Mera Sham Slona Shah Piya Novel By Bella Subhan – Episode 17

0
میرا شام سلونا شاہ پیا از بیلا سبحان – قسط نمبر 17

–**–**–

ابراھیم اور وہ دونوں ھی لگاتار تین میٹینگز اٹینڈ کرنے کے بعد کچھ دیر کے لیے فری بیٹھے تو لنچ آفس میں ھی منگوا کر کرنے لگے ساتھ ساتھ میٹنگز کے حوالے سے گفتگو بھی جاری تھی
زاویار کی ایک خاصیت یہ بھی تھی کہ وہ بہت ھی کول ماٸنڈڈ انسان تھے اور انکی زندگی کا یہ اصول تھا کہ جہاں شہد سے کام بن سکتا وہ اٌدھر زہر کا استعمال نہیں کرتے تھے
یہی وجہ تھی کہ آج ھوٸی تین میٹنگز کا خاطر خواہ نتیجہ دیکھ کر ابراھیم کو ان پر فخر ھوا اور وہ اسکی برملا تعریف بھی کر گٸے تھے
کھانا کھانے کے بعد ابراھیم کو ایٸر پورٹ چھوڑتے پھر آفس آۓ اور باقی کام نمٹانے لگے
کلاٸنٹ کی کس بات کا جواب دیتے یونہی موباٸل کو آن کر کے دیکھا تو پاکستان سے آٸی تین کالز پر انکا ماتھا ٹھنکا
جیسے تیسے بات ختم کر کے وہ ریلکس ھو کر بیٹھے مشعل کا نمبر ڈاٸل کر کے اسکے کال اٹھانے کا ویٹ کرنے لگے
کتابوں میں سر دٸیے بیٹھے بیٹھے اونگھتے اسے لگا دور کہیں کوٸی سہانا سا ساز بج رھا ھے۔۔۔۔جب مسلسل وہ آواز آتی رھی تو اسکا ذہن مکمل بیدار ھوا اور جھٹ سے موباٸل اٹھا کر کان سے لگایا
نیندیں اڑا کر کیا کوٸی اس طرح سے سو جاتا ھے۔۔۔؟؟
نیند سے بوجھل سی آواز میں اسکا اَلسَّلامُ عَلَيْكُم سنتےوہ وَعَلَيْكُمُ اَلسَّلامُ کہنے کے بعد مشعل سے کہنے لگے
پتا نہیں چلا۔۔۔آنکھ لگ گٸی۔۔۔خیریت سے پہنچ گٸے تھے؟سوری کال پک نہیں کر سکی موباٸل ساٸیلنٹ پر تھا
ناراض ھو جاٶں؟
ھو سکتےھیں؟ان کے سوال پر وہ مسکاٸی
ھو بھی سکتا ھوں۔۔۔۔اس کے یقین سے کہنے پر وہ بے ساختہ مسکراتے اسے کہہ گٸے
اممم ھممم۔۔۔۔۔ممکن ھی نہیں ھے یہ کہ آپ ناراض ھوں مجھ سے
یہ بات بھی مت کرو محترمہ۔۔۔۔دعا کرتی رھا کرو کہ ایسی کوٸی وجہ نہ دو مجھے کیونکہ
”میں جو روٹھا تو تمھاری جان پہ بن آۓ گی“
فی الحال تو میں ناراض ھوں آپ سے۔۔۔مجھے نہیں بتایا بھاٸی اور ثانیہ کے بارے میں
کیوں؟
اب تو پتا چل گیا ناں۔۔۔۔۔۔اور ویسے بھی تم مصرورف رھتی تھی پڑھاٸی میں
بس رھنے دیں۔۔۔۔میں نہیں بول رھی آپ سے۔۔۔۔۔روٹھی روٹھی آواز پر وہ مسکراۓ تھے
ھممم۔۔۔۔۔تو کیسے منایا جاۓ آپ کو بتاٸیے مادام۔۔۔۔۔؟
انکی بات پر وہ جھینپی۔۔۔۔زیادہ کچھ نہیں بس اسی مہینے لوٹ آٸیں ۔۔۔بتاٸیں کر سکتے میرے لیے یہ؟؟؟
ابرو اچکاتے ھوۓ اس نے استفسار کیا تو زاویار نے گہری سانس بھری
مشکل میں ڈال دیتی ھو یار مجھے۔۔۔جانتی ھو ناں کہ نہیں آ پاٶں گا میں
نہ جانے کیسے سہولت سے سہہ رھا ھے وہ
اسے تو ہجر کی باتیں عذاب لگتی تھیں
یہ میرے لیے ابھی بھی عذاب کے مترادف ھی ھے مشعل۔۔۔۔۔سمجھو اس بات کو
اسکے شعر میں کیے گٸے شکوے پر وہ بولے تھے
اچھا چھوڑو یہ بات۔۔ مجھے بتاٶ کیا چاھیے تمھیں؟کیا لاٶں تمھارے لیے؟
زاویار نے موضوع بدلتے خود پر سے اسکا دھیان ہٹایا
زر۔۔۔۔۔۔۔!!!!
اسکی دل موہ لینے والی پکار پر ان کے دل نے ایک بیٹ مس کی
ھممم۔۔۔۔؟؟
”میں چاھتی ھوں آپ تحفے میں مجھے ”وقت“ دیں“
ھاۓ۔۔۔۔۔۔نہیں کرو۔۔۔۔سب بھاڑ میں جھونک کر آ جاٶنگا۔۔۔۔۔انکی بات پر وہ دھیمے سے ہنسی اور بیڈ کراٶن سے ٹیک لگاٸی
اور ماموں کی ڈانٹ کون سنے گا ھاں؟؟؟نچلا لب دباتےاس نے گردن اکڑاتے ھوۓ پوچھا تو وہ بے بسی سےسر ہلا گٸے
یہ ھے اصل مجبوری یہاں رکنے کی۔۔۔۔ورنہ تم سے دور کون کمبخت ھونا چاھتا ھے
محبت سے انھوں نے کہا تو وہ پلکیں موندے اس وقت کا حٌسن اور الفاظ کی چاشنی کو محسوس کیے گٸی
کچھ وقت ایک دوسرے کی خاموشی اور اس کے بھید سمجھتے گزرا
فون رکھوں؟مدھم آواز میں وہ بولی تو انھوں نے اپنی آنکھیں میچیں
اہنا خیال رکھنا۔۔۔۔۔پلیز
جی۔۔۔آپ بھی
ھممم۔۔۔۔۔میری ماں سے بات کروا دو
انکے کہنے پر وہ نگہت کے روم کی طرف جانے کو اٹھی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کباب فراٸی کرنے کے بعد چاۓ رکھ کر اس نے ٹرے سیٹ کی فریج سے کیچپ کی بوتل نکال کر پلٹی اور چولہے کی آنچ دھیمی کی جس پر رکھی چاۓ ابل رھی تھی
کیتلی پر نگاہ ان کی ھو
کیسے پھر چاۓ کا دَم نہ نکلے
ایکدم حسن کی آنے والی آواز پر وہ پلٹی اور اس کے شعر پر غور کیا تو بے ساختہ ہنسی چھوٹی تھی
کیسے کرتے ھو تم یہ؟؟
کیا؟
یہی۔۔۔۔۔۔برجستہ شعر کہنا
کیوں اچھا نہیں لگتا؟؟؟
نہیں خیر اچھا تو لگتا ھی ھے مگر حیرت ھوتی ھے کہ کسطرح یاد رہ جاتےھیں تمھیں
اسکی بات پر وہ مسکرایا
بس ایک بار کسی محترمہ سے داد ملی تھی تو پھرشاعری سے کبھی کنارا نہیں کیا میں نے۔۔۔۔۔اسکی طرف جھکتے وہ بولا تو وہ رخ موڑتے چاۓ کپ میں ڈالنے لگی
تین چارسال پہلے کی بات اسے یاد آٸی جب اس نے حسن کے شاعری کے ذوق پر اسکی تعریف کی تھی
میرے تخیل کی چڑیا
زمینِ حرف و معنی سے
کچھ ایسے لفظ چٌنتی ھے
جو میری ذات سے منسوب ھوتے ھیں
میرے حالات سے منسوب ھوتے ھیں
جنہیں ترتیب میں رکھ دوں
تو دنیا مجھ سے کہتی ھے
تم اچھے شعر کہتے ھو
اففف۔۔۔۔۔۔۔اچھا یہ چاۓ بن گٸی ھے اور یہ دنیا کب سے کہنے لگی کہ اچھے شعر کہتے ھو؟؟بس میں نے ھی کہا ھے۔۔۔ دنیا نے نہیں
آنکھیں گھماتے وہ بولی اس کے ہاتھ سے ٹرے لیکر شیلف پر رکھتے ھوۓ اس نے چاۓ کا کپ اٹھایا
دنیا ھو میری۔۔۔۔تم۔۔۔۔۔۔
چاۓ کا سِپ لیکر آخری لفظ ذرا توقف سے ادا کیا ساتھ ھی آنکھوں میں گہرا پن اترا
اپنی گلابی پڑتی رنگت کو چہرے پر ہاتھ پھیر کر زاٸل کرنے کی کوشش کرتی وہ اس کے دل میں اترنے لگی
یہ دوسرا کپ۔۔۔۔مشعل کے لیے بنایا میں۔۔۔۔۔۔جارھی۔۔اس کے پاس
تیزی سے یہ بات کہتے وہ کچن س نکلی تو وہ نیچے منہ کیے دل کھول کر ہنسا
یہی پل اس کے لیے زادِراہ تھے۔۔۔ اسے دو سال اسی وقت کو یاد کرتے گزرانے تھے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میرے ایگزیمز ختم ھونے کے بعد میں سوچ رھی ھوں تمھاری طرح ھی کوکنگ کا کورس کرلوں کوٸی۔۔۔۔کیا خیال ھےتمھارا؟؟
کورس کی کیا ضرورت ھے۔۔۔گھر پر ھی سیکھو ناں جو بھی سیکھنا چاھتی ھو تم۔۔۔۔میں کس لیے ھوں بھلا
اس کے کہنے پر ثانیہ نے اپنی خدمات پیش کرناچاھیں
ارےنہیں یار۔۔گھر رہ کر بور ھو جاتی ھوں ناں میں۔۔۔اب تمھاری طرح گھر میں ہر وقت۔۔۔ناں بابا ناں یہ مجھ سے نہیں ھوگا
اصل میں مجھے عروج نے بھی کہا تھا۔۔سونیا میڈیم نے تو ویسے بھی بیاہ کے پیا دیس سدھار جانا ھے
اللہ کی بندی۔۔۔۔پیپر دو ابھی سکون سے بعد کی بعد میں دیکھی جاۓ گی
بس اب ایک ھی رہ گیا ھے
جانے کون کون سے ڈرامےچل رھے ھیں ٹی وی پر۔۔۔۔جہاں دیکھو الگ ھی چہرہ نظر آتا ھے۔۔تم بور نہیں ھوتی ان ڈراموں سے؟؟
ریموٹ ہاتھ میں لیے چینل سرچ کرتی وہ ثانیہ سے پوچھ بیٹھی
ڈرامےدیکھے گی نہیں تو ڈرامے آٸیں گے کیسے؟؟
بجاۓ ثانیہ کے جواب حسن نے دیا جو ابھی نگہت کیساتھ باھر سے آیا تھا
لے آۓ میڈیسین؟چیک اپ ھو گیا؟کیا کہا ڈاکٹر نے؟
ریموٹ پھینک کر وہ نگہت کے پاس گٸی اور انھیں پکڑ کر صوفے پر بٹھایا
جبکہ ثانیہ حسن ک گھوری ڈال کر تب تک کچن سے پانی لےآٸی
ساری ساری رات جاگتی رھتی ھیں۔۔۔۔نیند نہ آنے کا ایشو ھے وہ بھی شاٸد پہلے والی میڈیسن کی وجہ سے۔۔۔تو میڈیسن ھی چینج کی ھے باقی اگر نیند نہیں آ رھی تو اس کے لیے پلز دی ھیں
خیال رکھا کرو انکا بہت۔۔۔۔زاویار بھاٸی نہیں ھیں یہاں اور ماموں آفس سے بہت لیٹ آتے ھیں آج کل اور اب تومیں نے بھی جانا ھے پرسوں۔۔توساری ذمہ داری تم دونوں پر آتی ھے
جب تک ماموں گھر نہ آجایا کریں تم دونوں یا کوٸی ایک انکے پاس رھا کرو
اپنی کنپٹی کو ہلکا سا دباتے ھوۓ نگہت نے اپنے بچوں کہ طرف دیکھا جو بے حد پریشان انھیں دیکھ رھے تھے
ٹھیک ھوں میں بیٹا
زبردستی ایک مسکراہٹ چہرے پر لاتے وہ بشاشت سے بولیں
داٸیں باٸیں ثانیہ اور مشعل کو اپنے بازوٶں کے حلقے میں لیے تسلی دی جبکہ حسن کو پیار سے دیکھا تھا
زاویار تو اتنا مصروف ھو گیا ھے کہ اب تین تین دن گزر جاتے ھیں کوٸی رابطہ نہیں کرتا
تمھاری بات ھوٸی اس سے؟
مشعل سے انھوں نے ایک دم پوچھا تو وہ گڑبڑا گٸی
ثانیہ نے اپنی بےساختہ مسکراہٹ کا گلاگھونٹا تھا
نہیں ممانی مجھ سے بھی کوٸی کونٹیکٹ نہیں ھے انکا
ساتھ ھی اسے زاویار کا رابطہ نہ کرنا بے حد کَھلا
پچھلے دنوں ھوٸی بات میں وہ اسے اپنی آنے والی مصروفیت کا بتا چکے تھے تب ھی وہ ذرا پرسکون تھی مگر اب جو وقت زیادہ ھوگیا تھا تو اس کا ضبط بھی چھوٹنے والا تھا
بغیر کسی پر ظاہر کیے وہ معمول کی طرح کام سرانجام دے رھی تھی مگر ذہن اسکا انھی کی طرف لگا تھا
یہ کیسی تیری پریت پیا
تو دھڑکن کا سنگیت پیا
تیرے رسم و رواج عجیب بہت
مرا در در پھرے نصیب بہت
تیرا ہجر جو مجھ میں آن بسا
میں تیرے ھوٸی قریب بہت
مجھے ایسے لگ گٸے روگ برے
میں جان گٸی سب جوگ برے
آ سانول نگری پار چلیں
اس نگری کے سب لوگ برے
تجھے دیکھ لیا جب خواب اندر
میں آن پھنسی گرداب اندر
بن پگلی جھلی دیوانی
میں ڈھونڈوں تجھے سراب اندر
تیرے جب سے ھوگٸے نین جدا
میرا دل سے ھوگیا چین جدا
ھے ازلوں سے یہ ریت پیا
کب مل پاۓ من پیت پیا
اب لوٹ آٶ سونے من میں
کہیں وقت نہ جاۓ بیت پیا
یہ کیسی تیری پریت پیا
تودھڑکن کا سنگیت پیا
بن تیرے سب ھی پھیکے ھیں
سب تارے شمس اور ماہ پیا
میراشام سلونا شاہ پیا
مجھے مار گٸی تیری چاہ پیا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دکھتی آنکھوں کو دباتے ھوۓ دل بھی ذرا بے چین ھوا تھا فوراً گھر والوں کا خیال آتے ھی انھوں نے وقت دیکھا محض پانچ منٹ بعد ھی اگلی میٹنگ تھی صبح ہلکا پھلکا ناشتہ کرنے کر بعد صرف پانی ھی پیا تھا بھوک بھی لگی تھی
اب اگر کھانا کھاتے یا فون کال۔۔۔۔دونوں ھی بیچ میں رہ جانے تھے
وہ جانتے تھے کہ باقی سب تو سمجھ بھی جاٸیں گے ان کی مصروفیت۔۔۔ مگر وہ لڑکی ناراض ھو کر بیٹھی ھوگی
طوفانوں سی لڑکی۔۔۔۔اور میں چراغ کی لو جیسا۔۔۔۔جانے کیا ھوگا ھمارا بھی۔۔۔مسکراتے ھوۓ بے بسی سے ایک بار پھر وقت دیکھا اور موباٸل کو۔۔۔
پھر گہری سانس بھرتے اگلی میٹنگ کے لیے ریڈی ھونے لگے کیونکہ وقت ھوچکا تھا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ جانے سے پہلے ثانیہ سے بات کرنا چاھتا تھا مگر مشعل ور وہ دونوں ایک ساتھ ھی پاٸی جاتیں۔۔جب سے مشعل کے امتحان ختم ھوۓ تھے گھر میں ھروقت ان دونوں کی آوازیں گونجتی تھیں
زاویار سے بات ھو چکی تھی مگر انکا فون اس وقت آیا جب وہ سب کے ساتھ لاٶنج میں بیٹھی تھی تو ان سے کوٸی شکوہ بھی نہ کر سکی اور دوسری طرف زاویار بھی سمجھ گٸے تھے کہ جھیل اتنی ساکت کیونکر ھے
مگر ایسا نہیں تھا کہ وہ اب خفا نہیں تھی بلکہ اسکی ناراضگی کا گراف رفتہ رفتہ بند ھو رھا تھا
رات آٹھ بجے کی فلاٸٹ سے حسن واپس انگلینڈ جارھا تھا اور جانے سے پہلے وہ ثانیہ سے بات کرناچاھتا تھا مگرمشعل اسے چھوڑ ھی نہں رھی تھی
کشن کو گود میں رکھے وہ ٹی وی دیکھ رھا تھا گاھے بگاھے ان دونوں کی طرف بھی دیکھتا جو بیٹھی میگزین کی ورق گردانی کررھی تھیں ساتھ ساتھ تبصرہ بھی جاری تھا
نگہت ان سے ذرا دور بیٹھیں اپنی دوست سے فون پر بات کر ھی تھیں
یونہی ثانیہ نے حسن کی طرف دیکھا توحسن جو اسے ھی دیکھ رھا تھا
اس نے نظروں سے اسے اپنی بات سمجھانے کی کوشش کی تھی
ایک ابرو اچکاتے وہ نفی میں سر ہلانے لگی تو وہ بھنا گیا تھا
اور پیر پٹختا وہاں سے واک آٶٹ کر گیا ہنستے ھوۓ اس نے مشعل کے کندھے پر سر رکھا تووہ حیرت سےاسے دیکھنے لگی
تمھیں کیوں ہنسی آٸی اور یہ بھاٸی کو کیا ھوا ھے؟
مجھ سے چاۓ کا کہہ رھا تھا میں نے انکار کیا تو ناراض ھو گیا ھے
جلدی سے بات بناتے وہ بولی تومشعل نے اسے گھورا
بنا کر دے دو چاۓ۔۔۔کتنی غلط بات ھے آج چلے جانا ھے بھاٸی نے اور تم یوں کر ھی ھو انکے ساتھ
جاٶ ابھی بنا کے دو انھیں
مشعل نے اسے زبردستی اٹھا کر کچن کی طرف بھیجا تو چاۓ بنا کر وہ اسکے روم ک طرف بڑھی
خود پر ہنسی بھی آ رھی تھی کہ جھوٹ بولنے پر چاۓ بنا تو لی ھےمگر اسے پیۓ گا کون۔۔۔۔۔
روم میں داخل ھوٸی تووہ اسےالماری میں سر دٸیے نظر آیا
کیوں بلا رھے تھے؟؟
اسکے بولنے پر پلٹ کر اسے ناراضگی سے دیکھتا حسن ثانیہ کو مسکرانے پر مجبور کر گیا۔۔۔
کتنا مغرور بنادیا ھے ناں تمھیں میری محبت نے؟؟اسکی طرف آ کر کہتا وہ بغور اسے دیکھنے لگا جو سادہ سے حلیے میں بھی خاص لگ رھی تھی
ھاں تو۔۔۔۔۔۔اتراہٹ سے گردن اکڑاتےوہ بولی تووہ ہنسا تھا
مجھے یادکروگی؟؟
کیوں بھلا؟
کیوں مطلب؟؟
اسکے حیرانی سے پوچھنے پر سوال کرنے لگا
مطب کہ کیوں یاد کرونگی میں۔۔۔۔تم سےمحبت تھوڑی ھے جو یاد کرتی پھرونگی تمھیں۔۔۔۔اتنے کام ھوتے ھیں کہاں یاد رھے گا تمھیں یاد کرنا
آہاں۔۔۔۔۔؟؟بتاٶں کوٸی رو کر کیا کہہ رھا تھا کچھ دن پہلے
شرارت سے اس نے کہا تووہ گڑبڑا گٸی
وو۔۔۔توبس ایسے ھی۔۔۔۔
مگر پھر مسکراہٹ بھینچتے ھوۓ اسے چڑانے لگی جسکو سمجھتا دونوں بازو سینے پر لپیٹتے اسکی طرف جھکا
اچھا جی۔۔۔۔۔مگر ایک بات کہوں
اسکاموڈ بدلتا دیکھ کر وہ بوکھلاتے سر ہاں میں ہلانے لگی
میری یاد۔۔۔۔قیامت ھے
دیکھنا۔۔آۓ گی ضرور
بالوں کی لٹ کو ہاتھ سے اس کے کان کے پیچھے اڑستے ھوۓ بوجھل لہجے میں اس کے کہنے پر وہ ”اچھا“کہہ کر اس کے روم سےنکلی تو وہ آسودگی سے مسکریا
ساٸیڈ ٹیبل پر پڑی چاۓ دیکھ کر حیرت سے سر ہلاتے ھوۓ کپ اٹھا کر ناچاھتے ھوۓ بھی وہ چاۓ پینے لگا
…………………………….
نہ کر۔۔۔۔ واقعی۔۔۔۔۔۔۔؟؟؟انکل نے تو بہت زیادہ جلدی کردی تمہیں رخصت کرنے میں۔۔مجھے بے حد حیرت ہو رہی ہے
ارے تھم جاٶ ذرا۔۔۔رخصتی نہیں ہے بس نکاح ہی کر رہے ہیں
سونیا نے مشعل کو تفصیل سے بتایا
اوہ اچھا۔۔۔۔۔ کب تک متوقع ھے نکاح؟عروج سے بھی بات نہیں ھوٸی میری؟کیا واپس آ گٸی وہ اپنے گاٶں سے؟
شاٸد آ گٸی ھو۔۔۔کچھ دن کے لیے گٸی تھی۔۔اس کے گاٶں میں سگنلز کا بہت ایشو ہے تو اسی لیے میں نے بھی کونٹیکٹ نہیں کیا اور فی الحال تو مجھے صرف یہی پتا چلا ھے کہ امی ابو کا یہ پلان بن رھا ھے ایگزیکٹ کب ھے آٸی ڈونٹ نو
تم بتاٶ سب کیسے ھیں؟زاویار بھاٸی سے ھوٸی بات؟حسن بھاٸی گٸے واپس یا یہیں ھیں ابھی؟
جواباً وہ اسے ثانیہ اور حسن کے نٸے رشتے کے بارے میں بتانے لگی ساتھ ساتھ زاویار کی بے رخی کا احساس دل میں چٹکیاں لے رہا تھا
اور وہ تو جاکر مجھے بھول ہی گۓ ہیں یار۔۔۔۔۔کبھی کبھی میرا جی چاہتا ھے کہ میں ان سے سب کچھ کہہ دوں اور وہ میرے بکھرے الفاظ کو ترتیب دے کر میری ساری باتیں سمجھ جاٸیں۔۔مگر میسر ھوں تب ناں۔۔۔۔
توتم خود کرلو ناں ان سے بات۔۔۔۔یا انا آڑے آ رھی ھے؟کہ وہ نہیں یاد کر رھے تو تم کیوں کرو
سونیا نے اسسےسنجیدگی سے پوچھا تو وہ بے بسی سے ہنس دی
محبت میں۔۔۔۔اگر ھم سب سے پہلے کسی چیز کو داٶ پر لگا کر اسے ختم کرتے ھیں ناں تو وہ ہماری انا ہی ہوتی ھے انا اور محبت ایک دوسرے کی ضد ہوا کرتے ھیں اگر ایک موجود ہے تو دوسرے کا وجود پنپ ہی نہیں سکتا
میں ان سے بات کرونگی مگر فی الحال مجھے میری اھمیت جاننی ھے
سونیا سے کچھ دیر بات کرنے کے بعد اس نے فون رکھا تھا
رفتہ رفتہ دل گرفتگی کا گراف بلند ھوتا جا رھا تھا اور اس نے طے کر لیا تھا کہ اب کی بار ان کی کسی تاویل کو نہیں مانے گی اور انکو اس کے لیے جلدی واپس آنا ھی پڑے گا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سنے اگر میری صدا تو چلتے کارواں رکیں
بٌھلا کے اپنی گردشوں کو سات آسماں رکیں
میں حسن کا غرور ھوں میں دلبریں کا ناز ھوں
کسی پہ جو کھل نہ سکے وہ زندگی کا راز ھوں
صدا ھوں اپنے پیار کی جہاں سے بے نیاز ھوں
کسی پہ جو نہ کھل سکے وہ زندگی کا راز ھوں
پودوں کو پانی دیتے ھوۓساتھ ساتھ وہ گنگنا بھی رھی تھی جب مہلکتے سے لہجے میں کہے گٸے حسن کے الفاظ نے اسکی روح کو ایک بار پھر مطر کیا تھا
”تم تو بہت اچھا گا لیتی ھو سٌریلی“
ایک پرسکون سی مسکراہٹ نے لبوں پر ڈیرہ جمایا تو وہ پاٸپ کے سرے کو دباتے ھوۓ پانی ک موٹی دھار کو بغور دیکھنے لگی جو بل کھاتے ھوۓ خشک گھاس کے ساتھ ساتھ جیسے اسکے من کو بھی سیراب کر رھی تھی
جو لوگ دل کےمکین ھوتے ھیں ناں۔۔۔وہ چاہے نظروں سے اوجھل ھوں مگر انکی مجودگی کو ہر پل اپنے آس پاس محسوس کیے جانا بھی محبت کی ایک شکل ہے
حسن کو گٸے تین دن ہو چکے تھے اور تب سے اب تک اسکے ذہن نے حسن کا جانا قبول نہیں کیا تھا
یوں لگتا تھا ابھی کسی ساٸیڈ سے نکل کر آۓ گا اور اسے چڑانا شروع کردے گا
جاتے جاتے بھی اسکی شرارت کو یاد کرتے وہ منہ نیچے کیے دل کھول کر ہنسی اور ایک بار پھر جیسے وہ لمحہ وہ منظر اسکی نگاھوں کے سامنے کسی فلم کی صورت چلنے لگا تھا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بس دو سال ھی تو ھیں یار ممانی آپ نہ اپنی ان آنکھوں پر ظلم کریں رو کر۔۔۔۔دیکھیں یہاں آپ رو رھی ھیں ادھر کوٸی میرے جانے پر خوشی سے دل ھی دل میں بھنگڑے ڈال رھا ھے
حسن نے نگہت کو حصار میں لیے چپ کرواتے کہا اور دور کھڑی صوفے پر رکھے بے ترتیب کشنز کو سیٹ کرتی ثانیہ پر طنز کیا تھا
جبکہ وہ محض اسے شکوہ کناں نظروں سے دیکھ رہ گٸی
مشعل نے گھنٹہ بھر اسکا دماغ کھایا تھا کہ روز فون کیا کرے اور بھولے مت کہ اسکی بہن بھی موجود ھے یہاں اسے سمجھانے کے بعد نگہت نے اپنی ممتا سے مجبور ھو کر روتے ھوۓ اسے خیال رکھنے کی تاکید کی تو ماحول ہلکا پھلکا بنانے کو حسن نے ثانیہ کو چھیڑا
مگر شاٸد وہ بھی اس وقت جذباتی ھوٸی اس کے جذبات کا امتحان لے رھی تھی کہ اسے انگلینڈ سے ھی بیر ھونے لگا
شاٸد ثانیہ اپنے آنسو ضبط کر رھی تھی تب ھی پلکیں تیزی سے جھپکتی ھوٸی کچن میں گٸی اور اسکی یہ تیزی سمجھتے ھوۓ حسن پیار سے نگہت ک صوفے پر بٹھا کر ابھی آتا ھوں کہتا ھوا اس کے پیچھے لپکا تھا
کچن میں جاتے ھی پانی کا گلاس پھر کر لبوں سے لگاتے ھوۓ اس نے اندر کے طوفان کو باہر آنے پر بند باندھتے پانی کے گھونٹ بھرے
اس کے ہاتھ سے گلاس لیکر کاٶنٹر پہ رکھ کر حسن نے اسکے دونوں ہاتھ تھامے اور اسکی پلکوں کے کنارے آیا آنسو بے مول ھونے سے پہلے ھی انگلی پر چن لیا
اب تم بھی مجھے کمزور کروگی کیا؟
نفی میں سر ہلا کر وہ اپنے آنسو پونچھ کر لمبا سانس لینے لگی
اب مسکرا دو کہ جینا آسان لگے۔۔۔۔پلیز
زبردستی مسکراہٹ لبوں پر لاتے وہ یوں مسکراٸی گویا رونے سے مسکان ادھار لی ھو
جلدی آٶ گے ناں؟؟
ثانیہ نے پوچھا تو وہ شرارت سے اسے دیکھنے لگا
اچھا وہ کیا تھا؟؟
کیا؟
حسن کے پوچھنے پر اس نے سوالیہ نظریں اٹھاٸیں
وہ جو تم کوٸی بات منوانے پر ہواٸی فاٸر چلاتی ھو۔۔جو سندس کے گھر مجھ پر ٹراۓ کیا تھا۔۔۔
یادآیا؟؟
لمحے کے ہزارویں حصے میں وہ وقت یاد آتے ھی اس کے گال تمتمااٹھے
بدتمیز۔۔۔۔۔
اس کے کندھے پر مکا رسید کرتے ھوۓ کہتی وہ کچن سے شرم سے بے حال ھوتی بھاگی تو وہ دل کے ہلکا ھونے پر طمانیت سے مسکرادیا
مسلسل ایک ھی جگہ پانی گرتے رہنے سے چھوٹا سا جوہڑ بننے لگا تو ایکدم وہ حسن کے خیالوں سے باہر نکلی ساتھ ہی اپنے چہرے پر ہاتھ لگایا جو گزرے وقت کو یاد کرتے ھوۓ تپش چھوڑنے لگا تھا
میلوں دور بیٹھے کو بھی چین نہیں۔۔۔ وہ یہاں نہیں ھے تو اسکا خیال ستا رہا ھے
اسکی یاد سے گھبرا کر وہ بولی تھی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مسلسل تیسری بار انکی کال کو کاٹا گیا تو انھیں اندازہ ھوا کہ اس بار وہ اسے سخت ناراض کر بیٹھے ھیں اور اتنا دور بیٹھے اب وہ ایسا کیا کریں کہ نازک دل والی کا دل ان پر ایک بار پھر آ جاۓ
بےبسی سے موباٸل میں موجود اسکی تصویر پر محبت سے انگوٹھا پھیرتے وہ سوچے چلے جا رھے تھے اور ایک بار پھر کال اسے ملاٸی جو خلاف توقع پک کر لی گٸی تھی
اور کال اٹینڈ کرنے کے بعد بھی مسلسل تین منٹ کی خاموشی کو شدت سے محسوس کرتے انھوں نے اپنی آنکھیں میچی تھیں
کیا میری زندگی مجھ سے بہت زیادہ خفا ھوگٸ ھے؟
وہ ہنوز خاموش تھی
کیا وہ مجھ سے اب بات بھی نہیں کرے گی؟؟
خاموشی۔۔۔۔
کیا وہ اپنے زاویار کی بات نہیں مانے گی؟؟
گہری۔۔۔۔ دبیز خاموشی۔۔۔۔۔
کیا زَر اپنی مِشو کو منانے کے لیے جان دے دے؟؟؟
خاموشی میں گہرا شگاف اسکی ہلکی سی سسکی سے پڑا تو وہ بے بس ھوتے گہری سانس بھر گٸے
نہیں کرو پلیز۔۔۔۔۔۔۔۔
جانتے ھیں کتنے دن ھوگٸے تھے؟
جانتا ھوں مگر کیا کرتا مصروف تھا کام بھی تو ضروری ھیں ناں
اسکی بھری آواز سنتے ھی وہ نہایت محبت سے اس کے شکوے سنتے اور اس کے شکستہ سے دل پر اپنے محبت سے لبریز جملوں کے پھاہے رکھتے اسے سکون پہنچا رھے تھے
وقت گزرنے کا احساس تک نہ ھوا تھا یا شاٸد وقت کی قید سے انکا رشتہ ماورا تھا ان سے بات کرنے کے کٸی وعدے لیکر جب کافی دیر بعد اس نے فون رکھا تو دل آسودگی اور طمانیت سے سرشار تھا اسکا دل خدا کے حضور سجدہ ریز ھوا
کب زلف کے گنجل سلجھیں گے
کب نیناں تم سے الجھیں گے
کب تم ساون میں آٶ گے
کب بدلے گی تقدیر پیا
تم سپنوں کی تعبیر پیا
میں جل جل ہجر میں راکھ ھوٸی
میں کندن ھو کر خاک ھوٸی
اب درشن دو آزاد کرو
بس توڑ دو یہ زنجیر پیا
تم سپنوں کی تعبیر پیا
میرا شام سلونا شاہ پیا
مجھے مار گٸی تیری چاہ پیا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جیل میں بند سر جھکاۓ وہ پریشانی سے بیٹھا ملسل یہی سوچے جا رہا تھا کہ اب اسوقت وہ کیا کرسکتا ھے رات کے تین بج رہے تھے اور شام کو ایک بزرگ کیساتھ کی گٸی چند لڑکوں کی بدتمیزی پر اس کا ہیرو بننا اس کو مہنگا پڑ گیا تھا
شدید اشتعال کے باعث ایک تھپڑ جو اس نے وہاں کے باشندے کو دے مارا تھا اس کے جواب میں پچھلے کچھ گھنٹوں سے جیل میں بند ہونے کے بعد اب اسے یہ فکر کھاۓ جا رھی تھی کہ پاکستان میں بھنک پڑ گٸی تو یقیناً بہت سبکی ہوگی
کافی گزارش کرنے بعد اسے فون کال کی اجازت دی گٸی تو اس نے جلدی سے زنیرہ کو کال کی کیونکہ گھروالوں کے علاوہ بس اسی کا نمبر ازبر تھا اسے
توقع کے عین مطابق رات کے اس پہر اسکے فون کرنے پر وہ حواس باختہ ھوتی مزید اسکا فشارِخون بلند کر رہی تھی
مجھے بس زاویار کا نمبر دو جلدی اس سے بات کرتا ھوں۔۔۔حسن تو یہیں ھے ناں وہ ہیلپ کر سکتا ھے
ثقلین نے تیزی سے کہا تو وہ زاویار کا نمبر اسے نوٹ کروانے لگی۔۔۔۔۔فون بند ھوچکا تھا اب نیند تو کیا خاک آنی تھی
محبت ایک طرف۔۔۔۔وہ بہت زیادہ نالاں تھی ثقلین کے غصے سے۔۔۔۔
اسکا کورس ختم ھونے میں کچھ ماہ باقی تھے اس کے بعد انگلینڈ سے پاکستان آتے ھی انکی شادی تھی کیونکہ وہ اب اپنی فیملی کو مناچکا تھا بس اس کے واپس آ جانے کی دیر تھی جب آدھی رات اسکی پرسکون ساکت زندگی میں ذراسی ہلچل ھوٸی تھی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اچھا اب بس بھی کریں کیا ھو گیا ھے؟مجھے تو اب یہ فیل ھونے لگا ھے زاویار بھاٸی جیسے میں نے ورلڈ وار تھری کو روکا ھے مسلسل شکریہ شکریہ کہہ کر شرمندہ کیے جا رھے ھیں مجھے یہ دونوں ھی
ریسٹورینٹ میں بیٹھ کر کھانا کھاتے ھوۓ کانفرنس کال جاری تھی دبٸی میں زاویار جبکہ پاکستان میں بیٹھی زنیرہ انگلینڈ میں موجود حسن اور ثقلین سے محوِگفتگو تھے
محبت ھے انکی۔۔۔تم دونوں غور سے سنو میری بات۔۔۔کوٸی بھی پرابلم ھو سب س پہلے انفارم کرنا ھے مجھے۔۔۔ٹھیک ھے ناں
وی آر لاٸیک آ فیملی اوکے۔۔۔؟
جی بھاٸی
موٶدب سا وہ بولا تو ان تینوں کے چہرے پر مسکان آٸی تھی سب جانتے تھے کہ حسن زاویار سے بے حد انسپاٸر ھے اور ان کے وٹے سٹے والے رشتے کے بعد تو مزید دلوں میں عزت و محبت میں اضافہ ھوا تھا

–**–**–
جاری ہے
——
آپکو یہ ناول کیسا لگا؟
کمنٹس میں اپنی رائے سے ضرور آگاہ کریں۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Subscribe For Latest Novels

Signup for Novels and get notified when we publish new Novel for free!




%d bloggers like this: