Taza Murda Chahe Novel by Umm e Rubas Read Online – Episode 5

0

تازہ مردہ چاہیے از ام رباس – قسط نمبر 5

–**–**–

احمد صاحب نے تیز قدموں سے گھر واپسی کا سفر شروع کیا۔۔۔۔۔۔
دل ہی دل میں اللہ تعالیٰ سے مغرب سے پہلے پہنچنے کی دعا کرتے ہوے وہ راستہ طے کرتے ہوئے گھر کے دروازے پر پہنچے
بس سورج غروب ہی ہوا چاہتا تھا۔۔۔
۔
احمد صاحب نے لاک کی چابی سے لاک کھولا اور سورج غروب ہونے سے پہلے وہ گھر کے اندر داخل ہوگئے دروازے کے سامنے صوفےپر شگفتہ بیگم حریم کا سر گود میں رکھے بیٹھی تھیں اور حریم اُن سے بے سروپا باتیں کر رہی تھی جو اسکے خیال میں بہت کام کی قیمتی معلومات تھی۔۔۔
مگر شگفتہ بیگم کے چہرے کو دیکھ کر صاف اندازہ لگایا جاسکتا تھا ۔۔۔۔۔
کہ وہ کس قدر پریشان ہیں احمد صاحب کو گھر میں داخل ہوتے دیکھ کر انہیں تھوڑی ڈھارس ملی۔۔۔
شکر ہے میرے اللہ کا احمد صاحب آپ آگئے۔۔۔۔
کیا ہواشگفتہ اس قدر پریشان کیوں نظر آرہی ہو۔۔۔۔۔۔۔۔؟
کیا بتاؤں میں آپ کو وہ آئے تھے ۔۔۔۔۔!
پھر سے ۔۔۔۔؟
کب۔۔۔۔۔۔ ؟
آپ کے جانے کے تقریباً دو یا ڈھائی گھنٹے بعد۔۔۔۔
کبھی بچے کی آواز میں روتے تھے کبھی کسی لڑکے کی آواز میں حریم حریم دروازہ کھولنے کا بول رہے تھے ۔۔۔۔۔۔
یہ تو دروازہ کھولنے بھی جارہی تھی بہت مشکل سے میں نے سنبھالا ہے ِاسے ۔۔۔۔۔۔
یہ بول رہی تھی کے صائم ہے دروازے پر۔۔۔۔۔
آپ بتائیں کچھ ملا کوئی گاڑی ملی۔۔۔؟
کوئ اتاپتہ کچھ ملا ۔۔۔۔۔؟
ہا ں قبرستان سے آدھا گھنٹہ پیدل چلنے پر ایک گاڑی نظر آئ تھی دروازے تو سارے بند تھے کھڑکی کا شیشہ توڑ کر گاڑی کا دروازہ کھولا بہت مشکل سے کچھ کاغزات اور یہ فون اور یہ بیگ ملا ہے تم کھولو اس بیگ کو شاید کوئ کام کی چیز ملے اور ہاں شگفتہ یہ لڑکی اسکا نام حریم ہے۔۔۔۔اور یہ امید سے بھی ہے۔۔۔۔۔۔
احمد صاحب کی بات سن کر شگفتہ بیگم نے اچھنبے سےاُنکی جانب دیکھا ۔۔۔۔۔۔
امید سے ۔۔۔۔۔۔۔؟
مگر اسکا تو پیٹ کاٹ کر دیا گیا ہے سارے پیٹ پر تازہ سلائی کے نشان ہیں اور زخم سے خون بھی ِرس رہا تھا صبح ۔۔۔۔۔۔!
شگفتہ بیگم میں آپ کو وہ بتا رہا ہوں جو ان میڈیکل ڈاکومنٹس میں لکھا ہے اور ہاں یہ فون بھی بلکل بند ہے اسکو چارج پر لگا دو شاید میرے فون کی چارجنگ پن لگ جاے۔ ۔۔۔۔۔۔
فون چارج ہو تو اسکے گھر والوں سے رابطہ کرتا ہوں
سنیں انھوں نے کہا تھا وہ پھر آئیں گے اندھیرا ہونے پر۔۔۔۔۔۔
احمد صاحب نے شگفتہ بیگم کی بات سن کر کہا۔ ۔۔۔۔،
انکی فطرت ہے یہ حرکتیں وہ ان شیطانی حرکتوں سے باز تھوڑی آتے ہیں تم فکر نہیں کرو میں نے کچھ سوچا ہے ۔۔۔۔۔
اچھا آپ کچھ کھا لیں صبح سے بھوکے ہیں۔۔ ۔۔۔
ابھی بھوک نہیں ہے شگفتہ جب بھوک ہوگی تو بتا دونگا۔
بس میں وضو کر کے نماز پڑھ کر ایک وظیفہ پڑھنے بیٹھونگا تم پھر اسکے بعد مجھے ایک کپ چاے بنا دینا۔ ۔۔۔۔۔۔جی بنا دونگی
شگفتہ بیگم کمرے سے جانے لگیں تو احمد صاحب نے انکو آواز دی شگفتہ۔۔۔۔۔۔۔!
جی وہ رُکیں تم دروازے کے آگے جاےنماز بچھا دو میں آرہا ہوں۔۔۔۔۔۔
وضو کر کے وہ نیچے آگے۔ تقریباً 8 بجے کا وقت ہو رہا تھا ۔
پہلے نماز پڑھی اور پھر شگفتہ کو آواز دی ۔۔۔ شگفتہ۔۔۔۔۔۔؟
تھوڑی سی روئی بھی لا دو ۔۔۔۔
جی ابھی لاتی ہوں۔۔۔۔
شگفتہ بیگم روئ لے کر آئیں تو انھوں نے کہا دیکھو یہ روئ اپنے اور حریم کے کانوں میں ٹھونس دو اور تم دونوں اپنی آنکھیں بند رکھنا
کیونکہ انُکے یہاں پہنچتے ہی جو تماشے ہونگے وہ تم لوگ سن بھی نہیں پاؤگے ۔۔۔۔۔۔۔
شگفتہ بیگم نے احمد صاحب کی بات سن کر خوفزدہ نظروں سے ُانکو دیکھا ۔۔۔۔۔
جلدی کرو شگفتہ وقت بہت کم ہے ۔۔۔۔!
وہ کسی بھی وقت پہنچ جائیں گے۔۔۔۔۔۔۔۔!
اور ایک بات سن لو اور سمجھ لو اچھی طرح جہاں بیٹھو وہیں بیٹھی رہنا چاہیے کچھ بھی ہو جاے۔۔۔۔۔۔
سمجھ رہی ہو نا ۔۔۔۔۔میری بات ۔۔۔۔۔۔؟
جی میں سمجھ گئی۔۔۔
۔شگفتہ بیگم نے اپنے اور حریم کے کانوں میں روئی اچھی طرح ٹھونس دی اور اسکا منہ اپنی طرف کر کےبیٹھ گئیں۔۔۔۔۔ ۔۔
احمد صاحب نے سارے گھر کی روشنیاں بجھا دیں اور بلند آواز سے حفاظت کا وظیفہ پڑھنے لگے ۔۔ ۔۔۔
وظیفہ شروع کرنے کے تقریباً پانچ منٹ بعد گھر کے پاس کتوں کے رینکنے کی آوازیں آنے لگیں ۔۔۔۔
آوازیں لمحہ بہ لمحہ بھیانک اور قریب تر ہوتی جا رہی تھیں۔۔۔۔۔
پھر ایکدم سے سارےگھر کھڑکیاں ایک گونج دار آواز سے کھلُ گئیں احمد صاحب نے شور سن کر اور تیز اور بلند آواز سے پڑھنا شروع کر دیا۔۔۔۔۔۔۔
اب وحشیوں نے کتے کے رونے کی آوازیں نکال کر گھرکے چاروں اطراف گھومنا شروع کر دیا ۔۔۔۔ وہ اپنے دونوں ہاتھوں اور پاؤوں سے کسی کتے کی طرح اچھل اچھل کر چلتے جاتے اور ُانکی گز بھر لمبی زبانیں رال ٹپکاتی زمین پر گھسٹتی جاتیں تھیں ۔۔۔۔۔۔۔!
کافی دیر تک یہ تماشہ چلتا رہا ۔۔۔۔۔۔
پھر ایکدم سے ایک دلخراش نسوانی چیخ سنائی دی۔۔۔۔۔، اور پھر ہر طرف ایک گہری پراسرار خاموشی چھاگئی۔۔۔۔۔۔!
کچھ دیر یہ سکوت طاری رہا پھر ایکدم سے ان وحشی
عجیب و خلقت مخلوق نے او۔۔۔۔ او ۔۔۔۔آ۔۔۔۔ آ ۔۔
۔کی آوازیں نکالنا شروع کر دیں۔۔۔۔۔۔۔،
جیسے رات کے اندھیرے پہر کٔی کتے کسی ڈائن کی آمد پر رو رہے ہوں۔۔۔۔۔۔۔۔
سارے میں ایکدم ہش کی شیطانی آواز گونجی ۔۔۔۔۔،اور کچھ لمحوں بعد قدموں کی آواز گھر کے کھلے دروازے کے قریب آتی محسوس ہوئی
شگفتہ بیگم نے حریم کا چہرہ اپنی گود میں رکھ لیا اور دونوں بازوؤں کو اسکے گرد ایک حصار کی طرح باندھ لیا جیسے ماں اپنے بچے کو ہر بلا آفت سے بچا رہی ہو۔۔۔ ۔
وہ خبیث پنڈت اپنی تمام شیطانیت کے ساتھ دہلیز کے پار کھڑا تھا۔۔۔۔
اُسنے کچھ دیر ایک منتر پڑھا۔۔۔۔۔۔
پھراپنی مکروہ آواز سے بولا ۔۔۔۔۔
پڑھ لے وظیفے ۔۔۔۔کاٹ لےچّلہ۔۔۔۔۔
اُسکے پاس” بالن “ہے
گھر کے دروازے کی طرف اپنی نوکیلی سفید ،
سیاہ ناخن والی انگلی سے اشارہ کر کے بولا۔۔۔۔۔۔
ُتو ہمیں نہیں روک سکتا ۔۔۔۔۔!
ہمیں تازہ مردہ چاہیے ہوتا ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔!
اسکے پاس ” تازہ ماس” ہے ۔۔۔۔
تو نہیں روک سکتا ہمیں ۔۔۔۔۔۔۔
نہیں روک پاے گا۔۔۔۔۔
ہا ہا ہا۔ ۔۔۔۔۔
تو روکے گا ہمیں بول۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دروازہ کھولتا ہے یا نہیں بول۔۔۔۔۔۔۔۔

–**–**–
جاری ہے
——
آپکو یہ ناول کیسا لگا؟
کمنٹس میں اپنی رائے سے ضرور آگاہ کریں۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Subscribe For Latest Novels

Signup for Novels and get notified when we publish new Novel for free!




%d bloggers like this: