان کی خفاظت کے لیے ۔۔۔۔۔اسد صاحب اب کوئی رسک نہیں لینا چاہتے تھے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”وہ دونوں جب وہاں پہنچے تو پنار کی فیملی پہلے سے ہی وہاں موجود تھی۔۔۔۔۔۔۔پنار باری باری سب کے گلے ملی۔۔۔۔۔۔۔ہرمان بھی سب سے ملا ۔۔۔۔۔ردا کے والدین اس سے اسکی طبیعت وغیرہ کا پوچھ رہے تھے۔۔۔۔۔۔ہرمان بھی مسکراتے ہوئے انکے سوالوں کا جواب دے رہا تھا۔۔۔۔۔۔پنار سب سے مل کر ردا کے پاس چلی گئی۔۔۔۔۔۔۔۔ساتھ ژالے اور ہائمہ بھی تھیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔اب بھی کیا ضرورت تھی آنے کی نا آتی ۔۔۔۔۔شادی تو ہو ہی جانا تھی میری ۔۔۔۔۔۔۔۔ردا نے اسے گھورتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔سوری یار ۔۔۔۔تن جانتی تو ہو گھر میں ہر وقت کوئی نا کوئی آیا ہی رہتا ہرمان کی طبیعت پوچھنے ۔۔۔۔۔پنار نے کان پکڑتے ہوئے اسے منایا۔۔۔۔۔۔بہت خوبصورت لگ رہی ہو ۔۔۔۔۔پنار نے ردا کے خوبصورت روپ کی تعریف کرتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔ردا مسکرائی۔۔۔۔۔اور تم مجھ سے بھی زیادہ خوبصورت لگ رہی ہو۔۔۔۔۔ردا نے بھی اسکے سجے سنورے روپ کی تعریف کی۔۔۔۔۔۔۔ویسے آپ دونوں خود کی ہی تعریف کرتی رہہیں گئی یا کچھ ہماری بھی تعریف کرے گئی۔۔۔۔۔ژالے نے ان دونوں کی توجہ اپنی طرف کرتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔ارے یار تم دونوں تو آسمان سے اتری ہوئی کوئی خور لگ رہی ہو کیوں پنار ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ردا نے مسکراتے ہوئے دونوں کو چڑایا۔۔۔۔۔۔اس سے اچھا تھا آپ ہماری تعریف نا ہی کرتی۔۔۔. ۔۔۔ہائمہ نے خفگی سے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔تبھی بارات آنے کا شور اٹھا۔۔۔۔۔۔۔جسے سن کر ہائمہ ژالے تو باہر چلی گئی ساتھ دوسری لڑکیاں بھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔اب ردا اور پنار ہی تھی روم میں ۔۔۔۔۔۔۔۔ویسے بہت خوبصورت لگ رہی ہو اس مہرون ڈریس میں۔۔۔۔۔۔۔پنار نے محبت سے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔ویسے یہ ًڈریس کہاں سے لیا یار کتنا پیارا لگ رہا ہے تم پر۔۔۔۔۔پنار نے مسکراتے یوئے اسے دیکھا۔۔۔۔۔اور پھر اسے سب بتا دیا۔۔۔۔۔۔۔۔ارے یار ہاو لکی ایک یہ میرے ہونے والے میاں ہیں جن سے ویڈنگ ڈریس کا کلر پوچھا ۔۔۔۔تو جناب نے کہا۔۔۔۔۔آئی تھنک وائٹ زیادہ بہتر رہے گا۔۔۔۔۔۔ردا نے سعد کی نقل اتارتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔بندا پوچھے شادی کا ڈریس کون وائٹ لیتا ہے بورنگ پرسن۔۔۔۔ردا نے منہ بناتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔جواباً پنار کھلکھلا کر ہنس دی۔۔۔۔۔۔تب ہی مولوی صاحب نکاح پڑھانے چلے آئے اور تھوڑی دیر میں ہی نکاح کی کاروائی پوری ہو گئی۔۔۔۔۔۔سب کو کھانا وغیرہ کھلا کر ردا کو سب لڑکیاں پکڑے باہر لائی ۔۔۔۔۔۔۔۔پنار ردا کے بائیں جانب کھڑی چلی آرہی تھی ۔۔۔۔سعد نے اٹھ کر ردا کی طرف ہاتھ بڑھایا۔۔۔۔۔۔جس نے بنا دیری کیے اس کے ہاتھ پر رکھ دیا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے ردا کو بٹھانے کے بعد ہرمان کو تلاشا ۔۔۔۔۔۔جو ایک کونے میں کھڑا کسی لڑکی کی بات سن رہا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے غصے سے اس لڑکی کو دیکھا۔۔۔۔۔۔یہ ہر لڑکی میرے شوہر کے پیچھے ہی کیوں پڑھی رہتی ہے ۔.۔۔۔۔۔۔پنار نے غصے سے کہا ۔۔۔۔ اور اس طرف بڑھی۔۔۔۔۔۔جہاں وہ دونوں کھڑے تھے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔کیا ہو رہا ہے یہ ۔۔۔۔پنار نے دونوں کے پاس آکر سینے پر ہاتھ باندھ کر پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے چونک کر اپنی بیوی کی طرف دیکھا۔۔۔۔۔۔۔۔اور مسکرایا۔۔۔۔۔۔آپ کی تعریف ۔۔۔۔۔اس لڑکی نے تیکھے لہجے میں پوچھا۔۔۔۔۔۔یہ تو مجھے پوچھنا چاہئے تھا۔۔۔۔۔۔بیوی ہوں میں انکی ۔۔اور آپ کی تعریف ۔۔۔۔۔۔پنار نے بھی تیکھے لہجے میں پوچھا۔۔۔۔۔۔کیا۔۔۔۔لڑکی نے خیرت سے ہرمان کی طرف دیکھا ۔۔۔جو میٹھی نظروں سے اپنی بیوی کو دیکھ رہا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔لڑکی پیر پٹختی ہوئی چلی گئی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔یہ کیا چکر تھا ہاں۔۔۔۔۔پنار نے اس کی طرف دیکھ کر خفگی سے پوچھا۔۔۔۔۔قسم سے وہ لڑکی پتا نہیں کہاں سے آگئی تھی اور پیچھا ہی نہیں چھوڑ رہی تھی۔۔۔۔۔ اس میں آپ کے معصوم سے شوہر کا کیا قصور۔۔۔۔۔۔

–**–**–
جاری ہے
——
آپکو یہ ناول کیسا لگا؟
کمنٹس میں اپنی رائے سے ضرور آگاہ کریں۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Subscribe For Latest Novels

Signup for Novels and get notified when we publish new Novel for free!




%d bloggers like this: