Taza Murda Chahe Novel by Umm e Rubas Read Online – Episode 9

0

تازہ مردہ چاہیے از ام رباس – قسط نمبر 9

–**–**–

آجا۔۔۔۔ اندر آجا ۔۔۔۔۔۔
ابو۔۔۔۔۔۔۔۔۔!
ہا ہا ہا ہا۔۔۔۔۔
یہ بول کر حریم نے اپنا بالوں میں چھُپاچہرہ اٹھا کر مکروہ مسکراہٹ سے احمد سلطان کو دیکھا۔۔۔۔۔
احمد صاحب نے حیرانی اور خوف سے لرزتی آواز میں حریم کی جانب دیکھ کر پوچھا ۔۔۔۔۔
تمھیں کیا ہوگیا بیٹی۔۔۔۔۔۔
کیوں ایسی باتیں کر رہی ہو۔۔۔۔۔۔؟
اور تم یہ کھا کی رہی ہو۔۔ ۔ جانوروں کی طرح۔۔۔۔

حریم نے اپنا چہرہ اوپر اٹھایا اور مکروہ مسکراہٹ کے ساتھ اپنی بھاری آواز میں آہستہ سے بولی ۔۔۔۔ بیٹی نہیں۔۔۔، بیٹا۔۔۔۔
ابو۔۔۔۔۔ !
ہا۔۔ ہا۔۔ ہا ۔۔ہا۔۔۔اور بلند آواز سے قہقہے لگانا شروع کردیے۔۔۔۔۔
تم چاہتے کیا ہو ۔۔۔۔۔؟
کیوں پریشان کر رہے ہو۔۔۔۔؟
احمد صاحب نے بےبسی سے سوال کیا۔

حریم نے غصے سے غُراکر کہا۔۔۔۔۔

کیا بکتا ہے بڈھے ۔۔۔۔۔

ہم نے پریشان کیا ۔۔۔۔

یا تو نے چِھیڑا ہمیں ۔۔۔۔۔۔؟

ہم تو مست تھے اپنےقبرستان میں ۔۔۔۔۔
تیرے بیٹے نے بڈھے ۔۔۔۔۔
تیرے بیٹے نے ہمارے رنگ میں بھنگ ڈالا۔۔۔۔
میرے بیٹے نے ۔۔۔۔۔۔؟

احمد صاحب نے چیخ کر اس سے پُوچھا ۔۔۔۔۔

ہاں تیرے بیٹے نے۔۔۔۔۔۔!

ہم کھا رہے تھے نا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔؟

ہم نے نہیں چھیڑا تھا
اس نے پہل کی ۔۔۔۔۔۔۔۔!

وہ کیوں ہمارے سمَے پر ہمارے بالن کو پاؤں سے روند گیا ۔۔۔۔؟

حریم نے چیخ کر تیز آواز میں
کہا۔۔۔
پھر ہم تو کھائیں گے نا۔۔۔۔۔۔۔!
تو تم نے اسلیے ۔۔۔۔۔۔۔؟

صدمے سے احمد صاحب کی آواز حلق میں ہی اٹک گئی۔۔۔۔۔۔

آنسوؤں کا ایک گولا سا اُنکی سانس ُروک رہا تھا۔۔۔۔۔

کچھ لمحے ٹھہر کر انھوں نے پھر سے سوال کیا۔۔۔۔

تم نے اسلیٔے میرے بیٹے سمیر کو مار دیا۔۔۔۔۔۔؟

اے۔۔۔۔۔۔مارا نہیں کھایا ہے ۔۔۔۔

ہا ہا ہا ہا۔۔۔۔۔
اب وہ اپنی مکروہ آواز میں پوری خباثت کے ساتھ ہنستا چلا جا رہا تھا۔۔۔۔۔

ُتو اس بچی نے کیا بگاڑا ہے تمھارا۔۔۔۔۔۔۔۔؟

“اس کے پاس بالن ہے”

دیکھو میری بات سُنو
اس بچی کو چھوڑ دو۔۔۔۔۔

“نہیں”

حریم نے سر کو دائیں بائیں زور زور سے ہلاتے ہوئے بھاری آواز میں کہا ۔۔۔۔

بال ہے ۔۔۔۔ہمارا بالن ہے اِسکے پاس ۔۔۔۔،

وہ غصے سےچیخ کر بولا ۔۔۔
توُ دفعہ ہو یہاں سے
جاتا ہے یا کروں اشارہ۔۔۔۔۔
بُول۔۔۔۔۔۔۔

کوئی نہیں۔ ہے تمھارا بالن
وا لن۔۔۔۔۔
وہ اُسکا بچہ ہے ۔۔۔ ۔۔۔

تیری اتنی مجال۔۔۔۔بکواس کرتا ہے ۔۔۔۔

تو ہمارے بالن کو اِسکا بچہ کہتا ہے ۔۔۔۔
ُرک توُ۔۔۔۔۔

ایکدم سے حریم نے اچھل کر دونوں ہاتھوں سے احمد صاحب کا گلا دبوچ لیا ۔۔۔۔۔۔
احمد صاحب کے گلے کو پکڑنے کے اگلے ہی لمحے۔۔۔۔۔

عمر فاروق گھر میں داخل ہوے
اور گرجدار آواز میں کہا ۔۔۔۔۔

چُھوڑ دے ۔۔۔۔۔

چُھوڑ ۔۔۔۔۔۔

دفعہ ہوجا فوراً۔۔۔۔۔

حریم نے غصے سے عمر فاروق کو گُھورا۔۔۔۔،اور احمد صاحب کو اچھاُل کر دُور پھینک دیا ۔۔۔۔۔،
جا۔۔۔مَر ۔۔۔ بڈھے۔۔۔۔۔۔۔،
احمد صاحب زمین پر گر کر بےسدھ ہوگئے۔۔۔۔۔۔۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

حریم نے عمر فاروق کی طرف دیکھا اور غُرَا کر بولا۔۔۔۔

ُتو رُوکے گا مجھے ۔۔۔۔۔

بول ۔۔۔۔۔!

ہاں میں رُوکونگا تجھے خبیث۔۔۔۔۔

تجھے بھی اور تیرے مَردُودُوں کو بھی۔۔۔۔۔

تو آ۔۔۔۔۔روک ۔۔۔۔

یہ کہہ کر حریم نے ہوا میں مُعلق ہوکر تیز آواز سے منتر پڑھنا شروع کر دیے ۔۔۔۔

ُاوم بِھیم دِھرِم ِِکرم۔۔۔۔۔۔،
ُاوم۔۔۔۔ بھیم ِِدِھرم کِرم۔۔۔۔۔،
ُسواہا۔۔۔۔نِم کِرم َشلُوک ََاچت۔۔۔۔۔۔،

سارا گھر اس کے منتر کےجاپ کی آواز وں سے گونج رہا تھا۔۔۔۔۔

حریم کے سامنے ہی زمین پر کھڑے عمر فاروق نے دونوں ہاتھوں کی مٹھیوں کو بند کر کے اُن پر کچھ پڑھ کر دَم کیا اور دونوں مٹھیاں حریم
کے سامنے کھول دیں ۔۔۔۔۔

اور ُپھرتی سے منہ میں کچھ پڑھ کر حریم کے چہرے پر پُھونکا اور دو قدم پیچھے ہٹ کر کھڑے ہوگئے۔۔۔۔۔،

منہ پر پُھونک پڑتے ہی حریم بے ہوش ہوکر نڈھال سی زمین پر دھڑم سے گر پڑی ۔۔۔۔۔۔

عمر فاروق نے فوراً سے حریم کے اوپر کچھ َم کیا اور احمد صاحب کو ہوش میں لانے لگے ۔۔۔۔۔
احمد صاحب ہوش کریں ہمیں جانا ہے ۔۔۔۔۔

ُاٹھیں احمد صاحب ۔۔۔۔۔ چہرہ تھپتھپانے پر احمد صاحب نے آنکھیں کھولیں۔۔۔۔۔

حریم ۔۔۔۔۔ ؟
سوالیہ نظروں سے انُھوں نے عمر فاروق کو دیکھا۔۔۔۔۔

ٹھیک ہے وہ ہمیں واپس جانا ہوگا جلد از جلد ۔۔۔۔،

آپ چل سکتے ہیں ۔۔۔۔۔؟

انہوں نے احمد صاحب کے پھٹےسر سے نکلتے خون کو اپنی قمیض سے صاف کرتے ہوئے پوچھا۔۔۔۔۔؟

ہاں میں ٹھیک ہوں۔ چلو ۔۔۔۔۔
احمد صاحب نے زمین سے ُاٹھتے ہوے کہا۔۔۔۔

عمر فاروق اور احمد صاحب نے مل کر بیہوش حریم کو اٹھایا اور گاڑی

کی پچھلی طرف کا دروازہ کھول کر حریم کو پچھلی سیٹ پر لٹا دیا۔۔۔۔

احمد صاحب آپ گھر کے دروازے پر تالا ڈال دیں میں آتا ہوں۔۔۔۔۔

احمد صاحب کے تالا ڈالتے ہی عمر فاروق نے احمد صاحب کو دروازے سے دُور ہٹنے کا کہا اور گھر کی دہلیز پر ایک تعویذ رکھ کر جلا دیا۔۔۔

تعویذ کے جل کر راکھ ہوتے ہی انُھوں نے اس تعویذ کی راکھ کو اچھی طرح اپنے جوتے سے مسل کرساری دہلیز پر پھیلا دیا۔۔۔۔

چلیں اب آپ کا گھر وہ شیطان اپنے منحوس عزائم کے لیے استعمال نہیں کر سکتا۔۔۔۔۔۔

آئیں ہمیں فوراً نکلنا ہوگا۔۔۔۔۔

احمد صاحب کے لیے عمر فاروق نے گاڑی کا اَگلا دروازہ کھول کر کہا بھائی آپ آگے بیٹھیں مجھے بچی کے پاس بیٹھنا ہو گا۔۔۔۔۔۔

ٹھیک ہے عمر میں آگے ہی بیٹھتا ہوں۔۔۔۔۔

عمر فاروق کے گاڑی میں بیٹھتے ہی وجاہت حسین نے گاڑی کراچی کے راستے پر ڈال دی ۔۔۔۔

عمر فاروق اپنا دائیاں ہاتھ مضبوطی سے حریم کے ماتھے پر رکھ کر بیٹھے تھے ۔۔۔۔۔

قبرستان کے قریب آتے ہی عمر فاروق نے پڑھائی شروع کر دی ۔۔۔۔۔۔۔،کچھ لمحوں بعد ہی حریم نے بیہوشی میں ایک کچے گوشت اور خون سے بھری قے کر دی تھی ۔۔۔۔۔
ساری گاڑی میں خون اور گوشت کی ناگوار بدبو پھیل گئ۔۔۔۔

گاڑی رُوک بھی نہیں سکتے تھے ۔۔۔
عمر فاروق کی پڑھائی جاری تھی کے حریم کو ہوش آنے لگا۔۔۔۔۔

حریم کا جسم دو فٹ اونچے جَھٹکے ایسےکھا رہا تھا کہ جیسے کوئی اس کے بے جان جسم کو اٹھا اٹھا کر سیٹ پر پٹخ رہا ہو۔۔۔۔۔۔
عمر فاروق نے اور زیادہ سختی سے حریم کے ماتھے کو دبا کر کچھ پڑھا اور دوسرے ہاتھ سے اُسکے بال مٹی میں جکڑ لیے۔۔۔۔۔

بال جکڑتے ہی حریم ایسے بیہوش ہوگئ جیسے پہلے بیہوش تھی ۔۔۔

کراچی پہنچ کر حریم کے گھر کے دروازے کو زور زور سے پیٹتے ہوئے احمد صاحب ہانپ گے
تھوڑی دیر بعد دروازہ عفت جہاں نے کھولا۔ ۔۔۔۔۔

ہٹیں بہن جلدی دروازہ پورا ُکھولیں یہ بول کر احمد صاحب گاڑی سے حریم کو نکالنے کے لیے عمر فاروق کی مدد کرنے لگے۔۔۔۔

ان لوگوں کو بیہوش حریم کو لے کر آتے دیکھ کر عفت جہاں اور شگفتہ بیگم پریشان ہو گئیں۔۔۔

عمر فاروق نے احمد صاحب سے پوچھا ۔۔۔۔۔
کون سا کمرہ ہےِجسکے بستر کا سرہانہ
خانہ کعبہ کے رُخ پر ہے۔۔۔۔؟ جی سامنےوہ کمرہ ہے ایسا۔۔۔۔۔
جواب عفت جہاں نے دیا۔۔۔۔
عمر فاروق اور احمد سلطان نے حریم کو بستر پر لٹا دیا اور عمر فاروق نے عفت جہاں سے کہا۔۔۔۔
آپ مجھے کالاذ دھاگہ اور
تھوڑا عرقِ گلاب کا دیں۔
جی میں لاتی ہوں ۔۔۔۔۔
عفت جہاں یہ چیزیں لینے چلی گیں
شگفتہ بیگم نے فکرمندی سے احمد صاحب کے زخمی سر کی جانب دیکھ کر پوچھا ۔۔۔۔

یہ کیا ہوا احمد۔۔۔۔۔؟

اُسی خبیث کا کام ہے ۔۔۔۔
کہاں سے ملی آپ کو حریم ۔۔۔

ہمارے گھر میں تھی۔۔۔۔۔
وہ خبیث اِسکو گھیرے ہوے تھا ۔۔۔
وہاں کیسے پہنچی ۔۔۔۔۔۔

وہاں کیا کر رہی تھی ۔۔۔۔۔

وہی لے گیا تھا۔۔۔۔۔

وہاں بیٹھی کچا گوشت کھارہی تھی۔۔۔۔۔۔

اِسکے ہاتھ دیکھو۔۔۔۔۔

سارا خون جما ہوا ہے ۔۔۔۔۔

ایسا لگتا ہے کسی مردے کے ہاتھ ہیں ۔۔۔۔۔

کیا حالت کردی بچی کی ۔۔۔۔
کچھ ہی دنوں میں۔

احمد صاحب نے دُکھ سےشگفتہ سے کہا۔۔۔۔

عفت جہاں کے کمرے میں داخل ہوتے ہی دونوں خاموش ہوگئے۔۔۔۔

عفت جہاں نے عرقِ گلاب اور کالا دھاگہ عمر فاروق کو دے دیا۔۔۔۔
عمر فاروق نے انکا شکریہ ادا کیا
جزاک اللہ ۔۔۔

اَب آپ سب لوگ مل کر اس بچی کے ہاتھ اور پاؤں مضبوطی سے پکڑ لیں ۔۔۔۔۔

کوئی بھی آواز یا حرکت ہو آپ اسکو نہیں چھوڑئیے گا ۔۔۔۔

مجھے اسِکو باندھنا ہے۔۔۔۔

عفت جہاں نے پریشانی سے انکو دیکھ کر بھرائی آواز میں کہا ۔۔۔۔

آپ کیوں باندھیں گے ۔۔۔۔۔؟

کیا یہ کوئ جانور ہے۔۔۔۔۔۔۔؟

جی بہن ۔۔۔۔۔

یہ اس وقت جنگلی جانور سےبھی
بدتر ہے ۔۔۔۔۔

مجھے کرنے دیں میں جو کر رہا ہوں۔۔۔۔۔

اس بچی کی مدد کریں وقت نہیں ہے یہ بہت تکلیف میں ہے۔۔۔۔۔

–**–**–
جاری ہے
——
آپکو یہ ناول کیسا لگا؟
کمنٹس میں اپنی رائے سے ضرور آگاہ کریں۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Subscribe For Latest Novels

Signup for Novels and get notified when we publish new Novel for free!




%d bloggers like this: