Mera Sham Slona Shah Piya Novel By Bella Subhan – Episode 5

0
میرا شام سلونا شاہ پیا از بیلا سبحان – قسط نمبر 5

–**–**–

کیا ھوا؟
کچھ بھی نہیں۔۔۔۔۔
زاویار کے پوچھنے پر وہ بلا مقصد چہرے پر ہاتھ پھیرتے بولی تھی
ابھی تک کھڑی کیوں ھو۔۔۔بیٹھ جاٶ ناں
بیٹھ کر بکس کھولتے وہ خود کو یہ سمجھا چکی تھی کہ اب کوٸی فضول حرکت نہیں کرنی جو ان کو کسی شک میں مبتلا کرے
دوسری طرف وہ اس کے جھکے ھوۓ سر کو دیکھتے یہ سوچ رھے تھے کہ اس تبدیلی کا سراغ کیسے لگایا جاۓ
کچھ دن پہلے جو ٹیسٹ ھوا تھا اب تک تو مل چکا ھوگا وہ۔۔۔۔دکھاٶ مجھے کتنے مارکس آۓ ھیں
رجسٹر سے پیپرز نکالتے اس نے انھیں تھماۓ تھے اور ہنوز خود کو نوٹس میں غرق ظاہر کرنے لگی
اسے خود پر گہری نظروں کی تپش کا احساس ھوا جونہی اس نے نگاہ اٹھاٸی تو زاویار نے نظریں پیپرز پر مرکوز کر لیں تھیں
چلو آج میں لیتا ھوں ٹیسٹ کیونکہ بقول تمھارے اب اچھی تیاری ھو چکی ایگزیمز کی
جی لے لیں۔۔۔۔
آہستہ آواز میں اس نے کہا تھا جب ایک بار پھر زاویار نے اسے بک پر جھکتے دیکھا تو وہ کٸی ثانیے تک اسے دیکھتے رہ گٸے
منہ کھولو۔۔۔۔
جی؟؟؟؟
ان کی عجیب بات پر وہ ہونق ھوٸی تھی
ہاں۔۔۔منہ کھولو تم۔۔۔ میں چیک کروں کہ زبان ھے بھی یا دے دی ھے ادھار کہیں
کیا ھوگیا ھے تمھیں۔۔۔۔؟؟؟عجیب بی ہیو کیوں کر رھی ھو؟
کچھ بھی نہیں ھوا ”زاویار۔۔۔۔۔بھاٸی“
اس کے دل کو کسی نے مٹھی میں لیا تھا جانے کس دل سے بھاٸی بولا تھا بس وہ ھی جانتی تھی
جبکہ اس کے یوں اٹکنے پر وہ مزید مخمصے میں پڑ گٸے
کچھ دیر اسے دیکھتے رھے جس پر مشعل کو لگا کہ دل ابھی پگھل کر سب اگل دے گا مگر ضبط کیے بیٹھی رھی
اسے ٹیسٹ کے لیے کچھ کوٸسچنز دے کر وہ اپنے موباٸل میں مصروف ھوۓ تو اس نے سکھ کا سانس لیا
ان کے آس پاس ھونے سے یہ حال تھا کبھی جو قدرت نے قربت سے نواز دیا تو جانے کیا ستم ھو جانا تھا
میں جب چپ ھو جاٶں تو مجھے سننے کی کوشش کریں زاویار۔۔۔۔ وہ منہ میں ھی بڑبڑاٸی تھی
بغیر بھاٸی کے ان کا نام لینے پر انوکھا سا احساس دل میں جاگا تھا
اس نے ایک جھرجھری لی اور ٹیسٹ کی طرف متوجہ ھو گٸی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بابا۔۔۔۔۔؟
جی بیٹا جی۔۔۔۔!
آپ سے ایک اجازت چاھیے تھی مجھے
لاڈ سے ثانیہ نے ان سے کہا تھا
اچھا۔۔۔۔۔تو بتاٶ پھر۔۔۔مسکراتے انھوں نے پوچھا
سندس کو جانتے نا آپ میرے ساتھ ھوتی تھی کالج میں؟؟
ہاں ہاں وہ اپنے والدین کیساتھ آٸی بھی تھی گھر۔۔۔جانتا ھوں میں۔۔۔کافی سلجھی ھوٸی فیملی تھی ماشاءاللہ
جی وہ ھی۔۔۔۔دل میں شکر ادا کرتے اس نے کہا۔۔۔۔”کہ ابراھیم کی راۓ اچھی تھی انکی فیملی کے بارے میں تو زیادہ مسٸلہ بھی نہیں ھونا تھا اجازت لینے کا“
”بابا اس کی ناں شادی ھے تو اس نے مجھ۔۔۔۔۔۔
ماموں یہ کہنا چاھتی ھے کہ اس کے ساتھ کی لڑکی شادی کرنے جا رھی تو آپ کیوں نہیں ہاتھ پیلے کرتے اس کے۔۔۔۔غضب خدا کا۔۔۔۔لڑکی کو بوڑھا کریں گے کیا ۔۔۔؟؟“
ابراھیم کے کندھے پر بازور پھیلا کر ان کے ساتھ بیٹھتے اس نے شگوفہ چھوڑا تھا جسے سن کر ثانیہ کا دماغ بھک سے اڑا
کک۔۔۔کیا۔۔۔؟؟ہاتھ پیلے؟؟؟
سرخ چہرے سے اس کو خونخوار نظروں سے گھورتے ھوۓ وہ بے اختیار اپنی جگہ سے اٹھی تھی
بابا اسکو ذرا تمیز نہیں ھے دیکھیں کیسی باتیں کر رھا ھے بیہودہ انسان
حسن نے دلچسپی سےاسکا گلال ھوتا چہرہ دیکھا تھا
روہانسی ھو کر وہ بولی تو ابراھیم نے اسے اپنے ساتھ واپس بٹھایا
میری بیٹی جانا چاھتی ھے دوست کی شادی میں؟؟
اس نے فقط اثبات میں سر ہلایا تھا
کب ھے؟
”نیکسٹ ویک“
کوٸی مسٸلہ نہیں ھے چلی جاٶ۔۔۔ مگر مشعل کے تو ایگزیمز شروع ھو جاٸیں گے تب تک۔۔۔؟؟؟تو پھر اس کے بغیر کیسے جاٶگی؟
وہ ھی بابا پلیزآپ آ جاٸیں نا ساتھ۔۔۔ماں نے بھی منع کردیا ۔۔۔۔سندس ناراض ھو جاۓ گی مجھ سے
ھونٹ باھر نکالتے اس نے انھیں منانے کی سرتوڑ
کوشس کی تھی
ابرو اچکا کر اس کی بات پر سر زورزور سے ہاں میں ہلاتے وہ اسے چڑا رھا تھا
ثانیہ نے بے اختیار اپنے دانت پیسے
بیٹا بلکل ممکن نہیں ھے ناں ھی زاویار جا سکتا ھے برڈن بہت ھے آجکل۔۔۔۔دیکھا نا تم نے بھی کہ کتنا لیٹ آتے ھیں ھم آفس سے
حسن لے جاۓ گا تمھیں۔۔۔۔
ابراھیم نے اسکی اتری شکل دیکھتے ھوۓ مشورہ دیا
جہاں وہ اس بات پر اچھلی تھی ادھر حسن کو بھی جیسے بچھو نے ڈنک مارا تھا جس پر وہ بلبلاتے ھوۓ اپنی جگہ سے اٹھا
کوٸی نہیں ماموں۔۔۔۔میں چھٹیاں انجواۓ کرنے آیا ھوں ضاٸع کرنے نہیں۔۔۔اس کے ساتھ گھر میں سب کے ھوتے ھوۓ رھنا مشکل ھے اکیکے سفر پہ جانے کا تجربہ نہیں کرنا مجھے
اتنی لمبی اسکی زبان ھے قسمے ماموں مجھے تو یہ ویسے ھی کچھ نہیں سمجھتی اور میں۔۔۔ شادی پر لے کر جاٶنگا اسے۔۔نو۔۔۔۔۔نیور
تھارے ساتھ جانا کس گدھے کو ھے۔۔۔۔۔۔منہ نہ متھا تے جن پہاڑوں لتھا ہونہہ
دیکھا۔۔۔۔ دیکھا آپ نے کیسے بات کرتی ھے یہ مجھ سے؟؟
ابراھیم کو دیکھ کر اس نےشکایت کی تھی
تو مجھے بہت احترام سے بلاتے ھوناں جیسےتم
کیوں بلاٶں۔۔۔۔۔؟؟؟
باسسسس۔۔۔یہ کیا طریقہ ھے تم دونوں کا؟اور ثانیہ وہ تم سے بڑا ھے کچھ تو لحاظ رکھا کرو
حسن تم ھی بڑے پن کا ثبوت دو کچھ۔۔۔ ایسے عورتوں کی طرح لڑرھے ھو اس سے۔۔۔ بہن ھے بیٹا تمھاری
وو جو ابراھیم کے ثانیہ کوسمجھانے پراسے چڑانے کو تیار ھورھا تھا ان کی سرزنش پر شرمندہ ھو گیا
جانا ھے تو حسن لے جاۓ گا ورنہ مرضی ھے تمھاری اور اگر حسن راضی نہیں لے جانے پر تو اس کو مناٶ پہلے
اسے سنجیدگی سے کہتے وہ اپنے روم میں چلے گٸے تھے
وہ بے چارگی سے انھیں دیکھے گٸی جبکہ حسن خوش تھا کہ اب وہ اسکی منتیں کرے گی۔۔۔۔ وہ اسے مزید ستاۓ گا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ھوا نہیں ٹیسٹ ابھی تک ؟؟؟
جی ھو گیاھے۔۔۔۔غاٸب دماغی سے وہ بولی تھی
جانے ٹیسٹ میں کیا لکھا تھا وہ تو اس بات کو سوچ رھی تھی کہ لڑکی اگر پہلے اظہار کر لے تو اتنا برا سا کیوں محسوس ھوتا ھے
مسلسل زاویار کو سوچتے ھی اس نے چار سوالات میں سے تین کیے تھے
تمھیں کیا نیند آ رھی ھے جو ایسے کر رھی ھو؟
اسے سر جھٹکتے اور آنکھوں کو مسلتے دیکھا پوچھا تھا تو وہ ہاں میں سر ہلا گٸی
”ٹھیک ھے جاٶ تم“
نیند سے بوجھل ھوتی بڑی بڑی گھنی پلکوں والی آنکھیں دیکھ کر انکا دل بے ایمان ھونے لگا آنکھوں کی سرخی جیسے انھیں نشیلا بنا رھی تھی
اس کے ہاتھ سے رجسٹر جھپٹتے انھوں نے خشک لہجے میں اس کو کمرے سے جانے کو کہا
تو وہ بغیر انھیں دیکھے اس ”کلاسی انسلٹ“ پر روم سے بھاگی۔۔۔جبکہ وہ بے دم ھو کر صوفے پر بیٹھے تھے
”اتنا ھی امتحان لیں جتنی برداشت ھے میری“
اوپر دیکھتے بے بسی سے وہ اللہ سے مخاطب تھے
رجسٹر کھول کر اسکا ٹیسٹ چیک کرنا چاھا
جب ٹیسٹ پر لکھے ھوۓ لفظ دیکھ کر ان پر حیرتوں کے پہاڑ ٹوٹ پڑے تھے
………………………………………
شاٸد تم کوٸی گزارش کرنا چاھ رھی ھو۔۔۔۔۔ھے ناں؟؟؟
کمینی مسکراہٹ لبوں پر سجاۓ وہ اسے دنیا جہاں سے لٌچا لگا
اور تمہیں یہ کیوں لگ رھا ھے کہ میرا جانا بہت ھی ضروری ھے جیسے میرے بغیر قاضی نے نکاح پڑھانے سے انکار کر دینا ھے ناں۔۔۔۔؟
ھو بھی سکتا ھے۔۔۔جہاں تک مجھے پتا ھے تم لڑکیاں اپنی سہیلیوں کی شادی کو ایسے ھی لیتی ھو جیسے گھر کی شادی ھے اور جانا ناگزیر ھے
منہ بند رکھو اپنا ابھی۔۔۔۔یہ تو طے ھے کہ تمھارے ساتھ نہیں جانا مجھے
نخوت سے سر جھٹکتے وہ بولی تو اسے پتنگے لگ گٸے
بات ایسے کر رھی ھو جیسے میں تو فوت ھی ھو جاٶں گا اگرنہ گیا تمھیں لیکر۔۔۔۔
اسکا دل یہ بات سن کر دہلا تھا۔۔۔۔تم ھمیشہ بکواس ھی کرنا اچھا۔۔۔۔وہ چیخی تھی
نہیں میں تو ارشاد کیا کرتا ھوں۔۔۔اسے مزید چڑایا نہ چاھتے ھوۓ بھی وہ کھول اٹھی تھی
ہونہہ۔۔۔۔خوش رھو مگر خوش فہمی میں نہیں
استہزاٸیہ لہجے میں کہتی وہ وہاں سے نکلی تھی۔۔۔جب کہ حسن اس کا دماغ صبح سیٹ کرنے کا سوچتا اپنے روم میں جانے کو اٹھ کھڑا ھوا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
رجسٹر ہاتھ میں لیے کٸی ثانیوں تک وہ اپنی جگہ سن بیٹھے رہ گٸے تھے۔۔۔۔جو نگاھیں دیکھ رھی تھیں اور دل جو بات سمجھ رھا تھا۔۔۔ دماغ اسے قبول کرنے سے انکاری تھا
انھوں نے پھر سے پیج کی طرف نگاہ کی۔۔۔۔
لکھے ھوۓ کو پڑھ کر رگ و پے میں دوڑتی بےچینی کو راحت ملی تھی
یا میرے اللہ۔۔۔۔۔۔۔۔الحمداللہ
ٹیسٹ والاصفحہ رجسٹر سے پھاڑ کر وہ صوفے کی پشت سے سر ٹکا کر خوشی
محسوس کرنے لگے
چاھنا بھی کسی کو خوبصورت ھے۔۔۔۔۔مگر
ھاۓ۔۔۔وہ چاھے جانے کا احساس نہ پوچھیۓ
پیپر کو سینے پر رکھا تھا
جانے کس بے اختیاری کی کیفیت میں وہ لکھ گٸی تھی یقیناً اسے معلوم بھی نہ تھا
اپنے نام کیساتھ میرا نام لکھتی تو بھی میں سمجھ جاتا مِشو۔۔۔۔
مگر تم نے مشعل زاویار کے نیچے مسز زاویار لکھ کر گویا مجھے اس لمحے میں مقید کر دیا ھے اور اب میں خود بھی اس لمحے کی قید سے آزاد ھونا نہیں چاھتا
دل اس سے بات کرنے کو مچلنے لگا
کچھ سوچتے ھوۓ
انکی نگاھیں شرارت سے چمکیں
پیپر ساٸیڈ پر رکھ کر انھوں نے اپنا موباٸل اٹھایا اور اسکو کال ملاٸی تھی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پاٶں پٹختے ھوۓ تن فن کرتی وہ روم میں داخل ھوٸی تو مشعل نے اس کا تنا ھوا چہرہ دیکھا
کیا ھوا؟
ہنسی روکتے اس نے پوچھا تھا
کم و بیش ایسیے تاثرات دن میں ١٠ بار ھوتےتھے اس کے اور ھر بار وجہ اس کے برادر محترم بنتے تھے
میں نے سچ میں ضاٸع کر دینا ھے تمھارے چہیتے بھاٸی کو۔۔۔۔یار تم نے بھی ابھی ایگزیمز دینےتھے
میں کیسے جاٶں اب سندس کی شادی میں
اس سے شکوہ کرتے کرتے وہ اینڈ پر روہانسی ھوٸی تھی
بھاٸی کیساتھ جانے میں مسٸلہ کیا ھے تمھیں۔۔۔۔تم ان کو ٹوٹلی اگنور کرنا
نہ بھڑکنا انکی باتوں پر۔۔۔تم چڑتی ھو تو وہ تمھیں چڑاتے ھیں
یار۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔مجھے نہیں جانا اس کے ساتھ۔۔۔
ثانیہ نے اس کے سمجھانے پر بے بسی سے کہا تھا
تے فیر جا ای نہ میری بہن۔۔۔۔۔۔چل سونے لگی میں اب
دوپٹہ اتار کر ساٸیڈ پر رکھتے وہ بولی تھی
تب ھی اسکا فون بجا۔۔۔۔حیرت سے اس نے موباٸل سکرین پر نگاہ ڈالی جو ”زاویار بھاٸی کالنگ“ شو کر رھا تھا
کس کا فون۔۔۔۔۔؟؟اٹھاٶ بھی۔۔۔۔اور کم از کم رات کو ساٸلنٹ پر لگادیا کرو
ثانیہ نے اسے ڈپٹا۔۔۔
جی۔۔۔۔؟؟؟خیریت؟؟
فون اٹینڈ کر کے کان سے لگاتے وہ بولی تھی
دوسری جانب وہ اسکی آواز سن کر سرشار ھوۓ تھے
بلکل بھی خیریت نہیں ھے تمھاری مشعل۔۔۔۔۔۔۔
اس کے نام کیساتھ اپنا نام لینے کو دل مچلا تھا
کیوں؟؟کیا ھوا ھے زاویار۔۔۔بھاٸی؟؟
انھوں نے بے اختیار پلکیں موندی تھیں
”ایک تو یہ تمھارے لہجے کی نرمیاں“ وہ منہ ھی منہ میں بڑبڑاۓ
کیا کہہ رھے ھیں؟؟
تم توکہہ رھی تھی کہ بہت اچھی تیاری ھو چکی ھے اگزیمز کی۔۔۔یہ تیاری ھے تمھاری کہ کوٸی ایک سوال بھی نہیں ٹھیک
(حالانکہ سوالوں کیطرف انھوں نے نگاہ تک نہ کی تھی)
مصنوعی خفگی سے وہ بولے تھے
مگر وہ تو ٹھیک ھی لکھے تھے میں نے۔۔۔۔۔۔۔شاٸد۔۔۔۔
اسے خود ھی معلوم نہ تھا کہ کیا لکھ کے آٸی ھے
یہ تو اب صبح بتاٶنگا میں سب کو ھی۔۔۔۔۔۔۔کہ پیپر شروع ھونے والے ھیں محترمہ کی تیاری دیکھ لیں ذرا
وہ حقیقتاً پریشان ھو گٸی تھی
مجھے آپ ڈانٹیں گے؟؟
بھری آواز میں نہایت ھی مان کیساتھ وہ بولی تو زاویار کا جی چاہا ساری حدود و قیود بھول کر اس کے پاس چلے جاٸیں
اسے بتاٸیں اپنے ھر ھر عمل سے کہ وہ کتنی اھم ھے۔۔۔۔کیا ھے ان کے لیے
اگر آ پ نے مجھے ڈانٹا تو میں روٶنگی۔۔۔۔۔
اسکی دھیمی اور روٸی روٸی آواز کی سرگوشی پر ثانیہ نے گردن موڑ کر اسے دیکھا تھا
”میں آپ سے کبھی بات بھی نہیں کرونگی“
اس کے اب تڑیاں لگانے پر زاویار کے دل میں جذبات کا جوار بھاٹا سا اٹھنے لگا
صبح تو ھونےدو پھر بتاتا ھوں
بےحد بے بسی سے اور اپنے احساسات کی شدت سے بوجھل آواز مٕیں
کہہ کرانھوں نے فون رکھا تھا
کچھ لوگ ھمارے لیے اتنے خاص ھوتے ھیں کہ اگر ان سے چند منٹ بات ھی کر لی جاۓ تو چوبیس گھنٹے کی مسکراٹ کا سبب بن جاتے ھیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کیا ھوا؟؟؟
ٹیسٹ لیا تھا انھوں نے میرا۔۔۔کہتے سارا غلط ھے اب صبح سب کے سامنے ڈانٹیں گے
پریشانی سے ناخن چباتی وہ بولی تھی
کچھ نہیں کہیں گے تمھیں۔۔۔آٸم ڈیم شیور
ثانیہ نے اسے پیار سے دیکھتے معنی خیزی سے کہا
بھاٸی اور ماموں کیا سوچیں گے یار۔۔۔۔
روہانسی ھوتے اس نے کہا تو ثانیہ نے ابرو اچکاتے اسے دیکھا
اوہ بی بی بس کر۔۔۔۔ حسن خود بڑا توپ چیز ھے ناں پڑھاٸی میں جیسے
ناک چڑھاتے وہ بولی تھی
خیر یہ تو تم بھی مان لو کہ خاصا لاٸق فاٸق ھے میرا بھاٸی یہاں بھی ٹاپر تھا او وہاں بھی ٹاپر ھی ھے
بھاٸی کے لیے لہجے میں پیار سموتے اس نے کہا تو ثانیہ نے سر جھٹک کر اونہہ کہا
اچھا چلو سو جاٶ اب۔۔۔۔
کیسے سو جاٶں ؟؟؟مجھے تو نیند ھی نہیں آنی متوقع بے عزتی کا سوچ کر ھی
مشعل نے کہا تو ثانیہ نے اپنا سر پیٹ لیا
میں نے کہا ھے ناں کہ وہ تمھیں کچھ بھی نہیں گے
اور اگر پھر بھی تم کو ٹینشن ھے تو صبح ان سے بات کر لینا انھی کے روم میں جا کر
تا کہ بے عزتی ھو بھی تو اکیلے میں ھو
اسکی بات سن کر اثبات میں سر ہلاتی وہ بھی لیٹ گٸی تھی
اس بات سے بے خبر و انجان کہ وہ صبح ھی صبح ان کا دن بنا دینے والی ھے
…………………………………
میں آپ سے ایک بات کرنا چاہ رھی تھی۔۔۔
ھاں تو کرو۔۔۔اجازت کب سے لینے لگی مجھ سے تم؟
نگہت نے ججھکتے ھوۓ کہا تو ابراھیم نے حیرانی سے پوچھا تھا
زاویار کے بارے میں کچھ اھم تھا جو بتانا تھا مجھے۔۔۔۔
بلکہ اپنا ایک مشورہ دینا چاھ رھی تھی میں
انھوں نے جواب میں فقط سوالیہ نظروں سے نگہت کو دیکھا
مشعل کے امتحان ھونے ھی والے ھیں اس کے بعد وہ فری ھے۔۔۔آگے پڑھنا چاھے تو اسکی مرضی۔۔۔جبکہ زاویار ماشاءاللہ اب سیٹلڈ ھے اپنی زندگی میں۔۔۔۔مشی اپنی ھی بچی ھے تو کیوں ناں ان دونوں کی شادی کر دی جاۓ؟؟؟
بچوں سے پوچھنے کے بعد ھی۔۔۔ میں جانتی ھوں آجکل کے بچے اپنی مرضی کو زیادہ فوقیت دیتے ھیں مگر راۓ جاننے میں کیا حرج ھے اگر مان جاتے ھیں تو دلی مراد بر آۓ گی میری
ابراھیم ان کی بات پر سوچ میں ڈوب گٸے
کچھ دیر بعد انھوں نے محض ہاں میں سر ہلایا تھا
بچے راضی ھیں تو مجھے کیا اعتراض بھلا
تم بات کر کے دیکھ لو مگر ھاں منگنی ونگنی کے چکر میں مجھے نہیں پڑنا کہ یہ بہت ھی بودا سا ریلیشن ھے
نکاح کر دیں گے پھر۔۔۔کیا کہتی ھو؟؟
بلکل ٹھیک۔۔۔۔۔۔نگہت کا چہرہ خوشی سے تمتما اٹھا تھا
گھر کے بچے گھر میں ھی رہ جاٸیں گے اور کیا چاھیے۔۔۔۔زاویار اور مشعل کیساتھ ساتھ اگر حسن اور ثانیہ کا بھی۔۔۔۔۔۔
توبہ کریں ابراھیم کیسی باتیں کرتے ھیں؟وہ دونوں ایک دوسرے کے خون کے پیاسے بنے رھتے ھیں۔۔۔ آپ تو نہیں ھوتے گھر۔۔۔ مگر مجھے پتا ھے کسطرح دونوں چونچیں لڑاتے ھیں سارا دن اپنی
انکی بات کو رد کرتے نگہت نے کہاتو وہ تاسف سے سر ہلا گٸے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ساری رات سوٸی جاگی کیفیت میں رھنے کی وجہ سے آنکھیں سرخ اور بوجھل تھیں فجر کے وقت اسکی آنکھ کھلی جو کہ آدھا گھنٹہ پہلے ھی لگی تھی
ہڑبڑاتے ھوۓ اس نے وقت دیکھا اور پھر پر سکون ھو کر اٹھ بیٹھی
پریشانی یہ تھی کہ زاویار اپنے روم سے نکل نہ جاٸیں اس سے پہلے پہلے وہ ان کیساتھ بات کرنا چاھتی تھی معذرت کرنی تھی اسے
نماز پڑھ کر کچھ دیر جاۓ نماز پر سجدے میں ھی اس نے زبان سے الفاظ ادا کیے بغیر دل میں اللہ سے مخاطب ھو کر دعاٸیں مانگی تھی
کچھ دیر قرآن پاک کی تلاوت کی
صبح کا اجالا پھیل چکا تھا۔۔۔۔اس نے وال کلاک کی جانب دیکھا جو ساڑھےسات کا وقت بتا رہا تھا
دل کو مضبوط کرتی وہ ان کےکمرے میں جا کر ان سے بات کرنے کے لیے اپنے روم سے نکلی۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
الارم کی آواز پر انھوں نے اسے ہاتھ سے ٹٹولتے ھوۓ بند کیا
آنکھ کھولنے سے پہلے ھی وہ ”رگِ جاں“ لاشعور سے شعور میں آ بسی تھی
پلکیں موندے مسکراتے وہ کل رات ھوٸی اسکی حسین غلطی کو سوچتے مسرور ھوۓتھے
وہ جہاں آخری سانس رہا کرتی ھے ناں
میں نے چپ چاپ وہاں رکھ لیا ھے تمھیں
موباٸل میں اس کو کافی دیر دیکھتے رھنے کے بعد وہ بستر سے اٹھے
شاور لینے کے بعد تولیے کو کاندھوں پر پھیلاۓ اس کے ایک پلو سے بال خشک کرتے ھوۓ وہ جیسے ھی واش روم سے باھر آۓ تو ڈور ناک ھوا
”آ جاٸیں“
یہ کہتے انھیں بلکل اندازہ نہ تھا کہ دروازے کے پار ”وہ“ ھوگی
ڈریسنگ مرر میں اسکا عکس نظر آیا تو وہ تحیر زدہ اسکی طرف مڑے
تم۔۔۔۔۔؟؟؟
خوشگوار حیرت سے نکلتے وہ بولے تھے
جی۔۔۔
چھوٹے چھوٹے قدم اٹھاتی وہ ان سے محض پانچ قدم کی دوری پر آ کھڑی ھوٸی
انھوں نے اپنے اور اس کے درمیان ان پانچ قدموں کو اپنا رقیب سمجھتے گھورا تھا
وہ ہنوز نظریں جھکاۓ ان کے سامنے کھڑی امتحان سے کم نہ تھی
کل کی بناٸی گٸی ڈھیلی سی چٹیا جو اب مزید ڈھیلی ھو چکی تھی اور بال نکل کر چہرے کے اطراف پھیلے تھے
آنکھوں کے گلابی پن کے ساتھ نیند کے خمار سے بھری آنکھوں کو دیکھتے ان کا دل مخمور ھونے لگا
”مسز زاویار“ اس کے لکھے الفاظ ذہن کے پردے پر لہراۓ تو انھوں نے بے اختیار قدم اسکی جانب بڑھاۓ
اسے گہری نظروں سے دیکھتے ایک قدم کے فاصلے پر جیسے ھی وہ رکے اس نے نگاھیں اٹھاٸیں
وہ۔۔۔۔۔مجھے کچھ کہنا تھا آپ سے
ھمممم۔۔۔۔بولو
شدید ضبط کرتے انھوں نے ہاتھوں سے ھی بالوں کو سنوارا اور تولیہ کندھوں سے اتارنے کو جیسے ھی ہاتھ کو حرکت دی وہ بے اختیار دو قدم پیچھے ھوٸی تھی
زاویار نے حیرت سے اسکی یہ حرکت دیکھی مگر پھر سمجھتے ھوۓ اپنا ارادہ ترک کیا
اور شرارتی مسکان کو لبوں میں ھی دبا گٸے
مشعل۔۔۔۔۔بولو بھی اب؟؟؟
دیکھیں۔۔۔۔آپ۔۔۔۔
دیکھ رھا ھوں۔۔آگے۔۔۔۔؟
مسکراہٹ ضبط کرتے بظاہر سنجیدگی کا لبادہ اوڑھے انھوں نے کہا تھا
آپ کو جو کرنا ھے یہیں کریں۔۔۔۔۔ سب کے سامنے نہیں پلیز
مشعل نے جلدی جلدی کہاتھا مبادا وہ اسکی کلاس لینا شروع نہ کر دیں
جبکہ اسکی بات پر وہ جیسے بھک سے اڑے
اس کڑی آزماٸش پر انھوں نے اپنے جبڑے اور مٹھیاں ایک ساتھ بھینچی تھیں
پاگل۔۔۔۔۔انھوں نے دانت پیستے خود کو کمپوز کیا اور اسکو دیکھا جو ادھر ادھر دیکھتی بے حد کنفیوز لگ رھی تھی
کیا کرنا ھے میں نے؟؟
متبسم لہجے میں کہا گیا
وہ ٹیسٹ۔۔۔۔غلط تھا ناں تو بس۔۔۔ یہیں ڈانٹ لیں سب کے سامنے نہیں پلیز
پلکیں جھپک جھپک کر آنسو روکتے ھوۓ وہ بولی تھی ساتھ ساتھ دانتوں سے لبوں کو کچلتے ھوۓ انھیں لہو رنگ کر لیا تھا
ایسے دلفریب نظارے پر انکی آنکھوں میں جذبات کا سمندر ٹھاٹھیں مارنے لگا
نگاھوں کی تپش پراس نے چہرہ اٹھایا تو انھیں اپنی جانب گہری نظروں سے دیکھتے پایا
آنکھوں کو آنکھوں نے جیسے قید کیا تھا جذبات سے مغلوب ھو کر انھوں نے اپنا ہاتھ اس کے چہرے کی جانب بڑھایا تاکہ اس کے تشدد سہتے لبوں کو رہاٸی دے سکیں
مگر اس سے پہلے ھی مشعل کی آنکھ سے آنسو نکلا جسے انھوں گال پر لڑھکنے سے پہلے ھی اپنی پٌور پر چن لیا تھا
وہ حیرت سے انھیں دیکھنے لگی
کیا اب دل نہیں لگتا پڑھاٸی میں؟
ل۔۔۔۔لگتا ھے
تو پھر اچھا ٹیسٹ کیوں نہیں دیا؟
وہ کوٸسچن ھی ایسے تھے زاویار۔۔۔بھاٸی میری غلطی نہیں تھی
ھممممم۔۔۔۔۔سزاملے گی اب۔۔۔۔۔۔وہ شوخ ھوۓ
ک۔۔۔کونسی سزا؟؟؟اور میں کرنے آٸی ھوں ناں سوری۔۔۔تو معذرت قبول۔۔۔کر لیں بس
ام ھمممم۔۔۔۔سزا تو ملے گی فور شیور” مس۔۔۔۔۔۔۔“
”مسز “کہتے کہتے بروقت انھوں نے خود کو روکا تھا
تم کو الجھا کے کٸی سوالوں میں
میں نے جی بھر کے تمھیں دیکھ لیا
جسم و جاں میں سر شاری کی سی کیفیت تھی
اچھا بتاٸیں۔۔۔۔آنکھوں کو پونچھتے منہ بسورتے ھوۓ کہتے بہت کیوٹ سی چھوٹی بچی لگی
چلو تمھیں ڈراپ میں کرونگا کالج۔۔۔ پھر راستے میں ھی بتاٶنگا
وہ اسکی جان مشکل میں ڈال گٸے تھے۔۔۔اب وہ جانتے تھے کہ مشعل ان سے کیوں گریز پا ھے کیوں ہچکچاتی ھے ان کے سامنے آنے سے۔۔اور اس قدر خوبصورت وجہ جاننے کے بعد تو جیسے وہ خوشی کی معراج چٌھوآۓ تھے
مگر میں۔۔۔۔
آہاں۔۔۔۔۔بس تمھیں ڈراپ میں ھی کرونگا
اچھا۔۔۔۔کہتی و ہاتھ مروڑتی ھوٸی روم سے باھر نکلی اور ایک گہرا سانس لیا
اففف۔۔۔۔۔اس شخص کی ذرا سی قربت پہ یہ حال ھے جو میسر ھوگیا سارا ھی تو جانے کیا تماشا ھو گا
خود سے باتیں کرتی وہ اپنے روم میں چلی آٸی اور کالج جانے کی تیاری کرنے لگی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تمہیں کیاھوا ھے؟؟؟
ثانیہ کو سر پکڑے رضاٸی میں ھی بیٹھے دیکھا تو اس نے پوچھا
سندس کا فون آیا تھا
اچھا پھر؟؟؟
کہتی کہ جسطرح اس کی باقی کزنز نے ایک جیسے ڈریسز بنواۓ ھیں مہندی کے لیے بس کلر کمبینیشن ڈفرنٹ ھے
میرا بھی بنا لیا ھے اس نے
اب میں اس کو کیسے کہوں کہ میں نہیں آ رھی؟
اتنی چاھت سے بلا رھی ھے وہ اور کوٸی راضی ھی نہیں میرے ساتھ جانے کو
بھاٸی کو لے جاٶ ساتھ۔۔۔ تم کو مسٸلہ کیا ھے آخر؟؟؟
میں نے نہیں کرنی اسکی منتیں۔۔۔۔۔وہ مجھے بہت چڑاتا ھے اور وہاں بھی خون جلاۓ گا میرا
اب میرے لیے کیا حکم ھے؟؟؟
مشعل نے اسے گھورتے ھوۓ پوچھا
مجھے شادی پر جانا ھے مشی۔۔۔۔۔بے بسی سے اس نے کہاتو وہ اسکی شکل دیکھ کر ہنس پڑی
میں بات کروں بھاٸی سے کہ تمھیں تنگ نہ کریں اور لے کر جاٸیں ساتھ؟
بلکل بھی نہیں۔۔۔وہ مجھے بہت ھی بیچارا سمجھ لے گا
اچھا سنومیری بات۔۔۔۔ابھی شادی میں دو دن رھتے ھیں۔۔۔ تم ناں بھاٸی سے اچھا بی ہیو کرو ان کے کچھ کام وام کردو انھیں کھانے پینے کا بہت شوق ھے ناں تو کچھ اچھا سا بنا دو ان کے لیے۔۔۔۔پھر باتوں باتوں میں سندس کا ذکر کرنا کہ وہ ناراض ھو گٸی ھے تمارے نہ جانے پر
میرا بھاٸی اتنا اچھا ھے خود آفر کرے گا لے کر جانے کی
ثانیہ نے اس کے مشوروں پر حیرت سے اسے دیکھا
مان لو۔۔۔۔۔۔ٹراۓ تو کرو ایٹ لیسٹ
وہ چپ چپ سی ہاں میں سر ہلا گٸی تھی تو مشعل نے اسے مسکراتے ھوۓ دیکھا تھا…

–**–**–
جاری ہے
——
آپکو یہ ناول کیسا لگا؟
کمنٹس میں اپنی رائے سے ضرور آگاہ کریں۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Subscribe For Latest Novels

Signup for Novels and get notified when we publish new Novel for free!




%d bloggers like this: