Mera Ishq Teri Anayat Novel by Faiza Ahmed – Episode 35

0
میرا عشق تیری عنایت از فائزہ احمد – قسط نمبر 35

–**–**–

کیونکہ بارات بھی گھر سے ہی آنی تھی تو اس لیے ٹائم پر ہی آگئی تھی ۔۔۔۔۔ رومان بلیک شیروانی میں غضب کا لگ رہا تھا۔ ۔۔۔۔۔۔تھوڑی دیر بعد نکاح کی کاروائی پوری کی گئی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور پھر کھانا وغیرہ کھول دیا گیا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔پنار ژالے اور رائمہ نے ہائمہ کے ساتھ برائیڈل روم میں ہی کھانا کھایا تھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔کھانا کھانے کے بعد سب لڑکیاں دلہن کو تھام کر سٹیج تک لائی ۔۔۔۔۔۔۔۔”رومان نے کھڑے ہو کر ہائمہ کا استقبال کیا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔سب اس خوبصورت سی جوڑی کو سراہ رہے تھے۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔”ہرمان پنار کے پاس آیا ۔۔۔۔۔کہاں تھی آپ میں کب سے آپ کو ڈھونڈ رہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”کیوں کوئی کام تھا۔ ۔۔۔پنار نے آئی بروز اٹھاتے ہوئے شرارت سے پوچھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔کیا مطلب ہے آپ کا کیا مجھے کوئی کام ہو گا تو ہی میں آپ کو یاد کروں گا ۔۔۔۔۔ہرمان نے خفگی سے کہتے ہوئے پلٹا۔ ۔۔۔۔۔جب پنار نے سرعت سے اسکی کلائی تھامی ۔۔۔۔۔۔”ارے کوئی ناراض ہو کر جارہا ہے مجھ سے ۔۔۔۔۔پنار نے شرارت سے اس سے پوچھا۔۔۔۔۔۔نہیں میں آپ سے کیوں ناراض ہوں گا ۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے ہنوز سنجیدگی سے کہا ۔۔۔۔۔۔۔اچھا مزاق کر رہی تھی نا میں سیریسلی ۔۔۔۔۔پنار نے مسکراتے ہوئے کہا۔ ۔۔۔۔۔۔ویسے میں آج ردا کو بہت مس کر کرہی ہوں ۔۔۔۔۔پنار نے ادھر ادھر دیکھتے ہوئے منہ بنا کر کہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔”تو آپ فون کر لیں اسے ۔۔۔۔۔ہرمان نے پاکٹ میں ہاتھ ڈالتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔بزی ہے وہ ۔۔۔۔۔۔۔۔ابروڈ سیٹل ہونے میں دیر تو لگتی ہے نا۔۔۔۔۔پنار نے منہ بناتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔آپا ،ہرمان بھائی آجائیں ۔۔۔۔پک بنوالیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ژالے نے سٹیج سے ہی ان دونوں کو آواز لگائی ۔۔۔۔۔۔۔۔چلیں ہرمان نے اس کے آگے ہاتھ کیا ۔۔۔۔۔۔پنار نے مسکراتے ہوئے اس کے ہاتھ پر ہاتھ رکھا اور دونوں سٹیج کی طرف بڑھے
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
او سوری حارث بھائی۔۔۔۔۔۔عذوبہ جو ژالے کے ساتھ سیلفی لے رہی تھی ۔۔اچانک پیچھے ہونے پر حارث سے ٹکرائی تھی۔۔۔۔۔۔۔کوئی بات نہیں ۔۔۔۔حارث نے ہلکی سی مسکان سے کہا ۔۔۔۔اچھا آپ ایسا کریں میری اور ژالے کی ایک خوبصورت دی پک بنا دیں ۔۔۔۔عذوبہ نے اسے اپنا فون دیتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔تم۔دونوں خود بناو نا میں اچھا لگوں گا اس طرح پک بناتا۔۔۔۔۔کوئی سوچے گا شاید یہ مووی میکر ہے ۔۔۔۔۔حارث نے ایک ادا سے اپنے بال سنوارتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔آپ تو شروع سے ہی بدلحاظ ہیں ۔۔۔۔۔عذوبہ نے منہ بسورتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔جبکہ ژالے مسکرا کر رہ گئی ۔۔۔۔۔۔اچھا لاو۔۔۔۔لیکن میں ایک ہی پک بناوں گا ۔۔۔ اس سے زیادہ نہیں ۔۔۔۔حارث نے موبائل لیتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔اور کیمرے کا فوکس دونوں پر کیا ۔۔۔۔حارث نے پنک میکسی میں ملبوس عذوبہ کو پہلی بار چونک کر دیکھا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔بہتر ہو گا تم اپنا مائنڈ وغیرہ بنا لو ۔۔۔۔۔۔چاچو کے الفاظ اس کے کانوں میں گونجے تھے ۔۔۔۔۔۔بن گئی ۔۔۔عذوبہ نے موبائل کی طرف ہاتھ بڑھاتے ہوئے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔ہمم بن گئی ۔۔۔۔اسے موبائل پکڑاتا وہ دوسری طرف تیز قدموں سے چلا گیا۔۔۔۔۔۔۔
تھوڑی دیر میں رخصتی کا شور اٹھا تھا ۔۔۔۔۔۔۔ہائمہ باری باری سب کے گلے لگ کر روئی تھی ۔۔۔۔۔۔سب نے کہا تم کونسا کسی دوسرے گھر میں جارہی ہو ۔۔۔۔۔لیکن وہ وقت صرف ایک دلہن بنی لڑکی ہی سمجھ سکتی ہے ۔۔۔۔۔۔۔
سب کی دعاوں میں اسے گاڑی میں بٹھایا گیا تھا۔۔۔۔۔پنار اور رائمہ اس کے ساتھ بیٹھی تھی جبکہ ۔۔۔۔رومان آگے بیٹھا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
ہائمہ کو رسموں وغیرہ سے فارغ کر کے اسے رومان کے کمرے میں پنار اور ژالے بٹھا آئی تھیں۔۔۔۔۔۔۔آپا آپ کہاں جارہی ہیں ۔۔۔۔۔پلیز میرے پاس ہی رہیں نا مجھے ڈر لگ رہا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار اور ژالے اس کے نروس سے انداز میں مسکرائی ۔۔۔۔۔۔۔ارے تم کیا چاہتی ہو رومان بھائی ہمیں دھکے دے کر باہر نکالیں ۔۔۔۔۔۔۔اسے سے اچھا ہے ہم پہلے ہی چلے جائیں ۔۔۔۔۔ژالے نے مسکراتے ہوئے پنار کے کندھے پر اپنا سر رکھتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔کچھ نہیں ہو گا تم صرف ریلکس رہو ۔۔۔پنار نے اس کا لہنگا درست کرتے ہوئے اسے تسلی دی ۔۔۔اچھا ہم چلتے ہیں ۔۔۔۔۔تمہیں کچھ چاہئے تو نہیں ۔۔۔۔۔پنار نے جاتے جاتے پلٹ کر پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔نہیں آپا ۔۔۔۔ہائمہ نے ادھر ادھر دیکھتے ہوئے نا میں سر ہلایا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”ہائمہ کو بیٹھے ابھی تھوڑی دیر ہی ہوئی تھی ۔۔۔۔جب رومان آہستہ سے دروازہ کھول کر اندر آیا تھا۔۔۔۔۔۔ہائمہ اسے دیکھ کر جلدی سے بیڈ سے کھڑی ہوئی۔۔۔۔۔۔۔رومان نے خیرت سے اس کا کھڑا ہونا دیکھا۔۔۔۔۔۔کھڑی کیوں ہو گئی ۔۔۔رومان نے خیرت سے پوچھا۔۔۔۔۔۔وہ مجھے یہ ڈریس چینج کرنا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔ہائمہ نے انگیاں مڑورتے ہوئے گھبرائے ہوئے لہجے میں۔کہا۔۔۔۔۔۔۔ اچھا کر لینا ۔۔۔۔۔لیکن پہلے مجھے دیکھ تو لینے دو کہ کیسی لگ رہی ہو تم اس ڈریس میں ۔۔۔۔۔۔رومان نے اس کا ہاتھ تھامتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔ہمم ڈریس کی تھوڑی بہت تو قیمت وصول ہو ہی گئی ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔رومان نے اسے غور سے دیکھتے ہوئے شرارتی انداز میں کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔کیا مطلب ہے میں اس ڈریس میں زیادہ اچھی نہیں لگ رہی کیا ۔۔۔۔ہائمہ نے خفگی سے کہا۔۔۔۔۔۔۔ادھر بیٹھو پھر بتاتا ہوں کہ اچھی لگ رہی یا بری۔۔۔۔رومان نے اسے بیڈ پر بٹھاتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔ہائمہ نے اسے ناراضگی سے دیکھا ۔۔۔۔۔سب نے میری اتنی تعریف کی لیکن آپ کہہ رہے ہیں کہ میں اچھی نہیں لگ رہی ۔۔۔۔۔۔۔۔ہائمہ نے اس سے اپنا ہاتھ چھڑاتے ہوئے نمی سے پُر لہجے میں کہا۔۔۔۔۔۔۔۔ارے یار مزاق کر رہا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔تم تو اتنی پیاری لگ رہی ہو کہ مجھے ڈر لگ رہا ہے کہ تمہیں کہی میری نظر نا لگ جائے ۔۔۔۔۔۔رومان نے محبت لیے انداز میں کہا ۔۔۔۔۔۔ہائمہ نروس سی ہوئی تھی اس کی آنچ دیتی نظروں سے ۔۔۔۔۔۔۔۔میں ڈریس چینج کر لوں ۔۔۔۔۔ہائمہ نے معصومیت سے کہا ۔۔۔۔رومان نے مسکرا کر سر نفی میں ہلایا ۔۔۔۔۔۔پھر اٹھ کر کبڈ سے کچھ نکال کر لایا۔۔۔۔۔۔۔۔ہاتھ کرو آگے ۔۔۔۔رومان نے اس کے سامنے ہاتھ پھیلاتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہائمہ نے ہچکچاتے ہوئے ہاتھ اسکی ہتھیلی پر رکھا ۔۔۔رومان نے مسکراتے ہوئے خوبصورت سے ڈیزائن والا بریسلیٹ پہنایا ۔۔۔۔۔۔۔کیسا ہے ۔۔۔۔۔رومان نے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔اچھا ہے ۔۔۔۔ہائمہ نے ہلکی سے مسکان سے ہاتھ اس کے ہاتھ سے چھڑاتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔رومان نے مسکراتے ہوئے اس کے سر سے سر جوڑا تھا۔ ۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁
میں بہت ٹھک گئی ہوں آج ۔۔۔۔۔پنار نے سوٹ تہہ کر کے رکھتے ہوئے رومان سے کہا ۔۔۔۔۔۔۔جس کی رنگت آج کچھ پیلی پیلی سی لگ رہی تھی ۔۔۔۔۔۔کیا ہوا طبیعت تو ٹھیک ہے ۔۔۔۔۔۔ہممم ۔۔۔۔ہرمان نے صرف سر ہلایا۔۔۔۔۔۔اب وہ کیا کہتا کہ اس سے بچھڑنے کا خیال ابھی سے اسے پریشان کر رہا تھا۔۔۔۔۔۔۔دودھ یا کافی لاوں ۔۔۔۔۔۔۔ہنار نے اسکے پاس بیٹھتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔تم نے کھانا بھی نہیں کھایا تھا۔۔۔۔۔پنار نے پریشانی سے کہا ۔۔۔۔۔۔نہیں آپ بس میرے پاس بیٹھیں ۔۔۔۔۔ہرمان نے اٹھ کر اس کے کندھے پر سر رکھتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔مجھے تو تمہاری طبیعت ٹھیک نہیں لگ رہی پنار نے اس کے بال سنوارتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔مجھے لگتا ہے تمہیں نظر لگ گئی ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے اس کے ہاتھ تھامتے ہوئے کہا نیوی بلیو سوٹ تم پر جچ بھی تو بہت ریا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان سر ہلا کر مسکرایا۔۔۔۔ہمم تو کیسے نظر اتاریں گئی آپ میری ۔۔۔۔۔۔ہرمان نے شرارت سے پوچھا ۔۔۔۔۔۔کیسے اتاروں۔۔۔۔۔پنار نے ناسمجھی سے پوچھا۔۔۔۔۔۔ایسے۔۔۔۔ ہرمان نے اس کے ماتھے پر ہونٹ رکھتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اچھا ایسے کونسی نظر اترتی ہے ہاں ۔۔۔۔۔۔پنار نے آنکھیں نکالتے ہوئے ہوچھا۔۔۔۔۔۔ہرمان نے جواباً کندھے اچکا کر اسے اپنے قریب کھیبچا تھا۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
صبح جب ہائمہ کی آنکھ کھلی تو وہ کمرے میں اکیلی تھی ۔۔۔۔۔۔۔رومان کمرے میں نہیں تھا۔۔۔۔۔۔ہائمہ نے اٹھ کر ابھی بال ہی سمیٹے تھے جب رومان کمرے میں داخل ہوا ۔۔۔۔۔۔ہاتھ پشت پر باندھے ہوئے تھے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔گڈ مارننگ مائے سویٹ وائف ۔۔۔۔۔۔رومان نے اس کے آگے وائٹ لیلی کے پھول کرتے ہوئے کہا۔۔۔۔اور اس کے گال پر اپے ہونٹ رکھے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہائمہ نے شرمیلی سی مسکان سے پھول پکڑے ۔۔۔۔۔یہ اس کے فیوریٹ پھول تھے………..کیسی لگ رہی زندگی کی نئی صبح ۔۔۔۔۔۔۔رومان نے اس کے ہاتھ اپنے ہاتھوں میں لیتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔مجھے نہیں پتا۔۔۔۔۔ہائمہ نے منہ بناتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔تبھی دروازے پر دستک ہوئی تھی۔۔۔۔۔۔ہائمہ اور رومان نے چونک کر دروازے کی طرف دیکھا ۔۔۔۔۔۔۔۔میں کھولتا ہوں ۔۔۔۔رومان اس کے بالوں کی لٹ کھینچ کر دروازے کی طرف بڑھا۔۔۔۔۔۔۔اٹھ گئے آپ دونوں۔۔۔۔۔پنار نے مسکراتے ہوئے پوچھا۔۔۔۔۔۔جی کب سے ۔۔۔۔۔رومان نے بھی مسکراتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔کیسی ہو ہائمہ ۔۔۔۔پنار نے اس کی پیشانی چومتے ہوئے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔ہائمہ نے جواباً دھیمی سی مسکان سے سر ہلایا۔۔۔۔۔۔۔اچھا رومان ابو بلارہیں تمہیں ۔۔۔۔۔۔مجھے بتا دو کپڑے کونسے پہننے ہیں میں نکال دیتی ہوں ۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے کبڈ کی طرف بڑھتے ہوئے ہائمہ سے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔آپا میں نکال لیتی ہوں نا۔۔۔۔۔ہائمہ نے تکلف سے کہا ۔۔۔۔۔۔ہمم یہ لو اور جلدی سے فریش ہو جاو ۔۔۔۔۔پنار نے اس ایک نیلے کلر کا سادہ سا سوٹ پکڑاتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔میں ناشتہ بھیجواتی ہوں تمہارے لیے پنار کہتی ہوئی باہر چلی گئی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
🍁🍁🍁🍁🍁
ویزہ آگیا ہے تمہارا۔۔۔۔۔عمر نے فون پر اسے بتایا۔۔۔۔۔۔۔۔ہممم ۔۔۔۔کونسی ڈیٹ ہے ۔۔۔۔۔اس نے ہونٹ بھینچتے ہوئے پوچھا ۔۔۔۔۔۔۔۔پرسوں کی ۔۔۔۔۔عمر نے مدھم آواز میں کہا۔۔۔۔۔۔۔یار پلیز ایک بار پھر سے سوچ لو ۔۔۔۔۔۔۔سوچ سمحھ کر ہی تو فیصلہ کیا تھا میں نے ۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے کھڑکی سے باہر دیکھتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔رہ لے گا مس کے بنا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔رہنا تو پڑے گا، ہاں لیکن یہ میرے لیے بہت مشکل ہو گا ۔۔۔۔۔۔۔عمر ۔۔۔۔۔۔ہرمان نے دیوار پر مکہ مارتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔میں چاہتا ہوں انہیں کبھی میری وجہ سے شرمندگی نا ہو ۔۔۔۔۔اس کے لیے مجھے ان سے الگ بھی رہنا پڑے تو رہوں گا میں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے باہر نظریں جمائے ہی کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہمم ٹھیک ہے ۔۔۔۔۔تو پھر پرسوں کی تیاری کر لے ۔۔۔۔۔عمر نے کہہ کر فون بند کیا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے پیچھے سے اس کے کندھے پر ہاتھ رکھ کر اسے اپنی طرف متوجہ کیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔کیا ہوا ہے منہ کیوں اترا ہوا ہے ۔۔۔۔۔۔پنار نے اس کا چہرہ ہاتھوں کے پیالے میں لیتے ہوئے اس سے پوچھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔آپ جو سامنے نہیں تھی ۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے اس کے وہی ہاتھ ہونٹوں سے لگاتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔اچھا پلیز تم یہ ناشتہ کر لو ۔۔۔۔میں باقی لوگوں کو دیکھ لوں ۔۔۔۔۔۔۔اور پھر جلدی جلدی تیار بھی تو ہونا ۔۔۔۔۔۔کل بھی میں سب سے پیچھے رہ گئی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار اس سے ہاتھ چھڑا کر باہر لپکنے لگی تھی جب اس نے اسے روکا تھا.۔۔۔۔۔۔۔۔آپ ناشتہ نہیں کریں گئی ۔۔۔۔۔۔۔میں نے صبح صبح ہی کر لیا تھا ۔۔۔۔۔پنار نے جھوٹ بولا ۔۔۔۔۔۔۔اچھا لیکن میں جانتا ہوں آپ نے ابھی تک ناشتہ نہیں کیا ہو گا” ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے سنجیدگی سے اس کا چہرہ دیکھتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔ میرا دل نہیں کر رہا ناشتہ کرنے کو سچی ۔۔۔۔دل خراب ہو رہا ہے کھانے کو دیکھ کر ۔۔۔۔۔۔۔پنار نے منہ بناتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔آپ کی طبیعت تو ٹھیک ہے نا ۔۔۔۔۔۔ہرمان نے پریشانی سے اس کا چہرہ گردن چھوتے ہوئے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔میں ٹھیک ہوں ۔۔۔۔۔۔تم کھا لینا ۔۔۔۔۔ تم نے کل سے کچھ بھی تو نہیں کھایا ۔۔۔۔پنار نے اسکے سینے پر سر رکھتے ہوئے کہا۔.۔۔۔۔،آپا۔۔۔ژالے کی دور سے ہی پکارنے کی آواز آرہی تھی۔۔۔۔۔۔ میں دیکھ آوں ژالے کو کوئی کام ہو گا۔۔۔۔۔۔پنار نے اس کے سینے سے سر اٹھاتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔ہرمان نے صرف ہلکا سا سر ہی ہلایا ۔۔۔۔۔۔۔پنار جلدی سے باہر کی طرف بھاگی۔۔۔۔۔۔۔۔شادی والے گھر کہاں ٹائم ملتا ہے۔۔۔۔۔۔وہ تو پھر بھی بڑی تھی سارے کام وہی تو دیکھ رہی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
🍁🍁🍁🍁🍁
میں جانتی ہوں رمیز کے آپ کو اس وقت برا لگا تھا۔۔۔۔۔۔ظاہر ہے بات کوئی چھوٹی تو نہیں تھی ۔۔۔۔۔۔لیکن میں پھر بھی چاہوں گئی کہ آپ پلیززز رائمہ کو خوش رکھئے گا ۔۔۔۔۔رمیز اس کی ہی طرف دیکھ رہا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔اور پلیز میں آپ سے ایک اور ریکوائسٹ کرنا چاہتی ہوں۔۔۔۔۔ کہ آپ ہرمان کو معاف کردیجئے گا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اس نے جو بھی کیا نادانی میں کیا۔۔۔۔۔۔۔۔ویسے بھی میرا نصیب تو اسی سے جڑا تھا ۔۔۔۔۔۔تو میں کسی اور کی کیسے ہو سکتی تھی ۔۔۔۔۔۔۔اپنے دل میں اس کے لیے کوئی میل مت رکھیئے گا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے سر جھکائے ہی کہا۔۔۔۔۔۔۔رمیز نے خیرت سے اسے دیکھا ۔۔۔۔۔۔جو آج اپنے شوہر کے فیور میں بول رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے لب کاٹتے ہوئے اسے دیکھا۔۔۔۔۔۔۔۔ہممم ۔۔۔رمیز نے سر ہلاکر اتنا ہی کہا۔۔۔۔۔۔۔اور پھر اپنی طرف آتے ہرمان پر نظر ڈالی۔۔۔۔۔جو وقعے چاہنے کے لیے ہی تو بنا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔کیسے ہیں آپ رمیز صاحب ۔۔۔۔۔۔I hope you will be fine ہرمان نے سنجیدگی سے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے پریشانی سے اسے دیکھا۔۔۔۔۔۔جس کا چہرہ اس وقت سنجیدہ سا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔مسٹر رمیز آپ پلیز پرانی کدورتیں بھول کر نئی زندگی کی شروعات کرِیے گا ۔۔۔۔۔مسٹر ہرمان کیا اب مجھے انکل نہیں کہو گئے ۔۔۔۔۔رمیز نے تیکھی نظروں سے اسے دیکھتے ہوئے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔ہرمان مسکرایا ۔۔۔۔۔اگر آپ کو میرا انکل کہنا پسند ہے تو۔۔۔۔۔۔۔اس سے پہلے ہرمان کچھ کہتا ۔۔۔۔۔۔ہرمان تمہیں شاید انٹی بلا رہی ہیں ۔۔۔۔۔ہم ابھی آتے ہیں ۔۔۔۔۔ آئی ہوپ آپ میری باتوں کو سمجھیں گئے ۔۔۔۔۔۔پنار کہہ کر اسے ساتھ لے چلی گئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔رمیز نے حسرت سے اسے جاتے ہوئے دیکھا۔۔۔۔۔اور پھر ہلکا سا ہنستا ہوا واپس بیٹھا۔۔۔۔۔۔۔۔کیا ضرورت تھی تمہیں میرے پیچھے آنے کی ۔۔۔۔۔۔پنار نے اسے گھورتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور سوری کہنے کی بجائے انکل کیوں کہہ رہے تھے تم اسے ہمم ۔۔۔۔پنار نے گھورتے ہوئے اس سے پوچھا ۔۔۔۔حو جینز کی پاکٹ میں ہاتھ ڈالے ایک سٹائل میں کھڑا تھا۔۔۔۔۔۔میری مرضی ۔۔۔۔۔وہ ہونٹ اندر کی طرف کرتے مسکرایا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔تم کبھی نہیں سدھرو گئے نا ۔۔۔۔۔۔۔پنار نے زچ ہو کر پوچھا۔۔۔۔۔۔۔جواباً جناب نے لاپرواہی سے کندھے اچکائے ۔۔۔۔۔۔۔پنار جواباً نفی میں سر ہلا کر رہ گئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
دونوں شادیاں حیروعافیت سے ہو گئی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار بھی کل رات آگئی تھی ہرمان کے ساتھ گھر۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔آپ میرے پاس بیٹھیں ۔۔۔۔۔۔۔۔مجھے دیکھنے دیں خود کو جی بھر کے ۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے عجیب سے لہجے میں کہا ۔۔۔۔۔۔۔کیا مطلب ۔۔۔۔۔پنار نے چونک کر پوچھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔جیسٹ چل ۔۔۔۔۔کیا مجھے آپ کو دیکھنے کے لیے کسی وجہ کی ضرورت ہے ۔۔۔۔۔ہرمان نے اس کے ہاتھوں کو آنکھوں سے لگاتے ہوئے پوچھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔تم مجھے کچھ عجیب سے لگ رہے ہو آج۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے اسے جانچتی نظروں سے دیکھ کر کہا۔ ۔۔۔۔۔ہرمان پھیکا سا مسکرایا۔ ۔۔۔۔۔۔۔اچھا چھوڑیں نا یہ سب آپ مجھے پراٹھا بنا کر دیں یا دال چاول۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے رات کے دس بجے انوکھی فرمائش کی ۔۔۔۔۔۔کیا اس وقت ۔۔۔۔پنار نے گھڑی پر ٹائم دیکھتے ہوئے پوچھا۔ ۔۔ ۔ ۔ ۔ ہاں اس وقت ۔ ۔ ۔۔۔۔۔ہرمان نے ہلکی سی مسکان سے کہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔اچھا میں پھر ایسا کرتی ہوں دال چاول بنا لیتی ہوں ٹھیک ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے کھڑے ہوتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔چلیں میں بھی آپ کے ساتھ چلتا ہوں ۔۔۔۔۔۔۔۔تم ایسا کرو چاول نکالو ۔۔۔۔۔اور میں دال کو ابال لیتی ہوں پہلے ۔۔۔۔پنار نے مصروف سے انداز میں کہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔ہمم ۔۔۔۔ہرمان نے کہہ کر چاول نکالے ۔۔۔۔اب کیا کرنا ہے ۔۔۔۔بگھو دو انہیں ۔۔۔۔۔۔پنار نے پیاز وغیرہ کاٹتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”آدھے گھنٹے میں دونوں چیزیں تیار تھیں ۔۔۔۔۔دونوں نے ایک دوسرے کو اپنے اپنے ہاتھوں سے کھانا کھلایا تھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔آپ میرے ساتھ ڈانس کریں ۔۔۔۔۔ہرمان نے اسکی طرف ہاتھ بڑھاتے ہوئے کہا۔ ۔۔۔۔۔۔تم پاگل ہو ۔۔۔۔۔پنار نے خیرت سے پوچھا۔ ۔۔ ۔ ۔ ۔۔۔۔ہاں پاگل ہوں ۔۔۔۔۔۔ لیکن صرف آپ کے عشق میں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اس نے پنار کی بازو کھینچتے ہوئے اپنے نزدیک ترین کرتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔پھر اس کی کمر میں ہارھ ڈال کر اسے لیے ہلکا ہلکا گھوما تھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔آپ مجھے سے ناراض تو نہیں ہوں گئی نا کبھی ۔۔۔۔۔۔۔۔ہممم ۔۔۔۔پنار نے سر نفی میں ہلایا۔ ۔۔۔۔۔۔کبھی بھی خفا مت ہوئے گا ۔۔۔۔ورنہ میں جی نہیں سکوں گا ۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے اس کے سر سے اپنا سر جوڑتے ہوے مدھم سی آواز میں کہا۔ ۔۔۔۔۔۔اور پھر اس کی آنکھوں پر اپنے ہونٹ رکھ دیئے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
پنار کی صبح آنکھ دیر سے کھلی تھی ۔۔۔۔۔ساری رات تو وہ دونوں باتیں کرتے رہے تھے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اففف کتنی لیٹ ہوگئی میں آج ۔۔۔۔۔۔پنار نے کہتے ہوئے ہرمان کی سائیڈ پر دیکھا ۔۔۔۔۔۔جہاں وہ اپنی جگہ پر موجود نہیں تھا ۔۔۔۔۔۔۔یہ آج اتنی جلدی اٹھ گیا ۔۔۔۔پنار نے خیرت سے سوچا ۔۔۔۔۔۔پھر فریش ہونے چلی گئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔فریش ہو کر آئی تو نوری اس کے کمرے میں کھڑی تھی۔ ۔۔۔۔۔کیا بات ہے نوری ۔۔۔۔۔اتنی جلدی کمرے کی صفائی کرنے آگئی ۔۔۔۔۔پنار نے مرر کے آگے کھڑے ہو کر اپنے بال سنوارتے ہوئے خیر ت کا اظہار کیا ۔۔۔۔۔۔۔۔نہیں بی بی جی یہ خط ہرمان صاحب نے دیا تھا آپ کو دینے کے لیے ۔۔۔۔۔۔۔کیا ۔۔۔خط ۔۔۔۔پنار نے خیرت سے خط کو الٹ پلٹ کرتے ہوئے کہا کیسا خط ہے یہ۔۔۔۔پتا نہیں بی بی جی۔۔۔۔۔صبح صبح میرے پاس کچن میں آئے تھے اور کہا جب آپ جاگیں تو یہ آپ کو دے دوں ۔۔۔۔۔۔نوری نے کہا۔ ۔۔۔۔۔پنار نے سر ہلا کر پریشانی سے خط کھولا۔ ۔۔۔۔۔۔۔
السلام علیکم ۔۔۔۔۔۔۔۔
جب آپ یہ خط کھولیں گئی تو میں ایئر پورٹ یا پھر یہاں سے فلائی کر جاوں گا ۔۔۔۔۔۔۔۔مجھے معلوم ہے آپ مجھ سے بہت خفا ہوں گئی ۔۔۔۔۔لیکن میں چاہتا ہوں ۔۔۔۔کہ آپ کا شوہر دنیا کی سب سے اچھی یونیورسٹی سے ٹاپ کرے ۔۔۔۔۔۔۔جس پر آپ پرواڈ فیل کرسکیں ۔۔۔۔۔۔۔اپنا اور سب کا خیال رکھیئے گا خاص کر دادی کا۔۔۔۔۔فون یہی رکھ کر جارہا ہوں میں جانتا ہوں سب سے پہلے آپ مجھے کال ہی کریں گئی۔ ۔۔۔۔۔اور پھر آپ کا شوہر آپ کی کال کاٹ نہیں سکے گا ۔۔۔ اور ہو سکتا ہے میں آپ کی آواز سن کر واپس آجاوں ۔۔۔۔۔۔۔۔میں جلد لوٹوں گا۔ ۔۔۔میرا انتظار کرئیے گا۔ ۔۔۔۔۔۔نیچے اس کے سگنیچر تھے۔۔۔۔۔۔۔
پنار سے خط چھوٹ کر نیچے گرا تھا ۔۔۔۔یہ کیا ہو گیا۔ ۔۔۔۔۔میں نے یہ کب کہا تھا تم ٹاپ کرو وہ بھی ہم سب سے دور جا کر۔۔۔۔۔۔۔۔پنار لرزتی ہوئی آواز میں بڑبڑائی تھی۔ ۔۔۔۔۔۔۔پھر باہر کی طرف ننگے پاوں دوڑی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔نیچے سب اپنے اپنے کمروں میں تھے ۔۔۔۔وہ باہر بھاگی ۔۔۔۔۔ڈرائیور جلدی سے ایئر پورٹ چلو۔ ۔۔۔۔اس نے جلدی سے گاڑی کا ڈور کھولتے ہوئے ڈرائیور کو خکم دیا ۔۔۔۔۔۔لیکن بی بی اس طرح اس نے اس کے کھلے بال اور ننگے پاوں کی طرف خیرت سے اشارا کرتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔سنا نہیں تم نے جلدی ایئرپورٹ چلو ۔۔۔۔۔پنار نے چلا کر کہا۔ ۔۔۔۔۔ڈرائیو سر ہلا کر جلدی سے گاڑی میں بیٹھا اور پھر گاڑی سٹارٹ کردی ۔۔۔۔۔۔۔۔جلدی دس منٹ میں ایئرپورٹ پینچو ۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے پریشانی سے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔

–**–**–
جاری ہے
——
آپکو یہ ناول کیسا لگا؟
کمنٹس میں اپنی رائے سے ضرور آگاہ کریں۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Subscribe For Latest Novels

Signup for Novels and get notified when we publish new Novel for free!




%d bloggers like this: