Taza Murda Chahe Novel by Umm e Rubas Read Online – Episode 15

0

تازہ مردہ چاہیے از ام رباس – قسط نمبر 15

–**–**–

۔۔احمد صاحب نے اپنے دونوں ہاتھوں کو دیکھا جہاں دونوں ہاتھوں پر بڑے بڑے آبلے نکلے ہوئے تھے جن کے اندر خون بھرا ہوا تھا ۔۔۔۔۔۔
احمد صاحب نے مرشد کی جانب پریشانی سے دیکھا۔۔۔۔
احمد صاحب کو اپنی طرف دیکھتے ہوئے دیکھ کر
مرشد نے غصے سے کہا۔۔۔۔۔۔
کہا تھا نا۔۔۔۔۔۔۔!
اُن کے جھانسے میں مت آنا وہ َمکر کریں گے مگر تو نے میری بات نہ مانی ۔۔۔۔۔۔۔
ان کی باتوں میں آگیٔا ۔۔۔۔۔
مرشد صاحب میں نے تو بس پانی پیا تھا۔۔۔۔۔!
پانی نہیں تھا وہ نجاست تھی ُانکی تجھے پلا گۓ وہ۔ تیرا سارا چّلہ ساری محنت خراب کر دی ۔۔۔۔۔
یہ جُوتیرے ہاتھوں پر نکلے ہیں دیکھ کیسے پورے جسم پر پھیل رہے ہیں۔ ۔۔۔۔۔
احمد صاحب نے اپنے باقی جسم کو دیکھا تو أبلے ُانکے پاؤوں اور پورے جسم پر پھیل رہے تھے۔۔۔۔۔۔
نور محمد۔۔۔۔۔۔۔۔
مرشد نے نور محمد کو آواز دے کر پکارا ۔۔۔۔۔۔۔
جی مرشد صاحب۔۔۔۔۔
اِسکو مزار پر لے جا وہاں صحن میں نہلا ، پڑھائی کر کے پاک کر پھرلے کر آ۔۔۔۔۔
پھر مرشد نے احمد صاحب کو مخاطب کر کے نرمی سے کہا۔۔۔۔۔۔
جاؤ احمد ۔نور محمد کے ساتھ جاؤ ۔۔۔
احمد صاحب نے تائیدی انداز میں سر جھکا لیا۔۔۔۔۔
اور کچھ لایا ہے اُس آدمی کے علاؤہ ۔۔۔۔۔؟
مرشد نے َٔتدبر سے احمد صاحب سے پوچھا۔۔۔۔۔
احمد صاحب نے قمیض کی جیب سے وہ گندی سی لمبی زبان باہر نکالی ۔۔۔
مرشد نے اپنا داہنا ہاتھ آگے بڑھایا اور احمد صاحب نے وہ زبان مر شدکے ہاتھ پر رکھ دی ۔۔۔۔
مرشد نے اپنے ہاتھ کو مضبوطی سے بند کر کے آنکھیں بند کیں اور کچھ زیر لب پڑھنے لگے زبان میں سے دھواں اٹھنا شروع ہو گیا اور کچھ ہی دیر بعد جب مرشد نے ہاتھ کھولا تو ُانکے ہاتھ میں سوائے راکھ کے کچھ نہ تھا۔۔۔۔۔۔
مرشد نے دھیمی سی مسکراہٹ سے احمد صاحب سے کہا ۔۔۔۔۔۔
تو اُنکے جھانسے میں تو آگیٔا۔۔۔۔۔
مگر اِس مردودکی زبان لا کر بہت اچھا کیا۔۔۔۔۔
احمد جانتا ہے جسے تو لایا کے وہ کون ہے۔۔۔۔۔۔۔۔؟
مرشد نے احمد صاحب سے سوال کیا۔۔۔۔۔
احمد صاحب نے لاعلمی سے سر نفی میں ہلایا۔۔۔۔۔
صائم ہے وہ ۔۔۔۔۔۔۔۔
احمد صاحب نے صائم کی تصویر دیکھی تھی اور اب اگر وہ آدمی صائم تھا تو احمد صاحب کا دل کیا کہ کاش وہ پہلے ُاس کے لیے کچھ کر لیتے تو شاید اُسکی یہ حالت نہ ہوتی۔۔۔۔۔۔
زندہ ہے وہ ۔۔۔؟
زندہ رہے گا۔۔۔۔۔؟
احمد صاحب نے بےچینی سے پوچھا ۔۔۔۔۔۔
زندہ ہے میں پوری کوشش کرونگا کہ وہ ٹھیک ہوجاے ۔۔۔
سارا خون پی چکے ہیں اُسکا، آنکھیں بھی کھا لی ہیں ۔۔۔۔
جسم میں جگہ جگہ سوراخ ہیں دانتوں کے۔۔۔۔
ایک ہاتھ کی چاروں انگلیاں بھی نہیں ہیں۔۔۔۔۔
اللہ مالک ہے ۔۔۔۔۔
احمد تم جاؤ پہلے پاک ہوکر آؤ
پھر تمھارا علاج بھی کرنا ہوگا ۔۔۔۔۔
اس طرح گھر جاؤ گے تو حریم ہوشیار ہو جائے گی۔۔۔۔
حالت خراب ہے اسُکی
نور محمد جلدی لے جاؤ اِسکو پاک کرو۔۔۔۔۔
میں صائم کو دیکھتا ہوں ۔۔۔
یہ بول کر مرشد صاحب واپس اندر چلے گئے
احمد صاحب نور محمد کے ساتھ اوپر مزار کے صحن میں چلے گئے۔۔۔۔۔
صبح کے آٹھ بجے کا وقت تھا اسلیے مزار میں ابھی زائرین کا رش کم تھا
نور محمد نے احمد صاحب کو ایک طرف پتھر پر بٹھا دیا اور پانی کے ڈول میں ایک تعویذ۔ ڈال کر اسُکے حل ہونے کا انتظار کرنے لگا ۔۔۔۔۔۔
تعویذ کے حل ہونے نور محمد نے ڈول کا سارا پانی احمد صاحب کے جسم پر ڈال دیا۔۔۔۔۔۔
پانی جہاں جہاں پہنچ رہا تھا وہاں وہاں سے سارے آبلے پھٹ رہے تھے اور خون بہہ رہا تھا ۔۔۔۔۔
پھر نور محمد نے احمد صاحب کو ایک پیالے میں پانی دیا اور کہا کہ۔۔۔۔۔۔
اس کو پینے کے بعد جو قے آئے وہ سامنے موجود گڑھے میں کر دینا جاکر۔۔۔۔۔۔۔
احمد صاحب نے پیالے کا پانی پیا اور پانی پیتے ہی ایک کالی بدبو دار قے اس گڑھےمیں جاکر کردی ۔۔۔۔۔
اب جاؤ ۔۔۔۔۔۔باؤ احمد غسل کرو ۔۔۔۔
تمھارا کام ختم ہمارا کام شروع۔۔۔۔۔۔۔
پاک ہو کر آجاؤ جلدی مرشد کے پاس جانا ہے
۔۔۔۔۔۔
احمد صاحب کے وہاں سے جاتے ہی نور محمد نے اس قے کو مٹی سے ڈھانپ کر مٹی کا تیل ڈال کر آگ لگا دی ۔۔۔۔۔۔
اس کے بعد نور محمد اب منتظر انداز میں مزار کے صحن میں ٹہلنے لگا۔۔۔۔۔۔۔
⁩⁦⁩⁦⁩⁦⁩⁦⁩⁦⁩⁦⁩⁦⁩⁦⁩⁦
شگفتہ بیگم اور عفت جہاں نے جیسے تیسے حریم کو نیند کی حالت میں بستر پر باندھ کر سکون کی سانس لی تھی ۔۔۔۔۔۔۔
افففف اب۔ جب تک احمد صاحب نہیں آتے ِاسکو کھولیے گا نہیں عفت بہن ۔۔۔۔
ورنہ پتہ نہیں کیا کیا کھاے گی اور ہمارا کیا حال کرے گی شگفتہ بیگم نے فکرمندی سے کہا ۔۔۔۔۔
عفت جہاں نے بھی اُنکی تائید میں سر ہلایا۔۔۔۔
تھوڑی دیر بعد حریم نےنیند سے
جاگ کر چیخ و پکار شروع کر دی ۔۔۔۔
وہ سر بستر پر پٹختی جاتی اور بھاری آواز میں چیخ کر کہتی جاتی ۔۔۔۔۔۔۔
کُھول مجھے کنجری۔۔۔۔۔۔۔
میرا بالن بھُوکا ہے ۔۔۔۔۔۔
کھُول ۔۔۔۔۔اپنے ہاتھ ِجھٹکتے جاتی اور چیخ چیخ کر بولے جارہی تھی۔ ۔
عفت جہاں اور شگفتہ بیگم نے کمرے میں جھانک کر دیکھنے کی جیسے ہی کوشش کی ۔۔۔۔۔
حریم نے پوری گردن گھما کر دونوں کو گھور کر دیکھا اور پھر اپنی کالی آنکھیں سُکیڑ کر بولی ۔۔۔۔۔
کالی کی سُوگندھ ایک بار میں چھوٹ جاؤں
تم دونوں کنجریوں کے کلیجے نوچ کر کھاونگا۔۔۔۔۔۔
عفت جہاں اور شگفتہ بیگم نے خوف سے زرد ہوتے ہوئے جلدی سے کمرے کا دروازہ بند کرکے لاک لگا دیا اور دونوں ایک ساتھ صوفے پر بیٹھ گئیں اور آیت الکرسی زور زور سے پڑھنا شروع کردی۔۔۔۔۔۔۔۔۔
⁩⁦⁩⁦⁩⁦⁩⁦⁩⁦⁩⁦⁩⁦⁩⁦⁩⁦⁦
مرشد صاحب نے صائم کو پہلے سیدھا لٹایا اور اُسکی آنکھوں کے خالی گڑہوں کو روئی سے بھر دیا پھر ُاسکو انھوں نے تھوڑا پڑھا ہوا پانی پلایا۔۔۔۔
پھر مرشد تسبیح ہاتھ میں لے کر صائم کے سرہانے بیٹھ گے اور پڑھائی شروع کردی ۔۔

–**–**–
جاری ہے
——
آپکو یہ ناول کیسا لگا؟
کمنٹس میں اپنی رائے سے ضرور آگاہ کریں۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Subscribe For Latest Novels

Signup for Novels and get notified when we publish new Novel for free!




%d bloggers like this: