Taza Murda Chahe Novel by Umm e Rubas Read Online – Episode 8

0

تازہ مردہ چاہیے از ام رباس – قسط نمبر 8

–**–**–

احمد صاحب وہ حریم کو لے گئے۔۔۔۔۔

کیا بول رہی ہو شگفتہ ۔۔۔۔۔؟
سب کہہ رہی ہوں احمد صاحب وہ لے گئے اسکو
میری بچی کو لے گئے۔۔۔۔۔۔

عفت جہاں نے شگفتہ بیگم اور احمد صاحب کی آدھی گفتگو سن کر پریشانی سے شگفتہ کو دیکھا۔۔۔

شگفتہ بیگم نے فون بند کردیا۔۔۔۔

کیا ہوا بہن حریم کو کون لے گیا ۔۔۔۔۔۔؟

وہ لے گیا بہن وہ شیطان اپنے شیطانی چکر سے اسکو یہاں آپ کے گھر میں گھس کر لے گیا ۔۔۔۔
کیا مگر کیسے ۔۔۔۔۔۔؟
عفت جہاں منہ پر ہاتھ رکھے صدمے سے زمین پر بیٹھتی چلی گئیں۔۔۔۔۔۔

وہ خبیث پنڈت اگر ہمیں پتہ ہوتا کہ اسکو خبر ہوجاے گی تو میں ایک لمحہ بھی حریمکو تنہا نہ چھوڑتی میں وہیں نماز پڑھتی رہی اور وہ آکر ُاسکو لے کر چلا گیا ۔۔۔۔

مجھ سے چوُک ہوگئ عفت بہن میں اپنی بچی کی حفاظت نہیں کر پائ وہ امی بول رہی تھی مجھے ۔۔۔
دکھ سے شگفتہ نڈھال سی کھڑی تھیں کہ سارے گھر میں ڈور بیل کی آواز گونجنے لگی ایسا لگتا تھا کہ جیسے کوئی ڈور بیل پر ہاتھ رکھ کر بھول گیا ہے ۔ ۔۔
عفت جہاں نے جلدی سے جاکر دروازہ کھول تو ساحمد صاحب اپنے دوست وجاہت حسین کے ساتھ کھڑے تھے دروازہ کُھلتے ہی دونوں تیزی سے گھر میں گھُستے چلے آئے۔۔۔۔

احمد صاحب نے شگفتہ بیگم کے پاس جاکر پوچھا ۔۔۔۔۔
کیا ہوا کیسے گُھس گیا وہ کمبخت گھر میں تم کہاں تھیں ۔۔۔۔۔۔؟

احمد حریم سو رہی تھی میں مغرب کی نماز پڑھ رہی تھی اچانک آپ کی آواز آئی

“حریم اٹھو آؤ چلیں ”

میں سمجھی آپ مجھ سے اور حریم سے ملنے آئے ہیں اور اسُکو کمرے سے باہر لاونچ میں لے کر جارہے ہیں۔نماز ختم کر کے میں نے عفت بہن سے پوچھا آپ کے آنے کے بارے میں تو انھوں نے بتایا کہ یہاں تو کوئ نہیں آیا۔۔۔۔۔

شگفتہ بیگم آپ نےاپنےکمرے کا حصار کیا تھا۔۔۔۔ احمد صاحب نے ان سے استفسار کیا۔۔۔۔
جی مجھے نماز پڑھ کرکرنا تھا۔۔۔۔
کرنا تھا۔۔۔۔۔؟

یہ آپ کی غلطی ہے کہ آپ چُوک گئیں مگر وہ تاک لگا کر بیٹھا تھا
اب میں کہاں ڈھونڈوں حریم کو ۔۔۔۔۔۔
پلیز کچھ کریں احمد ۔۔۔۔۔شگفتہ یگم نے بےبسی سے کہا ۔۔۔

بھائ صاحب کچھ کریں میری حریم کہاں ہوگی کس حال میں ہوگی ۔۔۔۔۔۔
ایک منٹ رُکیں ذرا۔۔۔ احمد صاحب نے کچھ اسنے کی کوشش کرتے ہو ے کہا۔۔۔۔
پھر۔۔ ، احمد صاحب نے شگفتہ کے پاس جاکر آہستہ آواز میں پوچھا کہاں سے غائب ہوئی ہے حریم ۔۔۔۔۔۔؟
وہ سامنے والے کمرے سے انھوں نے ہاتھ کے اشارے سے بتایا ۔۔۔۔میرے پیچھے کوئ نہیں آئے

Read More:  Barda Novel By Riaz Aqib Kohler – Episode 53

شگفتہ جہاں نے پریشانی سے کہا۔۔۔۔۔

احمد صاحب آہستہ قدموں سے آواز کی سمت جانے
لگے آواز اُس کمرے سے ہی آرہی تھی جہاں سے وہ لوگ حریم کو لے کر گئے تھے ۔۔۔۔

احمد صاحب نےکمرے میں داخل ہوکر کمرے کے چاروں طرف آواز کی سمت ڈھونڈنی چاہی مگر وہ کتوں کے رینکنے کی دھیمی دھیمی آواز اب بند ہو چکی تھی انھوں نے حریم کے بستر پر بہت سارا تازہ خون پڑا دیکھا۔۔۔۔۔ جیسے کسی جاندار کو ابھی ابھی زیبحہ کیا گیا ہو۔۔۔۔۔ احمد صاحب کے تمام جسم کے رونگٹے کھڑے ہوگے یہ دیکھ کر انہوں نے آگے بڑھ کر اس خون کو ہاتھ لگایا تو ایکدم سے وہ تمام تازہ خون بھُبھری مٹی میں بدل گیا جس سے تیز کافور اور فُضلےِ کی بدبو آرہی تھی۔۔۔۔۔۔

احمد صاحب نے کراہیت سے ہاتھ جھٹکا ۔۔۔۔آخ۔۔۔
سارے کمرے میں عجیب سے کتوں کے رونے کی آوازیں آنے لگیں ۔۔۔۔ ۔
تو کیا سمجھا۔ ۔۔۔۔۔
ہم تیرے لیے پتہ چھوڑ کر جایں گے۔ ۔۔۔۔۔ہا ہا ہا
اب ڈھونڈ کر دکھاِ۔۔۔۔۔۔۔
پٹختا رہ اپنا سر ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہاہا ہا ۔۔۔۔۔۔۔۔بڈھا ۔۔۔۔۔۔

پھر سارے ک
رے میں گہرا سکوت پھیل گیا۔۔۔۔۔
احمد صاحب نے باہر آکر وجاہت حسین سے پوچھا کسی ایسے کو جانتے ہو جو مدد کر سکے ۔۔۔۔۔؟
عفت جہاں نے ان سے کہا آپ پولیس میں رپورٹ کریں میرا دل بہت ڈر رہا ہے ۔۔۔۔۔
پولیس کچھ نہیں کر سکتی بہن ۔۔۔۔
معاملہ دوسرا ہے ۔۔۔۔
ایک ہے تو میرا چچاا زاد بھائی شاید وہ کچھ مدد کر سکے ۔۔۔وجاہت صاحب نے احمد صاحب کو بتایا

چلو پھر فوراً چلو۔۔۔۔۔
اب آپ لوگ اپنا خیال رکھیے گا میں وجاہت حسین کے بھائی سے ملنے کا رہا ہوں شاید کوئی سبیل بن جائے۔۔۔۔۔
وجاہت حسین کے ساتھ احمد صاحب کافی دیر گاڑی میں سفر کر کے ملیر پہنچے گاڑی ایک جگہہ روک کر پتلی سی گلی میں مڑ گے وجاہت حسین ۔۔
احمد صاحب آنے ساتھ چلتے رہے اور دعا کرتے رہے کہ اللہ کرے کام بن جاے ۔۔۔۔۔

نیلے سے لکڑی کے دروازے پر جاکر دونوں رکُ گے۔۔۔
کھٹ کھٹ کھٹ۔۔۔ ۔۔۔

کون ہے ۔۔۔۔۔۔۔؟
اندر سے ایک نسوانی آواز آئ۔۔۔۔
بھابی وجاہت ہوں
عمر فاروق ہے ۔۔۔۔۔

جی ہیں دروازہ کُھولتے ہوے ان خاتون نے کہا آپ اندر آجائیں بس تسبیح پڑھ رہے ہیں آتے ہی ہونگے میں نے اطلاع کر دی ہے ۔۔۔۔۔

Read More:  Hijab Novel By Amina Khan – Episode 27

تھوڑی دیر بعد ایک دبلا پتلا سا ادھیڑ عمر کا آدمی لمبی سی داڑھی کے ساتھ نکل کر باہر صحن میں آکر ان دونوں سے سلا م دعا کرنے لگا

کیسے ہیں وجاہت بھا ئ۔ ۔۔۔۔۔
آج میری یاد کیسے آگئ ۔۔۔۔۔
بذلہ سنجی سے لطیف سا طنز کیا گیا ۔۔۔۔
عمر یہ میرا دوست ہے احمد سلطان اسکو تمھاری مدد کی ضرورت ہے ۔۔۔۔
خیریت ہے بھائ عمر فاروق نے فکرمندی سے پوچھا

معاملہ بہت خطرناک ہے تم وعدہ کرو پیچھے نہیں ہٹو گے۔ ۔۔۔۔۔۔ وجاہت حسین نے پہلے ہی وعدہ لینے کا فیصلہ کیا ارے بھائی تم نے کہا دیا میرا وعدہ ہو گیا ۔۔۔پریشانی بتا و ۔۔۔۔۔
وجاہت حسین نے احمد سلطان کا دائیاں ہاتھ عمر کے ہاتھ میں دے کر کہا اِسکو سُونگھو۔۔۔۔۔
عمر فاروق نے احمد صاحب کا ہاتھ ناک کے نزدیک کیا اور ایکدم سے ایسے جھٹکا جیسے بچھو نے ڈنک مار دیا ہو۔۔۔۔۔۔

کہاں سے آئے ہیں آپ۔۔۔۔۔۔؟
یہ کہاں ٹکرا گئے آپ سے ۔۔۔۔۔۔۔؟
کب سے چل رہا ہے یہ سب۔۔۔۔۔۔۔؟
عمر فاروق نے بہت زیادہ پریشانی سے سوال کرنا شروع کیے ۔۔۔۔

عمر یہ کچھ نہیں بتاے گا ۔۔۔۔تم بتاؤ تمھیں کیا پتہ چلا ہے ۔۔۔۔۔۔

یہ تو تازہ مردے کھانے والے آسیبوں کی بدبو ہے یہ عجیب و غریب ہیت کےخون پینے والے تازہ ماس کھانے والے ہیولے دکھا رہا ہے مجھے ۔۔۔۔۔۔۔!
انہوں نے احمد صاحب کے ہاتھ کی طرف اشارہ کر کے کہا۔۔۔۔۔۔۔

تو اب تم کیا کروگے ۔۔۔۔۔۔؟
دیکھو عمر بچی کا معاملہ ہے ۔۔۔۔وہ اسکو ساتھ لے گے ہیں ۔۔۔۔۔وہ امید سے بھی ہے ۔۔۔۔
تم وعدہ کر چکے ہو۔۔۔۔۔۔

پریشانی سے انہوں نے احمد صاحب کو دیکھا اور کہا آپ مجھے ساری بات بتائیں ۔۔۔۔
احمد صاحب نے ساری بات تفصیل سے بیان کی ۔۔۔۔۔
اوہ ۔۔۔۔۔ تو یہ تماشہ ہے۔۔۔۔۔

ایسا ہے تو ایسا ہی ٹھیک ۔۔۔ ۔۔۔
اسماء میری تسبیح تو لاؤ ذرا ۔۔۔۔۔۔ جی ایک منٹ لاتی ہوں ۔۔۔۔۔۔
انکی بیوی نے تسبیح لا کر دی۔۔۔۔۔
آپ لوگ ذرا انتظار کریں میں پتہ کرتا ہو ں
اور یہ کہہ کر وہ آنکھیں بند کر کے تسبیح کے دانے تیزی سے گھمانے لگے۔

کراچی میں تو نہیں ہے ۔۔۔۔۔۔۔
کراچی سے آگے ہے قبرستان کے پاس۔۔۔۔۔۔۔

ہاں میرا گھر ہے قبرستان کے قریب۔۔۔۔۔۔احمد صاحب نے فوراً بتایا ۔۔۔ ۔۔

ابھی جانا ہوگا آدھا اثر ہو گیا ہے دیر نہیں کرنی ۔۔۔۔۔،

Read More:  Aab e Hayat Novel by Umera Ahmed Read Online – Episode 30

عمر فاروق نے آنکھیں کھول کر انکو بتایا ۔۔۔۔

ابھی میں کیسے جاؤ ں گا ۔۔۔۔۔۔؟

بس تو صبح ملے گی ۔۔۔۔ احمد سلطان نے پریشانی سے کہا۔۔۔۔

وجاہت بھائ آپ لے کر چلیں ابھی جانا ہوگا ۔۔۔۔

انہوں نے گھڑی دیکھی بارہ بجے سے پہلے پہنچنا ہے
میں ساتھ جاؤ ں گا۔۔۔۔۔۔۔

تو پھر چلو میں لے چلتا ہوں۔۔۔۔ابھی ساڑھے آٹھ ہو رہے ہیں ہم ساڑھے گیارہ تک پہنچ جائیں گے ان شاءاللہ۔۔۔

اچھا اسماء دروازہ بند کرلو میں وجاہت گاڑی کے ساتھ جا رہا ہوں رات نہیں آؤنگا دعا کرنا۔۔۔۔۔۔

جی اللہ آپ کو کامیاب کرے اللہ حافظ ۔۔۔۔۔

احمد سلطان،۔ وجاہت حسین اور عمر فاروق حیدر آباد سے جانب روانہ ہؤے تمام راستہ پرسرار خاموشی میں گزرا قبرستان کے پاس پہنچ کر عمر فاروق نے آنکھیں بند کیں اور بند آنکھوں سے ُانکو ایک راستہ بتانے لگا اب سیدھا چلیں اب بائیں مڑیں ۔۔۔

اب بلکل سیدھا۔۔۔۔۔
ہاں یہاں روک دیں گاڑی اور احمد صاحب حیرانی سے اُنکی جانب دیکھ رہے تھے کیونکہ عمر فاروق نے گاڑی احمد سلطان کے گھر کے بلکل سامنے رُکوائ تھی۔۔۔۔۔

عمر فاروق نے احمد صاحب کو بولا آپ گھر کے تالے کھول کر اندر جاکر بات کریں میں یہاں یوں مجھے دیکھ کر بگڑ جاے گا بہتر ہے آسانی سے بات بن جائے۔۔۔۔۔

احمد صاحب نے گاڑی سے ُُات کر دروازے کا تالا کھولنے کے لیے جیسے ہی ہاتھ بڑھایا۔۔۔۔۔

دروازہ آہستہ سے کھلتا گیا ۔۔۔۔۔۔۔۔
ساتھ ہی عجیب سی سسکیوں کی آوازیں آنے لگیں۔۔۔

اندر داخل ہونے پر سامنے ہی کوئی بیٹھا تھا ۔۔۔

اندھیرے کی وجہہ سے واضح نظر نہیں آرہا تھا
تھوڑی سے چاند کی روشنی کھڑکیوں سے اندر آرہی تھی۔۔۔

سامنے صوفےپر دونوں پاؤں اوپر رکھے ۔۔۔

ایک پیالا ہاتھ میں لیے حریم کھلے بالوں کے ساتھ بیٹھی تھی۔۔۔۔۔۔

اور جنگلیوں کی طرح ہاتھوں سے کچا گوشت کھا رہی تھی منہ سے چپڑ چپڑ کی آوازیں آرہی تھیں اور اسکی بانچھوں سے خون ٹپک رہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔!

احمد صاحب نے اسُکو آواز دی حریم۔۔۔۔۔۔
ایکدم سے گوشت چبانے کی آوازیں رُک گئیں۔۔۔۔۔۔!

احمد صاحب نے دوبارہ آواز دی حریم۔۔۔۔۔۔ !

حریم نے سر اٹھایا اور مکروہ مسکراہٹ سے بھاری آواز میں کہا ۔۔۔۔۔۔

آگیا ۔۔۔۔ اندر آجا نا۔۔۔۔۔۔!
دروازہ کھلاُ ہے ۔۔۔۔۔

اندر آجا۔۔۔۔۔۔

ابو ۔۔۔۔۔
اور بلند آواز سے ہنسنے لگی ۔۔۔۔

–**–**–
جاری ہے
——
آپکو یہ ناول کیسا لگا؟
کمنٹس میں اپنی رائے سے ضرور آگاہ کریں۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

%d bloggers like this: