Mera Ishq Teri Anayat Novel by Faiza Ahmed – Episode 37

0
میرا عشق تیری عنایت از فائزہ احمد – قسط نمبر 37

–**–**–

مما میرا ناشہ دو ۔۔۔۔۔۔ہانی صاحب کچن میں ہی آگئے تھے ۔۔۔۔۔بس ریڈی ہے تم جاو باہر دیکھو ۔۔۔۔۔۔۔کہ کون آیا ہے ۔۔۔پنار نے مصروف سے انداز میں کہا ۔۔۔۔میں کیوں جاوں ۔۔۔۔۔نوری جائے ۔۔۔ہنی نے منہ بناتے ہوئے کہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔ہنی ۔۔۔۔بڑی ہیں وہ تم سے ۔۔۔۔۔بڑوں سے ایسے بات کرتے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔پنار نے اسے گھورتے ہوئے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔ہنی نے جواباً منہ بنایا اور باہر کی طرف بڑھا۔۔۔۔۔۔ادھر او ناشتہ کر لو ۔۔۔۔۔۔پنار نے ٹیبل پر کھانے کی پلیٹ رکھتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آپ ۔۔۔۔۔۔نوری نے خیرت سے پوچھا۔۔۔۔اس نے جواباً ہلکا سا سر ہلایا۔۔۔۔اور پھر ایک ہاتھ سے بیگ کھینچتے ہوئے اندر کی طر ف بڑھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اس کے قدم رکے تھے ۔۔۔۔اچانک اپنی جان سے پیاری ہستی کو دیکھ کر ۔۔۔۔۔۔بیگ ہاتھ سے چھوٹ گیا تھا کب سے ۔۔۔۔۔۔۔نوری بھی اس کے پیچھے پیچھے آئی۔۔۔۔۔۔
اف یہ کیا بنایا ہے آپ نے ۔۔۔۔۔ہانی سینڈوچ دیکھ کر ناک منہ چڑہایا۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہانی بس ٹھوڑا ساہی جلا ہے آپ دوسری سائیڈ سے کھا لیں ۔۔۔۔۔پنار نے زچ ہو کر کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔نو۔۔۔۔ہانی کبھی جلی ہوئی چیز نہیں کھائے گا ۔۔۔۔مجھے دوبارہ نیا بنا کر دیں ۔۔۔۔۔ہانی نے ہاتھ باندھتے ہوئے ضدی انداز میں کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان کو تو کچھ اور ناظر ہی نہیں آرہا تھا اسے صرف اپنی جان کے ہونٹ ہلتے ہوئے محسوس ہو رہے تھے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہانی میری بات ۔۔۔۔۔۔پنار کی بات کرتے ہوئے اچانک نظر اس ہر پڑی تھی ۔۔۔۔۔۔اور پلیٹ یاتھ سے چھوٹ کر گری تھی ۔۔۔۔۔۔۔ہانی نے چونک کر پہلے پلیٹ گری دیکھی ۔۔۔۔اور پھر دروازے میں کھڑی نئی ہستی پر ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان دھیرے دھیرے قدم اٹھاتا ہوا اس تک آیا ۔۔۔۔۔۔جس کا چہرہ لٹھے کی مانند سفید ہو گیا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔اور آنکھوں سے آنسو کی قطار جاری تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔وہ اس سے چند قدموں کے فیصلے پر رکا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔اور پھر اس کے قدموں میں بیٹھا تھا ۔۔۔۔۔۔پنار اسے ساکت نگاہوں سے اسے دیکھ رہی تھی۔ ۔۔۔۔۔۔جس کی آنکھیں نم تھی ۔۔۔۔۔۔۔ہرمان میرے بچے ۔۔۔۔دادی جو ناشتے کرنے آرہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔ہرمان کو دیکھ کر خیرت سے دنگ رہ گئی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔پھر بے ساختہ اسے پکارا۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے دادی کی کے طرف دیکھا ۔۔۔۔۔۔پھر کھڑا ہو کر دادی کی طرف لپکا۔۔۔۔۔۔۔۔اور انہیں اپنی مظبوط باہوں میں تھاما تھا ۔۔۔۔۔۔۔ہرمان میرے بچے کہاں تھا تو کیوں اپنی دادی سے دور چلا گیا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔کیوں ۔۔۔۔۔دادی نے روتے ہوے اسے جھنجھورا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے دادی کا سر چوما ۔۔۔۔۔لیکن بولا کچھ نا۔۔۔۔۔۔۔نظریں ابھی بھی پنار کی طرف تھی ۔۔۔۔۔۔جو اسے بے تاثر نگاہوں سے دیکھ رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔اسد اور ناہید دادی کے اونچا اونچا رونے پر بوکھلاتے ہوئے کمرے سے باہر آئے. ۔۔۔۔۔دادی سے لپٹے ہرمان کو دیکھ کر وہ بھی اپنی جگہ پر ساکت ہوئے تھے ۔۔۔۔۔۔۔کیوں آئے ہو تم ،جہاں سے آئے ہو وہی چلے جاو تو تمہارے لیے بہتر ہو گا۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔اسد نے غصے سے اسے دیکھتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔اسد کیسی باتیں کر رہے ہیں آپ ۔۔۔۔۔۔ہرمان میرے بچے میرے سینے سے لگ جاو ۔۔۔۔۔۔۔ناہید نے اسکی طرف دوڑتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے بھی انہیں اپنے گلے سے لگائے ان کا منہ چوماں ۔۔۔۔۔۔ہرمان تمہیں زرا ماں کی یاد نا آئی ۔۔۔۔۔۔۔کیوں رہے اتنا عرصہ ہم سے دور ۔۔۔۔۔۔کوئی رابطہ نا رکھا ہم سے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ناہید نے اس کا منہ چومتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
ہانی ناشتہ کرتے ہوئے پٹر پٹر سب کو دیکھا رہا تھا۔۔۔۔۔پھر ایک نظر اس ہینڈسم سے انسان کو دیکھا ۔۔۔۔۔۔۔اور آنکھیں سکیڑیں ۔۔۔۔۔۔۔۔آپ کون ہو اور میرے دادا اور دادی کو رولا رہیے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہانی نے چیئر سے اٹھتے یوئے غصے سے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے پلٹ کر خیرانی سے اس صحت مند بچے کو دیکھا جو اپنی عمر سے بڑا لگ رہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان اسکی شکل دیکھ کر چونکا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔لیکن اس طرف تو اس کا دھیان ہی نہیں گیا تھا کہ یہ اس کا بچہ بھی ہو سکتا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے سوالیہ نظروں سے دادی کو دیکھا ۔۔۔۔تمہارا بیٹا ہے میرے بچے دادی نے محبت پاش لہجے میں کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان کو ایسے لگا ۔۔۔۔۔۔جیسے ساتوں آسمان اس پر گرے ہوں ۔۔۔۔۔۔۔اسنے بچے کو غور سے دیکھا ۔۔۔۔جو کمر پر اپنے چھوٹے چھوٹے ہاتھ رکھے اسے گھورے جارہا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے بے یقینی سے پنار کی طرف دیکھا ۔۔۔۔۔۔۔۔جو غصے سے دوسری طرف دیکھ رہی تھی ۔۔۔۔۔۔وہ آہستہ آہستہ بچے کی طرف بڑھا۔۔۔۔۔۔۔۔یہ میرا بیٹا ہے ۔۔۔۔اس نے پنار سے بے یقینی سے پوچھا۔۔۔۔۔۔پنار بنا جواب دئیے کمرے کی طرف تیز قدموں کی طرف چلی گئی۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے لب بھینچ کر اسکی پشت کو دیکھا
اور پھر اپنے بیٹا کی طرف ۔۔۔۔۔۔نیچے بیٹھ کر اسکی طرف ہاتھ بڑھایا۔۔۔۔۔۔جس نے اس کے ہاتھوں کو اگنور کر کے جس طرف پنار گئی تھی ۔۔۔۔۔اسی طرف چلا گیا ۔۔۔۔۔۔۔ہرمان اپنے خالی ہاتھوں کو خالی خالی نظروں سے دیکھ کر رہ گیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔کہاں تھے اتنا عرصہ تم ۔۔۔۔۔۔۔اسد نے کندھے سے پکڑ کر اس کا رخ اپنی طرف کرتے ہوئے غصے سے پوچھا ۔۔۔۔۔ہرمان نے کوئی جواب نا دیا۔۔۔۔۔۔۔بس اسی طرف دیکھے جا رہا تھا۔۔۔۔۔۔۔جس طرف وہ دونوں ماں بیٹا گیے تھے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
ؐلو پکڑو اور سنبھا لو اپنی بیٹی کو ۔۔۔۔۔۔تمہارا بھی فرض ہے اسے سنبھالنا۔۔۔. . میں کوئی میکے سے نہیں لے کر آئی تھی اسے۔۔۔۔۔۔۔ژالے نے پری کو اس کی گود میں ڈال کر کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔یار میں ابھی آفس سے آیا ہوں ۔۔۔۔۔اور تم نے مجھے آتے ہی کام پر لگا دیا۔۔۔۔۔امی یا چچی کو دے آو۔۔۔۔۔۔عمر نے اپنی رونے کے لیے تیار بیٹی کا گال چومتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔سارا دن امی لوگوں کے ہی پاس تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔ژالے نے بے نیازی سے جواب دیتے مسکراہٹ دبائی۔۔۔۔۔۔۔۔اچھا تو ژالے میڈم کیا کر رہی تھی سارا دن ۔۔۔۔۔۔۔۔عمر نے بھنویں اچکاتے ہوئے پوچھا ۔۔۔۔۔۔۔۔میں ۔۔۔۔۔۔۔آپ دونوں پھر سے شروع مت ہو جانا۔۔۔۔۔۔۔اسے مجھے دیں ۔۔۔۔میری پری کو مارا ہے ۔۔۔کس نے مارا ۔۔۔۔۔۔۔عذوبہ نے اسے عمر کی گود سے لیتے ہوئے پیار سے کہا۔۔۔۔۔۔اور پھر اسی طرح اس سے لاڈ کرتی کمرے سے باہر چلی گئی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔یار کچھ کھانے کو ہی لادو ۔۔۔۔۔۔عمر نے پیچھے سے اسے اپنے حصار میں لیتے ہوئے چہرہ اس کے کندھے پر رکھتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اف عمر کبھی تو رومینس اور کھانے کے علاوہ بھی بات کر لیا کرو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ژالے نے اس کی قربت پر جھنجھلاتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔جھوٹ ۔۔۔تمہارے علاوہ مجھے کہاں کچھ سوجھتا ہے ۔۔۔۔۔۔یہ کھانا تو میں دنیا داری کے لیے کھاتا ہوں ۔۔۔۔ ورنہ تمہیں دیکھ کر ہی میری بھوک پیاس سب مٹ جاتی ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔بول لیا ۔۔۔ژالے نے اس سے الگ ہوتے ہوئے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔ہممم ۔۔۔۔عمر نے سر ہلا کر دوبارہ اسے اپنے قریب کھینچا ۔۔۔۔۔۔۔۔اف کیا لاوں کھانے کے لیے کیونکہ تبھی تم میری جان چھوڑو گئے۔۔۔۔۔۔۔۔ژالے نے اسکی شرارتوں پر روہانسی ہو کر کہا۔۔۔۔۔۔۔زیادہ کچھ نہیں ۔۔۔۔۔۔۔بس سینڈوچ رول،کباب،فرائز،اور چائے ۔۔۔۔۔۔۔عمر کو اس سے کام لینا آتا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔کیااا اتنا کچھ کھاو گئے تو پھر ڈنر کہاں کرو گئے ژالے نے غصے سے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔یار اس کی فکر مت کرو ۔۔۔۔۔۔میرے معدے اور دل میں کھانے اور تم سے محبت کرنے کی بہت گنجائش ہے ایڈجیسٹ کر لوں گا میں۔۔۔۔۔۔۔عمر نے فخریہ انداز میں کہا۔۔۔۔۔۔۔ژالے نے جواباً زور سے مکہ اس کے سینے پر مارا۔۔۔۔۔۔۔انتہائی کوئی ظالم بیوی ہو قسم سے ۔۔۔تمہیں تو شکرانے کے نفل پڑھنے چاہئے جو میرے جیسا پیار کرنے والا شوہر ملا ۔۔۔۔۔۔۔۔ورنہ کہاں ملتے ہیں آج کل مجھ جیسے شریف لڑکے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔عمر نے اس کے چہرے پر جھکتے ہوئے معنی خیزی سے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ “
🍁🍁🍁🍁🍁🍁
اب کیوں آگیا ہے وہ نا آتا اب بھی ۔۔۔۔۔۔۔پنار نے غصے و غم کے ملے جلے احساس سے بیڈ پر بیٹھتے ہوئے بڑبڑائی ۔۔۔۔۔۔اللہ یہ انسان پہلے سے خوبصورت ہو کر آیا ہے ۔۔۔۔۔۔اور میں اس کی ہی جدائی میں رل کر رہ گئی ۔۔۔۔۔۔۔پنار نے آنسو صاف کرتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔لیکن اب اور نہیں روں گئی ۔۔۔۔۔۔بلکہ تمہیں رولاوں گئی ۔۔۔۔جس نے میری زندگی کے اتنے قیمتی سال گنوا دئیے ۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے اس بار بے دردی سے آنسو صاف کرتے ہوئے سوچا ۔۔۔۔۔۔۔۔مما آپ کیوں رور رہی ہیں ۔۔۔۔۔۔۔کیا اس ہینڈسم کی وجہ سے رو رہی ہیں ۔۔۔۔۔۔اگر ایسا ہے تو چھوڑوں گا نہیں میں اسے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہانی نے مٹھیاں بھینچتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔پنار اس کے رئیکشن پر روتی روتی مسکرائی ۔۔۔۔۔۔۔اف ہانی کہاں سے لاتے ہو ایسی باتیں ہاں ۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے اسے بازو سے پکڑتے ہوئے اپنے نزدیک کرتے ہوئے کہا. . . پیٹ سے ۔۔۔۔۔۔۔ہانی نے پیٹ پر ہاتھ رکھتے ہوئے معصومیت سےکہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہاہا ۔۔۔۔پنار بے ساختہ مسکرائی ۔۔۔۔۔۔۔اندر آتا ہرمان اسکی مسکراتی آواز پر رکا تھا ۔۔۔۔۔۔اور سالوں سے دید کی پیاسی آنکھوں کو جیسے راحت آئی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔آپ یہاں بھی آگے اور وہ بھی بنا نوک کیے ۔۔۔۔۔اٹس بیڈ مینرز۔۔۔۔۔۔ہانی نے اسے دروازہ سے آگے کھڑے دیکھ کر اسے سمجھایا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔پنار کے ہونٹ اسے دیکھ کر سکڑے تھے ۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان ہلکا سا مسکرایا ۔۔۔۔۔۔۔اور ایسا آپ کو کس نے کہا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے اس کے پاس نیچے بیٹھتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔مما نے ۔۔۔۔ہانی نے اپنی ماں کی طرف اشارہ کرتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔او ۔۔۔ہرمان نے سر ہلایا ۔۔۔۔۔پنار کھڑی ہوئی ۔۔۔۔۔اور باہر کی طرف لپکنے ہی لگی تھی ۔۔۔۔جب ہرمان نے سرعت سے اٹھ کر اسکی کلائی تھامی تھی ۔۔۔۔۔۔۔پنار نے نا آو دیکھا نا تاو وہی ہاتھ کھینچ کر اسکی گال پر زور سے مارا۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے سر جھکائے اس سے تھپڑ کھایا ۔۔۔۔۔۔۔۔ہانی نے بھی خیرانی سے اپنی ماں کو دیکھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہمت بھی مت کرنا آئندہ میرا ہاتھ تھامنے کی ۔۔۔۔۔۔۔۔پنار اسے انگلی سے وارن کرتے ہوئے ۔۔۔۔ہانی کا بازو پکڑا اور باہر چلی گئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پیچھے وہ اس کی پشت پر نظریں جمائے زخمی سی مسکان سے مسکرایا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁
آپا کیسی ہیں آپ ۔۔۔۔۔ہائمہ نے فون پر اپنی بہن کو رائمہ کو پوچھاا۔۔۔۔۔۔۔جو شادی کے چھ ماہ بعد ہی باہر شفٹ ہو گئے تھے ۔۔۔۔۔۔اس کا ایک خوبصورت سا دو سال کا بیٹا بھی تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔میں ٹھیک ہوں تم سناو۔۔۔۔۔اور گھر میں سب کیسے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔”رائمہ نے اپنے بیٹے کو کھانا کھلاتے ہوئے پوچھا ۔۔۔۔۔۔۔یہاں بھی سب ٹھیک ہیں ۔۔۔۔۔۔آپا میں آپ سے بعد میں بات کرتی ہوں رومان آگے ہیں ۔. ۔۔۔۔۔۔رومان کو کمرے میں ْآتا دیکھ کر کہا جس نے مریم کو اٹھایا ہوا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ آگئے آپ ۔۔۔۔ہائمہ نے کھڑے ہو کر اسکی طرف بڑھتے ہوئے پوچھا ۔۔۔۔۔۔۔جی ہاں ۔۔۔۔۔رومان نے کہتے ہوئے اس کے ماتھے پر لب رکھے ۔۔۔۔۔۔تیار ہو جاو پھر چیک اپ کے لیے جانا ہے۔۔۔۔ رومان نے مریم کو بیڈ پر بٹھاتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور ہاں سنو وہی سے پنار آپا کی طرف چلے جائیں گئے ۔۔۔۔اس لیے مریم کو بھی تیار کردو ۔۔۔۔۔۔۔۔اچھا۔۔۔۔۔ہائمہ نے اپنے اور اسکے کپڑے نکالتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
گرینڈ دادو یہ کون ہیں ۔۔۔۔۔۔۔ہانی نے دادی کی گود میں سر رکھے لیٹے ہرمان کو دیکھ کر پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان اسکی معصوم سی شکل دیکھ کرمسکرایا ۔۔۔۔۔۔۔ادھر آو میں بتاتا یوں کہ میں کون ہوں ۔۔۔۔۔۔ہرمان نے اسے اپنے پاس بلاتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔ہانی نے پہلے اسے گھورا ۔۔۔اور پھر کہا۔۔۔۔۔۔سوری میری مما کہتی ہیں انجان انکل سے بات نہیں کرنی اور نا ہی ان کی بات سننی ہے ۔۔۔۔۔۔۔ تو میں کیوں آپ آاپ کی بات مانوں ۔۔۔۔۔ہانی نے اپنےہاتھ پیچھے باندھتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔کھانا لاتی ناہید بھی مسکرائی تھی اسکی بات پر ۔۔۔۔۔ہرمان کے ہونٹ بھی صدیوں بعد مسکرائے تھے جیسے۔۔۔۔۔۔۔۔ہانی یہ تمہارے ڈیڈ ہیں بیٹا ۔۔۔۔ناہید نے اسے سمجھایا ۔۔۔۔۔۔جی نہیں میرے ڈیڈ تو عمر انکل ہیں اور رومان ماموں ہیں اور حارث چچو ہیں ۔۔۔۔۔۔۔یہ تو میرے ڈیڈ نہیں ۔۔۔۔ہانی نے پیر پٹختے ہوئے ان کی عقل پر جیسے ماتم کیا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اسے صرف اسکی ماں ہی سمجھا سکتی ہے ۔۔۔۔۔ناہید نے اس کے آگے کھانا رکھتے ہوئے تاسف سے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان صرف ہونٹ بھینچ کر اس ننھے استاد کو دیکھ کر رہ گیا جو اب ۔۔۔۔۔اسکی نقل کرتے ہوئے دادی کی گود میں سر رکھ چکا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور ہرمان کو جتاتی نظروں سے دیکھا تھا جیسے کہا ہو یہ میری گرینڈ دادی ہیں”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
پنار رات کا کھانا دیکھ رہی تھی ۔۔۔۔۔جب اپنے پیچھے اسکی موجودگی نوٹ کی تھی ۔۔۔۔۔۔اور پلٹ کر اسے دیکھا ۔۔۔۔۔۔۔آپ میری بات پہلے سن لیں پھر چاہے کوئی بھی سزا دیں مجھے منظور ہوگئی ۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے اسکے بلکل قریب آکر کہا ۔۔۔۔۔۔۔پلیز۔۔۔۔پنار کے چپ چاپ جانے پر اس نے التجا کی ۔۔۔۔۔۔مجھے سے مخاطب مت ہونا یہی تمہارے لیے بہتر ہو گا ۔۔۔۔۔پنار نے انگلی سے وارننگ دیتے ہوئے سرد لہجے میں کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کیا آپ کا ہرمان آپ سے اتنا عرصہ دور رہ سکتا ہے ۔۔۔۔آپ خود سوچیں پلیززز۔۔۔۔۔۔ہرمان نے اس کا بازو زبردستی تھامتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔ڈونٹ ٹچ می۔۔۔پنار نےدرشتگی سے اس سے اپنا بازو چھڑاتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔تم ہمیشہ اپنی مرضی کرتے آئے ہو ۔۔۔۔۔۔سو پلیز اب بھی اپنی مرضی ہی کرو اور مجھ میرے حال پر چھوڑ دو ۔۔۔۔۔۔پنار نے اسے دھکا مارتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے اس کے بازو تھانے اور اسے زبردستی اپنے گلے سے لگایا ۔۔۔۔۔اور اپنے ساتھ بھیچنے کی حد کردی ۔۔۔۔۔۔۔پنار کو ایسے لگا جیسا وہ اس میں پیوست ہوجائے گئی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور دیوانہ وار اس کے ایک ایک نقش کو چومنے لگا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
امی کیا سچ میں ۔۔۔۔۔۔۔عذوبہ نے خیرت سے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔ہاں ایسا ہی میری بچی صبح چھ بجے آیا تھا میرا بیٹا ۔۔۔۔۔مجھ سمجھ نہیں آرہی کہ میں کیا کروں ۔۔۔۔۔۔۔میں نے تو صدقہ وغیرہ بھی دے دیا ہے ۔۔۔. ۔۔۔۔مرام کو بھی فون کر دیا ہے وہ بھی آج پہنچ جائے گئی ۔۔۔۔۔۔۔امی میں بھی ابھی آتی ہوں ۔۔۔۔عذوبہ نے اپنے آنسو صاف کرتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔موم اور بھابھی ان کا کیا رئیکشن ہے وہ خوش ہیں ۔۔۔۔۔۔عذوبہ نے پریشانی سے پنار کا پوچھا ۔۔۔۔۔۔۔بات نہیں کر رہی اس سے ۔۔۔۔آہستہ آہستہ ہی وہ سنبھلے گئی ۔۔۔۔۔ناہید نے پریشانی سے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہمم اور ہانی میری جان کو بتا دیا ۔۔۔۔۔۔عذوبہ کے لہجے میں اپنے بھتیجے کے لیے محبت ہی محبت تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔وہ کہاں سنتا ہے اپنے باپ کی طرح کسی کی اپنی مرضی ہو گئی تو ہی مانے گا ورنہ نہیں۔۔۔۔۔۔۔اچھا امی میں گھر میں سب کو یہ نیوز دے دوں ۔۔۔۔۔۔۔۔پھر ہم آتے ہیں ۔۔۔۔۔عذوبہ نے خوشی سے پُر لہجے میں کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
ُپنار نے اپنا پورا زور لگا کے اس سے دور ہوئی ۔۔۔۔۔یہ کیا کر رہے ہیں آپ میری مما کے ساتھ ۔۔۔۔۔۔ہانی نے غصے سے پوچھا
🍁🍁🍁🍁

–**–**–
جاری ہے
——
آپکو یہ ناول کیسا لگا؟
کمنٹس میں اپنی رائے سے ضرور آگاہ کریں۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Subscribe For Latest Novels

Signup for Novels and get notified when we publish new Novel for free!




%d bloggers like this: