Mera Ishq Teri Anayat Novel by Faiza Ahmed – Episode 39

0
میرا عشق تیری عنایت از فائزہ احمد – قسط نمبر 39

–**–**–

جب میں یہاں سے گیا تو ۔۔۔۔۔۔۔کسی پل چین نہیں تھا مجھے آپ کو دیکھے بغیر کہاں رہ سکتا تھا میں۔۔۔۔۔۔۔۔سارا دن کمرے میں گزار دیا ۔۔۔۔۔۔۔دوسرے دن یونیورسٹی گیا ۔۔۔۔۔۔۔لیکن کہاں دل لگنا تھا میرا آپ کے بغیر۔۔۔۔مجھے تو لگ رہا تھا ۔۔۔۔ جیسے میری سانسیں ہی بند ہو جائے گئی بنا آپ کو دیکھے۔۔۔۔۔۔یونیورسٹی کے پہلے دن ہی وہاں مجھے مارلن ملی۔۔۔جس نے پہلے دن میری کافی ہیلپ کی ۔۔۔۔۔۔۔ نیچر کی بھی بہت اچھی تھی وہ ۔۔۔۔۔۔۔لیکن میں نے اس سے زیادہ بات نہیں کی ۔۔۔۔۔۔۔تیسرے ہی دن مجھے بخار ہو گیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔خیر بخار سے زیادہ تو مجھے آپ کی یاد نے بیدل کردیا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔میں نہیں رہ سکتا تھا آپ کے بغیر ۔۔۔۔۔۔۔۔جو شخص آپ کو میکے ایک دن بھی نا رہنے دیتا ہو وہ آپ کے بغیر چار سال کیسے گزار سکتا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔آپ نے سوچا نہیں ۔۔۔۔۔۔ہرمان نے سوالیہ نظروں سے پنار کی طرف دیکھ کر پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔جس نے کوئی جواب نا دیا بس اسے دیکھے گئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔خیر پھر میں نے سوچا آج چوتھا دن ہے تو میری یہ کنڈیشن ہے دو سال کیسے گزار سکتا ہوں میں آپ سب کے بغیر دوسرے ہی دن یونیورسٹی فون کیا اور یونی چھوڑ دی ۔۔۔۔اور سامان پیک کیا ۔۔۔۔۔اور نکل گیا ائیرپرٹ کی طرف ۔۔۔۔۔۔۔۔لندن میں دھوپ کہاں نکلتی ہے ۔۔۔۔اس دن بھی سارا لندں دھند میں ڈوبا ہوا تھا ۔۔۔۔۔میں ٹھیک بھی نہیں تھا اور ڈرائیونگ بھی خود ہی کر رہا تھا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔جس سے مجھے مسلہ تو ہو رہا تھا لیکن زیادہ نہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ابھی ٹھورا ہی آگے گیا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔جب ایک ہچکولے کھاتی گاڑی سامنے سے آتی دیکھائی دی ۔۔۔۔۔۔شاید اس کے ڈرائیور نے کوئی نشہ وغیرہ کیا ہوا تھا ۔۔۔۔۔۔۔اگر میں اس طرف ہوتا تو وہ بھی اس طرف ہو جاتا ۔۔۔۔۔۔۔اچانک سے اس نے میری گاڑی کو زور سے ٹکر ماری ٹکر اتنی شدید تھی کہ مجھ سے گاڑی کا ہینڈل چھوٹ گیا اور میرا سر زور سے گاڑی کے شیشے سے لگا۔۔۔۔۔۔۔۔گاڑی پول لائٹ سے ٹکرا گئی جس سے گاڑی الٹ گئی تھی میری ۔۔۔۔۔۔سارے شیشے میرے سر میں گھسے تھے سر میں انتہائی شدید چوٹ لگی تھی جس سے میرا سانس اٹک کر رہ گیا ۔۔۔۔۔۔۔اور جو آخری سوچ آئی تھی وہ پتا کیا تھی ،کہ کاش میں آپ کو آخری بار ْدیکھ سکتا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔اس کے بعد مجھے کوئی ہوش نا رہا ۔۔۔۔۔۔۔۔اور پھر مجھے تین سال نو مہینے بعد ہوش آیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کیااااا ۔۔۔۔پنار نے منہ پر ہاتھ رکھے اپنی چیخ کو روکا ۔۔۔۔۔۔۔۔البتہ آنسو کی قطار آنکھوں سے جاری تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔اس سے آگے یہ ہوا پورا ایک گھنٹہ میں سڑک پر بے یارو مددگار پڑا رہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پھر مارلن وہاں سے گزری اور وہ مجھے ہسپٹل لے کر گی ۔۔۔۔۔۔جہاں مجھے چوبیس گھنٹے تک انڈر ابزرویشن میں رکھا گیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔خون بھی زیادہ بہہ گیا تھا اور چونکہ ۔۔۔۔۔۔۔سر پر شدید چوٹ لگی تھی تو ۔۔۔۔۔۔۔ڈاکٹر نے چوبیس گھنٹے دئیے تھے ہوش میں آنے کے ۔۔۔۔۔۔لیکن پھر ڈاکٹر نے مارلن کو میرے کوما میں جانے کا بتایا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”یہ سب باتیں جب میں تین سال نو مہینے بعد ہوش میں آیا تو مارلن نے بتائی تھی مجھے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار یقین کریں میں صدمے سے پورے دو دن نہیں بولا تھا کہ میں نے آپ کو دیکھے بغیر اتنے سال گزار دیئے ۔۔۔۔۔ہرمان کہہ کر چپ ہوا۔۔۔۔ڈاکٹر نے مجھے ایک منتھ تک کسی بھی قسم کے ٹریول سے منع کردیا تھا ۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔ان سب میں مارلن نے میرا بہت خیال رکھا اور ساتھ بھی دیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔تھوڑی دیر بعد ہرمان نےکہا ۔۔۔۔۔۔۔”ہرمان نے پنار کی طرف دیکھا ۔۔۔۔۔۔جو بلکل ساکت تھی ۔۔۔۔ہاں چہرہ البتہ آنسو سے تر تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
🍁🍁🍁🍁🍁
بیٹا تمہیں اس طرح نہیں کرنا چاہیئے تھا وہاں۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔عافیہ نے ساری بات سن کرصرف اتنا کہا ۔۔۔۔۔۔۔تو کیا کرتا میں۔۔۔۔۔۔۔۔۔میری آپا ان چار سالوں میں کبھی کھل کر نہیں مسکرائی۔۔۔پل پل اسکی یاد میں تڑپی ہیں بلے وہ کسی سے کہتی نہیں تھی لیکن دیکھنے والوں کو سب نظر آتا ہے امی ۔۔۔۔۔۔۔رومان نے رنجیدگی سے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔بیٹا تم اپنی جگہ پر ٹھیک ہو ۔۔۔۔لیکن وہ پنار کا سسرال ہے ۔۔۔۔۔تمہیں اس طرح کا بیہیو نہیں کرنا چاہئیے تھا وہاں ۔۔۔۔۔۔۔اشعر نے بھی سنجیدگی سے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔”ہمیں صبح چلنا چاہِے وہاں ہرمان سے ملنے تاکہ سارا معاملہ جان سکیں ۔۔۔۔۔۔۔یاسر نے کہا ۔۔۔۔۔ہمم ٹھیک ہے ۔۔۔۔۔۔۔صبح چلتے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔اشعر نے سر ہلایا ۔۔۔۔۔”ہائمہ بیٹا چائے بنا لاو اب۔۔۔۔مریم کو مجھے دے جاو مرینہ نے ہائمہ سے کہا جو گود میں مریم کو لیے رومان کے ساتھ بیٹھی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔جی ۔۔۔ہائمہ کہہ کر اٹھی ۔۔۔۔۔اور مریم کو ان کی گود میں ڈال دیا۔۔۔۔۔۔
🍁🍁🍁🍁🍁🍁
پنار سسکی تھی ۔۔۔۔۔۔۔پلیز آپ روئیں مت مجھے تکلیف دیتے ہیں آپ کے آنسو ۔۔۔۔۔ہرمان نے انگلیوں سے اس کے آنسو صاف کرتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔تم اکیلے اتنے سال اذیت میں رہے اور ہم تمہارے پاس بھی نہیں تھے ۔۔۔۔۔۔میں کیسے نا روں ۔۔۔۔۔۔اف اللہ میں کیا کروں ۔۔۔پنار نے اپنے منہ پر تھپڑ مارتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔پنار پلیز یہ کیا کر رہی ہیں آپ ۔۔۔۔۔ہرمان نے اس کے ہاتھ تھامتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار اسے کے گلے لگ کہ گھٹ گھٹ کر رونے لگی ۔۔۔۔۔۔ہرمان نے کی بھی آنکھوں سے آنسو بہے تھے ۔۔۔۔جو پنار کے سر پر گرے ۔۔۔۔۔۔پنار نے اس کے آنسو اپنے ہاتھوں سے صاف کر کے اسکے ماتھے پر ہونٹ رکھے۔۔۔۔۔۔۔۔۔میں کیا کہوں مجھے سمجھ نہیں آرہا ۔۔۔۔۔۔میں یہی سوچتی رہی کہ تم مجھے بھول گے ہو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے کھڑکی میں کھڑے ہو کر کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔سوچ بھی کیسے لیا آپ نے کہ میں آپ کو بھول سکتا ہوں۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے اسے کے ساتھ کھڑے ہوتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔کوئی ربطہ جو نہیں تھا تم سے تو پھر یہی سوچ سکتی تھی نا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔مما مما ۔۔۔۔۔۔ہانی نے پنار کے کمرے کا دروازہ اوپن کرتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔میری جان ۔۔۔۔۔پنار نے اسکی طرف ہاتھ بڑھاتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔ہانی نے بھی جلدی سے اس کا ہاتھ تھاما ۔۔۔۔۔۔۔آپ مجھ سے ناراض تو نہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔مما نے آپ کو ڈانٹا تھا نا۔۔۔۔۔۔۔۔نو ہانی اپنی مما سے کبھی اینگری نہیں ہوتا ۔۔۔۔۔۔۔۔ہانی تو مما دادا ،دادو گرینڈ دادو۔ ۔۔۔۔۔کا پیارا بچہ ہے نا ۔۔۔۔۔ہانی نے پنار کا چہرہ اپنے چھوٹے چھوٹے ہاتھوں میں لے کر کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان مسکرایا اور پنار سے اسے لے کر اپنی گود میں لیا ۔۔۔۔یار آپ ڈیڈ سے بھی دوستی کر لو نا۔۔۔۔۔ہرمان نے اسکی پیشانی چومتے ہوئے التجا کی ۔۔۔۔۔۔۔ہانی نے پنار کی طرف دیکھا جس نے سر ہلایا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ٹھیک ہے ۔۔۔۔۔۔۔پھر آپ میرے لیے کیا کیا لائیں گئے ہانی نے اسکے ہونٹ پر انگلی رکھ کر کہا ” ۔۔۔۔۔۔۔سب کچھ میری جان جو جو آپ کہیں گے ۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے ہلکی سی مسکان سے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔مما اب سو لادیں مجھے نا ۔۔۔۔۔۔۔ہانی نے آنکھیں مسلتے ہوئے کہا ۔۔۔۔ ۔ ۔۔آو میری جان مما سولادیں ۔۔۔۔۔۔۔پنار نے اسے بیڈ پر لیٹایا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے باہر جھانکا ۔۔۔۔جہاں چاند انکی کی کھڑکی کے بلکل سامنے تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔اور پھر پنار کو ۔۔۔۔۔۔جو اسی کی طرف دیکھ رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔دونوں کی آنکھوں میں ایک دوسرے کے لیے محبت ہی محبت تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔سچ کہا ہے کسی نے عشق عمر کی قید سے آزاد ہوتا ہے ۔۔۔۔۔۔۔
🍁🍁🍁🍁🍁🍁
ہرمان تم مجھے پاکستان نہیں گھماو گے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔مارلن نے ناشتہ کرتے ہوئے اس سے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے اسے گھور کر دیکھا۔۔۔۔۔وہ اسکی احسان مند بھی تھی لیکن وہ اس کی نظروں کی لپک اچھی طرح سمجھ رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔کیوں نہیں ۔۔۔۔جہاں کہو گئی لیجاوں گا ۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے جوس کا گلاس منہ سے لگاتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔ ۔ ۔پنار نے غصے سے اس کے پیر پر پیر مارا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے پیر کھینچ کر اپنی بیوی کو دیکھا جو آنکھوں میں غصہ لیے اسے ہی دیکھ رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔میرا مطلب ہے میں اور میری وائف آپ کو سارا ملک گھماں دیں گئے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے جلدی سے تصحیح کی ۔۔۔۔۔۔۔ پنار نے مارلن کو دیکھا جس نے ناپسند نظروں سے پنار کی طرف دیکھا تھا۔۔۔۔۔۔۔باقی سب خاموشی سے ناشتہ کر رہے تھے ۔۔۔۔۔۔لیکن میں صرف تمہارے ساتھ جانا چاہتی ہوں” ۔۔۔۔مارلن کے واضع اقرار پر سب ناشتہ چھوڑے اب اس کی طرف دیکھنے لگے تھے ۔۔۔۔۔۔۔ہرمان شرمندہ سا ہو گیا تھا سب کی نظریں خود پر محسوس کر کے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”پنار کا دل کر رہا تھا رکھ کر جھانپر اس کے منہ پر مارے ایسے ہی اس کے شوہر کے پیچھے پر گئی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔لیکن آپ کو پنار کے جانے پر کیا اعتراض ہے ۔۔۔۔۔۔۔اسد صاحب نے سنجیدگی سے مارلن سے پوچھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔سوری لیکن میں زیادہ لوگوں میں کمفرٹیبل فیل نہیں نہیں رہتی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اس نے نفاست سے کھانا کھاتے ہوئے بے نیازی سے جواب دیا۔۔۔۔۔۔۔سب نے ہرمان کی طرف دیکھا ۔۔۔۔۔۔جس نے معصومیت سے کندھے اچکائے تھے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁
ڈیڈ میں آپ کے ساتھ آج سے آفس جایا کروں گا ۔۔۔۔۔۔۔اور سیکنڈ ٹائم یونی ۔۔۔۔۔۔آپ میرا ایڈمیشن سب سے اچھی یونی میں کروا دیں ۔۔۔۔۔۔ہرمان نے پہلی بار ان کے کندھے پر سر رکھے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے سب کو بتا دیا تھا ۔۔۔۔ہرمان کے ایکسیڈینٹ کا ۔۔۔۔۔۔۔۔تب سے دادی اور ناہید کا رو رو کر برا حال تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔اس وقت سب ساتھ بیٹھے دوپہر کی چائے پی رہے تھے ۔۔۔۔۔۔جب ہرمان نے اسد سے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”بیٹا پڑھنا ضروری ہے کیا ؟ ۔۔۔۔۔ناہید نے اس کا ہاتھ ہونٹوں سے لگاتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔پنار ہتھوڑی پر ہاتھ رکھے ہرمان کو دیکھ رہی تھی ۔۔۔۔۔۔جس کے عشق کی عنایت نے اسے پھر سے جینا سیکھا دیا تھا ۔۔۔ ۔ ۔ ۔ ورنہ ان چار سالوں میں وہ کہاں کبھی مسکرائی تھی اس کے بنا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ڈیڈ میں نہیں چاہتا کل کو میری بیوی اور میرے بیٹے کو میری وجہ سے کوئی شرمندگی ہو ۔۔۔۔۔۔۔۔وہاں ٹاپ نہیں کر سکا تو کیا ہوا یہاں کروں گا نا ۔۔۔۔۔۔ہرمان نے پنار کو شرارتی نظروں سے دیکھ کر کہا ۔۔۔۔۔۔۔پنار بھی مسکرائی ۔۔۔۔۔۔۔۔وہ خیران ہوتی تھی خود پر وہ کیسے کسی سے اتنا عشق کر سکتی ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔ٹھیک ہے بیٹا جیسے تمہاری مرضی ۔۔۔۔۔۔۔اسد نے اس کے ماتھے پر ہونٹ رکھتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁
یہ تم اتنا تیار ہو کر کہاں جارہے ہو ۔۔۔۔۔۔پنار نے مرر کے آگے خود ہر پرفیوم چھڑکتے ہوئے ہرمان سے پوچھا ۔۔۔جو چاکلیٹ رنگ کی شرٹ اور بلیو جینز میں ملبوس نظر لگ جانے کی حد تک اچھا لگ رہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اس نے کمر پر ہاتھ رکھے اپنی جان سے پیاری بیوی کو دیکھا ۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔یار مارلن شاپنگ کا کہہ رہی ہے ۔۔۔۔۔میں اسے منع نہیں کر سکا ۔۔۔۔ہرمان نے ہاتھوں کی انگلیوں سے بال سنوارتے ہوئے مصروف سے انداز میں کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔اف اتنا تیار ہو کر جاو گے ۔۔۔۔۔ہرگز نہیں تم کوئی دوسری شرٹ پہنو ۔۔۔۔۔پنار نے گھورتے ہوئے کہا ۔۔۔۔پہلے ہی وہ تمہارے پیچھے پیر ہاتھ دھو کر پڑی ہوئی ہے۔۔۔۔اب اسے قتل کرو گئے کیا اتنا تیار ہو کر ۔۔۔۔۔۔۔پنار نے کبڈ سے بلیو کلر کی شرٹ نکالتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔یار میں یہ نہیں پہنوں گا ۔۔۔۔۔۔یار یہ میں نے پہلے بھی پہنی ہوئی ہے ۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے اسے پیچھے سے اپنی باہوں میں لیتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔کوئی بات نہیں ۔۔۔۔۔لیکن تم یہی پہنو گئے پنار نے ضدی لہجے میں کہا۔۔۔۔۔۔۔۔آپ بھی میرے ساتھ چلیں پھر۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے اس کا رخ اپنی طرف کرتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔کیوں مارلن کو ہارٹ اٹیک کروانا چاہتے ہو ۔۔۔۔۔۔پنار نے اس کی ناک انگلیوں سے کھینچتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔نہیں ہوتا ۔۔۔۔ہرمان نے اپنا چہرہ اسکی گردن میں چھپاتے ہوئے گھمبیر آواز میں کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”مما ۔۔۔۔۔۔ہانی نے دروازے پر کھڑے اونچی آواز میں اسے پکارا ۔۔۔۔۔۔ہرمان اور پنار جھٹکے سے دونوں الگ ہوئے ۔۔۔۔۔۔پنار شرمندہ ہو گئی ۔۔۔جبکہ ہرمان نے چھوٹے سے ہٹلر کو گھورا جس کی اینٹری ہمیشہ ایسے وقت میں ہی ہوتی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔یہ میری مما ہے ۔۔۔ہانی نے پنار کے ہاتھ کو پکڑ کر ہرمان کو باور کروایا ۔۔۔۔۔۔۔تو یار یہ تمہاری ہی مما ہے میری تو یہ وائف ہیں ۔۔۔۔۔ہرمان نے اس کا ناک کھینچتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔جی نہیں یہ صرف میری ہیں ۔۔۔۔۔۔ہانی نے پنار کی گردن کے گرد باہیں ڈالتے ہوئے لاڈ سے کہا ۔۔۔۔۔۔۔ہرمان چلیں شاپنگ پر دیر ہو رہی ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔مارلن نے دروازہ نوک کرتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہاں صرف پانچ منٹ میں آتے ہیں ہم ۔۔۔۔۔۔۔ہم ؟ ۔۔۔۔مارلن نے سوالیہ پوچھا ۔۔۔۔۔۔ہاں میں میری وائف اور میرا بیٹا ۔ ۔۔۔۔۔۔۔پنار نے ہرمان کی طرف نثار ہوتی نظروں سے دیکھا ۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے جواباً دائیں آنکھ مار کر تصدیق کی ۔۔۔۔۔۔۔تم چلو ہم تیار ہو کر نیچے آتے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے مارلن سے مسکراتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔مارلن جواباً منہ بناتی ہوئی چلی گئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”اس نے تمہارا اتنا خیال نا رکھا ہوتا نا تو ایک منٹ میں اس چڑیل کو یہاں ٹکنے نا دیتی ۔۔۔میرے شوہر ہی ملا تھا اسے پورے لندن میں ۔۔۔۔۔۔پنار نے اس کی پشت کو گھور کر کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔مما اتنی خوبصورت ہیں وہ مارنن ۔۔۔۔۔ہانی جو غور سے اسے سن رہا تھا جلدی سے پنار کو کہا ۔۔۔۔۔۔پنار نے گھور کر اسے دیکھا ۔۔۔۔۔۔جبکہ ہرمان کا چھت پھاڑ قہقہ ہوا میں گھونجا تھا۔۔۔۔۔ پنار کی بولتی بند ہوتے دیکھ کر ۔۔۔۔جو دونوں باپ بیٹے کو گھور جا رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”

–**–**–
جاری ہے
——
آپکو یہ ناول کیسا لگا؟
کمنٹس میں اپنی رائے سے ضرور آگاہ کریں۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Subscribe For Latest Novels

Signup for Novels and get notified when we publish new Novel for free!




%d bloggers like this: