Mera Ishq Teri Anayat Novel by Faiza Ahmed – Episode 9

0
میرا عشق تیری عنایت از فائزہ احمد – قسط نمبر 9

–**–**–

“چچی ہرمان گھر پر ہے”
ناہید جو ملازموں کے سر پر کھڑے ہو کر گھر کی صفائی کروا رہی تھی شیزہ کے پوچھنے پر اس کی طرف متوجہ ہوئی۔
“ارے شیزہ تم۔۔۔آو بیٹا بیٹھو ناہید نے شیزہ کو دیکھ کر کہا، اور تم جانتی تو ہو کہ اس ٹائم وہ کالج ہوتا ہے،آ جاتا ہے ابھی ایک ڈیڑھ گھنٹے تک،تب تک تم میرے پاس بیٹھو۔۔کیا پیو گی کافی یا کولڈ ڈرنک” ناہید نے شیزہ سے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
“نہیں نہیں چچی چائے نہیں پیوں گی باہر بہت گرمی ہے ہاں کولڈ ڈرنک پلا دیں”۔
شیزہ نے صوفے پر بیٹھتے ہوئے نزاکت سے کہا اور اپنا بیگ صوفے پر رکھ دیا۔۔۔۔۔۔۔
” نوری شیزہ کیلیے کولڈ ڈرنک لے آو ناہید نے نوری کو آواز لگائی۔۔۔۔بیٹا آج آپ کالج نہیں گئیں۔اور ہرمان سے کوئی کام تھا”۔
ناہید نے شیزہ کے پاس بیٹھتے ہوئے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“جی چچی وہ آج میری ایک فرینڈ کا برتھ ڈے تھا تو میں نے سوچا کہ ہرمان کے ساتھ جا کر اس کے لیے گفٹ لے آوں ۔یو نو اسکی پسند بہت ذبردست ہے” ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
شیزہ نے نوری سے کولڈ ڈرنکس لیتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“ہائے موم ،ہائے شیزہ ہرمان نے لونج میں اینٹر ہوتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
“ارے ہرمان کہاں جا رہے ہو شیزہ تمہارا کب سے ویٹ کر رہی ہے اسے تمہارے ساتھ مال جانا تھا تھوڑی شاپنگ کرنے”۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہرمان جو کمرے کی طرف بڑھ رہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ناہید نے ہرمان کو شیزہ کی آمد کا مقصد بتایا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“پلیز موم میں آل ریڈی بہت تھکا ہوا ہوں مجھے کہی نہیں جانا اور کوئی مجھے ڈسٹرب نہ کرے”۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
۔ہرمان نے سیڑیاں پھلانگتے ہوئے کہا اور اپنے کمرے میں چلاگیا اور زور سے دروازہ بند کیا۔۔۔۔۔۔
“افففف اس لڑکے کی حرکتیں کبھی کبھی بندے کو زچ کر دیتی ہیں۔ پتا نہیں کب سدھرے گا یہ لڑکا”۔
ناہید نے دائیں بائیں سر ہلایا کہ جیسے اس لڑکے کا کچھ نہیں ہو سکتا۔۔۔۔
“شیزہ بیٹا مائنڈ مت کرنا تمھیں پتہ تو ہے اس کے موڈ کا،پتہ ہی نہیں چلتا کب آف ہو جاتا ہے،ابھی تھوڑی دیر تک اس کا موڈ ٹھیک ہو گا تو بھیج دوں گی پھر چلی جانا”۔
ناہید نے شیزہ کو ریلیکس کیا جو اپنے اگنور کرنے پر منہ بنائے کھڑی تھی۔۔۔۔۔۔۔
“رہنے دیں چچی میں اپنی دوست کے ساتھ چلی جاتی ہوں”
شیزہ نے غصے سے بیگ پکڑا اور باہر کی طرف چلی گئی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“اس لڑکے کی حرکتیں تو کبھی کبھی بہت شرمندہ کر دیتی ہیں اسد ٹھیک کہتے ہیں یہ لڑکا بہت بگڑ گیا ہے”۔
ناہید سر پکڑ کر صوفے پر بیٹھ گئی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“کیا ہوا شیزہ بیٹا،تمھارا موڈ کیوں آف ہے۔کیا ہرمان گھر پر نہیں تھا”۔
منیبہ نے شیزہ سے پوچھا جو ان کے پاس ہی صوفے پر منہ پھلائے بیٹھی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“رہنے دیں موم۔۔۔آج کل تو اس کے نخرے ہی بہت ہیں،میں نے اتنی دیر اس کا انتظار کیا۔۔۔اور وہ جناب آیا اور آتے ہی کمرے میں گھس گیا اور ٹھاہ سے دروازہ میرے منہ پر بند کیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔شیزہ کو یہی غم کھائے جا رہا تھا کہ ہرمان نے اسے اگنور کیا ہے جسے اگے پیچھے لڑکے گھومتے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
“تھکا ہو گا بیٹا ،آپ جانتی تو ہو وہ اپنے موڈ کی کرتا ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔منیبہ نے اس کو ٹھنڈا کرتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ورنہ وہ کبھی انکار نہ کرتا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
“آپ اور دادی کو اس کے علاوہ کچھ نظر ہی نہیں آتا ،اینی ویز میں جا رہی ہوں میری دوست آچکی ہے باہر ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔شیزہ نے اپنا بیگ اٹھاتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔اوکے موم بائے۔۔۔شیزہ نے منیبہ کو ہاتھ ہلاتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔
ہرمان نے کمرے میں آ کر کھنچ کر ٹائی نکالی۔اور اوندھے منہ بیڈ پر گر گیا ۔۔۔۔۔۔۔
“یہ آج کیا ہو گیا تھا مجھے ۔۔۔۔۔اور مس پنار کا ڈانٹنا کیوں برا لگا مجھے”۔۔۔
ہرمان نے اپنے سلکی بالوں میں انگلیاں پھنساتے ہوئے سوچا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“اور دائم کے بچے کو تو میں دیکھ لوں گا بہت دانت نکل رہے تھے نہ تمہارے تمہیں تو میں مزہ چکھا کر رہوں گا”۔۔۔۔۔۔۔۔
ہرمان نے کروٹ بدلتے ہوئے دائم کے بارے میں کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور تکیے منہ دے کر آنکھیں بند کر گیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“آرے ایسے موقعے کہاں روز روز آتے ہیں
تمہیں جانا چاہئیے”
ردا نے پنار کے ٹرپ کے اعتراض پر اسے سمجھایا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
” تو پھر تم بھی چلو میرے ساتھ ورنہ میں بھی نہیں جاؤں گی”۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پنار نے بیڈ پر نیم دراز ہوتے ہوئے ردا کو جواباً کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
” یار مجھے چھٹی نہیں ملے گی نہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔تم جانتی ہو ڈاکٹر سعد کو وہ کبھی چھٹی کی اجازت نہیں دیں گے”۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ردا نے پنار کو کہتے ہوئے منہ بسورا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“اچھا اور میں تو جیسے جانتی ہی نہیں ہوں نہ کہ وہ تمہاری ایک گھوری سے ہی بات مان جائیں گے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے ردا کو فون میں سے ہی گھورا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔(کیونکہ ڈاکٹر سعد ردا کے منگیتر بھی تھے دونوں کی رضامندی سے وہ اس رشتے میں بندھے تھے)
“ہاہاہا ارے بہت کھڑوس ہے وہ ابھی میں نے کل ہی کہا کہ مجھے ہاف لیو دیں دے، لیکن نہ جی نہ وہ نہ مانے اور تم کہہ رہی ہو کہ تین دن کیلیے ٹرپ پر چلوں تمہارے ساتھ ہاں ۔۔۔۔۔۔ردا نے پنار کی معلومات میں اضافہ کیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
میں کچھ نہیں جانتی اگر تم نہیں جاؤ گی تو میں بھی نہیں جاؤں گی پنار نے اس بار دھمکی سے کام لیا کیونکہ وہ جانتی تھی کہ ردا کبھی دھمکی کے بغیر نہیں مانے گی۔۔۔۔
“اچھا بابا کرتی ہوں مسٹر کھڑوس سے بات۔۔۔اگر وہ نہ مانے تو تم خود ہی بات کرو گی،مجھے کوئی شوق نہیں اپنی بے عزتی کروانے کا “۔
ردا نے چائے کو کپ میں ڈالتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔
” میں کچھ نہیں جانتی تم پرسوں چل رہی میرے ساتھ۔۔۔۔۔۔پنار نے ردا کو ترئی لگائی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
ارے سعد کا فون آرہا میں تم سے بعد میں بات کرتی ہوں”۔۔۔۔۔۔۔۔
ردا نے موبائیل کی سکرین پر سعد کی کال آتے دیکھ کر کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اوکے تم کرو سعد سے بات لیکن اس سے ٹرپ پر جانے کی بات کر لینا”۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پنار نے فون رکھنے سے پہلے ردا کو سمجھایا ۔۔۔۔۔۔۔
“تو ہرمان کیسی جارہی ہے تمھاری سٹڈی”۔
اسد نے رات کے کھانے پر ہرمان سے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہرمان جو کھانا کھا رہا تھا،اسد کے اچانک سٹڈی کے بارے میں پوچھنے پر چونکا۔۔۔۔۔۔
” جی، جی ڈیڈ اچھی جا رہی ہے”۔
ہرمان نے کھانے کی پلیٹ میں چمچ کو ادھر ادھر گھماتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“ہمممممم کنتی اچھی جا رہی ہے”۔
اب کی دفعہ اسد صاحب کے چہرے پر غصے والے تاثرات تھے۔۔۔۔
“وے اسد بچے کو سکون سے کھانا تو کھا لینے دے۔۔پھر پوچھ لینا اس موئی پڑھائی کے بارے میں،پہلے ہی اس پڑھائی نے بچے کو کمزور کر دیا ہے”۔۔۔۔۔
دادی نے اسد صاحب کو ڈانٹتے ہوئے کہا۔۔۔عذوبہ اور ناہید بھی اب کھانا چھوڑ کر کبھی اسد اور کبھی ہرمان کو دیکھ رہی تھیں۔۔۔
“اچھا تو پھر پوچھئے اپنے صاحب زادے سے کہ کتنے مارکس لیے ہیں کل کہ ٹیسٹ میں”۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اسد نے چمچ کو پلیٹ میں پٹختے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“آپ سیدھے طریقے سے پوچھ لیے مجھ سے، میں آپ کو بتا دیتا ہوں ،ہاں دیا تھا کل ٹیسٹ میں نے اور کچھ نہیں لکھا تھا۔۔۔ میری مرضی ہوگی تو ہی ٹیسٹ دوں گا ورنہ نہیں”۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہرمان نے بھی اس بارغصے سے کہا اور پلیٹ کو ہاتھ مار کر نیچے گرا دیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اور یہ جو آپ نے میرے پیچھے جاسوس چھوڑے ہوئے ہیں نا ان کو بھی صبح دیکھ لوں گا میں”۔۔۔۔۔۔
ہرمان اتنا کہتے ہوئے اٹھ کھڑا ہوا اور جاتے ہوئے گلاس کو بھی ہاتھ مار کر نیچے گرا دیا جو ٹوٹ کر فرش پر بکھر گیا۔۔۔۔
” کیا بدتمیزی ہے ہرمان”۔
اسد صاحب زور سے بولے ان کے اس طرح زور سے بولنے پر عذوبہ اور ناہید بھی ڈر گئیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“سمجھا لینا اسے ورنہ مجھے کوئی سحت ایکشن لینا ہوگا۔۔۔۔۔۔۔۔اسد صاحب ناہید کو کہتے ہوئے اپنے کمرے کی طرف بڑھ گیے۔۔۔۔۔”
ہرمان نے کمرے میں آکر اپنا سارا غصہ
بے جان چیزوں پر نکالا پہلے ہاتھ مار دیکوریشن پیس نیچے گرا دیئے۔۔۔۔۔۔اور پھر اس پر بھی بس نہ کیا تو کبڈ سے سارے کپڑے نکال کر فرش پر ادھر ادھر پھینک دئیے۔۔۔۔۔۔۔۔۔پانچ منٹوں میں کمرے کی حالت کسی کباڑخانے سے کم نہ تھی اور آخر میں کمرے سے ہی باہر نکل گیا پیچھے سے دادی پکارتی رہ گی لیکن ہرمان نے غصے سے سنی ان سنی کرتے ہوئے باہر چلا گیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”

–**–**–
جاری ہے
——
آپکو یہ ناول کیسا لگا؟
کمنٹس میں اپنی رائے سے ضرور آگاہ کریں۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Subscribe For Latest Novels

Signup for Novels and get notified when we publish new Novel for free!




%d bloggers like this: