Mera Sham Slona Shah Piya Novel By Bella Subhan – Episode 4

0
میرا شام سلونا شاہ پیا از بیلا سبحان – قسط نمبر 4

–**–**–

بس صرف دو ماہ۔۔۔۔۔۔یہ کوٸی بات نہیں ھوتی بھاٸی۔۔اتنی عرصے بعد آٸیں ھیں تو صرف دو ماہ کیلیۓ
دوسال مزید ھی تو رہ گٸے ھیں سٹڈی کے پھر یہیں رھونگا ھمیشہ
مشعل کے منہ بسورنے پر حسن نے اسکےسر پہ ہاتھ رکھ کر اسے پچکارا تھا
لاٸیں میں آپ کی ہیلپ کردوں۔۔۔۔بلکہ سیٹ کردونگی سارے کپڑے کبرڈ میں
اسنے پیار سے بھاٸی کو دیکھتے کہا تھا
مشی یہ یقیناًخواب ھی ھوسکتا ھے کہ تم کام کرنے کا بول رھی ھو۔کافی چینج آیا ھے اور اچھا چینج ھے
حسن نے اسے چھیڑا تھا
بھاٸی۔۔۔۔!
اس نے خفگی سے اسے دیکھتےکہا
ارے۔۔۔ جسٹ کڈنگ
اچھا ثانی کیلیۓ کیا لاۓ ھیں آپ؟
اوہ اچھا یاد دلایا ابھی دے کر آتا ھوں
بیگ سے کچھ نکالتے وہ باھر کی طرف لپکا تھا
اور میرے لیے؟؟؟
عجلت میں روم سے باھر نکلتے نکلتے ھی حسن رکا اور پھر شیطانی مسکراہٹ اس کے چہرے پر آٸی تھی
تم میری کبرڈ سیٹ کروذرا پھر میں پوچھونگا کہ ثانیہ جیسی ٹاٸپ کا ھی گفٹ چاھیےتمہیں یا نہیں
تیزی سے کہتا وہ نکلا تھااور وہ اس کے کام میں لگی تھی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
حسبِ معمول کچن سمیٹ کر وہ روم میں آٸی
ڈریسنگ ٹیبل کےسامنے کھڑی وہ اپنی چٹیا کے بل کھولتے ھوۓ کوفت کا شکار تھی
صبح کے بناۓ بال بری طرح الجھے ھوۓ تھےبالوں کو مکمل کھول کر اب ان پر ھیٸر برش سے ظلم کیا جا رھا تھا
جب وہ اندر داخل ھوا
بالوں کیساتھ جنگ کرتے ھوۓ اس نے اسے مڑ کے دیکھا
کیا ھے؟؟؟؟
عجیب پھاڑ کھانے والا انداز تھا
وہ پل میں ہونق ھوا
اگلے ھی لمحے اسکی ہنسی چھوٹی تھی۔۔۔۔
پہلے کم ڈراتی ھوتم جو یہ جھاڑیاں بھی کھولی ھوٸی ھیں
تکلیف بتاٶ؟؟؟بھنویں سکیڑتے اس نے پوچھا
اوہ ہاں میں نے سوچا تمہیں گفٹ دے دوں تمھارا مگر تمھارا تو موڈ ھی آف ھے تو چلو کل سہی
ڈرامے کرتا وہ جیسے ھی جانے کے لیے مڑا تو وہ ہیٸر برش ڈریسنگ ٹیبل پر پھینکتی اسکی راہ روک گٸی
کوٸی نہیں آف واف۔۔۔۔۔دکھاٶ کیا ھے؟دبےدبے جوش سے اسکا چہرہ تمتما رھا تھا
اس نے بغور یہ سنہری سا روپ دیکھا
دے بھی دو۔۔۔۔۔۔
اسکے لاٶڈسپیکر پر وہ چونکا
اوہ ہاں یہ لو۔۔۔کیا یاد کروگی کہ کتنا اچھا ھوں میں
اس پراحسان کرتے ایک گفٹ پیک اسے پکڑایا تھا
وہ روم صوفہ پر بیٹھتے اسے کھولنے لگی۔آٶ ناں بیٹھو تم بھی
خوشگوار موڈ سے اسکو اپنےساتھ بیٹھنے کا کہا گیا تو وہ سر جھٹکتا ہنسا تھا
تم یہ کھولو ناں۔۔۔۔۔۔پھر بتانا ساتھ بیٹھوں یا نہیں
دوسراجملہ بڑبڑاتے ادا کیا گیا جسکو وہ سن بھی نہ سکی تھی
گفٹ کو انپیک کرتے ھی اسکی آنکھیں ساکت ھوٸیں اسی تیزی سے حسن نے ہنسی کا گلا گھونٹتے اپنی آنکھیں میچی تھیں
واٸٹننگ فیشل کِٹ اسکا منہ چڑا رھی تھی
یہ کس لیے؟
وہ خونخوار نظروں سےدیکھتے بولی
بھٸی آج کل لڑکیوں کا گورا رنگ بہت میٹر کرتا ھے وہ زمانے گٸے جب سانولی سلونی کی چوڑیاں شڑنگ کرتے ھی لڑکے ہاۓ ہاۓ کرتے تھے
اس کی آنکھوں سے شرارت پڑھتے ھی وہ پل میں شعلہ جوالا بنی تھی
حسن۔۔۔۔۔۔۔۔؟؟؟
وہ پھنکاری
لو جی۔۔۔۔۔ایک تو بھلا کرو اوپر سے بھرم بھی دیکھو تمھارے ہونہہ۔۔۔۔۔
ہنسی روکتے اسکا چہرہ سرخ ھو رھا تھا
تھارے دل میں کیوں درد جاگ رھا ھے میری سانولی رنگت کا؟تم سےمطلب؟؟؟
ارے۔۔۔اگلے گھر نہیں جانا کیا۔۔۔۔؟سسرال والے کیا کہیں گے کہ کوٸی ٹوٹکہ کوٸی فیشل ھی کرواتی رھتی تو رنگت نکھر جاتی
بھٸی مجھے توبہت ٹینشن ھےتمھاری۔۔۔ جانے کبھی پسند بھی آٶ کسی کو یا یہیں رہ جاٶ ھمیشہ کے لیے ھمارے سینے پر مونگ دَلنے کو
دہلنے کی ایکٹنگ کرتے کرتے وہ اسے غصے کے انت تک لے گیا
سنو لڑکی۔۔۔۔۔۔شادی کرنی ھے ناں؟؟
تمھیں کیوں مروڑ اٹھ رھے ھیں تم سے نہیں کرنی جو اتنا فکر مند ھو رھے ھو
شادی اور تم سے۔۔۔۔۔افففف مجھ سے تو امیجن بھی نہیں ھو رھا۔ابکاٸی کی ایکٹنگ کرتے اس نے اسے آگ ھی تو لگادی تھی
نکلو یہاں سے۔۔۔۔۔سردآواز میں وہ بولی تھی
ہاں ہاں جارھا ھوں۔۔۔۔۔۔اچھا سنو
بکو۔۔۔۔
تنفرسے وہ بولی تھی
دھیان سے یوز کرنا نکھر جاٶگی
اسےایک اور تیلی لگاتے وہ ہسنتے ھوۓ روم سے نکلا تھا
صوفے سے گفٹ اٹھا کر دراز میں پٹختے اسے دروازے پر کھٹکے کی آواز آٸی
پلٹ کراس نے دیکھا
ایک ہاتھ سے کان پکڑے آنکھیں میچتے مسکراہٹ لبوں میں دباۓ وہ سوری کرتا اسے مسکرانے پرمجبور کر گیا
گہری سانس بھرتے اسنے حسن کو دیکھا اور گڈ ناٸٹ بولا تو وہ سر تسلیم خم کرتا اب کی بار واقعی چلا گیا تھا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اگر یہ کہہ دو بغیر میرے نہیں گزارہ، تو میں تمہارا
یا اس پہ مبنی کوئی تاثر کوئی اشارا، تو میں تمہارا
غرور پرور، انا کا مالک، کچھ اس طرح کے ہیں نام میرے
مگر قسم سے جو تم نے اک نام بھی پکارا ، تو میں تمہارا
تم اپنی شرطوں پہ کھیل کھیلو، میں جیسے چاہوں لگاؤں بازی
اگر میں جیتا تو تم ہو میری، اگر میں ہارا ، تو میں تمہارا
تمہارا عاشق، تمہارا مخلص، تمہارا ساتھی، تمہارا اپنا
رہا نہ ان میں سے کوئی دنیا میں جب تمہارا، تو میں تمہارا
تمہارا ہونے کے فیصلے کو میں اپنی قسمت پہ چھوڑتا ہوں
اگر مقدر کا کوئی ٹوٹا کبھی ستارا تو میں تمہارا
یہ کس پہ تعویز کر رہے ہو؟ یہ کس کو پانے کے ہیں وظیفے؟
تمام چھوڑو بس ایک کر لو جو استخارہ ، تو میں تمہارا
ٹیرس پر کھڑے ریلنگ پر دونوں بازو پھیلاۓ وہ اسکو سوچنے میں مصروف تھے
انھیں اس کے رویے پر حیرت تھی وہ بہت کم انھیں مخاطب کرتی تھی اب بلکہ اب تو وہ ان کے پاس پڑھنے بھی نہیں آ رھی تھی حالانکہ نیکسٹ منتھ ایگزامز تھے اس کے
انھوں نے بارھا سوچا کہ ایسا کیا ھوا ھے جو وہ یوں لاتعلق سی رھنے لگی ھے
مگر کوٸی سرا ہاتھ نہ آ رھا تھا
دنوں پہلے گاڑی میں کی گٸی اپنی اس حرکت کے بارے میں انھیں یقین تھا کہ اس نے کچھ فیل نہیں کیا ھوگا
مگر وہ یہ نہیں جانتے تھے کہ عورت چاھے نظر پہچاننے میں دھوکا کھا جاۓ مگر لمس پہچانتے اسے دیر نہیں لگتی
ان کے گمان تک میں نہ تھا کہ وہ جو ان کو اب اگنور کرتی تھی درحقیقت اب ھی تو ان پر اسکی توجہ تھی
چاند کو تکتے حواسوں پر اسکا چہرہ چھایا
اس کے چہرے کی چمک کے سامنے سادہ لگا
آسمان پہ چاند پورا تھا مگر آدھا لگا
اچانک زنیرہ کی باتیں انھیں یاد آٸیں تھیں
”وہ تم سے محبت کرتی ھے زاویار مان لو میری بات میں نے اسکی آنکھوں میں دیکھی ھے وہ چیز تمھارے لیے۔۔۔۔اور تم اسکو بتا دو ناں سب کچھ پھر وہ بھی کچھ نہیں چھپاۓ گی تم سے“
یہ تو خیال ھی جان لیوا ھے۔۔۔۔۔اور اگر جو یہ سچ ھوا تو۔۔۔۔۔؟؟؟
آنکھیں موندے وہ اس کیفیت کو محسوس کر گٸے۔۔۔۔لبوں پر الوھی تبسم لیے وہ جیسے تصور میں ھی اس کے چہرے پر اپنی محبت کا عکس دیکھ رھے تھے
اممم ھممم چلو مِشو۔۔۔۔۔اب دیکھتے ھیں تمھارا مسٸلہ ھے کیا آج کل مجھ سے
شرارت سے انکی آنکھیں چمکی تھیں
اسے میں کیوں بتاٶں
میں نے اسکو کتنا چاھا ھے
بتایا جھوٹ جاتا ھے
کہ سچی بات کی خوشبو
تو خود محسوس ھوتی ھے
میری باتیں میری سوچیں
اسے خود جان جانے دو
ابھی کچھ دن مجھے
میری محبت آزمانے دو
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اٹھ جاٶ مشی اب۔۔۔۔۔پھر نہ کہنا کہ فلاں ٹیسٹ تھا جانا ضروری تھا چھٹی کیوں کرواٸی اٹھایا کیوں نہیں وغیرہ وغیرہ
وہ ٹس سے مس نا ھوٸی تو ثانیہ جھنجھلا گٸی
مِشووووو۔۔۔۔ اٹھ جا یار اب
اور اس نے مِشو نام سنتے پٹ سے آنکھیں کھولی تھیں
اٹھ گٸی ھوں۔۔۔۔گھڑی پر نگاہ پڑتےھی وہ چھلانگ مارتی بیڈ سے اٹھی تھی جیسے تیسےتیار ھو کر ماموں کو آوازیں دیتی وہ کچن تک آٸی مگر پتا چلا کہ وہ آفس جا چکےھیں
منہ پھلاتے وہ ڈاٸننگ ٹیبل پر بیٹھی تھی
بس پندرہ منٹ ھی لیٹ ھوٸی ھوں اور وہ چھوڑ کر چلے گٸے مجھے۔۔دیکھ لیں اپنے شوھر نامدار کے کام
نگہت سے شکوہ کرتی وہ سر جھٹک رھی تھی
تم بھی تو ٹاٸم پر نہیں اٹھتی ناں بیٹا۔۔۔چلو اب زاویار تمھیں ڈراپ کر دے گا حسن تو اٹھا نہیں ابھی
اس کے سر پر چپت لگاتے وہ بولی تھیں
وہ بےچینی سے کھڑی ھوٸی
”بس اب چھٹی ھی مار لیتی ھوں ممانی میں“۔۔۔۔ماں کی پیشکش اور اس کے انکار پر زاویار نے بغور اسے دیکھا تھا
” اب تیار تو ھو ھی چکی ھو“
چلو اب دیر ھو رھی ھے مجھے بھی۔۔۔
اس کے نہ نہ کرنے پر بھی وہ اسے زبردستی جانے پر آمادہ کر گٸے تھے
نگاھیں کھڑکی سے باھر جماۓ وہ مکمل ان سے بے خبر ھونےکی شاندار ایکٹنگ کررھی تھی
تم مجھ سے ناراض ھو؟
”نہیں تو”
پھر کیا مسٸلہ ھے؟کوٸی بھی پرابلم ھے تو بتاٶ مجھے اوریہ تم مجھ سے ٹیسٹ کی تیاری کے لیے بھی نہیں کہہ رھی۔۔۔حالانکہ نکسٹ منتھ ھیں ناں ایگزامز۔۔۔؟؟
جی نیکسٹ منتھ ھی ھیں۔۔۔۔۔ایک لاٸن کہہ کر وہ ہنوز چپ تھی
یہ خاموشی جو گفتگو کے بیچ ٹھہری ھے
بس یہی ایک بات ساری گفتگو سے گہری ھے
کالج گیٹ پر اسے اتارتے انھوں نے اسے گہری نظروں سے دیکھا مشعل کو انکی نگاھوں میں انوکھی س لپک محسوس ھوٸی۔۔۔جیسے کچھ کہہ دینا چاھتی ھوں
شام کو ملتے ھیں۔۔۔چیک کرتا ھوں تمھاری تیاری جو اب بغیر میری ہیلپ کے ھونے لگی ھے۔۔۔۔اسکی جان کو مشکل میں ڈالتے انھوں نے اسے اندر جانے کا اشارہ کیا
مرے مرے قدم اٹھاتی وہ اندر کی جانب بڑھ گٸی
______
تو ملا ھے تو یہ احساس ھوا ھے مجھکو
یہ میری عمر محبت کے لیے تھوڑی ھے
اک ذرا ساغمِ دوراں کا بھی حق ھے جس پر
میں نے وہ سانس بھی تیرے لیے رکھ چھوڑی ھے
تجھ پہ ھو جاٶنگی قربان تجھے چاھونگی
میں تو مر کر بھی میری جان تجھے چاھونگی
زندگی میں تو سبھی پیار کیا کرتے ھیں
میں تو مر کر بھی میری جا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ارے واہ سریلی۔۔۔بڑا اچھا گا لیتی ھو تم تو بھٸی واہ۔۔
سب کاموں سے فارغ ھو کر وہ لان میں رکھی چیٸر پر آنکھیں موندے دھوپ سینکتے گانے کا شغل پورا کر رھی تھی جب اس کے سر پہ رول کیا ھوا نیوز پیپر مارتے وہ ادھر آن دھمکا تھا
ھو گٸی صبح تمھاری۔۔۔۔۔دوسری چیٸر پر رکھے اپنے پاٶں سمیٹتے ھوۓ اس نے حسن کے بیٹھنے کو جگہ بناٸی تھی
ممانی کدھر۔۔۔۔؟؟؟
انکل اقبال ھیں ناں ساتھ والے وہ اور انکی مسز عمرے پر گٸے تھے۔۔۔۔ ادھر گٸیں ھیں وہ مبارکباد دینے کے لیے
اچھا کچھ کھلا ھی دو بھوک لگ رھی مجھے
کیا کھانا ھے۔۔۔؟
پاٶں میں پہنا جوتا دیکھتےاور ہاتھ کو لہراتے اس نے پوچھا تو وہ جل بھن گیا
تمھارا کھانا نہیں مانگ رھا میں۔۔۔جو خود کھاتی ھو۔۔۔۔بات کرتے کرتے وہ شرارت سے ہنسا تھا
اسی تیزی سے اس نے لہراتا ہاتھ گودمیں رکھتے اسے گھوری سے نوازا
اچھا کیا کھاٶ گے بتاٶ؟
کباب فراٸی کر دو ممانی سے کہہ کر رکھواۓ تھے کل میں نے اپنے لیے اور پراٹھے بنا دینا
کتنے پراٹھے؟؟؟ناک چڑھا کر اسکی دیو جیسی جسامت دیکھتے اس نے پوچھا تھا
بس تین ھی۔۔۔۔
یہ بس ھیں۔۔خوراک کے دشمن۔۔۔۔تڑخ کر اس نے کہا تھا
میرے کھانے پر نظر رکھتی ھو ندیدی۔۔۔۔جاٶ پھر میں نے جانا ھے کہیں
اچھا جا رھی ھوں۔۔۔۔اچھا سنو۔۔۔؟؟؟
جاتے جاتے ھی وہ پلٹی تھی
تم نے باھر جانا ھی ھے اگر کہیں تو مجھے مارکیٹ میں کام ھے کچھ۔۔۔لے چلو گے کیا؟
کیا کرنا تم نے مارکیٹ۔۔۔مجھے بتاٶ ؟؟
لے چلو گے یہ بتاٶ کام کیا ھے اسکا بھی چل ھی جاۓ گا پتا
اچھا ناشتہ تو بناٶ جا کے پہلے پھر سوچتا ھوں
پیر پٹختے ھوۓ وہ واک آٶٹ کر گٸی تھی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تم لوگوں کے لیے ایک سرپراٸز ھے
آہاں۔۔۔۔۔۔کیا بتاٶ
سونیا کے کہنے پر وہ دونوں ایکساٸٹڈ ھوٸی تھیں
میں نے بتایا تھا ناں کہ پیری پر پتھر پھینکے جا رھے ھیں آجکل۔۔۔۔تو بسس ھوگیا ایک کیساتھ فاٸنل میرا
مصنوعی شرماہٹ سے وہ بولی تو دونوں ایک ساتھ چیخیں تھیں
کیا۔۔۔۔۔؟؟؟سچی۔۔۔۔؟؟؟
کیسا ھے؟؟کرتا کیا ھے؟اپنے ھی سٹی میں یا آٶٹ آف سٹی؟
افففف تھوڑا دم تو لو
سوالوں کی بوچھاڑ پر سونیا کی ہنسی نکل گٸی
شارق نام ھے اسی شہر میں رھتے وہ لوگ اور ان کا اپنا شوروم ھے بس وہیں ھوتے ھیں
مبارک ھو یار۔۔۔پِِک سینڈ کرنا ھمیں اوکے؟؟
ھمم آج کرونگی جا کر
چلو تمھاری تو نَیا پار لگی۔۔۔۔ھم رھ گٸیں ھیں
دکھی لہجے میں عروج نے کہا تھا جب وہ منہ نیچے کیے اپنے تاثرات چھپانے لگی
اے کیا ھوا تمھیں؟؟کیا صدمہ لے گٸی ھو؟
شرارت سے سونیا نے مشعل کو چھیڑا تھا
وہ پل میں گلابی ھوٸی تو دونوں نے حیرت سے یہ منظر دیکھا
ایسی کسی بات پر بیزاری دکھانے والی کا چہرہ گلال ھوتا دیکھ کر حیرانی تو بنتی ھی تھی
مشی۔۔۔سب خیریت ھے ناں؟؟حیرت سے نکلتے عروج نے پوچھا تھا
ہاں چھوڑو یہ باتیں پلیز۔۔۔۔
ادھر دیکھنا ناں ذرا تم؟
اس نے زبردستی مشعل کا چہرہ اوپر اٹھایا تھا
تمتماتے ھوۓ گال جیسے خون سمٹ آیا ھو ان میں اور پلکیں تیزی سے جھپکتی وہ کوٸی اور ھی مشعل لگی
تمھیں ھوا کیاھے؟؟بتاٶ ھمیں
وہ بے اختیار اس کے گلے لگی تھی تو وہ دونوں جہاں کی تہاں رہ گٸیں
عشق وہ ساتویں حِس ھے کہ جس میں
رنگ سناٸی دے خوشبو دکھاٸی دے
ایسی ایموشنل وہ بلکل نہ تھی اس طرح کے ری ایکشن پر ان کا ماتھا ٹھنکا کہ ضرور کوٸی سیریس بات ھے وگرنہ عام حالات میں تو وہ جزباتیت سے کوسوں دور ھی رھتی تھی
مشی کیا پریشانی ھے یار اب تم پریشان کر رھی ھو
اسکی پیٹھ سہلاتے عروج نے کہا تھا جبکہ سونیا اسے پریشانی سے تک رھی تھی
اس نے اٹکتے اٹکتے اپنی کیفیت اور بدلتے جذبات انھیں نہایت ھی شرمندگی سے بتاۓ تھے
کنفیوز ھوتےھوۓ نظریں چراتی وہ اس قدر حسین لگی کہ سونیا نے اسکا گال چوما تھا
وہ پل میں سرخ ھوٸی
یار زاویار بھاٸی ھمیں بھی بہت پسند تھے تمھارے لیے بلکہ مجھے تو عروج کہا کرتی تھی کہ سمتھنگ سپیشل بِٹ وین بوتھ آف یو
عروج نے سر ہلاتے اسکی تاٸید کی تھی
اور ان کے بارے میں کیا اندازہ ھے تمھارا مطلب کیا وہ بھی؟؟؟
توبہ کرو۔۔۔۔انھیں پتا چلا یا بھنک بھی پڑی ناں تو سب سے پہلا ری ایکشن ھی زناٹے دار تھپڑ ھونا ھے میرے رخِ روشن پر
ثانیہ کے جیسے ھی ٹریٹ کرتے ھیں وہ مجھے۔۔۔۔
اچھا چلو۔۔۔۔۔تم خود احساس دلاٶ ناں انھیں ۔۔۔۔زبان سے مت کہنا بس رویے سے بتاٶ انھیں
سونیا نے کہا تو وہ بدک اٹھی
میں نہیں یہ چیپ حرکتیں کرنے والی۔۔۔۔پندار بھی کوٸی چیز ھوتی ھے جسے مجھے کسی صورت نہیں گنوانا
بلکل ٹھیک۔۔۔۔بھٸی اظہارِمحبت کرتی بھلا اچھی لگتی ھے لڑکی۔۔۔یہ ڈیپارٹمنٹ مرد حضرات کو سوٹ کرتا ھے
لڑکی اگر اظہار کرے بھی تو اپنی سیلف ریسپیکٹ اور پندار کی قربانی دینی پڑے گی اسکو۔۔۔۔اور یہ گھاٹے کا سودا ھے
چلو ھم دعا کریں گے کہ سب اچھا ھو تمھاری زندگی میں
ان دونوں کے دعا دینے پر اس نے زیرِلب آمین کہا تھا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یہ کیا گوبر جیسا ھے بلکل۔۔۔۔۔پلیٹ پرے کھسکاتے اس نے اسے گھوری سے نوازا جو منہ دوسری طرف کیے کباب فراٸی کر رھی تھی
توبہ تم نے ھر شے چکھی ھوٸی ھے
ہنستے ھوۓ اس نے حسن کو ساڑا تھا اور پوری طرح کامیاب ھوٸی تھی
اچھا اچھا سوری۔۔اصل میں پراٹھا بناتے دھیان ھی نہیں رھا تو یہ ایک کباب جل گیا۔۔۔۔تم اور لے لو ناں
تیکھے چتونوں سے اسے دیکھتے ھوۓ وہ سلگا تھا
ممانی دیکھیں کیا کھلا رھی ھے مجھے یہ؟؟
نگہت کے کچن میں آنے پر وہ بسورا تھا
ارے یہ تو کوکنگ ھی بہت اچھی کرتی ھے بیٹا چلو تم یہ چھوڑ دو میں اور دیتی ھوں تمھیں
ساری بات پتا چلنے پر نگہت نے اسے پچکارا تھا
ہونہہ۔۔۔۔لاڈ کے اس مظاہرے پر وہ پر برتن پٹختے اسے سکون دے گٸی
کرسی کی پشت سے کمر ٹکاۓ اب وہ آرام سے ناشتہ کرنے لگا
پندرہ منٹ میں تیار ھو جاٶ اگر جانا تم نے مارکیٹ مجھے بھی مارکیٹ ھی جانا ھے
تیز تیز بولتے اس نے نوالا منہ میں ڈالا تھا
گاڑی تو نہیں ھے گھر۔۔۔۔تو کیا باٸیک پر لیکر جاٶ گے؟
بکھی منگوا دوں شہزادی کے لیے؟؟
طنزاً اس نے پوچھا تو اس نے کھا جانے والی نظروں سے اسے دیکھا تھا
محترمہ باٸیک ھے ناں اسی پر چلے چلتے ھیں مگر اپنی گارنٹی پر بیٹھنا۔۔۔۔
میں جیسے بھگاتا ھوں باٸیک تمھیں پتا ھی ھے
تمیز کے داٸرے میں رھ کر چلانا۔۔۔ امی کہیں اسکو
ثانیہ نے نگہت کو بیچ میں گھسیٹا تھا
بیٹا۔۔۔۔خیال کرنا ھیوی ٹریفک ھوتی ھے نگہت نے پیارسے اسے سمجھایا
جی ممانی میں تو بس اسے تنگ کر رھا تھا۔۔۔۔۔
تم ریڈی ھو جاٶ میں آتا ھوں ابھی۔۔۔۔وہ کچن سے نکلا تو ثانیہ نگہت کو مارکیٹ جانے کی وجہ بتانے لگی کہ حسن کا برتھ ڈے گفٹ لینے ھی تو جانا تھا جو بس نزدیک ھی تھی
باٸیک پر اس کے پیچھے بیٹھتےوہ کافی ڈر رھی تھی جب حسن نے اسکا کا خون جلایا
ایک شرط پہ لیکر جاٶنگا
سوالیہ نظروں سے اس نے دیکھا تو وہ شرارت سے اسکی جانب جھکا تھا
یہ اپنی زبان بند رکھنا تم
وہ جو اس کے جھکنے پر نروس ھوٸی تھی اسکی شرط سن کر لال بھبوکا ھوٸی
منہ بناتے اس کے پیچھے بیٹھتے اس نے دو ہتھڑ اسکے کندھے پر ٹکاۓ تو وہ ہنستے ھوۓ باٸیک سٹارٹ کرنے لگا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مشعل بکس لیکر آٶ تم ڈراٸنگ روم میں۔۔۔۔
ریلیکس ھو کر سب کیساتھ ٹی وی دیکھتی مشعل کو زاویار نے کہا تو اس کے ہاتھ کانپے تھے
جی آتی ھوں۔۔۔کہہ کر وہ اپنے روم کی طرف گٸی تو زاویار بھی ڈراٸنگ روم کی جانب بڑھے تھے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
روم سے باھر وہ ہمت مجتمع کرتی اندر داخل ھوٸی وہ جو اپنے موباٸل پر کسی سے بات کر رھے تھے اشارے سے اسے بیٹھنے کا کہہ کر پھر کال پر بات کرنےلگے
وہ بلا ارادہ ھی انھیں تکےگٸی
”دل ھر جگہ نہیں لگتا۔۔لاڈ ہر ایک سے نہیں اٹھواۓ جاتے۔۔پاگل پن کی سبھی حرکتیں ھر کسی کے سامنے نہیں کی جاتیں۔۔مان ھر کسی پہ نہیں ھوتا ھر کسی کے لیے ھم بچوں جیسے نہیں بنتے۔۔کھلی کتاب کیطرح ھر کسی کی آنکھوں سے پڑھے جانے کی خواہش نہیں ھوتی بس کچھ ھی لوگ ھوتے ھیں۔۔۔ ہجوم کبھی نگاہ نہیں روکتا۔۔۔ نظر کسی ایک پر ھی ٹکتی ھے“
تبھی ان کی نگاہ اس پر پڑی تھی تو اسے خود کو دیکھتے پایا جو عجیب اپنی جانب کھینچتی ھوٸی نظروں سے انھیں تک رھی تھی
تیرے چہرے کی چمک کے آگے تو
کچھ بھی نہیں شمس و ماہ پیا
میرا شام سلونا شاہ پیا
مجھے مار گٸی تیری چاہ پیا
وہ اسکی نگاھوں کی تپش اور پھر گھبرا کر نظریں جھکانے پر ٹھٹکے تھے…

–**–**–
جاری ہے
——
آپکو یہ ناول کیسا لگا؟
کمنٹس میں اپنی رائے سے ضرور آگاہ کریں۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Subscribe For Latest Novels

Signup for Novels and get notified when we publish new Novel for free!




%d bloggers like this: