Tere Ishq Nachaya Novel by Hafsa Rahman – Episode 1

0
تیرے عشق نچایا از حفصہ رحمن – قسط نمبر 1

–**–**–

لالا لالا کہاں ہیں آپ۔۔
امی جان لالا کہاں ہیں کب سے ڈھونڈ رہی ہوں انہیں
بیٹا وہ آفس کے کام گیا ہے ۔۔۔
ایسے کیسے آفس کے کام سے جا سکتے ہیں انہوں نے پرامس کیا تھا آج باہر لے کہ جائیں گیں
بچے کام ضروری ہوتا ہے نہ ۔۔۔
کوئ ضروری نہیں ہوتا امی جان وہ ہمیشہ یہی کرتے ہیں میرے ساتھ ۔۔
لو جی اب دو دن ناراضگی ہی ختم نہیں ہونی ۔
اس بار دو دن نہیں زیادہ دن والا ناراض ہوں میں بس ۔۔۔
ہاہا کیا میری گڑیا ناراض ہو گئ ہے ۔۔ چلو اچھا ہے مجھے کہیں لے کہ نہیں جانا پڑے گا ۔۔۔
لے کہ تو جانا پڑے گا آپ کو اب اس نے منہ بسور کہ کہا
ہاہا بس دو منٹ فریش ہو کہ آیا ۔۔
کوئ نہیں ضرورت فریش ہونے کی ہمیشہ کی طرح میرے لالا بہت پیارے لگ رہے ہیں۔۔
ہاں ہاں بس ساری تعریفیں ارحم لالا کے لیے میں کچھ لگتا ہی نہیں ہوں نہ تمہارا ۔۔۔
ایسی بات نہیں ہے آپ اور ارحم لالا دونوں ہی پیارے ہیں مجھے اس نے پیار بھرے انداز میں کہا ۔۔
اور تم بھی ہماری جان ہو گڑیا ۔۔
اب چلو لیٹ ہو رہا ہے ۔۔۔
شاہزر لالا آپ بھی چلیں نہ ہمارے ساتھ بہت مزہ آئے گا ۔۔
نہیں گڑیا پھر کبھی ابھی تھک چکا ہوں ۔۔۔
چلیں پھر ادھار ہے آپ پہ ۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔چوہدری عنایت لاہور سے کچھ فاصلے پہ ایک گاؤں میں رہتے تھے جہاں انکی زمینیں حویلی تھی گاؤں میں انکی بہت عزت تھی کیونکہ چوہدری عنایت بہت نرم دل کے مالک تھے اور اسی وجہ سے گاؤں کے لوگ اپنے مسائل ان کے پاس لے کی آتے اور وہ بہت سوچ سمجھ کہ حل نکالتے تھے
چوہدری عنایت کا ایک ہی بیٹا تھا چوہدری نواز ۔۔۔
چوہدری نواز بھی چوہدری عنایت کی طرح نرم دل انسان تھا لیکن وہ ہمیشہ سے پڑھ لکھ کہ ایک بزنس مین بننا چاہتا تھا اور شہر میں رہنا چاہتا تھا جبکہ چوہدری عنایت کو یہ بات منظور نہ تھی انہیں اپنی زمینیں حویلی گاؤں کے لوگوں سے بہت پیار تھا
جب چوہدری نواز نے شہر جا کہ پڑھنے کی اجازت مانگی تو چوہدری نے انکار کر دیا لیکن پھر جلد ہی بیٹے کی محبت میں ہار مان کہ اجازت دے دی ابھی چوہدری نواز کی پڑھائ مکمل نہیں ہوئ تھی کہ چوہدری عنایت کا انتقال ہو گیا ۔۔
انتقال کہ کچھ عرصہ بعد چوہدری نواز ہمیشہ کے لیے شہر شفٹ ہو گئے ماں کا پہلے ہی انتقال ہو چکا تھا پھر چوہدری عنایت بھی اس دنیا سے رخصت ہو گئے
چوہدری نواز بلکل اکیلے ہو گئے تھے ایسے میں آمنہ نے انکا ساتھ دیا جو نہ صرف انکی دوست تھی بعد میں شریک حیات بھی بنی جن سے انکی تیں اولادیں پیدا ہوئ
ارحم ،شاہزر اور پریشے ۔۔۔۔
چوہدری نواز بے شک شہر میں ایک عرصے سے رہ رہے تھے لیکن انہوں نے اپنی روایات کو ختم نہیں کیا تھا
وہ اپنی خاندانی روایات کے معاملے میں بہت سخت تھے اس لیے کوئ ایسی حرکت نہ کرتا جو انکی روایات کے خلاف ہوتی۔۔
کبھی کبھی روایات کہ معاملے میں حد سے زیادہ سخت ہونے سے انسان بہت کچھ کھو بیٹھتا ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ارحم اور شاہزر اپنی پڑھائ مکمل کرنے کے بعد اپنے باپ کے ساتھ آفس جاتے تھے بزنس کو سنبھال رہے تھے جو چوہدری نواز نے بہت محنت سے کھڑا کیا تھا جبکہ پریشے ابھی پڑھ رہی تھی۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
شکر پریشے تم آ گئ ہو کب سے یہ میرا دماغ کھا رہی ہے ۔۔
کیوں ارسلہ تم ناشتہ نہیں کر کے آئ جو انوشے کا دماغ کھا رہی ہو ہاہاہا۔۔۔
یار پری تم بھی شروع ہو جاؤ اب بس میں نے بولنا ہی نہیں ہے پتا نہیں کیا مسئلہ ہے جسے دیکھو میرے بولنے پہ اعتراض ہے ارسلہ نے منہ بناتے ہوئے کہا۔۔۔
ہاہاہا نہیں میری جنگلی بلی ایسی کوئ بات نہیں ہے تم بہت اچھی لگتی ہو بولتی ہوئ پریشے نے ہنسی ضبط کرتے ہوئے کہا۔۔۔
اچھا بس کرو اب کلاس کے لیے لیٹ ہو رہا ہے انوشے نے کہا۔۔۔۔۔
چل اٹھ جنگلی بلی ۔۔۔
ارسلہ منہ بناتی ہوئ اٹھ گئ
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
انوشے اور ارسلہ دونوں میٹرک سے دوست تھیں جبکہ پریشے سے انکی یونیورسٹی میں آ کہ ہوئ تھی
انوشے پریشے کے بھائ ارحم کے دوست کی بہن تھی اور ارحم نے ہی پریشے انوشے کا ایڈمیشن کرایا تھا جس کی وجہ سے دونوں کی دوستی ہوئ اور پھر انوشے کے توسط سے پریشے کی دوستی ارسلہ سے بھی ہو گئ ۔۔۔۔
انوشے ارحم کو پسند کرتی تھی اور ارحم بھی انوشے کو پسند کرنے لگ پڑا تھا جس کی وجہ سے غیر ارادی طور پہ پریشے کی انوشے سے زیادہ بنتی تھی جبکہ ارسلہ اور انوشے کہ ہر وقت کسی نہ کسی بات کو لے کہ بحث چلتی رہتی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کیا خیال ہے نواز صاحب کیوں نہ اب ارحم کی شادی کر دیں آمنہ بیگم نے کہا ۔۔۔
کافی دنوں بعد آج سارے اکھٹے بیٹھے تھے ۔۔
ہاں ہاں ،، کیوں نہیں سہی کہ رہی ہیں بیگم آپ کچھ سوچتے ہیں اس بارے میں۔۔
ارے ماما ابھی اتنی بھی کیا جلدی ہے ابھی تو وہ پڑھ رہی ہے آخری جملہ منہ میں کہا گیا تھا لیکن پریشے نے سن لیا تھا کیوں کہ وہ ارحم کے ساتھ چپکی بیٹھی تھی ۔۔۔۔
لالا کیا کر رہے ہیں ابھی سب کو بتانا ضروری ہے کیا ابھی تو وہ پڑھ رہی ہے ہریشے نے ہنستے ہوئے ارحم کے کان میں سرگوشی کی ۔۔
جس پہ ارحم صرف اسے گھور کہ ہی رہ گیا۔۔۔۔۔
یہ کیا تم دونوں کھسر پھسر کر رہے ہو ہاں کوئ چکر وکر تو نہیں چل رہا تمہارا ۔۔ دیکھو اگر ایسا ہے تو بھول جاؤ کیونکہ ہم اپنی ذات کے لوگوں میں شادی کرتے ہیں ۔۔۔۔
اتنا کہنا تھا کہ ارحم کا حلق تک کڑوا ہو گیا کیونکہ انوشے کی فیملی اعوان تھی۔۔۔۔
ارے لالا آپ پرشان نہ ہوں ہم ماما کو منا لیں گیں۔۔۔۔
اب چلیں باہر چلتے ہیں کہیں آج تو شاہزر لالا بھی تھکے ہوئے نہیں ہیں کیوں لالا ۔۔۔۔
نہیں پری آج نہیں ۔۔۔
نو لالا نو آج نہیں آج آپ کو آنا پڑے گا چلیں چلیں اٹھیں جلدی کریں ۔۔۔
ایک تو بس جلدی سے اسے باہر جانے کی پڑ جاتی ہے آمنہ بیگم بھی فٹ سے بولی ۔۔۔
ماما جانی ہفتے میں ایک دن ہی تو ملتا ہے اسے بھی آپ کے لیکچر سنتے گزار دیتی ہوں پریشے نے منہ بناتے ہوئ کیا ۔۔
ارے آمنہ کیوں ڈانٹتی ہیں ہماری بیٹی کو نواز صاحب نے اپنی بیٹی کو گلے لگاتے ہوئے کہا۔۔۔
چلو پری ۔۔
چلیں لالا۔۔۔۔۔
آپ نے دیکھا اسے کوئ فکر ہی نہیں ایک ڈوپٹہ لے کہ چلی گئ ہے میں خوامخواہ نہیں ڈانٹتی اسے اگلے گھر جا کہ کیا کرے گی انہوں نے خفگی سے کہا۔۔۔
میں سمجھا دوں گا آپ پرشان نہ ہوا کریں اس کا پتا ہے نہ ڈانٹوں گے تو نہیں سنے گی پیار سے سمھاؤ گے تو فورن مان جائے گی ۔۔۔۔
اب چلیں ایک کپ چائے پلا دیں بلکہ دونوں مل کے پیتے ہیں چائے۔۔۔۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔یار سنڈے کے بعد منڈے اتنا بورنگ کیوں لگتا ہے ایک تو یہ سیمسٹر بھی اتنا بورنگ ہے ارسلہ نے منہ بناتے ہوئے کہا۔۔۔
تھیک کہ رہی ہو تم پریشے نے بھی اس کے ہاں میں ہاں ملائ۔۔۔۔
اور ایک اس کو دیکھ لو کب سے موبائل میں گھسی ہوئ ہے ۔۔انوشے انوشے لالا سے رات کو بات کر لینا ۔۔۔
نہیں تو تمہیں کس نے کہا میں لالا مطلب تمہارے لالا سے بات کر رہی ہوں ۔۔۔
انوشے ہم اندھی نہیں ہیں ہمیں بھی نظر آ رہا ہے ہم سے بات کرتے ہوئے کبھی چہرے بھی اتنی چمک نہیں آئ ارسلہ نے بھی حصہ ڈالا ۔۔۔
ابھی بتاتی ہوں لالا کو کہتی ہوِن رات کو بات کیا کریں یہ ٹائم ہمارا ہے کہتے ساتھ ہی پریشے نے انوشے کے ہاتھ سے موبائل کھینچ لیا۔۔۔۔
پری میرا فون دو ادھر انوشے نے مصنوعی غصہ سے کیا۔۔
نہ نہ اب تو نہیں ملتا زرا لالا کی خبر لے لوں کہتے ساتھ ہی پریشے نےڈور لگا دی انوشے بھی اس کے پیچھے بھاگی۔۔۔۔
پری دیکھ بہت غلط بات ہے میرا فون دے دے نہ پلیز دے دے۔۔۔
نہ نہ نہ کبھی بھی نہ ۔۔۔۔۔۔۔
پریشے پیچھے دیکھ کہ انوشے سے بات کر رہی تھی کہ اچانک سے سامنے سے آنے والے نفوس سے ٹکرا گئ۔۔۔
ٹکر اس قدر زور کی تھی کہ سامنے والا نفوس کی کتابیں نیچے گر گئ۔۔۔
پری بھی گرتے گرتے بچی۔۔۔
ایم سوری رئیلی سوری میں نے دیکھا نہیں آپ کو پریشے نے بکس اٹھا کے پکڑانی چاہی لیکن یہ کیا سامنے والا انسان تو کہیں اور ہی گم تھا۔۔۔۔
پریشے کو جھنجلاہت سی ہونے لگی تھی اس سب سے ۔۔۔ہیلو مسٹر آپ کی بکس ۔۔۔
ایک دم سے وہ ہوش میں آیا پریشے اسے بکس پکڑا کہ یہ جا وہ جا ہوئ۔۔۔۔ عجیب انسان تھا ایسے دیکھ رہا تھا جیسے کھا جائے گا۔۔۔۔۔۔۔

علی علی تو تھیک ہے نہ ۔۔
علی تجھ سے پوچھ رہا ہوں میں تھیک ہے نہ۔۔۔
ہاں میں تھیک ہوں چیخ کیوں رہا ہے ۔۔
میں کب چیخ رہا ہوں آرام سے بات کر رہا ہوں ۔۔
تیرا دماغ خراب ہو گیا ہے لگتا ہے چل وہ دونوں انتظار کر رہے ہیں ۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔عاصم سب کہاں گیا اتنا کچھ خریدا تھا کھانے کا۔۔
ارسلان تیرا کیا خیال ہے اس بھکر کے سامنے کھانے کی چیزیں پڑی ہوں اور یہ آرام سے بیٹھا رہے ۔۔
یار شیری حد ہو گئ ہے کبھی تو کچھ بچا دیا کر ہمارے لیے۔۔۔
وہ تینوں مل کے اس کی کلاس لے رہے تھے جبکہ شہریار صاحب سب سے بے نیاز کھانے میں مصروف تھے۔۔۔
ابے یہ آخری سموسہ تو چھوڑ دیتا میرے لیے ارسلان نے اسے آخری سموسہ اٹھاتے ہوئے کہا جس کا شہریار پہ کوئ اثر نہیں ہوا تھا۔۔۔
دفعہ کر اسے بتا علی اتنی دیر کیوں لگا دی ۔۔۔
میں بتاتا ہوں نہ یہ صاحب ہیں نہ ایک خاتون سے ٹکڑا گئے تھے اور پھر وہیں پہ کہیں کھو گے ۔۔۔۔
علی تو نے ٹھیکہ لیا ہوا ہے ہر آتے جاتے کے ساتھ ٹکر مارنے کا۔۔۔
ہاں ہاں آج تو یہ خاتون سے ٹکڑایا ۔۔۔
بس کر دے ارسلان خاتون تو نہ کہے اب علی نے منہ بنا کے کہا۔۔۔
ہاہا کیا چکر چل رہا ہے ہاں اہم اہم ۔۔
جا رہا ہوں میں لگے رہو دونوں ۔۔
ابے رک جا مزاق کر رہے تھے ہم تو ہاہاہا ۔۔۔
جبکہ علی ان کے قہقہے سے جل بھن کے رہ گیا تھا۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پریشے بیٹا یہ دیکھو ارحم کے لیے کچھ لڑکیاں پسند کی ہیں ان کی تصویریں ہیں ۔۔۔۔
ماما یہ کیا یہ دیکھیں اس کی ناک کتنی عجیب سی ہے اور یہ اس کی آنکھیں چینیوں جیسی ہیں اور یہ ۔۔ یہ تو شکل سے ہی چلاک رہی ہے۔۔ ماما یہ کیسی لڑکیاں پسند کی ہیں آپ نے۔۔۔
توبہ کرو لڑکی اتنی پیاری سلجھی ہیں اور تم نے کوئ کسر نہیں چھوڑی خامیاں نکالنے کی ۔۔۔
میری پیاری اماں جان آپ کیوں ہلکان ہو رہی ہیں شادی تو
لالا کی اپنی پسند سے ہو گی تو یہ لکڑیاں میرا مطلب لڑکیاں دیکھنا چھوڑ دیں ۔۔۔
اچھا تو پھر اپنے لالا کو یہ بھی بتا دینا کہ اگر شادی پسند کی کرنی ہے تو اپنے ذات کی ہو ورنہ جہاں ہے وہیں اپنے قدم روک دے ۔۔۔
ماما کیا ہو گیا ہے اب یہ فضول باتیں ہیں ان کی کوئ اہمیت نہیں…
خبر دار خبر دار جو دوبارہ ایسی کوئ بات کی تم نے خاص کر اپنے باپ کے سامنے میری بات یاد رکھو میں پھر بھی اولاد کے ہاتھوں مجبور ہو جاؤں لیکن تمہارے بابا وہ اپنی روایات کے معاملے میں اس قدر سخت ہیں کہ وہ اپنی اولاد کو بھی اہمیت نہیں دیں۔۔
اور پریشے حیران پرشان یہ سوچ رہی تھی ارحم اور انوشے کا کیا بنے گا۔۔لگتا ہے دونوں سے بات کرنی پڑی گی۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
انوشے تمہاری ذات کیا ہے ۔
وہ تینوں یونی کی گراؤنڈ میں بیٹھی ہوئ تھی ۔۔ ارسلہ کانوں میں ہینڈ فری لگا کے بیٹھی ہوئ تھی جبکہ پریشے اور انوشے نوٹس بنا رہی تھی ۔۔۔۔
یہ تمہیں اچانک سے میری ذات کہاں سے یاد آ گئ اور پوچھ بھی ایسے رہی ہو جیسے تمہیں پتہ ہی نہ ہو ہم کون ہو۔۔
ہاں پتا ہے لیکن پھر بھی تسلی کے لیے پوچھا۔۔
پاگل تو نہیں ہو گئ تم ۔۔
نہیں یار بس وہ کل ماما کہ رہی تھی کہ ہم چوہدریوں کے علاوہ کہیں شادی نہیں کرتے ۔۔۔ تم کیا چوہدری خاندان میں پیدا نہیں ہو سکتی تھی ہاں۔۔
شاباش جیسے میں نے اپنی مرضی سے انتخاب کیا تھا اپنے خاندان کا انوشے نے غصہ کے ساتھ کہا۔۔۔
اچھا تم پرشان نہ ہو لالا ضرور کچھ کریں گیں ۔۔
یہ تم مجھے تسلی دے رہی ہو یا خود کو۔۔۔
شاید خود کو۔۔۔
اچھا چلو بھائ آ گئے ہیں لینے ۔۔
اٹھ جا جنگلی بلی گھر نہیں جانا انوشے نے ارسلہ کے بال بگاڑتے ہوئے کہا۔۔
یہ آج تمہارے بھائ کیوں لینے آئیں ہیں لالا کیوں نہیں آئے ۔۔۔
ہوں گے کہیں بزی پری اب چلو۔۔۔۔
اوکے جنگلی بلی اللہ حافظ۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
عدیل ارحم کے ساتھ ارحم کے آفس میں کام کرتا تھا جس کی وجہ سے کبھی ارحم تو کبھی عدیل لینے آ جاتے تھے انہیں اور وہ دونوں بہت اچھے دوست بھی تھے۔۔۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

–**–**–
جاری ہے
——
آپکو یہ ناول کیسا لگا؟
کمنٹس میں اپنی رائے سے ضرور آگاہ کریں۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Subscribe For Latest Novels

Signup for Novels and get notified when we publish new Novel for free!




%d bloggers like this: