Mera Ishq Teri Anayat Novel by Faiza Ahmed – Episode 4

0
میرا عشق تیری عنایت از فائزہ احمد – قسط نمبر 4

–**–**–

“آپا آپ کی دوست کا فون ہے آ جائیں جلدی سے”
ہائمہ نے پنار کو آواز لگائی جو کچن میں امی اور چاچی کی ناشتے میں ہیلپ کروا رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔
“امی میں آتی ہوں پانچ منٹ میں”
پنار نے ہاتھ صاف کرتے ہوئے ان سے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“ہاں بیٹا جاؤ کوئی ضروری فون ہوگا”
مرینہ چچی نے پنار کو جانے کا اشارہ کرتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“اتنی صبح کس کا فون ہے ہائمہ کہی ردا کا فون تو نہیں؟”
“جی آپا ان کا ہی فون ہے اور آپ کی ایک ہی تو دوست ہیں”
ہائمہ نے کہتے ہوئے فون پنار کو پکڑایا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“ارے ڈاکٹر صاحبہ آج مجھے کیسے فون کر لیا، مل گئ فرصت دوست سے بات کرنے کے لیئے”۔۔۔۔۔۔۔
ردا پنار کی بیسٹ فرینڈ تھی وہ دونوں ہر بات ایک دوسرے سے شیئر کرتی تھی، لیکن جب سے ردا ڈاکٹر کے شعبے میں آئی تھی، تب سے وہ تھوڑی مصروف ہوگئی تھی، جس کی وجہ سے پنار اور ردا کی بات آپس میں کم کم ہی ہوتی تھی،لیکن ہوتی ضرور تھی___ جس کی وجہ سے پنار نے ردا پر مصروفیت کا طعنہ مارا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“ہاں ہاں اور کرلو ‏طنز ، چلو میں تو مصروف ہوتی ہو ، اپنے بارے میں کیا خیال ہے میڈم کا ہاں”۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ردا کونسا اس سے کم تھی جواباً ردا نے بھی بھرپور طنز کیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“اچھا چھوڑو یہ بتاؤ کہ آج کیسے فون کر لیا تم نے”
پنار نے اس کی باتوں کو نظر انداز کرتے ہوئے پوچھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“ہاں وہ میں کہہ رہی تھی کہ آج میرا ہاف ڈے ہے تو کیوں نہ آج کا یہ دن ایک دوسرے کے ساتھ مل کر گزاریں۔۔۔۔۔۔۔۔۔کیسا”
ردا نے پرجوش انداز میں پنار سے پوچھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“ہوں۔۔کہہ تو تم تھیک رہی ہو، لیکن آج میرا کہیں اور جانے کا پلان ہے” ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“کیا؟ کہاں جا رہی ہو تم ،یار میں نے سوچا تھا آج خوب انجوائے کریں گی” ردا نے بیچارگی سے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“اچھا اب منہ تو مت بناؤ ہم لوگ شاپنگ پر جارہے ہیں تم بھی ایسا کرو ہمیں جوائن کر لو”
پنار نے صوفہ پر نیم دراز ہوتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“ارے یہ ٹھیک ہے میں تم لوگوں کو جوائن کر لوں گی”
ردا نے خوش ہوتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔
“اچھا چلو میں فون رکھ رہی ہوں جب ہم نکلیں گے تمہیں کال کر لوں گی اب اجازت دو ناشتہ بنا رہی تھی میں اللہ حافظ”،۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ “اللہ حافظ”
جواباً ردا نے کہہ کر فون رکھا اور وہ دوبارہ کچن میں چلی گئ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
“یہ تمہارے چہرے پر چوٹ کا نشان کیسا ہے”۔
آج چونکہ چھٹّی تھی تو اسد صاحب بھی گھر پر ہی نظر آرہے تھے۔۔۔۔۔۔۔۔
ہرمان جو دن کے بارہ بجے صبح کا ناشتہ کر رہا تھا، اسد صاحب کی بات پر اس نے چونک کر اپنے چہرے پر ہاتھ لگایا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“وه ڈیڈ کل میں بائیک سے گر گیا تھا، اس لئے یہ چھوٹی موٹی چوٹیں آگئی”
ہرمان نے سرجھکا کر کھانا کھاتے ہوئے اسد صاحب کو بتایا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“ہوں، یہ آج کل تم کچھ زیادہ ہی بائیک سے نہیں گرنے لگے”
،اسد صاحب کو اس کی بات پر بالکل بھی یقین نہیں آیا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے اسد صاحب کی طرف دیکھا ،جو اخبار کو تہہ کر کے رکھ چکے تھے، اور اب ہرمان کو بغور دیکھ رہے تھے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہرمان نے بے بسی سے دادی کی طرف دیکھا ،کے اب وہی اُسے اسد صاحب سے بچا سکتی تھیں۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“وے اسد ،بچے کو آرام سے ناشتہ تو کر لینے دو، ہر وقت میرے مصوم بچے کے پیچھے پڑے رہتے ہو تم لوگ”۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دادی نے اسد صاحب کو جھڑکتے ہوئے ہرمان کو ناشتے کرنے کی طرف اشارہ کیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“اماں آپ کے لاڈ پیار نے اِسے بِگاڑ دیا ہے، پلیز اسے تھوڑی سی عقل انے دیں”۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اسد صاحب نے ناہید کے ہاتھ سے چائے کا کپ لیتے ہوئے اماں سے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہرمان نے یہاں سے اٹھ جانا ہی بہتر سمجھا تھا ،
“اچھا دادی میں چلتا ہوں میرے دوست میرا انتظار کر رہے ہوں گے ،باے ڈیڈ ، باے موم “
ہرمان نے سب کو جلدی جلدی کہہ کر باہر کی طرف دوڑ لگا دی ۔۔۔۔۔۔
“دیکھ رہیں آپ ،یہی حرکتیں مجھے اس کی پسند نہیں ، چھٹی کے دن بھی گھر پر نہیں ٹکتا”۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“چھوڑ بھی دیں آپ، بچہ ہے ٹھیک ہو جائے گا وہ آہستہ آہستہ ، آپ بھی ہر وقت اس کے پیچھے ہی پڑھے رہتے ہیں”۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ناہید بیگم نے چائے پیتے ہوئے ہرمان کے فیور میں اسد کو صاحب کو سمجھایا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“اف آپ دونوں سے تو بات کرنا ہی فضول ہے ، کل کو اس نے کوئی بڑا کام کردیا تو میرے پاس مت آئیے گا”۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اسد صاحب نے کمرے کی طرف جاتے ہوئے اماں اور ناہید سے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“لو کر لو بات، کونسے اس نے ڈاکے ڈالنے شروع کر دیے ہیں، جو ہم بچے کو سمجھائیں بچہ ہے ہو جائے گا ٹھیک”۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دادی نے منہ بناتے ہوئے غصے سے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
“آپا یہ کلر دیکھیں کتنا خوبصورت لگ رہا ہے نا، یہ آپ ٹرائے کریں”۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ژالے نے ایک ڈارک کلر کا سوٹ پنار کو دیتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“اف اتنا ڈارک کلر میں نہیں پہنتی”
پنار نے سوٹ دوبارہ ژالے کو پکڑاتے ھوے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“ارے آپا ٹراے تو کریں ،آپ پر بہت کھلے گا”۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہا ئمہ نے سوٹ پنار کے ساتھ لگاتے ہوۓ کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“تم دونوں مجھے چھوڑو اور اپنی اپنی شاپنگ کرو”
پنار نے ان دونوں کو گھور کر اپنے لئے کوئی لائٹ کلر میں ڈیزائن دیکھنے لگی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“ژالے آؤ ہم اس طرف چلتے ہیں وہاں پر بھی کافی اچھی اچھی کلیکشن لگی ہوئی ہے۔آپا ہم ابھی آتے ہیں تھوڑی دیر میں ژالے نے جاتے ہوئے کہا” ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“ہاں جاؤ پر جلدی آ جانا، ہم لوگ یہی پر تم لوگوں کا ویٹ کریں گے”۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“اوکے آپا ہم جلدی آ جاتے ہیں”
، ژالے اور ہائمہ دوسری طرف چلی گئی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“تم بھی کچھ دیکھ لو اپنے لئےکہ کچھ پسند نہیں آرہا”
پنار نے اپنے ساتھ کپڑے لگاتے ہوئے ردا سے پوچھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جو کپڑے دیکھنے کے بجائے لوگوں کا زیادہ مشاہدہ کر رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“یار مجھے کچھ پسند نہیں آرہا”،ردا نے ناک چڑھاتے ہوئے پنار سے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“دیکھو گی تو کچھ پسند آئے گا نا،کپڑوں کو دیکھنے سے زیادہ تو تم لوگوں کو دیکھ رہی ہو، تو کیسے پسند آئے گا تمہیں کچھ ہوں؟” ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پنار نے مصروف سے انداز میں کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔جوابًا ردا نے پنار کو گھورا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“افففف پنار ہائے اللہ کتنا خوبصورت لڑکا ہے، دیکھو تو پنار کتنا خوبصورت ہے وہ”۔۔۔۔
ردا نے پنار کو ہلاتے ہوئے پرجوش سے انداز میں کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“اف ردا کیا ہوگیا ،جہاں خوبصورت لڑکا دیکھتی ہو، وہیں پر پھسل جاتی ہو، شرم کرو کچھ منگنی شدہ ہو” ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پنار نے ردا کو جڑکتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“اف پنار مجھ سے تھپڑ کھاؤ گئی تم ،وہ مجھ سے چھوٹا ہے پہلے دیکھ تو لو” ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جواباً ردا نے اسے گھورا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پنار نے اسے نظرانداز کرتے ہوئے ، اس طرف دیکھا جہاں پر ردا صاحبہ ابھی تک اس لڑکے کو دیکھنے مصروف تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور وه اس طرف دیکھ کرچونک گئی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“اف یہ کہاں سے آ گیا”
، پنار نے غصے سے ہرمان کو گھورا جو عمر اور حارث کے ساتھ جوتوں والی دکان پر ایک دوسرے سے بحث کرنے میں مصروف تھے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“یار میں کہہ رہا ہوں نا یہ والے سنیکرز میں لوں گا,تم کوئی اور دیکھ لو” ،
ہرمان نے عمر کے ہاتھ سے شوز کا ڈبا چھینتے ہوے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“یار لیکن پہلے میں نے پسند کیے تھے”، عمر نے منہ بناتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
عمر تم کوئی اور دیکھ لو یار ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہرمان نے عمر کو مشورہ دیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“تم خود کیوں نہیں کوئی اور دیکھ لیتے ہاں”
عمر نے دوسرے شوز کی طرف اشارہ کرتے ہوے کہا ۔۔۔۔۔۔
“دیکھو تم”
ابھی بات ہرمان کے منہ میں ہی تھی کہ اچانک اس کی نظر پنار پر پڑی ،جو اس کی طرف انگلی سے اشارہ کرتے ہوئے ردا کو کچھ بتا رہی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
”ہرمان کے چہرے پر اچانک بہت حوبصورت مسکراہٹ آئی تھی۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔
عمر جو اس کی طرف دیکھ رہا تھا ،
اس کے ایک دم خاموش ہونے پر حیران ہوا، اور جب وہ مسکریا تو ،چونک کر اس کی نظروں کے تعاقب میں دیکھا ،
جہاں پنار ایک لڑکی کے ساتھ باتیں کرتی ہوئی ڈریس دیکھ رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔عمر اور حارث کو اس کے مسکرانے کی وجہ پتا چلی۔ ۔۔۔۔
“ہوں کدھر دیکھ کر مسکرا رہا ہے تو”
حارث نے اس کے کندھے پر ہاتھ رکھتے ہوئے پوچھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“ہوں، چلو مس مینار سے جا کر حال چال پوچھ لیں” ۔۔۔۔۔۔۔
ہرمان نے پنار کی طرف بڑھتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔
“پاگل ہوگیا ہے کیا، چل گھر چلیں”
حارث نے ہرمان کو باہر کی طرف کھینچتے ہوے کہا۔ ۔۔۔۔۔
“نہیں مس پنار سے مل کر جائیں گے” اس نے پنار کی طرف بڑھتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔مجبوراً ، حارث اور عمر کو بھی اس کے پیچھے جانا پڑا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔
“ارے پنار یہ تو ہماری طرف ہی آرہے ہیں “۔۔۔۔
ردا نے پنار کی توجہ ہرمان کی طرف دلائی۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے ہرمان کی طرف دیکھا ،جو اس کے پاس آرکا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے منہ بناتے ہوئے ہرمان کی جانب دیکھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔
“ہیلو مس پنار”
،ہرمان نے سر کو حم دیا تھا۔۔۔۔۔۔۔حارث اور عمر نے بھی پنار کو ہیلو بولا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“اسلام علیکم! “
پنار نے بھی ان کو ٹھیک ٹھاک شرمندہ کیا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور جسے کرنا چاہا تھا وہ تو نہیں ،ہاں عمر اور حارث شرمندہ ہو گئے تھے۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“مس مینار آپ یہاں او سوری ،میرا مطلب تھا مس پنار ۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے بھی جواباً بدلہ چکایا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“ہائے میں ردا ہوں آپ کی مس پنار کی فرینڈ”۔۔۔۔۔۔۔
ردا نے مسکرا کر ہرمان کو بتایا ۔۔۔۔۔۔۔۔
“ہیلو میں ہرمان اور یہ میرے فرینڈز ہیں”
ہرمان نے مسکرا کر تعارف کروایا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے ردا کو گھورا ،جو ہرمان سے ایسے بات کر رہی جیسے اس کے چچا کا بیٹا ھو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“ہمیں دیر ہو رہی ہے چلو ردا ایکسکیوزمی”
پنار نے ردا کا بازو پکڑ کا ر آ گے کی طرف بڑھ گئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“چلو تم بھی اگر مس کو گھور لیا ھو تو” ۔۔۔۔۔۔۔
عمر نے ہرمان پر طنز کیا ،جو پنار کو دیکھے جا رہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہوں چلو ،وہ کہہ کر اگے بڑھ گیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“ارے بڑے خوبصورت سٹوڈنٹ ہیں تمہارے تو” ردا نے پنار کو کہنی مار کر کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“بکواس مت کرو ،اور اپنی دل پھینک طبیت کو ذرا کنٹرول کرو” ۔۔۔۔۔۔۔
پنار نے بھی اسے کہنی مارتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“اچھا چلو ژالے اور ہائمہ ویٹ کر رہی ہوں گی”۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جو ان کی طرف آرہی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“افففف آپا آج تو ہم دونوں نے بہت شاپنگ کر لی ہے” ۔۔۔۔۔۔۔
ہائمہ نے پنار کو پرجوش سے انداز میں بتایا۔۔۔۔۔۔
“اچھا اچھا چلو اب رومان ہمارا ویٹ کر رہا ھو گا کتنی مسڈ کالز آ چکی ہیں اس کی”۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پنار نے باہر جانے کا اشارہ کرتے ہوئے دونوں سےکہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
“مرام آپی آپ کب آئی؟”
ہرمان جیسے ہی گھر میں داخل ہوا سامنے مرام اس کی بڑی بہن جو شادی شدہ تھی اور ایک بیٹے کی ماں تھی جسے ہرما ن بہت پیار کرتا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہرمان نے مرام کو ہگ کرتے ہوئے پوچھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور اُس کی گود سے احمد کو لیا ،جو ہرمان کو دیکھ کر مسکرانے لگا تھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“موم دیکھ رہی ہیں آپ آج میں گھر آئی ہوں تو اسے پتا چلا ہے کہ اس کی ایک آپی بھی ہے ،نہ اس نے کبھی مجھے فون کیا ہے اور نہ ہی یہ کبھی میرے گھر آیا ہے” ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔مرام نے اس کے کندھے پر زور سے تھپڑ مارتے ہوئے شکوہ کیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“افففف آپی اتنا بھاری ہاتھ ،کیا کھاتی ہیں آپ”
ہرمان نے کندھے پر ہاتھ رکھ کر کراہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“نی مرام بھائی ہے تیرا ،بھائی چاہے چھوٹے ہوں یا بڑے ،بہنوں کا فرض ہوتا ہے بھائیوں کی عزت کرنا” ۔۔۔۔۔۔۔
دادی نے عینک لگاتے ہوئے مرام کو سمجھایا تھا۔” ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“اففف دادی کبھی ہرمان کی بجائے کسی اور کی بھی سائیڈ لے لیا کریں”۔۔۔۔۔۔۔۔
مرام نے ہرمان کو دیکھتے ہوئے کہا ،جو دادی کی گود میں سر رکھے ان سے لاڈ کروانے میں مصروف تھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔مرام نے احمد کو عذوبہ کو پکڑاتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“اچھا اچھا بس سب آجاؤ کھانا لگ چکا ہے “۔۔۔۔۔
نا ہید نے سب کو کھا نے کی میز پر بلاتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سب اٹھ کر کھانے کی میز پر آگے ۔ ۔ ۔ ۔ “موم کیا بات ہے آج تو سارا کھانا آپی کی پسند کا بنا ہے”
ہرمان نے کھانا کھاتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔ ۔ ۔
“ویسے بھائی روز آپ کی پسند کا کھانا بنتا ہے ،آج آپی کی پسند کا بنا ہے تو آپ جیلسی فیل کر رہے ہیں ہوں” ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
عذوبہ نے بریانی کھاتے ہوئے ہرمان کو چڑایا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ارے جلے میرے دشمن کیوں دادی، ہرمان نے بھی جواباً عذوبہ کو منہ چڑاتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“ارے میرا بچہ کیوں جلے ،جلیں اس کے دشمن دادی نے ہرمان کی ہاں میں ہاں ملائی۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
آپی کیا کر رہی ہیں آپ ،ژالے نے پنار کے کمرے میں جھانکتے ہوئے پوچھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
۔کچھ نہیں بس سونے کی تیاری کر رہی تھی ،کیوں تمہیں کوئی کام ہے” ۔۔۔۔۔۔۔
پنار نے ژالے کو دیکھتے ہوئے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“ہاں میں آپ کے لیے یہ ماسک لائی تھی۔ ژالے نے اسے ماسک دیکھاتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“افففف ژالے تم باز نہیں آؤ گئی اپنی ان حرکتوں سے ہوں” ۔۔۔۔۔۔
۔پنار نے کمر پر دونوں ہاتھ رکھتے ہوئے اس سے غصے سے باز پرس کی”۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آپا میری فرینڈ بتا رہی تھی کہ یہ ماسک لگانے سے سکن بہت گلو کرتی ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“ایک تم اور ایک تمہاری دوستیں ، مجھے نہیں لگانا یہ ماسک واسک میں اپنے سانولے رنگ میں بہت خوش ہوں اور چلو جاو مجھے سونے دو ،آج میں بہت تھک گئ ہوں” ۔۔۔۔۔۔پنار نے لیٹتے ہوے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“آپا میں آپ سے بات نہیں کروں گی۔ ۔۔۔۔۔۔۔ژالے نے کمرے سے جاتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“دروازہ بند کرتے جانا پنار نے لائٹ بند کرتے ہوئے کہا”۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جواباً ژالے نے سارا غصہ دروازے پر نکالا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“بدتمیز، تم سے تو میں صبح پوچھتی ہوں۔ ۔۔۔پنار نے آنکھیں بند کرتے ہوئے کہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔

–**–**–
جاری ہے
——
آپکو یہ ناول کیسا لگا؟
کمنٹس میں اپنی رائے سے ضرور آگاہ کریں۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Subscribe For Latest Novels

Signup for Novels and get notified when we publish new Novel for free!




%d bloggers like this: