Sun Mere Humsafar Novel By Sanaya Khan – Episode 31

0
سن میرے ہمسفر از سنایا خان – قسط نمبر 31

–**–**–

عمران الیشا کے ساتھ ساتھ جب اُسکی امی کو فائزہ کے ذریعے یہ بات معلوم ہوئی تو وہ بلکل ٹوٹ گئیں اُن سے کچھ بولا تک نہیں گیا ریحان اپنی صفائی اور ساحر کی برائی میں بہت کچھ کہتا رہا عمران اور الیشا اسے سمجھاتے غصّہ کرتے رہے یہ سب اُن کی نظروں کے سامنے ہورہا تھا لیکن وہ چپ ہی رہی
امی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
فائزہ اُنھیں صدمے میں دیکھ کر افسوس بھرے لہجے میں پکارا
تمہارے ابو نے بس یہی چاہا کے تم سب ہمیشہ ساتھ رہو اُن کے مرنے کے بعد بھی ۔۔۔۔۔اسلئے وہ یہ رشتہ جوڑنا چاہتے تھے یہ نہیں کہ اسی رشتے کی وجہ سے تم ایک دوسرے کے دشمن بن جاؤ
وہ تھکے تھکے انداز میں بولیں
غلطی ساحر کی ہے امی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
غلطی تمہاری ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔ساحر نے کبھی بھی غیر نہیں سمجھا ہمیں ۔۔۔۔۔۔۔۔نہ کبھی یہ جتایا کے وہ ہمارے گھر کا داماد ہے ۔۔۔ ہمیشہ بیٹے کی طرح رہا ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔تم نے کیسے سوچ لیا کے وہ دولت اور حثیت کا فرق رکھنے والوں میں سے ہے اس کی اپنی اولاد ہے اور اسے حق ہے انکے فیصلے لینے کا تم زبردستی نہیں کرسکتے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اتنے سالوں کی ساری اچھائیاں بھلا دی تم نے اُسکی۔۔۔۔۔ ذرا بھی نہیں سوچا کہ تمہاری باتوں سے کتنا دکھ ہوا ہوگا اسے۔۔۔عیشا سے الگ ہونے تک کی بات کہہ دی تم نے شرم نہیں آئی تمہیں۔۔۔۔۔۔۔۔
انہوں نے ریحان کی جانب دیکھ کر غصے سے کہا لیکن کوئی پچتوا اُنھیں ریحان کے چہرے سے نظر نہیں آرہا تھا
میں خود جاکر اس سے معافی مانگتی ہو ۔۔۔۔۔۔
ریحان کو افسوس بھری نظروں سے دیکھ کر وہ کرسی سے اٹھی
امی آپ کہیں نہیں جائیگی ۔۔۔۔۔۔ نہ کسی سے معافی مانگے گی ۔۔۔۔۔۔۔۔
ریحان نے اُنھیں روکتے ہوئے کہا
ریحان یہ بتادو کے تم آخر چاہتے کیا ہو
عمران نے غصے سے کہا اسکا ارادہ ھر گز بھی صلح کا نظر نہیں آ رہا تھا
میں کسی کو کوئی صفائی نہیں دینا چاہتا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ جو مجھے غلط سمجھتا ہے سمجھے مجھے کوئی فرق نہیں پڑتا
یہ بات اُسنے براہِ راست عمران کے لیے کہی تھی اب تک جو ساحر کی سائیڈ لیے اُس سے لڑ رہا تھا اُسکے بدلے میں
عیشو سے بھی کوئی فرق نہیں پڑتا تمہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میں نے بہت کوشش کی اُسے سمجھانے کی مگر اُسکے لیے اپنے بھائی کی کوئی اہمیت نہیں اُس نے میرا ساتھ نہیں دیا اب مجھے اس سے بھی کوئی لینا دینا نہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ رخ پھر کر بولا
اور اپنی ماں سے لینا دینا ہے تمہیں یا وہ بھی نہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔
امی نے حیران ہوکر چند لمحے اپنے سمجھدار بیٹے کو دیکھا جو حال ہی میں جانے کیسے اتنا بدل گیا تھا انکی آنکھوں سے آنسو بہنے لگے تھے
آپ پریشان مت ہوئیں امی میں ساحر سے بات کروں گا کسی ایک کی غلطی کی وجہ سے ساحر کا اس گھر سے رشتہ نہیں ٹوٹے گا
ریحان کی جانب دیکھ کر اُس نے اُنھیں دلاسہ دیتے ہوئے کہا
💜💜💜💜💜💜💜💜
میں ہاتھ جوڑتا ہو تیرے آگے۔۔۔۔۔۔۔۔۔اس ٹاپک کو بند کردے۔۔۔۔۔۔۔۔۔میں جانتا ہوں میں جو کررہا ہو وہ صحیح ہے یا غلط۔۔۔۔۔۔۔پلیز تو اینٹر فیئر مت کر
عمران نے اُسے بہت سمجھانے کی کوشش کی لیکن وہ کچھ سننے کو تیار ہیں نہیں تھا عاجزی کہتا اپنی چیئر سے اٹھ گیا
ہاں میں تو تیرے لیے کوئی ہوں ہی نہیں نہ تیرے معاملے میں اینٹر فیئر کیسے کرسکتا ہو پھر
عمران تو سمجھ نہیں رہا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔اُس نے جو کیا بہت غلط تھا میری برداشت کے باہر
تجھے ہو کیا گیا ہے ساحر۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔تجھے ریحان کی باتیں دکھ رہی ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔اُسکے الزام دکھ رہے ہے لیکن تجھے عیشو نہیں دکھ رہی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔اسکا نہیں سوچا تونے۔۔۔۔۔۔اُسے اچھا لگے گا یہ تیری دشمنی نبھانا وہ بھی اُسکے اپنے بھائی سے
یہ فضول کی باتیں کرکے تو عیشا کو میرے خلاف بھڑکا رہا ہے
صبح عیشا کے سامنے بھی اُس نے یہی بات کہی تھی تب عيشا کا چہرہ دیکھ کر اُسے بہت برا لگا تھا اور عمران کی بات پر اُسے غصے بھی بہت آیا تھا اور وہ خاموشی سے باہر نکل آیا تھا لیکن اب آفس آکر بھی عمران اُس سے وہی بات کررہا تھا عمران کو بہت حیرت ہوئی کے اسکا دوست اُسے اتنا غلط سمجھ رہا ہے
ہاں بھڑکا رہا ہو۔۔۔۔۔۔۔۔دشمن ہے نہ تو میرا۔۔۔۔۔۔۔۔۔تو دشمنی تو کسی طرح نکالنی ہے اسلئے بھڑکا رہا ہوں بول کیا کریگا
عمران نے اُسکی بات پر غصے سے کہا
بس کر عمران جا یہاں سے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ جھنجھلا کر بولا
تیری انا تجھے کچھ صحیح سوچنے نہیں دے رہی غلطی ریحان کی ہے لیکن سزا تو سب کو دےرہا ہے خود کو بھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔تو جانتا ہے اُسکی امی خود آنے والی تھی تجھ سے معافی مانگنے
لیکن آئی تو نہیں نہ
تو تو کیا چاہتا ہے۔۔۔۔۔۔وہ یھاں آئے ۔۔۔۔تیرے پیر پکڑ کر تجھ سے معافی مانگے تب اچھا لگے گا تجھے
عمران کو اُسکی ہر بات آج حیران کر رہی تھی
میں نے ایسا کب کہا۔۔۔۔۔۔۔۔
لیکن تیرا مطلب تو یہی ہے۔۔۔۔۔۔سچ میں آج مجھے تجھ میں میرا دوست نظر ہی نہیں آرہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔آج مجھے ایک گھمنڈی ۔۔۔۔۔بے پروا۔۔۔۔۔بزنس مین نظر آرہا ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
عمران کا بس نہیں چل رہا تھا کے وہ اُسے مار مار کر یاد دلائے کے یہ وہ نہیں اُسکی انا بول رہی ہے اسکی بات پر ساحر کو بہت غصّہ آیا
ہاں کیوں کے آج تو میرا دوست بن کر میرا ساتھ دینے نہیں بلکہ تیرے رشتےداروں کی وکالت کرنے آیا ہے۔۔۔۔۔۔میں گھمنڈی ہوں۔۔۔۔۔بے پرواہ ہو جیسا بھی ہو ۔۔۔۔۔۔اپنی بےعزتی کرنے والے کو معاف نہیں کر سکتا ۔۔۔۔۔۔۔۔لیکن میں سمجھ سکتا ہو تو بھی مجبور ہیں آخر تیری بہن کی زندگی جڑی ہے اس سے تو چاه کر بھی میرا ساتھ دے نہیں سکتا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔لیکن میں تجھے مشکل میں نہیں ڈالو گا جا بے فکر ہو کر اسکا ساتھ دے۔۔۔۔۔۔۔میں دوستی کا واسطہ نہیں دونگا تجھے نہ کوئی سوال اٹھاؤ گا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔مجھے کسی کی ضرورت نہیں ہے
اُسنے غصے اور طنز میں ڈوبے ایسے الفاظ کہے کے عمران اسے صدمے سے دیکھنے لگا
بہت بڑی بات کہہ دی تو نے۔۔۔۔۔۔۔۔۔ آج دوستی کی اوقات بتا دی شکریہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
عمران نے افسوس سے کہا اور اُسے دیکھتا ہوا وہاں سے باہر نکل گیا اُسے امید تھی کہ ساحر اُسے روکے گا لیکن ساحر نے اُسے نہیں روکا
💜💜💜💜💜💜💜💜
اُن سب کے درمیان ایک دیوار کھڑی ہو گئی تھی انا کی دیوار جو کوئی آگے بڑھ کر توڑنے کو تیار نہیں تھا جس کی وجہ سے رشتے بکھر گئے تھے دوستی چوٹ گئی تھی پیار ہار گیا تھا عیشا نے صبر کر لیا تھا ساحر کے لیے وہ اُسے چھوڑ نہیں سکتی تھی کسی بھی صورت اسلئے اُسے اپنے بھائی اپنے مایکے کو چھوڑنا پڑا اپنی امی سے وہ فون پر بات کرلیتی تھی لیکن اُسنے یہ محسوس کیا تھا کے ساحر یہ بھی پسند بھی کرتا تھا اسکا برتاؤ اتنا عجیب ہوتا کے وہ ڈر جاتی اسلئے اُسنے یہ بھی بہت کام کر دیا بنا اُسکے کہے ۔۔۔۔۔۔۔
ساحر نے ہمیشہ کے لیے لندن جانے کا فیصلہ کیا تھا وہ اپنا سارا بزنس لندن میں شفٹ کرکے وہاں رہنے کا ارادہ رکھتا تھا اور عیشا سے اس بارے میں جب پوچھا تو اُسنے ہمیشہ کی طرح ہاں کر دی تھی کبھی کبھی پیار کرنا بھی مصیبت بن جاتا ہے ہم قید ہوجاتے ہیں خود بخود کسی اور کا سوچتے سوچتے اپنا سوچنا بھول جاتے ہیں وہ اپنوں سے دور تو پچھلے کچھ مہینوں سے ہی ہو چکی تھی لیکن اب بہت دور ہونے والی تھی و بس چند آنسو بہا سکتی تھی وہ بچوں کو خود اسکول سے لینے جارہی تھی تاکہ انہیں اسکول سے نکلنے کے ساری کارروائی کر سکے آج اُنکا انڈیا میں آخری دن تھا
پھوپھو۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ عائشہ کی کلاس سے ہوکر سمر کو اشارے سے بلا تی آفس کی جانب بڑھی تھی جنّت نے آکر اُس کا ہاتھ پکڑ لیا اور اُسے جوش میں پکارا
جنّت۔۔۔۔۔۔۔۔آپ گھر نہیں گئی بیٹو۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
عیشا نے جھک کر اُسے پیار کیا
پاپا تو آئے ہی نہیں ابھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جنّت معصومیت سے بولی
آجاینگے کسی کام میں رہ گئے hoge
مام۔۔۔۔۔۔۔۔ہم لوگ پلین میں کب جائے گے
سمر بھاگتا ہوا آیا اور عیشا سے لپٹ گیا وہ بس مسکرائی
تم پلین میں جا رہے ہو۔۔۔۔۔۔۔۔وہ بڑے والے
جنّت حیرانی سے آنکھیں بڑی کرکے بولی
ہاں ہم پلین سے اڑ کر لندن جا رہے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔مام ہم جنّت کو بھی لے چلیں کیا اپنے ساتھ۔۔۔۔۔۔۔۔
سمر نے جنّت کو بتانے کے بعد عیشا کی جانب دیکھا
ہاں پھوپھو۔۔۔۔۔۔مجھے بھی آپکے ساتھ چلنا ہے۔۔۔۔۔۔۔
جنّت خوش ہوتے ہوئے بولی
جنّت۔۔۔۔۔۔۔۔بیٹو۔۔۔۔۔۔۔۔۔آپ ہمارے ساتھ نہیں آسکتی ۔۔۔۔۔۔۔ آپ کو یہی رہنا ہے۔۔۔۔اپنے ممّی پاپا کےساتھ۔۔۔۔دادی کے پاس۔۔۔۔۔
عیشا نے اُسے سمجھایا
تو آپ نہیں رہےگی ہمارے ساتھ۔۔۔۔۔۔۔۔ہم پھر پکنک میں گیم کیسے کھیلے گے ۔۔۔۔۔۔۔ممی پاپا تو کھیلتے بھی نہیں ۔۔۔۔۔آپ کب واپس آؤگی پھوپھو۔۔۔۔۔۔۔۔
جنّت رانی صورت بنا کر اُسے دیکھنے لگی
میں جلدی واپس آؤگي اور جب تک میں نہیں آجاتی تب تک آپ گڈ گرل بن کر رھوگی۔۔۔۔۔۔ما ما پاپا اور دادی کی ہر بات مانوگی ۔۔۔۔۔۔۔۔ اور سب کا بہت خیال رکھو گی اوکے
عیشا نے پیار سے اُسکے گال پر کس کیا
اوکے پھو پھو۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ اُسکی بات مانتے ہوئے بولی
میری پیاری بیٹو ۔۔۔۔۔۔۔
عیشا نے اُسے سینے سے لگا لیا
تم تینوں یہی رُکو میں ابھی آتی ہو
وہ اکیلی ہی آفس میں چلی گئی بچوں کو صوفے پر بیٹھا کر
سمر۔۔۔۔ تم چلے جاؤگے تو میں شادی کس سے کرونگی ۔۔۔۔۔
جنّت نے باتوں کے درمیان کہا
پاگل میں واپس آؤنگا نا۔۔۔۔۔ پھر ہم شادی کرینگے ۔۔۔۔۔۔۔۔اور بہت ڈانس بھی کرینگے
عائشہ دونوں کی باتوں سے کا تعلق بیگ کو جانچتی رہی
تم میرے لیے گفٹ لیکر آؤگے نہ
ہاں میں مما کو بولوں گا بہت سارے گفٹ لینگے ہم دونوں ساتھ کھیلینگے پھر
سمر نے ایکسائٹڈ ہو کر کہا عیشا باہر آئی اور انکے ساتھ بیٹھ گئے جنّت کے جانے تک وہ اُس کے پاس رہنا چاہتی تھی لیکن کوئی اب تک اُسے لینے نہیں آیا تھا
جنّت۔۔۔۔۔۔۔
ریحان نے جنّت کو پکارا تو عیشا نے اُسنے جانب دیکھا لیکن و اسے دیکھ بھی نہیں رہا تھا جنّت اپنا بیگ لیکر اُسکے پاس گیا
مامو۔۔۔۔۔۔ہم لوگ پلین میں جانے والے ہے۔۔۔۔۔۔۔
سمر کو پلین میں بیٹھنے پر بہت خوشی تھی وہ ریحان کو دیکھ کر بھی خوشی ظاہر کر رہا تھا بدلے میں ریحان نے مسکرا کر دیکھا۔۔۔۔۔اُسکے بالوں میں ہاتھ گھما کر عیشا پر ایک نظر ڈالی اور خاموشی سے باہر نکل گیا وہ دھندلی آنکھوں سے اُسے دیکھتی رہی

–**–**–
جاری ہے
——
آپکو یہ ناول کیسا لگا؟
کمنٹس میں اپنی رائے سے ضرور آگاہ کریں۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Subscribe For Latest Novels

Signup for Novels and get notified when we publish new Novel for free!




%d bloggers like this: