Mera Ishq Teri Anayat Novel by Faiza Ahmed – Episode 33

0
میرا عشق تیری عنایت از فائزہ احمد – قسط نمبر 33

–**–**–

عمر تم۔۔۔۔ فارغ ہو ۔۔۔۔۔۔۔عالیہ نے عمر کے کمرے میں جھانکتے ہوئے پوچھا۔۔۔۔۔جی فارغ ہی ہوں میں ۔۔۔۔آپ کے مزاجی خداکے مطابق ۔۔۔۔عمر نے منہ بسورتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔عمر ۔۔۔۔عالیہ نے وارننگ دیتے انداز میں کہا۔۔۔۔۔۔اچھا سوری ۔۔۔آئیں کیسے اجازت دی آپ کے مزاجی خدا نے مجھ سے کلام کرنے کی۔۔۔۔۔۔عمر نے خفگی سے کہا۔۔۔۔۔ہاں دے دی اجازت ۔۔۔وہ جو کچھ بھی کرتے ہیں تم دونوں کی بھلائی کے لیے ہی کرتے ہیں۔۔۔۔۔۔۔عالیہ نے اسکے پاس بیٹھ کر اسے سمجھایا۔۔۔۔۔۔۔۔۔اچھا چھوڑو یہ سب۔۔۔۔ مجھے تم سے بہت ضروری بات کرنی ہے ۔۔۔۔عالیہ کہہ کر چپ ہوئی تھی۔۔۔۔عمر نے سوالیہ انداز میں انہیں دیکھا۔۔۔۔۔۔۔عمر میری بات غور سے سننا۔۔۔۔۔۔۔امی سب ٹھیک تو ہے نا۔۔۔۔۔۔۔عمر نے الجھ کر پوچھا۔۔۔۔۔۔۔ہمم ٹھیک ہی ہے سب ۔۔۔۔ نیلم کے بارے میں تمہارا کیا خیال ہے۔۔۔۔۔عالیہ نے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔نیلم کے بارے میں کیا خیال ہو گا. ۔۔۔۔۔۔امی بہن ہے وہ میری ظاہر ہے اچھا ہی خیال ہو گا۔۔۔۔۔۔۔تمہارےڈیڈ چاہتے کہ نیلم اور تمہاری منگنی کر دی جائے ۔۔۔۔۔عالیہ نے بات مکمل کر کے عمر کی طرف دیکھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔جس کا صدمے کے مارے برا حال ہوا تھا۔۔۔۔۔۔۔کچھ لمحوں تک تو وہ بولنے کے قابل نہیں رہا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔امی یہ کیا کہہ رہی ہیں آپ۔۔۔اور ڈیڈ نے ایسا سوچا بھی کیسے۔۔۔۔. عمر نے ایک دم کھڑے ہو کر غصے سے کہا ۔۔۔۔۔۔۔عمر بات کو سمجھو نیلم گھر کی بچی ہے ۔۔۔۔۔۔اور تم نے کبھی نا کبھی تو شادی کرنی ہی ہے تو نیلم سے کیوں نہیں۔۔۔۔عالیہ نے تحمل سے اسے سمجھانے کی کوشش کی ۔۔۔۔۔۔۔”سوری امی میں کسی اور کو پسند کرتا ہوں اور شادی بھی اسی سے ہی کروں گا ورنہ کسی سے نہیں۔۔۔۔۔۔عمر نے مظبوط لیے لہجے میں کہا۔۔۔۔۔کیا۔۔۔۔عالیہ نے خیرت سے کہا۔۔۔۔۔۔۔جی اور پلیز ڈیڈ سے بات کریں ۔۔۔۔۔امی میں ژالے سے ہی شادی کروں گا ادر وائز کسی سے نہیں ڈیٹ اٹس ۔۔۔۔۔عمر کہتا ہوا کمرے سے چلا گیا۔۔۔۔۔۔پیچھے عالیہ ابھی بھی خیرت کا مجسمہ بنی ہوئی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁
آپ یہ ٹاپک دیکھیں کتنامشکل ہے…پنار نے ہرمان سے آج زبردستی بکس کھلوائیں ہوئی تھی۔۔۔۔۔وہ تھا کہ بہانے بناے جا رہا تھا۔۔۔۔۔۔۔بلکل بھی مشکل نہیں ہے ۔۔۔۔بہت ایزی ہے۔۔۔پنار نے ٹاپک کو دیکھتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔ویسے بھی پڑھائی تمہیں کب ایزی لگی ہے ۔۔۔۔۔پنار نے کتاب کے ورق آگے پیچھے کرتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے اسے گھورا اور پھر اس کے ہاتھ سے کتاب چھین کر غور سے دیکھنے لگا۔۔۔۔۔ویسے ایک بات کہوں ۔۔۔۔۔پنار نے اسے دیکھ کر پوچھا۔۔۔۔۔۔ہمم، کہیں ۔۔۔۔۔ہرمان نے نظریں کتاب پر جماے ہی کہا۔۔۔۔۔۔۔”رمیز پڑھائی میں بہت اچھا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔ہمیشہ ٹاپ کرتا تھا۔۔۔۔۔۔ایک دو بار تو میں نے بھی ایک آدھ بار پڑھا ہے اس سے۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے ہاتھ ہتھوڑی پر ٹکاے ہوِے سیریس انداز میں ہرمان کو دیکھتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔جس کا چہرہ اس کی بات سن کر ۔۔۔۔۔لال ہو گیا تھا۔۔۔۔۔۔۔اور ایک جھٹکے سے پنار کو دیکھا۔۔۔۔۔پنار نے اس کے ایکسپریشن نوٹ کرتے ہوئے مسکراہٹ دبائی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کہاں جارہے ہو ۔۔۔۔۔پنار نے اس ایکدم بیڈ سے اٹھتے اور کمرےسے جاتا دیکھ کر خیرت سے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔جہنم میں۔۔۔۔۔۔۔ہرمان کہہ کر باہر چلا گیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہائے اللہ اتنا غصہ ۔۔۔۔۔۔پنار نے مسکراتے ہوئے کہا۔ ۔۔۔۔۔اور پھر ہرمان کا سرخ چہرہ سوچ کر کھلکھلا کر ہنس دی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”یہ تم اس وقت کہاں جارہے ہو ۔۔۔۔۔۔ناہید نے اسے مین گیٹ کی طرف جاتے دیکھ کر کہا۔۔۔۔۔۔۔بھار میں۔۔۔۔۔۔۔ہرمان کہہ کر تیز تیز قدموں سے گھر کی دہلیز پار کر گیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اس لڑکے کے بھی کچھ سمجھ نہیں آتی ۔۔۔۔کب کیا کر دے ۔۔۔۔۔۔۔۔ناہید نے افسوس سے کہتے دادی کے کمرے کی طرف بڑھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
انٹی میں پنار آپا کو لینے آیا ہوں ۔۔۔۔۔شادی کے دن نزدیک ہیں ۔۔۔۔۔اس لیے امی چاہ رہی تھی کہ آپا کچھ دن پہلے ہی آجائیں تو تیاریاں میں مدد مل جائے گئی ۔۔۔۔گھر میں دو دو شادیاں ہیں تو بہت سارے کام پینڈنگ میں ہیں۔۔۔۔۔رومان نے چائے کا کپ پنار کے ہاتھ سے پکڑتے ہوئے ناہید اور دادی کو پنار کے لے جانے کی وجہ بتائی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”ہاں بیٹا ایسے وقت میں تو بہت سے کام نکل آتے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔ہمیں بلا کیا اعتراض ہو گا ۔۔۔۔پنار اس گھر کی بیٹی ہے ۔۔۔جب چاہے جائے اور جب چاہے آئے۔۔۔۔۔۔۔دادی نے رومان کو پنار کو لیے جانے کی اجازت دے دی۔۔۔۔۔۔۔۔ہاں بیٹا ۔۔۔۔۔پنار جب تک چاہے وہاں رہ سکتی ہے۔۔۔۔۔۔۔ناہید نے رومان کو مسکراتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔انہیں تو وہ اس حادثے کے بعد سے ہی بہت اچھا لگنے لگا تھا۔۔۔۔کہ یہ نا ہوتا تو پتا نہیں ان کے بیٹا کب تک وہاں ایسی خالت میں پڑھا رہتا۔۔۔۔۔۔اس لیے وہ اس کی احسان مند تھیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔آپا تیاری کر لیں پھر آپ ۔۔۔۔رومان نے چائے کا کپ رکھتے ہوئے پنار سے کہا۔۔۔۔۔۔۔جو تزبزب کا شکار تھی۔۔۔۔۔۔۔۔رومان وہ ہرمان تو گھر پر نہیں ہے۔۔۔۔اور فون بھی اسکا بند ہے ۔۔۔۔تو میں کل آجاوں گئی۔۔۔۔۔پنار نے ہچکچاتے یوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔دادی مسکرائی تھی انہیں ایسی ہی سمجھ داری کی امید تھی اس سے۔۔۔۔۔۔۔۔۔اوکے آپا جیسے آپ کو ٹھیک لگے ۔۔۔۔۔۔لیکن کل پکا آجا ئیے گا۔۔۔۔رومان نے اٹھتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے مسکراتے ہوئے سر ہلایا۔۔۔۔۔۔ارے بیٹا بیٹھو کھانا بس لگنے ہی والا ہے ۔۔۔۔۔ناہید نے اسے کھانے پر روکنے کی کوشش کی ۔۔۔۔۔نہیں آنٹی کھانا میں پھر کبھی کھاوں گا۔۔۔۔۔۔ابھی لیٹ ہو رہا ہوں ۔۔۔۔۔رومان نے ان دونوں کے اگے سر جھکاتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔اور پھر کو سینے سے لگا کر اس کا سر چوما ۔۔۔۔۔اور پھر چلا گیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔بیٹا یہ ہرمان ابھی تک نہیں آیا۔۔۔۔۔۔۔دادی نے پریشانی سے اس سے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔دادی بھائی نے میسج کیا ہے کہ وہ عمر اور حارث بھائی کے ساتھ ہیں انہیں آنے میں دیر ہو جائے گئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”عذوبہ نے لاونج میں آتے ہوئے ہرمان کا پیغام دیا ۔۔۔۔۔ارے اس لڑکے کو تو بلکل پروا نہیں اپنی ۔۔۔۔۔دادی نے افسوس سے سر ہلاتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔”پنار نے برا سا منہ بنایا۔۔۔۔۔تم آو زرا بتاتی ہوں میں تمہیں ۔۔۔۔۔۔پنار نے اسے غائبانہ گھورتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔اور کھانا لگوانے کچن کی طرف چلی گئی۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁
آج تجھے ہم جیسے چھڑے چھاند لوگوں کی کیسے یاد آگئی۔۔۔۔۔۔۔عمر نے اس کے اس طرح رات کے وقت بلانے پر طنز کرتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہمم میں نے سوچا آج تم جیسے لوگوں کو بھی تھوڑا وقت دے دیتا ہوں کیا یاد کرو گٙے ۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے سنجیدہ انداز میں کہا۔۔۔۔۔۔۔۔”کیا بات ہے آج شکل مبارک پر تیرہ کیوں بج رہے ہیں ۔۔۔۔۔حارث نے اسے غور سے دیکھتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔تیرہ چودہ بجے میرے دشمنوں کے چہرے پر ۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے اب دونوں کو گھورتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔یہ کتنا سگریٹ ہے تیرا۔۔۔۔۔۔۔۔عمر نے اسے مسلسل سموکنگ کرتے دیکھ کر پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔ساتواں ۔۔۔۔۔ہرمان نے لاپرواہی سے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔کیاااا ! ارے چھوڑ اسے کیوں اپنے ساتھ ساتھ ہمیں بھی پھنسانے کا اردہ ہے۔۔۔۔۔۔عمر نے بوکھلاتے ہوئے اس کے ہاتھ سے چھیننے کی کوشش کرتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔شٹ اپ ۔۔۔اور اپنی جگہ پر بیٹھو۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے ہاتھ پیچھے کرتے ہوئے اسے ڈانٹا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔کیوں پی رہا ہے اور اگر بھابھی کو پتا لگ گیا تو ۔۔۔۔۔۔۔حارث نے پانی کا گلاس پکڑتے ہوئے اس سے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔ایسے ہی ۔۔۔ اور کسی کو آج تک پتا لگا ہے جو اب لگے کا۔۔۔۔۔۔ہرمان نے لاپرواہی سے سموکنگ کرتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔کیا بات ہے۔۔۔۔۔عمر نے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔مجھے ٹاپ کرنا یے ۔۔۔۔۔۔ہرمان نے دونوں کو دیکھتے ہوئے سنجیدہ موڈ میں کہتے ہوئے ان دونوں کے چھکے چھرائے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کیاااا دونوں نے ایک ساتھ کہا۔۔۔۔۔۔ہاں ۔۔۔۔۔۔ہرمان نے مبہم سا کہا۔۔۔۔۔۔۔لیکن ٹاپ اور توں ۔۔۔۔۔۔یہ دونوں متضاد چیزیں ہیں ۔۔۔۔۔۔۔عمر نے اسے اسکی نالائقی یاد کروائی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔If I said that I have to type, then I have to finish ……….ہرمان نےدونوں کو گھورتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔عمر اور حارث نے ایک دوسرے کو دیکھ کر پریشانی سے سر ہلایا۔۔۔۔۔۔۔۔کہ اس سر پھرے کو اب کون سمجھائے کہ ٹاپ
کرنے کے لیے پڑھنا پڑتا ہے ۔۔۔کہنے سے ٹاپ نہیں کر لیا جاتا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁
پنار رات کو ہرمان کا انتظار کرتے کرتے سو گئی تھی۔۔۔۔۔۔۔لیکن صبح جب آنکھ اسکی کھلی تو خود کو ہرمان کی بازو میں قید ہوئے پایا ۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے چونک کر اپنے ارد گرد اس کا حصار دیکھا۔۔۔۔۔۔اور پھر خفگی ۔۔۔۔۔سے اس کے مصوم چہرے کو دیکھا۔۔۔۔۔ہرمان نیند میں پوری طرح گھم پنار کے کندھے میں منہ چھپائے سو رہا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار اس کا سر پیچھے کرنے کی کوشش کی لیکن ناکام ثابت ہوئی۔۔۔۔۔۔۔۔پیچھے ہٹو۔۔۔۔۔پنار نے اسے پیچھے کرتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کیوں ۔۔۔۔۔ہرمان نیند میں ہی بڑبرایا۔۔۔۔۔۔۔۔اف پتا نہیں اسے میری پونی سے کیا مسلہ ہے ۔۔۔۔۔۔میں رات کو لگا کر سوتی ہوں اور یہ جناب پتا نہیں کب نکال دیتے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔رات کو اتنے لیٹ کیوں آئے۔۔۔۔۔۔۔۔مجھ سے ناراض تھے ۔۔۔۔۔۔پنار نے آہستہ سے اسکی پیشانی سے بال پیچھے کرتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔آپ سے ناراض کیسے ہو سکتا ہوں میں ۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے آہستہ سے کہتے ہوئے پنار کی آنکھوں پر لب رکھ کر وہی آنکھیں بند کر لی ۔۔۔۔۔۔۔۔اچھا تو پھر میرا فون کیوں نہیں اٹھا رہے تھے۔۔۔۔۔۔۔پنار نے بھی اپنی بازو اس کے گرد حمائل کرتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔ایسے ہی ہرمان نے نیند میں دوبارہ جاتے ہوئے آہستہ سے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔رومان آیا تھا رات کو ۔۔۔۔ہمم ۔۔۔۔ہرمان صرف اتنا ہی کہا۔۔۔۔۔پنار نے اسے گھورا ۔۔۔۔۔۔مجھے لینے آیا تھا وہ ایک ہفتے کے لیے۔۔۔۔۔۔پنار نے اسکی ناک کھینچتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔تو منع کر دیتی نا۔۔۔۔۔۔۔کیوں منع کر دیتی میں پنار نے اٹھتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اچھا میں فریش ہو کرکچن میں جارہی ہوں ۔۔۔۔۔۔۔۔تب تک تم کالج کے لیے ریڈی ہو جانا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے بالوں کی پونی کرتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اف یہ جو آپ اتنی ٹائٹ پونی کرتی ہیں نا تو قسم سے میرے سر میں درد ہونا شروع ہو جاتا ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔اچھا پونی میں ٹائٹ کرتی ہوں اور سر تمہارا درد کرنا شروع کر دیتا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے آئی بروز اٹھاتے ہوئے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔آپ کا سر بھی تو میرا ہی ہوا نا ۔۔۔۔۔۔ہرمان نے بند آنکھوں سے ہی اسکے سر پر ہونٹ رکھتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔پنار مسکرائی۔۔۔۔۔۔اور واش روم چلی گئی فریش ہونے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁

پنار کھانا ٹیبل پر لگا رہی تھی جب ہرمان یونفارم میں نک سک سا تیار نیچے اترا۔۔۔۔۔۔۔۔ڈیڈ مجھے آپ سے ضروری بات کرنی ہے ۔۔۔۔۔ہرمان نے کھڑے کھڑے ہی کہا۔۔۔۔۔۔۔۔ہاں کہو ۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے پنار کی طرف دیکھا جو اسی کی طرف ہی متوجہ تھی۔۔۔۔۔۔ڈیڈ میں لنڈن جانا چاہتا ہوں ۔۔۔۔۔۔۔۔ہممم کتنے دن کے لیے۔۔۔۔۔اسد نے کانٹے سے فرائی ایگ منہ میں رکھتے ہوئے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔جبکہ پنار اب خیرت سے اسے دیکھ رہی تھی۔۔۔۔۔۔دیکھ تو ناہید بھی رہی تھی لیکن وہ خیرت سے نہیں دیکھ رہی تھی۔۔۔۔۔۔کیونکہ وہ پہلے بھی اچانک ہی پلین بنا لیتا تھا باہر کے ویزٹ کا۔۔۔۔۔ ۔۔۔ویزٹ کیلیے نہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان ٹھہرا اور پنار کو دیکھ کر کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔میں ہائر سٹڈی کے لیے جانا چاہتا ہوں دو سال کیلئے ۔۔۔۔۔۔میں نے داخلے کے لیے اپلائی کر دیا ہے۔۔۔۔۔۔۔

پنار کے ہاتھ سے پلیٹ چھوٹتے چھوٹتے بچی تھی۔ ۔۔۔۔۔پنار خیرت سے ہرمان کی طرف دیکھ رہی تھی۔ ۔۔۔۔جو اسے دیکھنے سے گریز کر رہا تھا۔ ۔۔۔کیا مطلب ہے تمہارا ۔۔۔۔۔۔۔اسد صاحب نے بھی کھانا چھوڑ خیرت سے ہرمان سے پوچھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔دادی بھی منہ پر انگلی رکھے ہرمان کے سنجیدہ چہرے کی طرف تو دیکھ رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ڈیڈ میں نے اپنی بات کہہ دی ہے کہ مجھے لندن جانا ہے Further study کے لیے ۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان کہہ کر لمبے لمبے ڈگ بڑھتا چلا گیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔پیچھے سب ایک دوسرے کے چہرے کی طرف دیکھ کر تہ گئے تھے ۔۔۔۔۔۔جانتے تھے اس نے ایک بار فیصلہ کر لیا تو پھر کون ہے جو اسے اس کے فیصلے سے ہٹا سکے ۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
یہ کیا ہو گیا ہرمان کو ۔۔۔۔۔ وہ ایسے کیسے کہہ سکتا ہے۔۔۔۔۔۔پنار بڑبراتے ہوئے کبھی بیڈ پر بیٹھتی اور کبھی کھڑے ہو کر چکر لگانا شروع کر دیتی ۔۔۔۔۔۔۔۔”اف اس لڑکے کا میں کیا کروں ۔۔۔۔پنار نے جھنجھلاتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور پھر غصے سے اس کا نمبر ڈائل کیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔کہاں ہو تم ۔۔۔۔۔اس کے ہیلو بولنے پر وہ پھنکاری تھی۔۔۔۔۔۔۔اف یار اتنا غصہ ۔۔۔۔۔ہرمان نے مسکراتے ہوئے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔گھر آو۔۔۔۔۔پنار نے تحکم سے کہہ کر فون بند کر دیا ۔۔۔۔۔اور پھر گھر فون کیا۔۔۔۔۔۔کچھ دیر گھر والوں سے باتیں کی ۔۔۔۔۔اور پھر سے کمرے کے چکر کاٹنا شروع کر دئیے ۔۔۔۔۔۔۔۔”بمشکل پچیس منٹ ہی ہوئے تھے جب ہرمان نے کمرے کا ڈور کھولا تھا۔۔۔۔اور کمرے میں آیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔اس نے مسکراتے ہوئے ایک نظر اپنی شولہ جوالہ بنی بیوی کو دیکھا۔۔۔۔۔۔۔۔پنار اسے دیکھ کر کھڑی ہوئی اور سینے پر بازو باندھ کر اسے دیکھنے لگی۔۔۔۔۔۔۔جو چھوٹے چھوٹے قدموں سے اس کی طرف آرہا تھا۔۔۔۔۔۔۔” آپ ناراض ہیں ۔۔۔۔ہرمان نے آہستہ سے کہا۔۔۔۔۔۔۔تمہیں فرق پڑھتا ہے میری ناراضگی سے۔۔۔۔۔۔پنار نے آئی بروز اٹھاتے ہوئے تلخی سے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔ایک آپ کی ہی تو ناراضگی سے فرق پڑھتا ہے ۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے اپنا سر پنار کے کندھے پر رکھ کر کہا۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے اسے خیرت سے دیکھا ۔۔۔۔۔کیا ہوا ہے ۔۔۔پنار نے پریشانی سے اس کا چہرہ اوپر اٹھاتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔یہ فیصلہ میں نے سوچ سمجھ کر ہی کیا ہے ۔۔۔۔۔مجھ اس فیصلے میں آپ کا ساتھ چاہیئے ۔۔۔۔۔۔پنار نے اس کا چہرہ اپنی ہاتھ کی ہٹھیلیوں میں لے کر اپنے کندھے سے اٹھایا۔۔۔۔۔تم یہاں بھی تو پڑھ سکتے ہو۔۔۔ پنار نے کہا۔۔۔۔۔ہاں لیکن میں Royal Halloway میں پڑھنا چاہتا ہوں ۔۔۔۔۔۔ہرمان نے پنار کو بیڈ پر بٹھا کر خود بھی اس کے نزدیک بیٹھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔پنار نے ہونٹ سکیڑے۔ ۔۔۔۔۔اچھا گیس کریں میں آپ کے لیے کیا لے کر آیا ہوں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے چمکتی آنکھوں سے اس سے پوچھا۔ ۔۔۔۔۔۔پنار نے نا سمجھی سے کندھے اچکائے۔ ۔۔۔۔ہرمان نے ہونٹ کا کونا کاٹتے ہوِے پاکٹ میں ہاتھ ڈالا ۔۔۔۔۔۔اور اندر سے ایک لمبی سی ویلوٹ کی ڈبیا نکالی ۔۔۔۔۔۔پنار تجسس سے اسے دیکھ رہی تھی۔ ۔۔۔۔ہرمان نے ویلویٹ کیس کو کھولا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔اندر نہایت خوبصورت ڈیزائن کی ایک باریک چین تھی۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔جس کے لاکٹ پر بڑے بڑے جلی خروف میں ہرمان کنندہ تھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔واوا۔ ۔۔۔۔۔پنار نے پینڈیٹ دیکھ کر منہ پر ہاتھ رکھا۔ ۔۔۔۔۔اس کا آرڈر پتا ہے میں نے کب دیا تھا جب آپ سے محبت کا احساس پہلی دفعہ ہوا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔کیااا۔ ۔۔پنار نے خیرت سے پوچھا۔ ۔۔۔۔۔ہممم ہرمان نے کہتے ہی چین اس کی گردن کی زینت بنا دی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔یہ چین مجھے آپ کی گردن پر زیادہ اچھی لگی ہے ورنہ پہلے مجھے کچھ خاص نہیں لگی تھی ۔ ۔۔۔۔۔۔۔پنار نے خیرت سے اتنے پیار کرنے والے شوہر کو دیکھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔جس کی محبت کے سامنے اسے اپنا دامن تنگ نظر آنے لگتا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
سوری ڈیڈ میں نے نیلم کو ہمیشہ اپنی بہن ہی مانا ہے ۔۔۔۔۔۔۔میں اسے کبھی اس رشتے سے نہیں دیکھ پاوں گا۔ ۔۔۔۔۔۔۔اور آپ اگر میری شادی اس سے زبردستی کروا بھی دیں تو میں شاید اسے اس کا حق کبھی نا دے پاوں۔ ۔۔۔۔۔۔عمر نے سر جھکاے جواب دیا۔ ۔۔۔۔۔۔ہممم ۔۔۔۔کوئی خاص وجہ۔ ۔۔۔۔خالد نے اسے جانجتی نظروں سے دیکھتے ہوئے پوچھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔عمر نے عالیہ کو دیکھا ۔۔۔۔وہ بھی پریشانی سے اسے ہی دیکھ رہی تھی۔ ۔۔۔۔۔۔اور اسے سر سے بتانے کا کہا۔ ۔۔۔۔جی ڈیڈ ۔۔۔۔۔۔۔۔میں کسی اور کو پسند کرتا ہوں۔ ۔۔۔۔۔۔لیکن اگر نا بھی کرتا تو میں تب بھی نیلم سے شادی نا کرتا کیونکہ میں نے اسے ہمیشہ اپنی چھوٹی بہن کی طرح ٹریٹ کیا ہے۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔عمر نے وضاحت سے کہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔کون ہے وہ لڑکی ۔۔۔۔۔۔خالد نے اس کی بات بس پر یہی کہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔وہ ڈیڈ ہرمان کی بیوی کی بہن ژالے ہے۔ ۔۔۔۔۔۔پر ڈیڈ وہ ایسی ویسی لڑکی نہیں ہے ۔۔۔۔یہ صرف میری طرف سے ہے اسے تو پتا بھی نہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔عمر نے اس کا دفاع کرنا ضروری سمجھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔جا سکتے ہو تم ۔۔۔۔۔۔۔۔۔خالد نے اس جانے کا اشارا کیا۔ ۔۔۔۔اور عمر ایسے بھاگا تھا جیسے وہ اسی خکم کا انتظار کر رہا تھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔”آپ عمر سے ناراض تو نہیں ہیں نا۔ ۔۔۔۔۔عالیہ نے ڈرتے ڈرتے پوچھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔نہیں ۔۔۔۔۔۔۔اور کل ہرمان کے گھر جانے کی تیاری کرو ۔۔۔۔۔۔خالد نے عالیہ کو کہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔عالیہ تو خیرت زدہ سی رہ گئی تھی کہاں کل ۔ ۔ ۔ ۔نیلم سے بات پکی کرنے والے،آج کیسے اتنی جلدی مان گئے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔ ۔۔۔جبکہ خالد کے دماغ میں کل رات کا واقع گھومنے لگا۔ ۔۔۔۔۔۔۔کل رات ان کی اچانک سے آنکھ کھل گئی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔رات کے بارہ بجے ۔۔۔۔۔وہ پانی کی طلب میں کچن کی طرف گئے تھے جب انہوں نے ہلکی ہلکی سرگوشی کی آواز سنی۔ ۔۔۔۔۔یقینناً یہ آواز نیلم کی ہی تھی ۔۔۔۔۔وہ خیرت سے آگے بڑھے جب انہوں نے واضع نیلم کو کسی سے فون پر باتیں کرتے سنا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔جو کہہ رہی تھی۔ ۔۔۔۔۔پلیز حسن تم کیوں پریشان ہوتے ہو ۔۔۔۔جب میں نے کہہ دیا کہ میں صرف تم سے ہی شادی کروں گئی تو بات ختم۔۔۔۔۔۔اور تم فکر نا کرو میرے چاچو میری ہر بات مانتے ہیں ۔۔۔۔۔۔اور اگر نا بھی مانے تو مجھے کسی کی کوئی پروا نہیں ۔۔۔۔۔مجھے اتنا پتا ہے میں تمہارے بنا جی نہیں سکوں گئی۔ ۔۔۔۔۔۔۔بس اس سے زیادہ ان میں اور سن کی سکت نہیں رہی تھی ۔۔۔۔۔۔وہ انہی قدموں واپس پلٹ گئے بنا پانی پیے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔وہ جو زندگی میں کبھی پریشان نہیں ہوئے تھے اس رات انہیں پوری رات پریشانی اور دکھ سے نیند نہیں آئی تھی۔ ۔۔۔۔۔۔۔اور پھر انہوں نے فیصلہ عمر کے حق میں دے دیا جب عالیہ نے کہا کہ عمر اس شادی کے لیے راضی نہیں ہے ۔۔وہ نیلم کو اپنی بہن مانتا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔انہیں اب پہلی فرصت میں نیلم کا کچھ کرنا تھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
ہرمان پلیز کتنی بار امی لوگوں کا فون اچکا ہے ۔۔۔۔۔۔انہیں آج ہی کپڑوں کی شاپنگ کا کام نبٹانا ہے ۔۔۔۔۔۔۔ سب لو گ میرا ویٹ کر رہے ہوں گے۔۔۔۔۔۔۔پنار نے زچ ہو کر کہا جو بار بار اس کے تہہ کیے ہوئے کپڑے بیگ سے نکال کر بیڈ پر ڈھیر کر دیتا تھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔تو آپ شاپنگ پر ان کے ساتھ جائیں ۔۔۔۔۔لیکن پھر شاپنگ سے واپسی پر گھر آجائیے گا۔ ۔۔۔۔۔۔ہرمان نے سمپل سا حل پیش کیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔جی نہیں میں جا رہی ہوں سمجھے تم۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”آپ نہیں جارہی ۔۔۔۔ہرمان نے اس کا رخ اپنی طرف کرتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔”کیا مطلب ہے تمہارا اب میں اپنے بھائی کی شادی پر بھی نا جاوں۔۔۔۔۔۔۔پنار نے کہتے ہوئے دوبارہ کپڑے نکالنے چاہے ۔۔۔۔۔لیکن ہرمان نے اسکی کوشش کو ناکام بناتے ہوئے اس کا رخ دوبارہ اپنی طرف کیا۔۔۔۔تو آپ شادی والے دن چلی جانا۔۔۔۔۔۔۔۔۔”ہرمان نے اس کی کمر میں ہاتھ ڈالتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کیاااااا ،سیریسلی میرے بھائی کی شادی پر میں شادی والے دن جاوں تم پاگل ہو ۔۔۔۔۔میں تو آج ہی جاوں گئی۔۔۔۔ پنار نے بھی ضدی انداز میں کہا۔۔۔۔۔۔اچھا زرا جاکر تو دیکھائیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے پنار کے ہاتھ سے سارے کپڑے لیکر کمرے میں ادھر ادھر پھینک دئیے تھے۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان ۔۔۔۔۔۔پنار نے چیخ سے انداز میں اسکا نام پکارہ اور غصے سے اس کے ماتھے پر بکھڑے بال اپنی مٹھیوں میں جکڑے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے مسکراتے ہوئے دوبارہ اس کھینچ کر اپنے نزدیک کیا اور اس کی ناک سے اپنی ناک مس کی۔۔۔۔۔۔۔۔ہم دونوں شادی والے دن جائے گئے کھانا وغیرہ کھائیں گے پک بنائیں گے اور پھر رات کو گھر واپس ۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے مسکراتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔ہرمان سے سیدھی بات کی توقع نہیں کی جاسکتی تھی۔۔۔۔۔۔۔پنار کا تو صدمے کے مارے منہ ہی کھل گیا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁
ہائمہ یہ تم پر زیادہ اچھا لگے گا۔۔۔۔۔۔پنار نے ریڈ لہنگا۔۔۔۔ہائمہ کے ساتھ لگا کر کہا۔۔۔۔۔۔واوا کتنی پریٹی لگ رہی ہو تم اس میں ژالے نے لہنگے کے ساتھ کی چنڑی اس پر اوڑھ کر بلائیں لیتے ہوئے انداز میں کہا………..ہممم اچھی لگ رہی ہو اس میں تم۔۔۔۔رومان جو فون سن کر آرہا تھا۔۔۔۔۔۔ہائمہ کو برائیڈل ڈوپٹہ اوڑے دیکھ کر ٹھٹھکا ۔۔۔۔۔۔اور پھر اس کے کان کے پاس سرگوشی کی تھی ۔۔۔۔۔جس ژالے اور پنار نے واضع سنا تھا۔۔۔۔۔۔۔پنار اورژالے مسکراہٹ دباتے ہوئے دوسرے ڈریسز کی طرف متوجہ ہو گئیی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہائمہ نے جلدی سے سر پر سے چنڑی کھینچی ۔۔۔۔اور رومان کو سرخ چہرے کے ساتھ دیکھتے ہوئے جلدی سے ڈوپٹہ ژالے کو تھمایا۔۔۔۔۔رومان نے مسکراتے ہوئے سر ہلایا اور پھر جینٹس ورائٹی کی طرف متوجہ ہوا ۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے اپنے فون کی طرف دیکھا وہ جب سے گھر رہنے آئی تھی ہرمان نے اسے فون نہیں کیا تھا۔۔۔۔۔۔۔پنار نے منہ بناتے ہوئے ابھی کال کرنے کا سوچ ہی رہی تھی جب ژالے بوکھکلاتی ہوئی اس کے پاس آئی۔۔۔۔۔۔۔وہ وہ آپا باہر وہ لوگ آئے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔پنار نے اس کی اڑی رنگت دیکھ کر پریشان ہوئی ۔۔۔۔۔۔کون لوگ ۔۔۔۔۔۔پنار نے پریشانی سے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔وہ آپا ۔۔۔۔۔آپ کے سسرال والے اور ۔۔۔۔۔ژالے کہہ کر چپ ہوئی ۔۔۔۔۔۔اور پنار نے الجھ کر پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔عمر کے گھر والے میرا مطلب ہے ہرمان بھائی کے دوست کے پیرنٹس۔۔۔۔۔۔۔۔ژالے نے بوکھلاتے ہوئے کہہ کر اس کے بیڈ پر بیٹھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہممم ۔۔۔۔پنار نے اسے غور سے دیکھتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔اور پھر سر ہلا کر کمرے سے باہر گیسٹ روم میں چلی گئی ۔۔۔۔۔۔۔۔ السلام عليكم ۔۔۔۔پنار نے کمرے میں داخل ہوتے سب پر سلامتی بھیجی ۔۔۔۔۔وعلیکم اسلام ۔۔۔۔۔۔سب نے جواباً کہا۔۔۔۔۔۔۔۔پنار عمر کے والدین سے مل کر ناہید کے ساتھ بیٹھی۔۔۔۔۔۔۔۔اشعر صاحب ہم آپ کے پاس آج ایک خاص مقصد کے تحت آئے ہیں ۔۔۔۔۔اسد نے بات کا آغاز کیا۔۔۔۔۔اشعر نے بظاہر سر ہلایا ۔۔۔۔۔لیکن اندر سے وہ سحت الجھن محسوس کر رہے تھے ان سب کا اکٹھے بنا بتاے چلے آنا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔بات یہ ہے کہ ہم اپنے بیٹے عمر کے لیے آپ کی بیٹی ژالے کا ہاتھ ماگنے آئے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔ہم جانتے ہیں وہ ابھی پڑھ رہی ہے ۔۔۔۔۔۔لیکن ہمارا بیٹا بھی ابھی کالج میں ہی ہے ۔۔۔۔۔۔لیکن صرف ہم ابھی منگنی وغیرہ کرنا چاہتے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔اشعر نے خیرانی سے یاسر کو دیکھا وہ بھی تعجب سے اشعر کی ہی طرف متوجہ تھے ۔۔۔۔۔۔۔دیکھیں ہمیں آپ کی بیٹی بہت پیاری لگی تھی ۔۔۔۔۔۔اس لیے میں چایتی ہوں کہ صرف بات ہی پکی کردیں ۔۔۔۔۔۔۔آگے جیسے آپ کی مرضی۔۔۔۔۔۔۔۔اس بار عالیہ نے سبھاو سے بات کی۔۔۔۔۔۔۔۔۔” اشعر عمر کی میں گڑنٹی دیتا ہوں بہت ہی پیارا بچہ ہے ۔۔۔۔۔اسد نے بھی بات میں حصہ لیا۔۔۔۔۔۔اشعر نے سر ہلایا۔۔۔۔۔۔اور ہنکارے ۔۔۔۔۔دیکھیں ژالے سے پوچھ کر ہی ہم کوئی فیصلہ کریں گئے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔زندگی جب بچوں نے گزارنی ہے تو ہمیں اپنی مرضی ان پر تھوپنی نہیں چاہئے ۔۔۔۔۔۔۔اس لیےژالے سے پوچھ کر ہی ہم اس فیصلے کو آگے بڑھائیں گے ۔۔۔۔۔۔۔اشعر نے سبھاو سے اپنی بات ان کے آگے رکھی۔۔۔۔۔۔۔ہاں بھائی صاحب آپ ژالے بیٹی سے پوچھ لیں ۔۔۔۔۔۔ہمیں کوئی جلدی نہیں ۔۔۔۔۔۔عالیہ بیگم نے چائے کپ پنار کے ہاتھ سے لیتے ہوئے کہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
چلیں پھر ہم ایک دو دن میں کوئی فیصلہ کر کے بتاتے ہیں آپ کو۔۔۔۔۔۔۔یاسر نے بھی اب کہ دفعہ گفتگو میں حصہ لیا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
پنار کی دو دن سے ہرمان سے بات نہیں ہوئی تھی ۔۔۔۔۔ایک تو وہ بزی تھی بہت ۔۔۔۔۔روز ان کے بازار کے چکر لگ رہے تھے اور وہاں سے وہ رات گے تک لوٹتی ۔۔۔۔کبھی کوئی چیز رہ جاتی تو کبھی کوئی۔ ۔۔۔۔۔۔پنار نے اسے کا فون بھی ملایا تھا ۔۔۔۔۔لیکن جناب نے ناراضگی میں اٹھایا نہیں ۔ ۔۔۔۔۔۔۔پنار آج بہت تھک گئی تھی ۔۔۔۔۔۔۔وہ سارے شاپنگ بیگز صوفے پر ڈھیر کر کے سیدھی اپنے کمرے کی طرف بڑھی ۔۔۔۔وہ اس وقت صرف اور صرف بھر پور نیند لینا چاہتی تھی۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے جیسے ہی کمرے کا دروازہ کھولا وہی ٹھٹھک کر رکی ۔۔۔۔۔۔۔۔پورے بیڈ پر وہ پھیل کر سو رہا تھا جوتوں سمیٹ اور کالج یونیفارم بھی نہیں بدلا تھا۔۔۔۔۔۔۔سارے کمرے میں کشن بکھڑے پڑے تھے کمفرٹر بیڈ سے نیچے گرا پرا تھا۔ ۔۔۔۔پنار کو پہلی بار بکھڑا کمرہ دیکھ کر غصہ نہیں آیا تھا۔ ۔۔۔۔۔۔بلکہ وہ مسکرائی تھی۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔یااللہ میں تو اس کو سدھارنے چلی تھی ۔۔۔۔۔۔لیکن اس نے تو مجھے ہی اپنے جیسا بنا دیا ہے پنار دل ہی دل میں اللہ سے ہمکلام ہوئی۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔اور آہستہ سے چلتی اس تک آئی ۔ ۔۔۔۔دھیرے سے اس کے پاوں کو جوتوں کی قید سے آزاد کیا ۔۔۔۔۔اور پھر اس کے پاس بیٹھی اسے تکتی چلی گئی۔ ۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے ایک دم پٹ سے آبکھیں کھولی ۔۔۔۔۔۔۔اور پنار کی طرف دیکھا جو اسی کی طرف متوجہ تھی۔ ۔۔۔۔۔کیسی ہیں آپ ۔۔۔۔۔ہرمان نے بیک کراون سے ٹیک لگاتے ہوئے پوچھا۔ ۔۔۔۔۔۔تمہیں کیسی لگ رہی ہوں ۔۔۔۔پنار نے ہلکی سی مسکان سے اسے پوچھا۔ ۔۔۔۔مجھے تو آپ کافی خوش لگ رہی ہیں ۔۔۔۔۔ہرمان نے اس کے چمکتے چہرے سے نظریں چراتے یوئے کہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔ہاں خوش تو میں ہوں تمہیں جو دیکھ لیا۔ ۔۔۔۔۔ہرمان نے چونک کر اظہار کرتی اپنی بیوی کو دیکھا۔ ۔۔۔۔۔۔اظہار کرنے میں وہ بالکل بھی کنجوس نہیں تھی۔ ۔۔۔۔۔۔۔تو پھر کیوں آگئی مجھے چھوڑ کر ۔۔۔۔۔۔ہرمان نے اسے اپنے قریب کھینچتے ہوئے پوچھا ۔۔۔۔۔۔ یہاں آنا بھی تو ضروری تھا نا۔ ۔۔۔پنار نے مدھم آواز میں کہا۔ ۔۔۔۔تبھی دروازے پر دستک ہوئی ۔۔۔۔۔۔پنار جلدی سے سیدھی ہوئی۔ ۔۔۔۔۔اور اندر آنے کی اجازت دی ۔۔۔۔۔۔آپا امی آپ اور ہرمان بھائی کو کھانے پر بلا رہی ہیں جلدی سے آجائیں ۔۔۔۔۔ژالے وہی سے کہہ کر پلٹ گئی ۔۔۔۔۔۔۔۔تم کالج سے سیدھے یہی آ گے تھے ۔۔۔پنار نے اسے ہنوز یونفارم میں دیکھ کر پوچھا۔ ۔۔۔۔۔ہرمان نے فقط سر ہلایا ۔۔۔۔۔اور واش روم کی طرف بڑھ گیا۔ ۔۔۔۔۔پنار نےگھور کر اس کی پشت دیکھی جو کب سے اسے ایٹیٹوڈ دیکھا رہا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔”ہرمان تھوڑی دیر بعد منہ دھو کر باہر نکلا ۔۔۔۔۔پنار نے اسے ٹاول دینا چاہا ۔۔۔۔۔۔لیکن اس نے اس کے ٹاول دیتے ہاتھ کو اگنور کر کے اس کے گلے میں پڑے ڈوپٹے کا ایک کونا پکڑا اور اپنے منہ اس سے خشک کرنے لگا۔۔۔۔۔پنار نے مسکراتی نظروں سے اپنے ناراض سے شوہر کو دیکھا۔۔۔۔۔۔۔اور پھر اس کا بازو کھینچا ۔۔۔۔۔ہرمان نے اس کی طرف سنجیدہ نظروں سے دیکھا۔۔۔۔۔پنار نے جھک کر اس کی ناک دبائی ۔۔۔۔۔۔۔۔آپ میرے ساتھ چل رہی ہیں یا نہیں ۔۔۔۔۔۔پنار جو مسکرا رہی تھی اس کی بات پر اسے سنجیدگی سے دیکھا۔۔۔۔۔۔شادی میں چار دن رہ گئے ہے میں کیسے چل سکتی ہوں تمہارے ساتھ ۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے خیرت سے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔Are you going with me or not ………..ہرمان نے سنجیدگی سے پُر لہجے میں کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے بے چارگی سے اس ڈیٹھ انسان کو دیکھا۔۔۔۔۔۔دیکھو تم ۔۔۔۔۔۔۔Answer yes or no ……ہرمان نے اسکی بات کو بیچ میں ہی کاٹ کر کہا۔۔۔۔۔۔پنار نے بے بسی سے سر نہ میں ہلایا۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے اسے سنجیدگی سے دیکھا۔۔۔۔۔۔ اور پھر جھک کر اس کی ٹائٹ پونی ڈھیلی کی ۔۔۔۔۔اور پھر ایک دم پلٹ کر چلا گیا ۔۔۔۔۔۔پنار اس کی پشت کو خیرت کی زیادتی سے صرف دیکھ کر رہ گئی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
ژالے کے ہاں کہنے پر ۔۔۔۔۔اور عمر کے بارے میں چھان بین کرنے کے بعد عمر کے گھر والوں کو ہاں میں جواب دے دیا گیا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔اشعر نے ان کوگوں کو سادگی سے منگنی کرنے کی اجازت دی ۔۔۔۔۔۔۔عمر کے گھر والے اور ہرمان کے گھر والے آئے تھے صرف منگنی میں زیادہ لوگوں کو نہیں بلایا تھا۔ ۔۔۔۔۔پنار نے ہرمان کو دیکھا جو عمر کے ساتھ بیٹھا پتا نہیں کونسی باتیں کر رہا تھا کہ اسکی طرف دیکھ ہی نہیں رہا تھا۔ ۔۔۔۔۔۔پنار نے گلابی شرارہ پہن رکھا تھا ۔۔۔بالوں کو کرل کر کے چھوٹے سے کیچر میں انہیں جکڑا ہوا تھا ۔۔۔۔۔۔ہلکی سے پنک کلر کی لپسٹک لگائے وہ پہلے سے یونیک سی لگ رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔لیکن کیا فائدہ ہرمان نے تو اسے دیکھا تک نہیں تھا ۔۔۔۔۔پنار نے منہ بسورا ۔۔۔۔۔۔۔عمر نے ژالے کو رنگ پہنائی ۔۔۔۔۔۔جبکہ عمر کو اشعر نے رنگ پہنائی تھی۔ ۔۔۔۔۔سب نے مسکراتے ہوئے ایک دوسرے کا منہ میٹھا کروایا۔ ۔۔۔۔۔۔بہت پیاری لگ رہی ہو ۔۔۔۔عمر نے سامنے دیکھتے ہوئے آہستہ سے سر گوشی کی ۔۔۔۔۔ژالے نے جواباً سر ہلا کر اپنی تعریف وصول کی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان بھائی آپ کیوں اداس کھڑے ہیں ۔۔۔۔۔۔نیلم نے اسے سنجیدہ سی صورت لیے کھڑا دیکھا تو پوچھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔میں کب اداس ہوں ۔۔۔۔ہرمان نے اسے گھور کر پوچھا۔ ۔۔۔۔۔اچھا مجھے لگا کہ آپ اداس ہیں ۔۔۔۔۔کیونکہ آپ کہاں اتنی دیر چپ ری سکتے ہیں ۔۔۔۔۔نیلم نے مسکراتے ہوئے کہا۔ ۔۔۔۔۔تمہاری طرح پاگل تھوڑی ہوں جو ہر وقت پٹ پٹ کرتا رہوں ۔۔۔۔۔ہرمان نے مسکراتے ہوئے اسے چھیڑا۔ ۔۔۔۔اچھا میں کوئی مرغی ہوں جو پٹ پٹ کروں گئی۔ ۔۔۔۔۔نیلم نے خفگی سے کہتے ہوئے اس کے بازو کو جکڑا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔پنار اس سے زیادہ برداشت نہیں کر سکتی تھی ۔۔۔۔۔۔اس لیے غصے سے اس کی طرف بڑھی ۔۔۔۔۔جس نے ابھی تک اپنی بیوی کو تو دیکھا نہیں تھا۔۔۔۔۔۔لیکن پرائی عورتوں سے کیسے ہنس ہنس کر باتیں کر رہا تھا ۔۔۔۔۔پنار نے غصے سے سوچا ۔۔۔۔۔۔ایکسیوزمی ۔۔۔۔۔پنار نے ان کے پاس آکر کہا ۔۔۔۔۔۔مجھے زرا ہرمان سے کام ہے ۔۔۔۔۔پنار نے مصنوعی مسکراہٹ سے نیلم کو کہا ۔۔۔۔اور پھر اس کا بازو پکڑ کر سائیڈ والے کونے میں لائی ۔۔۔۔۔۔۔جو مسکراتی نظروں سے اس کے سرخ چہرے کو دیکھ رہا تھا۔۔۔۔۔۔شرم تو نہیں آتی تمہیں ۔۔۔۔۔۔۔یوں اپنی بیوی کو چھوڑ دوسروں سے اٹھکیلیاں کرتے ہوئے ۔۔۔۔۔اور مجھے ایک نظر دیکھا تک نہیں ۔۔۔۔۔۔پنار نے غصے سے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کس نے کہا میں نے آپ کو نہیں دیکھا ۔۔۔۔۔میری نظروں نے تو صرف آپ کو فقط دیکھا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے جینز کی پاکٹ میں ہاتھ گھساتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔جھوٹ مت بولو ۔۔۔۔۔پنار نے خفگی سے کہا۔۔۔۔۔۔۔آپ کی مرضی ہے ماننا یا نا ماننا۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے لاپرواہی سے کہتے ہوئے اسے گہری نظروں سے دیکھا۔۔۔۔۔۔پنار اس کی نظروں سے گھبرائی.۔۔۔۔۔۔۔آپ آج بھی میرے ساتھ چلیں گئی یا نہیں ۔۔۔۔۔ہرمان نے اس کے کندھوں کو تھامتے یوئے پوچھا۔۔۔۔۔۔جبکہ پنار نے جلدی سے ہاں میں سر ہلایا تھا۔۔۔۔۔ہرمان دل سے مسکرایا تھا۔۔۔۔۔ اسے اپنی بات منوانا آتی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔

–**–**–
جاری ہے
——
آپکو یہ ناول کیسا لگا؟
کمنٹس میں اپنی رائے سے ضرور آگاہ کریں۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Subscribe For Latest Novels

Signup for Novels and get notified when we publish new Novel for free!




%d bloggers like this: