Taza Murda Chahe Novel by Umm e Rubas Read Online – Episode 7

0

تازہ مردہ چاہیے از ام رباس – قسط نمبر 7

–**–**–

حریم ۔۔۔۔۔صائم کہاں ہو بیٹا انھوں نے گاڑی کے کھلے شیشے پر ُجھک کر گاڑی کے اندر آواز دے کر کہا حریم نے انکو اجنبی نظروں سے دیکھا اور شگفتہ بیگم کے بازو کو مضبوطی سے جکڑ کر بولی امی یہ کون ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔؟
عفت جہاں حریم کی بات سن کر ہکا بکا کھڑی رہ گئیں ۔۔۔۔
شگفتہ نے حریم کو شفقت سے دیکھا اور ایک نظر ان خاتون پر ڈالی جو حریم کو پکار رہیں تھیں۔۔۔۔۔۔
آپ رُکیں بہن میں اسکو لے کر آتی ہوں آپ فکر مند نہیں ہوں ۔۔۔۔۔
صائم کہاں ہے بہن ۔۔۔۔۔۔؟
وہ پلٹ کر احمد صاحب کی طرف گیں اور ان سے بھی یہی سوال کیا ۔۔۔
صائم کہاں ہے بھائی صاحب۔۔۔۔؟
صائم تو کہیں نظر نہیں آرہا ۔۔۔۔۔۔۔!
میں سب بتاتا ہوں آپ کو آپ پہلے ہمیں گھر کے اندر لے چلیں ۔
جی چلیں آئیں آپ لوگ اندر چلیں ۔۔۔
وجاہت صاحب اور احمد صاحب نے پہلے دونوں خواتین اور حریم کو دروازے پر راستہ دے کر اندر جانے دیا ۔۔۔۔پھر دونوں حضرات گھرمیں داخل ہوئے ۔۔۔
احمد صاحب نے گھر میں داخل ہوتے ہی آیت الکرسی کا حصار کر دیا ۔۔۔۔۔ سارے گھر پر ۔۔۔۔۔۔،
گھر میں عفت جہاں نے پہلے تمام افراد کو ڈرائنگ روم میں بٹھایا اور کانپتے ہاتھوں سے مہمانوں کو پانی پیش کیا۔۔۔۔ور پھر خود بھی ایک صوفے پر بیٹھ گئیں اور احمد صاحب کی طرف سوالیہ نظروں سے دیکھا ۔۔۔ !وہ کبھی احمد صاحب جو دیکھتیں اور
کبھی حریم کو دیکھتیں جو شگفتہ بیگم کے کندھے پر آرام سے سر رکھ کر بیٹھی تھی اور دونوں پاؤوں کو بڑے آرام سے پسار کر کسی بچے کی طرح بیٹھی تھی۔۔۔۔ ۔
ہہم ۔۔۔۔احمد صاحب نے گلہ کھنکار کر بات کا آغاز کیا۔ ۔۔۔
بہن میں ایک رٹائرڈ پروفیسر ہوں ۔۔۔۔۔میری رہائش حیدر آباد سے کچھ دور ایک پرفضا اور غیر آباد علاقے میں ہے ۔۔۔۔
میں اپنے بیٹے سمیر کی قبر پر نماز ِ فجر کے بعد روانہ کے معمول کی طرح فاتحہ خوانی کے لیے گیا تھا تو مجھے قبرستان میں آپکی بہو ۔۔۔ بیہوش پڑی ملی تھی ۔۔۔۔
اس کے ساتھ اور کوئی نہیں تھا یہ پھوٹ پھوٹ کر روتی تھی اور صائم کوبلا تی تھی۔۔۔۔۔
احمد صاحب کے منہ سےصائم کا نام سنتے ہی حریم زور زورسے صائم کو پکار نے لگی صائم ۔۔ ۔۔!
صائم
ابو ۔۔۔۔۔!صائم لے گۓ۔۔۔۔۔
ابو صائم لے گئے ۔۔۔۔
انھیں تازہ مردہ چاہیے ہوتا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ابو تازہ مردہ ۔۔ ۔۔
صائم آؤ۔۔۔۔۔صائم آؤ
شگفتہ بیگم نے حریم کو گلے لگا کر اپنی شفیق گود میں سمیٹ لیا اور اسکی کمر پر ہلکے ہلکے تھپکنے لگیں۔۔ ۔
جیسے حوصلا دے رہی ہوں اُسکو
عفت جہاں جو حریم کی حالت اور سلطان صاحب کی بات سن کر حیرانگی سے ُانکو دیکھ رہی تھیں
اور صائم ۔۔۔۔۔۔ کہاں ہے۔۔۔۔۔!
کہہ کر بلک بلک کر رونے لگیں
میرا صائم کہاں ہے ۔۔۔۔۔؟
کچھ تو بتائیں۔۔۔۔۔۔؟
بہن آپ روئیں نہیں صبر و تحمل سے پوری بات سنیں ۔۔۔۔
پھر میں اسِکو اپنے گھر لے کر آگیا تھا اور بعد میں ِانکی گاڑی ڈھونڈ کر سامان اور فون بھی لے کر آیا تو آپ سے رابطہ کر سکے ہم ۔۔۔۔۔
مگر بھائی صاحب ان دونوں کو تو حیدرآباد جانا تھا پتہ نہیں کیا ہوا ہوگا۔۔۔۔۔۔۔۔!
کیا گزری میرے بچوں پر۔ ۔۔۔۔؟
صائم کہاں گیٔا ۔۔۔۔۔؟
بہن اب آپ ذرا ہمت سے میری بات سنیں اور تم بھی وجاہت حسین۔۔۔۔۔۔
احمد صاحب نے دونو ں کو مخاطب ہو کر کہا ۔۔۔۔۔
میرا بیٹا سمیر تھا انجینئرنگ یونیورسٹی میں داخلہ لے چکا تھا مگر اُسکو وہاں جانا نصیب نہیں ہوا ۔۔۔۔
وجاہت حسین نے دکھ سے اپنے دوست کو لرزتی آواز میں بولتے دیکھا ۔۔۔۔۔ اور پوچھا۔۔۔
مگر ہوا کیا ہے احمد ۔۔۔۔۔۔۔؟
ہمارے علاقے کے قبرستان کے اندر اور اطراف میں کوئ ہے ایک ہندؤ پنڈت اور اسکے آدم خور عجیب وخلقت ساتھی وہ عجیب سی آوزیں نکالتے ہیں حریم کا خون بھی چوس کر گئے ہیں مجھے لگتا ہے وہ تازہ مردے اور زندہ انسان کھاتے ہیں ۔۔۔۔
میرے سمیر کو بھی انھوں نے گھر کے دروازے پر نوچ نوچ کر کھایا تھا ۔۔۔۔۔۔
تین سال پہلے۔۔۔۔۔۔۔۔!
شگفتہ بیگم کی ٹانگ میں فریکچر تھا اور بلڈ پریشر بھی بہت ہائ تھا یہ بستر سے دوبارہ گر گئیں تھیں ۔۔۔
درد بہت زیادہ بڑھنے پر سمیر اِنکے لیے پین کلرزلینے قریبی آباد علاقے تک گیا تھا۔ شاید وہ دوا لے کر آگیا تھا۔۔۔۔۔
اس نے دروازہ کھٹکھٹا یا ہے اور میں نے جیسے ہی دروازے کی کنڈی پر ہاتھ رکھا ہے ایکدم سے باہر سے سمیر کے چیخنے کی آوازیں سنائی دینے لگیں ، وہ۔ چیخ رہا تھا ابو بچائئں ۔۔۔۔!
میں خود غرض بن گیااس وقت اگر دروازہ کھول دیتا تو کوئ زندہ نہیں بچتا۔۔۔۔۔۔۔
وہ عجیب عجیب سی آوازیں نکال کر اُسکو کھارہے تھے ۔۔۔۔چپڑ چپڑ کی منحوس آواز آج تک میرے کانوں میں گونجتی ہے ۔۔۔۔۔۔
آج تک میری نظروں کے آگے سےوہ منظر نہیں ہٹتا میرے اپنے بیٹے کا سرخ خون بہہ بہہ کر دروازے کی دہلیز سے اندر آرہا تھا اور میں کچھ نہیں کر پایا۔۔۔۔۔۔
یہ بول کر احمد صاحب کی آنکھ سے کرب بھرا آنسو ٹپکا۔ ۔۔۔۔۔! اپنے دائیں ہاتھ سے آنکھیں پوچھ کر انھوں نے۔ بات کا سلسلہ وہیں سے جوڑا
کچھ دیر بعد جب باہر سے وہ آوازیں آنا بند ہوگئیں تو میں نے دروازہ کھولا ۔۔۔۔۔۔
بہت سا خون اور اس میں ڈوبی سمیر کی شرٹ کی کچھ دھجیاں پڑی تھیں اور ایک طرف مٹی پر اسکی دو چبائ ہوئ کٹی پھٹی انگلیاں۔۔۔۔۔۔۔۔
دوانگلیاں پڑی تھیں۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میں تو اس وقت ہی تکلیف سے مر گیا تھا وجاہت ۔۔۔۔۔۔
مت پوچھو کہ یہ دکھ اور زخم ہمیں تین سال بعد بھی بہت تکلیف دیتا ہے۔۔۔۔۔
کاش میں فوراً دروازہ کھول دیتا ذرا دیر نہ کرتا تو آج میرا بیٹا میرے پاس ہوتا۔۔۔
بہن آپ کی بہو کو قبرستان میں بیہوش پڑا دیکھ کر میرا اندازہ ہے کہ یہ دونوں بھی اُنکے شکا ر بنے ہیں ۔۔۔۔۔
آپکا بیٹا کہاں ہے ۔۔۔۔۔۔ِاسکے ساتھ کیا ہوا ہے ۔۔۔۔۔۔۔؟
یہ تو بس اللہ ہی جانتا ہے۔ ۔۔۔۔۔یا آپکی بہو
جو اس رات کے بعد اپنے حواس کھو چکی ہے ۔۔۔۔
اسکو کچھ یاد نہیں مجھے ابو بولتی ہےااور میری بیوی کو امی بلاتی ہے۔۔۔۔۔
بےِ رَبط جملے بولتی ہے صائم آجاؤ۔۔۔ ۔
صائم کوکھا گئے۔۔۔۔۔۔۔
انھیں تازہ مردہ چاہیے۔۔۔۔۔
تازہ مردہ چاہیے ہوتا ہے۔۔۔۔ ۔۔
جب بھی کچھ پوچھتے ہیں ایسے ہی جملے بولتی ہے ۔۔۔
اس کو کچھ یاد نہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔
مگر یار کون ہیں وہ لوگ آخر آتے کہاں سے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔؟
وجاہت حسین نے پریشانی سے پوچھا ۔۔۔۔۔۔۔!
پتہ نہیں یار ۔۔۔۔مغرب کے بعد سے صبح کے سورج نکلنے تک وہ ہر جگہ اپنا شر پھیلاتے ہیں ۔۔۔۔
دن نکلنے پر ایسے غائب ہو جاتے ہیں جیسے کبھی تھے ہی نہیں ۔۔۔۔۔۔!
کسی کو بھی میں بتاتا ہوں تو کوئ میرا یقین نہیں کرتا۔ سب پاگل سمجھتے ہیں۔ ۔
کہتے ہیں بیٹے کی موت نے دماغ خراب کر دیا۔۔۔۔۔۔
مگر میں بلکل سچ کہتا ہوں وجاہت ۔۔۔۔۔، بہن جی۔ ۔۔ ۔۔۔،
،یہ سب کچھ سچ ہے ۔۔۔۔
کل رات انھوں نے ہر کوشش کی حریم کو اپنے ساتھ لے جانے کی کہتے ہیں۔۔۔۔
“اسکے پاس بالن ہے “۔۔۔۔
شاید اسی وجہہ سے انھوں نے اسِکو کھایا نہیں ۔۔
کوئ تو وجہ ہے ۔۔۔اسی لیے بہن ہم اِسکو فوراً وہاں سے کراچی لے آئے تاکہ۔ یہ اور اسکا بچہ محفوظ رہیں ۔۔۔۔۔۔
عفت جہاں نے اٹھ کر صوفے پر بیٹھتے ہوے حریم کو گلے لگا لیا۔۔۔۔ میری بچی ۔۔۔۔۔۔ کیا کیا برداشت کیا ہے اس نے ان تین دنوں میں ۔۔۔۔۔۔
شگفتہ احمد نے عفت جہاں سے کہا۔۔۔۔ حوصلہ کریں بہن آپکا بیٹا بھی ٹھیک ہوگا۔ اور حریم بھی ٹھیک ہو جاے گئ۔۔۔۔
ان شاءاللہ۔۔
ہاں ان شاءاللہ سب نے کہا۔۔۔۔۔
آپ اب اپنی بہو کا خیال کیجئے گا انکو کچھ پتہ نہیں چلے گا کہ یہ کہاں ہے۔۔۔۔ ۔۔۔؟
ہم بھی ابھی کراچی میں ہی ھیں
اچھا بہن اب اجازت دیجئے آپکی امانت آپکے حوالے۔۔۔۔
یہ بول کر احمد صاحب اور شگفتہ بیگم نے ان سے الوداع کہا اور دروازے کی جانب جانے لگے ۔۔۔۔۔حریم نے ایکدم سے رونا شروع کر دیا امی۔۔۔۔۔۔!
امی۔۔۔۔۔۔!
حریم کے رونے پر بےبسی سےشگفتہ بیگم نے احمدصاحب کو دیکھا۔۔۔۔ ۔
نہیں شگفتہ ہم اسکو نہیں لے جا سکتے ۔۔۔۔
ِاسکا گھر ہے یہ ۔۔۔۔۔
حریم یہیں محفوظ ہے۔۔۔۔
۔
عفت جہاں نے حریم کے رونے کو دیکھ کراحمد صاحب سے شگفتہ بیگم کو یہیں حریم کے پاس چھوڑنے کی درخواست کی۔۔۔۔
بھائ صاحب مجھے یہ پہچان نہیں رہی اور شگفتہ بہن کو اپنی ماں سمجھ رہی ہے اِنکو آج یہاں ہی چھوڑ جائیں ۔۔۔۔۔۔
اچھا اگر آپ کہہ رہی ہیں تو ٹھیک ہے بہن۔ شگفتہ آپ آج یہیں ُرک جائیں جی بہتر ۔۔۔۔۔۔
میں وجاہت کے گھرہی کچھ دن قیام کرونگا ۔۔۔
کوئی بھی مسلہ ہو شگفتہ تم اور بہن آپ مجھے فون کر لیجے گا۔۔۔۔۔
جی احمد ۔۔۔۔
جی بہت شکریہ بھائ صاحب۔۔۔۔۔
اللہ نگہبان۔۔۔۔۔۔
گھر کا دروازہ بند کرکے عفت جہاں نے شگفتہ بیگم اور حریم کو کمرے میں آرام کرنے کا کہا اور انکو حریم اور صائم کے بیڈ روم میں لے آئیں
کمرے میں دیوار پر بہت سی زندگی سے بھر پور ہنستی مسکراتی صائم اور حریم کی تصاویر آویزاں تھیں۔ شگفتہ نے حریم کو لٹایا ۔۔۔۔۔
حریم آرام کرو بیٹا تھک گئ ہوگی ۔۔۔۔
میں کھانا لاتی ہوں ۔۔۔۔۔
عفت جہاں جب تک کھانے کی ٹرے کمرے میں ہی لے آئیں۔۔۔۔۔۔
بہن میں آہی رہی تھی۔۔۔۔۔۔
نہیں بہین آپ نے تو مجھے اپنا احسان مند کر دیا ہے میری بچی کا خیال اور حفاظت کر کے ۔۔۔۔۔
نہیں عفت ۔۔۔حفاظت کرنے والی ذات تو صرف اللہ کی ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ بس ذریعہ بناتا ہے کہ انسان کسی کےکام آجاے
چلیں آئیں شگفتہ کھانا کھا لیں پھر آپ لوگ کچھ آرام کر لیجے گا سفر کی تھکن بھی ہوگی۔۔۔
جی بہت شکریہ کھانا کھا کر وہ تھوڑا آرام کرنے لگیں اور عفت اپنے کمرے میں چلی گیں حریم تو کھانا کھاتے ہی سوگئی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔،
تھوڑی تھوڑی دیر بعد احمد صاحب شگفتہ سے فون پر رابطہ کر کے خیریت بھی معلوم کر رہے تھے۔۔۔۔۔۔،
اذانِ مغرب ہوتے ہی شگفتہ وضو کر کے نماز پڑھنے لگیں حریم ابھی سو ہی رہی تھی ۔۔۔۔،
اچانک کمرے میں ایسا محسوس ہوا جیسے کوئی آیا ہے ۔۔۔۔
احمد صاحب کی آواز آئی۔۔۔۔ اٹھو بیٹا۔۔۔۔!
حریم آؤ ۔۔۔۔۔چلو۔۔۔۔۔،
حریم کی نیند میں ڈوبی آواز کمرے میں گونجی۔۔۔۔۔،
چلوں ابو ۔۔۔۔۔؟
ہاں آؤ چلو ۔۔۔۔۔۔۔!
پھر احمد صاحب اور حریم کمرے سے باہر چلے گئے ۔۔۔ ۔،
نماز پڑھ کر شگفتہ نے سلام پھیرا اور کمرے سے باہر جاکر عفت جہاں سے پوچھا ۔۔۔۔۔،
سُنیں احمد صاحب آئے تھے میں تو نماز پڑھ رہی تھی کیا انھوں نے آپ کو بتایا ہے کہ وہ حریم کو کہاں لے کر جا رہے ہیں ۔۔۔۔ ۔؟
نہیں تو شگفتہ یہاں تو کوئی نہیں آیا۔ احمد بھائی بھی نہیں ۔۔۔۔۔۔۔
نہیں آپ نے دیکھا نہیں ہوگا میں نے خود احمد صاحب کی آواز سنی ہے ۔۔۔نہیں بہن آپکو کوئ غلط فہمی ہوئی ہے۔ یہاں کوئ نہیں آیا میں تو بہت دیر سے یہیں لاؤنچ میں ہی بیٹھی ہوں۔۔۔۔۔۔
اللہ۔۔۔۔۔۔! شگفتہ نے دل پر ہاتھ رکھ کر فوراً احمد صاحب کو فون ملایا ۔۔۔۔۔۔
احمد صاحب نے پہلی بیل پر ہی کال ریسیو کر لی۔۔ ۔
ہیلو۔۔۔۔!
احمد آپ کہاں لے کر گۓ ہیں حریم کو۔۔۔۔۔۔۔۔؟
کیا ہوگیا۔۔۔،شگفتہ، میں تو نہیں آیا وہاں ۔۔۔۔کیا بول رہی ہو۔۔۔۔۔!
کہاں ہے حریم ۔۔۔۔۔۔۔ِ؟
اگر آپ نہیں آئے تو پھر ۔۔۔۔۔!
شگفتہ نے خوف سے لرزتی آواز میں کہا۔۔۔۔ ۔
احمد صاحب وہ حریم کو لے گئے۔۔۔ ۔۔۔۔!

–**–**–
جاری ہے
——
آپکو یہ ناول کیسا لگا؟
کمنٹس میں اپنی رائے سے ضرور آگاہ کریں۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Subscribe For Latest Novels

Signup for Novels and get notified when we publish new Novel for free!




%d bloggers like this: