Sun Mere Humsafar Novel By Sanaya Khan – Episode 46

0
سن میرے ہمسفر از سنایا خان – قسط نمبر 46

–**–**–

سمر کو ہر بات اگنور کر دینے کی عادت تھی وہ کسی بھی بات کو ایشو بنا کر کسی سے بیر نہیں رکھتا تھا اور یہی اُس نے ہنی کے ساتھ بھی کیا تھا دوستی کے نام پر اُس کی ہر غلطی کو نظر انداز کرتا رہا اور اسی کا نتیجہ تھا کے ہنی نے آج اس حد تک گری ہوئی حرکت کی تھی لیکن اب اُس کی حد ختم ہو چکی تھی اور ہنی اُس کی نظروں سے گر چکی تھی
وہ گھر آیا تو جنت اُس کے انتظار میں باہر ہی پریشان ہو رہی تھی اُس کی گاڑی دیکھتے ہی اُس کی جان میں جان آئی وہ گاڑی سے نکلا تو جنت اُس کے پاس آئی تاکہ سمر سے پوچھ سکے لیکن سمر نے اُسے یہ موقع ہی نہیں دیا وہ گاڑی سے نکلتے ہی اُسکی جانب بڑھا اور اُسے گلے سے لگا لیا
کیا ہوا۔۔۔۔۔۔
جنت کو لگا وہ پریشان ہے تو اُس نے جلدی سے پوچھا لیکن وہ کچھ نہیں بولا بس اُسے اپنے سے لگائے رکھا اور جنت نے بھی دوبارہ کچھ بھی پوچھا
کچھ دیر بعد وہ جب اُس سے الگ ہوا تو جنت نے اُس کا چہرہ دیکھا وہ بہت افسردہ لگ رہا تھا لیکن وہ جنت کی جانب نہیں دیکھ رہا تھا پتہ نہیں کیوں پھر اُس کا ہاتھ تھامتے ہوئے اُسے اندر لے آیا۔۔۔۔۔۔
کہاں گئے تھے تم سمر۔۔۔۔۔۔۔
روم میں آکر سمر نے اسکا ہاتھ چھوڑا تھا اُسے بے چین دیکھ کر جنت نے غور کرتے ہوئے پوچھا
میں ہنی سے ملنے گیا تھا۔۔۔اُس نے مجھے بلایا تھا
اُس کی بات پر جنت نے اپنی اگلے سانس کو روکے رکھا
وہ چاہتی تھی کے میں تمہیں چھوڑ دوں اُس کے لیے کیوں کے وہ مجھ سے پیار کرتی ہے۔۔۔۔۔۔
اُس نے بہت بار کہا مجھے لیکن میں نے اگنور کیا لیکن آج۔۔۔۔۔۔آج اُس نے اچھا نہیں کیا۔۔۔۔۔
She tried to suduced me
وہ جنت کے قریب آکر بولا اور جنت نے لب بھینچ لیے
تم صحیح تھی جو اُس پر غصّہ کرتی تھی جو اُسے پسند نہیں کرتی تھی وہ اسی لائق ہے۔,۔۔۔۔
وہ اُسے یقین دلا رہا تھا کے ہنی کے بہکانے سے اُسے کوئی فرق نہیں پڑا
میں اُسے صرف اس لیے نا پسند کرتی تھی کیوں کے مجھے لگتا تھا تم اُسے چاہتے ہو مجھے کسی سے کوئی مطلب نہیں ہے سمر مجھے بس تم سے مطلب ہے
جنت نے اُسے دیکھتے ہوئے کہا
میں اُسے نہیں چاہتا میں بس تمہیں چاہتا ہوں صرف تم سے پیار کرتا ہوں
I love you
وہ جلدی سے بولا اور اُسے سینے سے لگا لیا اُس کے ہاتھ جس طرح جنت کے اوپر حرکت کر رہے تھے اُس سے جنت کو اندازہ ہو رہا تھا کے وہ کتنا بے چین ہے
اتنے پریشان کیوں ہو رہے ہو۔۔۔۔۔۔۔
وہ سر اٹھا کر اُسے دیکھتے ہوئے بولی
تم بھی مجھ سے۔۔۔۔۔ پیار کرتی ہو نا
سمر ایک بات بس اُس کے ہونٹوں سے اقرار سننا چاہتا تھا تاکہ اُس کے دل کے سارے شک ختم ہو جائے
تمہیں کیا لگتا ہے۔۔۔۔۔۔۔
جنت نے سنجیدگی سے پوچھا وہ دیکھ تو سکتا تھا اُس کی آنکھوں میں اپنی محبت لیکن دل میں کو بدگمانی تھی وہ اس قدر حاوی تھی کے یقین کو بھی کمزور بنا رہی تھی اُس نے بنا کچھ کہے اُسے دوبارہ خود سے لگا لیا
💜💜💜💜💜💜💜💜
وہ سمر کے بدلتے رویے کے بارے میں سوچ کر پریشان ہو رہی تھی لیکن لاکھ کوشش کے بعد بھی یہ بھی سمجھ پا رہی تھی کے آخر وہ یہ سب کیوں کے رہا ہے۔۔۔ وہ باہر گارڈن میں ہی بیٹھی تھی۔۔کبیر کے آنے پر وہ اپنی سوچوں سے باہر نکلی
کبیر تم۔۔۔۔۔۔عائشہ آپی کو نہیں لائے ساتھ۔۔۔۔۔
وہ خوشدلی سے بولی
نہیں۔۔۔۔بہت لمبا سفر تھا نا تو میں نے سوچا آج کا دن وہ ریسٹ کر لے
کبیر نے اچھا سا بہانہ بنایا
اور مجھے تم سے ایک بات بھی کہنی تھی
وہ جو طئے کرکے آیا تھا سیدھے اُس بات کی طرف بڑھا
بولو نا۔۔۔کیا بات کرنی تھی۔۔۔۔۔۔۔
جنت نے اُسے بیٹھنے کا اشارہ کیا
بہت ضروری بات جو میں کب سے تم سے کہنا چاہتا ہوں لیکن مجھے ڈر ہے کے کہیں تم ناراض نا ہو جاؤ۔۔
کبیر نے اُسکے چہرے پر نظریں جمائے کہا
میں تم سے کیسے ناراض ہو سکتی ہوں کبیر
تم سے تو اگر چاہوں تب بھی ناراض نہیں ہو سکتی
پتہ ہے تم میری کہانی میں ایک اینجل کی طرح ہو جب کہانی اُداس ہو جاتی ہے تو اللہ ایک فرشتہ بھیجتا ہے اور وہ فرشتہ سب ٹھیک کر دیتا ہے تم میرے لیے اسی فرشتے کی طرح ہو کبیر
جس نے میری لائف سے پرابلم کو ختم کر دیا اور اور مجھے ہپپی انڈنگ دیدی
وہ سنجیدگی سے بولی اور اُسکی بات کبیر کو کسی اور ہے اور لیے جا رہی تھے اُسے احساس ہو رہا تھا کے آج تو وہ فرشتہ نہیں بلکہ شیطان کا کردار نبھانے آیا ہے
میں خود تو کچھ بھی نہیں کر سکی میرے لیے جو کیا وہ تم نے ہی کیا۔۔۔۔۔۔میری ہر خوشی کی وجہ تم ہو
اگر میں اور سمر ساتھ ہے تو اس کی بھی وجہ تم ہو اگر سمر نہیں ہوتا تو میری زندگی بلکل بے رنگ ہوتی آج اگر میری زندگی میں پیار کے رنگ ہے تو اُن کی بھی وجہ تم ہو۔۔
وہ چاہ کے بھی بھول نہیں سکتی تھی کے عیشا کو واپس لانے والا کبیر ہی تھا وہ اُسکے دل کی بات سے انجان تھی اُسے بس کبیر کی اچھائیاں ہی نظر آتی تھی
تھینکو کبیر تھینکیو سو مچ میرے اینجل بننے کے لئے مجھے میری زندگی۔۔میری محبت دینے کے لیے
اُس نے کبیر کے کندھے پر سر رکھتے ہوئی کہا اور اپنے آنسو صاف کیے کبیر کسی بے جان مورتی کی طرح کھڑا تھا جیسے کسی نے جان نکال دی ہو ہمیشہ سے تو اسکا پیار بے غرض تھا لیکن آج اُسے احساس ہو رہا تھا کے خود غرض ہورہاہے ہے وہ جنت کے بارے میں نہیں بلکہ اپنے بارے میں سوچ رہا ہے
جنت اُسے اپنا دوست مانتی تھی اپنا مسیحا مانتی تھی اور اُس کی دل سے عزت کرتی تھی لیکن اکثر ان سچ جذبات کی وجہ سے انسان مشکل میں پڑ جاتا ہے وہ اس بات سے انجان کے ہنی نے اُسے کبیر کے ساتھ دیکھ لیا ہے
ہنی سمر کے کل رات والی انسلٹ کے بعد جنت کو سنانے کے ارادے سے آئی تھی لیکن باہر ہی کبیر کو اُسکے ساتھ دیکھ کر رک گئی اُس کے شیطانی دماغ میں جو ترکیب آئی اُس کے مطابق اُس نے دونوں کی تصویر لے کر سمر کے نمبر پر بھیجی
اسی پیار کی بات کر رہے تھے تم ۔۔۔۔۔۔ مجھے نہیں پتہ تھا کے تمہارا خون اتنا گندا ہے ۔۔۔۔۔۔لگتا ہے اس کا خیال نہیں رکھتے تم تبھی تو دیکھو کیسے کھلے عام کسی اور کے ساتھ مزے کر رہی ہے۔۔۔۔۔اس تو بہتر ہی ہوں میں۔,۔۔۔۔
اُس نے تصویر کے ساتھ ہی اپنے دلکی بھڑاس نکالی اور باہر کے باہر ہی لوٹ گئی جنت کبیر سے دور ہوئی اور ملازمہ سے کافی کا ٹرے لے ٹیبل پر رکھا
چپ کیوں ہو بتاؤ نا کیا بات کرنا چاہتے تھے۔۔۔
کبیر کو خاموش دیکھ کر وہ بولی
اگر میں کسی دِن تمہارے دکھ اور اُداسی کی وجہ بن گیا تو
کبیر نے سنجیدگی سے پوچھا
مجھے پتہ ہے وہ دن کبھی نہیں آئیگا ۔۔۔۔۔بلکہ ایسا تو خواب بھی نہیں آئیگا کبھی مجھے اتنا یقین ہے تم پر
جنت نے پر یقین لہجے میں کہا اب کبیر اُس کا یقین نہیں توڑ سکتا تھا
کافی۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جنت نے کافی کا مگ اُس کی جانب بڑھایا کبیر نے ہاتھ بڑھایا ہی تھا لیکن کافی جنت کے ہاتھ سے چھلک کر اُس کے اوپر گر گئی
اوہ نو۔۔۔۔آئے ایم سوری کبیر
وہ ندامت سے بولی
کوئی بات نہیں۔۔۔۔۔۔
کبیر نے ہاتھ سے ہی شرٹ کو صاف کرنا چاہا
تم اندر چل کر شرٹ چینج کر لو کافی کا داغ رہ جائیگا ورنہ۔۔۔۔۔۔۔
جنت نے پریشان ہوتے ہوئے کہا تو کبیر نے سر ہلا دیا اور اُسکے ساتھ اندر آگیا
💜💜💜💜💜💜💜💜💜
سمر ہنی کا میسیج دیکھ کر بے یقینی سے اُس تصویر کو دیکھتا رہا اُس کے دل میں پہلے ہی اس بات کو لے کے آگ جل رہی تھے کے کبیر اور جنت کس حد تک کلوز ہے اور ہنی کے میسیج نے اُس آگ پر گھی کی طرح کام کیا وہ اسی وقت کام چھوڑ کر گھر آگیا تھا
لیکن جب وہ گھر آیا تب جنت گھر پر نہیں تھی اور مس روزی نے اُسے بتایا کے وہ کبیر کے ساتھ گئی ہے وہ اپنے روم میں آگیا وہ بے صبری سے جنت کا انتظار کر رہا تھا تاکہ اُس سے اپنے سوالوں کے جواب مانگ سکے اُس کے ذہن میں بہت ساری باتیں چل رہی تھی جس نے اُسے بہت بری طرح پریشان کیا ہوا تھا
وہ واش روم میں آیا جہاں اُس نے کبیر کی شرٹ دیکھی ساتھ ہی کبیر کی واچ بھی وہیں رکھی ہوئی تھی اُس نے واچ اٹھا کر غور سے دیکھا اور پوری طاقت سے آئینے پر دے مارا ۔
💜💜💜💜💜💜
تم۔۔۔۔۔
وہ روم میں آئی تو سمر کو دیکھ کر حیرانی سے بولی
کیا بات ہے آج تم جلدی آگئے۔۔۔۔۔۔
سمر کو دیکھ کر اُسے خوشی ہو رہی تھی
جلدی۔۔۔۔۔مجھے تو لگا میں نے بہت دیر کردی۔۔۔۔۔
وہ سنجیدگی سے بولا
نہیں روز تم رات کو دیر سے آتے ہو نا اسلئے۔۔۔۔۔۔
لیکن اچھا ہی ہوا جو آج جلدی آگئے میں تمہیں بہت مس کر رہی تھی
اُس کے بات کرنے کے انداز پر جنت نے جلدی سے جواب دیا
ریئلی اتنا مس کرتی ہو تم مجھے۔۔۔۔۔۔
وہ اُس کے قریب آیا
اس سے بھی کہیں زیادہ
اُس نے پوری سچائی سے جواب دیا اور سمر اُسے غور سے دیکھتا رہا جیسے اُسے بہت گہرائی سے جانچ رہا ہو
ایسے کیا دیکھ رہے ہو۔۔۔۔۔۔۔
جنت نے پوچھ ہی لیا
مجھے یقین نہیں ہوتا کے اتنی انوسینٹ بننے کی ایکٹنگ کیسے کر لیتی ہو تم۔۔۔۔۔۔ اپنے ڈرامے سے سامنے والے کو کنفیوز کر دیتی ہو ۔۔۔۔۔۔کے نہیں یہ لڑکی بری ہو ہی نہیں سکتی
ایسے کیوں بات کر رہے ہو مجھ سے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔کیا کیا میں نے
جنت کے ماتھے پر شکنیں پڑی اور اُس نے جھجھکتے ہوئے پوچھا
اوہ پلیز جنت یہ ڈراما بند کرو۔۔۔۔۔۔۔میں جانتا ہوں تم جیسی دکھتی ہو ویسی ہو نہیں ۔۔۔۔۔لیکن مجھے یقین نہیں ہوتا کے تم ایسی ہو۔۔۔۔۔اتنا گر گئی تم ہمارے رشتے کے بارے میں بھی نہیں سوچا۔۔۔۔۔۔میری فيلنگز کے بارے میں بھی نہیں سوچا۔۔۔۔۔۔۔۔کچھ نہیں سوچا تم نے مجھے دھوکہ دینے سے پہلے
وہ اب غصے سے اُس کی جانب بڑھا تھا
سمر میں نے کیا کیا ہے۔۔۔
جنت بے اختیار رو دی تھی
اتنی گندی حرکت کی ہے تم نے جس سوچ کر مجھے تم سے گھن آتی ہے۔۔۔۔مجھے خود پے غصّہ آتا ہے کے میں۔۔۔۔۔۔
نہیں سمر۔۔۔۔۔۔۔
جنت نے اُس کی بات کاٹ دی اور سمر نے اُسکی
پلیز۔۔۔۔۔اب اور ڈرامے مت کرنا ۔۔۔۔۔۔بس کر دو یہ سمرسمر بول کر میرے ساتھ دو طرفہ کھیل کھیلنا بند کرو ۔۔۔۔۔۔۔ نفرت ہے مجھے تم سے
I hate you
سمر نے رخ دوسری جانب کرلیا تھا جنت نے آگے بڑھ کر اُس کے بازؤں تھامتے ہوئے سر شولڈر پر رکھا تھا
No you love me I know you love me
جنت کو یقین نہیں ہو رہا تھا اُس کی تلخ باتوں کا اُس کے لہجے کا اُس کے غصے کا۔ سمر نے اپنا ہاتھ جھٹکتے ہوئے اُسے پیچھے کیا تھا اور اُس سے دور ہو گیا تھا
Just shut up ok and stay away
وہ اُس کی جانب دیکھ کر غصے سے بولا
میں نے ایسا کیا کر دیا سمر جو اچانک تمہیں مجھ سے گھن آنے لگ گئی تمہاری محبت نفرت میں بدل گئی کونسی ایسی غلطی کر دی میں نے جو مجھ سے اتنے گندے طریقے سے بات کررہے ہو۔
وہ رونے کے درمیان شکایت کر رہی تھی سمر کو برا لگ رہا تھا اُس کا رونا لیکن اس وقت اُس کے دل میں جو شک تھا وہ پیار پر حاوی ہو رہا تھا
ایک ہی بار بتاؤنگا دھیان سے سن لو۔۔۔۔۔۔۔
میں تمہاری غلطی بتا کے اپنی زبان گندی نہیں کر سکتا لیکن اتنا سمجھ کو اب تم میرے پیار تو کیا نفرت کے بھی قابل نہیں ہو۔۔۔۔تم اُن میں سے ہو جو کبھی کسی کےساتھ لائل نہیں ہوتی جو کسی رشتے کی رسپیکٹ نہیں کرتی کبھی کسی کی باہوں میں ہوتی ہے اور کبھی کسی اور کی
جنت نے اُس کی بات پر منہ پر ہاتھ رکھ لیا اور حیرت سے اُسے دیکھنے لگی اُس کے وہم و گماں میں بھی نہیں تھا کے سمر ایسی بات کر سکتا ہے
بہت فائدہ اٹھا لیا تم نے میرے اگنور کرنے کا میں ہر بار خود کو روکتا تھا سمجھاتا رہا کے تم غلط نہیں ہو سکتی لیکن۔۔۔۔
لیکن اس کا مطلب یہ نہیں کے سب کچھ جان کر بھی میں چپ رہ جاؤں۔۔۔۔تم سے بہتر تو ہنی ہے ۔۔۔۔۔کم سے کم وہ جو کرتی ہی سامنے کرتی ہی دکھا کر کرتی ہے لیکن تم۔۔۔۔۔۔۔
وہ اُس کی حیرت اُس کا دکھ سب کچھ اگنور کر رہا تھا اُسے صرف وہ تصویر نظر آرہی تھی جس میں جنت کبیر ساتھ تھے سمر نے باہر نکلنے کے لیے دروازہ کھولا لیکن جنت نے اُسے روکا
سمر رک جاؤ۔۔۔۔۔۔۔اتنا ذلیل کر کے جا رہے ہو۔۔۔۔۔۔
تو یہ بھی بتا دو کے اگر میں اتنی بد کردار ہوں اتنی بے وفا ہوں تو اب تک کیوں تم مجھ جیسی لڑکی کو برداشت کرتے رہے ۔۔۔۔۔۔یہ پیار محبت کا ناٹک کیوں کیا میرے ساتھ۔۔۔۔
وہ افسوس اور دکھ سے بولی وہ سمر سے لڑ نہیں سکتی تھی پہلے کی طرح
غلطی ہو گئی مجھ سے بہت بڑی غلطی ہو گئی
سمر نے بنا اُسے دیکھے کہا اور باہر نکل گیا اور جنت اپنی ہی جگہ پر بیٹھتی چلی گئی کچھ ہی پل لگے تھے اُسے آسمان سے زمین پر آنے میں
💜💜💜💜💜
سمر کے اتنے بے عزت کرنے کے بعد وہ اس گھر میں کیسے رہ سکتی تھی اُس نے جلدی جلدی اپنے کپڑے اور ضروری چیزیں بیگ میں بھری اور گھر سے باہر نکلی گیٹ کے پاس آئی تب اُس کے ہاتھ میں موجود ہینڈ بیگ نیچے گر گیا اور اُس میں رکھا سامان بھی وہ جلدی سے جھک کر سامان اٹھانے لگی واچ مین نے اُسے دیکھا تو کسی خیال کے تحت سمر کو فون کیا سمر اُس وقت اپنے آفس میں تھا
سر میڈم اپنا بیگ لے کر کہیں جا رہی ہے اور وہ کافی پریشان بھی لگ رہی ہے
واچ مین نے اپنی زبان میں اُسے بتایا
گیٹ بند کرو ۔۔۔۔۔کہیں نہیں جائیگی وہ۔۔۔۔۔۔
سمر نے جواب دیا اور اٹھ کر باہر آگیا اور گاڑی سٹارٹ کرکے گھر کی طرف بڑھا دی
گیٹ کیوں بند کر رہے ہیں آپ دکھائی نہیں دیتا میں باہر جا رہی ہم
واچ مین کے گیٹ بند کرنے پر وہ زور سے بولی
سوری میڈم سر نے کہا ہے آپ باہر نہیں جا سکتی
اُس نے جھجھکتے ہوئے کہا
وہ اس گھر کا مالک ہوگا میرا نہیں نا میں اُسکی غلام ہوں جو اُسکی مرضی پر چلونگی کھولو گیٹ
جنت نے غصے سے کہا بنا یہ سوچے کے واچ مین نے اُسکی بات سمجھی بھی یہ نہیں
لیکن وہ سر جھکا کر پیچھے ہو گیا اور جنت سامان وہیں چھوڑ کر اندر چلی آئی
💜💜💜
وہ اس وقت جنت کو نہیں جانے دے سکتا تھا عائشہ سے وعدہ جو کیا تھا جب تک کبیر جنت کو بھول کر اپنی شادی کو مان نہیں دے دیتا جنت کو اُس سے دور ہی رکھنا تھا اُس کا فون دوبارہ بجا تھا اور عائشہ کا نام دیکھ کر اُس نے کچھ سوچتے ہوئے فون اٹھا لیا اور نارمل انداز میں بات کی
سیم۔۔۔۔ہم لوگ رات کی فلائٹ سے واپس انڈیا جا رہے ہیں
لیکن اچانک۔۔۔۔۔
سمر نے گاڑی کو بریک لگایا تھا
پتہ نہیں۔۔۔۔ کبیر نے کہا کے ہمیں آج ہی جانا ہوگا
عائشہ خود وجہ نہیں جانتی تھی نہ کبیر کی خاموشی کی نہ اُس کے واپس جانے کے فیصلے کی سمر کو کیا بتاتی
پر مجھے پتہ ہے۔۔۔۔۔
سمر نے دل میں سوچا لیکن وہ عائشہ کو بتا کر اُسے بھی دکھ نہیں دینا چاہتا تھا
ٹھیک ہے میں ایئرپورٹ آتا ہوں۔۔
اُس نے کہہ کر فون بند کر دیا
مجھے لگا تھا کے تم مجھ سے غصّہ ہو کر جا رہی ہو میری باتوں سے ہرٹ ہو کر جا رہی ہو لیکن تم۔۔۔۔۔تم اُس کبیر کے لیے جا رہی ہو جنت ۔۔۔۔وہ جا رہا ہے اس لیے تم جا رہی ہو۔۔۔۔۔۔ہاؤ۔۔کیسے کر سکتی ہو تم ایسا۔۔۔۔۔۔۔۔۔اتنی ہارٹ لیس کیوں ہو تم۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔میری کوئی اسپیس بھی ہے یا نہیں تمہاری لائف میں
عائشہ کی بات نے اُسے ایک اور غلط فہمی کی جانب موڑ دیا تھا اُسے لگ رہا تھا کے دونوں نے مل کر جانے کا فیصلہ کیا ہے
💜💜💜💜💜💜💜
کیوں کر رہے ہو تم یہ سب۔۔۔۔۔۔۔۔۔کیوں روکا مجھے
سمر کے آتے ہی وہ غصے سے اُسکی جانب بڑھی تھی
اگر میں تمہاری لیے اتنی ہی بری ۔۔۔۔۔اتنی ہی گھٹیا ہوں تو کیوں نہیں جانے دیتے مجھے یہاں سے۔۔۔۔۔
تم جاؤ گی ضرور لیکن تب جب میں چاہوں گا۔۔۔اس وقت تو بلکل نہیں کیوں کے میں اچھی طرح سے جانتا ہوں تم کیوں جانا چاہتی ہو۔۔۔۔۔۔۔۔
سمر نے اُس سے نظریں ملائیں بنا کہا
مجھے نہیں پتہ کہ تم کیا جانتے ہو اور کیا سمجھتے ہو بس میں نہیں رہ سکتی یہاں میں جا رہی ہو
جنت نے اُس کی نے رخی پر افسوس بھاری نظروں سے دیکھا
میں نے کہا نا تم نہیں جا سکتی ۔ ۔۔۔۔
وہ ایک قدم ہی آگے بڑھی کے سمر نے اُس کے بازو کو پکڑ کر اُسے روکا
تم کون ہوتے ہو مجھے روکنے والے۔۔۔۔۔۔۔میں جاؤنگی
وہ اُس کا ہاتھ ہٹاتے ہوئے بولی
تم جانتی ہو میں کون ہوں۔۔۔بس بھول گئی ہو۔۔۔۔۔۔
اسی لیے ایک بار بھی نہیں سوچا مجھے دھوکا دینے سے پہلے۔۔۔۔۔مجھے کیا تم تو جانے کس کس کو دھوکا دے رہی ہو ۔۔۔۔۔۔۔
میں نے کسی کو کوئی دھوکا نہیں دیا ہے۔۔۔۔۔تم مجھ پر الزام لگا رہے ہو ۔۔۔۔۔۔تم جھوٹ بول رہے ہو
جنت نے زور سے جھٹکا دے کر اُس کا ہاتھ ہٹایا تھا
تم کہیں نہیں جاؤگی۔۔۔۔۔۔۔۔
اُس کے باہر کی جانب بڑھتے ہی سمر اُس کے سامنے آکر اُس کا راستہ روک گیا تھا
میں جاؤنگی۔۔۔۔۔۔۔۔
سمر کی ضد سے اُسے بھی ضد ہونے لگی تھی اُس نے سمر کے سائڈ سے نکلنا چاہا لیکن سمر نے ایک بار پھر اسکا ہاتھ مضبوطی سے پکڑ لیا تھا اور جنت نے پورا زور لگاتے ہوئے اُسے چھڑانے کی کوشش کی تھی اور سمر نے اُسے روکے رکھا تھا حالانکہ بار بار اُس کا ہاتھ چھوٹنے لگتا اور سمر پھر پکڑ لیتا وہ دیوانہ وار خود کو آزاد کروانے کی کوشش کررہی تھی اور اس کوشش میں سمر کے ہاتھوں پر اُس کے ناخنوں کے کئی گھاؤ لگ چکے تھے
جنت۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سمر نے غصے میں آکر ایک دم اُس پر ہاتھ اٹھا دیا تھا اور جنت نے اُسے حیرت اور خفگی بھری نظروں سے دیکھا تھا سمر کا ہاتھ خود پیچھے ہو گیا تھا اُس نے غیر ارادتاً ہاتھ اٹھایا تھا اس لیے بہت زور سے اٹھا تھا
میں تمہیں کبھی معاف نہیں کرونگی۔۔۔۔۔۔۔
جنت نے اُسے دیکھ کر غصے سےکہا اور اوپر چلی گئی
💜💜💜💜💜💜
آئے ایم سوری ۔۔۔۔۔۔۔نا میں تمہارے آنے سے خوش ہو پایا نا تمہیں جانے سے روک رہا ہوں ۔۔۔۔۔پلیز مجھ سے ناراض مت ہونا
عائشہ اور وہ ایئرپورٹ کے وزٹنگ ایریا میں بیٹھے تھے کبیر جب بیگ لے کر وہاں سے گیا تب سمر نے دھیرے سے کہا
سیم پلیز۔۔۔۔۔۔ڈونٹ سے سوری۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔میں پاگل نہیں ہوں جو سب جانتے ہوئے تم سے ناراض ہو جاؤنگی
اور تم دیکھنا ایک دن سب ٹھیک ہو جائیگا
عائشہ نے اُسکی بات پر اُسے دیکھا
یہ سب جنت کی وجہ سے ہو رہا ہے ۔۔۔
I hate her۔۔۔
اُسے اب بھی جنت پر غصّہ آرہا تھا
نہیں سیم اس میں جنت کا کیا قصور وہ تو جانتی تک نہیں کے کبیر اُس سے پیار کرتا ہے
اُسکی بات پر عائشہ حیران ہوئی تھی اور اب حیران ہونے کی باری سمر کی تھی
وہ تو خود انجان ہے اس بات سے ۔۔۔تبھی تو کبیر کو اپنا سب سے اچھا دوست سمجھتی ہے
تمہیں کیسے پتہ۔۔۔۔۔۔
سمر نے جلدی سے پوچھا عائشہ کی اس بات نے اُس کے اندر تک ہلچل مچا دی تھی
مجھے کیا یہ بات تو ہر کوئی جانتا ہے۔۔۔۔۔جنت شروع سے ہی تمہارے اور اپنے رشتے کو لے کر بہت سیریس تھی سیم۔۔۔۔۔۔۔۔۔کسی کو کچھ بھی لگے لیکن جنت کو یقین تھا کے تم دونوں ایک دن ضرور ملوگے ۔۔۔۔۔۔وہ اس یقین کے ساتھ تم سے محبت کرتی رہی ۔۔تمہیں دعاؤں میں مانگتی رہی اُس کی یہی دیوانگی دیکھ کر تو کبیر نے اُس سے محبت کی آوروں کی طرح کبیر کو بھی یہی لگتا تھا کے جنت اور تمہارا ملنا نا ممکن ہے کیوں کے اس سالوں کی دوری کے ختم ہونے کے کوئی آثار نہیں تھے اور کبیر نے سوچا جب جنت ہار مان لیگی تب وہ آئیگا اُس دکھ میں اُس کا سہارا بن کر لیکن۔۔۔۔۔جنت کی محبت اور انتظار میں اتنی سچائی تھی کے اُسے اللہ نے ہارنے نہیں دیا اور تم دونوں کو ایک کر دیا
عائشہ نے مسکرا کر جواب دیا اُس کے چہرے پر یہ بتاتے ہوئے بہت خوشی اور سکون تھا لیکن سمر کو بہت بے چینی محسوس ہو رہی تھی
غلطی کسی کی نہیں ہے نا کبیر کی ۔۔۔۔نا جنت کی نہ میری نا تمہاری لیکن متاثر ہم سب کی زندگی ہو رہی ہے
عائشہ نے اُس کی جانب دیکھا
لیکن تم اپنے اور جنت کے درمیان کبھی کوئی غلط فہمی مت آنے دینا اُس نے تم سے وفا کی ہے تو تم اُس کی محبت کی قدر کرکے اپنا فرض نبھانا۔۔۔۔۔۔۔۔وہ اپنی محبت کا بہت لمبا امتحان دے چکی ہے اب اُسے یا اُس کی محبت کو کبھی نظر انداز مت کرنا زندگی بہت چھوٹی ہوتی ہے اس لیے ایک پل بھی مت گنوانا ایک دوسرے کے بنا رہ کر
مجھے بھی یقین ہے کہ میری زندگی میں بھی اس امتحان کے بعد خدا نے کچھ بہت اچھا لکھا ہوگا
سمر نے نہ اُس کی کسی بات کا جواب دیا نا اُس کے پاس کوئی جواب تھا وہ خود کو کسی گہرے اندھیرے والی کھائی میں محسوس کر رہا تھا اُس نے کبھی جاننے کی کوشش ہی نہیں کی کے جنت اُس سے کتنا پیار کرتی ہے وہ تو بس یہ سوچتا رہا کہ کبیر کا اُس کی زندگی میں کیا حصہ ہے
ارے ہاں یہ تمہاری شرٹ۔۔۔۔۔۔۔۔کبیر کی شرٹ پر کافی گر گئی تھی تو جنت نے تمہاری یہ شرٹ دی تھی۔۔۔۔۔۔
عائشہ نے یاد آنے پر کہا تو وہ چونک کر اُس کی جانب مڑا اُس نے جنت کو کتنا برا بھلا کہا تھا صرف کچھ غلط فہمیوں کی وجہ سے بنا اُسے صفائی کا موقع دیے اُس پر الزام پے الزام لگاتا رہا

–**–**–
جاری ہے
——
آپکو یہ ناول کیسا لگا؟
کمنٹس میں اپنی رائے سے ضرور آگاہ کریں۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Subscribe For Latest Novels

Signup for Novels and get notified when we publish new Novel for free!




%d bloggers like this: