Mera Ishq Teri Anayat Novel by Faiza Ahmed – Episode 7

0
میرا عشق تیری عنایت از فائزہ احمد – قسط نمبر 7

–**–**–

“What the heck is this Harmaan”
تمھیں کلاس میں بیٹھنے کے بلکل بھی مینرز نہیں آتے یہ کیا طریقہ ہے ہاں ۔تم سے اچھے تو نرسری کلاس کے بچے ہوتے ہیں جنہیں کم از کم کلاس میں بیٹھنے کے مینرز تو آتے ہیں”
ہرمان جو فارغ بیٹھا کاغذ کا جہاز بنا کر اڑا رہا تھا اور وہ جہاز کلاس میں داخل ہوتی پنار کے منہ پر لگا تھا اور وہ تلملا کر رہ گئی۔
“مس پنار مجھے تھوڑی نا پتہ تھا کہ آپ آ رہی ہیں اور مزے کی بات مجھے الہام بھی نہیں ہوتا”
ہرمان نے کونسا خاموش رہنا سیکھا تھا۔
“لگتا ہے پھر سے تمھاری شکایت پرنسپل۔۔۔۔۔”
“جی جی مجھے پتہ ہے آپ میری شکایت پرنسپل سے کریں گی اور وہی پر بیٹھ کر میری بے عزتی کا مزہ بھی لیں گی”
ہرمان نے اسی وقت پنار کی بات کاٹ کر ساری وضاحت کی جو اس کو پھر سے پرنسپل کی دھمکی دینے لگی تھی۔۔۔۔۔
“نہیں اس دفعہ ایک اور چیز کا اضافہ کروں گی اور وہ ہے تمھارے ڈیڈ کو فون”۔
“ارے مس پنار آپ تو بلیک میلنگ پر اتر آئی ہیں۔میں نے ایسا کیا کر دیا جو بات سیدھی میرے ڈیڈ پر پہنچ گئی ہے”
ہرمان نے بھی ڈیٹھ پن سے استفسار کیا۔پنار صرف دائیں بائیں سر ہلا کر رہ گئی کہ اس کا کچھ نہیں ہو سکتا۔
“تو کلاس ٹیسٹ کیلیے سب تیار ہیں”۔
پنار نے ہرمان کو اگنور کرتے ہوئے باقی کلاس سے پوچھا۔۔۔۔
“یس مس پنار ہم ریڈی ہیں ٹیسٹ کیلیے”۔۔۔۔۔۔۔۔
“چل بیٹھ بھی جا کہ ابھی اور عزت افزائی کی ڈوز باقی ہے”
عمر نے اس کا بازو کھینچ کر بیٹھاتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“نا تم دونوں کے بھی بڑے دانت نکل رہے تھے میری عزت افزائی پر ہوں”۔۔۔۔۔۔۔۔
ہرمان نے بھنویں اچکاتے ہوئے عمر اور حارث سے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“چل یہ چھوڑ اور ٹیسٹ کی فکر کر”۔۔۔۔۔
حارث نے ہرمان سے پوچھا۔۔۔۔۔
“ارے ٹیسٹ کی فکر تو وہ کرے جن کو ٹیسٹ آتا ہو ہم تو ہمیشہ سے بے فکر ہیں۔۔۔واہ کیسا۔۔”
“بلکل بکواس”۔۔
عمر نے خفگی سے کہا۔۔۔،
“تم تینوں کو ٹیسٹ نہیں دینا کیا؟”
پنار کافی دیر سے ان کی کھسر پھسر برداشت کر رہی تھی۔اور اب اکتا کر بولی۔
“نہیں مس پنار دد دے رہے ہیں ہم”۔۔۔۔۔۔۔۔
عمر نے ہکلاتے ہوئے جلدی سے نوٹ بک کھولتے ہوئے کہا۔۔۔۔
“تو کلاس صرف بیس منٹ ہیں آپ کے پاس،اور جس کا ٹیسٹ نا ٹھیک ہوا تو اس سے سر خلیل ہی پوچھیں گے میں نہیں”
پنار نے ہرمان کو جتلاتے ہوئے کلاس سے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“چل کھول لے کاپی اب کچھ لکھ بھی لے”
حارث نے ہرمان کو کوہنی ماری جو منہ کے برے برے پوز بنا کر کلاس کو دیکھ رہا تھا جو ٹیسٹ دینے میں مصروف ہو گئی تھیی۔۔۔ہرمان بھی نوٹ بک آگے رکھ کر بیٹھ گیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
 
“مرام بیٹا آپ کچھ دن ٹھہریں گی یا نہیں”۔۔۔۔۔۔۔۔
منیبہ نے ہادی کو چائے دیتے ہوئے مرام سے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“نہیں چاچی جان دراصل میرا پلین کچھ دن رکنے کا تھا، لیکن امی کا فون آیا تھا کہ ان کی طبیعت نہیں ٹھیک تو کل صبح ہم نکل جائیں گے” ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مرام نے چائے پیتے ہوئے منیبہ کو تفصیل سے جواب دیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ سب لوگ کھانے سے فارغ ہو کر لان میں چائے پی رہے تھے اور بچہ پارٹی باسکٹ بال کھیلنے میں مگن تھے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“تم لوگ کھیلو میں ضروری فون سن کر آتا ہوں”۔
ہرمان نے بال عتبہ کی طرف پھینکتے ہوئے فون کو کان سے لگایا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“ہرمان یار تمہارے بغیر خاک مزہ آئے گا”۔
شیزہ نے ہرمان کو جاتے ہوئے دیکھ کر کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“آپی جانے دیں ،انہوں نے کونسا کسی کو کھیلنے دینا ہے” ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
عتبہ نے منہ بناتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“اوئے موٹے چل چپ کر اگر میرے بھائی کے خلاف پیچھے سے بات کی تو زور سے تھپڑ ماروں گی”۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
عذوبہ نے عتبہ کو گھورتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔شیزہ اور عذوبہ بڑوں کی طرف چلی گئی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پیچھے سے عتبہ بیچارہ برے برے منہ بناتا رہ گیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
 
“عافیہ ابھی تک میری چائے نہیں آئی”۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اشعر صاحب نے ناہید کو کمرے میں داخل ہوتے ہوئے دیکھ کر کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“آرہی ہے آپ کی چائے پنار لے کر آرہی ہے”۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ناہید نے تکیہ درست کرتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“گرما گرما چائے حاضر ہے بابا”۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے کمرے میں آتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“بیٹا اتنی دیر لگا دی آج چائے لانےمیں”۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اشعر صاحب نے چائے کا کپ پکڑتے ہوئے پنار سے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“وہ بابا رومان نے پلاؤ کی فرمائش کردی تھی اس لیے دیر ہو گئی”۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے ان کے ساتھ بیٹھتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“بیٹا آپ کی کالج روٹین کیسی جارہی”۔
اشعر صاحب نے پنار سے اس کی جاب کے بارے میں پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“بابا اچھی جا رہی ہے لیکن ایک منتھ تک میں یہ جاب کروں گی”۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“کیوں بیٹا آپ کو تو بہت شوق تھا جاب کرنے کا”۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اشعرصاحب نے چائے کا خالی کپ پنار کو پکڑاتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“بس بابا میرے سر میں درد کر دیا ہے اس جاب نے”۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پنار نے صوفہ سے اٹھتے ہوے کہا۔۔۔۔۔۔۔”اچھا بابا شب بخیر”۔۔۔۔۔۔
پنار نے کمر ے سے جاتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“شب بخیر بیٹا “
اشعر صاحب نے جواباً کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
 
“ہرمان یار بہت اچھی خبر لایا ہوں میں تم دونوں کے لیے سنو گے تو فریش ہو جاو گے”
حارث نے ہرمان اور عمر کے پاس بیٹھتے ہوئے کہا”۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ جو دونوں کینٹین میں بیٹھے کولڈ ڈرنکس پی رہے تھے ،حارث کی بات پر اس کی طرف دیکھنے لگے کہ کیا بات ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“ارے نہ میرے یار ایسے نہیں بتاؤ ں گا پہلے دونوں ذر اپنی جیب ہلکی کرو” ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
حارث نے کمینگی سے کہتے ہوئے ہرمان کی کولڈ درنکس اچکی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“کوئی ضرورت نہیں ہمیں بتانے کی،اپنے پاس رکھ اپنے جیسی سڑی خبر، ہوں ہمیں فریش کرے گا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔عمر نے حساب برابر کیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“تجھ کنجوس سے کہہ کون رہا ہے ہاں میں تو اپنے جگری یار سے کہہ رہا ہوں”۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
حارث نے عمر کو کہتے ہوئے ہرمان کو مکھن لگایا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
” بک کتنے چاہئیے”۔
ہرمان نے حارث کو گھورتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“زیادہ نہیں صرف پانچ ہزار” ۔۔۔۔۔۔۔۔حارث نے فرائز کی پلیٹ خالی کرتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“کیا پانچ ہزار ، ہرمان کوئی ضرورت نہیں اسے پیسے دینے کی کیونکہ اس کی پاکٹ منی بند کردی ہے اس ہفتے کی چاچوں نے ،اب کونسی فرمائش کردی ہے تیری محبوبہ نے ہوں”۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
عمر نے اس سے فرائز کی پلیٹ چھینتے ہوئے ہرمان کی انفارمیشن میں اضافہ کیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور آخر میں حارث سے استفسار کیا۔۔۔۔۔۔۔۔
“تجھے کیوں بتاؤں،اور ہر وقت میری محبوبہ کے پیچھے مت پڑا کر”
حارث نے عمر کی گدی پر ہاتھ مارتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“تم دونوں اپنی اپنی بکواس بند کرو ، پکڑو پیسے اور بتا کیا خبر ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے اس کے ہاتھ پر پیسے رکھتے ہوئے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
“وہ یار اس ہفتے ہماری ٹرپ جارہی ہے ،ابھی پرنسپل مس پنار کو بتا رہے تھے کیسا”۔۔۔۔۔۔۔۔
حارث نے پرجوش سے انداز میں بتایا۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
“ارے یہ اچھی خبر بتائی تو نے۔کیوں ہرمان”۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
عمر نے حارث کو کہتے ہوئے آخر میں ہرمان سے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“ہممم اچھی خبر ہے”ہرمان نے بے نیازی سے جواب دیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
 
“پنار پتا چلا اسی ہفتے ٹرپ جا رہی ہے”
پنار کی کولیگ ایمن نے اس سے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“ہاں ابھی سر نے بتایا ہے مجھے” ۔۔۔۔۔۔پنار نے پیپر پن اپ کرتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“تو پھر چلو گی تم دونوں ٹرپ پر”۔ پنار کی دوسری کولیگ حادیہ نے دونوں سے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“ہاں یار میں تو چلوں گی بہت مزہ آئے گا،پنار تم بھی چلو گی نہ”۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ایمن نے حادیہ کو جواب دیتے ہوئے پنار سے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“ابھی کچھ کہہ نہیں سکتی”۔
پنار نے ٹیسٹ چیک کرتے ہوئے مصروف سے انداز میں کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔
“افففففف یار بہت بورنگ ہو تم ویسے سب جا رہی تم بھی چلو مزہ آئے گا تھوڑا فریش ہو جاو”۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
حادیہ نے پنار کے دلچسپی نہ لینے پر کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“یار میرا ان چیزوں میں کوئی انٹرسٹ نہیں میں اپنے گھر والوں کے ساتھ گھومنا پھرنا پسند کرتی ہوں۔۔اچھا میں اب چلتی ہوں ڈرائیور آگیا ہو گا ،اللہ خافظ “
پنار کہتے ہوئے باہر چلی گئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
” آدم بیزار ہے یہ لڑکی”۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔حادیہ نے پنار کے رویہ پر کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

–**–**–
جاری ہے
——
آپکو یہ ناول کیسا لگا؟
کمنٹس میں اپنی رائے سے ضرور آگاہ کریں۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Subscribe For Latest Novels

Signup for Novels and get notified when we publish new Novel for free!




%d bloggers like this: