Mera Ishq Teri Anayat Novel by Faiza Ahmed – Episode 34

0
میرا عشق تیری عنایت از فائزہ احمد – قسط نمبر 34

–**–**–

آپا آپ جارہی ہیں، شادی میں دن ہی کتنے رہ گئے ہیں جو آپ جارہی ہیں ۔۔۔۔۔ژالے نے منہ بسورتے ہوئے کہا۔ ۔۔۔۔۔پنار بیگ پیک کرتی مسکرائی۔ ۔۔۔۔۔ارے تو پرسوں مہندی ہے میں پھر آجاوں گئی۔ ۔۔۔پنار نے کہتے ہوئے اس کے گال کھینچے ۔۔۔۔آپا ۔۔۔۔۔ژالے نے اسے پیچھے سے ہگ کرتے ہوئے کہا۔ ۔۔۔۔۔آپا آپ کے ہوتے مجھے کتنا ریلیف ہوتا ہے ۔۔۔۔۔اور مجھے کوئی کام بھی نہیں کرنا پڑتا۔ ۔۔۔ژالے نے اپنا دکھڑا رویا۔ ۔۔۔۔شرم کرو ژالے آپا کبھی کبھی آتی ہیں اور تم ان کے آتے ہی اپنے گنے چنے کاموں سے بھی ہاتھ کھینچ کر بیٹھ جاتی ہو ۔۔۔۔۔۔۔ ہائمہ نے اس کے کندھے پر تھپڑ مارتے ہوئے کہا۔ ۔۔۔پنار مسکرائی۔۔۔۔۔۔ہائمہ کی بچی جاو اپنے روم میں شرم تو نہیں آتی سارا گھر دھندناتے ہوئے ۔۔۔۔شادی کو دن ہی کتنے رہ گئے ہیں ۔۔۔۔۔۔روپ تمہیں کیا خاک آئے گا ۔۔۔۔سارا دن بھائی کے سامنے گھومتی رہتی ہو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ژالے نے اس کی طرف پلٹ کر اگلے پچھلے سارے حساب بے باک کیے۔ ۔۔۔۔۔۔تم نا۔ ۔۔۔۔اچھا اچھا اب دونوں لڑنے نا بیٹھ جانا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے دونوں کو ٹوکتے ہوئے کہا۔ ۔۔۔۔۔اور ژالے تمیز سے بات کیا کرو ہائمہ سے ۔۔۔۔۔پنار نے ژالے کو ٹوکتے ہوئے کہا۔ ۔۔۔۔۔۔جس کا منہ پھول گیا تھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔”اچھا اب منہ نا بناو ۔۔۔۔۔پنار نے دونوں کے گلے لگتے ہوئے ژالے کو کہا۔ ۔۔۔۔۔۔اور بیگ پکڑ کر باہر چلی گئی۔ ۔۔وہ دونوں بھی پیچھے لپکی ۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁
آج ہائمہ اور رومان کی مہندی تھی ۔۔۔۔۔۔۔اور کل رائمہ اور رمیز کی ۔۔۔۔۔گھر میں ہر طرف شور مچا ہوا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔پنار بھی تین بجے تک پہنچ گئی تھی ۔۔۔۔۔۔ہرمان خود کسی ضروری کام کا کہہ کر چلا گیا تھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔پنار نے چہرہ پر ماسک لگایا ہوا تھا۔ ۔۔۔۔۔جب ہرمان ہاتھ میں کچھ پکڑے روم میں آیا تھا۔ ۔۔۔۔،۔۔۔پنار نے بلیک ماسک لگایا ہوا تھا۔ ۔۔۔ہرمان کو دیکھ کر وہ جزبز سی ہوگئی تھی۔ ۔۔۔۔۔جلدی سے چپل پہن کر وہ واش روم کی طرف بڑھنے ہی لگی تھی جب ہرمان نے سرعت سے اس کے سامنے آیا تھا۔ ۔۔۔۔۔اور ہونٹ بھینچ کر مسکراہٹ روکی تھی۔ ۔۔۔۔۔۔۔ہنس لو ۔۔۔۔۔مجھے معلوم ہے چڑیل لگ رہی ہوں میں ۔۔۔۔۔۔پنار نے آئنہ میں چہرہ دیکھتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔اور ایک نظر ہرمان کے سفید چمکتے ہوئے چہرے کو دیکھ کر اس نے اس کی طرف پشت کی تھی۔ ۔۔۔۔۔۔آپ کو کیا ضرورت ہے ان سب چیزوں کی ۔۔۔۔آپ سادگی میں نجھے زیادہ پیاری لگتی ہیں ۔۔۔۔۔ ہرمان نے اس کا چہرہ اپنی طرف کرتے ہوئے کہا۔ ۔۔۔۔۔میں کہاں لگا رہی تھی ژالے نے زبردستیکر پکڑ لگا دیا ۔۔۔۔پنار نے جیسے اپنی صفائی پیش کی تھی۔ ۔۔۔۔اچھا میری طرف تو دیکھیں ۔۔۔۔ہرمان نے اسے مسلسل نظریں چڑاتے دیکھ کر کہا۔ ۔۔۔۔۔۔تمہارے سامنے تو میں کالی چڑیل لگ رہی ہوں گئی ۔۔۔۔۔۔پنار نے اپنا آپ چھڑانے کی کوشش کرتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔”ہاہاہا۔ ۔۔۔۔بلکل بھی نہیں ۔۔۔ہاں ،اور خبردار جو آپ نے میری بیوی کو بار بار اس لقب سے پکارا تو۔۔۔۔۔۔”ہرمان نے اسکی پیشانی پر اپنے ہونٹ رکھتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔پنار نے مسکراتے ہوئے اسے دیکھا اور پھر بے ساختہ اسکے سینے سے لگی تھی۔ ۔۔۔۔۔”ہرمان نے بھی مسکراتے ہوئے اس کے گرد اپنے بازو کسے تھے۔ ۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁
میں ٹھیک تو لگ رہی ہوں نا۔ ۔۔۔۔۔ہائمہ نے مرر کے سامنے کھڑے ہو کر ژالے سے نروس سے انداز میں پوچھا۔۔۔۔۔۔ جو کانوں میں بالیاں پہن رہی تھی ۔۔۔۔۔ہائمہ کی بات پر اسکی طرف دیکھا ۔۔۔۔۔وائٹ لہنگے چولی اور پیلا ڈوپٹہ لیے بالوں کی چوٹیاں بنا کر آگے کی طرف ڈالی ہوئی تھی۔ ۔۔۔۔۔کان اور گلے میں کوئی زیور نہیں پہنا ہوا تھا ہاں صرف دونوں ہاتھوں میں بڑھ بڑھ کر چوڑیاں ڈالی ہوئی تھی وہ سوالیہ نظروں سے ژالے کو تکتی بہت خوبصورت لگ رہی تھی۔۔۔۔۔۔ہمم ، بہت خوبصورت لگ رہی ہو قسم سے ۔۔۔۔۔۔ژالے نے اس کے گلے لگتے ہوئے کہا۔ ۔۔۔۔ساری لڑکیوں نے وائٹ لہنگا چولی ۔۔۔۔اور ریڈ ڈوپٹے لیے ہوئے تھے ۔۔۔۔۔۔پنار ژالے اور رائمہ اسے پکڑے سٹیج تک لائی تھی۔۔۔۔۔۔گیندے کے پھولوں سے سجے جولے میں اسے آہستہ سے بٹھایا تھا۔۔۔۔۔۔۔پنار نے اسے بٹھانے کے بعد ہرمان کی تلاش میں نظریں دوڑائی تھی۔۔۔۔لیکن اسے ہرمان کہی نہیں دیکھا۔۔۔۔۔۔پنار نے منہ بسورا ۔۔۔ اور ہائمہ کی طرف متوجہ ہوئی ۔۔۔۔۔۔۔جہاں مہندی والی لڑکی اس کے ہاتھوں میں مہندی لگانا شروع ہوگئی تھی۔۔۔۔۔۔آئے آپا آپ بھی لگوالیں بعد میں ٹائم نہیں ملے گا ۔۔۔۔ہمم، پنار نے ادھر ادھر نظریں دڑاتے ہوئے غائب دھیانی سے کہا ۔۔۔۔۔۔۔آ بھی جائیں ۔۔۔۔۔الٹے ہاتھوں میں لگوالیں ۔۔۔۔۔۔پنار نے سر ہلا کر ہاتھ مہندی والی کی طرف بڑھایا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہائے اللہ کتنا ہینڈسم لڑکا ہے ۔۔۔۔۔ہاں اور پرسنلٹی بھی تو کافی غضب کی ہے ۔۔۔۔۔۔۔پنار مہندی لگوارہی تھی جب اس کے کانوں میں یہ جملے پڑے۔۔۔۔اس نے ان لڑکیوں کی طرف بے دھیانی میں دیکھا۔۔۔۔۔۔۔۔یار قسم سے کاش یہ مجھے مل جائے۔۔۔۔۔۔پہلی لڑکی نے حسرت سے کہا۔۔۔۔۔۔۔پنار نے ان کی نظروں کے تعاقب میں دیکھا تو ۔۔۔۔۔۔تو نظر اس منظر پر تھم سی گئی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔جہاں سے ہرمان بلیک شلوار قمیض میں ملبوس کان میں بلیو توٹھ لگائے کسی سے مسکراتے ہوئے بات کرتا چلا آرہا تھا………بہت جچ رہا تھا اسکی لمبی ہائٹ پر شلوار سوٹ ۔۔۔۔۔۔۔پنار نے ان لڑکیوں کو دیکھا جو ابھی اسے ہی دیکھ رہی تھیں۔۔۔۔۔ایک منٹ میں ابھی آتی ہوں۔۔۔۔۔۔۔پنار مہندی والی سے ہاتھ چھڑا کر کھڑی ہوئی اور ان دونوں لڑکیوں کی طرف بڑھی۔۔۔۔۔۔نامحرم کو اس طرح دیکھ کر اہیں بڑھنا گناہ ہے ۔۔۔۔۔وہ دونوں چونک کر غصے سے اپنی طرف دیکھتی پنار کی طرف متوجہ ہوئیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔جی۔۔۔۔۔ایک نے کہا۔۔۔۔ہاں جی شوہر ہے وہ میرا بہتر ہو گا اپنی نظروں کو اور زبان کو کنٹرول کرنا سیکھیں ۔۔۔۔۔۔یہ آپ کا شوہر ہے۔۔۔۔۔۔پہلی نے خیرت سے پوچھا۔۔۔۔۔جی ۔۔۔۔پنار انہیں گھورتی ہوئی ہرمان کی طرف بڑھی جو ابھی بھی فون پر ہی لگا ہوا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔عمر میں تم سے بعد میں بات کرتا ہوں اوکے۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے کہہ کر فون بند کیا۔۔۔۔۔۔۔۔کیا ہوا یہ مجھے آپ اس طرح گھور کیوں رہیں ۔۔۔۔۔۔ہرمان نے اسے مسلسل اپنی طرف گھورتے دیکھ کر پوچھا۔۔۔۔۔۔۔کیا ضرورت تھی اتنا تیار ہونے کی ۔۔۔۔۔پنار نے خفگی سے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے اسکی بات پر اپنی طرف دیکھا۔۔۔۔۔۔۔کہاں تیار ہوا ہوں صرف سوٹ ہی تو چینج کیا ہے ۔۔۔۔اور ابھی تو میں نے تیار ہونا ہے۔۔۔۔یہ تو عمر سے بات کرتے کرتے اس طرف آپ کو دیکھنے آ گیا تھا میں۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے اسکے مہندی لگے ہاتھوں کو اشتیاق سے دیکھتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔.کوئی ضرورت نہیں ہے تیار ہونے کی ۔۔۔۔۔۔پنار نے منہ بسورتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔کیوں ہرمان نے پوچھا۔۔۔۔۔۔بس ایسے ہی ۔۔۔۔۔پنار نے ادھر ادھر دیکھتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔اچھا رومان بھائی کہہ رہے تھے کہ کیٹریگ وغیرہ کا انتظام دیکھ لوں ۔۔۔۔۔۔تو میں تھوڑی دیر میں آتا ہوں ۔۔۔۔۔آپ نے کھانا کھایا تھا شام کو۔۔۔۔۔ہرمان نے جاتے جاتے اس سے پلٹ کر پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔ہممم ۔۔۔پنار نے سر ہلایا۔۔۔۔۔۔ہرمان سر ہلا کر پلٹ گیا ۔۔۔۔۔پنار نے دوبارہ ان لڑکیوں کو دیکھا جو اب بھی اسکی پشت کو دیکھ رہی تھیں۔۔۔۔۔۔اللہ اتنا خوبصورت بھی شوہر نا ہو کسی کا بیوی کا تو خون ہی جلتا رہتا ہے ۔۔۔۔پنا ر بڑبڑاتے ہوئے مہندی والی کی طرف بڑھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
چاچو آپ نے بلایا تھا۔۔۔۔۔۔۔نیلم نے خالد کے روم میں آکر پوچھا۔۔۔۔۔۔۔ہممم بیٹھو ۔۔۔۔۔خالد صاحب نے سنجیدہ سے لہجے میں کہا ۔۔۔۔۔۔اس لڑکے کو کہیں مجھ سے آکر آفس میں ملے ۔۔۔۔۔۔خالد نے دو ٹوک بات کرتے ہوئے اسکی طرف دیکھا جس کا رنگ پل میں سفید ہوا تھا۔۔۔۔۔۔کک کیا مطلب چاچو کونسا لڑکا۔۔۔۔۔۔۔نیلم نے اہکھلاتے ہوئے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔وہی جو آپ سمجھ چکی ہیں ۔۔۔۔۔۔میں نہیں چاہتا آپ جزبات میں کر کوئی انتہائی قدم اٹھائیں ۔۔۔۔۔جس سے ہماری عزت پر کوئی داغ لگے ۔۔۔۔۔تو بہتر ہو گا اس لڑے کو کہیں پہلی فرصت میں مجھ سے آکر ملیں ۔۔۔۔۔۔۔۔خالد نے کہتے ہوئے بکس دوبارہ کھولی ۔۔۔۔۔۔یہ اسے جانے کا واضع اشارا تھا۔۔۔۔۔۔۔نیلم نے دھندلائی ہوئی نظروں سے اپنے پر جان چھڑکنے والے چاچو کو دیکھا۔۔۔۔۔جنہوں نے کبھی اسے باپ کی کمی محسوس نہیں ہونے دی تھی۔۔۔۔۔اور آج کیسے وہ اس سے ناراض ہو گئے تھے۔۔۔۔۔۔۔چاچو ہلیز مجھ سے ناراض مت ہوں ۔۔۔۔۔۔میں نہیں رہ سکتی آپ کے بغیر ۔۔۔۔۔میں بہک گئی تھی ۔۔۔۔۔پلیز مجھے معاف کردیں ۔۔۔۔۔۔نیلم روتی ہوئی ان کے قدموں میں بیٹھی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔ اٹھو یہ کیا کر رہی ہو ۔۔۔ اٹھو شاباش ۔۔۔خالد سے اس کا اس طرح رونا برداشت نہیں ہوا تھا۔۔۔۔۔۔۔چاچو مجھے نہیں کرنی کسی سے شادی مجھے صرف آپ کے پاس رہنا ہے ۔۔۔۔ آپ پلیززز بس مجھ سے ناراض مت ہوئیے گا۔۔۔۔۔۔نیلم نے اپنے آنسو پونچھتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔نہیں ہوں میں ناراض ۔۔۔۔ان رونا نہیں تم نے ۔۔اور جاو حارث کو بھیجو۔۔۔۔۔۔۔۔نیلم نے ہرساں نظروں سے انہیں دیکھا۔۔۔۔۔۔۔مجھے اس سے کوئی اور بات کرنی ہے ۔۔۔Stay relaxed So۔۔۔۔۔۔خالد نے اس کو پریشان ہوتے ہوئے دیکھ کر کہا۔۔۔۔۔۔نیلم سر ہلاتے ہوئے چلی گئی۔۔۔۔۔۔۔۔۔تھوڑی ہی دیر ہوئی تھی۔جب حارث آیا تھا۔۔۔۔۔جی چاچو آپ نے بلایا تھا۔۔۔۔۔۔ہاں آو بیٹھو۔۔۔۔۔۔۔۔۔خالدنے چیئر کی طرف اشارہ کرتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔
🍁🍁🍁🍁🍁🍁
ہائمہ کو سب نے مٹھائی کھلائی ۔۔۔۔اور مہندی تیل لگا کر رسم پوری ۔۔۔۔۔پنار اور ہرمان نے ایک ساتھ رسم کی تھی ۔۔۔۔ہرمان نے اس پر سے کئی نوٹ وار کے کام والی کو پکڑائے تھے ۔۔۔۔۔۔۔۔ہائمہ کی رسم کے بعد رومان کی بھی اسی طرح رسم کی گئی۔۔۔۔ہرمان کے گھر والے بھی سب آئے ہوئے تھے۔۔۔۔۔۔۔عمر کے گھر والے بھی تقریب میں شامل تھے۔۔۔۔عمر بے چارے کو زبردستی گھر چھوڑ آئے تھے ۔۔۔۔۔۔۔جس نے باقاعدہ احتجاج بھی کیا تھا لیکن کسی نے اس کے احتجاج پر توجہ نا دی ۔۔۔۔۔۔۔۔جس پر عمر پیر پٹخ کر اپنے روم میں بند ہو گیا تھا ۔۔۔۔۔”رومان کو مٹھائی کھلاتے وقت پنار نے اسے بہت تنگ کیا تھا۔۔۔۔۔پہلے اسکے منہ کے نزدیک برفی کا پیس کرتی جب وہ منہ کھولتا تو پیچھے کر لیتی ۔۔۔۔دو تین بار پنار نے ایسے ہی کیا تھا ۔۔۔۔۔اور پھر جب اس کی روہانس سی شکل دیکھی تو پھر اس کے منہ میں مٹھائی ڈالی۔۔۔۔پنار کی دیکھا دیکھی سب لڑکیوں نے ایسے ہی رومان کو تنگ کیا تھس۔۔۔۔۔۔۔رات دیر تک یہ رسم چلتی رہی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔” پنار چینج کر کے سونے ہی لگی تھی جب ہرمان بریانی کی پلیٹ پکڑے اس کے کمرے میں آیا تھا۔۔۔۔۔آج وہ دونوں وہی رکے تھے ۔۔۔۔۔۔۔اٹھیں پہلے کھانا کھائیں پھر سوئیے گا ۔۔۔۔ہرمان نے زبردستی اس کو بٹھایا جس کا نیند کے مارے برا حال تھا۔۔۔۔۔صبح کھا لوں گئی نا ۔۔۔۔۔۔۔جی نہیں شام سے آپ نے کچھ نہیں کھایا چلیں جلدی سے منہ کھولیں ۔۔۔۔ہرمان نے چمچ بڑھ کر اس کے ہونٹوں کے قریب کیا پنار نے مسکراتے ہوئے منہ کھولا ۔۔۔۔تم بھی تو کھاوں ۔۔۔۔۔پنار کو پتا تھا اس نے بھی کچھ نہیں کھایا ہو گا۔۔۔۔۔۔تو آپ کھلا دیں نا ۔۔۔۔۔ہرمان نے منہ کھولا ۔۔۔۔۔۔پنار نے مسکراتے ہوئے چمچ اسکے ہاتھ سے لیا ۔۔۔۔اور پھر اس کے منہ میں ڈالا ۔۔۔۔۔۔۔۔آئندہ سے تم بلیک سوٹ نہیں پہنو گئے ۔۔۔۔۔اور اگر پہنو گئے تو صرف گھر میں ۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے اسکے بال ماتھے سے ہٹاتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے مسکراہٹ دباتے ہوئے سر ہاں میں ہلایا ۔۔۔۔۔۔۔
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
تم جانتے ہوئے بھائی صاحب کا جب انتقال ہوا تھا تو تم دونوں اس وقت چھوٹے چھوٹے تھے۔۔۔۔۔۔اور مجھے ہر وقت یہی پریشانی رہتی تھی کہ پتا نہیں میں تم دونوں کی پرواش ٹھیک سے کر بھی پاوں گا یا نہیں ۔۔۔۔۔اس لیے میں نے عمر اور تم پر سختی کہ تم دونوں کہی برے کام میں نا پڑ جاو۔۔۔۔۔۔خالد صاحب نے بات کرنے سے پہلے تمہید باندھی۔۔۔۔۔۔۔جی چاچو میں جانتا ہوں ۔۔۔۔۔۔ آپ جو بھی کرتے ہیں ہم تینوں کی بھلائی کے لیے ہی کرتے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔اور سچ پوچھیں تو میں نے آپ کو ہی اپنا باپ مانا ہے ۔۔۔۔۔حارث نے ان کے ہاتھ تھامتے ہوئے محبت سے کہا ۔۔۔۔۔۔۔”میں چاہتا ہوں تمہاری اور عمر کی شادی جب بھی کروں اکٹھی ہی کروں ۔۔۔۔۔۔۔۔اور اگر تمہیں کوئی لڑکی پسند ہے تو مجھے بتا دو ۔۔۔۔۔خالد نے حارث کو جانجتی ہوئی نظروں سے دیکھ کر کہا۔۔۔۔۔۔۔ نہیں چاچو مجھے تو کوئی پسند نہیں ہے ، جو آپ میرے لیے پسند کریں گئے ۔۔۔۔وہی میری پسند ہوگئی۔۔۔۔۔۔۔۔حارث نے سعادت مندی سے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔اور ہالہ وغیرہ کا کیا چکر تھا۔۔۔۔۔۔خالد صاحب نے اسے ہالہ کا چکر یاد کروانا ضروری سمجھا۔۔۔۔۔۔۔۔ چاچو وہ خود ہی میرے پیچھے پڑی ہوئی تھی ۔۔۔۔مجھے کہتی تھی مجھے لو لیٹر لکھ کر محبت کا اظہار کرو۔۔۔۔۔حارث نے سر جھکائے ہوئے شرمندگی سے کہا۔۔۔۔۔۔۔ہممم ،عذوبہ کے بارے میں کیا خیال ہے تمہارا۔۔۔۔۔۔خالد صاحب نے دھمکا کیا ۔۔۔۔جس سے حارث تو کیا دروازے کے پیچھے چھپ کر باتیں سنتے عمر کو بھی خیرت کا جھٹکا لگا تھا۔۔۔۔۔۔۔چاچو وہ مجھ سے کافی چھوٹی ہے ۔۔۔۔۔۔حارث نے ہچکچاتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔میاں بیوی میں اتنا تو گیپ ہونا ہی چاہئے ۔۔۔۔ویسے بھی میں ایک دو دن میں اسد سے بات کرنے والا ہوں ۔۔۔۔بہتر ہو گ اپنا مائنڈ وغیرہ بنا لو ۔۔۔۔۔اور تم باہر آ سکتے ہو اب ۔۔۔۔بس یہی باتیں کرنی تھی مجھے حارث سے۔۔۔۔جو تم تجسس کے مارے دروازے کے پیچھے چھپ کر بیٹھے ہو۔۔۔۔۔۔۔۔عمر پر تو یہ آواز بجلی بن کر گری تھی ۔۔۔۔اور سر جھکائے ہوئے باہر آیا۔۔۔۔۔۔۔اور پھر وہاں سے ایسے بھاگا تھا جیسے وہاں تو عمر کا نام و نشان بھی نا ہو ۔۔۔۔۔۔۔۔خالد اور حارث اسے بد حواسی اور پھر سر پلٹ کر بھاگتے۔ دیکھ کر مسکرا کر رہ گئے
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
ہائمہ پر برائیڈل بن کر تو بہت ہی روپ آیا تھا ۔۔۔۔جو دیکھ رہا تھا ۔۔۔دیکھتا ہی جا رہا تھا۔۔۔۔سکن اور ریڈ کے کنٹراسٹ لہنگے میں تو وہ پہچانی نہیں جا رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔آپا آپ ابھی تک تیار نہیں ہوئی۔۔۔۔۔۔ژالے نے پنار کو ایسے ہی گھریلو خلیے میں گھومتے ہوئے دیکھ کر خیرت سے پوچھا۔۔۔۔۔اور اب تو پارلر والی بھی چلی گئی ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔کیا تم پتا نہیں تھا میں نے ابھی تیار ہونا ہے ۔۔۔۔مجھے لگا آپ پہلے تیار ہو گئی ہوں گئی ۔۔۔۔۔ژالے نے تاسف سے کہا۔۔۔۔۔افف صبح سے تو میں مہمانوں کو ناشتہ وغیرہ دینے میں بزی ہوں ۔۔۔تیار کیا میں نے خاک ہونا ہے ۔۔۔۔۔۔پنار نے اسے تیکھی نظروں سے دیکھتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔اچھا جائیں نا جلدی سے تیار ہو جائیں ورنہ ابو غصہ کریں گئے۔۔۔۔۔۔۔۔پنار غصے سے سر ہلاتی ہوئی چلی گئی۔۔۔۔۔۔۔پنار نے جلدی سے کبڈ سے ڈریس نکالا ۔۔۔اور ڈریسنگ روم میں چینج کرنے چلی گئی ۔۔۔۔۔۔چینج کرنے کے بعد وہ باہر آئی اور مرر کے سامنے کھڑی ہوتی دوسری اسیسریز وغیرہ باہر نکالنے لگی ۔۔۔۔۔۔۔۔اس نے بلیو اور سلور کلر کے کنٹراسٹ کی فراق پہنی ہوئی تھی ۔۔۔۔۔جس کے گلے اور دامن میں بھاری کام کیا گیا تھا۔۔۔۔۔۔یہ ڈریس ہرمان لیکر آیا تھا اس کے لیے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔کچھ بھی تھا۔۔اس میں ڈریس سینس تو کمال کا تھا ۔۔۔۔۔۔آپ ابھی تک تیار نہیں ہوئی وہاں سب میرج ہال جانے کے لیے بالکل تیار کھڑے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے اسے اسی سادے سے خلیے میں دیکھ کر خیرت سے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”بس ہونے ہی لگی ہوں ۔۔۔۔پنار نے عجلت سے جھمکے پہنتے ہوئے کہا ۔۔۔۔لائیں میں پہناوں ۔۔۔۔۔ہرمان نے اس کے ہاتھ سے دوسرا جھمکا لیتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔اور پھر اس کے بال دوسرے کندھے پر رکھ کر اسے جھمکا پہنایا۔۔۔۔۔۔بس یار جھمکے ہی پہنا سکتا میک اپ وغیرہ مجھے نہیں کرنا آتا یہ آپ کو خود ہی کرنا ہو گا۔ ۔۔۔۔ہرمان نے اسے اپنی طرف دیکھتے ہوئے دیکھ کر شرارت سے کہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔بد تمیز ۔۔۔۔۔میں تم سے کب کہہ رہی ہوں کہ مجھے میک اپ کرو ۔۔۔۔پنار نے اسے گھورتے ہوئے کہا۔ ۔۔۔۔۔۔اور برش پکڑا۔ ۔۔۔۔۔پلیز بال کھلے ہی چھوڑ دیں ۔۔۔۔آج بھی پونی مت کر نے بیٹھ جائیے گا۔ ۔۔۔۔۔ہرمان نے اسے اسکی ٹائٹ کی ہوئی پونی یاد آگئی تھی اس لیے بے ساختہ بولا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔تم مجھے تیار ہونے دو گئے یا نہیں۔ ۔۔۔۔پنار نے اس کی طرف پلٹ کر پوچھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔ہو جائیں میں نے کونسا آپ کے ہاتھ پکڑے ہوئے ہیں ۔۔۔۔۔ٹوک تو ایسے ہی رہے ہو ۔۔۔۔۔۔پنار جلے بھنے انداز میں کہا۔

–**–**–
جاری ہے
——
آپکو یہ ناول کیسا لگا؟
کمنٹس میں اپنی رائے سے ضرور آگاہ کریں۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Subscribe For Latest Novels

Signup for Novels and get notified when we publish new Novel for free!




%d bloggers like this: