Taza Murda Chahe Novel by Umm e Rubas Read Online – Episode 16

0

تازہ مردہ چاہیے از ام رباس – قسط نمبر 16

–**–**–

مرشد نے صائم کے سرہانے بیٹھ کر پڑھائی شروع کر دی۔ پڑھائ جاری ہی تھی کہ ہجرے میں
نور محمد احمد صاحب کو لے کر اندر داخل ہوا۔۔۔۔۔۔
نور محمد اور احمد صاحب وہیں زمین پر صائم سے ذرا فاصلے پر بیٹھ گے ۔۔۔۔
مرشد صاحب نے۔ اپنی پڑھائی ختم کر کے صائم پر دَم کیا اور پھر ُاسکے گرد سات چکر کاٹے۔ پھر اُسکے کھلے منہ میں پانی کے کچھ قطرے ٹپکاۓ۔۔۔۔
پانی منہ میں جاتے ہی صائم کے اندر ذَرا سے جنبش ہوئی۔۔۔۔۔۔۔
ُمرشد نے اسکے ماتھے پر شفقت سے ہاتھ رکھا اور بولے ۔۔۔۔۔
اب کیسے ہو بیٹا ۔۔۔۔۔؟
اب تم آگے ہو اللہ کے فضل سے بلکل پہلے جیسے ہو جاؤ گے۔۔۔۔۔
صائم نے کچھ بولنے کی کوشش کی مگر زبان نے ساتھ نہیں دیا اور پھر اس نے بہت دقت سے سر کو ذرا سا ہلایا ۔۔۔۔۔
کوئ بات نہیں کچھ دن میں تم ٹھیک ہو جاؤ گے تمھاری بیوی اور ماںنتظر ہیں تمھاری۔۔۔۔۔۔
صائم خاموشی سے مرشد صاحب کی بات سن رہا تھا اور بات سنتے سنتے ہی وہ پھر سے بیہوش ہو گیا تھا۔۔۔۔۔۔
مرشد نے فکرمندی سے نور محمد کو مخاطب کیا نور محمد۔۔۔۔۔۔
جی مرشد
اس کو بلال کے اسپتال لے جاؤ ۔۔۔۔
بلال سے کہنا ۔۔۔۔۔ پہلے زخم ٹھیک کرے
پھر آنکھوں کا بھی کچھ کرنا ہے ۔۔۔۔۔۔۔
جی مرشد میں لے جاتا ہوں بیٹا جی کے پاس۔۔۔۔۔۔
نور محمد کچھ دیر کے لیے وہاں سے باہر چلا گیا ۔۔۔۔
کچھ دیر بعد اس نے مرشد صاحب سے کہا۔۔۔
مرشد صاحب انھوں نے ایمبولینس بھیج دی ہے کچھ ہی دیر میں میں ُاسمیں اس کو لے کر چلا جاتا ہوں ۔۔۔
ٹھیک ہے نور محمد اس کے ساتھ ساۓکی طرح رہنا ۔۔۔۔۔
میں نے توڑ کر دیا ہے۔۔۔۔۔، یہ بلکل محفوظ ہے۔۔۔
مگر تم پھر بھی ہوشیار رہنا
جی سرکار۔۔۔۔۔۔
احمد اب تم یہاں میرے پاس آؤ۔۔۔۔
مرشد نے احمد صاحب کو اپنے پاس بلایا
جی ۔۔۔۔۔۔۔۔
احمد صاحب مرشد صاحب کے پاس جا کر کھڑے ہو گئے۔۔۔۔
دونوں ہاتھوں کو میرے ہاتھوں پر رکھو ۔۔۔۔
احمد صاحب نے اپنے دونوں زخمی ہاتھوں کو اُنکے ہاتھوں پر رکھ دیا
مرشد نے کچھ زیرِلب پڑھا اور پھر انکے اوپر دم کر دیا ۔۔۔۔۔۔
پھر مرشد نے اپنے گلے سے ایک کالی ڈوری اتار کر احمد صاحب کے گلے میں ڈال دی۔ ۔۔۔۔۔
اب تم بلکل ٹھیک ہو۔۔۔۔۔۔ تھوڑے زخم تو تم خود دیکھ لو ابھی ہی ٹھیک ہوگئے ہیں
احمد صاحب نے حیرانی سے اپنے ہاتھوں کو دیکھا۔۔۔۔۔
شیطانی تھی اُسکی ٹھیک کر دی ہے
بس ذرا سے زخم ہیں باقی کے زخم اور نشان کچھ دنوں میں ٹھیک ہو جائیں گے ۔۔۔۔۔ ان شاءاللہ
جی مرشد ان شاءاللہ
ہاں تو نور محمد تم اب اِسکو لے جانا میں احمد کے ساتھ جارہا ہوں ۔۔۔۔۔
جی مُرشد ۔۔۔
چلو احمد گھر چلو وہاں بہت ضرورت ہے ابھی ہماری ۔۔۔۔۔۔۔
قریبی سڑک سے ٹیکسی کر کے احمد صاحب اور مرشد صاحب صائم کے گھر پہنچے ۔۔۔۔۔
گھر کی گھنٹی بجاتے ہی۔ ۔۔۔۔
اندر سے تیز آواز میں چیخنے کی آوازیں سنائی دینے لگیں۔۔۔ ۔۔۔۔
عفت جہاں نے باہر آکر عجلت اور پریشانی میں دروازہ کھولا اور سامنے ایک باریش بزرگ اور احمد صاحب کو دیکھ کر اللہ کا شکر ادا کیا۔۔۔
شکر آپ آگئے وہ ہمیں کھا جاے گی ۔۔۔
احمد صاحب نے پریشانی سے مرشد کی جانب دیکھا ۔
مرشد صاحب نے مدھم مسکراہٹ سے کہا ۔۔۔۔۔
کسی کو نہیں کھاتی۔ ۔۔۔۔۔۔
آؤ احمد ۔۔۔۔۔۔
یہ بول کر وہ اندر گھر میں داخل ہو گئے
اندر پہنچ کر مرشد صاحب نے جیسے ہی اس کمرے میں پہلا رکھا حریم نےمچلنا شروع کر دیا
مرشد صاحب حریم کو جس بستر پر باندھا تھا اُسکے بہت قریب جاکر حریم کی کالی آنکھوں میں دیکھ کر بارعب آواز میں بولے ۔۔۔۔
بول کیا بولتا ہے۔۔۔۔۔۔!
لے میں تیرے سامنے کھڑا ہوں
کر وار ۔۔۔ ۔
ُ اٹھ چل شاباش۔۔۔۔۔۔
ِاے بڈھے تو ہی ہے نا وہ ۔۔۔۔۔۔۔۔
ِاسکو بچائے گا مجھ سے ۔۔۔۔۔
یہ بولتے ساتھ ہی حریم نے اپنے دونوں ہاتھ پوری طاقت لگا کر ُکھولے اور اُٹھ کر بستر پر سیدھی کھڑی ہوگئی۔۔۔۔۔۔
مرشد صاحب نے اس کو اس طرح کھڑے ہوتے دیکھ کر بلند آواز میں غصے سے کہا۔۔۔۔۔۔۔
میں نہیں آتا تیرے تماشوں میں ۔۔۔۔۔۔
ارے بد ذات تو ہے ہی کیا ۔۔۔۔۔ ؟
ایک بگڑی بدروح ۔۔۔۔۔۔
حریم نے ُانکی بات ُسن کر دونوں ہاتھوں کو اوپر بلند کیا ۔۔۔۔۔۔اور تیز آواز میں اپنے منتر پڑھنے لگی ۔۔۔۔۔
مرشد نے کچھ زیر لب پڑھا اور حریم کیطرف دیکھ کر پھونک دیا ۔۔۔۔۔
حریم نے غصے سے غراتے ہوئے اپنے چیلے چپاٹوں
کو آواز دی ۔۔۔۔۔۔اور
بھاری سی آواز میں چّلا کر کہا ۔۔۔۔۔۔۔
ہیم دھریم سواہا سگنانم ۔۔۔۔۔۔آ۔۔۔۔۔۔۔آ۔۔۔۔
ہش۔۔۔۔۔۔ہش۔۔۔۔ ۔
یہ آواز کمرے میں گونجتے ہی سارے کمرے میں وہ عجیب سے سفید سے بدصورت چوپائے نما انسان
کتے جیسی لمبی زبانیں نکالے کتے کی طرح آوازیں نکالتے گھوم رہے تھے ۔۔۔۔۔
مرشد صاحب نے تنظزیہ نظروں سے دیکھا اور بولے بس ۔۔۔کر لیا کرتب ۔۔۔۔۔۔؟
حریم نے غصے سے گھورا اور دونو ں ہاتھ اپنے پیٹ پر َرکھ لیے ۔۔۔۔
مرشد صاحب نے ُچوکنی نظر سے یہ سب دیکھا اور کرخت آواز میں بولے ۔۔۔ ۔۔
ہاتھ ہٹا ۔۔۔۔۔۔
بالن کے آنے کا سمے ہے بڈھے ۔۔۔۔۔۔
حریم نے شیطانی مسکراہٹ سے ُانکو دیکھا اور دونوں ہاتھوں سے پیٹ پر جہاں سلائی لگی ہوئی تھی اپنے ہاتھ رکھے اور دونوں ہاتھوں سے پیٹ کو پھاڑ دیا ۔۔۔۔۔۔۔
حریم کا جسم یہ تکلیف برداشت نہیں کر سکا اور وہ دھڑم سےزمین پر گر گئ اور اس کے اطراف تیزی سے اُسکے پیٹ سے نکلنے والا خون پھیل گیا۔۔۔۔۔۔۔۔
مرشد نے جلا ل سے سامنے دیکھا اور تیز آواز میں کہا ۔۔۔۔
مردود۔ تجھے اور تیری نسل کو تو میں جلا کر راکھ کرونگا ۔۔۔۔۔۔
بچی کا کیا حال کر دیا ۔۔۔۔۔۔۔
پنڈت اپنی تمام خباثت سمیت بولا۔۔۔۔۔
کالی کے بھگت ہیں۔۔۔۔۔۔
تو کچھ نہیں کر سکتا ۔۔۔۔۔۔۔
تازہ مردے کھاتے ہیں ہم۔ بلیاں دینے والے ہیں ۔۔۔۔۔
تجھ جیسے کتنے ہی ہم نےنوچ کھاۓ۔۔۔۔
تو کیا بگاڑے گا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہٹ۔۔۔ ۔۔۔
تو نے کیا ۔۔، جو تجھے کرنا تھا۔۔۔۔۔۔
تو اور تیری کالی ۔۔۔۔۔۔۔
اب دیکھ میں کیا کرتا ہوں ۔۔۔۔۔
میرے ساتھ میرا اللہ ہے۔
تو ۔۔۔۔۔،
تیری نسل ۔۔۔۔۔۔سب کو جہنم واصل کرونگا ۔۔۔۔۔۔
بالن کے سواگت کا سمے ہے ۔۔۔ ۔
پنڈت نے بلند قہقہہ لگایا اور پنڈت اور اسِکے چیلے وہاں سے غائب ہو گۓ ۔۔۔۔۔۔۔
مرشد صاحب نے احمد صاحب کو تیز آواز میں پکارا۔۔۔۔۔۔۔
احمد۔۔۔۔۔۔۔
احمد صاحب جیسے ہی کمرے میں داخل ہوے
حریم کو خون میں بھیگے دیکھ کر اُن کے اوسان خطا ہونے لگے ۔۔۔۔
ِاسکو جلدی اٹھاؤ احمد وقت کم ہے ۔۔۔۔۔۔
مر جائے گی بچی۔۔۔۔۔۔۔
وہ داؤ چل چُکا اسِکو فوراً اسپتال لے کر جانا ہوگا
ِاسکی ساس کو بلاؤ ۔۔۔
احمد صاحب تیزی سے کمرے سے باہر نکل گئے
کچھ لمحے بعد عفت جہاں احمد صاحب کے ساتھ کمرے میں داخل ہوئیں اور اُنکے پیچھے شگفتہ بیگم بھی کمرے میں آئیں۔ اندر حریم کو خون میں ڈوبا دیکھ کر وہ تکلیف سے رونے لگیں ۔۔۔۔۔۔۔
مرشد نے اُن کی طرف دیکھا اور بولے ۔۔۔۔۔
خبیث نے اسِکا پیٹ پھاڑ دیا ہے ۔۔اور بول کر گیا ہے “بَالن کے آنے کا وقت آگیا “۔۔۔۔۔۔۔
اسِکو اسپتال لے کر جانا ہے ہمت کریں وقت نہیں ہے چلو احمد اٹھاؤ ۔۔۔۔۔
چادر لاؤ کوئی ۔۔۔۔۔۔۔جلدی ۔۔۔۔۔
عفت جہاں نے جلدی سے بستر کی چادر کھینچ کر ُاتاری اور زمین پر تیزی سے بچھا دی ۔۔۔۔۔۔۔
مرشد صاحب اور احمد صاحب نے حریم کے
نیم جان وجود کو اٹھایا اور چادر پر ڈال دیا ۔۔۔۔۔
عفت جہاں نے حریم کے پھٹے پیٹ کو ہاتھ سے جوڑنا چاہا مگر اُسمیں سے اسقدر تیزی سے خون ُابل رہا تھا کہ جیسے کسی گاے کو زیبحہ کیا گیا ہو اور اس کے نرخڑے سے خون ُابل اُبل کر نکل رہا ہو۔۔۔۔۔۔۔۔
احمد صاحب نے جلدی سےشگفتہ بیگم کو ٹیکسی
روکنے کا کہا اور حریم کو مرشد صاحب کے ساتھ اٹھا کر دروازے کی جانب تیزی سے چلنے لگے جب تک وہ دروازے تک پہنچے شگفتہ بیگم ٹیکسی روک چکی تھیں ۔۔۔۔۔
دونوں نے مل کر حریم کو ٹیکسی کی پچھلی سیٹ پر چادر کے ساتھ لٹایا اور عفت جہاں سے کہا کہ وہ حریم کے پیٹ کےزخم کو دونوں ہاتھوں سے دبا کر بیٹھ جائیں۔۔۔۔۔۔
عفت جہاں نے ہمت کر کے حریم کے زخم کو ہاتھوں سے دبایا اور مرشد صاحب نے اگلی سیٹ پر بیٹھ کر احمد صاحب سے اسپتال کا نام لے کر کہا ۔۔۔۔
پیچھے آؤ احمد جلدی ۔۔۔۔۔۔
جی مرشد ۔۔۔۔۔
مرشد صاحب کے بولتے ہی ٹیکسی اسپتال روانہ ہو گئ۔۔۔۔۔۔۔۔۔

–**–**–
جاری ہے
——
آپکو یہ ناول کیسا لگا؟
کمنٹس میں اپنی رائے سے ضرور آگاہ کریں۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Subscribe For Latest Novels

Signup for Novels and get notified when we publish new Novel for free!




%d bloggers like this: