Mera Sham Slona Shah Piya Novel By Bella Subhan – Episode 1

0
میرا شام سلونا شاہ پیا از بیلا سبحان – قسط نمبر 1

–**–**–

وہ کب سے نوٹس پھیلاۓ ناخن چباتے انھیں گھورنے میں مصروف تھی پچھلے آدھے گھنٹے میں کوٸی دس بار اس نے ایک کوٸسچن حل کرنے کی کوشش کی تھی مگر وہ سوال تھا کہ وھی ڈھاک کے تین پات۔۔۔۔حل ھونے میں ھی نہیں آ رھا تھا ستم ظریفی یہ تھی کہ زاویار بھاٸی دو دن کے لیے آٶٹ آف سٹی تھے وگرنہ ان کے ھوتے تو کوٸی مسٸلہ مسٸلہ ھی نا رہتا تھا اس کے لیے
پتہ نہیں کس پاگل کتے نے کاٹا تھا مجھے جو میں نے بی ایس سی میں ڈبل میتھ رکھ لیا۔۔۔اب وہ ھی میتھ سر پہ چڑھ کے کتھک کر رھا ھے
اففففف۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کیا کروں اب؟؟؟
آنکھوں کو مسلتے اس نے خود کو کوستے ھوۓ بے بسی سے کہا اور دیوار پہ لگی گھڑی پہ وقت دیکھا جو رات کے پونے بارہ بجا رھی تھی
موباٸل کو کن اکھیوں سے کچھ پل دیکھا اور ”کوٸی نہیں وہ کونسا اتنی جلدی سو جاتے ھیں جاگ ھی رھےھونگے“ کہتے ھوۓ زاویار بھاٸی کو کال ملاٸی تھی
چوتھی بیل پر کال اٹینڈ کر لی گٸی تھی
مشعل۔۔۔۔۔۔ابھی تک کیوں جاگ رھی ھو؟طبیعت ٹھیک ھے ناں؟
فون اٹھاتے ھی کہا گیا تھا
بے ساختہ ایک مسکراہٹ نے اس کے لبوں کو چھوا
یعنی صرف ھنگامی صورتحال میں بات کیا کروں آپ سے میں؟؟
لاڈ سے اس کے کہنے پر وہ مسکرا دیٸے
کام بتاٶ لڑکی۔۔۔۔۔ایسے تو تمھیں یاد آنے سے رھا میں
انھوس نے شرارت سے اسے چھیڑا تھا
کب آ رھے ھیں آپ۔۔۔۔پتا ھے کل ٹیسٹ ھے میرا اور کچھ سمجھ نہیں آ رھی ایسے خوفناک سے کوٸسچنز ھیں
اسی لیے کہتا ھوں کہ ٹیوٹر رکھوا دیتا ھوں تمھیں کیونکہ میں تو اکثر ھی شہر سے باھر رھتا ھوں تو میرے نا ھونے پر کوٸی تو ھو جو تمھیں تیاری کروا سکے
”مجھے نہیں پتا بس آپ آ جاٸیں“
ان کے کہنے پر مشعل سے ضدی لہجے میں کہا تھا
ایسےکیسے آ جاٶں میں سب ادھورا چھوڑ کر بھلا؟
اور جو میں ادھوری ھوں یہاں آپ کے بغیر۔۔۔اسکا کیا؟
اسکی بات سن کر وہ جیسے تھم سے گٸے تھے
کیا ھو۔۔۔۔۔؟
ایک بار پھر یہی سننے کی خواہش میں انھوں نے کہا تھا جس پر وہ ہنس دی تھی
ہاں ناں۔۔۔۔۔۔ادھوری ھوں بلکل۔۔۔۔کوٸی ناں آٸسکریم کھلانے لے کر جاتا ھے نا ٹیسٹ کی تیاری کرواتا ھےاگر مجھےگھرکا کھانا پسند نا آۓتو ہوٹلنگ بھی آپ کے سوا کوٸی نہیں کرواتا
آپ کےجیسے لاڈ کوٸی بھی نہیں اٹھاتا میرے زاویار بھاٸی۔۔۔۔ ناٹ ایون ماۓ برادر
اسکے وجوہات بتانے اور بھاٸی کہنے پر وہ حقیقت کی دنیا میں واپس آۓ تھے اور گہری سانس بھری تھی
اچھا اب میرے لیے کیا حکم ھے ملکہ عالیہ کا
بوچھل دل سے مگر لہجے میں بشاشت لاتے انھوں نے پوچھا تھا تو وہ اتراہٹ سے مسکاٸی
”جلدی آٸیں بس“
وہ فوراًسے بولی تو وہ اسکی بے چینی پر ہنس دٸیے
اور اگر ایسا نہیں ھوتا تو۔۔۔۔۔۔؟
توآپ جانتے ھیں کہ کیا ھونا ھے پھر۔۔۔ناراضگی سے منہ پھلاتے اس نے کہا تھا
اوکے کوشش کرتا ھوں کہ جلدی آ جاٶں تم خیال رکھنا اپنا اور اب سو جاٶ
پیار سے ان کے کہنے پر وہ طمانیت سے مسکرا دی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یہ بندی بڑی ھی بے دردی بن جاتی ھے بھٸی جب جب اس کے موڈ کے خلاف کچھ ھو جاۓ تو۔۔۔۔اور میں ھی نہیں سب کو ھی اس سے کوسوں دور رہنا چاھیے اس کے موڈ سونگز میں
عروج کے کہنے پر سونیا ہنس دی جبکہ مشعل نے اسے گھوری سے نوازا
اچھا اچھا بتا بھی دو مسٸلہ کیا ھے اور خدا کے لیے اس مسٸلے میں کہیں بھی تمھارے وہ زاویار بھاٸی نہیں ھونے چاھیٸں
ایک آنکھ دبا کر سونیا کو دیکھتے عروج نے پوچھا تھا
مطلب؟؟؟؟وہ نا ھوں سے کیا مراد ھےتمھاری؟
بھویں ںسکیڑتے اس نے کہا تو وہ دونوں ھی اپنی ہنسی کو دبانے لگیں جس پر وہ مزید تپ گٸی
ارے یار تمھاری ھر بات میں وہ بندہ ھوتا ھے ناں سو وی تھاٹ کہ ان کے گرد ھی گھومتا ھوگا تمھارا خراب موڈ بھی
مگر جہاں تک مجھے یاد پڑتا ھے وہ تو آٶٹ آف سٹی ھیں ناں تو پھر۔۔۔۔۔۔؟؟
اوہ۔۔۔اچھا اچھا وہ آۓ نہیں ناں ابھی تک؟؟انکو گٸے آٸی تھنک ایک ہفتے سے زیادہ ھوگیا ھے گٸے وہ بس کچھ دن کے لیے تھے
تب ھی تم کاٹ کھانے کو دوڑ رھی ھو
ایم آٸی راٸٹ مشی؟سونیا نے جیسے اسکے آنسوٶں کو راہ دی تھی
کچھ پل اسکو روتا دیکھنے پر سونیا نے عروج کو پریشانی سے دیکھا
یہ اتنے آنسوٶں کی سپلاٸی آتی کہاں سے ھے یار؟ایک ڈیم تو یہیں بن جانا ھے
اوہ بی بی بس کردے آ جاٸیں گے وہ کیا ھوگیاھے تمھیں؟
انھوں نےمجھ سے جھوٹ بولا۔۔اب میں ان سے بات ھی نہیں کروں گی اور اگر کی ناں تو تم۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ( عروج کوانگلی سے اشارا کیا گیا)اور تم بھی۔۔۔۔میرا منہ توڑدینا اگر انکی بات بھی کی میں نے
سونیا کو انگلی سےاشارا کر کے کہتی وہ سوں سوں کرنےلگی
دونوں نےبمشکل اپنی ہنسی کو روکا
یہ سب باتیں مہینے میں دو بار تو وہ ضرور کرتی تھی اور ھر بار بندہ بھی وہ ھی ھوتا تھا
اس کے یہ عہد ھمیشہ ریت کی دیوار ثابت ھوتے تھےزاویار کو دیکھتے ھی وہ سب خفگی بھول جاتی تھی
مگر اس بار تو حد ھوگٸی۔۔۔۔ان کے نا آنے پر اس کے ٹیسٹ اچھے نہیں ھوۓ تھے اور ایک ٹیسٹ کے رزلٹ کی بدولت اسکی اچھی خاصی ستھری ھوچکی تھی سب کے سامنے
یہ گناہِ عظیم بھی زاویار کے کھاتے میں ھی گیا تھا۔۔۔۔اب بس وہ ان کے انتظارمیں تھی کہ اپنی اصل والی ناراضگی انھیں دکھا سکے اور عروج سونیا پر بھی یہ ثابت کرسکے کہ اس بات وہ واقعی اپنی بات پر عمل کرنے والی ھے
کیونکہ وہ دونوں اس کی سنجیدگی کوسنجیدہ نہیں لے رھی تھیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دکھتے سر کو ایک ھاتھ سے دباتے انھوں نے لیپ ٹاپ شٹ ڈاٶن کیا اور صوفے کے پاس رکھے ٹیبل پر رکھ دیا صوفے پر ھی ٹانگیں سیدھی کرتے نیم دراز ھوتے چھم سے اس کا سراپا انکی نگاھوں میں سمایا تھا
جانتے تھے وہ بے حد ناراض ھوگی ھر بار کی طرح اس بار بھی وہ مقررہ مدت سے لیٹ تھے بلکہ اب تو پانچ دن اوپر ھوچکےتھے
اس کی پندرہ فون کالز اور اٹھاٸیس میسیجز کا بھی انھوں نے کوٸی جواب نا دیا تھا
کیونکہ وہ جانتے تھے یہ لڑکی اپنی بات منوا لے گی اور وہ سب ادھورا چھوڑ چھاڑ کر چلے جاٸیں گے
مگر یہ ڈیل بہت امپورٹنٹ تھی بابا نے بطور خاص انھیں اس ڈیل پر محنت کرنے کو کہا تھا تو وہ اپنی ”متاع جان“ کی بات نا مان پاۓ تھے
صبح چھ بجے کی فلاٸٹ تھی انھوں نے گھڑی میں وقت دیکھا جو رات کے تین بجا رھی تھی
اپنا موباٸل اٹھا کر بے اختیار انکی انگلیاں گیلری کو اوپن کر بیٹھیں اور تیزی سے ”متاعِ جان“ نامی فولڈر پر کلک کیا
اس فولڈر میں اس کی سینکڑوں تصویریں تھیں ھر موقع پر لی جانے والی اس کے سکول کالج فرینڈ گیدرنگز فیملی فنکشنز کوٸی ایک موقع نہیں چھوڑا تھا انھوں نے
بس اسی کی کروپ کی گٸی پِکس تھیں پِک گیلری میں اس فولڈر کو خاص پاسورڈ لگایا گیا تھا تاکہ کوٸی اس تک پہنچ ناسکے
انکی اس خاموش محبت کی گواہ بس اللہ کی ذات تھی جس میں وہ کسی کو بھی شریک کرنا نہیں چاھتے تھے
تم سےملنے کی دیر ھے جاناں
زندگی مجھ میں لوٹ آۓ گی
____________
اَلسَّلامُ عَلَيْكُم ۔۔۔۔۔نگہت ممانی کے گلے میں بانہیں ڈال کر انکا گال چومتی وہ خوشدلی سے بولی تھی
وَعَلَيْكُمُ اَلسَّلامُ میری جان۔۔۔۔خوش رھو
اپنےساتھ لپٹاتے ممانی نےاسکے سر پہ ہاتھ رکھا
تھا
کھانے میں کیا ھے؟جلدی بتاٸیں بہت ھی بھوک لگی ھے قسمے
ھاں بیٹھو تم آلو کے پراٹھے ابھی بناۓ ھیں میں نےوہ زا ۔۔۔۔
ارے واہ۔۔۔۔اتنی محنت۔۔۔۔
ممانی خیر تو ھےناں۔۔۔؟
ہاٹ پاٹ کھولتے اور چیٸر گھسیٹ کر بیٹھتےاس نے درمیان میں ھی اپنی بات شروع کردی
ناشتہ کر کے جاٶ تو یہ حال نا ھو تمھارا
پانی کی بوتل فریج سےنکال کر اس کےسامنے رکھتے انھوں نے اسے گھورا تھا جو بڑا سا نوالہ توڑ کر منہ میں ڈال رھی تھی
ھاۓ سچی صبح صبح کچھ کھایا نہیں جاتا مجھ سے ۔۔۔اور پتا ھے آپ کو رات بھی کھانا نہیں کھایا تھا
ہونٹ نکالتے منہ بسورتے اس کے کہنے پر کچن میں آتے زاویار کے چہرے پر مسکراہٹ آٸی تھی
ناشتہ دے دیں ماں ۔۔۔۔۔کرسی گھسیٹ کر عین اس کے سامنے بیٹھ کر اسکا چہرہ نگاھوں کی گرفت میں لیے وہ بولے تو محویت سے ناشتہ کرتی مشعل نے سرعت سے سر اٹھایا تھا
اپنے سامنے انھیں بیٹھے دیکھ کر اس کے ھاتھ اور چلتا منہ ساکت ھوا تھا
کیسی ھو؟
زاویار کے پوچھنے پر اسے پچھلے دنوں کی اذیت یاد آٸی تھی اور یاد آتے ھی نتھنے غصے سے پھولے تھے
کرسی پیچھے دھکیلتے ناشتہ ادھورا چھوڑتے وہ کچن سے جانے کو اٹھی تو انھوں نے اسکی کلاٸی تھام لی
ناشتہ کر کے جاٶ۔۔۔۔۔
ایک لفظ منہ سے نکالے بغیر اس نے انھیں زبردست گھوری سے نوازا
اپنی مسکراہٹ کو کنٹرول کیے بس آنکھیں ایک پل کو بند کرتے انھوں نے بغیر آواز کے پلیز کہا تھا تو وہ بادل نخواستہ بیٹھی تھی
چند لقمے لینے کے بعد ان کے ہزار روکنے کے باوجود وہ اپنے روم میں چلی گٸی تو نگہت نے انھیں ایک چپت رسید کی
ناراض ھے تم سے وہ۔۔۔۔۔اس کا فون نہیں اٹھایا نا ھی میسیجز کا جواب دیا کوٸی
بیٹا یہ غلط بات ھے۔۔۔۔
اب آپ بھی یہی کہیں گی ماں۔۔۔۔۔؟؟؟
جانتی بھی ھیں مصروف تھا اور بہت ضروری تھا وہاں رکنا میرا
تواسکو سمجھاتے ناں یہ بات۔۔۔۔تم تو غاٸب ھی ھو گٸے تھے
منا لونگا اسکو میں۔۔۔۔۔نگہت کو کہتےوہ چاۓ پینے لگے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
” میں سو رھی ھوں“
ہلکی سی دستک پر اس نے بالوں میں چلتا ہیٸر برش ڈریسنگ ٹیبل پر پٹختے ھوۓ کہا
اندر آکر اس کے سامنے کھڑے ھوتےوہ ہنس دیٸے
ساٸنس نے اتنی ترقی کرلی کے سوتے میں ھی بال بن رھے ھیں اور جواب بھی دیا جارھا ھے کہ سورھی ھوتم۔۔۔۔۔افف میں تو کورے کاکورا ھی رھا
مسکراہٹ دباتے انھوں نےاسکا غصے سے گلابی ھوتا چہرہ دیکھا۔۔۔نگاھیں اس کے نقوش اور حسین زلفوں میں الجھ الجھ گٸیٸں تھیں
ڈوآٸی نو یو؟؟؟
(کیا میں آپکو جانتی ھوں)
بھویں سکیڑ کر جب اس نے کہا تو وہ بےساختہ اپنےسرپہ ہاتھ پھیر کر رہ گٸے جانتے تھے کہ وہ ناراض ھوگی مگر اس قدر ناراض ھوگی یہ اندازہ نہیں تھا
اتنی ناراضگی۔۔۔۔۔۔؟؟
اونہہ۔۔۔۔جب لوگوں کےپاس متبادل ھوں توانھیں کہاں کسی کے روٹھنے کی فکر رھتی ھے
پھنکارتے ھوۓ لہجے میں کہتی وہ صوفے پر جابیٹھی جبکہ وہ لفظ متبادل پر ھی اٹک گۓ تھے
کس قدر بیوقوف تھی وہ لڑکی۔۔۔ابھی تک اپنی اھمیت نا جان پاٸی تھی
جی چاھا اسے جھنجوڑ کر رکھ دیں اور پوچھیں کہ ابھی تک محبت سے انجان کیوں ھو۔۔۔۔کیوں اسی راہ کی مسافر نہیں بن جاتی جس کے وہ عرصہ دراز سے مسافر تھے
مضبوط قدم اٹھاتے اور اس کے سامنے پنجوں کے بل بیٹھتے انھوں نے گہری سانس بھری تھی
آٸم سوری۔۔۔۔۔بہت زیادہ مصوفیت تھی اور کالز میسیجز کو اگنور اسی لیے کیا تھا کیونکہ مجھے معلوم تھا تم واپس آنے پرانسسٹ کروگی اسی لیے۔۔۔۔۔
دیکھو مجھے بابا نے کہا تھا یہ ڈیل ھر صورت ھمیں ھی ملے توبس زیادہ وقت دیناپڑا
اپنا ایک کان پکڑ کر سوری بولتے وہ اتنے کیوٹ لگ رھے تھےکہ مشعل کے ھونٹ نا چاھتے ھوۓ بھی مسکان میں ڈھلے ھے
میں روٸی تھی۔۔
آنکھوں میں نمی لیے نچلا ھونٹ باھر نکالتے جب اس نے کہا تو زاویار کا دل انوکھی خواہش کرنے لگا اپنے دل کی اس سرکشی سے گھبرا کر وہ بے ساختہ کھڑے ھوگٸے
اسکی طرف دیکھا جو چہرہ جھکاۓ پھر سے رونے کو تیار تھی
کچھ پل بے بسی سے اسکو دیکھتے رھنے کے بعد دھیرے سے ہاتھ پکڑ کر اسکو اپنے سامنے کھڑا کیا تھا
آٸندہ ایسا نہیں ھوگا آٸی پرامس بٹ اب تم روٶگی نہیں۔۔۔
سنا؟؟؟؟
اس کی کنپٹی پر انگلی سے ضرب لگاتے انھوں نے کہا تو وہ پانی بھری آنکھوں سے انھیں دیکھنے لگی
”سزا ملے گی“
ھاں ھاں باھر کریں گے ڈنر۔۔۔۔خوش اب؟؟؟
اس کی سوچی سزا کو لفظوں کا روپ دینے پر وہ کھلکھلا کے ہنس دی
آنسو بھری آنکھوں سے ہنستی وہ دھوپ میں بارش کا منظر لگی
اس سے پہلے کے زاویار کا ضبط چھوٹتا وہ اسکا گال نرمی سے تھپکتے روم سے باھر نکل آۓ
جبکہ وہ اب خوشی خوشی بال بناتے یہ سوچ رھی تھی کہ ماموں کو ڈنر پر ساتھ جانے کے لیے کیسے منانا ھے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بس کر دو تم اب ثانیہ۔۔۔میں کب سے تمھارے اٹھنے کا ویٹ کر رھی ھوں مگر تمھاری نیند ھی پوری نہیں ھو رھی
تکیہ اسکے سر کے نیچے سے کھینچتے مشعل نے کہاتو ثانیہ نے اسے خونخوار نظروں سے گھورا تھا
کیا مسٸلہ ھے تمھارا جب خود سو رھی ھوتی ھو تب کوٸی تمھیں چھیڑے بھی ناں اور اب میرے سونے سے کیا امریکہ حملہ کر دے گا پاکستان پر؟؟
اور یہ تکیہ کیوں کھینچا ھے میرا مشی؟؟؟
چیخ کر بولتے ھوۓ وہ اس کے ہاتھ سے تکیہ لینے کو جھپٹی تو مشی کی ھنسی نکل گٸی۔۔۔
پوستی۔۔۔۔سست عورت دیکھنا ایسے ھی لیٹ لیٹ کر اور فارغ رھ کر تم نے بھینس بن جانا ھے اور پھر رشتہ بھی کسی انڈرٹیکر کا ھی آۓ کا زنانہ انڈر ٹیکر۔۔۔۔
بات کے اختتام تک وہ ھنستے بے حال ھوٸی تھی جبکہ ثانیہ اس کے دل دہلا دینے والی پیشنگوٸی پر مزید آگ بگولہ ھوتی دوسرا تکیہ بھی اس کے سر پر مارنے لگی
ارے ارے۔۔۔۔۔صبرکرو یار تم تو اپنے میاں کے ذکر پر ھی بے قابو ھونے لگی ھو۔۔۔تھم جاٶ لڑکی
مسکراہٹ دباتے وہ مزید شوخ ھوٸی تو ثانیہ نے بے چارگی سے اسے دیکھا
روم سے جانے کا کیا لوگی مشی؟؟؟
ھو ھاۓ۔۔۔۔۔۔میں بتاٶنگی زاویار بھاٸی کو دیکھنا تم
اوہ شکر اللہ تیرا۔۔۔۔آگٸے ھیں بھاٸی تو اب تم انسانوں والا رویہ رکھوگی سب سے
یس۔۔۔۔۔آگٸے وہ
اور پتا ھے آج سب باھر ڈنر کریں گے ماموں کو منانا ھے کہ وہ بھی ساتھ جاٸیں مگر تم جانتی ھو ناں یہ کتنا مشکل ھے
اچھا یار آتی ھوں۔۔۔۔تم جاٶ بس ١٠ منٹ تک آٸی
اسے تکیہ مارتے ہنستے وہ روم سے باھر آٸی تھی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سیاہ شلوار قمیض کے ساتھ سرخ دوپٹہ لاپرواھی سے ایک طرف ڈال کر ثانیہ کی کسی بات پر بے تحاشہ ہنستی وہ انکو ھر منظر سے جدا لگی
وہ دونوں گاڑی کے قریب آچکی تھیں مگر زاویار کی محویت میں کوٸی خلل نا پڑا جس کو ثانیہ نے ٹھٹھک کر دیکھا تھا
بھاٸی۔۔۔۔۔؟؟
ھوں۔۔۔۔ھاں چلو کافی دیر ھوگٸی پہلے ھی۔۔۔۔اپنے تاثرات کو چھپاتے وہ گاڑی میں بیٹھ گیۓ مگر ثانیہ نے گہری نظروں سے انھیں بغور دیکھا تھا
__________
ریسٹورنٹ پہنچ کر اپنی اپنی پسند کا آرڈر کرنے کے بعد وہ سب ہلکی پھلکی گفتگو میں مصروف تھے جب زاویار کا فون بجا تھا
موباٸل سکرین پر نگاہ کرتے زاویار بے اختیار مسکرادییۓ
یار تمھیں پتا کیسے چل جاتا ھے کہ ھم سب گھر سے باھر ھیں اکٹھے ٹاٸم سپینڈ کر رھے ھیں
عین موقع پر فون کرتے ھو
تمھیں مس کر رھے ھیں ھم سب
حسن کو پیار سے کہتے ھوۓ انھوں نے مشعل کو ایک نظر دیکھا تھا
سب اپنی باتیں چھوڑ کر فون کیطرف متوجہ ھوۓ تھے
ہاں ہاں سب ٹھیک ھیں تم بتاٶ خیریت سے ھو ناں؟
بابا آپ بات کریں گے؟؟
مجھے فون دیجیۓ گا زاویار بھاٸی
مشعل نے ان سے کہا تو وہ أیک مسکراہٹ کیساتھ اسے موباٸل پکڑا گٸےتھے
وہ چاروں اسے اپنے اکلوتے بھاٸی سے بات کرتے دیکھنے لگے۔۔۔ایک الگ ھی نرمی اور محبت تھی اس کے چہرے پر بھاٸی کے لیے
(مشعل اور حسن کے والدین یعنی زاویار اور ثانیہ کے پھوپھا اور پھوپھی روڈ ایکسیڈنٹ میں جاں کی بازی ھار گٸے تھے
اس وقت مشعل سیونتھ کلاس کی سٹوڈنٹ تھی اور حسن ناٸنتھ کلاس میں۔۔۔اس سانحے کے بعد ابراھیم ملک اپنے بھانجا اور بھانجی کو ہمیشہ کیلیے اپنے پاس لے آۓ تھے
وقت تیزی سے گزرتا چلا گیا کہ اب مشعل بی ایس سی کے فاٸنل ایٸر میں تھی حسن اپنی بقیہ تعلیم کیلیے انگلینڈ میں تھا جہاں سے زاویار بھی دو سال پہلے ھی اپنی تعلیم مکمل کر کے لوٹے تھے اور اب اپنے بابا ابرھیم ملک کا بزنس کامیابی سے چلا رھے تھے
ثانیہ نے سمپل بی اے کے بعد مختلف کورسز کیے تھے کوکنگ اور بیکنگ میں وہ اب ماھر ھو چکی تھی ایک سال مشعل سے بڑی ھونے کے باوجود دونوں کی خوب دوستی تھی
غرض یہ کہ یہ ایک بہت ھی خوشحال فیملی تھی)
ویٹر کھانا سرو کرنے لگا تو مشعل نے فون ابراھیم کو دے دیا جو اب حسن سے اسکا حال پوچھ رھے تھے
بھیا نیکسٹ منتھ آ رھے ھیں اففف میں بہت خوش ھوں
ثانیہ کا ہاتھ پکڑ کر جوش سے دباتی وہ بہت معصوم لگ رھی تھی
آ رھا ھے وہ۔۔۔۔۔۔خوراک کا دشمن
ثانیہ نے ناک چڑھا کر کہا تو ایک دھپ نگہت نے اپنی بیٹی کو رسید کی
ڈیڈھ سال بعدآ رھا ھے وہ ایسے مت بولو۔۔۔۔۔
تب تو ٹھیک سے کھانا بنانا آتا نہیں تھا مجھے تو وہ میری اورآپکی دوڑیں لگوا کے رکھتا تھا کچن کی۔۔۔اور اب جب میں ماشاءاللہ بہت اچھی کوکنگ کر لیتی ھوں۔۔۔اس نے تو میری جان عذاب میں ڈال دینی ھے
نگہت کی گھوری کی پرواہ نا کرتے ھوۓ ثانیہ مزید گویا ھوٸی
بری بات ھے بیٹا۔۔۔۔۔بھاٸی ھے تمھارا اور بڑا بھی ھے تم سے
ابراھیم کے سرزنش کرنے پر مشعل نے زبان نکال کر اسے چڑایا جسے دیکھ کر زاویار ہنس دیٸے
اچھا اچھا چلو کھانا شروع کرو ٹھنڈا ھو رھا ھے
نگہت نے کہا تو سب کھانے کی طرف متوجہ ھوگٸے بہترین وقت ایک ساتھ گزار کر سب کی واپسی ساڑھے گیارہ بجے ھوٸی تھی
اپنے روم میں جا کر اس نے اپنے پیروں کو کٌھسے سے آزاد کروایا اور آرام دہ چپل پہن کر کچن میں چلی آٸی
کیبنٹ سے کافی جار نکالا اور دو مگ کافی کے تیار کیے۔۔۔۔تیزی سے اب کچن میں موجود پانی کی بوتل کو بھر کے فریج میں رکھا اور ٹرے میں دونوں کافی سے بھرے مگ لیے وہ ان کے روم کیطرف چل دی
زاویار جو ابھی سونے کے لیے روم کی لاٸٹ آف کرنے ھی والے تھے ہلکی سی دستک پر یس کہتے ھوۓ روم ڈور کی طرف بڑھے
اسے کافی لیکر آتے دیکھا تو حیرت زدہ رہ گٸے
تمھیں کیسے پتا چلا کہ شدید طلب ھو رھی ھے مجھے کافی کی۔۔۔۔؟؟
ان کی بات پر وہ گردن اکڑا گٸی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ھاۓ
دیکھا کتنی اچھی ھوں ناں میں۔۔۔۔؟
آنکھیں میچتے اس کے کہنے پر وہ دھیرے سے ہنس دیٸے
شکریہ اچھی لڑکی۔۔۔۔۔۔مسکراتے ھوۓ انھوں نے کہا تو وہ جھینپ گٸی
اچھا اسی ویک میں میرا بہت امپورٹنٹ ٹیسٹ ھے اور آپ کو مجھے تیاری کروانی ھے چاھے کتنا بھی کام ھو مگر آپ مجھے اپنا وقت دیں گے اوکے؟
اوہ اچھا یہ ”کافی“ رشوت تھی؟؟
زاویار نے اسے چھیڑا تھا
توبہ کریں زاویار بھاٸی۔۔۔۔۔رشوت میں تب لاتی جب مجھے یہ اندیشہ ھوتا کہ آپ میری بات کو رد کرنے والے ھیں
میں جانتی ھوں آپ کبھی میری کوٸی بات ٹال نہیں سکتے میں بہت اھم ھوں آپ کے لیے۔۔۔۔ھے ناں؟؟
اسکی بات پر ان کی آنکھیں روشن ھوٸی تھیں اور لب مسکرا اٹھے تھے
بہت اھم ھو۔۔۔۔۔۔۔بےحد
یہ کہتے ان کا لہجہ گھمبیر ھوا تھا اور آواز سرگوشی میں ڈھل گٸی تھی
نگاھیں بھٹک بھٹک کر اس کے چہرے سے ھوتے اس کی گردن پر موجود تل پر جا رھیں تھیں دل گستاخی پر ماٸل ھو رھا تھا
مگ پر انکی گرفت سخت ھوٸی
کیا بول رھے ھیں۔۔۔۔؟؟
تھوڑاسا اونچا بولا کریں کبھی کبھی تو بہت ھی سلو والیوم ھو جاتا ھے آپکا
اپنے روم میں جاٶ مشعل
کافی مگ کو گھورتے انھوں نے کہا تو وہ حیران ھوٸی
کیا ھوا؟؟؟
کچھ بھی نہیں ھوا ثانیہ ویٹ کر رھی ھوگی تمھارا اب جاٶ شاباش۔۔۔ صبح پھرآنکھ نہیں کھلتی تمھاری
گہری سانس بھر کر کافی کا گھونٹ لینے کے بعد وہ بولے تھے
اوہ ھاں۔۔۔چلیں گڈ ناٸٹ
ھمم۔۔۔۔گڈ ناٸٹ
اس کے جانے کے بعد وہ گرم گرم کافی اپنے حلق میں اتارنے لگے
اب انھیں اپنے جذبات کو چھپانا مشکل لگ رھا تھا ایک گھر میں رھتے وہ ان کے لیے کسی امتحان سے کم نا تھی
مگر ان کے نزدیک محبت میں شدت سے زیادہ عزت معنی رکھتی تھی اور وہ کبھی بھی اپنی کسی بات یا عمل سے اسکی معصومیت اور بھولپن کو گنوانا نہیں چاھتے تھے
اسکی جانب سے بھی چاھا ھے برابر خود کو
میں نے یکطرفہ محبت تو کبھی کی ھی نہیں..

–**–**–
جاری ہے
——
آپکو یہ ناول کیسا لگا؟
کمنٹس میں اپنی رائے سے ضرور آگاہ کریں۔

Read More:  Chand Mera Humsafar Novel By Hina Khan – Episode 5

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

%d bloggers like this: