Nami Raqsam Novel By Ifrah Khan – Episode 3

0
نمی رقصم از افراح خان – قسط نمبر 3

–**–**–

ہم بڑے ناز سے آئے تھے تیری محفل میں
کیا خبر تھی لب اظہار پر تالے ہونگے
اگلے دن غنچہ گل جب یونیورسٹی گئی۔۔۔۔
جیسا اس نے سوچا تھا اور عہد کیا تھا ویسا ہی اس پر عمل بھی کیا۔۔۔۔۔
وہ زہران پر سرسری سی نگاہ ڈال کر آگے بڑھ گئی۔۔۔
زہران نے بھی ذیادہ توجہ نہ دی۔۔۔۔۔
وہ بھی آج سارا دن بجھا بجھا سا رہا۔۔۔۔
اس بات کو غنچہ نے بھی نوٹ کیا لیکن وہ اس سے بےچینی کی وجہ پوچھنے کی ہمت نہیں رکھتی تھی۔۔۔۔
اس نے چپ چاپ اپنی ساری کلاسسز اٹینڈ کیں۔۔۔
اور ہاسٹل واپس آ گئی ۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کب نکلتا ہے کوئی دل میں اتر جانے کے بعد
اس گلی کے دوسری جانب کوئی راستہ نہیں
وہ اپنے دل کو بہت سمجھاتی جو ہر وقت زہران کے نام کا ہی کلمہ پڑھنے پر مجبور کرتا تھا۔۔۔۔۔
اس نے ہمیشہ کی طرح کھڑکی میں جانا بھی چھوڑ دیا تھا۔۔۔۔
گویا وہ اپنے دل اور محبت پر جبر کرنے لگی تھی۔۔۔۔۔۔
اپنے دل کی حالت اور تڑپ سے تنگ ہو کر وہ رونے لگتی اور اللّٰہ سے دعا کرنے لگی ۔۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ جائنماز۔پر بیٹھی دعا کر رہی تھی۔۔۔۔
جب دروازے پر دستک ہوئی۔۔۔۔۔۔۔
اس نے جائنماز۔تہہ کرنے کے بعد سائیڈ پر رکھا اور دروازہ کھولا۔۔۔۔۔۔
جہاں ہاسٹل کی وارڈن کھڑی تھی۔۔۔۔۔۔
غنچہ گل آپ کے لیے فون آیا ہے۔۔۔۔جائیں آفس میں اور بات کریں۔۔۔۔۔
جی میم۔۔۔۔۔۔۔تائیدی انداز میں سر ہلا کر وہ آفس کی طرف چل دی۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
زہران کا آج سارا دن بہت مصروف گزار تھا۔۔۔۔۔
اس کی کزن کا اس یونیورسٹی میں ایڈمیشن کروانا تھا۔۔۔۔
جس کی ساری ذمہداری اسے سونپی گئی تھی۔۔۔۔
علیشا کے ساتھ یونیورسٹی میں کچھ ضروری ڈاکومنٹس جمع کروانے کے بعد وہ علیشا کو یونیورسٹی سے ملحق ہاسٹل میں چھوڑنے آگیا۔۔۔۔
ہاسٹل کے مالک کو اس کے والد جانتے تھے۔۔۔۔۔
اس لئے چوکیدار کو حوالہ دے کر وہ آسانی سے اپنی کزن کے ساتھ ہاسٹل کے اندر چلا گیا۔۔۔۔۔
علیشا کو روم کے باہر چھوڑ کر اسے ضروری ہدایات اور خیال رکھنے کی تاکید کر کے وہ وارڈن سے ملنے آفس چلا گیا۔۔۔۔۔۔۔
جب وہ آفس میں داخل ہوا وہاں کوئی بھی نہیں تھا۔۔۔۔
البتہ ایک لڑکی کسی سے دھیمی آواز میں فون پر بات کر رہی تھی۔۔۔۔
اس کے لمبے سنہری بال اس کی پشت پر بکھرے ہوئے تھے۔۔۔۔
زہران کو ایک انجانی سی کشش اس لڑکی سے محسوس ہونے لگی۔۔۔
لیکن وہ آفس سے باہر آگیا اور ادھر ہی کھڑے رہ کر وارڈن کا انتظار کرنے لگا۔۔۔۔
وہ
اپنی ماں سے بات کر رہی تھی۔۔۔۔
جو اسے کل ہی کچھ دن کے لیے گھر آنے کا بول رہی تھیں۔۔۔۔۔
کیوں کہ حویلی میں کوئی تقریب تھی جس میں اس کی شرکت ضروری تھی۔۔۔
لیکن وہ ان تقریبات وغیرہ کی عادی نہ تھی۔۔۔
ہمیشہ ان سے دور رہتی تھی۔۔۔۔
اس لئے وہ اپنی ماں سے کہنے لگی وہ چھٹیوں میں گھر آئے گی اور ہمیشہ کی طرح گاؤں والے گھر رہے گی۔۔۔۔
لیکن اس کی ماں بات ماننے سے انکاری تھی اور اپنا حکم سنا کہ کھٹاک سے فون بند کر دیا۔۔۔
غنچہ گل مایوسی سے منہ لٹکائے کچھ پل فون کو گھورتی رہی۔۔۔۔۔
پھر فون رکھ کر آفس سے باہر آ گئی۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دائیں طرف مڑتی راہداری میں وہ اپنے کمرے کی جانب جانے لگی۔۔۔
راستے میں کھڑے شخص پر اس کی اچانک نگاہ اٹھی۔۔۔۔
ایک لمحے کے لیے وہ گھبرا گئ ۔۔۔۔۔
لیکن اگلے ہی پل وہ تیزی سے وہاں سے بھاگی اور اپنے کمرے میں ہی آ کر دم لیا۔۔۔۔۔۔
یہ کیا ہو گیا؟؟؟؟؟ کہیں اس نے مجھے پہچان تو نہیں لیا؟؟؟۔
وہ خود سے الجھتی اور سوال پوچھتی۔۔۔۔۔
اس کا دل بہت زور سے دھڑک رہا تھا۔۔۔۔۔۔
کچھ دیکھے جانے کے ڈر سے اور کچھ چوری پکڑی جانے کا خوف سے۔۔۔۔۔۔۔۔
لیکن وہ مجھے کیسے پہچانے گا؟؟؟؟؟
بنا حجاب کے اس نے مجھے دیکھا نہیں کھڑکی میں بھی اتنے دور سے وہ مجھے نہیں پہچان سکتا۔۔۔۔
آج تک نہ ہی اس نے مجھے توجہ دی ہے۔۔۔۔۔
وہ سخت پریشانی کے عالم میں ادھر ادھر ادھر ٹہل رہی تھی۔۔۔۔۔
لیکن اس بات پر اسے اطمینان آ گیا کہ وہ اسے نہیں پہچان سکتا۔۔۔۔۔۔
اپنی طرف سے وہ خود کو بہت ذہین تصور کر چکی تھی۔۔۔۔۔
اور اپنی ذہانت پر مسکرانے لگی۔۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ایک لڑکی کلی جیسی
چاندی کے ورق جیسی,سونے کی ڈلی جیسی
اک لڑکی چنبیلی سی
معشوق وہ رنگوں کی ,خوشبو کی سہیلی سی
اک لڑکی گلابوں سی
وہ برف کے موسم میں, ہنزہ کی شرابوں سی
وہ نام نزاکت کا
الھڑ سی جوانی پر , جوبن تھا قیامت کا
موسم کی ادا جیسی
سورج کی کرن جیسی
ریشم ملائم وہ , مخمل کے بدن جیسی
وہ دوست کتابوں کی
تھی دن کے اجالے میں, وہ رات ثوابوں کی
کیا جانے بستی میں
اب چاندنی رہتی ہے, کسی چاند کی بستی میں
دوسری طرف زہران کی حالت غنچہ سے بھی ذیادہ خراب تھی ۔۔۔۔
آفس سے نکلتی لڑکی پر جب اس کی غیر ارادی نظر اٹھی وہ پلکیں جھپکانا بھول گی۔۔۔۔
یک ٹک اسے دیکھے جارہاتھا
وہ لڑکی انسان نہیں سنگِ مرمر کی مورت لگتی تھی۔۔۔۔۔
سنہری لمبے بال,,بڑی بڑی نیلی جھیل جیس گہری آنکھیں تھیں۔۔۔۔
رنگت سنگِ مرمر جیسی سفید شفاف تھی۔۔۔
اس کے چہرے پہ انوکھا سا نور تھا ۔۔۔۔۔۔جو اسے اور بھی ذیادہ پر کشش بنا رہا تھا۔۔۔۔
بنانے والے نے اسے بہت ہی فرصت میں سوچ کر خوبصورت اور حسین تر بنایا تھا۔۔۔۔
وہ جس کام کے لیے آیا تھا۔۔۔۔اس کام کو بھول کر ہاسٹل سے باہر آ گیا ۔۔۔۔۔۔۔اور اپنی گاڑی میں آ کر بیٹھ گیا۔۔۔۔۔۔
اس کا ذہن اب بھی یہی سوچ رہا تھا۔۔۔۔۔
کھڑکی میں روز آنے والی لڑکی جو دنیا کی ہر چیز سے بے خبر ہو کر صرف اسے تکتی تھی۔۔۔۔۔اور یونیورسٹی میں خیالوں میں ڈوب کر اسے دیکھنے والی لڑکی غنچہ گل دونوں ایک ہی تھیں۔۔۔۔
اور وہ یہی حسن کی دیوی تھی۔۔ ۔۔جو آج اس کے سامنے آئی تھی۔۔۔۔۔
کچھ
اس کے دل کو یقین تھا اور کچھ غنچہ نے گھبرا کر بھاگ جانے والی حرکت سے اس کے یقین پر پکی مہر ثبت کر دی تھی۔۔۔۔۔
جس لڑکی کے لیے وہ اتنے دنوں سے بے چین تھا۔۔۔۔۔
جو آج کل کھڑکی میں آنا بھی چھوڑ گئی تھی۔۔۔۔
آخر کار زہران احمد نے اسے تلاش کر ہی لیا۔۔۔۔۔۔
اس کامیابی پر خوش ہو کر اس نے دھیمی آواز میں رومانوی گیت پلے کیا اور گاڑی ڈرائیو کرنے لگا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

–**–**–
جاری ہے
——
آپکو یہ ناول کیسا لگا؟
کمنٹس میں اپنی رائے سے ضرور آگاہ کریں۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Subscribe For Latest Novels

Signup for Novels and get notified when we publish new Novel for free!




%d bloggers like this: