Mera Sham Slona Shah Piya Novel By Bella Subhan – Episode 15

0
میرا شام سلونا شاہ پیا از بیلا سبحان – قسط نمبر 15

–**–**–

ھونٹ بھینچے وہ انجانے نمبر سے آنے والی کال پر موباٸل سکرین کو گھورے جا رھی تھی اور مقابل بھی کوٸی اعلی پاۓ کا ڈھیٹ تھا جو مسلسل فون کرنے سے باز نہ آیا
آخر تنگ آ کر اس نے کال پک کی
کیا تکلیف ھے؟جب ایک بار پتا چل گیا کہ فون نہیں اٹھایا جا رھا تو ضرور بار بار کال کر کے اپنی خصلت سے آگاہ کرنا ھے؟اب بکو کہ کون ھو اور کونسی کسر ھے جو اس وقت فون کر کے اپنی شامت بلواٸی ھے؟
وہ جو پہلے ھی اپنی زندگی میں آنے والے مسٸلے پر تپی بیٹھی تھی کال اٹھاتے ھی برس پڑی جبکہ جواباً قہقہہ سن کر اس نے موباٸل کو کان سے ہٹا کر ایک تیز گھوری سے نوازا
کیسی ھیں؟
متبسم سے لہجے میں پوچھے گٸے سوال پر وہ حیرت کی زیادتی سے کچھ پل بول ھی نہ پاٸی
آپ کے کزن نے مجھ سے جھوٹ کیوں کہا کہ وہ آپ کا منگیتر ھے۔۔میں جاننے سے قاصر ھوں۔۔۔۔اور اگر آپ نے یہ سوچا تھا کہ محض اس کے کہہ دینے سے میں پیچھےہٹ جاٶنگا تو بہت ھی معصوم سوچ تھی آپ کی
ساری انفارمیشن لینے کے بعد ھی ماما کو آپ ک طرف بھیجا تھا
نمبر کہاں سے لیا آپ نے میرا؟غصے سے اس نے اپنے جبڑے بھینچے
یہ سارا کھڑاگ ھی اسکی وجہ سے پڑا تھا جو اب اسکے تٸیں میسنا بنا مہذب ھونے کی ناکام کوشش کر رھا تھا
کوٸی مشکل نہیں تھا۔۔۔۔۔دھیما سا ہنستے ھوۓ ولید نے کہا تو وہ نٸے سرے سے سلگی اور ایک فیصلہ کرتی ھوٸی اس سے مخاطب ھوٸی
لسن ٹو می ویری کٸیرفلی۔۔۔۔۔۔بینگ آ مین آپ یہ چاھیں گے کہ آپ کی ھونے والی بیوی کے دل و دماغ پر کسی اور کا نقش نہ ھو۔۔۔اسکی محبت کے حقدار صرف آپ ھوں۔۔۔راٸٹ؟؟
ایبسلیوٹلی۔۔۔۔۔۔ولید نے ایک سیکینڈ کے وقفے سے جواب دیا
میں حسن سے محبت کرتی ھوں۔۔۔ہمیشہ سے ھی کرتی تھی اگر آپ سے شادی کر بھی لوں تو اسکو محبت کرنا چھوڑ نہیں سکتی۔۔۔۔ادھوری زندگی ادھوری شریکِ حیات قبول ھوگی آپ کو۔۔۔؟؟دیکھیں یہ زندگی ھے کوٸی ناول یا فلم تو ھے نہیں کہ میں انکار کروں اور آپ پھر بھی زبردستی شادی کرلیں پھر مجھے آپ کے ساتھ ھی طوفانی محبت بھی ھو جاۓ
جن کا نام دل پر ایک بار نقش ھو جاۓ ناں ولید۔۔۔جنہیں دل اپنا محرم مان لے تو چاھے دنیا کے کسی بھی کونے سے کوٸی بہترین آپشن میسر ھو۔۔۔۔اس کی محبت کو ھم دل سے اکھاڑ کر پھینک نہیں سکتے۔۔۔۔یہ دلوں کے معاملے ھیں اوردل پر جبر کر کے کوٸی آپ کے ساتھ رھے یقیناً آپ کی محبت پر یہ تازیانے کے باعث ھوگا
مزید میں کچھ نہیں کہنا چاھتی۔۔۔۔۔کچھ پل اس نے انتظار کیا کہ شاٸد وہ کچھ بولے گا مگر کال بند ھو جانے پر اس نے سکھ کا سانس لیا
جان چھوٹی۔۔۔۔۔۔موباٸل تکیے کے پاس گراتے وہ بولی اور گھٹنوں کےگرد بازو لیپیٹے مسلسل یہی سوچے گٸی کہ اب کیا ھوگا۔۔۔۔۔۔ولید سے تو وہ بچ گٸی تھی مگر آنے والے ہر رشتے کو کیسے ٹالا کرے گی۔۔۔۔۔۔سوچتے سوچتے آنکھیں آنسوٶں سے بھریں تو حسن پر رھ رھ کر اسے غصہ آنے لگا
کس قدر بے حس اور ظالم تھا وہ شخص۔۔۔۔اسے اس انوکھی سی راہ پر لگا کر مذاق کا کہتے ھوۓ ساٸیڈ پر ھو گیا تھا
اسوقت سامنے ھوتا تو جانے کیا کر ڈالتی وہ۔۔۔۔اور اسکی قسمت کہ دروازہ ھولے سے کھٹکھٹاتے وہ روم میں آیا تو اس نے اپنی آنسوٶں سے بھری آنکھیں بے دردی سے رگڑتے ھوۓ اسے زہریلی نگاھوں سے دیکھا
وہ تو اس کو منانے آیا تھا مگر اتنے خونخوار تیور دیکھ کر گڑبڑایا اور تیزی سے اسکی طرف بڑھا
تم رو رھی ھو؟
وہ اسے زخمی نگاھوں سے دیکھے گٸی جب کافی دیر اس نے کچھ نہ کہا تو حسن اس کے برابر بیٹھنے لگا تب ھی ثانیہ بل کھاتی ناگن کی طرح بیڈ سے اتری
بیٹھو مجھے بات کرنی ھے۔۔۔۔۔
ہونہہ۔۔۔۔ جانتی ھوں کہ کونسی بات کرنی ھے۔۔۔۔تم بے حس کٹھور ظالم جنگلی بے دید انسان ھو حسن۔۔۔
بات کرتے کرتے وہ پھر رونے لگی
حسن نے اسے تھامنا چاھا تاکہ اسکی تمام غلط فہمیاں جو خود اسکی پیدہ کردہ تھیں انھیں دور کر سکے
جب ثانیہ نے اسکا ہاتھ جھٹکا
شادی پر میرے برابر آ کر بیٹھا تو کیسے پتنگے لگے تھے تمھیں۔۔۔۔ اور اب جب وہ میرا حاکم بننے کی چاہ رکھتا ھے تب کیوں کچھ نہیں کر رھے تم حسن؟؟؟
زاروقطار روتے وہ کہے گٸی
یوں مجھے کسی اور کا ھو جانے دو گے تم؟؟؟آس بھری نظروں سے اسکو دیکھ کر پوچھتی ثانیہ اسکا دل دھڑکا گٸی
اسکا بازو پکڑ کر اسے جھنجھوڑتے ھوۓ حسن نے اسے ہوش میں لانا چاھا جو عجب جوگن بنی یقیناً اپنے حواس میں نہیں تھی
اپنے بازوٶں سے اسکے ہاتھ ہٹاتی وہ اسکی شرٹ کا کالر اپنی مٹھیوں میں دبوچ گٸی
”مجھے اسطرح سے مت ٹھکراٶ حسن ۔۔۔کہ میں سر اٹھا کے جی بھی نہ سکوں“
پانی بھری آنکھوں سے وہ بولی۔۔۔۔۔اس سے پہلے کہ وہ کوٸی جواب دیتا اسکا کالر چھوڑ کر کھلے دروازے کو پورا کھولتے ھوۓ ثانیہ نے اسے باھر دھکیلا
تم کبھی بھی نہیں سمجھو گے میری بات۔۔۔۔۔تمھارے دل پر میرا کہا کب اثرکیا ھے جو یوں اپنےالفاظ بےمول کر رھی ھوں میں
جاٶ یہاں سے۔۔۔۔وہ دروازہ اس کےمنہ پر بند کر کے اندر چا چکی تھی مگر حسن ابھی تک اسی سرشاری کی کیفیت میں تھا
کوٸی اس قدر چاھتا ھو کہ آپ کے لیے روۓ۔۔۔یہ احساس ھی بڑا لطیف سا ھے
اہنے روم میں آ کر کھوۓ کھوۓ انداز میں وہ بیڈ پر لیٹا۔۔۔۔ذہن میں مسلسل اسکے الفاظ اور لہجہ گونج رھا تھا
آسودہ سی مسکراہٹ نے اسکے لبوں پر چھب دکھاٸی
دیکھو اب قدرت نے خود مجھے موقع دیا ھے تو میں کفرانِ نعمت نہیں کرونگا ثانیہ
کل کا دن تمھارے لیے بہت مزے کا ھونےوالا حسن۔جہانگیر۔۔۔۔خود کو مخاطب کرتے ھوۓاس کے چہرے پر بڑی ھی شیطانی مسکراہٹ تھی
بہت سوچ بچار کے بعد وہ گوگل سے کچھ سونگز ڈاٶنلوڈ کرنے لگا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔مشعل کو بلکل اندازہ نہ تھا کہ اس پہر وہ زاویار کے جذبات کو ہوا دے گٸی ھے۔۔۔۔۔
مشعل؟؟؟؟؟
جی۔۔۔بولیں
کافی پھینٹتے ھوۓ مصروفیت سے اس نے جواب دیا
جب کچھ دیر تک انھوں نے کچھ نہ کہا تو کافی کا مگ جو تقریباً تیار تھا انکو دینے کے لیے وہ مڑی تو بے اختیار ان سے ٹکراگٸی
محویت اور آنکھوں میں لپک لیے انھیں اپبی جانب دیکھتے پایا
کافی ذراسا چھلک کر اس کے ہاتھ کو جھلسا گٸی تو وہ تکلیف اور جلن سے کراہ اٹھی
زاویار کی ساری خماری پل میں ھوا ھوٸی تھی جلدی سے اسکا ہاتھ نل سے بہتے ٹھنڈے پانی کے نیچے رکھا پھراسے چٸیر پر بٹھا کر برنال اسکے ہاتھ پر لگاٸی
ھونٹوں کو بے دردی سے کچلتے اور پلکیں جھپک جھپک کر آنسوضبط کرتی وہ انھیں بےحد معصوم اور دل کے قریب لگی
ان سے کوٸی بے اختیاری سرزد نہ ھوٸی اس پر شکر کرتے ھوۓ وہ کافی کا مگ ہاتھ میں لیےکچن سے نکلے۔۔جانے سے پہلے اسے ٹی وی لاٶنج میں بکس لانے کا کہنا نہ بھو لے تھے
_______
بغیر اسکی طرف دیکھے مشعل کو مطلوبہ پواٸنٹس سمجھا کر انھوں نے اسے گڈ ناٸٹ کہتے اس کے روم مں بھیجا اور خود ٹیرس پر کھڑے کافی دیر آنے والے وقت کے بارے میں سوچنے لگے
پہلے انکا جی چاھا کہ اسکو بتا دیں کہ ماں اور بابا سے اپنے رشتے کی بات کر چکے ھیں مگر پھر خیال آیا کہ یہ بتانے کے لیے بھی کچھ سپیشل پلان کرنا چاھیٸے
اسکے ایگزیمز کی وجہ سے بھی یہ معاملہ التوا ٕ کا شکار تھا
اور پھر ڈسکلوز کرنے کے بعد وہ نکاح یا ڈاٸریکٹ شادی کا سوچے ھوۓ تھے جسکے فی الحال امکانات ھی بہت کم تھے
پرسوں رات کی فلاٸٹ سے انھیں دبٸی جانا تھا اسی لیے مشعل کو اچھی طرح سمجھا دیا تھا کہ بدگمان نہ ھو۔۔۔۔یقین سے قدرے دور اور بدگمانی کے قریب تر لڑکی۔۔۔۔۔۔۔بے حد جلدباز
انکی بقیہ زندگی اسے اپنی محبت کا یقین دلاتے اور وہ ترجیحات میں اوپر ھے۔۔یہ بتاتے گزرنے والی تھی زاویار یہ بات اچھے سے جانتے تھے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جب غصہ اترا تو کٸی ثانیے تک بے یقینی کی کیفیت میں وہ بیٹھی رہ گٸی۔۔۔۔۔کیا کر بیٹھی تھی۔۔۔اس شیطان کی آنت کو اپنی کمزوری دے دی تھی تو اب خود کو آنے والے وقت کے لیے تیار کرنے کا بھی حوصلہ نہ بچا تھا
وہ اسکی اچھی کِٹ لگاۓ گا یہ بات اسکو اچھے سے معلوم تھی تب ھی خود پر سو دفعہ لعنت بھیجتی سونے کے لیے لیٹ گٸی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
صبح تڑکے ھی آنکھ کھلی تو اپنے اتنی جلدی بیدار ھونے ہر اسے ہنسی آنے لگی۔۔۔مندی مندی آنکھوں سے وقت دیکھا۔۔۔۔اور بھرپور انگڑاٸی لیتے ھوۓ موباٸل اٹھا کر ثانیہ کو میسیج بھیج کر دوبارہ سونے کے لیے آنکھیں بند کیں
مشعل اور زاویار کو ناشتہ دیکر انھیں روانہ کرنے کے بعد نگہت کو انکے روم میں ھی ناشتہ دیا میڈیسن کھلاٸی پھر واپس آ کر کچن سمیٹا اور اپنے روم میں آکر بال بنانے لگی
بال کھول کر اسے ایکدم موباٸل کا خیال آیا۔۔۔وہیں برش پھینکا تکیے کے پاس پڑا موباٸل اٹھا کر دیکھا تو ایک میسیج نوٹیفیکیشن شو ھو رھا تھا
صبح بخیر سانولی لڑکی۔۔۔۔
میسیج اوپن کر کے پڑھتے ھی بے اختیار اس نے اپنے دانت پیسے اور ہاتھ میں پکڑا موباٸل یوں دور اچھالا گویا سانپ پکڑا ھو
تمھاری زندگی کا بدترین دن شروع ھوگیا ھے ثانیہ ابراھیم۔۔۔خود کو کہتے وہ مسلسل اپنے بالوں میں
بےدردی سے برش پھیر رھی تھی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بہت تھک گٸی ھوں۔۔۔۔۔نگہت کی گود میں سر رکھتے ھوۓ اس نے آنکھیں موندیں تو انھوں نے پیار سے اسکے بال سہلاۓ۔۔۔۔
پیپر کیسا ھوا ھے؟
اچھا ھوگیا بھاٸی۔۔۔۔آپ اب اٹھے ھیں کیا؟؟میں کالج سےآ بھی گٸی دوپہر ھونے کو آٸی اور اس وقت صبح ھوٸی ھے آپ کی؟
حسن نےسیڑھیاں اترتے بال انگلیوں سے سنوارتے ھوۓ اس سے پیپر کا پوچھا تو وہ سوالات کی بوچھاڑ کر گٸی
سانس تو لو لڑکی۔۔۔۔۔۔اور۔۔۔۔رات ٹھیک سے سویا نہیں میں ۔۔نیند ھی نہیں آٸی مجھے
کن اکھیوں سے ثانیہ کو دیکھتے وہ بولا جو کچن سے مشعل کے یے پانی لاٸی تھی
کیوں بچے کیاھوا؟؟نگہت نے پریشانی سے پوچھا تو وہ لاعلمی سے کندھے اچکا گیا
ناشتہ بنا دینا حسن کے لیے۔۔۔نگہت ثانیہ سے بولیں تو حسن نے انھیں منع کرتے یہ فرماٸش کی کہ اپنے ہاتھ سے ناشتہ بنا کر دیں
کبھی کبھار کی گٸی ایسی لاڈیوں پر نگہت کِھل سی جاتیں وہ اٹھ کر کچن میں گٸیں تو مشعل نے اس کے لیے صوفے پر بیٹھنے کو جگہ بناٸی تو ناچار اسے بیٹھا پڑا
شیطانی تاثرات لیے وہ عین اس کے سامنے بیٹھا اسکا ضبط آزما رھا تھا
ارے ہاں پتا ھے کیا۔۔۔کل رات میں نے یوٹیوب پر ایک کلپ دیکھا۔۔۔اس میں ناں ایک بندی بڑا رو دھو کر محبت کا اظہار کر رھی تھی۔۔۔۔۔تھی بہت پیاری سانولی سی
اور مزے کی بات بھلا کیا تھی۔۔۔۔اسکو لگتا تھا کہ وہ بندہ جس کی محت میں وہ مبتلا ھے۔۔۔ وہ اس سےمحبت نہیں کرتا جبکہ وہ۔۔۔۔ وہ تو اسی کے عشق میں رفتار تھا
ھے ناں مزےکی کہانی؟؟؟
”شیطانی چرخہ“ثانیہ کے ذہن میں یہی نام آیا اسکی لن ترانیاں سن کر
یہ کونسی مووی تھی بھلا؟
مشعل نے حیرت سے پوچھا کیونکہ حسن کو ان چیزوں سے کچھ خاص شغف نہ تھا اگروہ تعریف کر رھا تھا تو کوٸی خاص بات ضرور تھی
شاٸد تمھیں ماں بلا رھی ھیں کچن میں۔۔۔۔دل ھی دل میں اسے گالیوں سے نوازتی اور بظاہر چہرے پہ مسکراہٹ لیے وہ بولی تو حسن نے ابرو اچکا کر اسے دیکھا
ایک ھی جگہ بیٹھے ھیں ھم تینوں۔۔۔۔صرف تمھیں ھی آوازآٸی ھے۔۔۔۔مشعل نے حیرت سے کہا تو وہ کھسیاتے ھوۓ ادھرادھردیکھنے لگی
آنکھیں موندے لیٹی مشعل کو ایک نظر دیکھ کر حسن نے اسک طرف نگاہ کی جو مکمل اسے اگنور کرنے کا کامیاب ڈرامہ کر رھی تھی
جن نظروں سے وہ اسے دیکھ رھا تھا ثانیہ کی روح بےچین ھوٸی تو جھٹکے سے اپنی جگہ سے اٹھتے وہ روم میں بھاگی اور اندر جا کر بیڈ پر بیٹھتے ھی آنکھیں میچیں
چپ رھے تو بھی سناٸی دیتا ھے
ھاۓ اس شخص کے تیور ھیں صداٶں والے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کافی کے گھونٹ بھرتےھوۓ وہ لیپ ٹاپ پر بھی نظریں رکھے ھوۓ تھےاسوقت ذہن پر یہ سوال تھا کہ پاکستان سے باھر جا کر واپسی جلد از جلد ممکن بناٸی جا سکے
ایک مہینہ پہلے ھی زنیرہ نے اپنے ایک کزن کو زاویار کے آفس میں جاب دلواٸی تھی
جس پروجیکٹ پر آجکل کام چل رھا تھا اس پر ساٸن لینے کو احمدآفس میں اینٹر ھوا تو زاویار اس سے گپ شپ کرنے لگے
زنیرہ کی وجہ سے احمد کو کافی ریلیف بھی دیا گیا تھا اور باس ایمپلاۓ کا ریلیشن شپ بھی نہیں تھا
گھروالوں کی خیریت پوچھتے زنیرہ کے بارے میں بات چلی تو زاویار نے اسے کال کی تھی جواباً وہ جیسے اسی کی کال کے انتظار میں تھی
شکوے شکایات کرنے لگی اور زبردستی اسےڈنر پر انواٸٹ کرنےلگی۔۔۔۔مجبوراً وہ حامی بھر گٸے کچھ دیر اس سے بات کرنے کے بعد وہ بقیہ آفس کا کام نمٹانے لگے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اسکی حسیں آنکھوں میں
کس کی تصویر ھے
اسکی گھنی زلفوں میں
کس کی تقدیر ھے
آتا نہیں مجھکو یقین
پر کہیں وہ میں تو نہیں
سانولی سی اک لڑکی
دھڑکن جیسے دل کی
دیکھے جس کے وہ سپنے
کہیں وہ میں تو نہیں
ٹی وی لاٶنج میں بیٹھ کر اپنے موباٸل پر سونگ لگاۓ وہ اسکا غصہ اور شرم آسمان پر پہنچا رھا تھا
نگہت کے لیے چاۓ بناتی ثانیہ کچن میں جل بھن رھی تھی موقع کی مناسبت سے سونگ سلیکشن پر وہ عش عش کر اٹھی
مشعل حسبِ معمول کمرے میں گھسی اگلے پیپر کی تیاری میں مصروف تھی اور وہ بے بسی سے حسن کی بدتمیزیوں کو سہنے پر مجبور ابلتی چاۓ کی طرح خود بھی کھول رھی تھی
اسے مکمل نظر انداز کرتے ھوۓ لاٶنج سے گزر کر نگہت کو چاۓ دینے ان کے روم میں گٸی کچھ منٹ کے بعد جب واپس لاٶنج سے گزری تو سونگ چینج ھو چکا تھا
تم جو گم سم ھو تو میں حیران ھوں
یہ راز کیسے تم کو بتاٶں
کہ منزل منزل دو دیوانے دل
لے چلے پیار کا کارواں
سنو ناں سنوناں سن لو ناں
ہمسفر مجھی کو چن لو ناں
دانت پردانت جماۓ وہ چاۓ والے برتن سنک میں پٹخ کردھونے لگی
تب ھی گانابند ھوا تو اس نے سکھ کی سانس لی
بہت ھی کوٸی اخیر کی کمینگی لیے ھوۓ شخص تھا جو اتنی جلدی اسکی جان چھوڑنے والا نہیں تھا
تبھی اسے اپنی پشت پر نظروں کی تپش محسوس ھوٸی مگر وہ انجان بنی اپنا کام کرتی رھی
تیسیرا گانا پلے ھوتے ھی اسکا جی چاھا جھاگ سے بھرے ہاتوں سے اسکے بال نوچ لے یا خود کا سر دیوار میں دے مارے
یہ جھکی جھکی نگاھیں۔۔۔انھیں میں سلام کر دوں
یہیں اپنی صبح کردوں یہیں اپنی شام کردوں
یہ جھکی جھکی نگاھیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میری چاھتوں کا اب تک نہ اثر ھوا کسی پر
تمھیں کچھ خبر نہیں ھے کہاں زندگی گنوا دی
کسی مہرباں نے آ کے میری زندگی سجا دی
میرے دل کی دھڑکنوں میں نٸی آرزو جگا دی
دھلے ھوۓ برتنوں کو تیسری بار دھوتے ھوۓ اسکا ضبط جواب دے گیا تو جھٹکا کھا کر پلٹی اور اسے بارود نظروں سے گھورا
موباٸل بند کرتا وہ اس تک آیا۔۔۔ایک کی نظروں میں اب شرارت کی جگہ طوفانی سی محبت ہلکورے لے رھی تھی تو دوسرے کی آنکھوں سےغصے کے شعلے لپک لپک گٸے تھے
کٸی ثانیے ایک دوجے کو دیکھتے رھنے کے بعد حسن نے جیسے ھی اسکی طرف ہاتھ بڑھایا وہ دوقدم پیچھے ھوٸی
تماشا دیکھ رھے ھو میری بے بسی کا؟مذاق اڑا رھے ھو؟؟بہت اچھا لگ رھا ھے ناں ایک لڑکی خود سے جھک گٸی تمھارے آگے۔۔۔تسکین ملی تمہیں؟مردانہ انا تو خوشی سے دھمال ڈال رھی ھوگی۔۔۔ایسا ھی ھے ناں؟
یکے بعد دیگرے اس کے سوالوں کو سنتے وہ بازو سینے پر لپیٹے اسے دلجمعی سے سننے لگا جبکہ نظریں ابھی بھی اسکے چہرے کا طواف کر رھی تھیں
مجھے لگا تھا۔۔۔۔۔لگا تھا شاٸد تم۔۔۔مجھ سے۔۔۔۔
وہ اسکی ادھوری بات کا مطلب سمجھتے ھوۓہاتھ کی مٹھی بنا کر لبوں پر رکھتا اپنی مسکراہٹ روکنے لگا جبکہ نظریں ایک پل کو جھکی تھیں
مگر تم حسن۔۔۔۔۔۔تم نے مجھے ولید کو اتنی آسانی سے سونپ دینے کا کیسے سوچا ھاں؟
ٹوٹی ھوٸی آس سے نوحہ کناں نظریں حسن کی نگاھوں سے جو ٹکراٸیں تو وہ ہل کر رہ گیا
کیا اس قدر چاھتی تھی وہ اسے۔۔۔۔ایکدم اسے خود پر رشک محسوس ھوا
گہری سانس بھرتے ھوۓ اسے کندھوں سے تھامتے اس نے طے کر لیا کہ اب ڈرامے کا ڈراپ سین ھو جانا چاھیے
تمھیں کسی اور کا ھونے دوں اب ایسے بھی حالات نہیں ھیں زندگی۔۔۔۔مذاق میں بھی یہ مت سوچنا کہ تمھیں کسی اور کا ھونے دونگا۔۔۔اور آج
تم یہ۔۔۔۔۔۔۔۔ثانیہ نے اسے ٹوکنا چاھا
ششش۔۔۔۔۔لیٹ می کمپلیٹ۔۔۔اسےچپ کرواتے وہ مزید کہنے لگا
مجے اقرار کر لینے دو کہ تم سے مجھے بے حد محبت۔۔۔۔۔۔۔
بس کردو اب۔۔۔۔
خود کو اس کے حصار سے نکالتی وہ بےختیار چیخی تھی
سنا میں نے جو تم نے ماں سے کہا میرے بارے میں۔۔۔۔۔کزن ھوں اچھا مذاق ھے میرے ساتھ اچھا ٹاٸم گزر جاتا ھے مطلب میں فقط وقت گزارنے کا ذریعہ ھی تو تھی تمھارے لیے حسن۔۔۔۔۔تم۔۔۔۔۔وہ بے اختیار سسکی
ولید سے ھی شادی کرلونگی میں ۔۔۔ٹھیک ھے وہ کم از کم محبت تو کرتا ھے مجھ سے
حسن نے جبڑے بھینچتے امڈتے غصے کو دبایا
تم مجھ سے فلرٹ کرتے رھے تمھارے وقت کو رنگین بنانے کا سامان ۔۔۔۔۔۔۔۔
ثانیہ۔۔۔۔۔۔وہ اسکے الزام پر دھاڑا تو ثانیہ بھی اسکے دھاڑنے پر خاٸف ھوتی لبوں پر ہاتھ رکھ گٸی
میں فلرٹ کرونگا تمھارے ساتھ؟؟میں؟؟؟
اسکے بازو دبوچتا وہ پھاڑ کھانے کے انداز میں بولا تو اسکی سانس خشک ھونے لگی
کہاں حسن کو اس بیسٹ موڈ میں دیکھا تھا جو اس پل وحشی بنا اسے دبوچے کھڑا تھا
اسکی گرفت میں وہ پھڑپھڑا کر رھ گٸی
اسکا بازو کھینچ کر اہنے ساتھ گھسیٹتے ھوۓ وہ اسے کچن سے باھر لایا اور آگے قدم بڑھانے لگا ثانیہ آنکھوں میں آنسو لیے اس کے ساتھ گھسٹتی چلی گٸی اپنے بازو چھڑانے کوشش میں ہلکان ھوتے دوپٹہ کہیں راستے میں گر گیا تھا
نگہت کے روم کا دروازہ دھاڑ سے کھولتے وہ اسے اندر لایا اور بیڈ پر ھی اسے دھکا دے کر نگہت کے پیروں کے پاس بٹھایا تھا
وہ جو ابھی میڈیسن کھا کر لیٹی ھی تھیں حسن کے تیور اور ثانیہ کا رونا دیکھ کر بے حد پریشانی سے دونوں کو دیکھنے لگیں
ممانی اسے بتاٸیے کہ میرا کیا ری ایکشن تھا جب مجھے ولید کے رشتے کا علم ھوا۔۔۔۔یہ بھی بتاٸیے گا کہ میں کیا سوچتا ھوں اس کے بارے میں۔۔۔بتاٸیے گا کہ جب آپ سے بات کر رھا تھا تب دوتین جھوٹے جملے بولے تھے کیونکہ آپ کی بیٹی کو میں دروازے کےساتھ کھڑا چھپ کے باتیں سنتا دیکھ چکا تھا
بتاٸیے اسے کہ حسن سب کچھ ھو سکتا ھے مگر نقب زن نہیں
آخر الفاظ کہتے ھی لہجہ درد بھرا پرشکوہ ھوا تو ثانیہ کو لگا کچھ بہت ھی غلط کہہ بیٹھی ھے
جبکہ وہ روم سے جا چکا تھا
نگہت نے اسکا رخ اپنی طرف کیا تو وہ منہ نیچے کیے رونے لگی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آفس ورک ختم کرنے تک آٹھ بج چکے تھے آنلاٸن ھی دبٸی کی ایک میٹنگ اٹینڈ کرنے کے بعد وہ تھکے تھکے سے اپنی گاڑی میں بیٹھے تو زنیرہ کے گھر جانے کا خیال آیا حامی بھر چکے تھے مگر اب جانا ایک عذاب لگ رھا تھا۔۔۔گھر جا کر چینج کر کے پھر اس کے گھر تک پہنچتے بہت دیر ھو جاتی تو وہ آفس سے سیدھا اس کے گھر کی طرف گاڑی موڑ گٸے
خوشگوار ماحول میں کھانا کھانے تک گھر کے تمام افراد سے اچھی خاصی بے تکلفی بھی ھو چکی تھی کچھ زنیرہ کے گھر والوں کا مزاج بھی دوستانہ تھا
زنیرہ کی چھوٹی بہن بریرہ تو اسے پکا والا بڑا بھاٸی بنا چکی تھی ان کے ساتھ ہلکی پھلکی گفتگو کرتےھوۓ اسی دوران کافی پی تو بریرہ نے سب کی پکس بناٸیں
بتادیا اسے؟؟
گیٹ تک آتے آتے زنیرہ کے رازداری سے پوچھنے پر وہ مسکراۓ
دبٸی سے واپسی پر إن شاءالله ایک نہایت خوبصورت رنگ کیساتھ اسے پروپوز کرنے والا ھوں میں
آہاں۔۔۔۔۔انکے دبے دبے جوش سے بتانے پر زنیرہ دل سے خوش ھوتی بولی تھی
تو رِنگ لے بھی لی۔۔۔۔؟؟؟
نہیں بننے دی ھوٸی ھے اپنی پسند کی۔۔ کہ میرے الفاظ ھی نہیں وہ رِنگ بھی اسے میری محبت کا یقین سونپے
مجھے بھی دکھانا اوکے؟؟؟
اچھا چلو اب خدا حافظ واپس آ کر ملاقات ھوگی
خدا حافظ
جب تک وہ گھر پہنچے پونے بارہ ھو چکے تھےحسن نے گیٹ کھولا تو انھیں افسوس ھوا بیچارے کو میری وجہ سے نیند سے اٹھ کر آنا پڑا
اسکا ستا ستا تھکا سا چہرہ دیکھتے انھوں نے سوچا
اور اپنے روم میں جانے سے پہلے نگہت کے روم میں گٸے جو سو گٸی تھیں
مشعل کا خیال آنے پر وہ مطمٸن تھے کہ ثانیہ کو فون پر دیر سے آنے اور کھانا باھر کھانے کا بتا چکے تھے یقیناً اس نے مشعل کو بھی بتا دیا ھوگا
یہی سوچتے وہ اپنے کمرے میں آکر چینج کرنے کے بعد جلد ھی سو گٸے
جبکہ دوسری جانب مشعل حیرانی سے زاویار کے واپس انے کے بعد بھی اس سے نہ ملنے اور نہ ھی کھانا کھانے پر حیران تھی مزید ستم زنیرہ کے فیس بک پر لگے سٹیٹس نے کیا جو کچھ دہر پہلے ھی لگایا گیا تھا۔۔۔کافی پیتے ھوۓ دونوں کی پک تھی اور کیپشن میں
”می وڈ ماۓ بیسٹ فرینڈ اینڈ ہینڈسم ہنک زاویار ابراھیم“
دل میں کٸی شکوک و شہبات نے جگہ بناٸی تھی..

–**–**–
جاری ہے
——
آپکو یہ ناول کیسا لگا؟
کمنٹس میں اپنی رائے سے ضرور آگاہ کریں۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Subscribe For Latest Novels

Signup for Novels and get notified when we publish new Novel for free!




%d bloggers like this: