Taza Murda Chahe Novel by Umm e Rubas Read Online – Episode 6

0

تازہ مردہ چاہیے از ام رباس – قسط نمبر 6

–**–**–

دروازہ کھولتا ہے یا نہیں بول۔۔۔۔۔۔۔۔
مسلسل یہ آواز آرہی تھی ۔
کافی دیر تک اس تکرار کے بعد ایک دم سارے ماحول میں ایک گہرا سکوت پھیل گیا۔۔۔۔۔۔۔
احمد صاحب نے اپنا وظیفہ ختم کرکے آنکھیں کھولیں اور سارے گھر میں حصار کر دیا ۔۔۔۔۔
کھڑکیوں کو بند کرتے ہوئے کچھ مشکل نہیں پیش آئی ۔۔۔۔۔
شکر ہے خدا کا ۔۔۔۔۔۔
شگفتہ بیگم نے آنکھیں کھول لیں ۔۔۔۔۔۔
احمد صاحب نے اپنی بیگم سے کہا ۔۔۔۔۔۔
لگتا ہے چلے گئے۔۔۔۔۔ ۔۔
شگفتہ بیگم نے احمد صاحب سے مخاطب ہوکر کہا ۔۔۔۔۔۔۔
ایکدم سے گھر کا دروازہ پوری قوت سے ہلنے لگا جیسے اسے کوئی کھولنے کی کوشش کر رہا ہو اور وہ دروازہ کھل نہیں رہا ہو۔۔۔۔۔۔
باہر سے ایک مکروہ آواز آئی۔
“ہم یہیں ہیں بڑھیا”۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تجھے اور اس بڈھےکو کیا لگا
کہ تو کوئی عمل کرکے اس لڑکی کو بچا لیگا۔۔۔۔۔۔!
بھول جا ۔۔۔۔۔۔ !
نہیں بچا سکتا تو ُاسکو
ہم بھگتوں کے بھگت ہیں ۔۔۔۔
یہ لڑکی جسے تو بچا رہا ہے ۔۔۔۔۔۔
یہ ہماری ہے ۔۔۔۔۔۔۔
اسکے پاس بالن ہے۔۔۔۔۔
تازہ ماس والا بالن۔۔۔۔۔۔۔۔،
تو گھر میں کرتب کرتا جا ۔۔۔۔۔۔
ہم یہاں آسن جماتے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔
وہ خود آے گی تو دیکھ ابھی ۔۔۔۔۔۔
یہ کہہ کر وہ خبیث پنڈت اپنی مکروہ ہنسی ہنسنے لگا۔۔۔۔ہا ہا ہا ۔۔۔ہا ہا ہا
ساتھ میں اسکے چیلے بھی عجیب آوازیں نکال کر ساتھ دینے لگے ۔۔
احمد صاحب نے اُسکی بات سن کر حریم کی جانب دیکھا جو پریشانی سے احمد صاحب اور شگفتہ بیگم کو دیکھ رہی تھی ۔
کون ہنس رہا ہے ابو جی۔۔۔۔؟
امی بھوک لگ رہی ہے ۔۔۔۔۔؟
شگفتہ بیگم نے اُسکی بات سن کر جواب دیا اچھا بیٹا رُکو زرا میں کچھ کھانے کو لا تی ہوں ۔۔۔۔۔۔
شگفتہ بیگم نے رات کے اس پہر کیا کھانا لائیں سمجھ نا آنے پر دودھ گرم کر کے ایک شیشے کے گلا س میں رکھا اور باہر لاونچ میں آکر حریم کو دےدیا، رات بہت ہوگئ ہے بیٹا ابھی یہ دودھ پی لو جی امی۔۔۔۔ ۔حریم نے کہہ کر گلاس تھام لیا
احمد صاحب نے شگفتہ بیگم کو آہستہ آواز سے بلایا
شگفتہ اُس نے کہا ہے کہ وہ حریم کو باہربلاے گا اگر حریم باہر جانے لگے ایک طرف سے تم پکڑ لینا ایک طرف سے میں پکڑ لونگا۔۔۔۔ٹھیک ہے جی ۔۔۔۔۔ہم دونوں آیت الکرسی بھی پڑھتے رہتے ہیں ٹھیک ہے ۔۔۔۔۔؟جی۔۔۔۔۔
بس کسی طرح صبح ہو جاے یہ خود صبح کا اُجالا نکلنے سے پہلے بھاگ جائیں گے۔۔۔
۔
باہر سے اب عجیب وغریب سی آوازیں آنا شروع ہو چکی تھیں اور لمحہ بہ لمحہ آواز بہت گونج دار اور تیز ہوتی جا رہی تھی حریم بھی تھوڑا خوفزدہ نظر آرہی تھی یہ آوازیں سن کر ۔۔۔۔۔۔
کچھ لمحوں بعد شگفتہ بیگم نے حریم کو دیکھا تو وہ کچھ بے چین نظر آرہی تھی ۔۔۔۔اور اسکے ہاتھ جو دودھ کا گلاس تھامے تھے انکی ساری انگلیوں کے ناخن سیاہی مائل ہو چکے تھے شگفتہ بیگم نے حیرانی سے احمد صاحب کو دیکھا ۔۔۔۔۔۔احمد یہ انہوں نے حریم کی طرف اشارہ کیا جو اب سیدھی کھڑی ہو چکی تھی اور کسی معمول کی طرح دروازے کی طرف بڑھنے لگی تھی۔۔۔۔۔
احد صاحب اور شگفتہ بیگم حریم کو مضبوطی سے پکڑ لیا ۔۔۔حریم نے بہت زیادہ غصے سے دونوں کو گھور کر دیکھا اور چیخ کر بھاری آواز میں بولی ۔۔۔۔۔۔۔چُھوڑ۔۔۔۔۔ چھُو ڑ مجھے ۔۔۔۔بلاوا آیا ہے ۔تازہ مردہ چاہیے ۔۔۔۔
تازہ مردہ چاہیے ہوتا ہے ۔۔۔۔۔، ہمیں تازہ مردہ چاہیے ہوتا ہے۔۔۔۔۔
حریم کی باتیں سن کر احمد صاحب اور شگفتہ بیگم نے بلند آواز سے ورد کرنا شروع کردیا ۔۔۔۔
کچھ دیر مزاحمت کر کے حریم ایک دم سے بیہوش ہوکر نیچے گر گئی اور باہر سے بھی ساری آوازیں آنا بند ہو گئیں۔۔۔۔۔
احمد صاحب اور شگفتہ بیگم نے اسکو اٹھا کر صوفے پر لٹایا۔ ۔۔۔۔۔۔۔
صبح صادق کا اجالا سارے میں پھیلنے لگا تھا۔۔۔۔شجر ہے میرے اللہ قیامت کی رات ختم ہوئی ۔۔۔۔
شگفتہ بیگم نے بھی سکون کی سانس خارج کی
سنو شگفتہ وہ فون چارج پر لگا دیا تھا ۔۔۔۔۔۔؟
جی ۔۔۔۔۔، لگا دیا تھا لے کر آؤ میں فون آن کر کے دیکھتا ہوں اسکے گھر والوں سے رابطہ کرتا ہوں حریم کو یہاں سے لے کر جانا ہوگا۔۔۔
شگفتہ بیگم نے کمرے سے فون لا کر احمد صاحب کو دے دیا ۔
احمد صاحب کے فون آن کرتے ہی فون تیز آواز سے بجنا شروع ہوگیا۔۔۔۔۔
مال ریسیو کرتے ہی ایک ادھیڑ عمر کی عورت کی پریشان آواز سنائی دی ۔۔۔۔
ہیلو حریم ۔۔۔۔۔
کیسی ہو بیٹا ۔۔۔۔۔؟
کب سے کال کر رہی ہوں۔۔۔۔۔۔
تم لوگ فون بھی نہیں اٹھا رہے
صائم کا فون بھی نہیں مل رہا ۔میں بہت پریشان ہوں بیٹا ۔تم کچھ بولو تو۔۔۔۔۔ ہیلو ۔۔۔۔ہیلو۔۔۔۔
احمد صاحب نے کھنکار کر سلام کیا ۔۔۔
السلام و علیکم محترمہ۔
میں احمد سلطان ہوں آپکی بیٹی اور داماد ہمارے گھر ہیں
وعلیکم السلام ۔۔۔۔
وہ میرا بیٹا اور بہو ہیں مگر انکو رو حیدر آباد پہنچنا تھا۔ وہ آپ کے پاس کیوں ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔؟
آپ کا گھر کہاں ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔؟
سب خیریت تو ہے حریم کی طبیعت تو ٹھیک ہے ۔۔۔۔۔۔۔؟
آپ میری بات کروائیں بھائی صاحب ان سے
اچھا بہن رُکیں ۔۔۔۔۔
لو بیٹا بات کرو ۔۔۔۔۔احمد صاحب نے فون حریم کی طرف بڑھا کر کہا ۔۔۔۔۔
حریم نے فون پکڑ کر کان سے لگایا ۔ ۔۔۔۔
ہیلو آنٹی میں ٹھیک ہوں،
صائم کہاں ہے ۔۔۔۔۔؟
عفت جہاں نے پریشانی سے حریم کا سوال سنا اور بولیں حریم، صائم تو تمھارے ساتھ تھا نا
تم بتاؤ صائم کہاں ہے تم لوگ ٹھیک ہو
آنٹی صائم کو تازہ مر۔۔۔۔۔۔۔ابھی اتنا ہی کہا تھا حریم نے کہ، احمد صاحب نے اسکے ہاتھ ڈےفسن چھین لیا ۔۔۔۔۔۔
ہیلو بہن آپ پریشان نہیں ہوں انکی گاڑی کا ایک چھوٹا سا ایکسیڈنٹ ہوگیا تھا اسلیے آپ کے بچے ہمارے گھر ہیں آپ پتہ لکھوا دیں۔ صائم ابھی گھر میں نہیں ہے۔ میں ان بچوں کو خود آپ کے پاس لے کر آجاتاہوں
عفت جہاں نے پریشانی سے اپنا مکمل پتہ لکھوایا اور فون بند کر دیا ۔۔۔۔ دونوں ہاتھوں سے سر تھام کر بیٹھی عفت جہاں کے دماغ میں ایکدم خیال آیا ۔
حریم اور صائم خود کیوں نہیں آرہے ۔۔۔۔؟
ان جو کیا گھر کا پتہ نہیں یاد ۔۔۔۔
سوچ سوچ کر انکا دل پتے کی طرح لرز رہا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔،
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔
احمد صاحب نے شگفتہ بیگم کو حریم کا سامان لانے کا کہا اور فورا ًً کراچی چلنے کا بولا ۔۔۔۔۔۔
جلدی کرو شگفتہ اِسکو یہاں سے لے کر چلنا ہے۔
ِ اسکو واش روم لے جاکر منہ ہاتھ دُھلا کرکچھ کھلا دو ُ
اور خود بھی کچھ کھا لو۔۔۔۔۔
آپ نہیں ناشتہ کریں گے۔ ۔۔۔۔۔؟
نہیں شگفتہ بس ایک پیالی چاے دے دینا ۔۔۔۔۔۔!
شگفتہ بیگم حریم کو تیار کرنے چلی گیں ۔۔۔۔
احمد صاحب نے اپنے زمانہ طالب علمی کے دور کے ایک دوست کو کال ملائی ۔۔۔۔۔
دوسری بیل پر فون اٹھا لیا گیا ۔۔۔۔۔
السّلام و علیکم۔۔۔۔۔
وعلیکم السلام۔ کیا حال ہے جناب۔۔۔۔!
کیسے یاد آگئی آج ہماری ۔۔۔۔۔۔؟
یار وجاہت ایک کام پڑ گیا ہے ۔
ہاں بولو کیا ہوا ۔
یار کراچی میں ایک پتے پر جانا ہے میں نے اتنا کراچی دیکھا ہوا نہیں ہے۔۔۔۔۔
کوئی بات نہیں یار تم یہ بتاؤ پہنچ کب رہے ہو بس دوپہر تک بس اڈے پہنچ جائیں گے ۔۔۔۔
اچھا اچھا ٹھیک ہے بھابھی اور سمیر بھی ساتھ ہیں ہاں سب ساتھ ہیں ۔۔۔۔۔
بس تم فکر مت کرومیں تمھیں بس اڈے پر ملونگا۔۔۔۔
اللہ حافظ ،
اللہ حافظ،
چلو شگفتہ بیگم آجاؤ
حریم کو ناشتہ کروا دیا ۔۔۔۔۔؟
جی کروادیا۔
آپ بھی چاے پی لیں ۔
چاے کا کپ انھوں نے احمد صاحب کے ہاتھ میں دیا۔۔۔۔۔۔
چاے پی کر احمد صاحب ، شگفتہ بیگم حریم کو لے کر گھر میں تالا ڈال کر پیدل چلتے ہوئے بس اڈے جانے لگے۔۔۔۔۔۔
تقریباً ایک کلومیٹر پیدل چلنے کی مسافت پر تھا بس اڈا ۔۔۔۔۔۔۔
راستے میں بعض اوقات ایسا محسوس ہوتا کہ جیسے بہت سے لوگ انکے پیچھے چل رہے ہیں حریم کو انہوں نے بڑی سی چادر سے پہنا رکھی تھی۔۔۔۔۔۔
اللہ کے فضل سے بس اڈے خیر پہنچ ہی گئے۔
تین ٹکٹ کٹا کر کراچی کی بس میں سوار ہوگئے۔۔۔۔
تقریباً 3 گھنٹے لگے اُنکو کراچی بس اڈے تک پہنچنے میں ، حریم اور شگفتہ بیگم سارے راستے سوتے رہے مگر فکرمندی سے احمد صاحب سارا رستہ حریم اور شگفتہ بیگم کو دیکھتے رہے ۔۔۔۔
بس اڈے پر احمد صاحب کے پرانے دوست وجاہت صاحب انُکے منتظر کھڑے تھے احمد صاحب کو شگفتہ بیگم اور ایک لڑکی کے ساتھ آتے دیکھ کر انھوں نے سمیر کا پوچھا ۔۔۔۔۔
سمیر کہاں ہے بس میں ہے۔۔۔۔۔۔؟
بتاؤں گا یارسب بتاؤنگا ۔۔۔۔۔۔
پہلے اس پتے پر لے چلو ۔۔۔۔۔!
انہوں نے جیب سے گھر کے پتے والی پرچی نکال کر وجاہت صاحب کو دی اوہ ۔۔۔۔
یہ تو میرے گھر کے پیچھے والا بلاک ہے
چلو ابھی لے چلتا ہوں۔۔۔۔۔۔۔؟
کچھ دیر گاڑی چلنے کے بعد گلشن اقبال کے بلاک تیرا ۔D کے ایک بنگلے کے دروازے کے سامنے رُک گئی۔
احمد صاحب نے بوجاہت صاحب کے ساتھ باہر نکل کر ڈور بیل بجائ ، بیل دینے کے دومنٹ بعد ایک لگ بھگ پچاس سال کی ادھیڑ عمر خاتون نے دروازہ کھولا ،، اور احمد صاحب کو دیکھ کر پہچانے کی کوشش کرنے لگیں ۔۔۔۔
آپ کون ہیں محترم۔۔۔۔؟
السلام و علیکم ، جی میں احمد ہوں احمد سلطان ،
آپ سے فون پر بات ہوئی تھی حریم ۔۔۔۔۔۔۔اور ۔۔۔
حریم کا نام سنتے ہی وہ خاتون بیقرار ی
سے گاڑی کی جانب بڑھیں حریم ۔۔۔۔صائم کہاں ہو بیٹا

–**–**–
جاری ہے
——
آپکو یہ ناول کیسا لگا؟
کمنٹس میں اپنی رائے سے ضرور آگاہ کریں۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Subscribe For Latest Novels

Signup for Novels and get notified when we publish new Novel for free!




%d bloggers like this: