Mera Sham Slona Shah Piya Novel By Bella Subhan – Episode 9

0
میرا شام سلونا شاہ پیا از بیلا سبحان – قسط نمبر 9

–**–**–

جی ماں آپ نےبلایا تھا۔۔۔۔۔؟؟
ڈور ناک کر کے وہ روم میں اینٹر ھوتے ھی بولے تو نگہت نے اشارے سے انھیں اپنے پاس بیٹھنے کو کہا
ابراھیم نے بھی سنجیدگی سے دیکھا تووہ الجھ کر رھ گٸے کہ یوں پرسراریت سی کیوں۔۔۔ ۔۔؟؟؟ مگر بیٹھ کر محض سوالیہ نظروں سے انھیں دیکھ کر رھ گٸے
بیٹا۔۔۔۔ھم چاھتے ھیں کہ اب تمھاری شادی کر دی جاۓ۔۔۔تمھارے لیے ایک لڑکی پسند کی ھے ھم نے مگر تمھیں کوٸی پسند ھے تو وہ بھی ھمیں بتا دو۔۔۔اس پر بھی کوٸی اعتراض نہیں کیا جاۓ گا
کیوں۔۔۔؟؟ٹھیک کہا ناں میں نے؟؟
نگہت نے بات کرنے کے بعد ابراھیم سے تاٸید چاھی تو وہ اثبات میں سر ہلا گٸے
جبکہ زاویار کو جہاں انکے پہلے جملے پر خوشگوار حیرت ھوٸی تھی باقی کی بات سن کر اس پر اوس گری
آپ نے کس کو پسند کیا ھے میرے لیے؟بمشکل مسکراتے انھوں نے پوچھا تو نگہت نے نفی میں سر ہلایا
تمھیں کوٸی پسند ھے تو وہ بتاٶ بیٹا۔۔۔کیونکہ میں جانتی ھوں ھماری پسند پر تم انکار نہیں کروگے اورمیں نہیں چاھتی کہ اگر تم کسی اور سے شادی کرنا چاہ رھے ھو تو محض اس لیے اپنی خواہش چھوڑو کہ ھمیں کوٸی اور پسند ھے
ان کے وہم و گمان میں بھی نہیں تھا کہ مشعل کو اس کے لیے پسند کیا گیا ھوگا
ماں۔۔۔۔۔۔۔۔مشعل کیسی لگتی ھے آپ کو ایز اے بہو؟؟؟
جھینپتے ھوۓ اپنی ہلکی بڑھی ھوٸی شیو کھجاتے وہ بولے تو نگہت نے حیرت سے ابراھیم کو دیکھا اور زاویار کے کندھے پر ہلکی سی چپت رسید کی
بیٹی کی طرح ھی رکھونگی جیسے اب تک رکھا ھے۔۔۔مشعل پسند ھے میرے بچے کو؟؟؟
لاڈ سے ان کے چہرے پر ہاتھ رکھے وہ بولیں تو وہ سنجیدہ ھوۓ
بس مجھے لگتا ھے کہ لاٸف پارٹنر ھو تو وہ ھی ھو اور کوٸی نہیں
یہ تو کمال ھی ھوگیا ۔۔۔کہ ماں بیٹے کو ایک ھی لڑکی پسند آٸی ھے
ابراھیم ہنستے ھوۓ بولے تو زاویار کو اب صحیح والا حیرت کا جھٹکا لگا اور وہ جو ماند ماند سی خوشی تھی بے پایاں مسرت میں بدلی تھی
سچ کہہ رھے ھیں؟؟
بلکل سچ۔۔۔۔۔۔چلو اب میں مشعل سے بھی اسکی راۓ پوچھ لونگی۔۔۔ٹھیک ھے ناں بیٹا؟؟
ناں۔۔۔نہیں آپ اس سے کوٸی بات ہیں کرینگی ابھی۔۔۔ایگزیمز ھونے دیں اس کے۔۔۔فری ھو جاۓ گی تو دیکھیں گے مگر فی الحال اسکو بھنک بھی نہیں پڑنی چاھیے اس سب کی
کیونکہ وہ اس کے منہ سے ابھی اظہار سننا چاھتے تھے
ٹھیک ھےجیسے تم کہو۔۔۔چلو اب جاٶ صبح آفس
بھی جانا ھے تم نے
ھمم اوکے۔۔۔۔ گڈ ناٸٹ
خوشی سے جھومتے وہ اپنے روم میں آۓ اور بے اختیار اللہ کا شکر ادا کیا کہ زندگی اس قدر سہل ھوگی اندازہ نہ تھا
”تمھارےسنگ جینے کے خواب سچ ھونے لگے ھیں مِشو“
مسکراتے ھوۓ وہ بولے تھے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آٶ آٶ محترمہ۔۔۔۔تمھیں تو گلے لگ کر مبارکباد دینی چاھیے۔۔۔۔۔آخر کو تمھارا جادو چل ھی گیا زاویار بھاٸی پر بلکہ ھمیں تو پہلے ھی اندازہ تھا اس بات کا۔۔۔۔ بس تم ھی سمجھ نہیں پا رھی تھی۔۔۔۔ ھے ناں عروج؟
بلکل۔۔۔اسکو توویسے بھی ہر بات ذرا دیر سے ھی سمجھ آتی ھے
عروج نے ہنس کر مشعل کا شرم سے سرخ چہرہ دیکھتے اسے چھیڑا
اچھا فضول مت بولو۔۔۔۔تیاری کیسی ھے پیپر کی یہ بتاٶ۔۔۔اپنا والٹ یونہی چیک کرتے اس نے پوچھا تھا مگر اس سے پہلے کہ کوٸی جواب دیتاوہ چیخی تھی
ھاۓ۔۔۔۔۔رولنمبر سلپ بھول گٸی ھوں گھر۔۔۔
کیا کہہ رھی ھو؟؟؟ بیس منٹ رھ گٸے ھیں اور تمھیں اب یاد آ رھا ھے کہ رول نمبر سلپ گھر بھول آٸی ھو
میں گھر فون کر کے کہتی ھوں کہ سلپ دے جاٸے مجھے کوٸی
عروج کے کہنے پر وہ پریشانی سے بولی
نگہت کا نمبر ڈاٸل کرتے اس کی انگلیاں تھمیں۔۔۔
اسوقت گھر ھوگا نہیں کوٸی۔۔کچھ سوچتے اس نے زاویار کا نمبر ڈاٸل کیا تھا
وہ جو بے حد مصروف انداز میں لیپ ٹاپ کیساتھ لگے تھے موباٸل کے بجنے پر سرسری سا ادھر دیکھا مگر سکرین پر بلنک کرتے اس کےنام پر وہ ٹھٹکے
خیریت ھے؟
فون اٹھاتے ھی انھوں نے پوچھا تو اس کی پریشان سی آواز سناٸی دی
سلپ گھر بھول گٸی ھوں میں اور پیپر شروع ھونے والا ھے پلیز مجھے دے جاٸیں
اوکے ڈونٹ وری۔۔۔۔ میں لے آتا ھوں
تیزی سے اٹھتے وہ گھر جانے کو آفس سے نکلے تھے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اتنا پریشان ھونے کی ضرورت نہیں تھی جب میں ھوں تمھارے لیے ھر مسٸلہ سلجھانے کو
گھر سے مطلوبہ چیز لیکر وہ اس تک پہنچے اور مشعل کا پریشان چہرہ دیکھتے بولے تھے
وہ گیٹ کے بلکل پاس ھی کھڑی ان کا انتظار کر رھی تھی۔۔۔۔
بہت بہت شکریہ۔
تشکر سے اس نے کہا تھا
پک کرنے بھی میں ھی آٶنگا ٹاٸم بتاٶ واپسی کا۔۔۔ٹاٸمنگ بتا کر وہ جیسے ھی گٸی تو زاویار نے بھی گاڑی کی طرف قدم موڑے تھے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اففف شکر ھے ایک بلا سر سے ٹلی۔۔۔۔شکر کا کلمہ پڑھتے سونیا نے کہا اور تینوں ایک بینچ پرآ بیٹھیں
کوٸسنچن پیپر پر ڈسکشن کرتے مزید آدھا گھنٹہ گزرا
ھاۓ میں نے لاسٹ دو سوال کیے نہیں اور پیپر دے آٸی ھوں
سوٸی ھوٸی تھیں کیا؟
بس جلدی جلدی میں پتا ھی نہیں چلا مجھے۔۔۔اتنے مارکس یونہی کٹ جاٸیں گے حالانکہ وہ دونوں سوال آتے تھے مجھے
تمھاری یہ جلدبازی کی عادت کسی دن بڑا نقصان کرواۓ گی مشعل
اسکی پریشانی پر عروج نے اسے لتاڑا تو سونیا اس کو سرزنش کرنے لگی کہ ایسے مت کہو۔۔۔قبولیت کا وقت تو کوٸی بھی ھو سکتا ھے
مگر کوٸی نہیں جانتا تھاکہ یہی وقت قبولیت کا تھا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
طوفان کی سی تیزی سے وہ اس ٹیبل تک پہنچا تھا تو ثانیہ نے پہلے حیرت اور پھر شدید ناراضگی سے اسے دیکھا
جبکہ وہ کھا جانے والی نظروں سے ولید کا پوسٹ مارٹم کر رھا تھا
جی؟؟؟؟؟
سوالیہ نظروں کیساتھ حسن نے ولید سے پوچھا تو وہ گلا کھنکارتے ھوۓاسک طرف ہاتھ بڑھا گیا
ھیلو۔۔۔۔۔آٸم ولید لغاری۔۔۔۔اینڈ یو؟؟
بادل نخواستہ اس سے مصافحہ کرتے ھوۓ وہ ثانیہ کی برابر والی چیٸر پر بیٹھا
ایکسکیوزمی۔۔۔۔فیملی۔۔۔۔
ثانیہ کی طرف اشارہ کر کے وہ ولید سے بولا تو وہ جو کب سےاپنےناخنوں کو دیکھتی اپنا غصہ ضبط کر رھی تھی ایک نظر اس پر ڈال کر منہ موڑ گٸی
اوہ۔۔۔۔۔۔بہن ھے آپ کی؟؟
ولید نے پرسکون ھو کر سوال کیا تو اس نے اپنے لب بھینچے۔۔۔۔دل نےاس بات پر أستغفر الله پڑھی
نہیں۔۔۔۔شی از ماۓ فیانسی۔۔۔ٹھنڈے لہجے میں جب وہ بولا تو ولید کے ارمانوں پر برفانی تودہ گرا
اوکے۔۔۔۔۔ھیو فن۔۔۔مسکرا کر کہتے ھوۓ وہ وہاں سے گیا توحسن نے متوقع نازل ھونے والے عذاب کو سوچ کر خود پر ترس کھایا
وہ جانتا تھا کہ ثانیہ اسے پھاڑ کھانے والی نظروں سےدیکھ رھی ھے اور کسی بھی وقت پھٹ کر اس کی جان مشکل میں ڈالنے والی ھے
گہری نگاھوں کو سرسری بناتے اسکی طرف دیکھا تو اس کے چہرے پر نظر پڑتے ھی اسک ہنسی چھوٹی تھی
پوری آنکھیں کھولے اسکو دیکھتی ھوٸی مٹھیاں غصےسے بھینچتےاسے وہ بہت ھی کیوٹ لگی جیسے کوٸی چھوٹی بچی اپنی من پسند کھانے کی شے نہ ملنے پر ایڑیاں رگڑتے ھوۓ غصہ دکھاتی ھے
کیا بکا ھے یہ اور کیوں؟
یہ فضول آدمی دفعان ھو جاۓ تمھارے پاس سے اسی لیے
حسن کے سکون سے جواب دینے پر وہ مزید آگ بگولا ھوٸی
منگیتر ھوں میں تمھاری؟؟بہن کیوں نہیں بولا۔۔۔بول سکتے تھے ناں؟؟
نتھنے پھلاتے وہ بولی تو شہادت کی انگلی سے پیشانی کھجاتے وہ بے بسی سے اسے دیکھ کر رہ گیا کہ وہ خود بھی نہیں جانتا تھا اسے منگیتر کہہ کر متعارف کیوں کروا گیا
دیکھو۔۔۔۔مجھے وہ شخص ٹھیک نہیں لگ رھا تھا
اووووو۔۔۔۔لاٸک سیریسلی؟؟؟؟
تمھارے اتنے قریب قریب بیٹھا تھا مجھے نہیں اچھا لگا بس۔۔۔ اسکی جرح پر چڑتے وہ بولا تو اسکا غصہ کہیں دور جا سویا اسکی جگہ ایک عجیب سی راحت دل کو ملی تھی جسے وہ کوٸی نام نہ دے پاٸی
اٌدھر دیکھو۔۔۔۔۔تمھاری کملی مٹیار نچ نچ کے اپنی پسلیاں سینک رھی ھے ۔۔۔۔اور۔۔۔ ایک منٹ۔۔۔۔یہ تم گٸے کیوں تھے اس کے ساتھ کتھک کرنے بتانا ذرا؟؟؟
بھنگڑا ڈالتی مونا کی طرف اشارہ کرتے ھی اچانک اس نے نیا کھاتہ کھولا تھا حسن ہنستے ھوۓ اپنی آنکھیں میچ گیا
جان نکال دونگی تمھاری میں اگر اب اسکی طرف گٸے تو۔۔سنا ؟؟؟؟
جاٶنگا میں تو۔۔۔۔
اس نے اسکو تپ چڑھاٸی اور حسبِ توقع وہ پھول کے کٌپا ھوٸی تھی
ٹھیک ھے میں بھی ولید کو بلاتی ھوں اگر تم مونا کے قریب پھٹکو گے تو۔۔۔۔۔
یہ سنتے اسکی ساری شرارت ھوا ھوٸی اور چہرے پر غصے کے بادل لہراۓ
مرنا ھے میرے ھاتھوں؟؟
سرد لہجے میں وہ بولا توثانیہ چہکی تھی
بولو نہیں جاٶ گے؟؟؟
وہ کٸی ثانیے تک اسے دیکھے گیا
بولو ناں۔۔۔۔
اثبات میں سر ہلاتے ہلاتے آنکھوں میں جو سنجیدگی تھی وہاں جذبات ہلکورے لینے لگے جسکی تپش اسکےدل تک گٸی تو وہ بغیر پیاس کے ھی پانی پینے کا کہتی وہاں سے اٹھی تھی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آگٸے مجھے لینے وہ۔۔۔۔۔ان کا میسیج پڑھتے ھی وہ اٹھی اور اپنی چیزیں سمیٹنے لگی۔۔۔۔اب تو گیپ ھے اگلے پیپر میں تو اسکی تیاری ذرا سکون سے ھی کروگی میں۔۔ممانی بھی بیچاری اکیلی ھی کام کر تی ھیں تو ان کی ہیلپ کرونگی
عروج اور سونیا دونوں سے گلے ملتے وہ تیز تیز بولی جب اس کے جاتے جاتے سونیا نے آواز دی
اے سنو؟؟
ہاں سناٶ۔۔۔
زاویار بھاٸی آۓ ھیں کیا جو اتنی بے تاب؟؟؟مسکراہٹ دباتے اس نے پوچھا تووہ محض اثبات میں سر ہلاتے مسکراٸی
اچھا اچھا پھر ملتے ھیں خدا حافظ
اوکے اللہ حافظ
انھیں الوداع کہتے اس نے جلدی سے باھر آ کرمتلاشی نگاھوں سے ادھرادھر دیکھا
گاڑی کیساتھ ٹیک لگاۓ وہ اسی کو دیکھ رھے تھے
سماٸل پاس کرتے انھوں نے سر کے اشارے سےاپنی طرف آنے کااشارہ کیا تو وہ سر جھکاتی انکی طرف بڑھی
گاڑی میں بیٹھنے سے گاڑی کےچلنے تک انکے درمیان کوٸی بات نہ ھوٸی تھی اور یہ انکشافات کے بعد پہلا موقع تھا کہ وہ زاویار کیساتھ باھر تھی اور اس نے ان سے ابھی تک کوٸی فرماٸش نہ کی تھی
بلکہ اس سب سے برعکس وہ انکی طرف سے رخ پھیرے باھر کےنظاروں میں خود کو غرق ظاہر کرنے لگی
زاویار کو اس کے ایسے رویےسے الجھن ھونے لگی انھیں وہ شوخ اور زیادہ سارا بولنے والی مشعل چاھیے تھی جو اپنی ھر بات ان سے شیٸرکرتی تھی مگریہاں تو گنگا ھی الٹی بہنے لگی کہ جب سے دونوں کو اک دوجے کے جذبات کاعلم ھوا تھا سمجھ ھی نہیں آتا تھا کہ کیا بات کی جاۓ
زاویار کو یہ خواہش بھی پوری کرنی تھی کہ مشعل اپنی محبت کا اظہار کرے مگر یہ ھونا مشکل ھی لگ رھا تھا لیکن انھوں نے دل میں ٹھان لی تھی کہ اس سے اگلوا کر ھی دم لیں گے
آٸسکریم کھاٶگی؟؟
وہ انکی آواز پر چونکی
نہیں۔۔۔۔
کچھ اور؟؟اس کے علاوہ؟؟
بھوک نہیں ھے
بھوک تو پہلے بھی نہیں ھوتی تھی بس میری جیب خالی کرواتی تھی۔۔۔۔تو کیا اب حق نہیں رھا؟؟
نہیں نہیں ایسی کوٸی بات نہیں ھے
سنجیدگی سے وہ بولے تواس نے بوکھلاتے ھوۓکہا تھا
یعنی مجھ پر حق ھے تمھارا؟
گھمبیرتا سے انھوں نے پوچھا تو اس کے دل نےایک بیٹ مس کی ہونٹوں پر قفل پڑے تھے
بتایا نہیں تم نے؟؟
آپکو کیا لگتا ھے؟؟
اپنی بوکھلاہٹ پر قابو پاتے وہ الٹا انھی سے پوچھنے لگی توانکی آنکھوں کی چمک دگنی ھوٸی
مجھے جو جو لگتا ھے وہ تم شاٸد سن نہ پاٶ۔۔۔۔شرارت سےانھوں نےکہا تووہ پل میں گلابی ھوٸی
تب ھی سگنل پر گاڑی رکی تو انھوں نےاسکی طرف رخ موڑا
سننا چاھو گی؟؟اس کے چہرے کے نقوش پر نظریں گاڑتے وہ بولے تو اس نے بے ساختہ اپنا نچلا لب دانتوں تلے دبایا
انکی نگاہ میں اسکی یہ جان لیوا حرکت آٸی تو وہ بے ساختہ اپنا ہاتھ اسکی جانب بڑھا گٸے
یہ مت کیا کرو۔۔۔۔۔انگوٹھے سے اس کےلب کو دانتوں کے تشدد سے آزاد کرواتے انھوں نے سرگوشی کی تو اسکو لگا وہ مر جاۓ گی
جسم میں خون کی گردش تیز ھوٸی تو دل کی دھڑکن بھی حد سےسوا ھوٸی تھی
وہ مسلسل اسے اپنی نگاھوں سے کنفیوز کر رھے تھے
ونڈو پر ہلکی سی دستک پر یہ طلسم ٹوٹا جہاں ایک فقیر صدقہ خیرات مانگنے لگا
بیٹا اللہ کے واسطے۔۔۔۔۔خالی مت لوٹاٶ۔۔۔۔۔اپنی بیوی کاصدقہ اتار دو اللہ ہر بلا اور مصیبیت سے بچاۓ اللہ جوڑی سلامت رکھے۔۔۔۔
وہ یہ دعا سنتے بری طرح جھینپی جبک زاویار کھل کر مسکراۓ تھے اپنا والٹ جیسے ھی اٹھایا تو سگنل کھلا تھا ہاتھ میں جتنے نوٹ لگے جلدی سے نکالتے اس کے سر سے ٹچ کرتے باھر فقیر کو پکڑاۓ اور گاڑی آگے بڑھاٸی
وہ دیتے ھیں صدقہ میرا
ہاۓ میں صدقے ان کے
بہت پہلے پڑھا ایک شعر اس کےذہن میں لہرایا تواس نے صدقہ اتارتی نگاھوں سے انھیں دیکھا
یوں دیکھو گی تو مشکل ھو جاۓ گی بہت ۔۔۔نہیں کرو
محبت پاشی سے اسکو دیکھتے انھوں نے کہا تو وہ گڑبڑاتے ھوۓ ایک بار پھر باھر دیکھنے لگی
مجھے لے چل اپنے سنگ پیا
میری آنکھ میں تیرے رنگ پیا
اب مجھ کو ”میں“ سے” تو“ کر دے
میں اپنے آپ سے تنگ پیا
میرا شام سلونا شاہ پیا
مجھے مار گٸی تیری چاہ پیا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
لیٹ ناٸٹ فنکشن اٹینڈ کرنے کے بعد صبح چار بجے کے قریب سب سوۓ تھے ڈھولک اور ڈانس کی ایسی محفل اس نے زندگی میں پہلی بار دیکھی تھی خاصا انجواۓ کرتے رات اپنے اختتام کو پہنچی
اگلے روز دوپہر تک سوۓ رہنے کیوجہ سے اسکو یاد نہ رھا کہ حسن کے کپڑے پریس کرنے والے ھیں۔۔۔جلدی جلدی پانی کےچھپاکے منہ پرمار کر اسکے روم کیطرف بڑھی
ڈور ناک کیا مگر کوٸی جواب نہ پا کر اسے دھکیلتی اندر داخل ھوٸی۔۔۔۔۔صوفے پر ھی آنکھیں موندے نیم دراز حسن دکھاٸی دیا تو تیر کی سی تیزی سےوہ اس تک پہنچی تھی
حسن آر یو اوکے؟
تھکی سی نگاھیں اسکی نظروںسے ٹکراٸیں تو وہ حقیقتاً بے حد پریشان ھوٸی
سردردشدید۔۔۔۔۔
جواب دے کر وہ پھر پلکیں موند گیا تو وہ جلدی سےسندس کےپاس گٸی اور ملازمہ سےچاۓبنواٸی ڈسپرین کی دو گولیاں سندس کی ایک کزن سےلیکر حسن تک آٸی تھی
اٹھو۔۔۔۔یہ لو ٹیبلٹ لو چاۓ کیساتھ
پل کے پل اس نے آنکھیں کھول کر اسے دیکھا اور پھر پاس رکھی چاٸ اور ٹیبلٹ کو
چاۓ اور ٹیبلٹ لے آٸی ھو۔۔۔سر بھی تو دباسکتی تھی
عجب لاڈ سے وہ بولا تو اس نے اپنی مسکراہٹ روکی
گلا دبادوں؟؟؟
آنکھیں کھول کر وہ اسے دیکھے گیا۔۔۔۔سر درد سے سرخ ھوتے نین اور بوجھل سی پلکیں۔۔۔۔ثانیہ کو پہلی بار معلوم ھوا کہ مرد کی آنکھیں بھی حشر برپا کرنے کی صلاحیت رکھتی ھیں
اٹھ جاٶ۔۔۔۔۔۔۔پھر کپڑے پریس کرتی ھوں تمھارے۔۔اسکی نظروں کے سحر سے خود کو بمشکل آزاد کرواتی وہ بولی اور بیگ سے اس کے کپڑے نکالنے لگی
اٹھ کر چاۓ پیتے ھوۓ وہ مسلسل اسی پر نظریں جماۓ ھوۓ تھا
ثانیہ نے رخ موڑ کر آنکھیں میچی۔۔۔۔اسے حسن کا دیکھنا ڈسٹرب کر گیا تھا
تاڑو کہیں کا
منہ ھی منہ میں بڑبڑاٸی تھی
_______
ماشاءاللہ،۔۔۔نگہت نے ان دونوں کو ایک ساتھ آتے دیکھا تو زیرِلب پڑھا تھا
کیسا ھوا پیپر؟مشعل کے سلام کا جواب دیتے ھوۓ انھوں نے پوچھا تو وہ ان کے گلے لگتے پیپر کا بتانے لگی۔۔۔ہاں بھول جانے والے دو سوالوں کا ذکر گول کر دیا تھا
ممانی۔۔۔۔میں ثانیہ کو کال کرتی ھوں۔۔جانے ان دونوں نے کیا حشر کیا ھوگا ایک دوسرے کا لڑ لڑ کے
ہنستے ھوۓ وہ بولی تونگہت نے بھی اسکا ساتھ دیا تھا
تمھارے ماموں نے سمجھایا تو تھا دونوں کو مگر وہ بھی اپنی طرز کے بس دو ھی پیس ھیں مجال ھے جو ادھار رکھیں اک دوجے پر ۔۔۔۔کھٹ سے گھڑا گھڑایا جواب حاضر کرتے ھیں دونوں ھی۔۔۔
اچھا کھانا لگا دوں بھوک لگی ھوگی؟؟
نہیں بس چاۓ پیوں گی وہ بھی خود ھی بناٶنگی۔۔۔ آپ بیٹھیں ناں
زاویار اسے ڈراپ کر کے آفس جا چکے تھے
صوفے پر بیٹھے بیٹھے ھی اس نے اپنے پیروں کو جوتے سے آزد کروایا اور ثانیہ کو کال ملاٸی تھی
دوسری ھی بیل پر کال اٹینڈ کرنے کے فوراً بعد ثانیہ کی مصروف سی جھنجھلاٸی آواز ان دونوں کے کانوں سے ٹکراٸی۔۔۔۔مشعل نے سپیکر آن کیا ھوا تھا
رک یار میک اپ کر کے ریڈی ھو کر بات کرتی وں ابھی تو حٌسن کو تڑکا لگارھی ھوں
ساتھ ھی فون بند ھونے پر ٹوں ٹوں کی آوز آٸی تو وہ موباٸل کو ھی گھورنےلگی
یہ کام ھیں اس کے۔۔۔۔کہتے ساتھ ھی اس نے اب کی بار حسن کا نمبرڈاٸل کیا جو اس نے یقیناً موباٸل ساٸیلینٹ پر ھونے کی وجہ سے نہیں اٹھایا تھا
آجکل کی نسل کو موباٸل ساٸیلینٹ پر رکھ کر جانے کونسا سکون ملتا ھے
نگہت سر جھٹکتے ھوۓ بولیں تو وہ محض مسکرا دی تھی۔۔۔۔اچھا شام کے لیے کیا بنانا ھےمجھے بتاٸیں میں کروں گی اب کچن کا کام بھی اور باقی سارے کام بھی
عام دنوں میں کرواتی نہیں ھوں تو اب کیا امتحانوں کے دوران میں کام کرواٶنگی تم سے
اففف ممانی چار دن کا گیپ ھے اگلے پیپر تک
نگہت کے پیار سے کہنے پر وہ بولی
زاویار اور تمھارے ماموں نے لیٹ آنا ھے تو کھانا کھا کر ھی آٸیں گے کوٸی آفیشل ڈنر ھے باقی ھم دو لوگ بچتے ھیں میں نے ابھی دوپہر کا کھانا کھایا ھے تواب رات کو نہیں کھاٶنگی مجھے ہضم بھی مشکل سے ھی ھوتا ھے تم جانتی ھو
پیزا آرڈر کردوں گی پھر ٹھیک ھے؟؟
اسکی آنکھیں چمکی تھیں
ھاں کردینا۔۔۔۔اس کے گال کو پیار سے چھوتے وہ اٹھیں تو اس کی انگلیاں جلدی سے نمبرڈاٸل کرنے لگیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بیٹا یہ پھول سارے پلیٹس میں ڈال کر ٹیبل پر رکھو تاکہ جیسے ھی بارات آۓ تو لڑکیاں ان سے بارات کا استقبال کرسکیں میں تب تک مہمانوں سے مل لوں
سندس کی امی اسے پھولوں سے بھرا شاپرجلدی میں پکڑا کر جا چکی تھیں تو وہ ٹیبل پر موجود پلٹیوں کو پھولوں کی پتیوں سے بھرنے لگی جب وہ ہال میں داخل ھوا
متلاشی نگاھوں سے ادھرادھر اسکو ڈھونڈتےنظریں بےقرار سی ھوٸیں تھیں جیسے ھی وہ ثانیہ کی طرف بڑھا مونا لپک کر اس تک آٸی تھی
ارے واہ ھماری تو میچنگ ھو گٸی ھے حسن۔۔۔۔۔۔بلیک شلوار قمیض پر بلیک ھی شال کندھوں پر رکھے وہ بہت ھی سنجیدہ سا وڈیرہ لگ رھا تھا۔۔۔۔۔۔جبکہ اس کے برعکس اس کی شریر فطرت پھڑک رھی تھی کہ کاش ثانیہ ان دونوں کو ایک ساتھ کھڑا دیکھے۔۔۔۔۔سونے پہ سہاگہ سوٹ بھی ایک رنگ میں پہنے تھے مونا بلیک اور سلور فراک میں واقعی پیاری لگ رھی تھی
حسن کی دعا رنگ لاٸی۔۔۔۔ثانیہ نے سرسری سا ان ک طرف دیکھا اور نظریں ان دونوں پر ھی جم گٸیں
وہ غیر محسوس طریقے سے اسکی طرف بڑھا تو مونابھی اس سے بات کرتے کرتے ثانیہ تک پہنچی تھی
اس کے گال کے ساتھ گال ٹچ کر کے گلے لگاتے وہ بڑی ھی لگاوٹ سے جب ثانیہ سے ملی تو اس نے بمشکل مسکرا کر اسے دیکھا
یو آر لٌکنگ گورجیٸس ثانیہ۔۔۔۔اس کے تعریفی کلمات پر حسن نے اسکا تفصیلی جاٸزہ لیا
ہلکے آسمانی رنگ کی شارٹ فراک کیساتھ پرپل ٹراٶزر اور دوپٹے میں وہ منہ بند کلی لگی
ہلکا براۓ نام سا میک اپ اور لاٸٹ پنک گلوز۔۔۔بیچ کی مانگ کیساتھ فرنچ بناۓ باقی بالوں کو یونہی کھلا چھوڑ رکھا تھا
پہلی نظر میں کچھ انوکھا نہ لگتا تھا مگر جیسے جیسے نقوش کی ملاحت اور سادگی میں لپٹے حٌسن کا ادراک ھوتا جاتا اس پر نظر ٹھہرتی جاتی تھی
دیکھو۔۔۔۔ثانیہ ھماری تو میچنگ ھی ھوگٸی ھے۔۔۔۔مونا نے شوخی سے کہا تھا تو حسن نے جان بوجھ کر مسکراتے مونا کی جانب دیکھا
ثانیہ نے بےاختیار پہلو بدلا تھا اور اسے خون آشام نگاھوں سے دیکھا
”وہ مارا“حسن کا دل اسکی جلن پر جھومتےھوۓ چِلایا
مونا۔۔۔۔۔یہ ولید لغاری سندس کا کیا لگتا ھے؟؟اس نے مونا سے ولید کا پوچھا کیونکہ وہ جانتی تھی جس قسم کی وہ بندی تھی ناں۔۔۔۔۔اسکو ھر شخص خصوصاً خوبصورت مردوں کے بارے میں سب انفارمیشن تھی
جہاں اس کے اس سوال پر مونا حسن کو نِہارتی چونکی تھی وہیں حسن کا ناچتا دل جھاگ ک طرح بیٹھا
بہت کلوز فیملی فرینڈ ھیں اور سندس کی شادی کے لیے بطورخاص آۓ ھیں شارجہ سے۔۔۔۔۔انکا اپنا بزنس ھے وہاں اور پتا ھے اب کی بار تو وہ اپنی شادی کروا کے جانے کا ارادہ رکھتے ھیں آنٹی بتارھی تھیں کہ انکو جیسی لڑکی پسند ھے ویسی تو ملنا ھی مشکل ھے خاصی الگ سی پسند ھے انکی۔۔۔۔۔کسی سے سیدھے منہ بات کرنا پسند نہیں کرتے۔۔۔اور ھماری فیملی کی تو ھر لڑکی کو ھی ایک حد میں رکھ کر بات کرتے ھیں بندہ چاہ کر بھی فرینک نہیں ھو پاتا
لب بھینچے وہ ولید نامہ سن رھا تھا توثانیہ خود کو بے حد انٹرسٹڈ ظاہر کررھی تھی جسے دیکھتے ھوۓ حسن کا فشارِخون بلند ھونے لگا
ھممم مطلب اگر وہ کسی کو وقت دے تو بات ھے اس بندی میں راٸٹ؟؟؟
بلکل۔۔۔۔
ھاۓ اتنا امیر کبیر اور ہینڈسم بھی۔۔۔ اس جیسے بندے کےساتھ زندگی گزارنی ھو تو اور کیا چاھیے کسی لڑکی کو۔۔۔ھے ناں
بات کے اینڈ پر اس نے مونا اورحسن سے راۓ جاننی چاھی تومونا ہنس دی
اچھا میں آتی ھوں
عجلت میں کہتی ھوٸی وہ اپنی ایک آنٹی کی طرف بھاگی جنہوں نے اسے آواز دی تھی
تب تک وہ اس کے عین سامنے آ کر اسے سر تا پیر گھورنے لگا
تم نے انگلش کا وہ محاورہ سنا ھے۔۔۔۔ ٹِٹ فور ٹیٹ؟؟؟ہنسی ضبط کرتے وہ اسے کوٸلوں پر بٹھا گٸی
وہ ہنوز اسے سرد نگاھوں سے دیکھ رھا تھا تو ثانیہ کو الجھن ھونے لگی طوفان سے پہلے کی خاموشی کو محسوس کرتے وہ خود کو تیار کرنے لگی کیونکہ اتنا تو وہ جانتی تھی کہ یہ بندہ اینٹ کا جواب پتھر کیساتھ دینے والوں میں سے ھے
بات سنو آ کر۔۔۔۔کہتاوہ جانے لگا تو اس نے سر جھٹکا
ہونہہ ایویں۔۔۔۔۔میں نہیں آ رھی۔۔۔
راٸٹ ناٶ۔۔۔گلیشیٸر سی سرد آواز میں کہہ کر وہ اسے بھی سٌن کرگیا تو ثانیہ کو اپنی کی جانے والی بکواس پر پچھتاوا ھونے لگا
لمبےلمبے ڈگ بھرتا وہ اسکی نظروں سےاوجھل ھوا تووہ بھی تیزی سے اس کے پیچھے لپکی تھی…

–**–**–
جاری ہے
——
آپکو یہ ناول کیسا لگا؟
کمنٹس میں اپنی رائے سے ضرور آگاہ کریں۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Subscribe For Latest Novels

Signup for Novels and get notified when we publish new Novel for free!




%d bloggers like this: