Mera Sham Slona Shah Piya Novel By Bella Subhan – Episode 20

0
میرا شام سلونا شاہ پیا از بیلا سبحان – قسط نمبر 20

–**–**–

میں نہیں تم جاٶ۔۔۔۔۔پچھلی بار میں گٸی تھی گیٹ کھولنے۔۔۔۔ڈور بیل بجی تو ثانیہ کے کہنے سے پہلے ہی مشعل نے اسے کہا اور صوفے پر ھی نیم دراز ھوٸی نگہت اسے دیکھ کر بےساختہ ہنسیں تو ثانیہ اسکی چالاکی پر ثانیہ جل بھن گٸی
کتنی سست الوجود ھو تم مشی۔۔۔کیسے مجھے پچھلی بار والی بات کا طعنہ مارا ھے ایسی چیزوں میں بڑا دماغ چلتا ھے تمہارا
پیروں میں چپل اڑستےھوۓ وہ گیٹ کھولنے کو اٹھی تو مشعل نے اسے زبان نکال کر چڑایا
کشن اسکی طرف زور سے پھینکتی وہ باہر گٸی مشعل نے بھی ٹی وی ریموٹ ہاتھ میں لیا جو کافی دیر سے ثانیہ کے پاس تھا
انجان آوازوں پر وہ صوفے سے اٹھی تب تک زنیرہ اور اسکی امی ثانیہ کیساتھ اندر آ چکی تھیں
نگہت اٹھ کےملنے لگیں مگر مشعل کے قدموں کو جیسے زمین نے جکڑ لیاتھا۔۔۔تنفر سے زنیرہ کو گھورتے ھوۓ تمام تلخ ترین لمحے اسکی نگاھوں میں گھومے تک تک وہ اسکے گلے لگ چکی تھی
ہاتھوں سے اسکی کمر کو ہولے سے چھوتے ھوۓ اس نے لحاظ کیا ورنہ جی چاہ رہا تھا کہ اسکا سر توڑ دے جو اسکے سر درد کی وجہ تھی
کیسی ھو؟؟
آہستہ سے اسکا گال چھو کر زنیرہ نے پوچھا تو وہ زبردستی مسکرا کر رہ گٸی
یہ زاویار کس وقت تک آ جاۓ گا آفس سے۔نمبرچینج کر کے بتایا تک نہیں اس نے مجھے نہ ھی ثقلین کو۔۔۔اچھی دوستی نبھاٸی۔۔۔۔۔
حال احوال کے بعد زنیرہ نے پٌرشکوہ انداز میں کہا تووہ حیرت سے اسے دیکھنے لگی
بیٹا وہ تو دبٸی میں ھے۔۔۔۔آیا تو تھا مگر کسی بہت ضروری کام کی وجہ سے واپس جانا پڑا اسے اسکا نمبر تو بند پڑا ھے۔۔۔مجھ سے نمبر لے لینا آپ اسکا دبٸی والا
اوہ۔۔۔۔۔۔۔اچھا۔۔۔۔اصل میں آنٹی میں اپنی شادی کے لیے انواٸٹ کرنےآٸی تھی۔۔۔ویسے تو کچھ ماہ پہلے منگنی ھونا طے پاٸی تھی مگر تقلین کے تایا جی کی ڈیتھ کی وجہ سے رک جانا پڑا۔۔۔بہت کالز بھی کیں زاویار کو مگر نمبر ھی بند تھا اسکا
آپ کی شادی۔۔۔۔۔کس سے؟؟؟
طوفان کے دہانے پر کھڑے اس نے پوچھا تو زنیرہ ہنس دی
تقلین کے ساتھ۔۔۔۔زاویار نے بتایا نہیں۔۔۔؟؟ارے وہی ثقلین جو ھمارے ساتھ ھوتا تھا انگلینڈ میں۔۔۔۔
اسکی بات سن کر اس کے اندر سناٹے اترنے لگے
نگہت زنیرہ کی امی سے ثقلین کے تایا کی ڈیتھ کی وجہ جاننے اور تعزیت کرنے لگیں تو زنیرہ اٹھ کرمشعل کے برابر آ بیٹھی
مجھے بتاٶ۔۔۔زاویار نے پروپوز کر دیا؟رنگ دے دی تمہیں؟
کیا مطلب؟
گھٹے سے لیجے میں اس نے پوچھا تو وہ سر پیٹ کر رہ گٸی
ابھی تک نہیں دی اس نے تمہیں وہ رنگ جو پاکستان آتے ھی لی تھی اس نے۔۔۔میں اور ثقلین بھی اسی دن اپنی انگیجمینٹ کی رنگ پسند کرنے گٸے تھے
بہت ایکساٸٹیڈ تھا زاویار کہ تمہیں بتادے گا سب کچھ
زنیرہ پرجوش ھوتی بولی
کیا سب؟؟تھکے ھوۓ لفظ اس کے لبوں سے ٹوٹ کر آزاد ھوۓ
یہی کہ وہ انکل آنٹی سے تمھارے بارے میں بات کر چکا ھے وہ دونوں بھی بہت خوش ھیں مگر اس نے انھیں منع کیا تھا تمہیں بتانے کو۔۔۔۔تاکہ وہ خود تمہیں یہ خوشخبری دے سکیں
ارے یار پھر تو تمہیں یہ بھی معلوم نہیں ھوگا کہ وہ بہت پہلے سے جانتے تھے تمہاری ان سے محبت کو۔۔۔جب تم نے ٹیسٹ پر انکا نام لکھا تھا
کونسا ٹیسٹ؟؟
اٌوپس۔۔۔۔۔تمہیں تو کچھ بھی نہیں پتا۔۔۔بس بھٸی اب اور کچھ نہیں کہوں گی۔۔وہ خود ھی بتاٸۓ گا تمہیں
ثانیہ ٹیبل پر لوازمات رکھنے لگی تو زنیرہ نے بات سمیٹی۔۔۔۔جبکہ وہ اپنے ٹوٹے دل۔۔۔منتشر ذہن اور گھاٸل روح کو سمیٹنے کی کوشش میں بے حال ھونے لگی
ابھی ضد نہ کر دلِ بے خبر۔۔۔۔۔۔۔۔
کہ پسِ ہجومِ ستم گراں
ابھی کون تجھ سے وفا کرے
ابھی کس کو فرصتیں اس قدر
کہ سمیٹ کر تیری کرچیاں
تیرے حق میں خود سے دعا کرے
……………………………….
نیند آنکھوں سے کوسوں دور تھی۔۔۔کیا وقت تھا جب زندگی بے حد سہل ھوا کرتی تھی مگر اب تو سب کچھ میسر ھونے کے باوجود بھی ایک بے کلی سی چھاٸی رہتی
تا حدِنگاہ پھیلی روشنیوں اور بلندعمارات کودیکھتے ھوۓ انھوں نے آسمان کی طرف نگاہ کی جہاں ٹمٹماتے ستارے ایک الگ ھی چھب دکھا رہے تھے اور چاند کی مسحورکن ٹھنڈی سی روشنی زمین پر بسنے والوں کی زندگیوں کو اجالے سےمزین کرتی اپنی قسمت پر نازاں تھی ہلکی ٹھنڈی ہوا۔۔۔جو کسی کی بھی روح کو پرسکون کر دینے کی صلاحیت سے معمور تھی
مگر۔۔۔ ان پر مزید بے چینی طاری کرتی گٸی
دل کا موسم اچھا نہ ھو تو باہر کا حسین موسم بھی کوٸی خوشگوار ثاثر چھوڑنے میں ناکام رہتا ھے
”مشعل“۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بےآواز انکے لبوں سے اسکا نام ادا ھوا۔۔۔۔۔
”ہر دن خود سے عہد کرتا ھوں کہ تمہیں یاد تک نہیں کرونگا مگر خود سے ھی کیا عہد توڑ دیتا ھوں“
ہر انسان کی زندگی میں لفظ ”کاش“ ضرور ہوتا ھے کوٸی نہ کوٸی خواہش۔۔۔ حسرت کا روپ دھارے دل کے ایک کونے میں سمٹی تا عمر بِلکتی رہتی ھے۔۔۔مگر مجھ پر یہ لفظ” تم“ نے طاری کیا تو اس کی اذیت بھی حد سےسوا ھے
”کاش“ تم نے مجھ پر اعتبار کیا ھوتا۔۔۔اگر تمہیں مجھ پر شک بھی تھا تو ”کاش“ تم نے مجھ سے ڈسکس کیا ھوتا تو حالات یہ نہ ھوتے جاناں۔۔۔۔
ان کیساتھ آخری رابطے میں اس کا نخوت بھرا انداز یاد آتے ھی انھیں خود پر ترس آنے لگا تو وہ بے بسی سے اپنے آپ پر ھی ہنس دٸیے
نام لے لے کہ جسکا جیتے ھو
تم ھو بھی اس کے گماں میں کیا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مجھے تم سے زیادہ فکر ھے بیگم۔۔۔۔خود کو ہلکان نہ کرو۔۔اسےکہہ چکا ھوں کہ جتنی جلدی ھو بزنس پاکستان شفٹ کرے تب تک حسن بھی لوٹ آۓ گا تو دونوں بھاٸی سب سنبھال لیں گے۔۔۔۔زیادہ اس بارے میں سوچو گی تو طبیعت خراب ھو جاۓ گی تمہاری۔۔۔۔سٹریس لینے سے کیا ھوگا بھلا۔۔۔اور پھر زاویار اتنا غیرذمہ دار نہیں ھے جو میری بات کو اھمیت نہ دے
الحمداللہ بہت فرمابردار ھے وہ اپنےوالدین کا
ابراہیم بہت سلیقے سے نگہت کو سمجھا رہے تھے جنہیں زاویار کے دبٸی میں ھی رہنے پر بہت سی فکریں ستا رہی تھیں۔۔۔کہاں وہ بے حد خوش تھے کہ مشعل کے ایگزمز ختم ھوتے ھی بات ڈسکلوز کردیں گے مگر اب یوں چپ سادھ لی تھی کہ گویا اسے جانتے تک نہ ھوں
ابراھیم کے سمجھانے پر اپنے قاٸل ھونے کا تاثر پیش کرتیں وہ دل ھی دل میں ابھی بھی پریشان بیٹھی تھیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جانے کیسے اور کس طرح نارمل ظاہر کرتے ھوۓ اس نے زنیرہ کے جانے تک خود پر بند باندھے رکھا تھا پھر اس کے بعد روم میں جو بند ھوٸی تو ثانیہ کے لاکھ کہنے پر بھی باہر نہ نکلی تھی
کافی دیر اس کی پریشان سی صورت کی وجہ جاننے کی کوشش کرتی ثانیہ بھی تھک کر جب سو چکی تو اس کے اندر جوار بھاٹا سا اٹھنے لگا
یا اللہ۔۔۔۔۔
یہ کیا کر بیٹھی ھوں میں۔۔۔۔ ؟؟؟
یہ کیا کر دیا ھے میں نے۔۔۔۔خود اپنی ھی جلد بازی اور یقین نہ کرنے کی عادت نے کیا کروا دیا ھے مجھ سے۔۔؟؟
آنکھوں سے سیال بہنے لگا اور اپنی ہچکیاں روکتی وہ لبوں پر سختی سے ہتھیلی ٹکا گٸی
”حقیقت خون کے آنسو رلواۓ گی جاناں“
آخری رابطے میں کی گٸی اپنی بدتمیزی کے جواب میں انکے ٹوٹے لہجے میں کہے الفاظ اس کے آس پاس چکرانے لگے
معاف کر دیں زر۔۔۔۔۔۔پلیز معاف کردیں
اپنے ہاتوں کو آپس میں جوڑے وہ روتے روتے کہنے لگی
بے رحم الفاظ۔۔۔جلدبازی اور بے اعتباری نے دور کھڑے ایک دوسرے کو فاتحانہ انداز میں دیکھا اورمزید بدگمانی پیدا کرنے کو اپنے پنجے تیز کرنے لگی
جبکہ وہ مسلسل یہی الفاظ دہراۓ جا رہی تھی کہ ”معاف کردیں زر۔۔۔پلیزمعاف کر دیں“
ﻣﯿﮟ ﺧﻮﺍﺏ ﻧﮕﺮ ﮐﮯ ﭘﺎﺭ ﮔﺌﯽ
ﺍﮎ ﺑﺎﺭ نہی ﮨﺮ ﺑﺎﺭ ﮔﺌﯽ،
ﻣﯿﮟ ﺭﻭ ﺭﻭ ﺟﯿﻮﻥ ﮨﺎﺭ ﮔﺌﯽ
ﻣﺠﮭﮯ ﺗﯿﺮﯼ ﺟﺪﺍﺋﯽ ﻣﺎﺭ ﮔﺌﯽ،
ﮨﺮ ﺳﻤﺖ ﺧﻤﻮﺷﯽ ﻃﺎﺭﯼ ﮨﮯ
ﺍﻭﺭ ﮨﺠﺮ ﺑﮭﯽ ﮨﺮ ﺳﻮ ﺟﺎﺭﯼ ﮨﮯ،
ﮨﺮ ﺭﺍﺕ ﺗﺮﮮ ﺑﻦ ﺑﮭﺎﺭﯼ ﮨﮯ
ﺍﺏ ﺟﻨﺪﮌﯼ تجھ ﭘﺮ ﻭﺍﺭﯼ ﮨﮯ،
ﻣﺠﮭﮯ ﺩﺭﺩ ﻣﻠﮯ ﺍﻧﻤﻮﻝ ﭘﯿﺎ
ﻣﯿﮟ ﮨﺴﺘﯽ ﺑﯿﭩﮭﯽ ﺭﻭﻝ ﭘﯿﺎ،
ﮐﺒﮭﯽ ﻣﯿﺮﮮ ﺩﮐﮫ ﺳﮑﮫ ﭘﮭﻮﻝ ﭘﯿﺎ،
” ﺗُﻮ ﻣﯿﺮﺍ ﺳﺎﻧﻮﻝ ﮈﮬﻮﻝ ﭘﯿﺎ “
نہیں ﻣﻠﻨﮯ ﮐﯽ ﮐﻮﺋﯽ ﺭﺍﻩ ﭘﯿﺎ،
ﮨﻤﯿﮟ ﻣﺎﺭ ﮔﺌﯽ ﺗﯿﺮﯼ ﭼﺎﮦ ﭘﯿﺎ “
ﮨﻢ ﺧﺎﮎ ﻧﺸﯿﻨﻮﮞ ﮐﮯ ﺩﻡ ﺳﮯ
ﺁﺑﺎﺩ ﺗﯿﺮﯼ ﺩﺭﮔﺎﮦ ﭘﯿﺎ،
“ﺗﯿﺮﯼ ﺭﺍﮦ ﺗﻮ ﻣﯿﺮﯼ ﻣﻨﺰﻝ ﮨﮯ
مجھے کون کرے گمراہ پیا”۔۔
میرا شام سلونا شاہ پیا
مجھے مار گٸی تیری چاہ پیا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
زاویار کو فون کر کے بتانا ھے کہ اسکے دوستوں کی شادی ھے۔۔۔۔بہت باتونی لڑکی ھے ویسے وہ۔۔۔۔۔باتوں میں ھی مگن رہی اور نمبر لینا یاد نہیں رہا اسے زاویار کا۔۔۔میرے ذہن سے بھی نکل گیا تواب جب بھی بات ھو اسے بتا دینا ابھی تو تیرہ دن ھیں شادی میں۔۔تب تک لگالے چکر
جی میں یاد کرواٶنگی بلکہ ھو سکتا ھے مشی نے بتا دیا ھو اسکی بات تو ھوتی رہتی ھے ان سے
موباٸل پر وٹس ایپ سٹیٹس چیک کرتے ھوۓ مگن سے انداز میں وہ بولی
تمہیں کچھ عجیب نہیں لگتا ثانیہ؟؟زاویار کا جانا اور پھر پلٹنے میں اتنی تاخیر۔۔۔۔؟
ماں میں جانتی ھوں ان دونوں کے ھی بیچ کوٸی بات ھوٸی ھے جو وہ مجھے بتا تک نہیں رہی۔۔۔
نگہت کے پوچھنے پرثانیہ بے بسی سے بولی تب ھی مشعل نے روم میں قدم رکھا اور اسی پل زاویار کی ویڈیو کال ثانیہ کے موباٸل پر آٸی جسے پک کرتے ھی اس نے موباٸل سکرین مشعل کی طرف کی تھی
جہاں ان کے مرجھاۓ سے چہرے کو دیکھتے وہ دھک سے رہ گٸی تھی تو زاویار بھی اسکا پٌر حزن سادگی میں لپٹا روپ دیکھتے تھم سے گٸے
اگلے ھی پل موباٸل کو ثانیہ کی گود میں پھینکتے وہ روم سے نکلتی چلی گٸی
ثانیہ نےموباٸل اٹھایا توکال بند کی جاچکی تھی اور اب ڈیٹاآف ھونے کیساتھ ساتھ نمبر بھی آف جارہا تھا
تفکر کی لکیریں نگہت کے ماتھے پر ابھرنے لگیں جبکہ ثانیہ مشعل کے ری ایکشن پر الگ حیران و پریشان تھی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اسکی پریشانی نہ دیکھی جاوے مجھ سے
اس پری زاد کی مسکراہٹ لوٹا دے مولا
ذہن کے پردے پر بار بار ان کا اداس چہرہ نگاھوں میں آرہا تھا اسے خود پر شدید غصہ آیا جواس سب کی وجہ تھی
ایسا نہیں تھا کہ ان سے بات نہیں کرنا تھی اسے۔۔۔۔۔بس وہ انھیں فی الحال فیس نہ کر پا رہی تھی
اتنی ہمت نہیں تھی کہ ان آنکھوں کے شکووں کا مقابلہ کر سکے
ابھی ہمت اور حوصلے کو اکٹھا کرنے میں وقت درکار ھے زر۔۔۔تاکہ آپ کا سامنا کرسکوں
لبوں کو کچلتے وہ ان سے مخاطب تھے جو اس سے بہت دور اس کے بات نہ کرنے اور موباٸل کو پھینک جانے پر ضبط کی انتہاٶں کو چھوگٸے تھے
اب کے ھم نےسوچا ھے
اسکا نام لکھنے پر
انگلیاں جو دھڑکیں تو
پھر سمیت پوروں کے
ہاتھ بھی جلادیں گے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
رات تین بجے کا وقت تھا ہر سو سناٹا اپنے پنجے گاڑے ھوۓ تھا جبکہ اس خاموشی میں بھی ایک عجیب سا کرب ہلکورے لے رہا تھا کہ اس کی دھڑکنوں تک وہ کرلاہٹیں پہنچیں
کچھ دیر کی تلاشی کے بعد اسے مطلوبہ چیزیں مل چکی تھیں تو غم نٸے سرے سے پر روح میں گھلنے لگا
انتہاٸی خوبصورت زیڈ اور ایم کو ملاۓ ھوۓ وہ انگوٹھی جو زاویار نے اس کے لیے خریدی تھی اس پر اپنے لب رکھتے ھوۓ وہ کسی اور ھی جہان میں پہنچی
اسے یاد آیا انکا دیکھنا۔۔۔۔اس کےساتھ لگاوٹ۔۔پرواہ اور محبت کے مظاہرے۔۔۔اپنا ھمیشہ فوقیت دٸیے جانا۔۔انکا لاڈ اٹھانا
”لاڈ اٹھانا ہر کسی کے بس کی بات نہیں ھوتی اور محبتوں میں ھر کسی کے لاڈ اٹھاۓ بھی نہیں جاتے یہ بس کچھ خاص لوگ ھی ھوتے ھیں جنہیں اتنی اھمیت دے دی جاتی ھے کے انکا نخرے کرنا بھی ایک ادا کے جیسے لگتا ھے اور ان کے لاڈ اٹھانے میں مسرت ملتی ھے“
دل میں محبتوں نے طوفان اٹھایا تو ہر لحاظ بالاۓ طاق رکھتے ھوۓ وہ انھیں کال ملا بیٹھی مگر وہ یہ نہیں جانتی تھی کہ مقابل اب محبتوں سے پرے ایک گلیشٸیر میں تبدیل ھو چکا ھےجسکی محبتوں عنایتوں پر اب برف کی دبیز چادر تان دی گٸی ھے
اس نے حیرت سے کان سے لگا موباٸل ہٹا کر دیکھا تواسکو کچھ پل یقین ھی نہ آیا کہ اسکی کال کاٹ دی گٸی ھے مگر پھر سے انکا نمبر ملا کر وہ کال اٹینڈ کیے جانے کا ویٹ کرنے لگی
چوتھی بیل پر کال اٹینڈ کرنے کے بعد اسےکرکٹ کی کمنٹری سناٸی دینے لگی یعنی اسکی کال اٹینڈ کرنے کے بعد ٹی وی کے پاس موباٸل رکھ دیا گیا تھا
مشعل کو اب اندازہ ھوا کہ کسی کو اگنور کرنا کسی کی محبت کا جواب محبت سے نہ دینا اور کسی کیساتھ بیزاری والا رویہ رکھنا دوسرے شخص پر کیسے بھاری پڑتا ھے
لب بھنچتے ھوۓ اس نے کال کٹ کر کے موباٸل دور اچھالا اور پاس پڑا پیپر اٹھا کر اپنا ھی کیا اقرار دیکھنے لگی جسکے بارے میں زنیرہ نے بتایا تھا
جانے کیسے میں لکھ گٸی تھی۔۔۔۔۔۔راٸٹنگ تو میری ھی ھے۔۔یعنی وہ سب جانتے تھے
انگی سے اپنے ہاتھ کے لکھے”مسز زاویار“ کو اس نے چھوا۔۔۔۔۔۔۔یہ حقیقت ھو سکتا تھا۔۔۔۔اگر جو میں نے۔۔۔۔۔۔۔
باقی کے الفاظ منہ میں ھی رہ گٸے اور ان لفظوں کے کرب کو آنسوٶں نے اپنے بہنے سے ثابت کیا
محبت گنوا کے سمجھی ھوں
یہ ضرورت سے مختلف شے ھے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بالوں کو اپنی مٹھیوں میں جکڑے وہ اپنا ضبط آزما رہے تھے دل ہمک ہمک کر موباٸل پر اس سے بات کرنے کی ضد کر رہا تھا جبکہ وہ دل کی اس سر کشی اور ڈھیٹ ھونے پر غصہ پینے پر مجبور تھے
دو دن پہلے ھی زنیرہ نے بطور خاص انھیں اپنی شادی میں شامل ھونے کی ریکوٸسٹ کی تھی جسے وہ بہت مشکل سے ٹال پاۓ تھےاصل بات تو یہ تھی زنیرہ کے ھی ذریعے انھیں معلوم ھوچکا تھا کہ مشعل حقیقت سے واقف ھوگٸی ھے یہ جان کر وہ نٸے سرے سے سلگے تھے
یہ بات تو انھیں معلوم تھی کہ وہ لڑکی انھی سے محبت کرتی ھے مگر اسکی بےجا شک اور بے اعتباری والی عادت سے وہ بے حد نالاں تھے تب ھی اس کے چاھنے کے باوجود وہ بات نہیں کر پا رہے تھے
”تمہارے بعد ھم خود کو ویران لکھتے ھیں“
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مجھے نہیں جانا۔۔۔۔۔بس کہہ دیا ھے میں نے۔۔تم اور ممانی جا رہے ھو ناں۔۔کافی ھے
ثانیہ کب سے اسے زنیرہ کی شادی میں جانے کےلیے راضی کر رہی تھی مگراسکی نہ۔۔۔۔ ہاں میں نہیں بدلی تومجبوراً انھیں ھی شادی پر جانا پڑا
اوراسکے نہ جانے کی وجہ سے ثانیہ کٸی دن اس سے ناراض رہی مگر وہ زاویار کی ناراضگی کے غم سے نکلتی تو ھی کچھ اورسوچتی کہاں کہاں وہ شخص اسے یاد نہیں آ رہا تھا
بارش، ٹھنڈی ھوا،دھوپ، طوفان غرض ھر موسم ھی انکی یاد کی دستک لیے آتا تو وہ خود پر ھی افسوس کرتی رہ جاتی۔۔۔آسمان کو تکتے خیال کہاں سے کہاں پہنچ جاتے۔۔۔۔اور سماعتیں ھمہ وقت انکی آہٹوں کی منتظر رہنے لگی تھیں
دستک تو بہت دور ھے تم جب سے گٸے ھو
اس گھر کے دریچوں سے ھوا تک نہیں آٸی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بلیک پینٹ کوٹ میں بالوں کو نفاسٹ سے سیٹ کیے قیمتی گھڑی پہنے اور مہنگے برینڈ کا موباٸل پکڑے وہ جب گاڑی سے نکل کر میزبانوں تک پہنچے۔۔کٸی ستاٸشی نظروں نے انکا جاٸزہ لیا جبکہ وہ سپاٹ اور سرد تاثرات کیساتھ سب سے ملنےملانےمیں مشغول تھے
یہ ایک ڈیل کے کامیاب ھونے کے نتیجے میں کی جانے والی پارٹی کا منظر ھے جہاں پارٹی دوسرےشخص کی جانب سے دی گٸی تھی اور زاویار کی حیثیت مہمانِ خصوصی کے جیسی تھی
کافی سارا وقت گزارنے کے بعد جب وہ واپسی کا سوچنے لگے تب ھی اک لڑکی پر انکی نگاہ پڑی
جس نے ساٸیڈ جوڑے کیساتھ بالوں مں پھول اٹکا رکھا تھا
جہاں انکے قدم تھمے وہیں آنکھیں بھی پلٹنے سے انکاری ھوٸیں
اسکا سٹاٸل کافی حد تک مشعل سے ملتا جلتا تھا تھپک تھپک کر ہر رات وہ اسکی یادوں کوسلانے کی کوشش کرتے تواگلی رات تک وہ اسی آب وتاب کیساتھ ان کے ذہن ودل پر براجمان ھوتی۔۔۔ مگر آج ذراسی اسکے انداز میں اک لڑکی کو جو دیکھا تو یادوں کا ایک طوفان تھا جو اندھا دھند ان پر ٹوٹا۔۔۔۔جیسے تیسےگھر پہنچ کر چینج کرنے کے بعد وہ بے دم سے ھو کر بستر پر گرے تو قطرہ قطرہ وہ ان کے حواسوں پر چھاتی گٸی
جھونکا ہوا کا آج بھی زلفیں اڑاتا ھوگا ناں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔؟
تیرا دوپٹہ آج بھی تیرے سر سے سرکتا ھوگا ناں۔۔۔۔۔؟
بالوں میں تیرے آج بھی پھول کوٸی سجتا ھوگا ناں؟
کاغز پہ میری تصویر جیسی کچھ تو بناتی ھوگی ناں؟
الٹ پلٹ کہ دیکھ کہ اسکو جی بھر کے ہنستی ھوگی ناں؟
ہنستے ہنستے آنکھیں تمھاری بھر بھرآتی ھونگی ناں۔۔؟
مجکو ڈھکا تھا دھوپ میں جس سے وہ آنچل بھگوتی ھوگی ناں۔۔۔۔؟
ساون کی رم جھم میرا ترانہ تجھکو سناتی ھوگی ناں۔۔۔؟
اک اک میری باتیں تم کو یاد تو آتی ھوگی ناں۔۔۔۔۔۔۔۔۔؟
میں دیکھتا ھوں چھپ چھپ کے تم کو محسوس کرتی ھوگی ناں؟
جھونکا ہوا کا آج بھی زلفیں اڑاتا ھوگا ناں۔۔۔؟
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آج پھر کٸی دن بعد دل کے ہاتھوں مجبور ھوتی وہ انھی کے کمرے میں موجود انکی اشیا ٕ کو دیکھتی ھوٸی بے چین روح کی طرح ادھر ادھر بھٹک رہی تھی۔۔۔۔
اس نےطےکر لیا تھا کہ اب چاھے کچھ بھی ھو وہ انھیں مناکر رھے گی رونے سے کیا فاٸدہ۔۔آخر رونے سے کبھی کسی کو کچھ حاصل ھوا ھے جو اسے ھو جاتا اور پھر جس شخص کی وہ محبت تھی۔۔۔مانا کہ وہ اس سے ناراض تھا لیکن مان ھی جاتا چاھے اسکی ناراضگی کا دورانیہ طویل ترین ھی کیوں نہ ھو جاتا
انھیں بھولنے کی کوشش میں یادیں بغاوت کر دیتی تھیں اسکی زندگی میں انکا کردار بلکل ویسے ھی تھا جیسے کسی شخص کو سکون درکار ھو اسی طرح اسے وہ شخص درکار تھا
خود کو لاکھ تسلیاں دیتی نٸے عزم سے حوصلہ کرنے کے بعد پھر سے انکا بات تک نہ کرنا اسے یاد آیا تو اس کے ارادے بھربھری ریت بننے لگے
میرے چندا،سورج،پھول پیا
مجھے ایسے نہ تٌو بٌھول پیا
میرےتجھ بن قول و قرار گٸے
میرے کھوٹے پڑے اصول پیا
تجھے پلکیں میری ہٌلارے دیں
میری پینگوں پر بھی جھول پیا
میں نے جب سےعشق ریاضت کی
مجھے ہر شے لگے فضول پیا
تو کیسا کاروباری تھا
میرا لوٹ کے لے گیا مول پیا
میرا شام سلونا شاہ پیا
مجھےمار گٸی تیری چاہ پیا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
فجر کی نماز پڑھنے کے بعد دل کو بے چینی سی ھوٸی تو سوچا لان میں جا کر چہل قدمی کی جاۓ۔۔اپنے روم سےنکل کر وہ جیسے ھی ٹی وی لاٶنج سے گزرتے باھر جا رہی تھیں تو بلاارادہ ہی نظر اوپر کو اٹھی ۔۔۔۔جہاں زاویار کے کمرے کی لاٸٹ آن تھی اچھنبے سے کچھ پل سوچتے ھوۓ وہ آگے بڑھیں
دروازہ کھلا دیکھ کر انکی حیرت میں اضافہ ھوا دبے پاٶں اندر داخل ھوتے وہ جہاں کی تہاں کھڑی رہ گٸیں تھیں
بیڈ کے قریب کارپٹ پہ بیٹھی ھوٸی اور چہرہ بیڈ پر ٹکاۓ مشعل سوتے میں بھی بے چین لگ رھی تھی وہ آہستگی سے چلتے ھوۓ اس کے پاس جا کھڑی ھوٸیں اور اس کے ہاتھ کی گرفت سے زاویار کی شرٹ کو چھڑایا دوسرے ہاتھ میں پکڑی رنگ پاس پڑا ھوا ایک پیپر ۔۔۔۔۔یہ چند اشیا ٕ انھیں ورطہ حیرت میں ڈال گٸی تھیں
اس کے چہرے کو تھپکتے انھوں نے مشعل کو اٹھانا چاہا تو وہ ہڑبڑاتے ھوۓ ”زر“ پکار بیٹھی مگر جب سامنے نگہت کو دیکھا تو کچھ پل سمجھ ھی نہ کہ وہ ھے کہاں۔۔۔؟؟
دھیرے دھیرے گزشتہ رات اور اس رات کی تڑپ زاویار کا یاد آنا۔۔اپنا احساس ندامت یاد آتے ھی اس کی آنکھیں تیزی سے بھیگیں
نگہت نے اسکا ہاتھ پکڑ کر بیڈ پر بٹھانے کے بعد خود بھی اسی کے برابر بیٹھ کر اس کے چہرے کو ٹٹولتی نگاھوں سے دیکھا
بتا دو مجھے۔۔۔۔۔جو بھی بات ھے جو پریشانی ھے اور جو کچھ تمہیں رلاتا ھے۔۔۔۔سب کچھ
اس کے آنسوٶں کو صاف کرتے ھوۓ انھوں نے پچکارا تو وہ ان کے گلے لگ کر سارا دکھ رونے کے بیچ انڈیلنے لگی
کچھ دیر رو چکنے کے بعد وہ ان سے الگ ھوٸی تو نگہت کا آنسوٶں سے بھرا چہرہ دیکھ کر بے حد شرمندگی سے منہ نیچے کیے خود کو کوسنے لگی
شکستہ قدموں سے تمہیں جب وہ ہاسپٹل میں آخری بار ملنے گیا تھا ناں مشعل۔۔۔۔بہت جی گھبرایا تھا میرا اپنے بچے کو اتنا ٹوٹا ھوا دیکھ کر۔۔۔۔مجھے لگا تھا کہ وہ تمھاری خودکشی کی کوشش کی وجہ سے دل گرفتہ ھے مگر۔۔۔۔۔۔۔وہ تو اپنے کردار کی دھجیاں بکھیرے جانے پر بھی آزردہ تھا
کیسے مشعل۔۔۔۔؟؟؟کیسے اتنی بے اعتباری کر گٸی میرے بچے کیساتھ تم۔۔۔کہ اس نے اپنے لیے جلاوطنی کی سزا تجویز کی
آٸم سوری ممانی۔۔۔۔پلیز روٸیں مت۔۔۔۔خود روتے ھوۓ وہ انھیں چپ ھو جانے کا کہنے لگی تو نگہت نے اسے پھر سے گلے لگایا
سب ٹھیک ھو جاۓ گا إن شاءالله
بزنس شفٹ ھو یا نہ ھو پاکستان۔۔۔زاویار کو جلد آنا پڑے گا۔۔۔اب میری بیٹی روتی رھے اور مجھ سے دیکھا جاۓ۔۔۔یہ تو ممکن نہیں ھے ناں
چلوآ جاٶ باہر۔۔۔۔میں ابھی اسے فون کر کے کسی بھی طرح واپس بلانے کی کوشش کرتی ھوں تم نے اب رونا نہیں ھے
اپنے آنسو صاف کرتے ھوۓ اس نے اثبات میں سر ہلایا اور نگہت کو جاتے ھوۓ دیکھنے لگی
لوٹ آٶ کہ
منتظر ھے نگاہ
اس سے پہلے کہ لوحِ قسمت پر
بابِ الفت تمام ھو جاۓ
اس سے پہلے کہ شام ھو جاۓ
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
فاٸل کا جاٸزہ لیتے ھوۓ فون کی طرف انکا دھیان گیا جو مسلسل بج رہا تھا بے زاری سے فاٸل بند کر کے موباٸل اٹھایا اور کال پک کی
یہ ماں کو کیا ھو گیا ھے یار بابا۔۔۔۔؟؟
صبح ھی صبح اتنی تڑیاں لگاٸی ھیں مجھے انھوں کہ حیران ھوں یہ بیٹھے بٹھاۓ انھیں کیا ھوا ھے؟
میں ابھی نہیں آ سکتا واپس
زاویار کی جھنجھلاٸی سی آواز وہ قہقہہ لگا گٸے
توآ جاٶ ناں اب تم نے بھی تو ٹھان لی ھے کہ واپس آنا ھی نہیں ھے۔۔۔ماں ھےتمہاری یاد کرتی ھے تمہیں بیٹا
آپ جانتے ھیں سب۔۔۔ ایسے کیسے چھوڑ کر آ سکوں گا میں۔۔۔۔۔؟
میں جانتا تھا یہی کہوگےتم۔۔۔تواس کے لیے اپنےآفس کے بہت ھی ہونہار بندے کوبھیج رہا ھوں تمھاری جگہ کام کرنےکو۔۔۔۔اب تمہیں اعتراض نہیں ہونا چاھیے
تمہیں یاد کر کے رو رھی تھی تمہاری ماں آج۔۔۔۔۔ پتا ھے؟؟
بات میں مزید سچاٸی بھرنے کو وہ افسردہ سےبولے تو زاویار گہری سانس بھر کے رہ گٸے اور کال کٹ کی
موباٸل کو ٹیبل پر رکھتے ابراھیم کے چہرے پر مسکراہٹ تھی۔۔تیر نشانے پر لگا تھا
آج صبح ھی نگہت نے انھیں بتایا تھا کہ زاویار مشعل سے ناراض ھو کر گیا ھے اسکو کسی بھی طرح والس بلاٸیں اور بغیر کسی تاخیر کے انکی شادی کرواٸیں تاکہ انکا زاویار خوش ھو جاۓ
بہت سوچ بچار کے بعد انھوں نے دبٸی کی فرم کے بارے میں تمام ڈیٹیلز لی تھیں اور تب ھی یہاں کے ایک ملازم کو ادھر بھیجنے کا سوچا تھا کیونکہ بزنس شفٹ کرنے میں کافی وقت درکار تھا جبکہ نگہت تو انھیں اسی ہفتے پاکستان دیکھناچاھتی تھی
وہ جانتے تھے کہ زاویار کے پاس لوٹ آنے کے سوا کوٸی آپشن نہیں بچا۔۔۔۔اسے ھی سوچتے وہ طمانیت سے مسکرا دٸیے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بہت ٹف روٹین ھوگٸی ھے دن رات بکس میں سر دٸیے کھانے پینے تک کا ھوش نہیں ھے مجھے۔۔۔
یہ تمہیں کس پاگل نے کہا تھا کہ اتنی دور جا کر پڑھو۔۔یہاں کیا دماغ کو فنگس لگ جاتی تمہارے ؟
فنگس توخیر نہیں لگتی۔۔۔۔مگر دماغ کو تراوٹ نہ ملتی
شریرسے لہجے میں کہہ کر حسن نے اسکو تپایا تھا اور حسبِ توقع وہ تپ گٸی تھی
خوب سمجھ رہی ھوں میں تمھاری تراوٹ کے ذراٸع۔۔دیکھو حسن۔۔۔تمہارا خون پی جاٶں گی میں اگر کسی اور کی طرف آنکھ اٹھ کر دیکھا بھی تو۔۔۔
غصے سے فوں فاں کرتی ھوٸی اسکی آواز دل کو عجب سکون پہنچا رہی تھی تو وہ پلکیں موند گیا
موباٸل کان سے لگأۓ ھوٸے ھی اس نے کروٹ لی
بہت ظالم ھو تم۔۔۔۔خون آشام ڈاٸن
ہا۔۔۔۔پراٶڈ ٹو اٹ
حسن کے کہنے پر اس نے ناک سےگویا مکھی اڑاٸی تھی جیسے۔۔۔ تو وہ ہنسنے لگا
”سنو لڑکی۔۔۔۔۔۔۔۔“؟؟
کوٸی دیوار بھی نہیں
پھر بھی قید ھوں تم میں
”میں اپنے قیدی کی بہت پرواہ کرتی ھوں حسن۔۔۔۔۔اور یہ قیدی پر لازم ھے کہ پنجرے میں تا عمر مقید رہے“
ایک بات کہوں ثانیہ۔۔۔۔؟؟
ھمممم بولو۔۔۔
تم اور گہری باتیں۔۔۔۔۔خیریت ھے تمہیں؟؟واپس آ جاٶں کیا؟
شریر سے لہجے میں اس نے سوال کیا تو وہ بھی ہنس دی
بس اب اک شخص دور بیٹھا ھے بیچارا سا۔۔۔اور اکیلا بھی ھے تو سوچا اسکا دل رکھ لیا جاۓ
مصنوعی غرور اور اتراہٹ سے کہتے ھوۓ اس نے حسن کو چھیڑا جسکا الٹا ھی اثر ھوا تھا
”دل۔۔۔۔۔۔وہ تو پہلے ھی تمہارے پاس دھڑکتا ھے میری زیست“
مدھم سی سرگوشی اور گھمبیرتا سے کہنے پر ثانیہ کا دل انوکھی لے پر دھڑکنے لگا
اپنا خیال رکھنا
کچھ پل بعد لجاٸی سی آواز سنتے وہ سمجھ چکا تھا کہ محترمہ شرمانے کا شغل پورا کر رھی ھیں
اللہ حافظ۔۔۔۔مسکراہٹ دبا کر کہتے ھوۓ اس نے فون رکھا
اور ثانیہ نے اسی پل مشعل کودروازے کے ساتھ ٹیک لگاۓ خود کو دیکھتے پایا
ساری شرم ھوا ھوٸی تھی اور شرمندگی نے چہرے کو ہلکا سرخ کیا۔۔۔جانے وہ کیا کیا سٌن چکی تھی اور کب سے کھڑی تھی
اچھااااا جی۔۔۔۔
دل رکھنے کی باتیں ھو رہی تھیں ھممممم۔۔۔۔۔
ہنستے ھوۓ مشعل نے کہا تو ثانیہ نے اپنی آنکھیں میچیں
بہت ھی کوٸی غیر اخلاقی حرکت کی ھے تم نے ویسے۔۔۔
اپنی خجالت مٹانے کو وہ اس پر چڑھ دوڑی تو
مشعل نے ہنستے ھوۓ اسکا گال چوما
کوٸی بات نہیں۔۔۔۔۔تمہاری نند نے نہیں۔۔۔بھابی نے سنا ھے تو جانے دو یہ بات۔۔۔
خوشی سے کھنکتا لہجہ سن کر وہ حیرت زدہ سی مشعل کو دیکھنے لگی
ایسا کیا ھوا ھے آج کہ تیور ھی الگ ھیں ہاں؟؟
تم تو کچھ کر نہیں سکی۔۔۔مگر دیکھو ممانی بلوا رہی ھیں انھیں واپس۔۔۔۔
اوہ تو یہ سارا غصہ بیزاری رونا دھونا فقط ان کی جانے کی وجہ سے تھا۔۔۔۔۔
تمتماتے ھوۓ چہرے کو دیکھ کر ثانیہ بولی تو وہ محض مسکراتے ھوۓ اسے باہر آنے کا کہتی وہاں سے نکلی تھی
دل شکر گزار تھا اس پاک ذات کا کہ جس نے اس پر رحم کیا تھا اور اسکی سزا ختم ھونے کے دن قریب تھے۔۔۔۔

–**–**–
جاری ہے
——
آپکو یہ ناول کیسا لگا؟
کمنٹس میں اپنی رائے سے ضرور آگاہ کریں۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Subscribe For Latest Novels

Signup for Novels and get notified when we publish new Novel for free!




%d bloggers like this: