Mera Ishq Teri Anayat Novel by Faiza Ahmed – Episode 6

0
میرا عشق تیری عنایت از فائزہ احمد – قسط نمبر 6

–**–**–

“ارے یہ میری گنہگار آنکھیں کیا دیکھ رہی ہیں کہ ہمارے گھر میں آج ہادی بھائی تشریف لائے ہیں”۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہرمان نے ہادی کے گلے ملتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“ویسے ہادی بھائی آپ تو عید کا چاند ہو گئے ہیں جو سال بعد اپنی شکل دیکھاتے ہیں”
ہرمان نے ہادی کے کبھی کبھی آنے پر میٹھا سا طنز کیا۔
“اچھا میں عید کا چاند ہوں اور اپنے بارے میں کیا خیال ہے ہاں “
ہادی نے ہنستے ہوئے ہرمان سے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
” ہوں اپنے بارے میں میرا نیک خیال ہے کونسا آپ نے میری دعوت کی تھی اور میں نہیں آیا تھا “
ہرمان نے شرمندہ ہونا نہیں کرنا سیکھا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“ارے میرے میاں کو سانس تو لینے دو تم نے تو آتے ہی شکوے شکایات کرنے شروع کر دیے ہیں”
مرام نے ہرمان کو گورتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“ویسے آپی ایک بات تو سچ ہے کہ ہادی بھائی آپ سے پیار تو سچا کرتے ہیں جب آپ کی منگنی ہوئی تھی تو ہادی بھائی کیسے ہر دوسرے تیسرے دن بہانا بنا کر آپ سے ملنے چلے آتے تھے اور اب بھی آپ آئی ہیں تو یہ آئیں ہیں ورنہ انہوں نے ابھی بھی نہیں آنا تھا” ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔……..
ہرمان نے احمد کو اوپر اچھالتے ہوئے کہا” ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“چھوڑ دے میری جان میرے بھائی لے دیکھ میں تیرے آگے ہاتھ جوڑتا ہوں”۔ ہادی نے ہاتھ جوڑتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“ٹھیک ہے معاف کیا آپ کو ،آپ بھی کیا یاد کریں گے کہ کس شہنشاہ سے پالا پڑا تھا” ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہرمان نے شان بے نیازی سے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بڑے سب ان کی نوک جونک سے محفوظ ہو رہے تھے۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
 
“آپا مجھے آج آپ کے ہاتھ کی بریانی کھانی ہے”
ژالے نے پنار سے کہا جو عافیہ سے بالوں میں آئل لگوا رہی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“ژالے خدا کا خوف کرو پہلے ہی بچی کالج سے تھکی آئی ہے اوپر سے اس کی طبیعت بھی ٹھیک نہیں اور تمہیں بریانی کھانی ہے “
عافیہ نے اچھا خاصا ژالے کو ڈانٹا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پنار نے مسکرا کر ژالے کو دیکھا جس کا اپنی عزت آفزائی پر منہ پھول ہوا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“امی کوئی بات نہیں میں بنا دیتی ہوں کل رومان بھی بریانی کی فرمائش کر رہا تھا”
پنار نے امی کا غصہ کم کرنا چاہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“کوئی ضرورت نہیں بنانے کی جاؤ جا کر آرام کرو میں ثروت سے کہتی ہوں وہ بنا دیتی ہے” ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“مجھے نہیں کھانی ثروت کے ہاتھ کی “
ژالے نے ناک سکوڑتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“اگر ثروت کے ہاتھ کی نہیں کھانی تو خود بنانا سیکھو چھوٹی نہیں ہو اب تم۔تمہارے جتنی لڑکیوں نے سارا سارا گھر سنبھالا ہوتا ہے اور ایک تم ہو جسے چائے تک نہیں بنانی نہیں آتی”۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
عافیہ بیگم نے ژالے کو خوب جھاڑا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“مجھے نہیں کھانی کوئی بریانی وریانی اتنا ڈانٹ دیا مجھے “
ژالے روتے ہوئے کمرے میں چلی گئی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“اف امی کیا ہو گیا آپ کو اتنا ڈانٹ دیا اسے ابھی بچی ہے سیکھ جائے گی آہستہ آہستہ آپ بھی کبھی کبھی حد کر دیتی ہیں۔”
پنار نے بال سمیٹتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“ہاں تو میں یہ سب اس کے بھلے کے لیے کہتی ہوں اور کب سیکھے گی جب اگلے گھر چلی جائے گی۔۔۔۔اور ہماری ناک کٹوائے گئی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
“اچھا چھوڑ بھی دیں غصہ اب۔ آپ ہاتھ دھو لیں میں آپ کے لیے پانی لاتی ہوں”۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پنار نے کچن کی طرف جاتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
 
“ژالے شونا ضد مت کرو کھا لو نہ چلو میرے ہاتھ سے کھا لو “
ژالے نے امی سے ناراضگی کی وجہ سے آج بھوک ہڑتال کی ہوئی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“میں نہیں کھاوں گی امی نے مجھے اتنا ڈانٹا ہے اور اوپر سے مجھے منایا بھی نہیں”۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ژالے نے شوں شوں کرتے ہوئے پنار سے امی کی شکایت کی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“تمہیں پتہ ہے یہ بریانی کس نے بنائی ہے “
پنار نے ژالے کا ہاتھ تھامتے ہوئے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ژالے نے سوالیہ نظروں سے پنار کو دیکھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“امی نے بنائی ہے تمہارے لیے اب کھا لو ورنہ انہیں برا لگے گا”۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پنار نے چاول کا چمچ بڑھ کر اس کے منہ میں ڈالا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“ویسے آپا میں آپ کے کہنے پر کھا رہی ہوں ورنہ میں نے صبح تک بھوکے رہنا تھا”۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ژالے نےجلدی جلدی میں چاول کھاتے ہوئے پنار کو جتلایا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“ژالے میڈم کا یہ مجھ پر احسان ہے جو میرے کہنے پر کھانا کھا لیا”
پنار نے مسکرا کر ژالے کو کہا ورنہ وہ جانتی تھی کہ ژالے بھوک کی بہت کچی ہے اور اگر اسے کوئی نہ بھی کھانے کہ لیے بلاتا اس نے پھر بھی کھانا کھانے پہنچ جانا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
 
” ہرمان تم کب سدھرو گے ہاں کون سا ایسا دن ہے وه جس دن تمہاری شکایت نہ آئی ھو”
ناہید نے کمرے کی حالت درست کرتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔سارا کمرہ بکھرا پڑھا تھا کوئی چیز اپنی جگہ پر موجود نہیں تھی ۔۔۔۔۔اور وہ جناب صوفہ پر لیٹے موبائل میں مصروف تھے
“اور اب تو نوری نے بھی تمہاری شکایت کرنا شروع کر دی ہے”
ناہید نے کبڈ میں کپڑے رکھتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“کیا نوری نے میری شکایت کی ہے وہ
بھی آپ سے موم قسم لیں لے جو میں نے کبھی نوری کو بری نظر سے دیکھا ہو” ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہرمان نے مسکراہٹ کو کنٹرول کرتے ہوئے مسکرتے پن سے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“ہرمان باز آجاؤ اپنی حرکتوں سے “
ناہید نے اسے تھپڑ مارتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“بدتمیز وہ تمہارے کمرے کے بارے میں شکایت کررہی تھی ادھر وہ تمہارا کمرہ صاف کرتی ہے اور اُدھر تم پھر سے سارا کمرہ بکھیر دیتے ہو تمہیں تو تمہاری بیوی ہی سیدھا کرے گی ۔۔۔۔۔
“ہاہاہا موم بیوی اور میری آپ کو لگتا ہے میں کبھی شادی کروں گا” ۔ ۔۔۔۔۔ہرمان نے ناہید کو ہنستے ہوئے چڑایا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”میں تو دعا کرتی ہوں کہ تمہیں ایسی بیوی ملے جو تمہیں تیر کی طرح سیدھا کر دے”۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ناہید نے کمرے سے جاتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“سریسلی موم ،ابھی تک دنیا میں ایسا کوئی نہیں آیا جو آپ کے بیٹے کو سدھار سکے”۔۔۔۔۔۔۔
ہرمان نے منہ بناتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جواباً ناہید سر ہلاتے ہوئے کمرے سے ہی چلی گئی کہ اس سے سر کھپانا کسی عام انسان کے بس کی بات نہہیں تھی۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
 
“احد میں سوچ رہی تھی کہ کیوں نہ مرام اور ہادی کو آج رات کھانے پر بلالوں۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔آپ کیا کہتے ہیں۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔منیبہ نے احد کو چائے کا کپ پکڑاتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“ہوں تھیک کہہ رہیں آپ ایسا کریں سب کو انوئیٹ کرلیں اسطرع گھر میں تھوڑی رونک بھی ہو جائے گی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“ٹھیک ہے پھر میں بھابھی سے فون کر کے پوچھ لیتی ہوں کہ ان کا کوئی اور پلان تو نہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”منیبہ نے فون ملاتے ہوئے کہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

–**–**–
جاری ہے
——
آپکو یہ ناول کیسا لگا؟
کمنٹس میں اپنی رائے سے ضرور آگاہ کریں۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Subscribe For Latest Novels

Signup for Novels and get notified when we publish new Novel for free!




%d bloggers like this: