Mera Sham Slona Shah Piya Novel By Bella Subhan – Last Episode 21

0
میرا شام سلونا شاہ پیا از بیلا سبحان – آخری قسط نمبر 21

–**–**–

تتلی کی طرح ادھر ادھر اڑتی کھکھلاتی اسکی چہکاریں عروج پر تھیں جسے دیکھ کر نگہت نے بے ساختہ ماشاءاللہ کہا
اپنے ماموں کے ساتھ بیٹھی وہ نیوز پر زور و شور سے تبصرہ کرتی بلکل پہلے والی مشعل لگ رہی تھی جو کسی نہ کسی بات پر دوسروں کو اپنے ساتھ انگیج رکھتی تھی جب ثانیہ اسکا موباٸل اٹھاۓ چلی آٸی
تمھاری کال ھے۔۔۔۔۔۔اس کے سنجیدہ سے چہرے اور انداز پر غور کرتے ھوۓ اس نے موباٸل تھاما اور اپنے روم میں جانے تک کان سے لگاتے اَلسَّلامُ عَلَيْكُم کہا تھا
تم نے ماں کو فورس کیا ھے ناں میرے واپس آنے کے لیے۔۔۔۔سچ بتانا مجھے
زاویار کی سرد آواز سن کر وہ اپنی جگہ تھمی۔۔۔۔
جواب دو مجھے۔۔۔۔۔اس کی مستقل خاموشی پر وہ چٹخے تو لب کچتے ھوۓ اس نے اپنے آنسوٶں کو یچھے دھکیلا
دیکھیں زر۔۔۔۔۔۔ پلیز مجھے ایک موقع۔۔۔۔۔سسکی نے بات مکمل نہ ھونے دی
تم۔۔۔۔بچ جاٶ مجھ سے مشعل۔۔۔۔۔
نہیں بچنا مجھے۔۔۔آپ سے
دانت پیس کر وہ بولے تو مشعل بغیر سوچے سمجھے کہہ گٸی جسے سن کر زاویار ایک پل کو ٹھٹکے
سیٹ کرتا ھوں تمہارا دماغ میں آ کر۔۔۔۔بھناتے لہجے میں کہہ کر انھوں نے فون رکھنا چاہا جب اسکی آواز اور اس آواز میں چھپا کرب محسوس کر کے وہ جہاں کے تہاں رہ گٸے
ابھی کچھ باقی ھیں آنکھ کی سانسیں
نہ آۓ تو یہاں شام کے نوحے ہونگے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یہ تو ممکن ھی نہ تھا کہ اس کے پر تپش اور دلگرفتہ سے لہجے کو سن کر وہ سکون سے رہتے مگر ان کی ناراضگی ابھی بھی برقرار تھی نگہت کے ہزار کہنے اور ابراھیم کی بے انتہا کوشش کے بعد انھیں واپس آنا ھی پڑا تھا مگر وہ مشعل کا سامنا نہیں کرنا چاھتے تھے کہ وہ جانتے تھے وہ لڑکی ہتھیار ھی ایسا یوز کرے گی کہ چاروں خانے چت ھو جانے کے سوا کوٸی چارہ نہ بچے گا
”عورت کے آنسو۔۔۔۔۔دِکھنے میں بے حد بے ضرر اور نمکین پانی کے چند قطرے۔۔مگر مرد کے دل کی سنگلاخ چٹانوں کو ریزہ ریزہ کر دینے کی صلاحیت سے مالامال ھوتے ھیں۔۔۔بے بسی سے اپنی انا۔۔۔غرور ناراضگی اور ساری جھنجھلاہٹ کو ہوا مں تحلیل ھوتا دیکھتی رہ جاتی ھے یہ مرد ذات۔۔کچھ ایسی ھی دلفریب طاقت ھوتی ھے عورت کے آنسوٶں میں“
اگلے ایک گھنٹے میں وہ گھر پہنچ جاتے۔۔۔جسم و جاں کی تھکن دوگنی ھوٸی تھی
یہ تو وقت کی چال ھی سامنے لے آٸی ھے ورنہ
اس ملاقات کو ملاقات نہ سمجھا جاۓ
_____
آج وعدہ ھے ان کے آنے کا
آج اٹکی ھے جان دستک پر
باربار گھڑی کی طرف نگاھیں کرتی ھوٸی بے چینی سے برتن ادھر ادھر پٹختے کبھی پانی پیتے تو کبھی یونہی سالن میں چمچہ چلاتے ھوۓ وہ جلے پیر کی بلی کی طرح بھٹک رہی تھی جب ثانیہ نے اسے اسکی حالت کے پیشِ نظر شعر پڑھ کر چھیڑا ۔۔۔کچھ پل ساکت ھونے کے بعد وہ پھر سے سر جھٹکتے بےچین روح بنی تھی
کوٸی کہہ دے میرے گلاب سے
تیری خوشبو اداس ھے آ جا
ایک ایک رواں انکی دید کا طلبگار اور انکی آمد کا منتظر تھا نگہت سے بھی اسکی کیفیت پوشیدہ نہیں تھی تب ھی وہ مسکراہٹ لبوں میں دباۓ چھپاۓ اپنے کاموں میں مشغول تھیں
زاویار نے کسی کو بھی اٸیر پورٹ آنے سے منع کیا تھا تو ابراھیم بھی آج گھر ھی موجود ٹی وی لاٶنج میں نیوز دیکھتے سیاستدانوں کی عقل کو کوس رہے تھے تب ھی بیل ھوٸی
ابراھیم اپنے جگہ سے اٹھتے ھوۓ گیٹ کھولنے کو گٸے مشعل کا رواں رواں قوتِ سماعت بنا انکی آواز کو ترسا
نگہت اور ثانیہ جو مسلسل کچن میں کچھ نہ کچھ بنانے میں مصروف تھیں باہر کیطرف لپکیں ثانیہ نے اسے بھی ساتھ کھینچا مگر وہ نفی میں سر ہلاتی وہیں رک کر ان کے اندر آ جانے کا ویٹ کرنے لگی
سب کی معیت میں وہ اندر داخل ھوۓ اس نے کچن کے دروازے کی اوٹ سے انھیں دیکھا تھکاوٹ زدہ چہرہ اور بکھرے سے بال جیسے لمبی مسافت کسی قافلے کے سنگ کرتے آۓ ھوں
ثانیہ پانی کی بوتل لینے کچن میں آٸی تو اسے دیوانوں کی طرح اپنے بھاٸی کو تکتے پایا
تمہارانام۔۔۔۔۔بلکہ تم دونوں کا نام ھیر رانجھا ھونا چاھیے تھا۔۔۔۔۔یہاں تم بے چین وہاں وہ بے تاب
کچھ کہہ رہے تھے؟
نہیں کیوں؟؟ثانیہ نے اپنی مسکراہٹ ضبط کی
نہیں ویسے ھی پوچھا کہ۔۔۔۔۔۔میرا۔۔۔۔میراپوچھا انھوں نے؟
ججھکتے ھوۓ اس کےپوچھنے پر ثانیہ کو اس چھوٹی سی لڑکی پر بے ساختہ پیار آیا جو اس کے بھاٸی سے بہت محبت کرتی تھی
پوچھا تو نہیں ھے مگر نظریں ڈھونڈ رہی ھیں تمہیں۔۔۔۔
سچ۔۔۔۔ایسا لگا تمہیں؟ایک آس سے اس نے پوچھا تو ثانیہ نے حیرت سے اسے دیکھا
آف کورس یس۔۔۔چلو باہر آٶ
اسےکہتی وہ باہر نکلی تو مشعل کے ہاتھ پیر پھولنے لگے۔۔کیسے انکا سامناکرونگی جس پر الزامات کی بوچھاڑ کردی تھی میں نے افففف
ناخن چباتے وہ بے حد کنفیوز تھی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
۔نہا کرچینج کرنے بعد وہ ڈاٸننگ ٹیبل تک آٸے چٸیر گھسیٹ کر بیٹھنے تک انھوں نے سب پر نگاہ تک نہ ڈالی تھی کیونکہ اب وہاں ان کے علاوہ چار لوگ تھے اور نٸے آنے والے کو فی الحال وہ دیکھنا بھی نہیں چاھتے تھے اور وجہ یہ نہیں تھی کہ انھیں غصہ بہت تھا بلکہ وہ جانتے تھے کہ اسے دیکھ لیں گے تو غصہ باقی نہیں رھے گا
اَلسَّلامُ عَلَيْكُم،۔۔۔۔نرم سی سہمی آواز کو سن کر انکا نوالا بناتا ہاتھ رکا
نظر اٹھا کر نگہت اور ابراھیم کو دیکھا جو اسے اشاروں میں ھی مشعل سے بات کرنے کا کہہ رہے تھے جبکہ ثانیہ ان دونوں کی نارضگی سے انجان تھی
وَعَلَيْكُمُ اَلسَّلامُ،۔۔۔۔۔انھوں نے جواب ھی ایسے دیا تھا جیسے لٹھ کھینچ کے دے مارا ھو وہ مزیدروہانسی ھوٸی اور ڈبڈباٸی آنکھوں سے نگہت کو دیکھا تو انھوں نے دور بیٹھے اسے پچکارا
کوٸی مجھے بتاۓ گا کہ یہ ھو کیا رہا ھے؟اور بھاٸی آپ مشی کی طرف دیکھ ھی نہیں رہے ایسا کیا ھوا ھے کہ بابا اور ماں دونوں ھی کبھی آپ کو اشارے کرتے ھیں کبھی مشی کو۔۔۔۔۔میں کیا کباب میں ہڈی ھوں؟؟؟
پہلے چڑتے اور پھر ذرا دکھ سے ثانیہ نے کہا تو زاویار کے چہرے پر بھی مسکراہٹ آٸی جبکہ مشعل اسی پوزیشن میں بیٹھی تھی
زاویار اور مشعل کی کچھ ان بن ھو گٸی آپس میں۔۔۔۔تو ناراضگی چل رہی ھے ہمیشہ کی طرح بس کچھ دیر کی ھی ھوگی پریشان نہ ھو تم
نگہت کے وضاحت سے جواب دینے پر زاویار نے اپنے ہونٹ بھینچے۔۔۔۔
کھانا کھانے کے بعد مجھے ریسٹ کرنا ھے تو کوٸی بھی روم میں نہ آۓ۔۔۔۔کوٸی بھی مطلب کوٸی بھی۔۔۔۔
ذرا کی ذرا نظر اٹھا کر اس کی طرف دیکھا مگر نگاھیں اس کے ہاتھوں سے آگے دیکھنے ک جسارت نہ کر سکیں جنہیں وہ آپس میں جکڑے ٹیبل پر رکھے بیٹھی تھی
ممانی۔۔۔۔۔۔!!
ان سے کہیں۔۔۔۔مجھے ان سے بات کرنی ھے
گھٹے گھٹے انداز میں وہ بولی تو نوالہ ان کے حلق سے نیچے اترنے سے انکاری ھوا بمشکل نگلنے کے بعد پانی کا گھونٹ پی کر انھوں نے گہری سانس لی
اس سے کہہ دیں ماں۔۔۔کہ مجھے اس سے۔۔۔ کوٸی بات نہیں کرنی
اس سے پہلے کے نگہت کوٸی جواب دیتیں وہ جھٹکے سے اپنی چٸیر سے اٹھے
زاویار۔۔۔۔۔۔کام ڈاٶن اینڈ بی ہیو یورسیلف
اوکے آٸم سوری۔۔۔۔کیا اب پلیز میں جاٶں بہت تھکا ھوا ھوں
ابراھیم کے روکنے اور تنبہیہ کرنے پر وہ سنبھلے اور بے چارگی سے کہا تو اثبات میں سر ہلا کر ابراھیم نے جانے کی اجازت دی
لمبےلمبے ڈگ بھرتے ھوۓ وہ اپنے روم میں چلے گٸے اور کب سے رکے ھوۓ مشعل کے آنسوٶں کو بھی رستہ ملا تھا
ایسا کیا ھوا ھے ان دونوں کے درمیان ؟؟
ابراھیم نے سنجیدگی سے پوچھا تو شرمندگی سے مشعل نے سر جھکایا ثانیہ بھی پرجوش ھوٸی یہ جاننے کو کہ جانے کونسا راز ھے جو وہ نہیں جانتی
بچوں کی آپس میں کوٸی غلط فہمی تھی جو اب دور ھو گٸی ھے مگر زاویار۔۔۔۔۔۔مردانہ انا کو بیچ میں لے آیا ھے ۔۔۔۔ مان جاۓ گا بیٹا۔۔۔۔اب ایک عرصہ تمھاری غلط فہمی کی وجہ سے اذیت سہی ھے اس نے تو اتنی جلدی تو وہ اپنی تکلیف نہیں بھولے گا۔۔۔۔مگر مان جاۓ گا ڈونٹ وری
سر ہلاتے ھوۓ اس نے اپنے آنسو پونچھے اور اک نٸے عزم سے خود کو تیار کیا
تو بول پیا۔۔۔۔!!
میں سنتی ھوں
تو دل کو توڑ کے ریزہ کر
میں پھر پلکوں سے چنتی ھوں
یہ تن من تیرا روگی ھے
دے ہجر یا مرھم میل پیا
جسے جی چاھے کھیل پیا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کوٸی اور بات تو نہیں ھوٸی۔۔۔۔۔سندس کے مسلسل حسن کا نام لیکر اسے چھیڑنے پر وہ تنگ ھوتی موضوع بدل گٸی
کونسی بات؟کچھ ھونا تھا؟
لب دباتے اس نے پوچھا
ارے وہ تمھارا فیملی فرینڈ۔۔۔۔۔اسکا پوچھ رہی ھوں زچ ھوتے اس نے پوچھا تو وہ قہقہہ لگا گٸی
بہت ھی عمدہ طریقے سے ہینڈل کیا تم نے ولید بھاٸی کو۔۔۔۔۔۔۔واپس چلے گٸے وہ۔۔۔اور اپنی ماما کو یہ کہا ھے کہ انکی پسند سے شادی کریں گے جہاں وہ چاھیں
سندس کہ اطلاع پر اس کی مسکراہٹ میں اضافہ ھوا
چلو اچھی بات ھے۔۔۔۔دیر آید درست آید
اوکے رکھتی ھوں فون اب۔۔سب کو سلام کہنا میرا اور اپنا خیال رکھا کرو
سندس کے ہاں نٸے مہمان کی آمدآمد تھی تو وہ اسے دعاٸیں دینےلگی جسے سن کر آمین کہتے ھوۓ وہ مشکور ھوٸی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
نماز پڑھنے کے بعد اس نے ثانیہ کو ایک بار پھر نماز کے لیے اٹھایا تو وہ کسلمندی سے آنکھیں مسلتے ھوۓ اٹھی اور ایک نظر اسے دیکھا
تم کیا روتی رہی ھو؟
نہیں تو؟
میں کیوں روٶگی بھلا؟
مشی یار۔۔۔۔۔اس کے قریب ھو کر وہ اسکا ہاتھ تھامتے ھوۓتاسف سے دیکھنے لگی
میں یہ نہیں پوچھونگی کہ کیا بات ھوٸی ھے تم دونوں کے بیچ۔۔مگرمیں اتنا ضرور جانتی ھوں کہ جب احساسِ ندامت ھونے لگے ناں۔۔۔
تو اسے خود تک محدود نہیں رکھنا چاھیے۔۔۔کہہ دینا چاھیے اس شخص سے جس سے ھم نادم ھوتے ھیں۔
پتا ھی مشی۔۔۔۔۔؟
کوٸی بھی رشتہ ناں۔۔۔۔۔انا کے ساتھ چل ھی نہیں سکتا۔۔۔۔اور جو ریلیشن شپ تمہارا ھے ان کیساتھ۔۔۔اس میں تو ایسے سارے سیاہ جذبوں کو چاھیے تھا کہ حسرت سے تمہیں تکا کرتے۔۔مگر تم تو خود ھی مایوس ہو چلی ھو۔۔۔۔جو دکھ دیتا ھے ناں۔۔۔سکھ بھی وہی ذات عطا کرتی ھے
میں جانتی ھوں کہ بھاٸی آج آفس لازمی جاٸیں گے اور اس سے پہلے تم۔۔۔۔۔۔ہاں تم انھیں مناٶگی
کیونکہ اگر تم نے یہ آج نہ کیا تو ھو سکتا ھے وہ سمجھیں تمہیں پرواہ ھی نہیں انکی ناراضگی کی
تمہیں یہ کرنا ھے سو گیٹ ریڈی۔۔اسکا گال تھپکتے وہ واش روم وضو کرنے چلی گٸی تو گہری سانس بھرتے ھوۓ اس نے وقت کا بھی احساس نہ کیا اور ان کے روم کی طرف چل دی
صرف اتنا ھی بتا دے میرے خاموش مسیحا
اور کس کرب سے گزروں کہ تٌو بول اٹھے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
نماز پڑھنے کے بعد جی چاھا دوبارہ سو جاٸیں۔۔۔جاگنگ کرنے کا موڈ نہیں بن رہا تھا مگر پھر دل کی مانتے ھوۓ بیڈ کی طرف بڑھے ھی تھے جب ہلکی سی دستک کے بعد وہ اندر داخل ھوٸی
اسکا چہرہ یکھنے کی انھوں نے غلطی نہ کی تھی اور کبرڈ سے اپنا ٹراٶزر شرٹ کھینچ کر باہر نکالا تا کہ منظر سے غاٸب ھو سکیں
انھیں اسکی موجودگی اپنے عین پیچھے محسوس ھوٸی تو کچھ پل کو آنکھیں بند کیے خود کو کمپوز کرنے کے بعد جیسے ھی پلٹ کر اسکی ساٸیڈ سے نکلے تو مشعل نے انکا ہاتھ تھاما
بعض اوقات الفاظ وہ کام نہیں کر پاتے جو ایک لمس کر دیتا ھے
”کسی کو اتنا نظر انداز مت کریں کہ وہ آپ کے بغیر جینا سیکھ لے“
تم نے سیکھ تو لیا ھے جینا۔۔۔۔ ”میرے بغیر“
پلیز معاف کر دیں۔۔۔ایک موقع دیں مجھے
تم نے دیا تھا ایک موقع؟
بنا پلٹے ھی انھوں نے شکوہ کیا
غلطی ھوگٸی۔۔۔۔اب بس کریں ناں۔۔۔ختم کریں یہ ناراضگی۔۔۔دیکھیں میں رورہی ھوں ”زر“
کیا اب میرے آنسو بھی بے اثر ھو گٸے ھیں۔۔۔میری طرح؟؟؟
وہ گھوم کر ان کے سامنے آٸی مگر زاویار کی مسلسل نظریں کسی اور جانب ھونے پر اس نے گلوگیر لہجے میں کہا تو انھوں نے اپنی آنکھیں سختی سے میچ کر کھولیں اور اسے دیکھا
خاموشی کی کتنی زبانیں ھوتی ھیں ناں۔۔۔۔دکھ۔۔گلہ۔۔۔غصہ۔۔۔ضد۔۔۔انا۔۔۔۔بے بسی۔۔۔۔اور محبت
جیسے مسلسل کسی مسافر کو صحرا میں آبلہ پا بھٹکنے کے بعد سایہ دار شجر ملے اور اسکی چھاٶں میں کچھ دیر سستانے کے بعد سکون کی کیفیت روح میں اترے
کچھ ایسا ھی احساس زاویار کے دل پر دھیرے دھیرے اترنے لگا
رویا رویا گلابی چہرہ ,بھیگی آنکھیں, کپکپاتے ھوۓ لب اور دلی اضطراب کی بدولت انگلیاں چٹخاتی ھوٸی انکی متاعِ جاں
کتنا درست خیال تھا انکا اپنے بارے میں کہ اسکا چہرہ دیکھتے ھی ساری ناراضگی اڑنچھو ھو جاۓ گی رات نگہت اور ابراھیم بھی ان کے روم میں آ کر انھیں سمجھا گٸے تھے کہ اب بس کرے۔۔۔مشعل کی جان ہلکان مت کرے
مگر کوٸی یہ نہیں جانتا تھا کہ وہ خود کہاں اس سے اتنی دیر ناراض رہ پاٸیں گے
تمہیں بھی کہاں آیا پھر منانے کا ہنر
تم ملنے بھی آٸی ھو تو بال باندھ کر
ٹراٶزر شرٹ کو دور صوفے پر اچھال کر اس کے جوڑے میں مقید بالوں کو سہلاتے ھوۓ انھوں نے دھیرے سے کہا تو وہ اپنا رونا بٌھولی تھی
انھوں سے اسکے بالوں کو جوڑے کی قید سے آزاد کروایا جو بکھر کر چہرے کے اطراف پھیل گٸے تھے
آ۔۔۔آپ مان گٸے ناں؟؟
اٹکتے ھوۓ اس نے جواب طلب کیا تو وہ نفی میں سر ہلانے لگے
اممم ھمممم۔۔۔۔۔۔۔ابھی نہیں۔۔۔۔کچھ اور کوشش کرو شاٸد مان جاٶں۔۔۔۔
مطلب۔۔۔۔؟؟میں اور روٶں؟؟
نہیں۔۔۔۔سے سمتھنگ سپیشل ٹومی” مسز زاویار“
ان کے طرزِتخاطب پر وہ شرم سے چٌور ھوٸی پھر کچھ یاد آنے پر انھیں گھور کے دیکھا
میرا ٹیسٹ آپ کے پاس تھا ناں۔۔۔اورمجھے آپ نے کہا کہ پھاڑ دیا ھے۔۔۔۔جھوٹ کیوں کہا؟بتاٸیں ذرا مجھے
کمر پر دونوں ہاتھ رکھے لڑاکا طیارہ بنی ھوٸی وہ ان سے بازپرس کر رہی تھی
اگر وہ ٹیسٹ تمہیں دے دیتا تو۔۔۔۔جو اس پر لکھا تھا تم نے اسکا کیا جواب دیتی تم؟؟؟
مسکراہٹ دباتے ھوۓ انھوں نے پوچھا تو وہ ہونق ھوٸی بے مقصد اِدھر اٌدھر دیکھنے لگی
اور میری غیر موجودگی میں تلاشی لی ھے تم نے یہاں کی۔۔۔۔وجہ؟؟
وہ اب ابرواچکاۓ اس سے پوچھ رہے تھے تو وہ اتراہٹ سے گردن اکڑا گٸی
تو۔۔۔۔۔۔؟؟؟میرا ھی روم ھے یہ۔۔۔اور اسکی ہر شے پر میرا حق ھے
ھے ناں؟؟؟
جواب لبوں سے نہیں آنکھوں سے آیا تھا جسے نظروں سے ھی پڑھتے مشعل کی نظریں جھکیں
جو شخص دل کو دلکش لگے تو اسے بار بار یہ جتایا نہیں جاتا کے جاں سے پیارے لوگوں کے کس عمل سے روح چھلنی ھوتی ھے۔۔میرے نزدیک یہ اس شخص کی محبت کی توہین ھے
تم نے جو کیا جیسے کیا۔۔۔۔ھم اس پر بات نہیں کریں گے مگر۔۔۔۔۔کیا اب میں اعتبار کے لاٸق ھوں مشعل؟
یہ نہیں چاھا کہ اب تم شرمندہ ھو جاٶ۔۔۔۔اسے شرمندگی سے چہرہ جھکاتے دیکھ کر وہ جلدی سے کہنے لگے
دل ڈر سا گیا تھا تمہاری اس حرکت سے۔۔۔۔شکر ھے تم اس رات میرے پاس آگٸی تھی اگر جو اپنے ھی روم میں رہتی تو جانے کیا ھو جاتا۔۔۔۔
آٸم سوری۔۔۔۔۔۔
ڈونٹ بی۔۔۔۔۔پلیز
مشعل کی گھٹی آواز میں معذرت پر وہ اسے منع کرنے لگے اس کے چہرے پر آٸی اک آوارہ سی لٹ کو پرے کیا پٌر شوق نگاھوں سے کان میں جھولتی چھوٹی سی بالی میں لٹکتے موتی کو ہلکورے لیتے دیکھا
انکی نظروں کے تقاضے سے گھبراتی وہ ایکدم انھیں ساٸیڈ پر کرتی ھوٸی جانے لگی محض چند قدم پر اسے جھٹکا کھا کر رکنا پڑا
پلٹ کر دیکھا تو اس کے دوپٹے کا ایک کونا پکڑے وہ کبرڈ سے ٹیک لگاۓ اسے دیکھ رہے تھے
ابھی مجھے کسی نے کہا کہ یہ اسی کا روم ھے تو اسے یہاں سے جانا بھی نہیں چاھیے
متبسم لہجے میں کہتے ھوۓ وہ اسے سٹپٹانے پر مجبور کر گٸے
روم۔۔۔۔تو میرا ھی ھے مگر۔۔۔۔
مگر۔۔۔۔؟؟؟
تب آٶنگی جب۔۔۔۔ ماموں ممانی کی پرمیشن سے یہاں لاٸیں گے مجھے۔۔۔۔
یہ کہتی وہ دوپٹہ چھڑواتی روم سے بھاگی اور وہ طمانیت سے مسکرا دٸیے۔۔۔۔
اک بار جو ہنس کر دیکھو تم
سب مٹ جاٸیں گے روگ پیا
لے تیرے ہر سٌو بکھر گٸے
ھم خوشبو جیسے لوگ پیا
دروازے کے پاس رک کر یہ اشعار پڑھتی وہ انھیں خوشگوار حیرت میں مبتلا کر گٸی تو وہ اسکی طرف بڑھے مگر تب تک وہ وہاں سے جا چکی تھی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہاۓ کتنی پیاری لگی ھے ناں۔۔۔اپنی دکھاٶ تم۔۔۔۔ثانیہ مشعل کو اپنی مہندی دکھاتی ھوٸی اس کے ہاتھوں پر لگی مہندی دیکھنے لگی
واہ یار۔۔۔۔کتنا مزے کا رنگ آیا ھے زبردست
مشعل نے اپنے ہاتھوں کو اشتیاق سے دیکھا اور اسے یاد آیا کہ زاویار نے سختی سے منع کیا تھا ہاتھوں پر بیل بوٹے بنانے کو
انھیں مہندی سے رنگی پوریں پسند تھیں اور مشہورِزمانہ گول ٹکیا جو پرانی بوڑھی عورتیں بنایا کرتیں
اس کے نرم و نازک ہاتھوں پر یہ سادہ سا ہنر بھی حسین لگ رہا تھا
مہندی کی تقریب ختم ھوۓ دو گھنٹے ھو چکے تھے اور اسی تقریب میں ان چاروں کے نکاح کا حسین فریضہ بھی سر انجام دیا جا چکا تھا مشعل اور ثانیہ کے ہاتھوں پر لگی مہندی سوکھ کر آدھی اتر چکی تھی جسے دھو کر وہ دونوں اک دوجے کو دکھا رہی تھیں صبح کے چار بج رہے تھے جب مشعل نے وضو کر کے شکرانے کے نوافل ادا کرنے کے بعد کچن میں جا کر کافی بناٸی اور آنے والی زندگی کا سوچتے مسکراہٹ نے ہونٹوں سے الگ نہ ھونے کی ٹھانی تھی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تھکاوٹ سے بھرپور دن کا اختتام بہت مسرور کر دینے والا تھا
عروج مستقل اپنے گاٶں ھی تھی جبکہ سونیا خالہ کے بیٹے کی شادی میں فیملی سمیت آٶٹ آف سٹی تھی تو مشعل کی فرینڈز شادی میں شرکت نہ کر پاٸی تھیں
ابراھیم نگہت زاویار مشعل ثانیہ اور حسن فیملی فوٹو کے بعد خوش گپیوں مں مصروف تھے کچھ قریبی رشتہ دار ادھر ادھر اونگھنے لگے تو باتوں کا سلسلہ تھما اپنے اپنے روم میں سب کو پہنچا کر نگہت اور ابراھیم اپنے روم میں آۓ
زندگی بے حد سہل ھوگٸی ھےاللہ پاک کا کرم ھے جو اس نے اس قدر نوازا ھے جھولی تنگ پڑنے لگی ھے ابراھیم۔۔۔بات کرتے کرتے نگہت کی آنکھوں میں نمی آٸی
بے حد مہربان ھے وہ عظیم رب۔۔۔۔جو خطاٸیں دیکھ کر نہیں اپنی رحمت کے مطابق عطا کرتا ھے
ان کی بات پر نگہت مسکراٸیں اور اثبات میں سر ہلایا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
گفتگو پیار کے عنوان پہ کرتے کرتے
میری جانب وہ جو تکتی ھے تو حد کرتی ھے
سانولی سرخ دوپٹے کا بنا کر پردہ
اپنی پلکوں کو جھپکتی ھے تو حد کرتی ھے
تڑ تڑ چلتی زبان کو بریک لگانے کے بھی سو طریقے تھے حسن کے پاس مگر اس طرح گھمبیر سے انداز میں فسوں طاری کرتے اس کی بولتی بند کی تھی کہ وہ خود ھی عش عش کر اٹھا
دو من میک اپ تھوپ کر کیا سجی سجاٸی بیل لگ رہی ھو تم۔۔۔۔وہ جو مزید کسی شوخ بات کی منتظر اپنی دھڑکنوں کو شمار کر رہی تھی ایسی انوکھی راۓ پر ساری شرم کو بالاۓ طاق رکھتی اسے گھورنے لگی
تمہیں تمیزنہیں ھے؟؟؟یہ۔۔۔ایسے تعریف کرتے ھیں نٸی نویلی دلہن کی۔۔۔۔پیچھے ہٹو دھو کر آتی ھوں یہ دو من کا میک اپ اور اب خبردار مجھ سے بات بھی کی
غصے سے تن فن کرتی ھوٸی ثانیہ بیڈ سے اتری جب وہ ہنستے ھوۓ اسکی راہ میں حاٸل ھوا
کیا کروں یار۔۔۔۔میری رگِ ظرافت پھڑک اٹھتی ھے تمہیں دیکھ کر۔۔۔
مسکراہٹ روکتے ھوۓ وہ بولا تو اس نے شاکی نگاھیں اٹھاٸیں
ارے رے۔۔۔۔۔زندگی۔۔۔۔مذاق کر رہا تھا
سمجھتی نہیں ھو بات کو۔۔۔ نکل آتی ھو رات کو۔۔۔ پھر کہتی ھو اندھیرا ھے
ہنستے ھوۓ وہ بولا تو اسکی انوکھی سی باتوں پر وہ بھی ہنسنے میں اسکا ساتھ دینے لگی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
شکریہ۔۔۔۔۔
کس لیے؟
آپ نے زنیرہ کے سامنے بھی ایسا کچھ نہیں کہا جس سے لگتا کہ اسے میں غلط سمجھ بیٹھی تھی
اسکی ہتھیلیوں پر لگی مہندی کو دیکھتے ھوۓ وہ مسکراۓ
میں نے کہا تھا ناں مشعل کہ ہمیں ڈھانپ کر وہی رکھتا ھے جس کے لیے ھم قیمتی ھوتے ھیں۔۔۔کیا مجھے ابھی بھی یہ بتانے کی ضرورت ھے کہ تم کتنی قیمتی ھو میرے لیے؟
نچلا لب دباتے ھوۓ اس نے شرارت سے اثبات میں سر ہلایا توانھوں نے ایک ابرو اچکا کر اسکی یہ جان لیوا حرکت دیکھی
بتاٶں؟؟؟
نہ۔۔۔نہیں۔۔۔وہ آپ کو پتا میں نے آپ کو کچھ خاص سنانا ھے
جلدی سے بات بدلتی وہ بولی تواسکی کوشش پر مسکراتے ھوۓ رسٹ واچ اتارتے اسےدیکھنے گے
اچھا سناٶ پھر۔۔۔
نظریں نیچی کیے اس نے گہرا سانس لیا اور انکی طرف ایک بار دیکھ کر پھر نظریں جھکاٸیں
میری تھم تھم جاوے سانس پیا
میری آنکھ کو ساون راس پیا
تیرے پیر کی خاک بنا ڈالوں
میرے تن پہ جتنا ماس پیا
تو ظاہر بھی تو باطن بھی
تیرا ھر جانب احساس پیا
مجھے سارے درد قبول سجن
مجھے تیری ہستی راس پیا
میرا شام شام سلونا شاہ پیا
مجھے مار گٸی تیری چاہ پیا
ان الفاظ کے آخر تک اس کی آواز لرزنے لگی اسکے ہاتھ کی انگلی میں رِنگ پہناتے زاویار کی نگاھیں بولنے لگیں
سب سیاہ جذبے اپنی موت آپ مرتے ھوۓ ہمیشہ کے لیے انکی زندگی سے دور ھوۓ
یہ ایک نٸی زندگی کی شروعات تھی جسکا آغاز ھی یقین اعتماد اور بھروسے کیساتھ ھوا تھا

–**–**–
ختم شد
——
آپکو یہ ناول کیسا لگا؟
کمنٹس میں اپنی رائے سے ضرور آگاہ کریں۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Subscribe For Latest Novels

Signup for Novels and get notified when we publish new Novel for free!




%d bloggers like this: