Mera Ishq Teri Anayat Novel by Faiza Ahmed – Episode 32

0
میرا عشق تیری عنایت از فائزہ احمد – قسط نمبر 32

–**–**–

معصوم اور تم۔ ۔۔۔۔۔۔یہ اس صدی کا سب سے بڑا لطیفہ ہو گا۔ ۔۔۔۔۔پنار نے اسے مصنوعی خفگی سے گھورتے ہوئے کہا ۔ ۔۔۔۔۔۔۔اف اتنا غصہ۔ ۔۔۔۔کہتے ہیں زیادہ غصہ کرنے سے رنگ کالا ہو جاتا ہے۔ ۔۔۔۔۔ہرمان نے اسے بڑھی عورتوں کی طرح سمجھایا۔ ۔۔۔۔۔میرا پہلے کونسا گورا ہے ۔۔۔۔۔۔جو کالا ہو گا۔ ۔۔۔۔پنار نے ستائش سے اس کا گورا رنگ دیکھتے ہوئے کہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے محبت سے اس کا چہرہ اپنے ہاتھوں میں لیا۔۔۔۔۔۔۔آپ کو سچ بتاوں مجھے آپ کا کمپلیکشن اپنے کمپلیکشن سے زیادہ اچھا لگتا ہے ۔ ۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے اسی طرح اس کا چہرہ ہاتھوں میں لیے اس پر جھکا تھا۔ ۔۔۔۔۔جب پنار نے ادھر ادھر دیکھتے ہوئے جلدی سے اس سے الگ ہوئی تھی۔ ۔۔۔۔۔۔اف کچھ تو شرم کیا کرو ۔۔۔ دیکھو کتنے لوگ ہماری طرف متوجہ ہیں ۔۔۔۔۔۔۔پنار نے گھورتے ہوئے کہا۔ ۔۔ آئی ڈونٹ کیئر۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے لاپرواہی سے کندھے اچکاتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔”آپ دونوں یہاں ہیں وہاں ردا پوچھ رہی ہے آپ دونوں کا۔۔۔۔۔۔۔۔۔ژالے نے ان کے قریب آتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔ہمم بس آہی رہے تھے ہم ۔۔۔۔۔پنار نے ژالے کو کہتے ہوئے ہرمان کو دیکھا ۔۔۔۔۔۔۔چلیں ۔۔۔۔پنار نے اسے چلنے کا اشارا کیا۔۔۔۔۔ہرمان نے سر ہلایا اور پھر ہاتھ اس کے سامنے پھیلایا۔۔۔۔۔پنار نے مسکراتے ہوئے بنا ہچکچاے اپنا ہاتھ اسکی پھیلی ہتھیلی پر رکھ دیا۔۔۔۔۔۔۔۔اور آگے بڑھے۔۔۔۔۔ژالے بھی پیچھے سے ان کی بلائیں لیتی ان کے پیچھے لپکی۔۔۔۔۔۔آپ پر وائٹ شیروانی کافی سج رہی ہے۔۔۔۔۔پنار نے سعد کی تعریف کی۔۔۔۔۔۔۔تھینکس ،سعد نے مسکراتے ہوئے تعریف وصول کی۔۔۔۔ہرمان نے گھور کر سعد کو دیکھا ۔۔۔۔اور پھر پنار کو ۔۔۔۔ویسے آپ پر بلیک شیروانی زیادہ سوٹ کرتی اس میں آپ کافی ڈل لگ رہے ہیں ۔۔۔۔۔ہرمان سے کہاں ہضم ہوتی اس کی تعریف اپنی بیوی کے منہ سے۔۔۔۔۔۔۔۔سب نے ہرمان کو پہلے چونک کر دیکھا۔۔۔۔۔پھر ردا کے کھلکھلانے پر سب ہنس دیئے۔۔۔۔۔۔جبکہ پنار سعد سے شرمند سی ہو گئی ۔۔۔۔ہرمان کی خرکت پر۔۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁
میں سوچ رہا تھا کیوں نا ۔۔۔۔۔نیلم کی بات عمر سے تہہ کر دیں ۔۔۔۔۔خالد نے دودھ کا گلاس سائیڈ ٹیبل پر رکھتے ہوئے عالیہ بیگم سے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔لیکن نیلم تو کافی چھوٹی ہے ۔۔۔۔۔۔عمر سے بلکہ وہ اسے اپنی چھوٹی بہن مانتا ہے۔۔۔۔۔عالیہ نے پریشانی سے اپنے شوہر کو کہا۔۔۔۔۔۔کوئی چھوٹی نہیں ۔۔۔۔۔۔اور میاں بیوی میں اتنا گیپ تو ہوتا ہی ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔اور رہی بہن کی بات تو ،جب رشتہ بدلے گا ۔۔۔۔تو نظریہ بھی بدل جائے گا۔۔۔۔۔۔۔۔۔”خالد صاحب نے اپنے حساب سے بات ختم کرتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔لیکن آپ ایک بار عمر سے پوچھ لیجیے گا ۔۔۔۔۔۔عالیہ نے لائٹ دم کرتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔عمر سے کیا پوچھنا ہے۔۔۔۔۔۔اسے کیا پتہ اپنے اچھے برے کا۔۔۔۔۔۔۔۔خالد صاحب نے آنکھیں موندتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔جبکہ عالیہ پریشانی سے عمر کا رئیکشن سوچ کر رہ گئی۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁
ہرمان تم کبھی نہیں سدھرو گئے نا ۔۔۔۔مجھے شرمندہ کر کے رکھ دیا اتنے لوگوں میں ۔۔۔۔۔۔پنار نے بیڈ کی چادر درست کرتے ہوئے ہرمان کو کہا ۔۔۔۔جو واش روم سے چینج کر کے نکلا تھا۔۔۔۔۔۔تو آپ کو کس نے کہا تھا میرے علاوہ کسی اور کی تعریف کریں ۔۔۔۔۔۔میں نہیں برداشت کر سکتا آپ کے منہ سے کسی اور کی تعریف اس لیے بی کیئر فل نیکسٹ ٹائم۔۔۔۔۔ہرمان نے ٹاول اس کی گود میں پھینکتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔اف ۔۔۔۔۔۔گندے یہ کیا طریقہ ہے ۔۔۔پنار نے ٹاول کو پرے پھینکتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔میں سوچتی تھی جتنی صفائی پسند میں خود ہوں ہسبنڈ بھی اتنا ہی مینرڈ والا ہو گا۔۔۔۔۔لیکن تم نے تو میری نفاست پسند طبعیت کا کباڑا کر کے رکھ دیا ہے ادھر کمرہ درست کرو ادھر آپ کو بکھرا ملے گا ۔۔۔۔ کمرے کو پھیلانے میں تو تم نے پی ایچ ڈی کر رکھی ہوئی ہے ۔۔۔۔۔پنار نے کمرے سمیٹتے ہوئے غصے سے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔”ہرمان نے بالوں میں کنگا کیا۔۔۔۔۔۔اور پھر اسے زچ کرنے کے لیے کنگا بیڈ پر پھینکا۔۔۔۔۔۔البتہ ہلکی ہلکی مسکان ہونٹوں پر سجی ہوئی تھی۔۔۔۔۔خود کو باتیں سناے جانے پر ۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے کمر پر ہاتھطرکھ کر اسے گھورا۔۔۔۔۔۔۔پھر غصے سے کمرے سے ہی واک اوٹ کر گئی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے مسکراتے ہوئے اس کا جانا نوٹ کیا۔۔۔۔۔اور پھر خود بھی اسکے پیچھے لپکا۔۔۔۔۔۔تب تک وہ باہر لاون میں چلی گئی تھی. ۔۔۔۔۔۔۔جہاں ہلکی ہلکی بوندا بوندی ہو رہی تھی، پنار شیڈ کے نیچے کھڑی بارش انجواے کر رہی تھی جب اپنے ارد گرد باہوں کا حصار کستے محسوس کیا۔۔۔۔۔۔پنار نے خفگی سے صرف اسے پلٹ کر دیکھا۔۔۔۔۔۔بولی نہی۔۔۔۔۔۔آپ جانتی ہیں آپ مجھے جب غصے سے دیکھتی ہیں تو یہاں بہت زور سے کچھ ہوتا ہے۔۔۔۔۔۔ہرمان نے اس کا رخ اپنے طرف کرتے ہوئے اس کا ہاتھ اپنے دل کے مقام پر رکھتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔پنار اسی طرح کھڑی رہی ۔۔۔۔۔بنا کچھ بولے۔۔۔۔۔۔۔۔آئیں بارش میں بھیگیں ۔۔۔۔۔ہرمان نے برستی بارش کی طرف اشارا کرتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔مجھے بارش میں بھیگنا پسند نہیں ۔۔۔۔۔۔۔پنار نے ہنوز خفگی سے کہا۔۔۔۔۔۔۔اوکے جیسے آپکی مرضی ۔۔۔۔ہرمان کہتے ہی نیچے جھکا اور اسے اپنی باہوں میں اٹھا لیا۔۔۔۔۔۔۔۔پنار کی تو چیخ ہی نکل گئی تھی ۔۔۔۔خود کو اس طرح اٹھائے جانے پر ۔۔۔۔۔آآ میں گر جاوں گئی مجھے نیچے اتارو ۔۔۔پنار نے مچلتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔نہیں گرنے دوں گا ۔۔۔ہرمان نے کہتے ہی اس باہر بارش میں لے گیا تھا۔۔۔۔۔۔۔اور اسے اسی طرح اٹھائے ہلکا ہلکا گھوما۔۔۔۔۔۔۔۔۔مجھے نیچے تو اتارو ۔۔۔۔۔۔ہممم ۔۔۔ہرمان نے نفی میں سر ہلایا ۔۔۔۔۔۔اور پھر اسے آہستہ سے نیچے اتارا ۔۔۔۔۔۔ڈانس کریں۔۔۔۔۔ہرمان نے ہونٹ بھینچتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔جی نہیں ۔۔۔۔۔۔کچھ شرم کرو اس ٹائم ہمیں کسی نے اس طرح یہاں دیکھا ۔۔۔۔تو کتنی امبیرسمنٹ ہو گئی۔۔۔۔۔۔پنار نے اس سے اپنا آپ چھراتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔ٹھیک ہے چھوڑ دیتا ہوں۔۔۔۔۔۔لیکن۔۔۔۔۔ہرمان نے جملہ ادھورا چھوڑا۔۔۔۔۔۔۔لیکن کیا۔۔۔۔۔پنار نے پوچھا۔۔۔۔۔۔لیکن یہ کہ آپ کو مجھے کس کرنا ہوگا۔۔۔۔۔۔۔وہ بھی یہاں ۔۔۔۔ہرمان نے اپنے گال پر ہاتھ رکھتے یوئے کہا۔۔۔۔۔۔تم پاگل ہو چھوڑو مجھے۔۔۔۔پنار نے اپنی مسکراہٹ دباتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔. ٹھیک ہے ویسے ڈاکٹر عائشہ آج مجھے کال کر رہی تھی ۔۔۔۔۔اس وقت میں بزی تھا ۔۔۔۔۔ایسا کرتا ہوں اب کال کر کے پوچھ لیتا ہوں شاید اسے کوئی ضروری کام ہو۔۔۔۔۔۔ہرمان نے اسے اپنے نزدیک ترین کرتے ہوئے سنجیدگی سے کہا۔۔۔۔۔البتہ آنکھوں میں شرارت واضع تھی۔۔۔۔۔۔۔کر کے تو دیکھو زرا ۔۔۔۔۔۔پنار نے اس کی شرٹ کا کالر کھینچتے ہوئے اپنے نزیک کیا ۔۔۔۔۔۔۔اور پھر جھک کر اسکے ناک کی نوک پر اپنے لب رکھے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے پیچھے سے اسکی کمر پر بانہیں ڈالتے ہوئے اپنے اور قریب کیا۔۔۔۔۔۔۔۔دونوں اب ہلکی ہلکی بارش میں بھیگ رہے تھے ۔۔۔۔۔۔لیکن اب وہ دونوں ایک دوسرے میں گھم تھے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
تم کب بھیجو گے اپنے پیرنٹس کو ۔۔۔۔۔ژالے نے ناخن تراشتے ہوئے عمر سے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔یار۔۔۔۔۔۔۔۔بات کیا خاک کرنی ہے ڈیڈ سے۔۔۔۔ڈیڈ نے ہم دونوں کا بائکاٹ کر دیا ہے۔۔۔۔۔۔۔۔کیا مطلب ۔۔۔۔۔ژالے نے الجھ کر پوچھا۔۔۔۔۔۔بات لمبی ہے لیکن بتا دیتا ہوں۔۔۔۔۔۔۔ہوا یہ۔۔۔۔۔۔ہمارے سامنے والے ہمسائیوں کی ایک لڑکی ہے ہالہ۔۔۔۔۔۔اس سے حارث کا آج کل آفیئر چل رہا ہے ۔۔۔۔۔۔جناب نے اسے لو لیٹر لیکھ کر ان کی بالکنی میں پھینک دیا جناب نے نام بھی اپنا بڑے بڑے خروف میں لکھا تھا۔ ۔۔۔۔۔۔بد قسمتی سے وہ خط ہالہ کے ابو کے ہاتھ لگ گیا ۔۔۔۔۔۔اس کے ابو آگ بگولہ ہوتے ہوئے ہمارے گھر آگے خط لے کر ۔۔۔۔۔۔اور ڈیڈ کو دے دیا۔۔۔لیکن بے غیرت نے لکھایا مجھ سے تھا یہ کہہ کر کے اسکی رائیٹنگ نہیں اچھی۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔ڈیڈ نے ہمیں ان کے سامنے بولا کر وہ چھترول کی کہ ابھی بھی کمر میں درد ہو رہا ہے ۔۔۔۔اور تو اور تین دن تک گھر میں ہم سے کوئی نہیں بولے گا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔عمر نے اسے ساری بات تفصیل سے بتائی۔ ۔۔۔۔لیکن ژالے کا ہنس ہنس کے برا حال تھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔او مائے گاڈ ۔۔۔۔عمر کاش میں اس وقت وہاں ہوتی ۔۔۔۔۔۔۔کتنا انجواے کرتی نا۔ ۔۔۔۔۔ژالے نے کھلکھلاتے ہوئے کہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔ژالے مجھے تم سے یہ امید نہیں تھی ۔۔۔۔۔تم ہنس رہی ہو اور مجھے ابھی بھی کمر میں درد ہو رہا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔عمر نے خفگی سے کہا۔ ۔۔۔۔۔۔ارے تو میں کیا کروں ۔۔۔۔بات ہی تم نے ایسی سنائی ہے۔ ۔۔۔۔کہ مجھ سے ہنسی نہیں کنٹرول ہو رہی۔ ۔۔۔۔۔ژالے نے مسکراتے کہا۔ ۔۔۔۔۔لیکن فون میں بجتی ٹوں ٹوں ۔۔۔۔سن کر چونکی کیونکہ عمر نے ناراضگی کے طور پر فون بند کر دیا تھا۔ ۔۔۔۔۔۔ژالے پھر سے ہنسی۔ ۔۔۔۔۔یہ تم اتنا مسکرا کیوں رہی ہو کوئی خاص وجہ۔ ۔۔۔۔ہائمہ نے اس کے اکیلے ہی اکیلے مسکرائے جانے کی وجہ پوچھی۔ ۔۔۔۔۔۔جواباً ژالے نے مسکراتے ہوئے اسے ساری بات بتا دی۔ ۔۔۔۔۔۔جسے سن کر ہائمہ کی بھی ہنسی چھوٹ گئی۔ ۔۔۔۔۔۔۔”کیا ہو رہا یہ۔۔۔۔۔اور تم دونوں ابھی تک سوئی کیوں نہیں۔ ۔۔۔۔رومان نے وہاں سے گزرتے ہوئے پوچھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔ہماری نیند ہماری مرضی۔ ۔۔۔۔ہائمہ نے سینے پر ہاتھ باندھ کر کہا۔ ۔۔۔اچھا جی ۔۔۔۔۔رومان نے معنی خیزی سے پوچھا۔ ۔۔۔اوکے پھر کر کو کچھ دن اپنی مرضی۔ ۔۔۔رومان نے ہائمہ کو مسکراتے ہوئے چھیڑا۔ ۔۔۔۔۔۔میں یہی ہوں ۔۔۔۔ژالے نے اپنی موجودگی کا احساس دلانا ضروری سمجھا۔ ۔۔۔۔۔رومان نے اسے گھورا۔ ۔۔۔۔۔۔جاو جلدی سے میرے لیے کافی بنا کر میرے کمرے میں لاو ۔۔۔۔رومان روب سے ژالے سے کہہ کر پلٹ گیا۔ ۔۔۔۔۔۔اف بھائی کی تو فرمائشیں ہی ختم نہیں ہوتی ۔۔۔۔ژالے نے منہ بسورتے ہوئے ہائمہ سے کہا۔ ۔۔۔۔۔۔سارے کام تو وہ مجھ سے کرواتے ہیں ۔۔۔ایک کافی بناتے موت پر رہی ہے ہمم۔۔۔۔۔۔ہائمہ نے اسے گھورتے ہوئے کہا۔ ۔۔۔۔۔۔اچھا جی ابھی سے اپنے انہوں کی سائیڈ لینی شروع کردی۔۔۔۔لیکن یاد رکھنا میں بھی کوئی ڈبو قسم کی نند نہیں تمہیں۔ایک کی چار سنا کر بیٹھا کروں گئی ۔۔۔بڑی اپنی ان کی سائیڈ لینے والی۔ ۔۔۔ژالے نے منہ بنا کر کہا۔۔۔۔۔۔۔۔اچھا جی ۔۔۔ہائمہ نے کہتے ہی اسے کے کندھے پر زور سے تھپڑ مارا کہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁
تمہارے ایگزیم نزدیک آرہے ہیں نا۔۔۔۔رکھو موبائیل اور بکس نکالو ۔۔۔۔۔پنار نے اسے موبائل میں گھم دیکھ کر غصے سے کہا۔ ۔۔۔۔۔۔ہو جاوں گا پاس ٹینشن نا لیں۔۔ ۔۔۔ہرمان نے لاپرواہی سے کہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔ہاں سفارش سے۔ ۔۔۔۔پنار نے اس کے ہاتھ سے موبائل چھین کر کہا۔ ۔۔۔۔۔آپ سے کس نے کہا۔ ۔سفارش سے ہوتا ہوں پاس میں ،اب اتنا بھی نالائق نہیں ہوں میں ۔۔۔۔پاسنگ مارکس تو لیے ہی لیتا ہوں۔ ۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے فخر سے کہا۔۔۔۔۔۔لیکن پھر پنار کی سرخ ہوتی آنکھوں کو غور سے دیکھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔مجھے تمہارے پاسنگ مارکس نہیں چاہئیے ۔۔۔۔۔۔۔ہنڈرڈ پرسنڈ ریزلٹ چاہیئے۔ ۔۔۔۔۔اب نکالو بکس ۔۔میں تمہیں اہم اہم کوائسچن کے نوٹس بنا دیتی ہوں ۔۔۔پنار نے اپنا سر مسل کر کہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔کیا ہوا ہے آپ کو طبیعت تو تھیک ہے نا آپ کی۔ ۔۔۔۔۔۔ہرمان نے پریشانی سے اس کاہاتھ پکڑا ۔۔۔۔۔۔۔ہاں تھیک ہوں بس ہلکا سا سر درد ہے شاید فلو ہو گیا ہے ۔۔۔۔پنار نے آنکھوں سے پانی صاف کرتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔آپ نے مجھے پہلے کیوں نہیں بتایا۔ ۔۔ہرمان نے۔۔۔۔پریشانی سے اٹھتے ہوئے کہا۔ ۔۔۔تم کہاں جارہے ہو ۔۔۔۔۔ پنار نے اسے دروازے کی طرف بڑھتے ہوئے کہا۔ ۔۔۔۔۔”میڈیسن لینے ۔۔۔۔۔”میں فلو میں کوئی پلز نہیں لیتی ۔۔۔یہ ایک دو دن میں خود ہی تھیک ہو جاتا ہے ۔۔۔۔پنار نے اس کا ہاتھ پکڑ کر دوبارہ اپنے پاس بیٹھتے ہوئے کہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اوکے پھر آپ اپنا سر میری گود میں رکھیں میں دبادوں ۔۔۔۔ہرمان نے کہتے ہی اس کا سر اپنی گود میں رکھ لیا۔ ۔۔۔۔۔۔پنار نے بھی سر اس کی گود میں رکھے لیٹی اور۔۔۔۔۔۔آنکھیں بند کر لی ۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے پہلے اسکے ٹائٹ پونی نکالی ۔۔۔۔۔۔۔۔پھر آہستہ سے اس کا سر دبانا شروع کردیا۔ ۔۔۔۔۔پنار ہکا سا مسکا ئی۔ ۔۔۔۔۔۔ہرمان نے جھک کر اسکی پیشانی چومی۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔تھوڑی ہی دیر بعد اسکی انگلیوں سے پڑھتی ٹھنڈک سے اسے نیند آگئی تھی۔ ۔۔۔۔۔ہرمان نے جھک کر دیکھا تو وہ سو گئی تھی۔ ۔۔۔۔ہرمان نےآہستہ سے اسکے بالوں کو ادھر ادھر کرنا شروع کردیا۔ ۔۔۔۔۔پنار نے کروٹ کے بل لیٹے ہی اسکی گود میں منہ چھپایا تھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔ہرمان مسکراتے ہوئے اسے دیکھے گیا۔ ۔۔۔۔۔۔یہ چہرہ اسے دنیا میں سب سے زیادہ عزیز تھا۔ ۔۔۔۔۔۔ہرمان نے سوچتے ہوئے اسکے بالوں میں ہونٹ رکھے اور پھر اسکے سر پر منہ رکھے آنکھیں موند گیا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
پنار کی صبح جب آنکھ کھلی تو وہ اسی طرح ہرمان کی گود میں سر رکھے سو رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔ہرمان بیڈ کی کرون سے سر ٹکائے سو رہا تھا ۔۔۔۔۔چہرے پر دنیا بھر کی معصومیت چھائی ہوئی تھی۔۔۔۔۔۔پنار نے آہستہ سے اسکی گود سے سر اٹھا کر بیٹھی۔۔۔۔۔۔اور ہرمان کی طرف نم آنکھوں سے دیکھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔یااللہ کوئی کسی اتنا بھی پیار کرتا ہے ۔۔۔۔۔۔اس انسان نے مجھے خود سے عشق کرنے کو مجبور کردیا ہے۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے نم آنکھوں سے مسکرائی۔۔۔۔۔۔۔اف اللہ یہ کیوں ہے اتنا پیارا ۔۔۔۔۔پنار نے اسکے گلابی نیم ہونٹوں کو دیکھ کر سوچا۔۔۔۔۔۔پھر اسکی ناک کی نوک پر جھکی ۔۔۔۔دھیرے سے وہاں اپنے ہونٹ رکھے۔۔۔۔۔پنار کو اسکی ناک بہت پسند تھی تیکھی سی ۔۔۔۔۔۔خود اس کا ناک نا پتلا تھا نا موٹا ۔۔۔۔درمیانہ تھا۔۔۔۔۔۔پنار نے آہستہ سے اسے سیدھا کیا ۔۔۔۔۔اور اس کا سر تکیے پر رکھ کر اٹھ گئی۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁
موم ،ڈیڈ مجھے آپ لوگوں سے یہ امید نہیں تھی۔۔۔۔۔آپ لوگوں نے مجھے بتایا تک نہیں کہ میرے بھائی کو گولی لگی ہے ۔۔۔۔اتنے دن وہ ہسپٹل میں رہا۔۔۔۔۔۔مرام نے عذوبہ کو فون کیا تھا اور شکایت کی کہ اتنے تم نے فون کیوں نہیں کیا جس سے۔۔۔۔عذوبہ کے منہ سے ہرمان کو گولی واکے بات نکل گئی ۔۔۔۔۔حلانکہ گھر میں سب نے اسے بتانے سے منع کیا تھا۔۔۔۔۔ڈاکٹر نے اسے سٹریس دینے سے منع کیا ہوا تھا۔۔۔۔.زرا سی بات پر اسکا بلیڈ شوٹ کر جاتا تھا۔۔۔۔۔یہ تو پھر اسکے اکلوتے بھائی کو گولی لگنے والی بات تھی۔۔۔۔۔جب سے اسے نے سنا تھا بس روئے جا رہی تھی وہ تو رات کو ہی آنا چاہتی تھی۔۔۔۔۔لیکن ہادی نے اسے بہلا پھسلا کر روکا تھا کہ صبح صبح نکل جائیں گئے۔۔۔۔۔۔۔۔بیٹا تمہاری طبیعت کی وجہ سے ہم نے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔بھار مءں جائے طبیعت ۔۔۔۔آپ لوگوں کو مجھے بتانا چاہئے تھا یہ کوئی چھوٹی بات نہیں تھی۔۔۔۔۔۔۔۔مرام نے ناہید کی بات کو بیچ میں کاٹ کر تلحی سے بولی۔۔۔۔۔۔۔پنار نے سیڑیاں اترتی سب سب سن رہی تھی۔۔۔۔۔پھر آہستہ سے اسلام کر کے وہاں دادی کے قریب ہی بیٹھی۔۔۔۔۔۔جس کا جوب یادی نے تو خوش اخلاکی سے دیا لیکن مرام نے صرف ہی سر ہلایا۔۔۔۔۔۔بیٹا پیشان مت ہو ٹھیک ہے وہ ۔۔۔۔۔اسد صاحب نے اس کا سر اپنے شانے پر رکھ کر کہا۔۔۔۔۔۔۔۔لیکن مجھے یہ دکھ رہے گا کہ میں اپنے بھائی کی تکلیف کے وقت اس کے پاس نہیں تھی۔۔۔۔۔۔مرام نے شوں شوں کرتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔انکل کون تھے وہ لوگ جنہوں نے ہرمان پر حملہ کروایا تھا۔۔۔۔۔۔۔ہادی نے اسد سے پوچھا۔۔۔۔۔پتا نہیں بیٹا لیکن پولیس کر رہی ہے تفتیش ۔۔۔۔اسد صاحب نے مبہم سا جواب دیا ۔۔۔۔ہمم ۔۔۔ہادی نے ہنکار بھرا۔۔۔۔۔۔۔۔۔”انٹی اسے مجھے دیں ۔۔۔۔پنار نے ناہید کی گود میں بیٹھے احمد کی طرف ہاتھ بڑھاتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔پنار نے ناہید کی گود سے احمد کو لے کر کھڑی ہوئی۔۔۔۔۔۔چائے بنواوں ۔۔۔پنار نے ناہید سے پوچھا۔۔۔۔۔ہاں بیٹا بنوا لو ۔۔۔۔۔مرام ابھی بھی اسد کے شانے پر سر رکھے بیٹھی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔آپی آپ ۔۔۔ہرمان نے سیڑیاں اترتے ہوِے لاونج میں بیٹھی مرام کو دیکھ کر خیرت سے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔مرام تو اسکی آواز سن کر اٹھی۔۔۔۔۔اور بھاگ کر اس کے گلے لگی اونچا اونچا رونے لگی۔۔۔۔۔۔۔۔آپی میں ٹھیک ہوں ۔۔۔۔پلیز بی کوائٹ۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے اس کے آنسو صاف کرتے ہوئے کہا۔۔۔۔تم مجھی زحم دیکھاو اپنا پھر مجھے یقین آئے گا۔۔۔۔۔۔۔مرام نے کندھے سے اسکی شرٹ سرکا کر کہا۔۔۔۔۔۔ ۔کہاں ٹھیک ہو اتنا بڑا زحم آیا ہے ۔۔۔۔۔مرام نے شوں شوں کرتے ہوئے خفگی سے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔مرام یار بس کرو دیکھو ہرمان پریشان ہو رہا ہے۔۔۔۔۔۔۔۔ہادی نے اسے اس سے الگ کرتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔کیسے یو ہرمان اب ۔۔۔۔۔ہادی مرام کو پیچھے کر کے خود اسکے گلے لگا۔۔۔۔۔۔۔ناؤ آیم ویل بھائی۔۔۔۔۔۔ہرمان نے جواباً مدکراتے ہوئے ۔۔۔ہادی سے زیادہ مرام کو تسلی دی ۔۔۔۔۔۔۔۔یہاں چائے رکھ دو ۔۔۔۔۔۔۔۔پنار ٹیبل کی طرف نوری کو اشارا کیا۔۔۔۔۔۔۔احمد کو ہرمان نے پکڑا ۔۔۔۔پنار نے سب کو چائے دی ۔۔۔۔۔۔کافی بنا لاوں تمہارے لیے ۔۔۔۔۔پنار نے ہرمان سے پوچھا کیونکہ وہ تو چائے پیتا نہیں تھا۔۔۔۔۔۔۔اس لیے کافی کا پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرگز نہیں آپ بیٹھیں پہلے ہی آپ کی طبیعت نہیں ٹھیک ۔۔۔۔۔۔ہرمان نے اسے اپنے پاس والے صوفے پر بٹھاتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔کیا ہوا ہے بیٹا آپ کو ۔۔۔۔۔۔۔اسد نے تشویش سے اس کی طرف دیکھا۔۔۔۔۔۔۔انکل کچھ نہیں بس ہلکا ہلکا سا فلو تھا۔۔۔۔۔۔پنار تو شرمندہ ہوگئی تھی سب کو اپنی طرف متوجہ دیکھ کر۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”

–**–**–
جاری ہے
——
آپکو یہ ناول کیسا لگا؟
کمنٹس میں اپنی رائے سے ضرور آگاہ کریں۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Subscribe For Latest Novels

Signup for Novels and get notified when we publish new Novel for free!




%d bloggers like this: