Mera Ishq Teri Anayat Novel by Faiza Ahmed – Episode 38

0
میرا عشق تیری عنایت از فائزہ احمد – قسط نمبر 38

–**–**–

ہانی غصے سے کچن کے دروازے پر کھڑا ہرمان کو گھور رہا تھا ۔۔۔۔۔۔ہرمان مسکرایا ۔۔۔۔۔۔آپ کی مما سے پیار ۔۔۔۔آپ کو بھی کر لوں ۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے پنار کی طرف دیکھ کر کہا ۔۔۔۔۔جس کا غصے سے برا حال ہوا تھا ۔۔۔۔۔شٹ اپ میرے بیٹے سے اس طرح کی بہودہ باتیں کرنے کی ضرورت نہیں تمہیں ۔۔۔۔۔۔۔پنار نے تلخی سے کہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔میری مما سے صرف میں ہی پیار کر سکتا ہوں کوئی اور نہیں ۔۔۔۔۔اگر آئندہ ایسا کیا تو میں نے عمر ڈیڈ سے کڑاٹے بھی سیکھے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔ہانی نے ہاتھوں پر ہاتھ مارتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔چلو ہانی یہاں سے ۔۔۔۔۔۔۔پنار اسے لیے کچن سے چلی گئی ۔۔۔۔۔۔۔۔پیچھے ہرمان پاکٹ میں ہاتھ ڈالے مسکرایا تھا اپنی محصوص مسکراہٹ سے۔۔۔۔۔۔۔۔مما یہ ہینڈسم سا کون ہے ۔۔۔۔۔۔آپ کے ڈیڈ ۔۔۔۔۔کیا ۔۔۔۔۔۔لیکن ڈیڈ تو ساتھ رہتے ہیں ۔۔۔۔۔ہانی نے اسکی گود میں گھستے ہوئے کہا۔ ۔۔۔۔۔۔ہاں ۔۔۔۔لیکن کبھی کبھی ڈیڈ کو کام کرنے کے لیے باہر بھی جانا پڑھتا ہے ۔۔۔۔۔۔پنار نے اسکے سر پر ہتھوڑی رکھتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔”مما تو پھر آپ ان سے لڑتی کیوں ہیں اور غصہ بھی کرتی ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔ہانی نے منہ بناتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔اف ہانی ۔۔۔۔پنار نے زچ ہو کر کہا۔ ۔۔۔۔۔جو باتوں کی تہہ تک گھستا تھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔پنار نہیں چاہتی تھی اس کے دل میں ہرمان کے لیے کوئی غلط فہمی آئے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁
بھائی کیوں گئے ہیمں چھوڑ کر آپ ۔۔۔عذوبہ اس کے کندھے سے لگی شوں شوں کرتی اس سے شکایت کر رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔بس آگیا نا ،اب رونا بند کرو۔۔۔۔ہرمان نے اس کے آنسو صاف کرتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔رومان اور ہائمہ بھی آئے بیٹھے تھے ۔۔۔۔۔۔۔سب اس وقت لاونج میں بیٹھے تھے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔جبکہ عمر اور حارث باقاعدہ اسے گھوریوں سے نواز رہے تھے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔رومان بہت مشکل سے غصے کو کنٹرول کیے ہوئے بیٹھا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار تیار ہو جاو ہم گھر چل رہے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان جو عمر اور حارث کو منا رہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔رومان کی بات ہر ساکت نگاہوں سے اسے دیکھا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے بھی چونک کر رومان کو دیکھا ۔۔۔۔۔۔۔۔رومان بیٹا ۔۔۔۔آپ ۔۔۔۔۔۔پلیز انکل میں اب کوئی اور بات نہیں کرنا چاہتا ۔۔۔۔۔۔پنار آپا آپ نے شاید سنا نہیں ہے یا میں خود آپ کی پیکنگ کردوں ۔۔۔۔۔۔رومان بھائی آپ میری بات ۔۔۔۔۔۔۔میں تم سے مخاطب نہیں ہوں ۔۔۔۔۔۔۔۔سب پریشان نگاہوں سے رومان کو دیکھ رہے تھے ۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے لب بھینچ کر پنار کی طرف دیکھا جو ہاتھوں کی انگلیاں مڑور رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان کی نگاہ اس کے گلے میں لٹکتے اپنے دئیے ہوئے لاکٹ پر پڑی تھی ۔۔۔۔۔جو اپنی پوری اب و تاب سے چمک رہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان کے ہونٹ پریشانی میں بھی مسکائے ۔۔۔۔۔۔وہ بظاہر تو اس سے نفرت کا اظہار کر رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔لیکن اندر سے ابھی بھی اس کی قربت کی خواں تھی ۔ ۔۔۔۔۔۔۔سوری لیکن پنار آپ کے ساتھ نہیں جائیں گئی ۔۔۔۔۔۔کس حق سے کہہ رہے ہو تم یہ سب۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔رومان نے کھڑے ہوتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔رومان بیٹا چھوڑو دو پرانی باتیں اب ۔۔۔۔۔دادی نے اسے سمجھانے کی کوشش کی ۔۔۔۔۔۔۔۔سوری لیکن پنار آپا میرے ساتھ جائیں گئی۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔رومان پلیز ۔۔۔۔ہائمہ نے اس کا بازو پکڑ سمجھانے کی کوشش کی ۔۔۔۔۔۔۔ہائمہ تم چپ رہو ۔۔۔۔۔کیا آپ لوگ نہیں جانتے میری آپا نے یہ چار سال کتنی اذیت میں گزارا ۔۔۔۔۔۔۔آپ لوگ بھول گئے ہیں اپنے بیٹے کو دیکھ کر لیکن میں نہیں بھول سکتا ۔۔۔۔۔۔۔جب ڈلیوری کے وقت ان کی کریٹیکل خالت دیکھ کر ڈاکٹر نے جواب دے دیا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔رومان نے غصے سے کہا ۔۔۔۔۔۔۔”آپا آپ چلیں گئی میرے ساتھ یا نہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے لب بھینچ کر اسے دیکھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔پھر کمرے کی طرف بڑھی ۔۔۔۔۔۔۔ایک منٹ آپ کہی نہیں جائیں گئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے اس کی کلائی تھام کر کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔میں کہی نہیں جانے دوں گا ۔۔۔۔۔۔انہیں ۔۔۔۔۔۔ہرمان نے اسے اپنے قریب کھینچ کر کہا ۔۔۔۔۔۔۔پنار تو بوکھلا کر رہ گئی تھی جو اسے اتنے لوگوں کے بھیچ اپنے سینے سے لگا چکا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہاں رہا میں ان سے اتنی دور ۔۔۔۔۔۔۔اگر کسی میں اتنی ہمت ہے تو لے جا کر دیکھائے انہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے اس کے چہرے کو ہاتھوں میں لے کر اس کا سر چوما تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار کی آنکھوں سے آنسو ٹوٹ کر گرے تھے ۔۔۔۔۔۔چھوڑو میری بہن کو رومان نے اس کا بازو پکڑا ۔۔۔۔۔۔۔۔کیا تماشا لگایا ہوا ہے تم دونوں نے بچی پریشان ہو رہی ہے ۔۔۔۔۔سب کے چہروں ہر ہوائیاں اڑ رہی تھی ۔۔۔صورت حال دیکھ کر ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔دادی نے غصے سے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔رومان نے غصے سے مٹھیاں بھینچی اور تیز تیز قدموں سے باہر کی طرف چلا گیا ۔۔۔۔پیچھے ہائمہ بھی بوکھلاتے ہوئے بڑھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے اس کا ہاتھ جھٹکا اور رومان کے پیچھے بھاگی ۔۔۔۔ ۔ ۔ تب تک وہ گاڑی سٹارٹ کر چکا تھا اور تیزی سے گاڑی باہر نکال لی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔رومان ۔۔۔۔پنار نے آواز لگائی ۔۔۔۔۔لیکن بے سود ۔۔۔۔۔۔۔پنار نے لب کاٹے ۔۔۔۔۔مما کیا ہوا ہے ۔۔۔۔۔آپ رو کیوں رہی ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔رومان نے اس کے ڈوپٹے کا پلو پکڑتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔کچھ نہیں ۔۔۔۔۔۔۔پنار نے اسے باہوں میں اٹھاتے ہوئے کہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁
شرم بھیچ کھائے ہو تم ۔۔۔۔۔۔تمہاری ہمت بھی کیسے ہوئی سب کے سامنے اس طرح کی بے ہودہ خرکت کرنے کی ہاں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان جو ابھی نہا کر نکلا تھا ۔۔۔۔۔۔پنار نے غصے سے اس کے پاس آکر کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔آپ میری بیوی ہیں ۔۔۔۔اس میں شرم کرنے والی کیا بات ہے ۔۔۔۔۔۔ہرمان نے ٹاول سے بال خشک کرتے ہوئے کہا اور پھر اس کی ٹائٹ پونی ڈھیلی کی ۔۔۔۔۔۔۔۔پنار ایک لمہے کے لیے ساکت ہوئی تھی ۔۔۔۔۔کہاں کوئی کہتا تھا پونی ڈھیلی کیا کریں ورنہ سر درد کرے گا آپ کا۔ ۔۔۔۔۔اور پھر اس کے گال پر اپنے ٹھنڈے ہونٹ رکھے۔۔۔۔۔۔بلکہ پنار کو چڑایا ۔۔۔۔۔۔پنار نے غصے سے اسے پراں کیا۔ ۔۔دور رہو مجھ سے ۔۔۔۔پنار غصے سے صرف یہی کہہ سکی ۔۔۔۔۔۔۔۔اور پیر پٹختی ہوئی باہر چلی گئی۔۔۔۔۔۔۔ہرمان سالوں بعد کھل کر مسکرایا تھا ۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁

میرے ساتھ کھیلو گئے ۔۔۔۔۔۔ہرمان نے عتبہ کے ساتھ کرکٹ کھیلتے ہوئے ہانی سے پوچھا ۔۔۔۔۔۔۔جس نے پرسوچ نظروں سے اسے دیکھا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔لیکن آپ تو بڑے ہیں ہم سںے ۔۔۔۔۔۔۔ہانی نے منہ بسورتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔”یار عتبہ کو بھی تو کھیلا رہے ہو نا مجھے بھی کھیلا لو ۔۔ہرمان نے اس کے پاس آکر بیٹ پکڑتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ سب گارڈن میں بیٹھے تھے ۔۔۔۔۔۔۔احد کے گھر والے بھی تھے ۔۔۔۔۔۔۔پنار کچن میں کھڑی چائے کے ساتھ باقی لاوازمات ٹرے میں رکھ رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔تم یہ چائے پکڑو میں یہ اٹھا لیتی ہوں ۔۔۔۔۔۔پنار نے نوری سے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”پنار جب چائے لیے آئی ۔۔۔۔ ہرمان اپنے بیٹے کے ساتھ کرکٹ کھیلنے میں مصروف تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔” ارے بیٹا نوری بنا لیتی تم نے کیوں بنائی ۔۔۔۔۔منیبہ نے اس کے ہاتھ سے چائے پکڑتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔اٹس اوکے انٹی ۔۔۔۔۔۔پنار نے مسکرا کر کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔پنار ابھی سیدھی ہی ہوئی تھی جب اُڑتی ہوئی بال آکر پنار کی کمر پر لگی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔پنار کمر پر ہاتھ رکھے پلٹی ۔۔۔۔۔۔۔باقی سب نے بھی خیرانی سے ہرمان کو دیکھا ۔۔۔۔۔۔جو پریشانی سے پنار کو دیکھ رہا تھا ۔۔۔۔ڈیڈ آپ نے میری مما کو مارا ۔۔۔۔۔ہانی نے غصے سے پوچھا۔۔۔۔۔اففف تم اور تمہاری مما اب مجھے کہاں چھوڑے گئی اللہ رخم کرے میرے حال پر۔ ۔۔۔ہرمان نے بیٹ نیچے پھینکتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار کو پتا نہیں کیا ہوا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔نیچے گری ہوئی بال پکڑی اور کھینچ کر اسے غصے سے ماری تھی ۔۔۔۔۔ہرمان چاہتا تو پیچھے ہٹ سکتا تھا ۔۔۔۔لیکن اسے نے خوشی سے اس کا پھینکا ہوا بال کھایا تھا اپنے کندھے پر۔۔۔۔۔۔۔۔۔

سب نے پنار کی طرف خیرت سے دیکھا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار گیند اسے مارنے کے بعد رکی نہیں تھی ۔۔۔۔۔۔تیز قدموں اندر چلی گئی ۔۔۔۔۔باقی سب ابھی بھی خیرت میں ڈوبے ہوئے تھے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔”اچھا کیا مما نے ۔۔۔۔آپ نے میری مما کو مارا تھا نا ،میں بھی آپ کو ماروں گا۔۔۔۔۔۔۔ہانی نے غصے سے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔اور پھر منہ بناتے ہوئے دوبارہ کرکٹ کی طرف متوجہ یو گیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے اپنے بدلخاظ بیٹے کو گھورا ۔۔۔۔۔اور پھر پنار کے پیچھے لپکا ۔۔۔۔۔۔”
پنار نے کمرے میں آ کر ادھر ادھر آ کر چکر کاٹنے شروع کر دئیے۔۔۔۔۔اور پھر ایک منٹ میں سارے کمرے کی خالت خراب کر دی ۔۔۔۔۔۔آپ مجھ سے ناراض ہیں ۔۔۔۔۔۔ہرمان نے کمرے کے بیچوں بیچ کھڑی پنار سے پوچھا ۔۔۔۔۔۔نہیں ۔۔۔۔۔پنار کہہ کر اسکی طرف بڑھی ۔۔۔۔۔۔۔میں کیوں تم سے ناراض ہوں گئی۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے اسکی بڑھتے ہوئے سرد انداز میں کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان اسے اپنی طرف بڑھتے دیکھ کر چونکا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار بلکل اس کے قریب ایک قدم کے فیصلے پر کھڑی ہوئی ۔۔۔۔۔۔دونوں ایک دوسرے کی آنکھوں میں دیکھ رہے تھے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ایک کی نگاہ میں غصہ تھا تو دوسرے کی نگاہ میں صرف محبت ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔آپ مجھے معاف نہیں کریں گئی ۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے گھمبیر انداز میں کہتے ہوئے ایک قدم کا فیصلہ بھی مٹایا ۔۔۔۔۔۔۔۔پنار اسکی قربت سے گھبرا کر دو قدم پیچھے ہوئی اور اسے گھورا ۔۔۔۔۔۔ہرمان نے وہ فاصلہ پھر مٹا دیا ۔۔۔۔۔۔جاو یہاں سے پنار نے باہر کی طرف اشارہ کیا ۔۔۔۔میں نہیں جاوں گا ۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے ازلی ًڈیٹھ پن سے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔کیوں ۔۔۔۔پنار نے گھور کر پوچھا ۔۔۔۔۔۔۔۔میری مرضی ۔۔۔۔۔پنار نے اسے دھکے سے دور کرنے کی کوشش کی لیکن ناکام ثابت ہوئی ۔۔۔۔۔۔۔آپ مجھے سے کب تک خفا رہیں گئی ۔۔۔۔۔۔۔۔پلیز میں آپ سے اور دور نہیں رہ سکتا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے اپنی ناک اس کی ناک سے جوڑتے گھمبیر لہجے میں کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اتنا عرصہ بھی تو دور رہے تھے نا اب بھی رہو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے پلٹ کر کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور واش روم کی طرف بڑھ گئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”ہرمان نے بے بسی سے مکہ دیوار پر زور سے مارا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور غصے سے باہر چلا گیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
کیا کروں میں، تمہیں اس طرح دیکھ بھی نہیں سکتی میں پنار واٹر ٹیپ کھولتے ہوئے منہ پر پانی کے تھپرے مارتے ہوئے سوچا ۔۔۔۔۔۔۔۔پھر چینج کر کے باہر آئی ۔۔۔۔۔۔لیکن لاونج میں ایک انتہائی خسین لڑکی کو دیکھ کر ٹھٹھکی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔سب لوگ وہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔وہ سنمب سے اپنے محصوص انگلش لہجے میں ہائے ہیلو کر رہی تھی۔۔۔۔۔۔اور پھر ہرمان کی طرف بڑھی اس کے گلے لگنے کے لیے ۔۔۔۔۔۔لیکن ہرمان نے جلدی سے اس کے آگے اپنا ہاتھ کر دیا ۔۔۔۔۔جس نے بنا شرمندہ ہوئے اس کا ہاتھ تھام لیا ۔۔۔۔۔۔۔پنار نے سرخ چہرے سے یہ منظر دیکھا ۔۔۔۔۔۔۔ہرمان کی اچانک نظر اس پر پڑی اور اپنا ہاتھ ایسے کھیچا جیسے اسے کوئی ڈنگ لگا ہو ۔۔۔۔۔۔۔۔پنار آہستہ آہستہ قدموں سے ان کی طرف آئی ۔۔۔۔۔۔۔۔ہیلو بیوٹی فل لیڈی ۔۔۔۔۔۔۔ہانی نے اس کی طرف اپنا ہاتھ بڑھایا ۔۔۔۔۔۔ مارلن نے مسکراتے ہوئے اس کا ہاتھ تھام کر اس کے قریب بیٹھی ۔۔۔۔۔پنانے گھور کر اپنے دل پھینک بیٹے کو دیکھا ۔۔۔جو باپ سے بھی دو قدم آگئے تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے لب بھینچ کومر اپنی بیوی کو دیکھا ۔۔۔۔جو مارلن کو غصے والی نظروں سے دیکھ رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان میرا تعارف تو کرواو سب سے ۔۔۔۔۔مارلن نے ہرمان کو دیکھتے ہوئے خوش اخلاقی سے کہا ۔۔۔۔۔۔۔ہممم ،ہرمان نے سر ہلایا ۔۔۔۔۔۔یہ مارلن ہے میری دوست یونیورسٹی میں میرے ساتھ پڑھتی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔اسے پاکستان دیکھنے کا بہت شوق تھا ۔۔۔۔اس لیے پاکستان آئی ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے جیسے سب کو اپنی صفائی پیش کی ہو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور مارلن یہ میری مون،ڈیڈ،دادی ،مائے سن ،اور یہ میری بیوی ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے سب سے تعارف کروانے کے بعد پنار کے کندھوں سے رھام کر اس کا تعارف کروایا ۔۔۔۔۔۔جس نے ضبط سے ہونٹ بھینچ کر اس کا یاتھ کندھے سے ہٹایا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔مارلن جو سب سے مسکرا کر مل رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔بیوی کے تعارف پر اس کے مسکراتے ہونٹ سکڑے تھے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار کا تو دل کر رہا تھا کہ وہ ہرمان کو کھینچ کر ایک تھپڑ اور مارے ۔۔۔۔۔۔وہ یہاں اس کے لیے تڑپ رہی تھی اور وہ تھا کہ وہاں دوستیں بناتا پھڑ رہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔سب لوگ پنار کی طرف پریشانی سے دیکھ رہے رتھے۔۔۔۔۔۔۔۔نائس ٹو میٹ یو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔مارلن نے مروت سے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔سوری لیکن میں پہلی ملاقات میں کسی سے یہ نہیں کہہ سکتی کہ وہ مجھے اچھا لگا یا برا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے نروت نبھانا بھی ھروری نا سمجھا ۔۔۔۔۔۔۔ایکسوزمی میں کچن میں رات کا کھانا دیکھ لوں ۔۔۔۔۔۔پنار یرمان کو گھورتی ہوئی کچن میں چلی گئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے پریشان نظروں سے اسکی پشت کو دیکھا ۔۔۔۔۔اور پھر اسد کو جو اسے کھا جانے والی نظروں سے دیکھ رہے تھے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”مارلن نے مسکراتی نظروں سے ہرمان کے خوبصورت چہرے کو دیکھا ۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁
یار پری کو آج امی کو دے آو وہ سلا لیتی ہے ۔۔۔۔۔۔عمر نے ژالے کے کندھے پر ہتھوڑی رکھ کر کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔کیوں ۔۔۔۔وہ نہیں سوتی میرے بغیر ۔۔۔۔۔امی کو تنگ کرے گئی رات میں ۔۔۔۔۔۔۔۔ژالے نے اپنے ناخن تراشتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔یار ۔۔۔۔۔عمر نے اختجاجی کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔ژالے نے گھورا ۔۔۔۔آہستہ بولو جاگ جائے گئی ۔۔۔۔۔۔۔اور پھر اگر جاگ گئی تو تم سنبھا کو گئے سمحھے تم ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ژالے نے غصے سے اسے وارننگ دی ۔۔۔۔۔۔۔۔عمر نے اسے گھور کر اس کے بال کھینچے ۔۔۔۔۔۔۔۔کیا مسلہ ہے تمہیں ہاں ۔۔۔۔۔۔میرا مسلہ تم ہو ۔۔۔۔۔۔باہر چلیں ۔۔۔۔کافی دن ہو گئے ہیں ہمیں باہر گئے ۔۔۔۔۔۔۔سچی ۔۔۔۔۔ژالے نے اسکی طرف پلٹ کر جوش سے پوچھا ۔۔۔۔۔ہمم مچی۔۔۔۔۔۔عمر نے اس کے گال کھینچ کر کہا ۔۔. . ۔اف تم نے تو میرے گال کھینچ کھینچ کر بڑے کر دیئے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔ژالے نے اس کے کندھے پر ہاتھ مارتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔عمر جواباً مسکرایا ۔۔۔۔۔اچھا پھر میں پری کو امی کو دے آتی ہوں ۔۔۔۔۔۔ژالے نے چپل پہن کر کہا۔۔۔۔۔۔۔اچھا لیکن ابھی تو تم کہہ رہی تھی یہ امی کو تنگ کرے گئی ۔۔۔۔اور اب اپنے مطلب آنے پر فٹا فٹ امی کو دینے لگی ۔۔۔۔۔۔۔عمر نے گھور کر کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہاں تو اب اتنی چھوٹی سی بچی کو تو میں اتنی رات میں باہر لے جانے سے تو رہی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”ژالے نے جواب دے کر پری کو اٹھایا ۔۔۔۔۔۔اگر ابھی میں کوئی فرمائش کرتا نا تو تم نے پری کو بیچ لے آنا تھا ۔۔۔۔۔اب اپنی باری پر پری کو کیسے بیچ میں سے نکالا ۔۔۔۔۔۔عمر نے اسے ٹوکٹے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔تمہاری فرمائش کونسی پوری نہیں ہوئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہر وقت تو تمہاری گھٹنے سے لگ کہ بیٹھنے سے رہی تو رہی میں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ژالے کڑارا سا جواب دے کر چلی گئی ۔۔۔۔۔پیچھے عمر بیچارہ اپنی سی شکل لے کر رہ گیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁
“پنار سنجیدگی سے رات کا کھانا لگا رہی تھی جب سب ڈائنگ ٹیبل پر آئے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔”سب کرسیوں پر اپنی اپنی جگہ پر بیٹھے ۔۔۔۔۔۔۔ہرمان بھی ٹیبل پر آیا اور پنار کو سنجیدگی سے دیکھتے ہوئے اپنی جگہ پر بیٹھا ۔۔۔۔۔۔۔مارلن کو بھی نوری بلا کر لے آئی ۔۔۔۔۔۔جس نے چست پینٹ پر تنگ ہی شرٹ پہنی ہوئی تھی ۔۔۔۔۔۔ڈارک براون بال پشت پر لہرا رہے تھے ۔۔۔۔۔۔۔وہ وقعہ بہت خوبصورت تھی تیکھے نین نقوش والی ۔۔۔۔۔۔۔پنار نے اسے دیکھنے کے بعد جلدی دے ہرمان کے ساتھ اپنی جگہ پر پبیٹھی ۔۔۔۔۔۔۔۔مارلن جو ہرمان کے ساتھ بیٹھنے والی تھی ۔۔۔۔۔پنار کے بیٹھنے پر ایک پل رکی پھر دادی کے ساتھ خالی چیئر پر بیٹھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”دادی نے اس کی ڈریسنگ کو گھور کر دیکھا ۔۔۔۔۔۔۔ارے بیٹا یہ کیسے کپڑے پہنے ہیں تم نے ۔۔۔۔۔۔۔۔دادی نے اس کی ڈریسنگ کی طرف اشارا کرتے ہوے منہ پر انگلی رکھ کر پوچھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔” مارلن نے دادی کی بات پر اپنی ڈریسنگ کی طرف دیکھا ۔۔۔۔۔۔۔۔اماں آپ یہ لیں ۔۔۔۔۔میں نے آپ کے لیے بنایا ہے ۔۔۔۔۔۔ناہید بے شوگر لیس کسٹر کا باول انہیں پکڑاتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔” ارے یہ تم نے اچھا کیا ۔۔۔۔۔۔دادی نے خوش ہوتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔مما یہ کیا ہے ۔۔۔۔۔روٹی بیٹا پنار نے روٹی کی بائٹ اس کے منہ کی طرف لیجاتے ہوئےکہا ۔۔۔۔۔۔۔۔نو میں نپیں کھاوں گا یہ بورنگ فوڈ ۔۔۔۔۔ہانی نے منہ بناتے ہوئے ہاتھ باندھے ۔۔۔۔۔۔۔۔ایک تو یہ دونوں باپ بیٹا کسی دن مجھے پاگل کردیں گئے ۔ ۔ ۔۔۔پنار نے ہرمان کو دیکھ کر غصے سے سوچا ۔۔۔۔جس نے پنار کی طرف سمائل پھینکی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے غصے سے منہ دوسری طرف کر لیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔تو کیا کھانا ہے میرے ہانی نے ہرمان نے اس کی طرف جھکتے ہوئے پوچھا ۔۔۔۔۔۔۔۔ہممم،ہانی نے گال پر ہاتھ رکھ کر سوچا اور پھر اس کی طرف دیکھ کر کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کارن سوپ ۔۔۔۔ہانی نے چٹکی بجاتے ہوئے کہا ۔۔۔۔لیکن آپ کو بنانا آتا ہے ۔۔۔۔۔ہانی نے اس سے پوچھا ۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے پنار کی طرف دیکھ کر بے چارگی سے سر نفی میں ہلایا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔تو پوچھ کیوں رہے ہیں ۔۔۔۔۔۔میری مما کو ہر ڈش بنانی آتی ہے ۔۔۔۔آپ کو تو کچھ نہیں آتا ۔۔۔۔۔۔ہانی افسوس سے کہا ۔۔۔۔۔۔۔تو آپ اپنی مما سے کہیں مجھے سیکھا دیں ۔۔۔۔۔۔ہرمان نے پنار کو دیکھ کر آنکھ مارتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔وہاں سب کھانا چھوڑیں ان کی گفتگو کو انجوائے کر رہے تھے ۔۔۔۔۔۔مما آپ ان کو سکھا دیں گئی ۔۔۔۔۔ہانی پنار کی طرف منہ کر کے پوچھا ۔۔۔۔۔۔ہانی چپ چاپ یہ کھاو کل بنا دوں گئی کارن سوپ ۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے نوالہ اس کی طرف بڑھاتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔نہیں میرا ہارٹ ابھی کھانے کو کہہ رہا ہے کل نہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔ہانی نے اس کا ہاتھ پیچھے کرتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔اففف ہانی کیا مسلہ ہے کھانا ہے تو کھاو ورنہ بیٹھے رہو بھوکھے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے نوالہ پلیٹ میں پٹخ کر کہا ۔۔۔۔۔۔۔اسے غصہ ہرمان اور سامنے بیٹھی چڑیل پر تھا لیکن نکال بچارے ہانی پر دیا۔۔۔۔۔۔ہانی نے غصے سے جاتی پنار کی پشت کو دیکھا ۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے جو نوالہ اپنے منہ میں ڈالنے کے لیے بنایا تھا پنار کو بھوکا جاتے دیکھ کر پلیٹ میں رکھ دیا ۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔دادو آپ بنا کردیں مجھے ابھی اسی وقت ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہانی نے اب ناہید پر روب جمایا ۔۔۔۔۔۔۔۔بیٹا صبح ۔۔۔۔جی نہیں ابھی ۔۔۔۔۔۔ناہید جو اسے ٹالنے والی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔ہانی نے پہلے ہی انہیں ٹوک دیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔”بنادو بچے کو ناہید ۔۔۔۔دادی نے ناہید کو اٹھنے کا اشارا کرتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔مارلن کھانا کھاتے ہوئے سب کو دیکھ رہی تھی ۔۔۔۔۔لیکن نظر ہرمان پر ہی رکتی تھی ہر دفعہ۔ ۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁
پنار ایل ڈی پر چینل سرچنگ کر رہی تھی جب ہرمان پلیٹ ہاتھ میں پکڑے روم میں آیا ۔۔۔۔۔۔۔۔آپ کی ناراضگی مجھ سے ہے تو پلیز مجھ ہر ہی نکالیں دوسروں پر نہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے پکیٹ سائیڈ ٹیبل پر رکھتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔”پنار نے اگنور ہی کیا ۔۔۔۔۔۔ہرمان نے ریموٹ اس کے ہاتھ سے پکڑنا چاہا جب ۔۔۔۔۔۔پنار نے ریموٹ بیڈ پر پٹخا۔ ۔۔۔اور چپل پہن کمرے سے جانے لگی ۔۔۔۔۔جب ہرمان نے اسکی کلائی کو پکڑ کر روکا ۔۔۔۔۔۔۔۔میں نے اسے نہیں بلایا وہ خود آئی ہے ۔۔۔۔۔۔اس کا مجھ پر اخسان ہے اس لیے میں اسے جانے کا بھی نہیں کہہ سکتا۔ ۔۔۔۔۔۔ہرمان نے اس کا چہرہ اپنے ہاتھوں کے پیالے میں لے کر التجا کی ہو جیسے ۔۔۔۔۔۔۔پنار نے اسے بے تاثر نگاہوں سے دیکھا ۔۔۔۔۔۔مجھے کوئی فرق نہیں پڑتا ۔۔۔۔۔میری بلا سے جسے چاہو بلاو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے اس کا گریبان ہاتھوں میں لیتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”ہرمان اسکی غصے سے سرخ پڑتی رنگت پر مسکرایا ۔۔۔۔۔۔۔۔اور اسے کمر سے تھام کر قریب کیا ۔۔۔۔۔۔۔رئیلی بلا لوں جسے چاہے ۔۔۔۔۔۔ہرمان نے گھمبیر آواز میں کہتے ہوئے اس کے ناک پر اپنے لب رکھے ۔۔۔۔۔۔۔۔پنار دروازے پر ہوتی نوک پر چونکی اور اسے جھٹکے سے دور کیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔یس کم ان ہرمان نے کہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔مارلن تھی ۔۔۔۔۔وہ ہرمان میں واک پر جانا چاہ رہی تھی اگر تم میرے داتھ چلو تو ۔۔۔۔۔مارلن نے اندر آتے ہوئے ہرمان سے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے پنار کو دیکھا ۔۔۔۔جو غصے سے مارلن کو گھور رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔سوری مارلن تم باہر گارڈن میں واک کر لو ۔۔۔ ۔ ۔ میں ہرمان کھانا کھانے لگیں ہیں ۔۔۔۔۔۔۔پنار نے سینے پر ہاتھ باندھ کر کہا ۔۔۔۔۔۔۔مارلن نے ہرمان کی طرف دیکھا ۔۔۔۔۔۔۔ہاں مارلن میں کھانا کھا کر آتا ہوں تم چلو میں تھوڑی دیر تک آیا ۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے اسے ہینڈل کرتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔”ہممم مارلن کہہ کر چلی گئی ۔۔۔۔۔۔۔اب تو آپ کھانا کھائیں گئی نا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے اسے دیکھا آپ نے ابھی کہا نا ہم کھانا کھانے لگے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے پلیٹ تھامتے یوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”کیوں رہے مجھ سے اتنا عرصہ دور ۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے اس کی بات کو اگنور کر کے پوچھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان پل میں سنجیدہ ہوا ۔۔۔۔۔۔۔۔آپ جاننا چاہتی ہیں ۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے پوچھا ۔۔۔۔۔ہاں ۔۔۔۔پنار نے اسکی آنکھوں میں آنکھیں ڈالے کہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے گہرا سانس لیا ۔۔۔۔۔۔اور پھر اس کے کندھے پر سر رکھا ۔۔۔۔۔۔۔۔آپ نے سوچ بھی کیسے لیا میں آپ سے اتنا عرصہ دور رہ سکتا ہوں ۔۔۔۔۔۔ہرمان نے پوچھا ۔۔۔۔۔۔پنار کچھ نا بولی وہ آج صرف اسے سننا چاہتی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”

–**–**–
جاری ہے
——
آپکو یہ ناول کیسا لگا؟
کمنٹس میں اپنی رائے سے ضرور آگاہ کریں۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Subscribe For Latest Novels

Signup for Novels and get notified when we publish new Novel for free!




%d bloggers like this: