Mera Ishq Teri Anayat Novel by Faiza Ahmed – Episode 36

0
میرا عشق تیری عنایت از فائزہ احمد – قسط نمبر 36

–**–**–

سپیڈ بڑھاو ۔۔۔۔۔۔پنار نے پیشانی سے پسینہ صاف کرتے ہوئے پریشانی سے کہا۔ ۔۔۔۔۔۔روک لوں گئی میں تمہیں کہی نہیں جانے دوں گی ۔ ۔۔۔۔۔پنار نے آنسو صاف کرتے خود سے کہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔بی بی آگیا ایئرپورٹ ۔۔۔۔۔۔۔ڈرائیور کی آواز پر وہ چونکی تھی ۔۔۔۔۔۔پھر بھاگنے کے سے انداز میں نکلی ۔۔۔۔۔اور ایئرپورٹ کے اندر بھاگی ۔۔۔۔۔۔۔۔ایک منٹ میم پلیز آئی ڈی کارڈ دیکھائیں پہلے ۔۔۔۔۔۔۔دروازے پر کھڑے باڈی گارڈ نے اسے ہاتھ کے اشارے سے روکتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے پریشانی سے اسے دیکھا ۔۔۔۔۔۔۔دیکھیں مجھے یاد نہیں رہا ۔۔۔۔پلیز مجھے اندر جانے دیں ۔۔۔۔۔۔پنار نے اس کی منت کرتے ہوئے کہا۔ ۔۔۔۔سوری میم بنا آئی ڈی کارڈ کے ہم آپ کو اندر نہیں جانے دے سکتے ۔۔۔۔۔ساتھ کھڑے دوسرے باڈی گارڈ نے۔۔۔۔۔۔۔وہ دونوں اسے مشکوک نظروں سے دیکھ رہے تھے ۔۔۔۔۔جس کے نا پاوں میں چپل تھا ۔۔۔بکھڑے بال لیے وہ انتہائی درجے کی بد خواس لگ رہی تھی ۔۔۔۔۔دیکھیں میرا اندر جانا ضروری ہے میں جلدی آجاوں گئی ۔۔۔۔۔۔پنار نے لڑکھڑاتی آواز میں ان کے آگے ہاتھ جوڑے۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔سوری میم ہماری نوکری کا سوال ہے ہم آپ کو بنا آئی ڈی کارڈ کے اندر نہیں جانے دے سکتے ۔۔۔۔۔پنار نے روتے ہوئے اپنے ہونٹ بے دردی سے کاٹے۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔انکل کو فون کرتی ہوں ہاں یہ ٹھیک ہو گا ۔۔۔۔۔۔۔لیکن فون بھی تو میرے پاس نہیں ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔ہاں ڈرائیور کے پاس تو ہو گا۔ ۔۔۔۔۔پنار جلدی سے گاڑی کی طرف لپکی ۔۔۔۔ڈرائیور جلدی سے مجھے اپنا فون دیں ۔۔۔پنار نے اس کے آگے ہاتھ کرتے ہوئے کہا۔ ۔۔۔۔۔۔ڈرائیور نے الجھتےہوئے فون اس کی ہتھیلی پر رکھا۔ ۔۔۔۔۔۔پنار نے جلدی جلدی اسد کو فون ملایا ۔۔۔۔۔۔۔۔انکل پلیزز فون اٹھایں۔۔۔۔۔۔۔انکل میں پنار ،آپ جلدی سے ایئرپورٹ آجائیں ۔۔۔۔۔۔نہیں تو وہ چلا جائے گا ۔۔۔۔۔۔۔میں یہی ہوں یہ لوگ مجھے اندر نہیں جانے دے رہے ۔۔۔۔۔۔۔آپ جلدی سے آجائیں ۔۔۔۔۔۔۔پنار نے کہہ کر فون ڈرائیور کو پکڑایا ۔۔۔۔۔۔۔۔”اور پھر آسمان کی طرف بے چین نظروں سے دیکھنے لگی جیسے ہرمان سے شکوہ کیا ہو ۔۔۔۔۔۔وہ کوئی دیوانی سی ہی لگ رہی تھی ۔۔۔۔۔۔لگ ہی نہیں رہا تھا یہ نک سک سی تیار رہنے والی وہی پنار ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔لیکن آج اسے لوگوں کی تمسخرانہ نظروں سے بھی کوئی فرق نہیں پڑ رہا تھا جو آتے جاتے اسے عجیب سی نظروں سے دیکھ رہے تھے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”انکل کب آئیں گے ۔۔۔۔۔۔۔۔ابھی یہ الفاظ اس کے منہ میں ہی تھے جب اسد کی گاڑی فراٹے بڑھتی ہوئی پارکنگ میں آکر رکی تھی۔ ۔۔۔۔۔۔پنار ۔۔۔۔انکل نے پریشان سی آواز سے اسے پکارا۔ ۔۔۔۔جس نے آواز پر پلٹ کر دیکھا۔ ۔۔۔۔۔اور پھر بھاگ کر ان کے کندھے سے لگی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔انکل روک لیں اسے ۔۔۔۔۔۔۔چلو۔ ۔۔۔۔۔اسد اسے لیے آگے بڑھے ۔۔۔۔۔۔۔اسلام اسد صاحب ۔۔۔۔۔باڈی گارڈ نے خیرت سے انکا بازو پکڑے اسی لڑکی کو دیکھا تھا۔۔۔۔۔۔۔گارڈ نے جلدی سے ڈور کھولا۔ ۔۔۔۔۔۔۔اسد آوٹ آف کنٹری جاتے رہتے تھے اس لیے پورا عملہ انہیں اچھے سے جانتا تھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔ابھی وہ اندر کی طرف بڑھے ہی تھے ۔۔۔۔۔۔جب فلائٹ اڑھی تھی۔ ۔۔۔۔۔۔پنار نے اسد کو دیکھا تھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔پریشان نہ ہو یہ کوئی اور فلائٹ ہوگئی۔۔۔۔۔اسد نے اسے تسلی دی اور پھر ریسیپشن کی طرف گئے ۔۔۔۔۔جبکہ پنار ادھر ادھر دیکھ رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔اسد نے بے بسی سے اپنی بہو کو دیکھا تھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔جس کی خالت دیکھ کر وہ زیادہ ہریشان ہوئے تھے۔ ۔۔۔۔۔۔انکل کونسی فلائٹ ہے اس کی ۔۔۔۔کہی ِدکھ بھی نہیں رہا وہ۔ ۔۔۔۔پنار نے ادھر ادھر دیکھتے ہوئے کہا۔ ۔۔۔۔۔چلو بیٹا ۔۔۔۔۔۔۔اسکی فلائٹ فلائے کر گئی ہے ۔۔۔۔۔۔۔اسد نے اسے کندھوں سے تھامتے ہوئے کہا۔ ۔ ۔ ۔۔۔پنار خیرت کا بت بن گئی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔اسد اسے لیے آگے بڑھے تھے ۔۔۔۔۔جب وہ لہرا کر انکی باہوں میں گری تھی ۔۔۔۔۔۔۔پنار بچے کیا ہوا ہے آپ کو ۔۔۔۔۔اسد نے پریشانی سے اس کے گال تھپکے ۔۔۔۔۔لیکن وہ بے ہوش ہوگئی تھی ۔۔۔۔۔۔۔اسد اسے باہوں میں اٹھائے باہر بھاگے تھے ۔۔۔۔۔ڈرائیور نے جلدی سے ڈور کھولا انہوں نے اسے پیچھے لٹایا۔ ۔۔۔۔۔اور ہسپتال کی طرف گاڑی دوڑانے کو کہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔ناہید جلدی سے ہسپٹل پہنچیں ۔۔۔۔۔۔خیریت ہی ہے آپ بس جلدی سے پہنچے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار کو فوراً ایمرجنسی میں لے لجایا گیا ۔۔۔۔۔۔۔۔ناہید بھی ہانپتی ہسپٹل پہنچی۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔کیا ہوا ہے میرا بیٹا ٹھیک تو ہے نا۔ ۔۔۔۔۔ناہید نے ان کا بازو جھنجھورتے ہوئے پوچھا۔ ۔۔۔۔۔۔ادھر بیٹھو بتاتا ہوں میں تمہیں۔ ۔۔۔۔۔پھر اسد نے اسے ساری بات بتائی ۔۔۔۔۔۔کیاا لیکن ابھی صبح ہی تو وہ کمرے میں آیا تھا۔ ۔۔۔اللہ تبھی پنار کا خیال رکھنے کو کہہ رہا تھا۔ ۔۔۔۔۔اف اللہ میں کیا کروں اس لڑکے کا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔پریشان مت ہو ۔۔۔۔تم جانتی تو ہو کب کہی ٹک کر رہتا ہے آجائے گا کچھ ہی دنوں میں ۔۔۔۔۔۔ناہید نے سر ہلایا۔ ۔۔۔۔تبھی ڈاکٹر باہر آئی۔ ۔۔۔۔۔۔۔ڈاکٹر کیا ہوا ہے میری بہو کو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ریلکس مسز اسد وہ سٹریس کی وجہ سے بے ہوش ہوئی ہے۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور ایک گڈ نیوز بھی ہے ۔۔۔۔۔۔آپ کی بہو ون ویک سے پریگنٹ ہے ۔۔۔۔۔ڈاکٹر نے مسکراتے ہوئے کہا۔ ۔۔۔۔۔۔کیااا دونوں نے خیرت سے پوچھا ۔۔۔۔۔جی ۔۔۔۔ہم نے انہیں ڈرپ وغیرہ لگادی ہے جب وہ فنش ہو تو آپ انہیں گھر لے جا سکتے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔ہاں انہیں سٹریس وغیرہ سے دور رکھیں ۔۔۔۔۔۔ڈاکٹر اپنے پیشہ ورانہ انداز میں کہہ کر چلی گئی جبکہ وہ ابھی بھی خیرت کا مجسمہ بنے ہوئے تھے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
پنار کو ایک گھنٹے بعد وہ گھر لے آئے تھے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔سب تک یہ خبر پہنچ چکی تھی کہ ہرمان چلا گیا ہے۔۔۔۔۔۔۔پنار بیڈ پر چپ چاپ بیٹھی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔بیٹا اس خالت میں زیادہ پریشان نہیں ہوتے ۔۔۔۔۔آجائے گا وہ۔۔۔۔۔۔ہم سے دور وہ کتنے دن رہ پائے گا ۔۔۔۔۔۔۔۔اس لیے شاباش یہ جوس پیو ۔۔۔۔۔۔دادی دل نہیں کر رہا ۔۔۔۔پنار نے آنسو پیتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔بس تھوڑا سا ۔۔۔۔۔ناہید نے اس کے ہونٹوں سے زبردستی جوس کا گلاس لگایا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔بس امی اور نہیں دل خراب ہو رہا ہے ۔۔۔۔۔بیٹا اپنا دھیان رکھو اس خالت میں تو کھانے پینے کا اور خیال رکھنا ضروری ہے ۔۔۔۔۔۔اس بار منیبہ نے کہا۔۔۔۔۔۔پنار نے صرف سر ہلایا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔سب اس نیوز سے خوش بھی تھے ۔۔۔۔۔۔۔لیکن ہرمان کی کمی کسی کو بھی پوری طرح خوش نہیں ہونے دے رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
کیا ہو رہا ہے ۔۔۔۔۔رومان نے ہائمہ کو پیچھے سے اپنے حصار میں لیتے ہوئے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ایک تو آپ نا ۔۔۔۔ہائمہ بوکھلاتی ہوئی اس سے دور ہوئی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔”کیا میں ۔۔۔۔۔کیا زیادہ ہینڈسم ہوں میں ۔۔۔۔۔۔رومان نے اسے زبردستی اپنی باہوں میں لیتے ہوئے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔جی نہیں خوش فہمی ہے آپ کی ۔۔۔۔۔۔ہائمہ نے اس کا ہاتھ کمر سے ہٹاتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔ایک تو قسم سے بالکل بھی رومینٹک نہیں ہو تم ۔۔۔۔رومان نے اس کے گرد حصار تنگ کرتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔ہائمہ شرم سے اسے گھور بھی نا سکی ۔۔۔۔۔۔۔۔رومان ابھی اس کے چہرے پر جھکا ہی تھا جب اس کا فون بجا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔اف اس بھی ابھی ہی بجنا تھا۔۔۔۔۔۔رومان نے منہ بناتے ہوئے فون چیک کیا۔۔۔۔۔۔ہائمہ منہ پر ہاتھ رکھ کر ہنسی” ۔۔۔۔ہنس لو پوچھتا ہوں میں تمہیں سے بعد میں ۔۔۔۔۔۔رومان نے کہتے ہوئے فون پر نمبر دیکھا۔۔۔۔۔۔۔۔ انکل کا فون ہے خیریت ہو رومان نے کہتے ہوئے کال اٹینڈ کی ۔۔۔۔۔اسلام علیکم ۔۔۔۔۔۔۔جی انکل سب خیریت سے ہیں یہاں ۔۔۔۔۔۔کیا۔۔۔۔۔کب ۔۔۔ٹھیک ہے ہم آتے ہیں ابھی۔۔۔۔۔۔۔۔کیا ہوا ہے آپا تو ٹھیک ہیں نا۔ ۔۔۔۔۔ ہائمہ نے اسکی پریشان سی صورت دیکھ کر کہا ۔۔۔۔۔۔پتا نہیں انکل نے بلایا ۔۔۔۔میں امی اور ابو نکلتےہیں ابھی۔۔۔۔۔تم میرے کپڑے وغیرہ نکال دو میں امی سے بات کر لوں ۔۔۔۔۔رومان کہہ کر عافیہ کے کمرے کی طرف بڑھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
🍁🍁🍁🍁🍁🍁
اگر دیکھا جائے تو اس نے کچھ غلط بھی نہیں کیا ۔۔۔۔۔۔۔وہ پڑھنا چاہتا تھا ۔۔۔۔۔دنیا کی اچھی یونورسٹی سے ۔۔۔۔تو اٹس ناٹ آبگ میٹر ۔۔۔۔۔۔۔رومان نے ساری بات سن کر کہا۔ ۔۔۔۔۔وہ سب لاونج میں بیٹھے ہوئے تھے ۔۔۔۔پنار کمرے میں تھی ۔۔۔۔۔ابھی تھوڑی دیر پہلے ہی اس کی آنکھ لگی تھی ۔۔۔۔۔اس لیے سب نے اسے ڈسٹرب کرنا ضروری نا سمجھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔لیکن وہ سب کو بتا کر بھی تو جاسکتا تھا یا یہی کہی سے پڑھ لیتا ۔ ۔۔۔۔۔۔عافیہ نے پریشانی سے ناہید سے کہا۔ ۔۔۔۔۔۔کیا کہہ سکتے ہیں ہم وہ جانتا تھا ۔۔۔۔۔۔اگر بتا کر جاتا تو دادی اور پنار اسے کبھی نا جانے دیتی ۔۔۔۔۔ناہید نے افسوس سے سر ہلاتے ہوئے کہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
ردا یہ کیسا عشق عنایت کر گیا ہے وہ مجھے ۔۔۔۔۔۔۔مجھے اسکے بنا سانس لینے میں بھی دشواری ہو رہی ہے ۔۔۔۔۔میں کیا کرو ۔۔۔۔۔ساری غلطی میری ہے میں نا اس دن کہتی اور نا وہ دل پر لیتا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے آنسو صاف کرتے ہوئے ردا سے کہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار پلیز حوصلہ رکھو ۔۔۔۔۔۔اپنے آنے والے بچے کے لیے ۔۔۔۔۔جو تمہارے پاس اس کی نشانی ہے ۔۔۔۔۔۔ردا نے فون دوسرے ہاتھ میں منتقل کرتے ہوئے اسے تسلی دی ۔۔۔۔۔۔۔۔ہاں تم ٹھیک کہہ رہی ہو ۔۔۔۔مجھے ۔۔۔۔صبر کرنا ہوگا ۔۔۔۔۔۔لیکن ردا یہ میرے لیےبہت مشکل ہو گا ۔۔۔۔پنار نے بے بسی سے کہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁
دن اسی طرح بے کیف گزررہے تھے۔ ۔۔۔سب پنار کا بہت خیال رکھتے تھے ۔۔۔ لیکن اس کی کمی تو کوئی پوری نہیں کرسکتا تھا نا۔ ۔۔۔۔۔۔ وہ دن میں کئی دفعہ فون دیکھتی شاید کوئی اس کا میسج وغیرہ آیا ہو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔لیکن خاموش فون کو دیکھ کر وہ تڑپ کر رہ جاتی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔میں تمہیں کبھی معاف نہیں کروں گئی مجھے عشق کی راہوں میں لا کر اکیلا چھوڑ گئے تم ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اسد نے لندن میں پتا کروایا تھا۔ ۔۔۔۔۔۔لیکن وہاں کی کسی یونیورسٹی میں اس کا ایڈمشن نہیں ہوا تھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔پتا نہیں وہ کہاں چلا گیا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”سب پریشان تھے اس کی وجہ سے ۔۔۔۔۔۔۔اسے اپنے لیے سب کو پریشان کرنا آتا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار صرف سوچ کر رہ جاتی ۔۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁
یہ کیا بنا کر کے لائی ہیں آپ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پراٹھا ۔۔۔۔۔۔اس گھور کر کہا گیا تھا۔ ۔۔۔۔۔لیکن مجھے آملیٹ ود بریڈ کھانا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔منہ بسور کر کہا گیا۔ ۔۔۔۔۔لیکن کل تم نے کہا تھا ۔۔۔۔۔تم پراٹھا کھایا کرو گئے ۔۔۔۔۔۔۔۔کمر پر ہاتھ رکھ کر اسے جتلایا گیا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہاں تو وہ کل کہا تھا ۔۔۔کل دل کر رہا تھا ۔۔۔۔۔آج مجھے آملیٹ کھانا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ضدی لہجے میں کہا گیا ۔۔۔۔۔۔۔۔آج کھا لو کل بنا دوں گئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اس نے زچ ہو کر کہا ۔۔۔۔۔۔۔کیوں ۔۔۔۔۔مجھے آج ہی کھانا ہے وہ بھی آپ کے ہاتھوں کا ۔۔۔۔۔۔نوری کے ہاتھوں کا میں نہیں کھاوں گا وہ گندی ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پراٹھے کی پلیٹ پراں کسکا کے کہا گیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”سب اسکی ضدی طبیعت سے واقف تھے ۔۔۔۔۔۔۔کہ ایک بار وہ کچھ کہہ دے تو پھر اس سے ایک اینچ نہیں ہلے گا۔ ۔۔۔۔۔۔۔ارے میرے لال ۔۔۔۔۔۔۔۔بہو جاو پراٹھا بنا لاو ۔۔۔۔۔۔دادی نے خوش ہوتے ہوئے اس کا سر چومتے ہوئے کہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔پنار نے غصے سے پلیٹ پکڑی اور کچن میں چلی گئی ۔۔۔۔۔۔۔۔ہنی کیوں مما کو اتنا تنگ کرتے یو یار۔ ۔۔۔۔۔۔۔اسد نے سیریس انداز میں اسے ٹوکا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔دادا میں کہاں تنگ کرتا ہوں ۔۔۔۔۔۔میں تو معصوم بچہ ہوں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہنی نے منہ بسورتے ہوئے کہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ناہید اسد اور دادی سب اس کے منہ بسورنے پر مسکرا کر رہ گیئے تھے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔وہ ہرمان کی کاپی تھا ۔۔۔۔۔۔ضدی ،ڈیٹھ،اپنی کرنے والا
🍁🍁🍁🍁🍁🍁
ژالے میرا ناشتہ کہاں ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔عمر نے خیرت سے سوئی ہوئی ژالے سے پوچھا ۔۔۔۔۔۔ژالے میں تم سے مخاطب ہوں ۔۔۔۔۔۔۔عمر نے سوئی ہوئی ژالے کو ہلاتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔آہستہ بولو ۔۔۔۔۔ابھی تو میں نے اسے سلایا ہے ۔۔۔۔۔۔اور خود بھی ابھی سوئی ہوں ۔۔۔۔۔۔ژالے نے جھنجھلاتے ہوئے اسے ٹوکا ۔۔۔۔۔۔یار مجھے آفس سے دیر ہو رہی ہے ڈیڈ غصہ کریں گئے اگر لیٹ گیا تو ۔۔۔۔۔۔عمر نے ژالے کے چہرے سے بال ہٹاتے ہوئے کہا”۔ ۔۔۔۔۔۔۔آج خود بنالو ۔۔۔۔۔۔ژالے نے دوبارہ آنکھیں موندتے ہوئے کہا۔ ۔۔۔۔۔۔مجھے تمہارے ہاتھ کی چائے پینی ہے۔۔۔۔۔۔ عمر بے اس کے ایک ایک نقش کو محبت سے چھوتے ہوئے گھمبیر لہجے میں کہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ساری رات تمہاری بیٹی نے مجھے سونے نہیں ۔۔۔۔۔دیا اس وقت کہاں تھی یہ تمہاری محبت ۔۔۔۔۔۔خود تو سو رہے تھے ایک بار بھی نہیں کہا ژالے میری جان تم سو جاو پری کو میں اٹھا لیتا ہوں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ژالے نے ڈوپٹہ گلے میں ڈالتے ہوئے کہہ کر اٹھی ۔۔۔۔۔۔۔یار اس وقت محبت سو رہی تھی نا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔عمر نے مسکراہٹ دباتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ژالے اسے گھورتی ہوئی کچن میں چلی گئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”عمر نے مسکراتے ہوئے اسکی پشت دیکھی ۔۔۔اور پھر ایک نظر اپنی سوئی ہوئی ایک سال کی شہزادی پر ڈالی جس نے ژالے کو ٹھیک ٹھاک تنگ کیا ہوا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁
ہائمہ ۔۔۔۔۔جی ۔۔۔۔۔یار آج رات کو پنار کے آپا کے گھر جانا ہے ۔۔۔۔۔ڈنر پر ابھی ہنی نے انوائٹ کیا ہے فون پر۔ ۔۔۔۔ امی کو بتا دینا۔ ۔۔۔۔۔۔۔رومان نے کوٹ پہنتے ہوئے ہائمہ سے کہا جس نے سر ہلایا تھا۔ ۔۔۔۔۔۔ہمم، مریم کہاں ہے ۔۔۔۔۔۔چچی کے پاس ہے ۔۔۔۔ہائمہ نے اسے گھڑی اور فون پکڑاتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔کیا ہوا طبیعت تو ٹھیک ہے نا تمہاری ۔۔۔۔ہاں بس طبیعت تھوڑی ڈل سی ہو رہی ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔اچھا ایسا کروں گا آفس میں۔ آج جلدی آجاوں گا ۔۔۔۔۔پھر تمہاری ڈاکٹر کے پاس چلتے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔رومان نے اس کے گال پر ہاتھ رکھ کر کہا۔ ۔۔۔۔ٹھیک ہے ۔۔۔۔۔۔۔میں مریم کو دیکھ لوں ۔۔۔۔رومان کہتے ہوئے عافیہ کے کمرے کی طرف بڑھا ۔۔۔۔۔۔۔۔”پیچھے ہائمہ اپنے بھاری وجود سے کمرے میں بکھڑی چیزوں کو انکی جگہ پر رکھنے لگی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
چار سال کا وقت کیسے بیت گیا ۔۔۔۔۔یہ تو پنار ہی بہتر جانتی تھی ۔۔۔۔۔جس کے دن اداس اور شامیں ویران گزرتی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”عمر، ژالے ،عذوبہ اور حارث کی شادی کو ڈیڈھ سال کا عرصہ گزرا تھا۔ ۔۔۔۔۔پنار کا ساڑھے تین سال ایک بیٹا تھا۔ ۔۔۔۔جو اپنے باپ کی دوسری کاپی تھا ایک ایک نقش اور عادت اپنے باپ سے چڑائی تھی اس نے۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”ہائمہ اور رومان کی ایک دو سال کی بیٹی تھی مریم معصوم سی ۔۔۔۔جس کی شکل پنار سے ملتی جلتی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”عمر اور ژالے کی بھی ایک بیٹی تھی سات ماہ کی پری جس کام ہر وقت صرف اور صرف رونا ہی تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ژالے بیچاری تو تنگ آگئی تھی اس کے ہر وقت کے رونے سے ۔۔۔۔۔۔عذوبہ اور حارث کی ابھی کوئی اولاد نہیں تھی ۔ ۔۔۔۔وہ دونوں ایک آئیڈیل کپل تھے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔سب اپنی اپنی زندگی میں آگے بڑھ گئے تھے ۔۔۔۔۔۔۔ہاں ہرمان کی کمی کو سارے بہت محسوس کرتے تھے ۔۔۔۔۔دو سال کا کہہ کر جانے والے نے چار سال کا عرصہ لگا دیا تھا۔ ۔۔۔۔۔سب اسکی اتنی لمبی غیر حاضری سے اب پریشان رہنے لگے تھے۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اسد نے لندن خود جاکر بھی پتا کیا تھا لیکن اس کا کچھ پتا نا چل سکا۔ ۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁
صبح صبح کون ہے گیٹ پر ۔۔۔۔۔۔جاو نوری دیکھ کر آو ۔۔۔۔میں نواب صاحب کے لیے سیندوچ بنا لوں۔۔۔۔آج سینڈوچ کا آرڈر کر دیا ہے اس نے پنار نے سر ہلاتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔ہاہاہا۔ ۔۔۔بی بی کیا پتا یہ بھی کھانے سے انکار کردے کچھ اور بھی بنا لیں ۔۔۔۔۔۔۔نوری ہنستے ہوئے کہتے چلی گئی ۔۔۔۔۔۔پنار بھی مسکراتے ہوئے سینڈوچ کی طرف متوجہ ہوئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
نوری نے جیسے ہی دروازہ کھولا ۔۔۔۔۔چونک کر پیچھے ہوئی تھی ۔۔۔۔۔۔آپ ۔۔۔
نوری نے خیرت سے کہا ۔۔۔۔”

–**–**–
جاری ہے
——
آپکو یہ ناول کیسا لگا؟
کمنٹس میں اپنی رائے سے ضرور آگاہ کریں۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Subscribe For Latest Novels

Signup for Novels and get notified when we publish new Novel for free!




%d bloggers like this: