Mera Sham Slona Shah Piya Novel By Bella Subhan – Episode 18

0
میرا شام سلونا شاہ پیا از بیلا سبحان – قسط نمبر 18

–**–**–

دن پر لگا کر اڑتے گٸے ہفتے مہینوں میں بدلے تھے ثانیہ نے مشعل کو کوککنگ کلاسز سٹارٹ کرنے نہیں دی تھیں بلکہ خود اسکی انسٹرکٹر بنی تھی انواع و اقسام کے کھانے بناۓ جاتے پھر نگہت کو جج بنا کر ٹیسٹ کروایا جاتا اس دوران جہاں حسن اور ثانیہ کی محبت میں اضافہ ھوا تھا وہیں مشعل زاویار پر اعتبار کرنے لگی تھی۔۔۔۔۔کبھی کبھی اسے زنیرہ کیساتھ کیا گیا لاسٹ ڈنر زنیرہ کا سٹیٹس اور انکا یہ بات چھپانا اسے تنگ کرتا مگر وہ سر جھٹک کر ان فضول سوچوں سے پیچھاچھڑا لیتی
ابراہیم آفس میں بے حد مصروف رہتے تھے اور رات گٸے گھر لوٹتے تب تک ثانیہ نگہت کے پاس رکتی اور ادھرادھر کی باتیں کرتے گیارہ بج جاتےمگر نگہت کو اب پلز کے بغیر نیند ہی نہ آتی تھی تو ثانیہ سنجیدگی سے ڈاکٹر چینج کرنے کا سوچنے لگی تھی
مشعل کا بی ایس سی کا رزلٹ آٶٹ ہونے والا تھا اور اسے قوی امید تھی کہ ایک سبجیکٹ میں کمپارٹ پکی ھے متوقع ھونے والی بے عزتی کا سوچ کر ھی اسکا دل دہلے جا رھا تھا حالانکہ نگہت ثانیہ ایون ابراہیم نے بھی اسے تسلی دی تھی کہ ”تم جیتو یا ہارو سنو۔۔۔۔ ھمیں تم سے پیار ھے“مگر پھر بھی اسکی سٌوٸی اسی بات پر اٹکی تھی کہ دوبارہ وہ بکس کیسے کھولے گی جسے اس نے یوں منظر سے غاٸب کیا تھا گویا وہ کبھی اس کے پاس موجود ھی نہ تھیں جبکہ زاویار کا سامنا کرنا ایک الگ امتحان تھا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بلکل بھی نہیں۔۔۔۔یہ سرپراٸز ہی رہنے دو تم۔۔۔میں سب کے چہروں پر آٸی خوشی دیکھنا چاہتا ھوں
زاویار نے حسن کو سختی سے منع کیا کہ وہ پاکستان کسی کو بھی اس کے کل واپس جانے کا نہ بتاۓ
وہ مشعل کی آنکھوں میں حیرت اور خوشی کا امتزاج ایکساتھ دیکھنا چاہتے تھے
وہاں پہنچتے ھی سب سے پہلے انھوں نے وہ رِنگ جیولر سے لینا تھی جسے وہ جانے سے پہلے ھی بننے کو دے گٸے تھے اب سب سے پہلا کام ھی مشعل کو اپنے نام کرنا تھا
اپنی فرم کے ایک ایک ایمپلاٸی کومطمٸن کرنے کے بعد ھی وہ واپس لوٹ رہے تھے اور اب اسکی باگ ڈور پاکستان بیٹھے بھی اچھے سے سنبھال پاتے اتنا ان مہینوں میں گرتی ہوٸی کمپنی کو وہ اپنے پیروں پر کھڑا کر چکے تھے
ثقلین کورس مکمل ہونے کے بعد واپس جا چکا تھا یہ انھیں حسن سے ہی معلوم ہوا تو وہ ثقلین سے کال پر بات کرنے لگے آگے سے خوشخبری منتظر تھی کہ زنیرہ اور ثقلین کی منگنی کچھ دنوں تک ہونا طے پاٸی تھی مگر زاویار کو باربار کال کرنے پر بھی کال پک نہ ھونے کی وجہ سے وہ انفارم نہ کر سکے تھے اسوقت دونوں شاپنگ مال میں موجود تھے اور اپنی انگیجمینٹ رِنگ لینے ہی آۓ تھے
اپنے آنے کی بابت وہ انھیں بتانے لگے تو زنیرہ نے بےحد خوش ہو کر اسے مبارکباد دی
ارے ہاں تم نے رنگ بنوانے کو دی تھی ناں؟لے لی تھی؟
نہیں۔۔۔۔سب سے پہلا کام ہی یہ کرنا ہے کہ آتے ہی رنگ لینی ھے جیولر سے اور اس کے بعد گھر جانا ھے اب اسے بتا دینا ہے کہ گھر میں سب ہی جانتے ہیں
ناصرف جانتے ھیں بلکہ میں بات کر کے آیا تھا ھم دونوں کے رشتے کی جسے اپروول مل چکا ھے
خوشی سے کھنکتے لہجے میں وہ بولے تھے
تو پھر بس ٹھیک ھے ناں۔۔۔ثقلین ھم کل ہی آ جاٸیں گے اور وہیں سے اپنی انگیجمینٹ رنگ لیں گے جہاں سے زاویار نے بنواٸی ھے
ٹھیک ھے کوٸی مسٸلہ نہیں کل آ جاٸیں گے۔۔۔تمہاری فلاٸٹ کب کی ھے زاویار۔۔۔پہنچو گے کب پاکستان؟
وہ ان دونوں کو تفصیل سے آگاہ کرنے لگے۔۔۔۔۔یہ جانے بغیر کہ کل کی رات کیا قیامت لانے والی ھے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اچھا بس بھی کرو یار مشی کیا ھو گیا ھے۔۔۔۔ایک سبجیکٹ میں فیل ھو جانے سے کونسی قیامت آ گٸی ھے بھلا جو تم یوں آنسوٶں کی ندیاں بہا رہی ھو؟؟
بس کر دو اب۔۔اسکی سرخ روٸی ھوٸی ہلکی سوجی آنکھیں دیکھ کر ثانیہ کا جی گھبرایا
بیٹا جی۔۔۔۔۔۔زاویار سے کہوں گی میں کہ تم سے ناراض نہ ھو۔۔۔۔۔بس اب پریشان نہیں ہونا کچھ نہیں ھوا ھے جو اتنی پیاری آنکھوں کا بیڑہ غرق کر رہی ھو
نگہت نے اسے اپنے ساتھ لپٹاتے پچکارا
اچھا چلو۔۔۔۔۔۔۔باہر چلتے ہیں۔۔۔آٸسکریم کھاٸیں گےتمہارا موڈ بھی چینج ہو جاۓ گا ورنہ دیکھوابھی زاویار بھاٸی کو یا حسن کو کال کر دونگی میں۔۔۔وہ ھی نمٹیں گے تم سے ھماری تو اھمیت ھی نہیں ھے کوٸی۔۔۔۔ ھم سے کہاں پیار کرتی ھو تم۔۔۔
ثانیہ کی جذباتی بلیک میلنگ پر وہ بادل نخواستہ اٹھی تھی اور جانے کے لیے اپنے روم میں آ کر منہ دھویا کپڑے چینج کیے۔۔۔وہ یہ نہیں جانتی تھی کہ آج باہر جانا اسے کتنا مہنگا پڑنے والا ہے وہ آگے جا کرکتنا پچھتانے والی ھے
………..*……………..*……………*……………
اپنی سرزمین پر قدم رکھتے ھی دل میں ٹھنڈک کا احساس جاگزیں ھوا ساتھ ھی چھم سے اسکا نازک سراپا ذہن کے پردے پر لہرایا تو طمانیت سے مسکراتے ھوۓ وہ آگے بڑھے
موباٸل نکال کر اسے اٸیر پلین موڈ سے ہٹاتے ہی ثقلین کو کال ملاٸی کیونکہ زنیرہ اورثقلین نے ہی پک کرنے کے لیے آنا تھا
وہ دونوں ھی اسے گرم جوشی سے ملے اور گاڑی میں بیٹھ کر اپنے من پسند شاپنگ مال میں آۓ جہاں انھیں مشعل کے لیے بننے کو دی ھوٸی رنگ اٹھانی تھی
زنیرہ اور ثقلین نے اپنی انگیجمینٹ رنگ لینا تھی
وہ گردن کو داٸیں باٸیں موڑ کر اس کا دکھتا پن دور کرتے ھوۓ زنیرہ کی نان سٹاپ باتوں کا جواب بھی دے رہے تھے اور ساتھ ساتھ انھیں ثقلین پر بھی ترس آ رہا تھا کہ یہ بندی تو اسکا دماغ کھا جایا کرے گی وہ جیولر کی شاپ تک پہنچے اورزاویارنے اپنے آرڈر کی بابت پوچھا جو ان کے مطابق تیار تھا اور کچھ دیر تک سیلزمین انھیں ڈلیور کرنے والا تھا
تب تک زنیرہ اور ثقلین مختلف ڈیزاٸنز کی انگوٹھیوں میں سے اپنے لیے پسند کرنے لگے
ارے یار۔۔۔۔۔میرا والٹ گاڑی میں ہی رہ گیا ھے کارڈ بھی اس میں تھا۔۔۔
میں آتا ہوں ابھی
ثقلین یہ کہتا تیزی سے وہاں سے نکلا
نہیں یہ نہیں۔۔۔۔۔کوٸی نازک سی دکھاٸیں
زنیرہ سیلز مین کو ہدایات دیتی اور اپنی پسند سے آگاہ کر رہی تی تب ہی زاویارکومطلوبہ رِنگ تھماٸی گٸی
زیڈ اور ایم ایکساتھ بہت ہی سٹاٸلش انداز میں لکھا گیا تھا محبت سے اسے دیکھتے نگاہوں میں قندیلیں روشن ھوٸیں اور آنے والے لمحوں کی خوبصورتی کو انھوں نے محسوس کا
ان کے چہرے پر خوشی کا گہرا عکس دیکھتے ہوۓ زنیرہ نےاہنے صاف دل والے دوست کے خوشیوں کے داٸمی ہونے کی دعا کی
تب ہی زاویار نے رنگ نکال کر اسکی طرف بڑھاٸی جسے دیکھتے ہی اس نے واٶ کے انداز میں ہونٹ سکیڑے
انکا ہاتھ پکڑ کر انھی کے لیے بے تحاشا خوش ہوتے زنیرہ نے انھیں ڈھیروں دعاٸیں دیں
جب کے شیشے کی دیوار کے پار یہ منظر دو آنکھوں نے دیکھتے ہی اپنی دنیا اندھیر ھوتی محسوس کی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میرا کچھ بھی کھانے کا موڈ نہیں تھا تم مجھے ایسے ہی لے آٸی ہو باہر۔۔۔۔
منہ بسورتے وہ ثانیہ سے بولی تو محض گھورتے ھوۓ ثانیہ نے اسے بیٹھے کو کہا
آٸسکریم کھانے کے بعد ھم تھوڑی سی شاپنگ کریں گے
دیکھنا تمہارا موڈ بلکل سی۔۔۔۔۔۔۔۔؟؟؟؟؟
موڈ ٹھیک ہی ھے میرا۔۔۔۔بس دل گھبرا رہا ہے جیسے کچھ چھن جانے والا ہو۔۔عجیب سی بے کلی نے پورے وجود کو اپنے حصار میں لے رکھا ھے جیسے
بےدلی سے چمچ گھماتی وہ ادھرادھر دیکھ رہی تھی
بیٹا تم کیوں اتنا سٹریس لے رہی ھو کچھ بھی نہیں ہواھے۔۔ایک پیپر ھی رہ گیا ناں۔۔پھر دے دینا مگر ابھی جسٹ ریلیکس
ھمممممم۔۔۔۔۔کہتے اس نے آنے جانے والوں کویکھا جو ہنستے کھلکھلاتے چہرے لیے ہر قسم کی فکر س آزاد گھوم پھر رہے تھے ۔۔۔۔۔کچھ آٸسکریم کھا رہے تھے
حسن کے ثانیہ کے نمبر پر فون آنے کے بعد اس نے کچھ دیر بھاٸی سے باتیں کی وہ مسلسل اسے سمجھا رہا تھا جس پر زچ ہوتے اس نے فون نگہت کو تھمایا
حسن سے بات کرنے کے بعد وہ شاپنگ کرنے کو اٹھیں مگراسکا کوٸی موڈ نہ تھا تو انھیں ونڈو شاپنگ کا کہتے ھوۓ وہ چلتی گٸی
اور بیزاری سے گردوپیش پر نگاہ کی جب ایک چہرے پر اسکی نظریں ٹھہری تھیں
زر۔۔۔؟؟؟
اسکے ساتھ موجود شخصیت کو دیکھ کر ہفت اقلیم اسکی نگاہوں میں گھوم گٸے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پتھراٸی نظروں سے وہ سلگتا ھوا منظر دیکھتے ھوۓ اس نے لبوں پر ہاتھ رکھ کر اپنی سسکی کو دبایا۔۔۔۔ایک بار۔۔۔دو بار۔۔۔سہ بار دیکھنے پر بھی منظر نہ بدلا تو اسکی روح کرلاٸی تھی
بھاگتی ھوٸی وہ واپس اسی جگہ آٸی جہاں ثانیہ اور نگہت موسم چینج ھوجانے کی وجہ سے نٸے کپڑے خرید رہی تھیں
زرد رنگت اور کملایا ھوا چہرہ دیکھ کرنگہت بے اختیار اسکی طرف آٸیں جو ان سے دس قدم دور کھڑی گویا اپنی قسمت پر ماتم کر رھی تھی
گھر چلیں ممانی۔۔۔۔۔۔۔پلیز
گھٹی سی آواز میں وہ بولی تو نگہت نے اثبات میں سر ہلاتے ثانیہ کو چلنے کا اشارہ کیا جو پریشانی سے مشعل کو بکھری ھوٸی حالت میں دیکھ رھی تھی
گھر پہنچنے تک وہ پلکیں موندے بغیر کوٸی لفظ منہ سے نکالے بیٹھی رھی اور گاڑی سے اتر کر تیزی سے بھاگتی ھوٸی اپنے روم میں بند ھوگٸی
ثانیہ اور نگہت ہکا بکا اس کے رویے پر غور کرتی اندر آٸیں
ہوا کیا ھے اسے؟تمہیں تو معلوم ہی ھوگا
مجے نہیں پتا ماں ۔۔۔۔مگرمیں پوچھتی ھوں جا کر ابھی
ثانیہ نے نگہت کو جواب دے کر اس کے پاس جانے کا کہا تو وہ” ھوں“ کہنے کے بعد فریج سے ٹھنڈے پانی کی بوتل لیے اس کے پیچھے لپکیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بس کروگے تم دونوں یا میں جاٶں؟
زچ ھو کر زاویار نےان دونوں کو کہا تھا جنہیں کوٸی انگوٹھی پسند ھی نہیں آ رھی تھی
انھیں اپنی طرف گھورتے پا کر دونوں نے ہنسی ضبط کی۔۔جانتے تھے کہ اب انکا رکنا محال ہو رہا ھے وہ جلد از جلد گھر پہنچنا چاھتے تھے
ھاں بس۔۔۔۔دو منٹ۔۔۔ان دو رنگز میں سے ھی سلیکٹ کر لیتے ھیں ثقلین۔۔۔دیکھو یہ اچھی ھے ناں زاویار؟
دو رنگز ان کے آگے کرتے ھوۓ زنیرہ نے ایک پر فوکس کرتے ھوۓ کہا
منگنی تم دونوں کی ھے تو اپنی پسند کو فوقیت دو ۔۔۔۔میری نہیں۔۔۔۔رسانیت سے انھیں کہتے ھوۓ وہ موباٸل میں ٹاٸم دیکھنے لگے
انھیں پاکستان پہنچے تین گھنٹے ھو چکے تھے
مزید ایک گھنٹہ رنگ پسند کر کے کافی پینے کے بعد زنیرہ اورثقلین نے انھیں گھر سے باھر ھی ڈراپ کیا تھا اور پھر آنے کا وعدہ کرتے گیٹ سے ھی رخصت ھوۓ
آنے والے وقت کو سوچ کر ھی سرشار ھوتے وہ ڈور بیل بجانے لگے۔۔۔۔۔تصور میں محبت میں ڈوبی دو حیرت بھری نگاہیں آتے ہی دل گداز ھوا تھا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ٹھنڈےپانی کے چھینٹے منہ پر مار کر اس نے کسلمندی اور چہرے پر رونے سے چھاۓ حزن کو دور کرنے کی ناکام سعی کی
مسلسل باہر سے آتی آوازوں اور ہلچل کو محسوس کر کے پہلےغصے سے نتھنے پھولے اور اس کے بعد ایک بار پھر پلکیں بھیگنے لگیں
کیوں کیا زر۔۔۔۔۔۔؟؟مجھ بیوقوف کی محبت سے کھیلا اور اسکا مذاق بنایا آپ نے۔۔۔۔واش بیسن پر جھکی وہ پھوٹ پھوٹ کر رودی
ثانیہ اور نگہت کو اس نے طبیعت کی خرابی کا کہہ کر سونے کابہانہ بناتے روم سے بھیج دیا تھا مگر سچ تو یہ تھا کہ اب شاٸد ھی کبھی وہ چین کی نیند سو پاتی
زاویار کے ہنسنے کی آواز اور ثانیہ کےمسلسل چہکنے پر وہ گہراسانس لیکر آٸینے میں خود کو دیکھتی ھوٸی چہرہ صاف کرنے لگی
جاتے ھوۓ مجھے کہہ کر گٸے تھے نا۔۔۔کہ میرے لیے سرپراٸز ھے جب آپ لوٹیں گے
یہ سرپراٸزنہیں ھےزر۔۔۔۔یہ موت کا پروانہ ھے میرے لیے۔۔۔۔
زندگی۔۔۔آپ کے بغیر۔۔۔۔تصور ہی محال ھے
پلکوں کو جھپکتے ھوۓ وہ بڑبڑا رہی تھی اس وقت اس کی ذہنی ابتری کا اندازہ اس بات سے لگایا جاسکتا تھا کہ اس نے تیسری بار چہرہ دھویا تھا
ہر بار کچھ دیر رونے کے بعد پھر سے منہ دھوتی اور پھر وہ ھی گِریہ شروع
دوپٹے سے چہرہ رگڑتی واشروم سے باہر آٸی بالوں کو بناۓ بغیر ھی ملگجے کپڑوں میں اس جگہ کی اور بڑھی جہاں سب بیٹھے تھے
مرے مرے قدم اٹھاتے وہ جب ٹی وی لاٶنج میں پہنچی تو زاویار اسے دیکھ کر بے اختیار اپنی جگہ سے اٹھے تھے
اس تک آتے تحیرزدہ سے کچھ پل اسے دیکھے گٸے جبکہ وہ بے نیازی سے کھڑی اپنے چہرے پر ان کی نظریں محسوس کرتے اس کے دل کی دنیا زیر زبر ھونے لگی
یہ کیا ھوا ھے تمہیں؟اتنی زرد کیوں ھو رھی ھو؟
ماں۔۔۔۔؟؟اسکی طبیعت تو ٹھیک ھے ناں؟
اس سے پوچھتے پوچھتے انھوں نے نگہت کی طرف مڑ کر پوچھا تھا
ہاں وہ بس۔۔۔۔۔اسکا رزلٹ آیا ھے آج تو۔۔۔۔۔دیکھو زاویار اسے ڈانٹنا مت وہ پہلے ھی بہت روتی رہی ھے
ایک کمپارٹ آٸی ھے اسکی اور تم اس سےناراض ھو جاٶ گے یہی سوچ سوچ کر طبیعت بھی خراب کروالی اور خوب روٸی بھی ھے
نگہت نے انھیں سمجھاتے سمجھاتے نیوز دی جبکہ وہ ایک بار پھر ادھر ادھردیکھتی آنسوٶں کو باہر نکلنے سے روک رہی تھی
تم پاگل ہو کیا؟چپ کرو۔۔ کوٸی بات نہیں۔۔۔۔ کمپارٹ آگٸیتو۔۔۔اسکا مطلب یہ تو نہیں کہ رونے لگو
میں کس مرض کی دوا ہوں آخر؟؟اب کی بار اچھے سے تیاری کرواٶنگا
تم نے خود کہا تھا کہ تمھاری پیپر کی تیاری اچھی ھے
اچھا چپ۔۔۔۔۔۔اس کے قریب آ کر گال تھپکتے ھوۓوہ بولے توہلکا سا سر ہلا کر دوبارہ واپس اپنے کمرے میں پناہ لی
اسے تسلی دینی تھی تم نے۔۔۔۔
صبح سے سمجھا رہی ہوں آپ ہی آزماٸیں اپنے ہنر اب
زاویار نے ثانیہ سے کہا تو وہ بےبسی سے کہنے گی
میرے خیال میں وہ اداس ہوگٸی تھی آپ کے بغیر۔۔اسی لیے فی الحال زیادہ دکھی دکھی لگ رہی ھےبھاٸی
اس نے شرارت سے بھاٸی کو چھیڑا تو وہ اسے گھورتے گھورتے بھی ہنس دٸیے
اس بار واقعی وہ اک لمبا عرصہ اس سے دور رہے تھے مگر آج وہ اس کے تمام شکوے شکایات دور کرنے والے تھے
مسٸلہ یہ تھا کہ انھیں وہ وقت میسر آنا مشکل تھا جب وہ اکیلے اس سے اپنے دل کی بات کر سکتے اسے پروپوز کر سکتے
ابراہیم کے آ جانے پر بھی وہ کھانا کھانے نہ آٸی تو ثانیہ جو اسے بلانے جا رہی ھی
اسے روک کر زاویار اس سے بات کرنے کو بڑھے تھے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مسلسل ایک ہی زاویے میں بیٹھے بیٹھے اسے کافی دیر ہوچکی تھی بھوک نام کو نہ تھی تو وہ وضو کر کے عشاہ کی نماز پڑھنے کو جاۓ نماز اٹھاۓ جیسے ہی پلٹی تو زاویار کو دروازے میں کھڑا دیکھتےپایا
مضبوط قدم اٹھاتے وہ اس کے سامنے آکھڑے ہوۓ مشعل کی گرفت جاۓنماز پر سخت ہوٸی
ناراض ہو مجھ سے؟
”نہیں“
یہاں روم میں کیوں بیٹھی ھو کافی دیر سے۔۔۔باہر آٶ کھانا کھاٶ سب کے ساتھ
”بھوک نہیں ہے مجھے“
کیا ہوگیا ھے تمہیں۔۔؟
کچھ نہیں۔۔۔۔بس نیند سے جاگ گٸی ہوں
اس کے عجیب سے جواب پر وہ الجھن بھری نظروں سے اسے دیکھے گٸے جبکہ وہ ہنوز فرش کو تکے جا رہی تھی
اچھا میری طرف تو دیکھو۔۔۔۔
یہ کہتے وہ دوقدم آگے آۓ تو وہ سرد نگاھوں سے ان کے قدموں کی یہ جرات دیکھتے دو قدم پچھے ہوٸی
اب آ گیا ہوں ناں تو کیوں ناراض ہو اب تک یار؟؟
یار نہیں ہوں میں آپ کی۔۔۔۔جو ہوں مجھے وہی رہنے دیں
اس کے پیچھے ھونے پر وہ شکوہ کرنے لگے تو وہ سلگتے لہجے میں چٹخی تھی
ایک عرصہ بعد شکل دکھاٶ اور آتے ہی مجھ پر زندگی تنگ۔۔۔۔۔۔۔آنسوٶں نے بات پوری نہ ھونے دی تھی اور وہ اس کی آدھی ادھوری بات سے مطلب اخذ کرتے مسکراۓ
آٸم سوری مِشو۔۔۔۔۔سارے شکوے دور کردونگا اب۔۔۔تم یہ ظلم مت کیا کرو ان پر۔۔۔اسکے گالوں پر بہتے آنسوٶں کو انھوں نے پونچھتے ھوۓ کہا تو وہ انھیں تاسف سے دیکھنے لگی
”کاش یہ سچ ھوتا“دل ہی دل میں کہتی وہ رخ موڑے دوپٹے کے پلو سے چہرہ خشک کرنے لگی
نماز پڑھنی ھے مجھے۔۔۔اور اس کے بعد سوٶنگی بہت نیند آ رہی ھے
مگر مجھے تو تم سے بہت ضروری بات کرنی تھی۔۔۔۔بے حد ضروری
انکے کہنے پر دل دکھ سے بھرا۔۔۔وہ یقیناً اسے اپنے اور زنیرہ کے بارے میں بتانے والے تھے
کل سہی۔۔۔۔
ضبط کرتے کہتے ھوۓ وہ جاۓ نماز بچھا کر نیت باندھ گٸی تو وہ اسے نماز پڑھتے دیکھ کر طمانیت سے مسکراتے روم سے نکل گٸے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کمرے میں عجیب سوگواریت ٹپک رھی تھی سوگواریت بھی ایسی کہ کھڑکی سے آتی چاند کی چھن چھن کرتی دودھیا روشنی بھی اسکی شدت کو کم نہ کر پا رھی تھی بہت الجھن بھرا سا بھید ھے یہ کہ جس کو پا نہیں سکتے نہ جس کے ھو سکتےھیں بس اسی شخص کی کمی دل کی زمیں کو یوں ویران کر دیتی ھے کہ پھر نہ یہ دنیا اچھی لگتی ھے نہ دنیا میں رہنے والے دل کو بھاتے ھیں
نگاہ ایک ھی نکتے پر مرکوز کٸے بیتے دنوں کی فلم گویا اسکے سامنے ھی چلنے لگی تو جہاں لب مسکراۓ وہیں آنکھ سے ایک آنسو نکل کر کنپٹی کی اور بہہ گیا تھا کیوں ایسا ھوتا ھے کہ درد کی مدت طویل ترین ھو جاتی ھے۔۔۔۔؟
کیوں لمحے صدیوں کی طرح لگنے لگتے ھیں کہ جن کو چاھنے کے باوجود بھی پاٹ نہیں سکتے۔۔۔۔؟؟ فاصلے دلوں کی مرگ کا باعث ھوتے ھیں کچھ لوگ جواں عمری میں ھی مر جاتے ھیں مگر ھاں۔۔۔ دفناۓ کٸی سالوں بعد جاتے ھیں
خواہش۔۔۔حسرت ۔۔۔۔۔ارمان۔۔۔تمنا۔۔۔۔۔گہرے روگ۔۔۔۔۔موت۔۔۔۔۔ سکوت ۔۔۔۔۔اختتام
ایک بار پھر اس نے زنیرہ کا فیس بک سٹیٹس دیکھا جس میں اس نے ایک رِنگ کی پِک اپلوڈ کی تھی ساتھ ہی کیپشن میں ”فاٸنلی ڈریم کم ٹرو“لکھا تھا
اسکا دل خون کےآنسو رونے لگا ایک بار ثانیہ کو حسرت سے گلے لگانے کا جی چاہا مگر پھر
ہاتھ میں پکڑی چیز کو دیکھ کر گہراسانس لیا اور ایک انتہاٸی فیصلے پر عمل درآمد کرنے کے بعد روم سے نکلی
کسی کی آنکھ سے موتی۔۔۔
کہیں عرشوں پہ جا ٹپکا۔۔۔
بہت مہنگا سا ہوگا پھر۔۔۔
اسے کیسے چکاٶ گے۔۔۔؟
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
حسن سے کچھ دیر بات کرنے بعد وہ کچھ دیر نگہت اور ابراھیم کیساتھ بیٹھے باتیں کرتے رہے پھر روم میں آ کرنہانے کے بعد ہلکے آسمانی رنگ کی آرام دہ شلوار قمیض پہنی۔۔۔واشروم سے آ کر ونڈو کو بند کیا کیونکہ بارش شروع ھوچکی تھی موسم صبح سے ہی ابرآلود تھا پھر موباٸل کو چیک کرتے بیڈ پر بیٹھے
کف فولڈ کرنے کے بعد تکیے کو کراٶن کیساتھ لگا کر بیٹھتے ہی ساٸیڈ ٹیبل سے مشعل کے لیے خریدی رِنگ نکالی اور بغور اسے دیکھنے لگے
میں جانتا ہوں جب تمہیں یہ دونگا تو تمہارے سارے شکوے دور ہوجاٸیں گے۔۔۔۔آج تو شعلہ بنی ہوٸی تھی میری زندگی۔۔۔۔خود سے کہتے وہ مسکراۓ تب ہی بغیر دستک دٸیے وہ اندر داخل ہوٸی
اسکا رات ک اس پہر آنا اتنا حیران کن نہیں تھا جتنا اسکے تاثرات اور بکھرا پن دیکھ کر وہ کنگ ہوۓ تھے
مشعل۔۔۔۔مِشو کیا ھوا ھے؟سب ٹھیک ھے ناں؟
پریشانی سے اسے دیکھتے وہ پوچھنے لگے مگر وہ نوحہ کناں آنکھوں سے جوگن بنی انھیں دیکھے گٸی اور یوں ہی کچھ پل بیتے تو بے طرح دل کے گھبرانے پر زاویار نے اسے کندھوں سے پکڑ کر جھٹکا دیا
ہوش میں آٶ۔۔۔۔۔
ان کے لمس نے اس کے اندر آگ بھڑکاٸی تھی
روتے ھوۓ انھیں کھینچتے وہ ڈریسنگ مرر تک لاٸی
دیکھیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔دیکھیں اس شخص کو۔۔۔یہ ھے جس کو شدت سے چاھا تھا میں نے۔۔۔۔جھٹکے سے انکا رخ آٸینے کی طرف کرتے وہ بولی جبکہ زاویار اس کے اس سلگتے اظہار پر دنگ ھوۓتھے
میں۔۔۔۔آپ کے بغیر۔۔۔۔جینے کی پہلی کوشش میں ماری جاٶنگی زر۔۔۔۔ہچکیوں کے بیچ بے تحاشا روتے ھوۓ اس نے ان کے کندھے پہ سر ٹکاتے ھوۓ کہا تو وہ ہوش میں آۓ تھے
میں چاھتی ھوں کہ اپنے مرنے کا دکھ میں آپ کی آنکھوں میں دیکھوں اور میرا جانا آپ زندگی بھر نہ بھول سکیں
ان کے کندھے سے لگی وہ سسکتی ھوٸی بولی تو جھٹکے سے زاویار نے اسے اپنے سامنے کیا تھا
کیا بکواس کیے جا رھی ھو؟؟ھوا کیاھے کچھ بتاٶ گی بھی؟؟
ان کی غصے سے سرخ پڑتی آنکھوں کو دیکھ کر وہ ٹوٹے کانچ کے جیسے ہنسی تو زاویار نے بے بسی اور غصے کے ملے جلے جذبات سے اسکا چہرہ دونوں ہاتھوں میں تھاما
کیوں جان نکال رہی ہو میری جان۔۔۔۔۔۔کیا ہوا ھے؟
مجھے دھوکہ دیا۔۔۔۔زنیرہ کیساتھ آپ۔۔۔۔پہلے ڈنر۔۔۔سٹیٹس۔۔۔اور آج مال میں میں نے دیکھا خود۔۔۔۔۔۔بے ربط سی باتیں کرتی اپنی بات انھیں سمجھا رہی تھی
اور وہ جان گٸے کہ یہ لڑکی پھر انھیں اسی موڑ پر لے آٸی ھے جہاں سے یقین کی بنیاد رکھی تھی وہ سمجھے تھے کہ عمارت پختہ ھے مگر اب انھوں نے جانا کہ اس عمارت کی بنیادیں ہی کھوکھلی تھیں اور عمارت بس مسمار ھونے کو تھی
میں نے کہا تھا ناں کہ یقین رکھنا۔۔۔
دکھ سے وہ بولے
لگن کی آگ لگا کر تماشا دیکھتے ھیں “زر“۔۔۔۔۔ڈر نہں لگتا؟؟
جب میں چلی جاٶنگی ناں تو اپنا صدقہ ضرور دیا کجیۓ گا اب تو میری دعاٸیں اور دٸیے گٸے صدقات نے بلاٸیں ٹال رکھی تھیں
ان کے چہرے کو ہولے سے چھوتے وہ بولی تو انھوں نے اسکا ہاتھ جھٹکا
جانے کی بات کیوں کیے جا رہی ھو۔۔۔جا کہاں رھی ھو تم؟ اور میں کوٸی صفاٸی نہیں دونگا تمہیں مشعل۔۔۔۔۔تم سمجھو خود کو۔۔۔ کہ بس تم ہی عقلِ کٌل ہو
پہتیرا سمجھا چکا ھوں کہ مجھ سے ڈسکس کیا کرو اگر جو بات میرے متعلق ھے ۔۔۔مگر نہیں۔۔۔ تمہیں تو بس فوراً نتیجہ اخذ کر کے مہر لگا دینی ھوتی ھے
آپ کی اور زنیرہ کی بیٹی جب کبھی پوچھے گی محبت کس کو کہتے ھیں تو میں یاد آٶنگی ناں زر۔۔۔؟ہاں۔۔تب تو یاد کریں گے ناں مجھے؟
کیا کر کے آٸی ھو تم خود کو؟اسے سختی سے پکڑ کر وہ دھاڑے تھے
تو جیت کے بھی رو پڑے گا
ھم تجھ سے اسطرح سے ہاریں گے
زیاد کچھ نہیں بس۔۔۔۔۔۔۔۔بمشکل آنکھیں کھولتے ھوۓ وہ بولی
کندھوں سے انکے ہاتھ ہٹاتے لڑکھڑاٸی اور مڑ کر انھیں پانی بھری آنکھوں سے دیکھا
سلی۔۔۔۔پنگ پلز۔۔۔۔۔۔۔لے۔۔لی
کہتے ہی و زمیں بوس ھوٸی جب وہ ایک ہی جست میں اسے تھام گٸے
یہ کیا کر دیا ھے تم نے۔۔۔جبڑے بھینچتے وہ غصے کی انتہاٶں کو چھو گٸے
تمہیں جینا ہوگا مشعل جہانگیر۔۔۔جینا ہوگا تمہیں۔۔۔۔کیونکہ میں خود تمہیں اہنے ہاتھوں سے مارونگا جو تم نے میرے ساتھ کیا ھے یہ قابلِ معافی نہیں
اسے سینے سے لگاۓ نم لہجے میں کہتے وہ بے دم ھوۓ تھے
بول نہ کچھ بے چین پیا
برس پڑیں گے نین پیا
ساون رت میں کون سنے
تیرے میرے بین پیا۔

–**–**–
جاری ہے
——
آپکو یہ ناول کیسا لگا؟
کمنٹس میں اپنی رائے سے ضرور آگاہ کریں۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Subscribe For Latest Novels

Signup for Novels and get notified when we publish new Novel for free!




%d bloggers like this: