Mera Ishq Teri Anayat Novel by Faiza Ahmed – Episode 8

0
میرا عشق تیری عنایت از فائزہ احمد – قسط نمبر 8

–**–**–

“پنار کتنی دیر لگا دی تم نے آج۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔مرینہ نے پنار کو دیکھتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔
“کیا ہوا حیریت ہے آج، پہلے بھی میں اسی وقت آتی ہوں۔۔۔۔۔۔۔۔۔
۔پنار نے صوفہ پر بیگ رکھتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“ہاں حیریت ہی ہے وہ آسیہ بھابھی کب کی آئی ہوئی ہیں ،تمہارا ویٹ کر رہی ہیں جاو پہلے ان سے مل لو ۔۔۔۔
مرینہ نے کباب تلتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“اس ٹائم حیریت ۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے پانی کا گلاس ثروت سے پکڑتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“ہاں خیریت ہی ہے تم سے ملنا چاہتی ہیں جاو مل لو جا کر”
“ہوں جا رہی ہوں،امی بھی ادھر ہی ہیں نا”۔
ہاں عافیہ بھابھی بھی ادھر ہی ہیں”
مرینہ نے کڑاہی سے کباب نکال کر پلیٹ میں رکھتے ہوئے کہا۔۔۔۔
“اسلام علیکم آنٹی،کیسی ہیں آپ”
پنار نے آسیہ کے گلے ملتے ہوئے کہا۔
“وعلیکم اسلام بیٹا۔میں بلکل ٹھیک تم کیسی ہو”
آسیہ بیگم نے پنار کا ماتھا چومتے ہوئے کہا اور اسے اپنے پاس بیٹھایا۔۔
” بیٹا وہ رمیز اسی ہفتے آرہا ہے تو میں سوچ رہی تھی کہ جیولری کا کام نبٹا لوں ، وہ میں آج پو چھنے آئی تھی کہ پنار کو ساتھ لے جا کر جیولری کا آرڈر دے دوں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
پنار نے عافیہ کو دیکھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔کہ کیا کہے اب ،آنکھوں سے اسے حوصلہ دیا”
“انٹی آپ حود پسند کر لیں نہ ،مجھے ان چیزوں کے بارے میں زیادہ سمجھ نہیں ۔۔۔۔۔۔۔پنار نے آسیہ کے ہاتھ پر ہاتھ رکھتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
تھیک ہے بیٹا آپ مجھے بتا دو کہ آپ کس طرح کے ڈیزائن پسند کرتی ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہلکے یا بھاری۔”
انٹی آپ جو بھی میرے لیے پسند کریں گی وہ مجھے دلو جان سے پسند ہو گا ، پنار نے ان کے کندھے پر ہاتھ رکھتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
 
“وووہ آپا آپ ٹرپ پر جائیں گی اور اپنی چھوٹی بہنوں کو یہی چھوڑ جائیں گی ہاں”
ژالے نے پنار کے کندھے پر سر رکھتے منہ بسور کر کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“کوئی نہیں آپا ہم بھی آپ کے ساتھ جائیں گی اور خوب انجوئے کریں گی کیوں ژالے”۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہائمہ نے کمرے میں آتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“ایسا کرو تم دونوں ہی چلی جاو مجھے ویسے بھی کوئی شوق نہیں ہے گھومنے پھرنے کا” ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پنار نے دونوں کو تیکھے چتونوں سے گھورتے ہوئے کہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“کیوں آپا کو تنگ کررہی ہو تم دونوں ، اور جاو جاکر سو جاو ورنہ صبح کالج سے چھٹی کا بہانا بنا کر بیٹھ جاو گی ہممم”۔۔۔۔۔۔۔۔
رومان نے دونوں کو پنار کے کمرے سے چلتا کیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“کیوں ہم کیوں جائیں، ہم دونوں تو آج یہی سوئیں گی”۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہائمہ اور ژالے نے ایک ساتھ رومان کو جواب دیتے ہوے چڑایا دیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“رومان یہ کب سے مجھے تنگ کیے جا رہی ہیں اتنی تھک گئی ہوں لیکن یہ دونوں مجھے آرام بھی نہیں کرنے دے رہیں”۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پنار نے منہ بسورتے ہوئے رومان سے ژالے اور ہائمہ کی شکایت کی۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“ارے آپا یہ ایسے نہیں جائیں گئ ،یہ لاتوں کے بھوت پیار سے کب مانتی ہیں ٹھہریں ذرا، بابا جان ذرا پنار آپا کے کمرے میں آئیے گا”۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہرمان نے دروازے میں کھڑے ہو کر اشعر صاحب کو بلایا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ جو اپنے کمرے میں جانے لگے تھے رومان کے بلانے پر پنار کے کمرے میں چلے آئے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
کیا بات ہے انہوں نے رومان کو دیکھتے ہوئے کہا اور تم دونوں ابھی تک سوئی نہیں”
انہوں نے ژالے اور ہائمہ کو دیکھتے ہوئے کہا جو اب شریف بچیاں بنی کھڑی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ژالے اور ہائمہ کی تو سیٹی ہی گھم ہوگئی۔۔۔۔۔اور دل ہی دل میں رومان کو کوسنے لگیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے اپنا ڈوپٹہ سر پر درست کر کے کھڑی ہوئی۔ ۔۔
“دیکھیں بابا یہ دونوں پنار آپا کو کب سے تنگ کر رہی ہیں اور انہیں آرام بھی نہیں کرنے دے رہیں”۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔رومان نے دونوں کی طرف اشارہ کرتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔رومان نے بھی اپنا دوپہر والا بدلہ چکایا ،رومان کی شرٹ جو پریس نہیں کی تھی ژالے نےاور ہائمہ نے بھی ٹکا کر جواب دیا تھا ہم سے نہیں ہوتی۔
“تم دونوں ابھی تک نہیں سوئی اور صبح دیر ہوگئی کا شور مچا دیتی ہو ،جاو جاکر سو جاو اور آئندہ اس وقت پنار کے کمرے میں نہ دیکھوں تم دونوں کو”۔۔۔۔۔۔۔
انہوں نے دونوں کو گھورتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور وہ دونوں ایسے بھاگی جیسے اسی بات کا انتظار ہو۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور جاتے جاتے رومان کو گھورنا نہیں بھولی تھی
“اور تم بھی جا کر آرام کرو”۔
کمرے سے جاتے ہوئے انھوں نے رومان سے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
” جی ابو میں بھی جا رہا ہوں” ۔۔۔۔۔۔۔۔رومان نے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“بہت خراب ہو تم”۔
پنار نے مسکراتے ہوئے رومان سے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“ارے آپ کو تو میرا شکر گزار ہونا چاہیئے کہ شیطان کی نانیوں کو آپ کے کمرے سے بھگا دیا”۔۔۔۔۔۔۔۔
رومان نے جاتے جاتے پنار کو جواب دیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“ہاں اب تم بھی خوشیار رہنا اب وہ بھی تمہیں ایسے نہیں چھوڑیں گی”۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پنار نے اس سے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
 
“اففففففف، کیا مسئلہ ہے تمہارے ساتھ ہاں ،کیا اب مجھے تمہیں پڑھانے کے ساتھ ساتھ چلنے کا بھی طریقہ سیکھانا ہوگا”۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پنار نے بمشکل غصے کو کنٹرول کرتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“پنار جو پرنسپل کے آفس سے آرہی تھی اور ابھی موڑ مڑی ہی تھی کہ ہرمان کے ساتھ بہت زور کی ٹکرائی اور گرنے سے بچنے کے لیے اس نے ہرمان کے بازو کو پکڑا تھا اور ہرمان نے اسے کندھوں سے ورنہ وہ دونوں ہی زمین بوس ہو جاتے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے اس کے ہاتھ کو اپنے کندھوں سے ہٹاتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان کو اچانک پتہ نہیں کیا ہوا تھا کہ اسے پنار
کا ڈانٹنا بھی نظر نہیں اور وہ اس کو دیکھے گیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار کے جانے کے بعد بھی وہی کھڑا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ “اوے تو ابھی تک یہی کھڑا ہے”۔
عمر نے اس کے کندھے پر ہاتھ رکھتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“ہوں، کیا کہا”۔
ہرمان نے چونک کر عمر کی طرف دیکھا اور پوچھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
” اوے تمہارا دھیان کدھر ہے ہاں کہاں کھویا ہوا ہے” ۔۔۔۔۔۔۔۔
عمر نے اس کی غائب دماغی کو نوٹ کرتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
” کہی نہیں آو چلیں”۔
ہرمان نے اس کو جواب دے کر آگے کو طرف چلنے لگا جہاں پنار گئی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“اوے ادھر نہیں ادھر جانا ہے ہم نے عمر نے اسے ٹوکتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“تیری طبیعت تو ٹھیک ہے نا”
عمر نے اس کا بازو تھامتے ہوئے کہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”ہاں ٹھیک ہے میری طبیعت کو کیا ہونا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے شانے اچکاتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“گڈ مارننگ مس پنار”۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پنار نے کلاس میں اینٹر ہونے پر کلاس نے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“گڈ مارننگ ٹو کلاس” ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پنار نے اپنا بیگ وغیرہ چئیر پر رکھتے ہوئے جواباً کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“کلاس تو اپنے اپنے ٹیسٹ لینے کے لیے تیار ہو جاو” ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
عمر اور حارث بیچاروں کا ٹیسٹ کے نام پر منہ بن گیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“سب سے زیادہ نمبر ہیں دائم ملک کے ویلڈن دائم “۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے مسکرا کر دائم کو ٹیسٹ پکڑایا۔
ہرمان کو دائم آج سے پہلے کبھی اتنا برا نہیں لگا جتنا آج زہر لگا۔اور پنار کا دائم کو مسکرا کر ٹیسٹ پکڑانا ہرمان کو جلا گیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“عمر تمھارا ٹیسٹ بہت برا تھا اور حارث کا بھی کچھ خاص نہیں لگا مجھے۔۔۔بہت محنت کی ضرورت ہے تم دونوں کو”
پنار نے دونوں کو ٹیسٹ پکڑاتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔
“اور سب سے اچھا ٹیسٹ تھا اس کلاس کے سب سے ہونہار طلباعلم ہرمان اسد جڈون۔سو کلاس کلیپ فار ہرمان”
پنار نے تالی بجا کر ساری کلاس کی طرف دیکھا جو خیرت سے ہرمان کی طرف دیکھ رہی تھی۔اور دائم تو شاکڈ ہوا ہرمان کی اتنی تعریف سن کر۔۔۔۔۔۔۔
“تو ہرمان یہ لو اپنا ٹیسٹ اور ساری کلاس کو پڑھ کر سناو ان کو بھی تو پتہ چلے کہ تم نے کتنی محنت کی ہے”۔۔۔
پنار نے ہرمان کو طنزایا مسکرا کر کہا۔۔۔۔۔۔ہرمان کا چہرہ بھی ایک دم سرخ ہوا تھا۔۔۔۔۔۔
“چلو میں ہی پڑھ کر سنا دیتی ہوں کہ ہمارے ہونہار ہرمان اسد جڈون نے کیا لکھا ہے، So class attention please”۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“سمندر بھر سلیبس ہوتا ہے ۔
دریا بھر پڑھایا جاتا ہے ۔
بالٹی بھر یاد ہوتا ہے ۔
گلاس بھر لکھ آتے ہیں۔
اور چلو بھر نمبر آتے ہیں۔
اچھا نا لگے تو پیسے واپس
پنار کا ابھی اتنا پڑھنا ہی تھا کہ ساری کلاس قہقوں سے گھونج اٹھی اور ساری کلاس سے اونچا قہقہ دائم کا تھا۔۔اور تو اور عمر اور حارث بھی اپنے قہقے پر کنٹرول نہ کر سکے۔۔۔
ہرمان نے غصے سے ساری کلاس کو گھورا اور ایک نظر پنار کو گھور کر کلاس سے باہر نکل گیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے ہرمان کی پشت کو گھور کر دیکھا،اور کلاس کی طرف نتوجہ ہوئی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
“تو کلاس مجھے ساری کلاس اپنے اپنے نام لکھوا دیں جو جو ٹرپ پر جانا چاہتا ہے ،پنار نے رجسٹر کھولتے یوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”

–**–**–
جاری ہے
——
آپکو یہ ناول کیسا لگا؟
کمنٹس میں اپنی رائے سے ضرور آگاہ کریں۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Subscribe For Latest Novels

Signup for Novels and get notified when we publish new Novel for free!




%d bloggers like this: