Mera Sham Slona Shah Piya Novel By Bella Subhan – Episode 13

0
میرا شام سلونا شاہ پیا از بیلا سبحان – قسط نمبر 13

–**–**–

نیند سےبوجھل پلکیں لیے وہ ثانیہ کو دیکھنے لگی جو جانے کیا کر رھی تھی اسکی کھٹ پٹ کی آواز پر ھی اسکی آنکھ کھلی
ناگواری سے اسکو دیکھتے وہ بیڈ کراٶن سے ٹیک لگا کر بیٹھی
تم کونسے پہاڑ کھود رھی ھو صبح ھی صبح؟؟
ارے یار سوری بس جارھی ھوں کیچر ڈھونڈ رھی تھی۔اوہ مل گیا
درازیں کھولتے بند کرتے وہ اچانک بولی تو مشعل نے شکر کا کلمہ پڑھا
اے دروازہ بند کرتے جانا۔۔۔مجھے ابھی سونا ھے کچھ دیر۔۔۔۔شکر ھے پیپر میں بھی دو دن ھیں ابھی
خود سے باتیں کرتے کرتے ھی وہ بیڈ پر کھسکتی ھوٸی دبارہ لیٹی اور کمبل کو خود پر اچھی طرح اوڑھا تھا
کچھ ھی پل گزرے جب نگہت روم میں آٸیں
کیسا ھےمیرا بچہ؟؟ٹھیک ھو ناں اب؟
جی ممانی اب ٹھیک ھوں بس نیند آٸی ھے بہت۔۔۔۔اسکا جی چاھا کہ کوٸی بھی اسکو تنگ نہ کرے اور وہ بس سوتی رھے
رات کی بے آرامی سے وہ عجیب چڑچڑی ھو رھی تھی
ھاں تم سو جاٶ مگر اس سے پہلے کچھ کھا کرمیڈیسین لے لو۔۔۔۔ ھممم۔۔۔۔
اسکے گال پر پیار سے ہاتھ رکھتے انھوں نے کہا تو وہ انکار نہ کر سکی
جب تک وہ اس کے لیے ہلکا پھلکا ناشتہ لے کر آٸیں اس نے برش کیا اور دوبارہ سے بیڈ پر بیٹھی اور وہیں ناشتہ کیا
میڈیسین کھانے کے بعد اس نے معصوم سی شکل بنا کر نگہت کو دیکھا توانھیں ہنسی آگٸی
اچھا اچھا سو جاٶ جا رھی ھوں۔۔۔۔پیارسے اسکو پچکارتے و روم سے نکلیں تو اس نے سکھ کا سانس لیتے ھوۓ دبارہ خود کو کمبل میں چھپایا
اوراس سے پہلے کہ وہ نیند میں غرق ھوتی وہ روم میں آۓ تھے
انکے آنے سے پہلے ھی ورٹِس کی مسحور کن خوشبو اسے اطلاع دے دیتی تھی کہ راحتِ جان قریب ھی ھے
کمبل میں منہ کیے ھی اس نے آنکھیں کھولیں مگر وہ محسوس کر سکتی تھی کہ زاویار اسکےقریب ھی بیٹھے ھیں وہ انکی طرف پشت کیے کروٹ کے بل لیٹی تھی
جب اس نےخود پر سے کمبل کو سرکتے محسوس کیا تو بے اختیار آنکھیں میچیں
اور زبان دانتوں تلے دبا کر خود کو کانپنے سے روکا
بالوں کا حسین آبشار اسکی کمر اور بیڈ پر بکھرے دیکھ کر دل کے ہاتھوں مجبور ھوتے وہ اسکی نرمی کو ہاتھ بڑھا کر محسوس کر گٸے
مشعل کی جان لبوں پر آٸی تھی جی چاھا اٹھ کر بیٹھ جاۓ مگر وہ سچویشن اس سے بھی زیادہ آکورڈ ھو جاتی تو چپ چاپ لیٹی رھی
انھوں نے اسکی گردن کے پچھلے حصے سے بال ہٹا کر ہاتھ کی پشت سے بخار چیک کیا
مشعل کو لگا اب وہ مر جاۓ گی۔۔کر کیا رھے ھیں زر؟؟؟؟
یہ سوال ہتھوڑے کی طرح اس کے دماغ پر برسنے لگا
تب ھی انھوں نے اسکے ہاتھ کو دیکھا جسکو زورسے بند کیا ھوا تھا
وہ جان گٸے کہ وہ جاگ رھی ھے اور وہ یہ بھی جانتے تھے کہ کیوں نہیں پلٹ رھی
بے حد شریر مسکان نے لبوں کو چھوا۔۔۔دانستہ بیڈ پر ہاتھ رکھ کر اٹھے تاکہ وہ سمجھے کہ روم سے جانے لگے ھیں
اور دروازہ کھول کر بند کیا تھا
سکون کا سانس منہ سے خارج کرتے اس نے زاویار کے جانے پر شکر ادا کیا اور جھٹکے سے اٹھی تاکہ دل کی دھڑکنیں معمول پر لاسکے
ھاۓ۔۔۔۔۔۔۔ایک ہاتھ دل پر جبکہ دوسرا منہ پر رکھےاسکےلبوں سےنکلا تھا
انکو شرارتی نگاھوں سے اپنی طرف دیکھتا پا کر وہ مرنے والی ھوگٸی
جبکہ انکا زوردار قہقہہ روم میں گونجا تھا
میرے ساتھ ڈرامے۔۔۔ہاں۔۔۔۔۔۔ایک ابرو اچکا کر اس سےپوچھتے وہ اس پر گھڑوں پانی ڈال گٸے
بالوں کو کانوں کے پیچھے اڑستے ھوۓ شرم سے گلابی پڑتی وہ نازک سی لڑکی انھیں دل کے بے حد قریب محسوس ھوٸی
اففف۔۔۔۔۔کب ختم ھونگے پیپر تمھارے؟؟؟
بے بسی سے انھوں نے پوچھا تو وہ حیران ھوٸی کہ میرے پیر ھونے سے انکا کیا تعلق؟
ابھی تو ایک ھی ھوا ھے
اچھا۔۔۔۔۔اسکا جواب سن کر وہ دوقدم بڑھاتے اس کے قریب آۓ
ٹھیک ھو جاٶجلدی اور۔۔۔۔ اچھے سے ایگزیمز دو۔۔۔۔۔
اس کی نگاھیں بیڈشیٹ کا ڈیزاٸن دیکھنے میں غرق تھیں
وہ کچھ پل اسکے جھکے سر اور جھکی آنکھوں کو دیکھتے رھے
مشعل کو بیڈ شیٹ کاڈیزاٸن حفظ ھونے لگا
خیال رکھنا۔۔۔۔اسکے سر کی پچھلی ساٸیڈ کو تھپک کر کہتے وہ روم سے فوراً نکلے تومشعل آنکھیں بند کر کے لیٹی مگر اب نیند ھی آنکھوں سے کوسوں دور جا سوٸی تھی
ھاۓ کیسے اس تعلق کو چھپاۓ رکھوں
ہاۓ اس شخص کے انداز ھیں بتانے والے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بھاٸی آج آفس نہ جاتے آپ۔۔۔۔۔لجاجت سے وہ بولی تو زاویار نے حیرت سے اسے دیکھا
کیوں بھٸی کس لیے؟
میری فرینڈ ھے ناں سندس جسکی شادی میں میں گٸی تھی۔۔۔ وہ آرھی ھے آج اپنے شوہر کیساتھ۔۔۔ بھلا ھم کیا بات کریں گے ان سے۔۔۔۔تو۔۔۔۔
حسن ھے ناں گھر پہ۔۔تو اسے اٹھاٶ
چاۓ کا سپ لیکر وہ بولے تو ثانیہ نے نگہت کو بے بسی سے دیکھا
وہ تو سوٸی قوم ھے اٹھنا ھی بارہ بجے ھے اس نے جبکہ وہ ١١ بجے تک آۓ گی کہہ ری تھی
تم آجانا ناں بیٹا
ھمممم چلو میں آ جاٶنگا تب تک۔۔نگہت کے کہنے پر وہ بولے تھے
نہیں ناں بھاٸی پلیز گھر رہیں تاکہ کچھ منگوا بھی سکوں آپ سے
تمھاری کوکنگ سکلز کس دن کام آٸیں گی۔۔۔۔۔اسے گھورتے وہ بولے توثانیہ آٸیں باٸیں شاٸیں کرنے لگی
کچھ چیزیں گھر بنا لو کچھ میں لیتا آٶنگا۔۔۔آفس جانا ضروری ھے بچے۔۔۔بابا بھی نہیں ھیں یہاں تو آفس کا چکر لگانا تو لازم ھے اور ہاں۔۔۔۔۔۔۔حسن کو اٹھا دینا۔۔۔ایک دن ذرا جلدی اٹھ جاۓ تو کوٸی قباحت نہیں ھے
جی بھاٸی۔۔۔۔۔۔گہری سانس بھرتے اس نے کہا تھا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کیا مطلب ھے آج ھی یعنی کچھ دیر تک آ رھی تمھاری دوست۔۔۔۔اتنی کیا آخر آٸی ھے اسکو بھلا؟؟؟
بالوں کو سمیٹ کر جوڑا بناتے ھوۓ اس نے بیزارٕ اور کچھ حیرت سے پوچھا تو ثانیہ آنکھیں گھما کر رہ گٸی
اللہ کی بندی مجھے نہیں پتا کہ کیوں اور کس لیے۔۔۔۔بس کل اسکے میسیجیز آۓ کہ ھم آٸیں گے تمھاری طرف کل گیارہ بجے تک۔۔۔۔میں نے پوچھا بھی کہ اتنی ایمرجینسی میں کیوں۔۔۔۔ تو اس نے بتایا نہیں کچھ۔۔۔ بس یہی کہا کہ ضروری ھے
تفصیل سے جواب دیتے ھوۓ اینڈ پر اس نے کندھے اچکاتے ھوۓ خود بھی لاعلمی کا اظہار کیا
رشتہ لیکر تو نہیں آ رھے وہ تمھارا۔۔۔۔۔۔۔۔؟؟؟
اوہ نہیں بی بی۔۔۔ایڈی میں حور پری نٸیں۔۔۔ اس نے جیسے خود کا ھی مذاق اڑایا تھا
حور پری ھی ھو تم۔۔۔۔۔پتا ھے کتنی کشش ھے تم میں۔۔۔اس کے گلے میں بانہیں ڈالتی وہ لاڈ کرتے بولی تو ثانیہ جھینپتے ھوۓ مسکراٸی
اچھا چلو ذرا حلیہ تو سیٹ کر لو ملنے کے لیے تو آٶگی ناں یا روم میں ھی رہنا ھے تم نے؟؟
نہیں نہیں ملوں گی بھٸی۔۔۔۔۔تیزی سے کبرڈ کی طرف جا کر وہ کوٸی سوٹ دیکھنے لگی
ارے ھاں یار۔۔۔۔۔ھو سکتا ھے میرے ویرے کے لیے آ رھا ھو کوٸی رشتہ؟؟؟
وہ جو بال بنا کر ڈھیلی سی چٹیا کر رھی تھی مشعل کی پر اشتیاق لہجے میں کی گٸی بات سن کر اس کے ہاتھ لرزے تھے
ساتھ ھی ساتھ مونا کی لگاوٹ پسندیدگی کے مظاہرے یکے بعد دیگرے ذہن کے پردے پر لہراۓ تو بالوں کو ادھورا چھوڑ کر وہ اسکی طرف پلٹی
تیار ھو جاٶ۔۔۔۔۔میں بھی جاتی ھوں اب کچن میں۔۔۔۔سب سیٹ ھے ایک بار دیکھ لوں۔۔۔۔اسکو کہتےھی وہ تیزی سے روم سے نکلی جبکہ مشعل سر جھٹکتے سوٹ سلیکٹ کرنے میں مصروف تھی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تیز قدموں سے چلتے ھوۓ اسکا رخ حسن کے کمرے کی طرف تھا تاکہ اسکو اٹھا سکے اور اگر مشعل کے مطابق ایسی کوٸی بات ھوٸی بھی تو موقع پر ھی منع بھی کر سکے
روم کے دروازے کے باھر اپنی ہمت مجتمع کرتے ھوۓ اس نے ہلکی سی دستک دی۔۔۔۔جواب تو کیا آنا تھا وہ جانتی تھی اس کے آگےکھڑے ھو کر چلانے سے ھی آنکھ کھلے گی محترم کی
عین اس کے بیڈ کی پاس جا کر وہ کھڑی اسکا چہرہ دیکھنے لگی۔۔۔۔دھیرے دھیرے ذہن پرسکون ھوا اور چہرے پر مسکراہٹ آٸی
سوچا ھی نہیں تھا کبھی کہ وہ اتنا عزیز ھو جاۓ گا کہ اگر وہ زندگی میں نہ ھوا تو اس کے بغیر وہ زندگی نہیں۔۔۔ بلکہ زندگی اسے گزارتی
اس کے قریب جا کر ہاتھ بڑھاتے ھوۓ ثانیہ نے اسکے ماتھے پر بکھرے بال پیچھے کرنا چاھے تو اگلے ھی پل اسکی ایک انگلی تھام کر وہ اسے دیکھتے ھوۓ بولا
تیرے آنے سے کچھ دیر پہلے
بات تجھی سے کر رھا تھا میں
اسکا دل اچھل کر حلق میں آیا تھا
محترمہ۔۔۔۔روز روز ولادت نہیں ھوتی میری کیا آج بھی وش کرنے آٸی ھو؟اسکی انگلی کو جھٹکا دیتے ھوۓ اس نے کہا
ثانیہ کے تو مانو بدن کاٹو لہو نہیں۔۔۔۔۔شرمندگی سی شرمندگی تھی کہ جانے وہ کیا سوچ رھا ھوگا اور اسی سبکی کے زیرِاثر اسکے ہاتھ سے اپنی انگلی چھڑواتی وہ جانے کو مڑی۔۔۔دوقدم ھی اٹھاۓ تھے جب وہ مزید گویا ھوتا اس کے دل کے تار چھیڑ گیا
وہ تیرے پاس سے چپ چاپ گزر کیسے گیا
دلِ بے تاب۔۔۔۔قیامت نہ اٹھا دی تونے؟
بین کر رھی ھوگی غالب کی روح۔۔۔جو اشعار کی ٹانگیں توڑ رھے ھو
کانپتی آواز پر قابو پاتے ھوۓ وہ بولی تو حسن کی زیرک نگاھوں اور چوکنے حواس سے اس کی حیا سے کانپتی آواز مخفی نہ رہ پاٸی تھی
جھٹکے سے کمبل پرے کرتے وہ دو قدموں میں اس تک آیا تھا
سمجھتی نہیں ھو تم۔۔۔۔ورنہ یہ اشعار نہیں۔۔۔۔اشارے ھیں
گہری نگاھوں سے وہ اسکے چہرے کے اتار چڑھاٶ دیکھنے لگا دو پل گزرتےھی سانولی رنگت میں گلابی پن چھلکا
وہ۔۔۔۔۔وہ سندس اور۔۔۔۔اس کے ہزبینڈ پہنچنے والے ھیں تو تم بھی آ جاٶ
نہ بھٸی۔۔۔۔۔۔مجھےتو ابھی سونا ھے رات بھی لیٹ سویا تھا یہ تو تمھاری نگاھوں کی تپش ھی ایسی تھی کہ نیند سر پہ پاٶں رکھ کر بھاگی
اور میں جانتا ھوں زاویار بھاٸی یقیناً موجود ھونگے گھر۔۔۔ تو وہ ھی دیکھ لیں گے
بات کرتے کرتے وہ بیڈ پر جا کر بیٹھا اور ٹانگوں پر کمبل ڈالنے لگا تو ثانیہ نے اسکو اپنے بالوں کی چٹیا کو بل دیتے ھوۓ گھوری سے نوازا
ادھر دیکھو۔۔۔؟؟
دکھاٶ
شرارت سے اس نے ثانیہ کے چہرے اور بالوں کو سنوارتے ہاتھوں کو نظروں کے حصار میں لیا
افففف سنو۔۔۔۔۔
سناٶ۔۔۔۔۔دل پر ہاتھ رکھ کرسر کو جھکاتے وہ بولا تو وہ انگاروں پر لوٹ گٸی
مطلب کہ صبح ھی صبح ایسے ٹھرک پن کے مظاہرے
تمھارا اس۔۔۔۔مونا کےساتھ کانٹیکٹ تو نہیں؟؟؟سچ بتانا اوکے؟؟
اسکی طرف انگلی کیے آنکھوں کو سکوڑے شکی بیوی کی طرح اس سے جرح کرتی وہ حسن کا دل گدگدا گٸی
جیلیس؟؟؟؟؟ابرو اچکاتے اور مسکراہت ضبط کرتے اس نے پوچھا تو وہ گڑبڑا گٸی
واۓ وڈ آٸی گیٹ جیلیس؟؟
اپنی بات پر زور دے کر اس سے پوچھتی وہ اسےکاٸنات سے بھی پیاری لگی
نہیں۔۔۔۔میرا کوٸی کانٹیکٹ نہیں ھے۔۔۔۔۔گھمبیر لیجے میں جذبے لٹاتی نگاھوں سے اسکو دیکھتے ھوۓ جواب دیا گیا تو ثانیہ فوراً سے پیشتر روم سے نکلی کہ اسکے ٹھرک پن کی چارجنگ ٠٠ا فیصد ھو چکی تھی
حسن کو روم سے نکالنے میں ناکام ھوتی وہ دل مسوس کر رھ گٸی
جبکہ وہ کمبل میں خود کو لپٹاۓ اسکا انگارہ روپ ابھی تک نگاھوں میں لیے اسی سے مخاطب تھا
کیسے بتاٶں کہ میسیج پہ میسیج کر رھی ھے وہ مونا۔۔۔۔مگر تمھیں بتا کر نہ مجھے خود مرنا ھے نہ ھی اس بیچاری کو دنیا سے کوچ کروانا ھے
مسکراتے ھوۓ وہ پلکیں موند گیا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بالوں کو ٹیل پونی میں جکڑتےھوۓ وہ ڈراٸینگ روم میں آٸی تو اندر سے آتی آوازوں پر ذرا سی گردن اندر کر کے دیکھنا چاھا کہ کون کون ھے مگر قسمت خراب۔۔۔۔۔”اسی وقت وہاں موجود شخص جو یقیناً سندس کا شوہر تھا“نے اسے دیکھا تھا تو مجبوراً وہ اندر چلی آٸی
سندس اپنے شوہر عادل کے ہمراہ آٸی تھی جبکہ ساتھ ایک بڑی سٹاٸلش سی آنٹی تھیں جو نگہت سے گفتگو میں مشغول تھیں زاویار عادل کے ساتھ اور سندس ثانیہ کے ساتھ بیٹھی تھی تو وہ سب کو سلام کرتی ان دونوں کے برابر بیٹھ کر سندس کو شادی کی مبارکباد دینے لگی
بیٹا یہاں میرے پاس بیٹھو آکر۔۔۔۔آنٹی نے ثانیہ کو اپنے پاس بیٹھنے کو بلایا تو وہ کچھ حیران ھوتی ان کے ساتھ بیٹھی۔۔۔ابھی تک حیران تھی کہ سندس اپنی ساس کے بجاۓ اپنی آنٹی کیساتھ کیوں آٸی ھے جسے اس نے شادی ہر بھی دیکھا تھا مگر ان سے تب تعارف نہیں ھوا تھا
اصل میں آپکی بیٹی ھمیں بہت پسند آٸی ھے۔۔۔اسے شادی پر دیکھا تھا سلجھی ھوٸی سادہ سی لڑکی بہت عرصے سے ڈھونڈ رھی تھی میں کیونکہ
میرے بیٹے کو ایسی لڑکی کی ھی تلاش تھی
اسکی ڈیمانڈز پر پورا اترتی ھے یہ بچی۔۔۔۔اور پھر ماشاءاللہ آپ لوگ بذاتِ خود ھمیں اچھے لگےھیں
میرے بیٹے کو تو دیکھا ھوگا آپ نے؟ولید نام ھے اسکا۔۔۔ولید لغاری
بات کرتے ھوۓ وہ ثانیہ سے پوچھنے لگیں جو سکتے کے عالم میں انھیں دیکھ رھی تھی تیزی سے اٹھ کر وہ روم سے باھر گٸی تو وہ ہلکا سا مسکراتےھوۓ اسکی شرم کو سمجھتے مزید گویا ھوٸیں
اچھا بزنس ھے ھمارا دبٸی میں۔۔باقی آپ جسطرح کی چاھیں اپنی تسلی کرواسکتے ھیں
تفصیل سے بتانے کے بعد وہ سب کو سوالیہ نگاھوں سے دیکھنے لگیں
زاویار نے نگہت کی طرف دیکھا اور پھر انکی نظروں کو سمجھتےھوۓ گلا کھنکار کر کہنے لگے
بہت شکریہ۔۔۔۔آپ نے اتنی عزت دی آنٹی مگر ایز آٸی ٹولڈ یو کہ بابا آٶٹ آف کنٹری ھیں تو ان سے مشورہ کرنے کے بعد ھی کوٸی جواب دیا جا سکتا ھے ویسے بھی یہ معاملے یکمشت طے ھونے والے نہیں ھیں تو کچھ وقت دیجیۓ
بلکل بیٹا آٸی انڈرسٹینڈ۔۔۔۔مختلف لوازمات کو سرو کرتے مشعل سندس کے سوالوں کے جواب بھی دے رھی تھی ساتھ ساتھ اسے یہ جلدی تھی کہ جا کر ثانیہ کے تاثرات جانے۔۔۔
جبکہ وہ اپنے روم میں حیرت اور شدید پریشانی کے جذبات لیے سن بیٹھی تھی انھی جذبات سے مغلوب ھو کر اس نے آندھی طوفان کی طرح حسن کے روم میں جاتے ھی اس پر سے کمبل کھینچ کر دور اچھالا تھا
وہ جو سکون سے میٹھی نیند کے مزے لے رھا تھا ہڑبڑا کر اٹھ بیٹھا اور سامنے نظر پڑی جو خونخوار نظروں سے اسے دیکھ رھی تھی
__________
اب کونسا گناہِ عظیم کر دیا ھے میں نے؟غصے سے وہ دبی دبی آوازمیں چیخا
تمھاری زندگی کا کیا مقصد ھے؟کھانا پینا اور سونا۔۔ کچھ پتا بھی ھوتا ھے کہ ھو کیا رھا ھے دنیا میں؟؟
جواباً وہ اپنے بالوں میں ہاتھ پھیرتے ھوۓ ناسمجھی سے اسے دیکھے گیا
اب بکو بھی کہ کیا آفت آ گٸی دنیا میں؟کس نے دم پر پیر رکھا ھے تمھاری جو یوں بلبلاتے ھوۓ مجھ پر حملہ
آور ھوگٸی ھو
اسے ہنوز خاموش دیکھ کر وہ چڑتے ھوۓ بولا تو تیزی سے اسکی آنکھوں میں نمی آٸی
ساری تنک مزاجی کو آگ لگاتے ھوۓ وہ اسکی کلاٸی پکڑ کر اپنے پاس بٹھا گیا
اے۔۔۔۔۔کیا ھوا؟؟اتنی کیوں دلبرداشتہ لگ رھی ھو؟
اس کی ذرا سی فکر و توجہ ملنے کی دیر تھی وہ ہاتھوں میں چہرہ چھپاۓ پھوٹ پھوٹ کر رونے لگی
زبردستی اس کے ہاتھ چہرےسے ہٹا کر اس نے اپنی ہتھیلیوں سے اس کے آنسو پونچھتے اسکا چہرہ ہاتھوں کے پیالے میں بھرا تھا
شششش۔۔۔۔۔۔بس چپ۔۔۔بند کرو یہ رونا اور بتاٶ مجھے۔۔۔۔ ھوا کیا ھے؟
وہ جیسے ھوش میں آٸی تھی۔۔۔۔کیا بتاۓ؟؟کہ ولید کے رشتہ آنے ہر اس کے پاس آ کر یوں کیوں رو رھی ھے۔۔۔۔یہ نان سیریس شخص تو میری کِٹ لگا دے گا
اس کے ہاتھ اپنے چہرے سے ہٹا کر وہ جانے لگی تواس نے جھٹکے سے دوبارہ بٹھایا
کیا مسٸلہ ھے تمھارے ساتھ چھوڑو میری کلاٸی؟
میرے ساتھ نہیں تمھارے ساتھ ھے مسٸلہ کوٸی۔۔وہ بھی بہت سنگین قسم کا جو روۓ جا رھی ھو
زہر خند لہجے میں وہ بولی تو حسن بھی طیش میں آ کر چلایا
اسکی اپنے لیے فکر اور پریشانی پر چہرہ جھکاۓ وہ پھر رونے لگی
اسے لگتا تھا کہ حسن کی فیلنگز بھی اس سے مختلف نہیں ھیں اس کےانداز بتاتے تھے کہ وہ اھم ھے مگر دل میں یہ دھڑکا بھی تھا کہ جانے اسے فرق بھی پڑے گا یا نہیں۔۔۔ کیونکہ حسن نے باضابطہ تو کبھی بھی اپنی فیلینگز کا اظہار نہیں کیا تھا اور جانے وہ اس کے لیے سٹینڈ بھی لے پاۓ گا ۔۔ یا نہیں ۔۔۔کیونکہ ولید ہر لحاظ سے اس پر سبقت رکھتا تھا
سو جاٶ تم۔۔۔۔چل جاۓ کا پتا جو بھی مسٸلہ ھے میرے ساتھ
تیزی سے اسکے پاس سے اٹھ کر وہ دروازے کو زور دار آواز سے بند کرتے روم سے نکلی تو وہ الجھن بھری نگاھوں سے سے اسکا جانا دیکھے گیا
باھر نکل کر وہ کچن کی طرف گٸی تو اس نے مشعل کیساتھ سندس کو آتے دیکھا
تیر کی سی تیزی سے وہ ان تک گٸی۔۔۔۔۔یہ کیا ھے سندس؟؟؟مجھے وہ شخص بلکل نہیں پسند اور تم رشتہ لے آٸی ھو اسکا۔۔کم از کم مجھ سے پوچھ تو لیتی
شکوہ کناں نظروں سے وہ اسکو دیکھتی ھوٸی بولی تو ان دونوں نے اسکی روٸی روٸی آنکھیں اور سرخ ناک دیکھی
تم روٸی ھو ثانیہ؟مشعل کے حیرت سے پوچھنے پر سندس نے اسکا رخ اپنی طرف کیا
مگر وہ آنکھوں میں آٸی نمی کو پیچھے دھکیلتے ھوٸے مسکراٸی
روٸیں میرے دشمن۔۔۔۔اور تم سندس۔۔۔۔۔صاف انکار ھے میری طرف سے۔۔۔ وہ نہیں پسند مجھے بس بات ختم۔۔۔
اچھا اچھا سہولت سے انکار کر دینا میری بہن۔۔۔۔وہ بھی آنٹی یا زاویار بھاٸی کے تھرو۔۔۔۔ کام ڈاٶن
چلو وہیں بیٹھتے ھیں جا کر۔۔۔یوں اچھا نہیں لگتا عادل بھاٸی کیا سوچ رھے ھونگے
ان دونوں سے کہتی وہ ڈراٸینگ روم کی طرف بڑھی جہاں رخصت لی جا رھی تھی
جاتے ھوۓ ولید کی ماما نے اس کو پیسے دینے چاھے جسکو نگہت نے مناسب الفاظ سے منع کیا تو اس نے بھی دل میں شکر ادا کیا ۔۔۔۔خوامخواہ وہ کوٸی خوش فہمی پالتیں
کچن میں آ کر برتن دھوتے ھوۓ وہ اپنی آنے والی زندگی کی بابت سوچنے لگی کہ جانے آگے کیا ھونے والا تھا مگر یہ طے تھا کہ ولید۔۔۔۔۔۔۔۔ہرگز نہیں
ڈراٸینگ روم سے کچھ برتن اٹھاۓ مشعل کچن میں آٸی تو ثانیہ کی پشت کو دیکھتے اس کے ذہن میں جھماکہ سا ھوا
سنو۔۔۔۔۔؟؟
ھممممم۔۔۔۔۔پلٹ کر اسے دیکھتے ثانیہ نے کہا تو وہ بغور اسے دیکھتے قریب چلی آٸی
کسی کو پسند تو نہیں کرتی تم؟ورنہ سندس کافی تعریف کر رھی تھی ولید کی۔۔۔۔اس نے اپنے موباٸل میں مجھے تصویر بھی دکھاٸی
اچھا خاصا ہینڈسم ھے یار وہ۔۔تو تمھیں اعتراض کس بات پر ھے؟کیا کوٸی اور ھے؟پلیز مجھے بتاٶ
وہ ایڈیٹ۔۔۔ تمھارا ھی بھاٸی ھےمیری بہن۔۔۔۔۔وہ دل ھی دل میں اسے جواب دینے لگی
اسے مستقل چپ دیکھ کر مشعل نے کوٸی اور ھی نتیجہ اخذ کیا
کتنی غلط بات ھے ثانیہ تم نے مجھے نہیں بتایا ناں۔۔۔بتاٶ کون ھے؟میری تو شکل سے ھی پکڑ لیا تھا تم نے اور خود کتنی گٌھنی ھو پتا ھی نہیں چلنے دیا
اوہ ہینگ آن۔۔۔۔۔ایسا کچھ نہیں ھے تیزگام۔۔۔بس مجھے ابھی نہیں پڑنا اس جھنجھٹ میں۔۔۔اور تمھاری شکل سے نہیں اپنے بھاٸی کے جذبات سے میں بہت پہلے سے ھی مشکوک تھی جب تمھیں بھی نہیں پتا ھوگا آٸی تھنک۔۔۔۔ اب دماغ کے گھوڑے دوڑانا بند کرو اور یہ برتن دو مجھے۔۔۔ دھو کے رکھوں۔چاۓ پیوگی تم؟
تیزی سے اسکے دماغ سے غلط فہمی کا کیڑا نکالتے ھوۓ وہ اس سے سوال کر گٸی تا کہ وہ مزید کچھ نہ سوچے اور وہی ھوا۔۔۔
نہیں یار کافی پیوں گی میں
چلو ٹھیک ھے۔۔۔میں حسن کے لیے ناشتہ بنانے لگی ھوں تو اس کے بعد بنا دیتی ھوں کافی۔۔۔پڑھ لو جا کر۔۔۔پھر روتی ھو اگر پیپر اچھا نہ ھو تو۔۔۔
ہاں ہاں جا رھی ھوں۔۔۔۔ثانیہ نے اسے لتاڑتے وہاں سے بھگانا چاھا تو مشعل نے اسےگھورا
وہ جیسے ھی کچن سے نکلی تو اس نے سنک پر ھی ہاتھ جما کر خود کو رونے سے باز رکھا۔۔۔۔ یا اللہ کس لاپرواہ کی محبت ڈال دی ھے دل میں۔۔۔۔مدد کریں پلیز
گہرا سانس بھر کر وہ باقی کے کام نمٹانے لگی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پتا کروا لینا تم ان کے بارے میں تاکہ پھر کچھ سوچا جا سکے
نگہت زاویار سے بولیں تو وہ پرسوچ نگاھوں سے انھیں دیکھنے لگے
مجھے تو لگا تھا کہ ثانیہ اور حسن۔۔۔۔۔۔میرا مطلب ھے کہ۔۔۔۔
کیسی باتیں کرتے ھو بیٹا۔۔۔ابراھیم نے بھی یہی کہا تھا مجھے مگر میرا نہیں خیال کہ ایسا وہ دونوں چاھیں گے۔۔۔چونچیں لڑاتے رھتے ھیں ھر وقت زندگی گزارنے پر کہاں تیار ھونگے
انھوں نے درمیان میں ھی اسے ٹوکا تھا
اچھا۔۔۔چلیں کرتے ھیں کچھ ابھی توجا رھا ھوں واپس آ کر تفصیل سے بات کرونگا
ان کے آگے جھک کر سر پہ پیار لیتے ھوۓ وہ وہاں سے نکلے تو نگہت بھی اٹھی تھیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کچھ دیر وہ دروازے کو دیکھتا رہا جس پر وہ اپنی فرسٹریشن نکال کر گٸی تھی اپنی پیشانی کو مسلتے وہ اٹھا اور فریش ھونے کے بعد سیدھا کچن میں آیا جہاں وہ زبیدہ آپا بنی ھوٸی کچن میں مصروف نظر آٸی
بن گیا ناشتہ میرے لیے؟
اس نے بات کا آغاز کیا تو وہ چونکی۔۔۔۔محض ایک نظر اسے دیکھنے کے بعد” ھوں“کہا تو حسن کو لگا کوٸی سنگین معاملہ ھے ورنہ وہ کبھی بھی ایسے سیریس نہیں ھوتی تھی
اب یوں میرے سر پہ ھی کھڑے رھو گے یا کہیں اور بیٹھنا پسند کریں گے موصوف؟
اسکی طنزیہ آواز پر وہ اپنی سوچ میں گم سر جھٹکتے وہیں رکھی چٸیر پر بیٹھا اور ٹیبل پر رکھے جگ سے پانی گلاس میں ڈال کر پینے لگا
اس دوران مسلسل اسے دیکھتے رھنے کی وجہ سے ثانیہ پر گھبراہٹ طاری ھونے لگی
مجھے کھانا ھے تم نے؟؟
ایکدم پلٹ کر جب وہ بولی تو بے ساختہ اس نے قہقہہ لگایا تھا
کمال ھے۔۔۔۔تمھیں کیسے پتا چلا کہ میری نظریں تم پر ھیں؟؟شرارتی مسکان کیساتھ اس نے پوچھا تو اسکی نگاھیں حسن کے ڈمپل میں الجھیں
اچھا لگتا ھے ناں تمھیں یہ؟؟اپنے ڈمپل پر انگلی رکھ کر اس نے پوچھا تو ثانیہ کا جی چاھا چٌلو بھر پانی میں ڈوب مرے
مطلب نظر کی حرکت پر بھی کمینے کی نگاہ تھی
خوش فہمی کے سمندر میں غوطہ زن شخص ہونہہ
اسے کٹیلی نگاہ سے دیکھتے ھوۓ وہ بولی اور ناشتہ ٹیبل پر لگانے لگی
دوست چلی گٸی تمھاری؟؟
پراٹھے کا نوالہ توڑتے اس نے لاعلمی میں اس کے زخموں پر نمک چھڑکا
ھاں چلی گٸی
ثانیہ۔۔۔۔۔۔۔!!!
وہ کچن سے جانے لگی جب اس نے محبت سے اسے پکارا تو اس کا رواں رواں قوتِ سماعت بنا تھا دل محبت سے گداز ھوا اور لبوں کو بھینچتے وہ پلٹی
کیوں روٸی تھی؟؟
وہ کچھ دیر ایک دوسرے کی نگاھوں میں دیکھتے رھے۔۔۔خاموشی طویل ھونے لگی
آنکھوں نے آنکھوں پر گویا ایک طلسم باندھا تھا جس کے شدت اختیار کرنے پر وہ چٸیر جھٹکے سے پیچھے دھکیلتا اس تک آیا تو وہ وہاں سے جانے کو بھاگی مگر اس کی کوشش کو ناکام بناتے ھوۓ حسن نے اسکی کلاٸی کو تھاما
جواب دے کر جاٶ۔۔۔۔
بےحد سنجیدگی سے اسکا چہرہ پڑھنے کی کوشش کرتے وہ بولا تھا
فرق پڑتا ھے؟؟
اس کے جواب پر حسن نے اپنی آنکھیں سکیڑیں
تمھیں کیا لگتا ھے؟؟
اس کے سوال پر سوال کرنے سے ثانیہ تمسخرانہ ہنسی
مجھے کچھ بھی نہیں لگتا اور یہی مسٸلہ بھی ھے میرا۔۔۔جھٹکے سے اپنی کلاٸی چھڑواتے وہ وہاں سے نکلتی چلی گٸی
ناشتہ جوں کا توں پڑا ٹھنڈا ھونے لگا تو اس نے مشعل کے پاس جانے کا ارادہ کیا۔۔۔یقیناً وہ جانتی ھوگی۔۔۔خود سے کہتے وہ جب ان کے روم میں پہنچا تو ثانیہ موباٸل یوز کرتی وہیں براجمان تھی
اسکو دیکھ کر دوبارہ موباٸل پر خود کو مصروف ظاہر کرنے لگی
ارے بھاٸی آپ۔۔۔ آجاٸیں بیٹھیں پلیز
اس کے لیے بیٹھنے کی جگہ بناتی مشعل بولی تو ثانیہ نے ناگواری سے اسے وہاں جڑیں لگاتے دیکھا
میں ٹی وی لاٶنج میں جارھی ھوں۔۔۔یہ کہتے وہ وہاں سے نکلی۔۔۔ مشعل نے اچھنبے سے اسےجاتے دیکھا
اسے کیا ھوا؟؟
یہی میں پوچھنے آیا ھوں کہ اسے کیا ھوا ھے۔۔عجیب سا بی ہیو کر رھی ھے
حسن نے مشعل سے پوچھا تو وہ ہنس دی
اچھا بھاٸی وہاں شادی میں کوٸی ولید بھی تھا۔۔۔ولید لغاری؟
اس کے سوال پر حسن کرنٹ کھا کر سیدھا ھوا؟
کیوں کیا ھوا؟ثانیہ نے کوٸی بات کی اس کے بارے میں۔۔۔ بتاٶ مجھے؟
بےچینی سے اس کے پوچھنے پر مشعل حیران ھوٸی
سندس آٸی تھی ناں آج اپنے ہزبینڈ کےساتھ تو ان کے ہمراہ ولید صاحب کی ماما بھی تھیں۔۔۔۔اصل میں وہ ثانیہ کا رشتہ لیکر آۓ تھے
واٹ۔۔۔۔؟؟؟؟؟
مشعل کا جواب اسکے چودہ طبق روشن کر گیا۔۔۔وہ اسے تفصیل بتانے لگی مگر اسکا ذہن وہاں ھوتا تو کچھ اورسنتا۔۔۔۔یکے بعد دیگرے ثانیہ کے انداز اسکا رونا سب کچھ اس کی نگاھوں کے سامنے لہرایا
ولید کا خیال آتے ھی اسکا جی چاھا کہ سامنے ھوتا تو گردن تڑوا لیتا ولید اپنی
ممانی نے کیا کہا پھر؟
وقت مانگا ھے سوچنے کا اور یہ بھی کہا کہ ماموں آٸیں گے واپس تو ھی کوٸی جواب دیں گے
ھممم۔۔۔چلو تم پڑھو۔۔۔جبراً مسکراتے اسکو کہنے کے بعد وہ روم سے نکلا
وہ جو بے مقصد ٹی وی پر نظریں جماۓ چینل سرچنگ کر رھی تھی حسن کو تیزی سے نگہت کے روم میں جاتے دیکھ کر حیران ھوٸی
کیا اسے پتا چل گیا؟؟؟؟یہ سوال اسکے دماغ میں آیا تو فوراً مشعل کے پاس بھاگی تاکہ اسکی تیزیوں کی وجہ جان سکے…

–**–**–
جاری ہے
——
آپکو یہ ناول کیسا لگا؟
کمنٹس میں اپنی رائے سے ضرور آگاہ کریں۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Subscribe For Latest Novels

Signup for Novels and get notified when we publish new Novel for free!




%d bloggers like this: