Mera Sham Slona Shah Piya Novel By Bella Subhan – Episode 19

0
میرا شام سلونا شاہ پیا از بیلا سبحان – قسط نمبر 19

–**–**–

ہاسپٹل کے چمکتے بے داغ فرش پر نگاہیں جماۓ وہ مشعل کی اس درجہ بیوقوفی اور شدت پسندی کو سوچے جا رہے تھے
نگہت تسبیح کر رہی تھیں جبکہ ثانیہ مسلسل پریشانی میں اپنے ناخن کتررہی تھی
ابراہیم نے نگہت کے کندھے پر ہاتھ رکھ کر انھیں تسلی دی۔۔۔۔جو کہ اب تسبیح کرنے کے ساتھ ساتھ رو بھی رہی تھیں
مھے نہیں معلوم تھا ابراہیم کہ مشعل نے اتنا سٹریس لے لیا تھا اپنے ایک سبجیکٹ میں فیل ھونے کا۔۔۔اب تو زاویار نے بھی نہیں ڈانٹا اسے۔۔۔ پھر بھی دیکھیں کیا کیا ھے اس نے ھمارے ساتھ
بات کرتے کرتے وہ پھپھک کے رودیں
زاویار نے سختی سے اپنی آنکھیں میچیں اگر جو سب کو اصل وجہ پتا چلے تو جانے کیا تماشا ہو
انھیں ابھی تک یقین نہیں آ رہا تھا مشعل اس قدر جذباتیت کامظاہرہ کر چکی ھے۔۔۔۔ہراٸیویٹ ہاسپٹل میں کس مشکل سے ڈاکٹر نے بغیر پولیس کو انوالو کیےٹریٹمینٹ سٹارٹ کیا تھا یہ ایک الگ کہانی تھی اب وہ بس اسکے ٹھیک ھو جانے کے لیے دعاگو تھے
مگر ساتھ ہی ساتھ وہ یہ بھی طے کرچکے تھے کہ اب کوٸی تماشا نہیں ہوگا۔۔۔نہ وہ اپنی ذات اور کردار کی گواہی پیش کریں گے نہ اسے مزید کوٸی الزام لگانے دیں گے۔۔۔۔سب سے بہتر حل انھیں منظر سے غاٸب ھو جانے میں نظر آ رہا تھا
اور ان کی محبت اب اتنی بھی ارزاں نہیں تھی کہ وہ اس کی صفاٸیاں دیتے پھریں۔۔مقابل چاھے مشعل ھی کیوں نہ ھو۔۔انکو اب اپنی ذات اور کردار پر کوٸی حملہ برداشت سے باہر تھا
جن سے محبت ہو۔۔ان پر اعتبار تو پہلی شرط ھوا کرتی ھے اور اگر کسی رشتے میں اعتبار ہی نہ ھو تو باقی سب کچھ ثانوی رہ جاتا ھے پھر چاھے وہ محبت ھی کیوں نہ ہو۔۔۔مانا کہ محبوب کی ہر خامی کو سر آنکھوں پر رکھا جاتا ھے مگر وہ اب اتنے بھی چغد نہ تھے کہ مشعل کی اس جان لیوا حرکت کو نظر انداز کرتے
میں محبت کی بوند کے بدلے دریا بہانے والوں میں سے تھا مشعل۔۔۔۔مگر تم نے مجھے صحرا میں بدل دیا ھے۔۔۔ بنجر کر دیا ھے۔۔۔مجھے تم سے محبت نہیں ھے یہی کہہ کر اب اپنی ھی دل آزاری کیا کرونگا
یہ طے ھے کہ اب تمہارے سامنے نہیں آٶنگا
چلو اچھا کیا تم نے
ہمیں
خوابوں کی دنیا سے
ہمیشہ دور ہی رکھا
سنا ھے!
خواب کے تعبیر میں تحلیل ھونے سے ذرا پہلے
اک ایسامرحلہ ھے
جس میں آنکھیں کھول لی جاٸیں
تو بیناٸی نہیں رہتی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بروقت ٹریٹمینٹ پر مشعل کی زندگی بچالی گٸی تھی مگر اسے کچھ گھنٹوں کے لیے انڈر آبزرویشن رکھا گیا تھا
اسکی بے ہوشی میں ہی زاویار نے اپنے دبٸی میں مستقل قیام کے اسباب پیدا کیے تاکہ ابراہیم کو بھی ان پر شک نہ ھو کہ وہ جان بوجھ کر گٸے ھیں
ابراھیم کو ساری صوتحال بتانے کے بعد وہ نگہت اور ثانیہ سے ملے تو وہ حیرت اوردکھ سے انھیں دیکھنے لگیں
مشعل کی حالت کے باوجود جاٶ گے تم زاویار؟تم جانتے بھی ھو اسے یہ بات کتنا دکھ دے گی
ہونہہ۔۔۔۔۔۔وہ شکرانے کے نوافل ادا کرے گی کہ دور ھوگیا میں اس سے
وہ دل ھی دل میں خود سے مخاطب تھے
بھاٸی کچھ دن بعد چلے جاتے یا کم ازکم اسکو ہوش میں تو آنے دیں۔۔۔؟؟
ثانیہ نے لجاجت سے کہا تو وہ بے بسی سے لب بھینچ گٸے
جانا ازحد ضروری ھے بچے۔۔۔۔اسے میںں سمجھا دونگا بس تم ماں اور بابا کا خیال رکھنا۔۔۔۔۔۔۔۔اور اس بیوقوف کا بھی
نہ چاھتے ھوۓ بھی وہ دل کے ہاتھوں مجبور ھوتے ثانیہ سے کہنے لگے تو وہ اثبات میں سر ہلاتی ان کے گلے لگی
حسن کو بھی انفارم کرنا تھا بھاٸی۔۔۔۔وہ تو فوراً واپس آنے کی کرے گا
آپ دونوں نے اسے یقین دلانا ھے کہ مشعل بلکل ٹھیک ھے اب۔۔۔اسے پریشان نہیں ھونے دینا۔۔۔سکون سے پڑھ لے وہ۔۔۔پھر یہیں رہنا ھے آ کر
ان سب سے ہاسپٹل میں ھی مل کر انھوں نے ڈاکٹر سے مشعل کی کنڈیشن کے بارے میں تفصیلی بات چیت کی اور اس سے ملنے کا کہا
اجازت ملنے پر وہ روم ڈور دھکیلتے اندر داخل ھوۓ تو نگہت نے انھیں اس قدر شکستہ قدموں سے کمرے میں جاتے دیکھ کر اللہ سے ان دونوں کو ہمیشہ خوش رہنے اور خوشیاں داٸمی رہنے کی دعا دی تھی
ثانیہ اور ابراہیم کچھ دیر کے لیے گھر گٸے تھے وہ گہرا سانس لیتیں دوبارہ تسبیح کے دانے گھمانے لگیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مرجھایا ھوا چہرہ۔۔۔پیپڑی زدہ ہونٹ اور زرد سی رنگت۔۔۔۔اسے دیکھ کر انکا غصہ کہیں دور جا سویا
وہ جانے سے پہلے کچھ وقت اس کے ساتھ ہی گزارنا چاھتے تھے مگر اسکے علم میں لاۓ بغیر
سٹول گھسیٹ کر اس کے بیڈ کے ساتھ لگاۓ بیٹھتے بغور وہ چہرہ وہ نقوش حفظ کرنے لگے جو اس کی رگ رگ میں سکون کی وجہ ھوا کرتا تھا
لیکن انجانے میں ھی سہی وہ لڑکی انکو ایسا دکھ دے گٸی تھی کہ اس کی بھرپاٸی فی الوقت ناممکن تھی
میرے سکون کا تعلق تم سے تھا تو یہ کیسے ممکن تھا کہ تم مجھے سکون سے رہنے دیتیں
کاش تم نے مجھے اک بار بتا دیا ھوتا۔۔۔کاش تم میں اتنی جلد بازی اور بغیر سوچے سمجھے کچھ بھی اخذ کرنے کی عادت نہ ھوتی تو تم دیکھتی مشعل۔۔۔۔میں چاہت کے وہ رنگ اور الفت کی وہ رمز تمہیں سمجھاتا کہ دنیا جہاں سے بے خبر اس دنیا کی آبادی میں فقط ایک شخص تمہیں عزیز رہتا
کیا کر گٸی ھو ھمارے ساتھ یار۔۔۔۔؟؟
اسکے چہرے کی طرف جھکتے وہ گھٹے لہجے میں اس کی شکایت اسی سے کرنے لگے
نم پلکوں سے اسے دیکھتے انھوں نے اسکی پیشانی کو اپنے لبوں سے چھوا
کبھی تو احساس ھوگا مِشو۔۔۔۔ کہ تم نے کیا گنوا دیا ھے۔۔تم نے مجھے مار دیا ھے۔۔۔گلاب کی تمنا کرتے کرتے تم اپنے لیے کیکر سمیٹ بیٹھی ھو
اسے ہاتھ کی نرمی کو کچھ دیر اپنے ہاتھوں کی انگلیوں پر محسوس کرتے رھے اور پھر دل ہر ہزار پتھر رکھتےجھٹکے سے وہاں سے نکلتے چلے
گٸے
آتشِ عشق جب بھڑک اٹھے گی
تمہاری خاک پکارے گی۔۔۔۔بچاٶ مجھے
………………………………
انکی فلاٸٹ اناٶنس کی جارہی تھی۔۔۔۔ان کا جی چاھا مت جاٸیں۔۔۔ رک جاٸیں۔۔۔کم ازکم وہ نگاھوں کے سامنے تو رہے گی۔۔۔اسے دیکھ پاٸیں گے۔۔۔سن پاٸیں گے
مگر پھر اسکی بدگمانیاں اور بے اعتباری یاد آتے ہی بیگ پر گرفت مضبوط ھوٸی
کچھ لمس ایسے ھوتے ھیں مشعل۔۔۔۔ جن کی چاہ ھمیں اکثر بے چین رکھتی ھے۔۔۔۔تم نے خود کو تکلیف نہیں پہنچاٸی تم نے مجھ پر کاری وار کیا ھے۔۔۔۔ کہ تمہارے لمس کی چاہ۔۔۔۔۔۔اسکی خواہش کی بھی آس ٹوٹنے لگی ھے
جب سب کچھ ٹھیک ھونے والا تھا۔۔تم نےاپنے ہی ہاتھوں سے بگاڑ دیا
مانا کہ میری غلطیاں تھیں تو تمہیں مجھ سے کلیٸر کرنا چاھیے تھا
مں مکر جاتا تو تم کہتیں کہ دھوکے باز ھوں میں
مگر تم نے تو مجھے میری ھی نظروں میں گرا دیا ھے
اس قدر جذباتیت اور شدت۔۔۔۔بس اسی لیے جا رہا ھوں کہ اب تمہیں اپنی غلطی کو مان کر جینا آۓ۔۔ برداشت کرنا آۓ
تمہیں گلابوں سے نسبت تھی اور شاٸد میں خار کی مانند تھا تب ہی ھمارا میل ممکن نہ ھو پایا
گہرا متاسف سانس بھرتے وہ جانے کے لیے اٹھے تھے
کچھ اسیر لوگوں کی
ہاتھ کی لکیروں میں
قسمتیں نہیں ھوتیں
عمر قید ھوتی ھے
جگ ہنساٸی ھوتی ھے
کے بس جداٸی ہوتی ھے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اس نے پانی کا گلاس پی کر خالی کرتے ھوۓ نگہت کو تھمایا تو وہ چپ چاپ بیٹھ گٸیں
آپ مجھ سے ناراض ھیں ناں؟؟
نظریں نیچی کیے وہ شرمندگی سے بولی تو نگہت نے ڈبڈباٸی آنکھوں سے اسے دیکھا جو رونا ضبط کرتی ہلکان ھو رہی تھی
میں ایک بات جان گٸی ھوں مشعل۔۔۔۔۔۔۔۔
اس نے سوالیہ انداز میں انھیں دیکھا
میں اور ابراہیم ہزار تمہیں پیار کرتے ھوں لاکھ تہیں اپنی بیٹی مانیں۔۔۔مگر۔۔۔۔۔تم نے ہمیں اپنے والدین کا درجہ نہیں دیا
اگر تمہارے اپنے ماں باپ زندہ ھوتے تو کبھی بھی ایسی حرکت نہ کرتی تم
ھے ناں؟؟؟
ان کے دکھ اور تکلیف کی پرواہ ھوتی تمہیں مگر ھم وہ جگہ نہیں لے پاۓ ناں۔۔۔؟
نفی میں سر ہلاتی وہ ان کا ہاتھ پکڑ کر لبوں سے لگا گٸی
ایسا نہیں ھے جیسا آپ سمجھ رہی ھیں ممانی۔۔۔آپ دونوں میرے ماں باپ ک جگہ نہیں ھیں کیونکہ آپ میری ماں باپ ھی ھیں
سسکتے ھوۓ وہ انھیں اس غلط فہمی سے نکالنے لگی
ایک پیپر میں فیل ھو جانا۔۔۔ھماری محبت سے کہیں زیادہ اھم تھا ناں مشی۔۔۔یہ کتنا غلط کیا ھے تم نے۔۔ثانیہ نے بھی شکوہ کیا تو وہ گھٹنوں میں سر دے کر اپنے گرد بازو لپیٹے رونے لگی
یہاں بھی آپ نے خود کو بچا لیا زاویار۔۔۔۔دل میں وہ ان سے مزید بدگمان ھوٸی
آٸم سوری پلیز۔۔۔۔۔۔بس جانے کیا ھوگیا تھا مجھے۔۔۔۔۔جانے کونسے۔۔۔۔احساس کےزیرِاثر ایسا کر گٸ
پانی کا گلاس لبوں کو لگا کر پانی پینے کے بعد وہ بولی جو اسے ثانیہ نے پکڑایا تھا
زاویار بھاٸی بہت پریشان۔۔۔
ماموں کہاں ھیں؟؟
اسکی بات کاٹ کر سرد لہجے میں کہتی وہ اسے حیران کر گٸی
وہ بس آفس کا چکر لگانے گٸے ھیں۔۔۔آتے ھی ہونگے
حسن بھی تین بار کال کر کے تمہارا پوچھ چکا ھے۔۔۔تم اسکی بات کروا دو اس کے ساتھ ثانیہ
میرا بچہ ادھر اتنا پریشان بیٹھا ہوگا
نگہت نے ثانیہ سے کہا تووہ موباٸل پر حسن کو کال ملانےلگی
جبکہ مشعل زاویار کا ذکر تک نہ سننے کی خواہش کے باوجود آس بھری نم نگاھوں سے دروازے کو تک رہی تھی
مشعل یہ نہ جانتی تھی کہ اسکی حرکت کے عوض وہ کونسا غم خرید بیٹھی ھے۔۔۔انھیں خود سے دور کر بیٹھی ھے
لگتا ھے ابھی دل نے تعلق نہیں توڑا
یہ آنکھیں تیرے نام پہ بھر آتی ھیں ابھی بھی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کافی شاپ پر بیٹھے کافی کامگ ہاتھ میں لیے مسلسل انکا دل بوجھل اور اسی کیساتھ محوِ گفتگو تھا جسے وہ اپنی دانست میں پیچھے چھوڑ آۓ تھے
مگر بعض اوقات ھم کسی کو بھول جانے کی کوشش میں اسی ایک شخص کو زیادہ یاد کرتے جاتے ھیں کہ پھر وہ ھی شخص اس طرح روح میں تحلیل ھو جاتا ھے کہ بس بے بسی ھی رہ جاتی ھے
سر کو جھٹک کر گلاس وال سے پرے روشنیوں پر اپنی نگاھیں گاڑے وہ گرم گرم کافی کو حلق میں اتارتے اپنے اندر پلتے زہر اور دکھ کو کم کرنے کی ناکام سعی کرنے لگے
”تمہیں اپنی زندگی سے ماٸنس کروں تو جینے کا ساٸن بھی مٹنے لگتا ھے مشعل“
آنکھیں میچتے وہ ایک بار پھر اسی سے مخاطب
تھے
محبت خود بتاتی ھے
کہاں کس کا ٹھکانہ ھے
کسےآنکھوں میں رکھنا ھے
کسے دل میں بسانا ھے
رِہا کرنا ھے کس کو اور
کسے زنجیر کرنا ھے
مٹانا ھے کسے دل سے
کسے تحریر کرنا ھے
گھروندہ کب گرانا ھے
کہاں تعمیر کرنا ھے
اسےمعلوم ھوتا ھے
سفر دشوارکتنا ھے
کسی کی چشمِ گِریہ میں
چھپا اقرار کتنا ھے
شجر جو گرنے والا ھے
وہ سایہ دار کتنا ھے
سفر کی ہر صعوبت اور
تمازت یاد رکھتی ھے
جسے سارے بھلا ڈالیں
محبت یاد رکھتی ھے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
معاف کردیں پلیز بھاٸی۔۔۔۔۔۔
وہ مسلسل دس منٹوں سے حسن کی ڈانٹ سننے کے بعد اسے منا رہی تھی
آٸندہ ایسا کچھ بھی کیا ناں تو بہت بری طرح پیش آٶنگا میں
جی۔۔۔۔۔۔۔نہیں کرتی۔۔کبھی بھی
و منمناٸی تو ثانیہ کو ہنسی آنے گی
اچھا بات کرواٶ میری ثانیہ سے
حسن کے کہنے پر اس نے فون ثانیہ کی طرف بڑھایا جسے اس نے پکڑنے سے انکار کر دیا تو وہ حیرت سے اسے دیکھ کر گھورنے گی
کہہ دو۔۔۔۔مجھے بات نہیں کرنی اس سےاور وجہ حسن اچھے سے جانتا ھے
وہ ذرا اونچی آواز میں بولی تاکہ حسن اسکی آواز اور پیغام سن لے
اسے کہو کہ دماغ سیٹ کرتا ھوں اسکا میں
وہ ہنستے ھوۓ وارننگ دینے لگا تومشعل کو افسوس ھونے لگا یقیناً اس کے ہاسپٹل ھونے کی خبرسن کر ثانیہ زیرِعتاب آٸی ھوگی اسی لیے بات نہیں کر رھی تھی
اسے ایک بار پھر خود پر غصہ آیا اور اس غصے کا محرک یاد آتے ہی جبڑے بھینچے تھے
سنو تم مجھے حیرت کی آنکھوں سے نہ دیکھو
کچھ لوگ سنبھل جاتے ھیں سب مر نہیں جاتے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اچھا بابا نہیں ڈانٹتا اب۔۔۔۔۔میرا تو دماغ ھی ماٶف ھوگیا تھا یہ سن کر کہ مشعل نے سلیپنگ پلز لے لی ھیں اور ہاسپٹل میں ھے وہ
تمہیں بھی تو تمیز نہیں ھے ایسی خبر دینے کی۔۔بندہ پہلے تمہید باندھتا ھے کہ ”مشعل پریشان تھی اور اسی وجہ سے اسکی طبیعت خراب ھوگٸی تو ہاسپٹل لے کر آنا پڑا مگر اب وہ بلکل ٹھیک ھے تم پریشان مت ھونا“
یہ تھا مناسب طریقہ۔۔۔مگر تم نے کیا کیا
حسن مشعل نے خودکشی کر لی ھے اور آٸی سی یو میں ھے وہ
”بدتمیز“
حسن اسکی نقل اتارتا سہی اسکی کلاس لے رہا تھا تو وہ شرمندہ ھوتی کہہ گٸی
اچھا سوری۔۔۔۔۔۔دھیمے سے لہجےمیں کہا تو وہ قہقہہ لگاتا ہنس دیا
نہ کر۔۔۔۔۔شعلہ سے شبنم کا روپ وہ بھی اتنی دور سے۔۔۔یہ تو ظلم ھے مجھ پر لڑکی
اسکے چہرے پر بھی مسکان ٹھہری
سنو۔۔۔۔۔۔۔؟؟
سناٶ۔۔۔
یاد آتی ھو یار۔۔۔
بے بس سی آواز میں کہی بات سنتے وہ سرشار ہوٸی
آہاں۔۔۔۔۔۔کتنا؟؟
آسمان جتنا۔۔۔۔۔
اسکی دی گٸی مثال پر وہ کھلکھلا کے ہنس دی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
رات کا پچھلا پہر شروع ھو چکا تھا مگر نیند اسکی آنکھوں سے کوسوں دور تھی۔۔۔گھر آنے کے بعد ثانیہ نے ھی اسے زاویار کے دبٸی جانے کا بتایا تھا اور تب سے اب تک وہ بے یقینی کی کیفیت میں تھی
بجاۓ اس کے کہ وہ شرمندہ ھوتے۔۔۔۔اپنی بات پر ڈٹے وہ منظر سے ھی غاٸب ھو گٸے تھے وہ جانتے تھے کہ زندگی موت کے بیچ جھول رہی ھوں تب بھی۔۔۔۔۔۔
چلو اس سے مجھے میری اوقات کا تو اندازہ ھو گیا اور یہ بھی پتا چل گیا کہ کہ اب سب کچھ کرنا ھے بس اسی ایک شخص کی طلب نہیں کرنی
اعترافِ محبت کےبعد اس نے اپنی ذات میں انکی دلچسپی کو پھیکا پڑتے جان لیا تھا
پلیکیں جھپک جھپک کرآنسو ضبط کرتی وہ ہار گٸی تو ٹوٹ کے بے آواز رونے لگی
کیڑی نیند۔۔۔۔کادے سٌفنے
اکھیاں لالو لال وے ساٸیاں
……………………………
کیا کہہ رہی ھو؟؟ایسا کیسے ھو سکتا ھے یار یقیناً تمہیں غلط فہمی ھوٸی ھوگی۔۔وہ تمارے ساتھ ایسا ہرگز نہیں کر سکتے
اور پھر ھم بھی جانتے ھیں تم کتنی جلد باز اور ججمینٹل ھو۔۔۔فوراً نتیجہ اخذ کر لیتی ھو
سونیا نے کہا تو عروج نے بھی مشعل کو سمجھایا
خبردار اگر تم میں سے کسی نے بھی انکی حمایت کی۔۔۔آنکھوں دیکھا جھوٹ نہیں ہو سکتا۔۔پہلے میں ان سے کلٸیر کرتی یہ سب۔۔۔ تاکہ جو میرا تھوڑا بہت بھرم قاٸم تھا۔۔۔وہ بھی رخصت ھو جاتا
اور اچھا ھے ویسے۔۔۔ کہ آپس میں جو بھرم تھے وہ ٹوٹ گٸے ھیں۔۔۔۔آزما کر بھی کیا ملتا مجھے۔۔وہ تو زنیرہ کو پروپوز کر چکے تھے ناں
اور مجھے اپنے تٸیں سرپراٸز دینے والے تھے
بات کرتے کرتےاسکی آنکھوں میں آنسو چمکنے لگے
اور حالات سے فرار وہ ھی ھوتا ھے جس کے دل میں چور ھو۔۔۔اگر ایسا کچھ نہیں تھا تو رکتے یہاں۔۔ثابت کرتے خود کو مگر نہیں۔۔۔۔وہ تو منظر سے غاٸب ھو گٸے
سونیا نے تاسف سے اسے دیکھا
بہت افسوس ھے مجھے مشعل۔۔۔جو لوگ محبتوں کا ثبوت مانگتےھیں ناں۔۔۔بہت ہی احساس کمتری کا شکار لوگ ھوتے ھیں
ارے۔۔۔۔۔۔محبتیں تو محسوس کر لی جاتیں ھیں۔۔۔انھیں لفظوں کے پیراہن میں لپیٹ کر پیش کیا جاۓیہ ضروری تو نہیں
محبتیں پرواہ سے ظاہر ھو جاتی ھیں مگر تم کند ذہن۔۔۔مجھے لگتا ھے بہت بڑی غلطی کر بیٹھی ھو
تم سے کوٸی بات نہیں کی کیا ابھی تک انھوں نے؟
نہیں۔۔۔۔۔وہ اب مجھ کیوں بات کریں گے۔۔۔کر رہے ھونگے۔۔۔۔اپنی۔۔۔اس ہوتی سوتی کے۔۔۔۔ساتھ۔۔۔۔بلاک کردیا ھے میں نے ان دونوں کو ہر جگہ سے۔۔۔۔جان جلاٸیں گے میری۔۔۔۔۔۔ سٹیٹس لگا کر
رونا روکتی اٹک اٹک کر جملے ادا کرتی مشعل کو دیکھ کر انکا دل دکھ بھرا۔۔۔کیا وقت تھا کہ وہ زاویار کا نام لیتے ہی کِھل اٹھتی تھی مگر اب ان کا ذکر ھوتے ہی آنسو بہنے کو تیار رہتے
سب کی زندگی معمول پر آ چکی تھی۔۔۔زاویار کی سب گھر والوں سے بات ھوتی مگر جیسے ہی انکا فون آتا وہ دانستہ وہاں سے واک آٶٹ کر جاتی کہ کوٸی اسے فون نہ تھما دے
سب سے یہ کہہ رکھا تھا کہ اسکی بات ھوتی رہتی ھے
تھکی تھکی سی اداس شاموں میں اکثر اس کو لگتا جیسے وہ اسکو شدت سے پکار رہے ہیں۔۔۔بارہا سر جھٹکنے اور ذہن و دل کو کسی اور جانب لگانے کے۔۔۔دھیان بھٹک بھٹک کر انھی کی طرف جاتا تو وہ خود سے ہی تنگ آ جاتی
ہر بات ثانیہ سے شٸیر کرنے والی نے ۔۔اب تک اپنی ذات پر ھوٸی واردات کی بھنک تک نہ لگنے دی تھی
دوسری طرف زاویار نے خود کو اس قدر کام میں بزی کر لیا تھا کہ انھیں کبھی کبھی خود پر مشین کا گمان ھونے لگتا۔۔۔۔ابھی تک انھیں یہ سب خواب لگ رہا تھا۔۔یوں لگتا تھا کہ آنکھیں کھولیں گے تو یہ بھیانک خواب تعبیر سے کوسوں دور اپنی موت آپ مر جاۓ گا
کچھ عادات وہ ابھی بھی چھوڑ نہ پاۓ تھے۔۔۔روز رات کو اسے دیکھتے اس سے اسی کی شکایتیں کرتے سویا کرتے۔۔
آنکھ کھلنے پر لگتا جیسے ان دونوں کے بیچ یہ کڑوے پل آۓ ہی نہ تھے
مگر پھر اس کے الزام اور خود کو دی گٸی اذیت پر ان کے اندر سرد پن اترنے لگتا۔۔۔۔
نہیں مشعل۔۔۔۔۔۔!
”اس کی معافی نہیں ملے گی۔۔۔۔۔کیونکہ تم نے جسے مارنا چاھا تھا وہ میں ھی تھا اور اپنے قتل پر کون درگزر کیا کرتا ھے“
یہ تم سے کہہ دیا کس نے
کہ تم بن رہ نہیں سکتے
یہ دکھ ھم سہہ نہیں سکتے
چلو ھم مان لیتے ھیں
کہ تم بن ھم بہت روۓ
کٸی راتیں نہیں سوۓ
مگر افسوس ھے جاناں
کہ اب کہ تم جو لوٹو گے
ھمیں تبدیل پاٶ گے
بہت مایوس ھوگے تم
اگر یہ پوچھنا چاہو
کہ ایسا کیوں کیا ھم نے۔۔۔؟
تو سن لو غور سے جاناں
پرانی اِک روایت تنگ آکر توڑ دی ھم نے
”محبت“ چھوڑ دی ھم نے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جس سبجیکٹ میں کمپارٹ آٸی تھی اسکا پیپر دٸیے بھی کافی دن گزر چکے تھے اور وہ سارا دن بولاٸی بولاٸی پھرتی۔۔۔انھی دنوں سونیا کے نکاح کی ڈیٹ فکس ھو گٸی۔۔۔۔اسکا دل ہی نہ چاہتا آٸینہ بھی دیکھنے کو مگر مجبوراً فنکشن پہ جانے کو تیار ھوٸی۔۔۔ جب اسی وقت زاویار کی ثانیہ کے موباٸل پر ویڈیو کال آٸی۔۔کچھ دیر نگہت سے بات کرنے کے بعد وہ فون مشعل کی طرف لیے چلی آ رہی تھی اور اس بات کا ادراک ھوتے ہی بے حد بوکھلاتے وہ اپنی جگہ سے اٹھی اور اس جگہ سے جانے کے لیے قدم اٹھایا ہی تھا کہ ثانیہ نے بازو پکڑ کر اسے روکا اور موباٸل سکرین اس کے سامنے کی
نظریں نیچی کیے وہ اپنے اندر ابلتے اشتعال کو دبانے کی کوشش کرتی ان کے کچھ بولنے کا انتظار کرنے لگی
جبکہ زاویار۔۔۔۔۔۔۔۔اسےتین ماہ پانچ دن بعد اپنے سامنے دیکھ کر دل کی اس قدر بغاوت پر حیران تھے۔۔۔۔کہاں وہ اسے چھوڑ کر آۓ تھے کہ دیکھنا تک گوارا نہ تھا مگر اب جو دیکھا تھا تو نگاھیں ہٹا پانا محال تھا
ثانیہ اسے شرارتی نظروں سے دیکھتی روم سے باہر گٸی تو اس نے تنفر سے انھیں کٹیلی نظروں سے گھورا۔۔۔۔۔
مجھے وہاں سے آۓ بہت دن ھوۓ۔۔۔ کیا اب کی بار تم اداس نہیں ھوٸی مشعل؟؟
جی نہیں۔۔۔۔۔اداس وہ ھو جس سے محبت ھے آپ کو۔۔۔جس کو پروپوز کر کے گٸے تھے آپ۔۔۔کیا اسے بھی چھوڑ دینے کا ارادہ ھے۔۔۔۔میری طرح؟؟؟
”حقیقت۔۔۔۔خون کے آنسو رلواۓ گی جاناں“
ساری خماری پل میں ہوا ھوٸی تو تیور اور غصہ بھی ساتویں آسمان کو چھونے لگا
فاٸن۔۔۔۔۔۔سمجھو جو تمہں سمجھنا۔۔۔مگر اب میں تمھاری طرف نہیں بڑھونگا مشعل جہانگیر۔۔۔رہو اپنی ہی انا کے بت میں قید۔۔۔۔اب وقت ہی تم پر سب کچھ ثابت کرے گا
ہونہہ۔۔۔۔۔ کہتے اس نے کال کٹ کر دی اور پھر خود ہی رونے لگی۔۔۔۔اپنی انا جلد بازی اور بے عقلی کی وجہ سے اس نے ایک بار پھر اس شخص کو مزید پتھر کر دینے کی کامیاب کوشش کی تھی وہ یہ نہیں جانتی تھی کہ اسی پتھر سے ٹکرانے کے لیے مستقبل میں اسے بہت ہمت اور برداشت کی ضرورت ھے
آپ تو جانتے تھے زاویار۔۔۔کہ میں نے آپ کے لیے کیا محسوس کیاھے۔۔۔مگر میری جگہ کسی اور کو دے کر آپ نے میرے اندر موجود محبت کو ابدی نیند سلا دیا ھے۔۔میں کیسے اسے بیدار کروں کہ کوٸی سرا ہاتھ ہی نہیں آ رہا۔۔۔موباٸل کو دیکھتے ھوۓ وہ گھٹے گھٹے لہجے میں ان سے مخاطب تھی مگرسننے والا ہزاروں میل دور اسکے لفظوں سے لگاٸی آگ میں جھلس رہا تھا
ھم بے بس ھم مجبور پیا
کیوں ھم سے ھو گٸے دور پیا
ھم کرچی کرچی دل والے
ھم ھوگٸے چکناچٌور پیا
میرا شام سلونا شاہ پیا
مجھے مار گٸی تیری چاہ پیا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اگر اس طرح کی شکل بنا کے آنا تھا تو گھر ہی رہتی ناں۔۔۔رہ بھی نہیں سکتی ھو اور دوری بھی چاھتی ھو ان سے۔۔۔تمہارا مسٸلہ کیا ھے آخر؟
عروج نے زچ ھو کر پوچھا تو مشعل نے اسے آنکھیں دکھاٸیں ساتھ بیٹھی ثانیہ کی طرف اشارہ کر کے اسکی منت کی کہ اپنا منہ بند رکھے
سب ٹھیک ھو جاۓ گا۔۔۔۔سونیا نے کہا تو ثانیہ کے چہرے پر الجھن بھرے تاثرات دیکھ کر مشعل کا جی چاہا اپنا سر پیٹ لے عجیب ڈھول ٹاٸپ سہیلیاں ھیں کہ مجال ھے کچھ بھی سیکریٹ رہنے دیں
سونیا کا نکاح بخیر و عافیت انجام پا گیا تھا اور فنکشن پر بس ثانیہ اور مشعل ھی جا سکی تھیں نگہت کو ایسے ہنگاموں سے الجھن ھوتی تھی جبکہ ابراھیم زاویار کے جانے کے بعد آفس کے ہی ھو کر رہ گٸے تھے
نکاح کے فنکشن سے گھر آتے ھی ثانیہ نے اسے آڑے ہاتھوں لیا
بتاٶ مجھے ایسا کیا ھوا ھے جو تم مجھے نہیں بتارہی ھو؟کیوں اتنی اداس رہنے لگی ھو اور زاویار بھاٸی بھی جانے کیوں اسی دن چلے گٸے جب تم ابھی بے ہوش تھیں حالانکہ ھم سب جانے ھیں وہ کتنا تمھارے لیے سینسیٹیو ھے
اب بکو جلدی کہ بات ھے کیا؟ورنہ زاویار بھاٸی سے ہی پوچھ لونگی میں
کچھ بتانے کو ہو تو ھی بتاٶں میں۔۔۔۔تم سے آج تک چھپایا ھے کچھ میں نے اور اب مجھے چینج کرنے دو ان کپڑوں سے الجھن ھو رہی ہںے
اسکی بات کو کسی خاطر میں نہ لاتےھوۓ وہ چینج کرنے چل دی مگر ثانیہ مطمٸن نہ ھوٸی تھی اب اسے اس بات کی کھوج لگانا تھی۔۔۔ آخر کو اتنے سارے رشتے بنتے تھے اس لڑکی سے۔۔۔ اور وہ اس کی ذات سے جڑی ہر پریشانی کو اپنی پریشانی پر ھی محمول کرتی تھی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
۔بیٹا جی۔۔۔۔۔وہاں کے مساٸل اگرچہ بہت زیادہ تھے مگر سچویشن اتنی بھی آٶٹ آف کنٹرول نہیں تھی کہ تمہیں وہیں پر شفٹ ھونا پڑتا
کیا فاٸدہ اتنے بزنس کا میرے بچے۔۔۔۔۔جب ایک دوسرے کو دیکھے اور بات کیے بھی کٸی کٸی دن گزر جاٸیں
میں نہیں جانتا وجہ کیا ے اور مجھے یہ معلوم ھے کہ تم میرے پوچھنے پر بتاٶ گے بھی نہیں مگر میں یہ چاہتا ھوں بیٹا کہ اپنا سارا بزنس پاکستان شفٹ کرو
وہ جو ان کے کوبے بہت تحمل کیساتھ سن رہے تھے ان کی فرماٸش پر بے اختیار لب بھینچ گٸے
کچھ بھی تھا وہ اپنے بابا کو انکار نہیں کر سکتے تھے
مگر بابا۔۔۔۔۔ان مہینوں میں آپ جانتےھیں کہ اپنے بزنس کو کہاں سے کہاں پہنچا دیا ھے میں نے ۔۔۔اب آپ واٸنڈ اپ کا کہہ رہے ھیں بالفرض میں ایسا کروں بھی تو مجھے ایک ڈیڈھ سال لگ جاۓ گا
کوٸی مسٸلہ نہیں ایٹ دی اینڈ گھر ھی آٶ گے ناں۔۔۔منظور ھے۔۔۔۔ مگر تم مجھے پاکستان چاھٸے ھو زاویار۔۔۔۔
وہ بے بس سے ھو کر نفی میں سر ہلانے لگے
اچھا میں دیکھتا ھوں۔۔۔۔۔سب کو سلام کہیۓ گا اور اپنا خیال رکھٸیے گا بابا
اوکے خوش رھو خدا حافظ
فون کو ٹیبل پر اچھالتے ان کے ماتھے پر سوچ کی گہری لکیریں تھیں حالات کے مطابق خود کو ڈھالنے کی کوشش کے نتیجے میں انھیں اس کا سامنا کرنا پڑتا اور پھر سے وہ ہی الزامات۔۔۔
ڈور پر ھوٸی دستک نے ان کی سوچوں کا تسلسل توڑا تو وہ آنے والے کے ہاتھ میں پکڑی فاٸل کو دیکھ کر سولیہ نظروں سے اسے دیکھنے لگے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مجھے تو یہی لگتا ھے کہ بھاٸی اگر گٸے ھیں یوں اچانک ھی تو اس کے یچھے اپنی مشعل ھی ھے۔۔میں نہیں جانتی کہ وجہ کیا ھے حسن۔۔۔ مگر کچھ ھے ایسا جو ھم سب نہیں جانتے جو صرف ان دونوں کےمابین ھے
ورنہ تم خود سوچو بھاٸی اسے بے ہوشی کی حالت میں چھوڑ کر جا سکتے تھے۔۔۔کبھی بھی نہیں؟؟؟اورمشعل بھی زاویار کا نام سنتے ھی بھڑکنے لگتی ھے۔۔۔کیا کروں میں ۔۔۔۔؟؟ کچھ بتاتی بھی تو نہیں ھے وہ مجھے
بات کرتے کرتے وہ زچ ھوتی حسن کو تشویش میں مبتلا کر گٸی
جب بھی فون کرو ”نوا کٹا“ کھول کے بیٹھی ھوتی ھو تم
یہ کیا بدتمیزی ھے۔۔میں نے کیا کیا ھے بھلا۔۔؟؟اب تمہیں بتاٶنگی ھی نہیں کچھ سڑتے رہنا وہیں پر ہونہہ
اوہو اب اپنا کھاتہ کھول کے بیٹھ جاٶ۔۔۔۔میری مشی کا خیال رکھا کرو ثانیہ۔۔۔۔۔وہ بہت عزیز ھے مجھے
بہن کی محبت سے لبریز لہجے میں وہ بولا تو اسے پتنگے لگ گٸے
ہاں وہ عزیز ھے۔۔۔میں تو کچھ نہیں لگتی ناں تمھاری مجال ھے کبھی کہا ھو کہ تم خیال رکھا کرو اپنا میرے لیے مگر ناں جی ناں۔۔۔۔۔ ایسے کہہ کر کیوں مجھے خوشی دینی ھے تم نے۔۔۔جانے کیسے لوگ ھوتے ھیں ایک دوسرے کے لیے جیتے ھیں ایک ناراض ھو تو دوسرے کی جان پر بن آتی ھے مگر ادھر تو کیکٹس جیسا شخص پلے پڑا ھے میرے۔۔۔کانٹے ھی بھرے رہتے ھیں لہجے میں
ہاۓ میں کلیوں جیسی تم کیکٹس سے۔۔۔کیا بنے گا حسن تم تو جینامشکل کر دو گے میرا۔۔۔۔۔قینچی کی طرح اسکی زبان کو چلتے سن کر وہ پہلے تو تپ گیا مگر اینڈ والی بات سنتے ھی فوارے کی طرح قہقہہ اس کے حلق سے برآمد ھوا
کلیوں سی؟؟؟؟
ہاں بلکل۔۔۔۔کلیوں کی طرح نازک۔۔۔اتراہٹ سے وہ بولی تو حسن نے شرارت سے اہنے لب دباۓ
اب بھلا مجھے کیا پتا ھو کہ تم کتنی نازک ھو۔۔۔۔۔گھمبیر سی جذبوں سے پٌر آواز سنتے ھی اسکی سٹی گم ھوٸی
باۓ۔۔۔۔۔بدتمیز
فون بند کر کے وہ اپنی دھڑکنیں سنبھالتی رہ گٸی جبکہ وہ سر جھٹکتے مسکرا دیا دل ہلکا پھلکا ھو گیا تھا اسکی بکواس سن کر جو راحتِ جاں تھی…

–**–**–
جاری ہے
——
آپکو یہ ناول کیسا لگا؟
کمنٹس میں اپنی رائے سے ضرور آگاہ کریں۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Subscribe For Latest Novels

Signup for Novels and get notified when we publish new Novel for free!




%d bloggers like this: