Mera Ishq Teri Anayat Novel by Faiza Ahmed – Last Episode 40

0
میرا عشق تیری عنایت از فائزہ احمد – آخری قسط نمبر 40

–**–**–

مرام اس کے گلے لگی رو رہی تھی۔۔۔۔۔۔۔اب تو تم ٹھیک ہو نا ۔۔۔۔۔مرام نے اس کا چہرہ ہاتھوں میں لیتے ہوئے پوچھا ۔۔۔۔۔۔۔۔آپی میں بلکل ٹھیک ہوں ۔۔۔۔پلیز روئیں مت آپ۔۔۔۔۔۔ہرمان نے بھی اس کا چہرہ ہاتھوں میں لے کر اس کے آنسو صاف کرتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”مرام نے سر ہلایا۔۔۔۔۔۔۔ارے میرا شیر تو کافی بڑا ہو گیا ہے ۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے احمد کو گلے لگاتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔ تو کیا ماموں میں چھوٹا ہی رہتا بڑا نا ہوتا ۔۔۔۔۔۔احمد نے معصومیت سے کہا ۔۔۔۔۔۔ارے میرا چھوٹا شیر ۔۔۔۔۔۔ہرمان نے اسے دوبارہ گلے سے لگایا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔سب ماموں بھانجے کی محبت سے لطف اندوز ہو رہے تھے ۔۔۔۔۔۔سوائے ہانی کے جو مرام کی گود میں بیٹھا احمد کو گھور رہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔جو اس کے ڈیڈ سے کیسے چمٹا تھا ۔۔۔۔۔۔۔ہانی مرام کی گود سے اٹھا۔۔۔۔۔۔۔اور ہرمان کے پاس آیا ۔۔۔۔تم اپنے ڈیڈ کے پاس جاو ۔۔۔۔۔ہانی نے سامنے بیٹھے ہادی کی طرف اشارا کیا جو سامنے بیٹھے پنار سے چائے کا کپ پکڑ رہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”کیوں۔۔۔۔۔۔ احمد نے کہا ۔۔۔۔۔۔۔ یہ میرے ڈیڈ ہیں ۔۔۔۔۔۔ہانی نے ہرمان کی گود میں زبردستی جگہ بناتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔”سب اس کی جیلسی پر کھلکھلا کر رہ گئے ۔۔۔۔۔۔۔۔اچھا جی ۔۔۔۔۔ہرمان نے اس کے بال بکھیرتے ہوئے پیار سے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔اور جب آپ اپنی مما کے پاس ہوتے ہو تب کیوں نہیں آتے یاد ڈیڈ ۔۔۔۔۔ہمم ہرمان نے اسے گود میں بٹھاتے ہوئے اس کے کان میں کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔اب یاد آئیں گے بٹ آپ احمد بھائی کو گود میں مت بٹھانا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہانی نے سینڈوچ کا ٹکڑا منہ میں ڈالتے ہوئے معصومیت سے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔”اوکے پھر پرومس کرو پکا والا پرومس ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے اس کے آگئے ہاتھ کرتے ہوئے شرارتی مسکراہٹ سے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔”مما کہتی ہیں پرومس نہیں کرتے ٹوٹ جاتے ہیں ۔۔۔۔پھر اللہ پنش کرتے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان بھی تو اسے کا ہی بیٹا تھا ۔۔۔۔اسی کی طرح کا جواب دیا ۔۔۔۔۔۔۔۔بہت تیز ہو یار تم ۔۔۔۔۔۔ہرمان نے محبت سے اسے گلے لگاتے ہوئے کہا اور پھر پنار کو دیکھا جو ان کی ہی طرف متوجہ تھی۔۔۔۔۔۔۔اور مسکرا کر باپ بیٹے کو سرگوشی میں باتیں کرتی دیکھ رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے بھی محبت سے اپنے عشق کو دیکھا ۔۔۔۔۔۔جو اسے ساری دنیا سے زیادہ عزیز تھی۔۔۔۔۔۔۔۔”رومان اور اس کے گھر والے بھی آئے تھے رومان کو جب اس کے ایکسیڈینٹ کا پتا چلا تو اس گلے لگاتے ہوئے سوری کیا ۔۔۔۔۔۔سب نے رات کا کھانا وہی ایک ساتھ کھایا تھا”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁
یہ کیا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔عذوبہ نے حارث کی طرف بڑھاتے ہوئے پوچھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔وہ جو بیڈ پر لیٹا موبائیل پر ہرمان سے بات کر رہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔فون بند کر کے اس کے ہاتھ کی طرف دیکھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔کاغذ۔۔۔۔۔معصومیت سے کہا گیا ۔۔۔۔۔۔مجھے بھی پتا ہے یہ کاغذ ہے ۔۔۔۔۔عذوبہ نے غصے سے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔تو پھر پوچھ کیوں رہی ہو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔حارث نے اسے اپنے پاس بٹھاتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اچھا ۔۔۔۔۔عذوبہ نے اسے کھولا اور اس کے سامنے لہرایا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہمم ،یہ تو کوئی لو لیٹر لگتا ہے ۔۔۔۔۔۔۔حارث نے غور سے دیکھ کر کہا ۔۔۔۔۔۔۔جی زرا یہ بھی دیکھیں کس نے لکھا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔یار ہمیں کیا کسی نے بھی لکھا ہو ۔۔۔۔۔۔۔مجھے تو بس اپنی بیوی سے مطلب ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔حارث نے اس کے قریب جھکتے ہوئے معنی خیزی سے کہا ۔۔۔۔۔۔۔پیچھے ہٹیں نا زرا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور یہ پڑھیں ۔۔۔۔۔عذوبہ نے لیٹر اس کے ہاتھ پر پٹخ کر کہا ۔۔۔۔۔۔۔حارث نے ہاتھ لے کر جیسے جیسے پڑھا پریشان ہوا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔یار یہ کہاں سے ملا ۔۔۔۔۔۔حارث نے بوکھلاتے ہوئے پوچھا ۔۔۔۔۔۔۔ جہاں سے بھی ملا ہو ۔۔۔۔۔۔مجھے بتائیں کیا آپ لڑکیوں کو لو لیٹر ہی لکھتے رہتے تھے ۔۔۔۔۔۔۔عذوبہ نے سرخ چہرے سے پوچھا ۔۔۔۔۔۔نہیں تو یہ تو عمر نے لکھا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔اور تم تو جانتی ہی ہو کہ میری رائٹنگ کتنی گندی ہے میں کہاں اتنا پیارا لکھ سکتا ہوں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔حارث نے معصوم بنتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔عمر بھائی سے لکھوایا تھا آپ نے ۔۔۔۔۔۔۔عذوبہ نے اس کی باہوں سے نکلتے ہوئے غصے سے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”(عمر کے بچے تجھ سے تو میں بعد میں نبٹتا ہوں )حارث نے دل میں سوچا ۔۔۔۔۔۔یار یہ عمر کی سازش ہے ۔۔۔۔حارث نے اس کے بال پیچھے کرتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔.بس کردیں آپ کل بھی اس ہالہ کی بچی کو مسکرا کر دیکھ رہے تھے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔یار پروسیوں کے بھی کچھ حقوق ہوتے ہیں ۔۔۔۔۔۔انہیں مسکرا کر دیکھنے سے بہت ثواب ملتا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔حارث نے اسے پروسیوں کے حقوق سمجھائے تھے جیسے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اچھا ۔۔۔عذوبہ نے کمر پر یاتھ رکھ کر کہا ۔۔۔۔۔۔اور غصے سے کمرے سے ہی واک اوٹ کر گئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”ہاہاہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔کیسے ہو برو ۔۔۔۔۔عمر نے عذوبہ کے جاتے ہی کمرے میں اینٹری دی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔تیری تو ۔۔۔حارث غصے سے اس کی طرف لپکا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔نا نا ہاتھ مت لگانا ورنہ کتنی جوتیاں پڑی تھی وہ بھی عذوبہ کو بتا دوں گا۔۔۔۔۔۔۔۔عمر نے اسے اپنی طرف بڑھتے دیکھ کر انگلی سے دھمکی دی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کیا ہو جاتا جو اپنی نئی گاڑی دے دیتے ۔۔۔۔۔۔عمر نے اسے گاڑی نا دینے کا یاد کروایا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”ہاں اور تو توڑ کر لے آتے ۔۔۔۔۔۔حارث نے گھور کر کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔بھائی جیسے تمہاری مرضی ۔۔۔۔۔۔۔جاو اور پھر ساری رات اپنی بیوی کو منانے میں گزارو ۔۔۔۔۔۔میں تو چلا اپنی کے پاس ۔۔۔۔۔۔عمر اسے چڑاتا ہوا چلاگیا ۔۔۔۔۔۔پیچھے حارث پیچو تاب کھا کر رہ گیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁
عمر نے کھڑکی میں کھڑی ژالے کو پیچھے سے ہگ کیا ۔۔۔۔۔۔کیا ہو رہا ہے ہاں ۔۔۔۔۔۔عمر نے اس کے کان کے قریب جھکتے ہوئے پوچھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔آپ کا انتظار ۔۔۔۔۔ژالے نے بنا پلٹے جواب دیا ۔۔۔۔۔۔۔ارے میں مر جاوں آج دن کہاں سے نکل آیا تھا کہ میری ژالے رات کو میرا انتظار کر رہی ہے ۔۔۔۔عمر نے اس کی کمر پر ہاتھ باندھ رکھ کر کہا۔۔۔۔۔۔۔یہ علشبہ کون ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ژالے نے پلٹ کر تیکھے چتونوں سے پوچھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کک کون علشبہ میں کسی علشبہ کو نہیں جانتا قسم سے۔۔۔۔۔۔۔عمر پہلے تو بوکھلایا ۔۔۔لیکن پھر سنمبھلتے ہوئے کہا. ۔۔۔۔۔۔۔وہی جس کا ابھی تھوڑی دیر پہلے فون آیا تھا تمہارے فون میں۔۔۔۔۔۔ژالے نے موبائل اس کے سامنے لہرایا ۔۔۔۔۔۔۔وہ ہ اچھا وہ تو حارث کی سیکرٹری ہے ۔۔۔۔۔۔۔اچھا سیکرٹری وہ حارث کی ہے اور کال وہ آپ کو کر رہی ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ژالے نے اسے غصے سے گھورتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔یار کیا پتا حارث کا فون نہ لگ رہا ہو اسی لیے میرے موبائل پر کال کر لی ہو ۔۔۔۔۔عمر نے بودی سے دلیل دی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔تم جاو گئے کمرے سے یا میں اور پری جائیں ۔۔۔۔۔۔۔یار بات تو سن لو پہلے۔۔۔۔۔۔عمر نے اسے کندھوں سے تھامتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔اچھا ٹھیک ہے میں ہی چلی جاتی ہوں باہر ۔۔۔۔۔ژالے غصے سے بیڈ کی طرف لپکی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔اچھا ٹھیک ہے جا رہا ہوں میں ۔۔۔۔۔۔۔عمر پیر پٹخ کر چلا گیا ۔۔۔۔۔۔۔پیچھے ژالے نے اسکی کی پشت کو گھورا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
آو آو مجھے تمہارا ہی انتظار تھا ۔۔۔۔۔کیا ہوا ژالے نے نکال دیا کمرے سے باہر چچچ بہت برا ہوا ۔۔۔۔۔۔۔حارث نے چینل سرچ نگ کرتے ہوئے عمر کی دھکتی ہوئی رگ پر ہاتھ ڈالا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔یہ سب تو نے کیا ہے نا ۔۔۔۔۔عمر نے اس کے پاس آتے ہوئے یقین سے پوچھا ۔۔۔۔۔۔۔آفکورس میرے علاوہ کون کرسکتا ہے یہ ۔۔۔۔۔حارث نے مسکراتے ہوئے اسے چڑایا ۔۔۔۔۔۔۔چلو آو مووی دیکھتے ہیں میں نے سوچا مجھے تو میری بیوی نے نکال ہی دیا ہے کمرے سے ۔۔۔۔۔تو کوئی مووی دیکھتے ہیں بیٹھ کر تب تک عمر بھی دھکے کھا کر آتا ہو گا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔تجھے تو ۔۔۔۔۔وہی بیٹھے رہو ،حارث نے اسے وہی ٹکے رہنے کی وارننگ دی ۔۔۔۔۔۔حارث سے پنگا ناٹ چنگا ۔۔۔۔۔۔حارث نے مسکراتے ہوئے اسے چڑایا ۔۔۔۔۔عمر اسے گھور کر رہ گیا ۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁
پتا ہے مارلن یہ جو عشق ہے نا سوچ سمجھ کر نہیں کیا جا سکتا ۔۔۔۔۔یہ تو بس ہو جاتا ۔۔۔ اور آپ اپنے بس میں نہیں کسی اور کے بس میں چلے جاتے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔اور میں تو اپنی بیوی کے بغیر ایک لمحہ نہیں رہ سکتا ۔۔۔۔۔۔گیا تھا نا اس سے دور تو قسمت نے مجھ ان سے شار سال تک دور کر کے سزا دی تھی ۔۔۔۔۔ہرمان ۔۔۔۔۔اور مارلن بالکنی میں کھڑے تھے ۔۔۔۔۔جب ہرمان نے اس کی فیلنگ محسوس کر اسے سمجھایا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔لیکن مجھے تمہاری بیوی سے کوئی اعتراض نہیں ہو گا ۔۔۔۔۔۔۔۔ مارلن نے بے بسی سے کہا ۔۔۔۔۔۔۔لیکن مجھے اور میری بیوی کو اعتراض ہے ۔۔۔۔۔۔ہمارے بیچ کسی تیسرے کی گنجائش نا ہے اور نا کبھی ہوگئی ۔۔۔۔ایم سوری مارلن میں نے تمہیں ہرٹ کیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔نہیں تم کیوں سوری بول رہے ہو ۔۔۔۔۔۔قصور تو سارا میرا ہے تمہارا تو نہیں ۔۔۔۔۔۔۔پتا ہے جب میں نے تمہیں پہلی بار دیکھا تم میں کچھ الگ سا محسوس ہوا تھا مجھے ۔۔۔۔پتا نہیں کیسی کشش تھی کہ تم میں کہ تمہاری طرف کھینچتی ہی چلی گئی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔مارلن نے اپنی فیلنگ کا کھل کر اظہار کیا ۔۔۔۔۔۔ہرمان نے ہونٹ بھینچے ۔۔۔۔۔۔میری کل کی ٹکٹ کروادو ۔۔۔۔۔۔مارلن نے اسے کے چہرے کو حسرت سے دیکھ کر کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔تم کچھ دن رہنا چاہتی ہو تو رہو پلیز اس طرح جاو گئی تو مجھے اچھا نہیں لگے گا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ارے میں تم سے ناراض ہو کر تھوڑی جارہی ہوں ۔۔۔۔تم سے ہمیشہ کانٹیکٹ میں رہوں گئی ۔۔۔۔۔۔۔مارلن نے مصنوعی مسکان سے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے چاند کو دیکھ کر سر ہلایا۔۔۔۔۔۔۔۔جبکہ مارلن کی نظریں اس کے چہرے پر تھیں ۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁
اور اس دیو نے پرنسس کو آزاد کر دیا۔۔۔۔۔۔۔ہرمان جب کمرے میں آیا تو پنار ہانی کو گود میں لیے اسے سٹوری سنا رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔یار پلیز مجھے بھی تھوڑا وقت دے دیا کرو ۔۔۔۔۔۔ہر وقت کبھی کچن میں بزی تو کبھی ہانی صاحب میں،میں تو نظر ہی نہیں آتا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے دونوں کے پاس آتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”ہانی اور پنار نے اسے بیک وقت گھورا تھا۔ ۔۔۔”۔کیا ہاں! تم دونوں مجھے گھور کیوں رہے ہو ۔۔۔۔۔۔کونسا میں نے کچھ غلط کہہ دیا ہے۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے منہ بنائے ہانی کی گود میں سر رکھا ۔۔۔۔۔۔۔۔آپ میری گود میں لیٹ گئے ۔۔۔۔۔میں گرینڈ دادی تھوڑی ہوں ۔۔۔۔۔۔۔۔ہانی نے منہ بناتے ہوئے کہا۔۔۔۔میرے باپ میرے سب رشتوں پر تو قبضہ کر ہی لیا ہے ۔۔۔۔۔۔کم از کم میری بیوی کو تو میرے لیے چھوڑ دیتے ۔۔۔۔۔ہرمان نے پنار کے بالوں میں ہاتھ ڈال کر انہیں کھینچا ۔۔۔۔۔۔۔اف ہرمان سدھر جاو ۔۔۔.ایک بیٹے کے باپ ہو تم ۔۔۔۔۔۔۔پنار نے اپنے بال چھڑاتے ہوئے اسے ڈانٹتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔ہاں بلکل جیسے تمہارے بیٹے کی خرکتیں ہیں نا مجھے لگتا ہے ایک ہی بیٹے کا باپ رہوں گا ۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے ہانی کو مصنوعی گھوری سے نوازتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔”پنار نے ہلکی سے مسکان سے اس کے کندھے پر تھپڑ مارا ۔۔۔۔۔ہانی نے منہ بنایا ۔۔۔۔۔۔۔مما ڈیڈ کی وجہ سے میں ڈسٹرب ہو رہا ہوں مجھے سونا ہے . ۔۔۔۔۔دادی کے کمرے میں چلا جاوں ۔۔۔۔۔۔۔۔ہانی نے آنکھیں پٹپٹاتے ہوئے معصوم لہجے میں کہا ۔۔۔۔۔۔. ہاں تاکہ وہاں ساری رات دادا کے موبائل پر گیمز کھیلتے رہو ۔۔۔۔۔وہ کونسا کچھ کہیں گے ہے نا ۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے اب کی دفع اپنے بیٹے کو گھورتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔نہیں تو سوں گا نا میں وہاں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہانی نے اسکی گود میں سے اترتے ہوئے شرافت سے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔اف ایک تم اور ایک یہ تمہارا بیٹا دونوں مل کر مجھے پاگل کر دو گئے۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے ہرمان کو غصے سے کہا جو مسکراتے ہوئے اپنے بیوی کا سرخ چہرہ دیکھ رہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔یار اچھا ہے نا ہم باپ بیٹا تمہیں بزی رکھتے ہیں خود میں۔۔۔۔۔۔۔کہ آپ ہم دونوں کے علاوہ کچھ اور نا ہی سوچو ۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے اس کی گود میں سر رکھتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔”پنار مسکرائی ۔۔۔۔۔۔۔یار پھر سے پونی ٹیل ۔۔۔۔۔کیوں اتنی ٹائٹ پونی کرتی ہو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے اٹھ کر اسکی پونی اتاری ۔۔۔۔۔۔۔پنار نے مسکراتے ہوئے اس کا چہرہ ہاتھوں میں لیا ۔۔۔۔۔۔۔۔تمہیں پتا ہے ۔۔۔۔میں نے سب سے زیادہ مس کیا کیا تھا ۔۔۔۔۔۔۔یہی تمہارا میری پونی اتارنا ۔۔۔۔۔۔۔۔میں بہت ٹائٹ پونی کیا کرتی تھی ۔۔۔تاکہ تم کہی سے آجاو اور میری پونی کھینچ کر کہو ۔۔۔۔۔۔آپ نے پھر پونی ٹیل کر لی آپ جانتی تو ہیں نا میرا سر درد کرنے لگ جاتا ہے آپ کو ایسے دیکھ کر ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے نمی لیے آنکھیں اسکی آنکھوں میں ڈالے ہی کہا ۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے اسے کھینچ کر اپنے سینے میں بھینچا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اف میں نے کتنا تنگ کیا نا آپ کو ۔۔۔۔۔۔ہرمان نے اسے کے سر اور چہرے پر ہونٹوں سے مہریں لگاتے ہوئے محبت سے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے مسکراتے ہوئے چہرہ اس کے سینے سے اٹھایا اور اپنے ہونٹ اسکی ناک پر رکھے ۔۔۔۔۔۔اور پھر اپنا سر اسکے سینے میں چھپایا ۔۔۔۔۔۔ہرمان نے مسکراتے ہوئے اسے خود میں بھینچا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔.”باہر چلیں ۔۔۔۔۔ہرمان نے اس کی طرف جھک کر پوچھا ۔۔۔۔۔ہاں دل تو میرا بھی کر رہا لیکن اس وقت ۔۔۔۔۔۔پنار نے گھڑی پر ٹائم دیکھتے ہوئے کہا جہاں رات کے دس بج رہے تھے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔میں ہوں نا آپ کے ساتھ ۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے اپنا چہرہ اس کے چہرے پر رکھتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔چینج کر لوں ۔۔۔۔۔۔پنار کے ہونٹ اسکے گال پر مس ہو رہے تھے ۔۔۔۔۔۔ہرمان نے ایسے ہی سر ہلایا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ٹھیک ہے میں صرف پانچ منٹ میں آئی ۔۔۔۔۔۔پنار نے اس سے الگ ہوتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔اور جلدی سے کبڈ کی طرف بڑھی ۔۔۔۔۔۔۔اور پھر واش روم کی طرف بڑھ گئی ۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے اسکی پشت کو مسکراتی ہوئی نظروں سے دیکھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور اللہ کا شکر کیا جس نے دوری ضروی لائی تھی انکے رشتے میں ۔۔۔۔۔لیکن انہیں ایک دوسرے سے الگ نہیں کیا تھا ہرمان نے دل ہی دل میں اس پاک زات کا شکر ادا کیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
پنار تھوڑی دیر میں ہی ہلکے نیلے کلر کی لمبی کمیض جو گھٹنوں تک آتی تھی جس کے گلے اور بازو پر سی گرین کڑھائی کی گئی ہوئی تھی ۔۔۔۔۔۔اور سی گرین ہی بڑا سا ڈوپٹہ تھا نیچے ہلکے نیلے کلر کا ٹروزر تھا ۔۔۔۔۔۔۔جو اس کی لمبی ہائٹ ہر بہت جچ رہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔یار کیوں میرا دل بے ایمان کرنے کو یہ پہن لیا ۔۔۔۔۔۔۔۔اب میرا دل نہیں کرے گا باہر جانے کو ۔۔۔۔۔۔ہرمان نے بیڈ سے اٹھتے ہوئے معنی خیزی سے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔خبردار وہی رہو میرے پاس مت آنا ۔۔۔۔۔پنار نے بالوں میں برش کرتے اسے وہی ٹکے رہنے کی وارننگ دی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”چلیں پنار نے ریڈی ہو کر اپنے شوہر سے کہا ۔۔۔۔۔۔جو رف سے حلیے میں بھی ماخول پر چھایا ہوا لگ رہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہوں چلیں ،ہرمان نے کیز اٹھاتے ہوئے اس کا ہاتھ پکڑ کر کہا ۔۔۔۔۔پنار نے سر ہلایا ۔۔۔۔۔۔۔۔ہانی ,پنار نے انکل کے کمرے کے سامنے سے گزرتے ہوئے رک کر کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔آپ یہاں ٹھہریں میں دیکھ آتا ہوں ۔۔۔۔۔۔ہرمان کہہ کر ڈیڈ کے کمرے میں چلا گیا ۔۔۔۔۔۔۔۔ڑھوڑی دیر بعد آیا سو رہے ہیں تینوں ۔۔۔موم ڈیڈ کے بیچ دیوار بن کر سو رہا ہے ۔۔۔۔۔۔ہرمان نے مسکراتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔تم سدھرو گئے نہیں پنار نے اسے مصنوعی گھوری سے نوازتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔بلکل نہیں ۔۔۔۔۔ہرمان نے جواباً اسے آنکھ مارتے ہوئے کندھے اچکاتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁
پتا ہے میرا دل کیا کر رہا ہے ۔۔۔۔کیا ؟پنار نے کافی کا گھونٹ بڑھتے ہوئے پوچھا ۔۔۔۔۔۔۔۔دل کر رہا ہے کہ آپ کو گود میں اُٹھاوں اور گول گول لے کر گھوموں ۔۔۔۔۔ایسا سماں کہاں ملے گا ۔۔۔۔۔۔ہلکی ہلکی بوندیں گہری رات اور اوپر سے آپ کا ساتھ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔وہ دونوں پیدل چل رہے تھے اوپن کیفے سے کافی لیے وہ دونوں سڑک پر چلتے جا رہے تھے ۔۔۔۔۔۔۔۔” خبردار ایسے خیالات پر عمل کرنے کا سوچا بھی تو ۔۔۔۔۔۔پنار نے اسے انگلی سے وارننگ دیتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔اس جیسے سر پھرے سے کیا توقع کی جا سکتی تھی کہ ابھی اپنے کہے پر عمل ہی نا کر دیے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہاہاہا ۔۔۔یار آپ ڈر گئی ۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے اس کے گھبرائے ہوئے چہرے کو دیکھتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کئی لوگوں نے اس خوبصورت مسکراتے شہزادے کو پلٹ کر دیکھا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے آس پاس لوگوں کی توجہ اس پر دیکھ کر اسے گھورا اور تیز تیز قدموں سے آگئے بڑھ گئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔کیا ہوا ۔۔۔۔۔ہرمان نے اس کی انگلیوں میں انگلیاں ڈالتے ہوئے اس کے سیریس سے چہرے کو دیکھ کر پوچھا ۔۔۔۔۔۔۔۔کیا ضرورت تھی اس طرح قہقہہ لگانے کی وہاں کتنی لڑکیاں تمہیں گھور گھور کر دیکھ رہی تھی ۔۔۔۔۔۔مجھے بلکل اچھا نہیں لگتا ۔۔۔جب تمہیں میرے علاوہ کوئی اور ایسے دیکھے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے جواباً مسکراتے ہوئے اس کا ہاتھ پکڑتے ہوئے اپنے ہونٹوں سے لگایا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ایک منٹ یہ ڈاکٹر عائشہ تو نہیں ۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے سامنے کھڑی اپنی طرف دیکھتی عائشہ کو غور سے دیکھتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔پنار نے بھی اسکی نظروں کے تعاقب میں دیکھا جہاں ڈاکٹر عائشہ کوٹ بازو پر لٹکائے انہی کی طرف آرہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔پہچانا مجھے ۔۔۔۔ڈاکٹر عئشہ نے دونوں کی طرف دیکھتے ہوئے پوچھا ۔۔۔۔۔۔۔۔آپ کو کیسے بھول سکتے ہیں ہم ڈاکٹر عائشہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔شکر ہے پہچان لیا مجھے لگا تم کہی پہچاننے سے انکار ہی نا کردو ۔۔۔۔۔عائشہ نے مسکراتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔کیسی ہیں آپ مسز ہرمان ۔۔۔۔۔عائشہ نے پنار سے پوچھا ۔۔۔۔۔۔۔میں ٹھیک ہوں ۔۔۔آپ کیسی ہیں ۔۔۔۔۔۔پنار نے بھی جواباً مروت سے پوچھا ۔۔۔۔۔۔آئی ایم ویل ۔۔۔۔۔دراصل میں یہاں اپنی انٹی سے ملنے آئی تھی کہ اچانک نظر آپ دونوں پر پڑی ۔۔۔۔۔۔۔۔تو میں رہ نا سکی ۔۔۔۔۔۔۔عائشہ نے اپنی نرم طبیعت سے کہا ۔۔۔۔۔۔۔آئیں آپ دونوں میں اپنی آنٹی کے ہاتھوں کی چائے پلاتی ہوں وہ چائے بہت اچھی بناتی ہیں ۔۔۔۔۔۔۔ڈاکٹر عائشہ نے خلوص سے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ٹھینکس سو مچھ لیکن ہمیں دیر ہو رہی ہے۔۔۔۔ہمارا بیٹا ہمارا ویٹ کر رہا ہو گا گھر پر ۔۔۔۔۔۔پنار نے مسکراتے ہوئے ہرمان کے کچھ کہنے سے پہلے ہی بول پڑی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔او آپ دونوں کا بیٹا بھی ہے ۔۔۔۔۔۔عائشہ نے ایکسائیٹمنٹ سے پوچھا ۔۔۔۔۔۔جی ماشاءاللہ ساڑے تین سال کا ہے ۔۔۔۔۔۔پنار نے مسکراتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔اچھا میں چلتی ہوں اگر زندگی رہی تو پھر ملیں گئے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔عائشہ نے گلاسز لگاتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔ضرور اللہ خافظ ۔۔۔۔۔ہرمان پنار دونوں نے مسکراتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔اور آگئے بڑھ گئے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ڈاکٹر عائشہ نے لونگ کپل کو دیکھا اور پھر مسکرا کر گاڑی میں بیٹھ گئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
ڈاکٹر عائشہ اچھی نیچر کی ہیں ۔۔۔۔۔پنار نے ٹھنڈی کافی کا سپ لیتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔ہاں اور پہلے سے زیادہ خوبصورت بھی ہو گئی ہیں۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے مسکراتے ہوئے اسے چڑایا ۔۔۔۔۔۔۔تم نا باز آجاو اپنی ان چھچھوڑی خرکتوں سے ۔۔۔۔۔پنار نے اس کا ہاتھ جھٹکتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔اف اتنا غصہ ۔۔۔۔۔ویسے آپ غصے میں اور زیادہ اچھی لگتی ہیں ۔۔۔۔۔۔ہرمان نے اس کے ہاتھ سے کافی کا کپ لے کر پاس پڑے ڈسٹ بن میں پھینکتے ہوئے کہا ۔۔۔اور اسے اپنی باہوں میں لے کر اوپر اٹھایا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”یہ کیا کر رہے ہو نیچے اتارو مجھے کوئی دیکھ لے گا ۔۔۔۔۔پنار نے سنسان سڑک پر ادھر ادھر دیکھتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔تو دیکھ لے آئی ڈونٹ کیئر ۔۔۔۔ہرمان نے نا میں سر ہلا کر آہستہ سے اس لیے گول گول گھمنے لگا ۔۔۔۔۔۔انتہائی ڈیٹھ ہو تم پنار نے گرنے کے ڈر سے اس کے گلے میں مظبوطی سے باہیں ڈالتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔وہ تو میں ہوں اور ہمیشہ رہوں گا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے اپنی ناک اس کی ناک سے ٹکرایا اور پھر اپنی محصوص زچ کرتی مسکان سے اسے چڑایا ۔۔۔۔۔۔۔۔پنار جواباً اسے گھور کر رہ گئی کہ اس ڈیٹھ انسان کو کوئی سمجھا نہیں سکتا تھا وہ خود بھی نہیں۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁
سمجھ نہیں آرہا کیا کہوں 🤔آپ سب ریڈرز کا بہت بہت شکریہ جنہوں نے میری پہلی کاوش کو نہ صرف پسند کیا بلکہ اپنے اچھے اچھے کمنٹس سے میری خوصلہ افضائی بھی کی ۔۔۔۔۔۔۔۔شکریہ آپ سب ریڈرز کا 💐۔۔۔۔۔۔۔۔انشاء اللہ جلد ہی اپنے نئے ناول کے ساتھ میں دوبارہ حاضر ہوں گئی 😍😍

–**–**–
ختم شد
——
آپکو یہ ناول کیسا لگا؟
کمنٹس میں اپنی رائے سے ضرور آگاہ کریں۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Subscribe For Latest Novels

Signup for Novels and get notified when we publish new Novel for free!




%d bloggers like this: