Tere Ishq Nachaya Novel by Hafsa Rahman – Episode 2

0
تیرے عشق نچایا از حفصہ رحمن – قسط نمبر 2

–**–**–

لالا لالا بات سنیں نہ…
لالا سن بھی لیں بات۔۔۔
پری یار شور ہی مچا رہی ہو کیا سنوں میں ۔۔۔
پہلے اس لیپ ٹاپ کو بند کریں اور پھر توجہ سے بات سنیں۔۔۔
لو جی کر دیا بند ارحم نے لیپ ٹاپ بند کرتے ہوئے کہا۔۔۔
اب بولیں میڈم جی ۔۔۔
ہاں تو لالا کیا سوچا آپ نے انوشے کے بارے میں ۔
کیا سوچنا ہے پسند کرتا ہوں اسی سے شادی کروں گا…
کہ تو ایسے رہیں ہیں نہ آپ جیسے سب آسانی سے ہو جائے گا۔۔۔
آپ کو پتا ہے امی جان کیا کہ رہی تھی وہ کہ رہی تھی بتا دینا لالا کو لڑکی اپنی ذات کی ہونی چاہیے۔۔۔۔
پری جان ڈونٹ وری میں ہوں نہ سنبھال لوں گا ماما بھی مان جائیں گی اور بابا بھی۔۔۔۔
لالا کہنا آسان ہے کرنا مشکل ۔۔۔
کوئ مشکل نہیں ہے سب ٹھیک ہو جائے گا تم بس اپنی پڑھائ پہ توجہ دو پیپر ہونے والے ہیں نہ۔۔۔۔۔
جی لالا ۔۔۔
چلو بھاگو سٹڈی کرو جاؤ ۔۔۔۔۔۔۔
صاف صاف کہیں نہ نکلو میرے کمرے سے بہانے کیوں بنا رہے ہیں جا رہی ہوں ہنہ۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یار ارسلہ جلدی کر پہلے لیٹ یو گئے ہیں ہم ۔۔۔۔۔
وہ ابھی ابھی گھنٹہ لائن میں لگ کہ اپنے سمیٹ ان ارسلہ اور انوشے کے نوٹس بھی کاپی کروا کے آئ تھی اور اب کلاس کے لیے لیٹ ہو رہا تھا لیکن ارسلہ ہمیشہ کی طرح فون پہ گیم کھیلنے میں مصروف تھی ۔۔۔۔۔۔۔
ارسلہ یہ پکڑ اپنے اور انوشے کے نوٹس میں جا رہی ہوں کلاس لینے ایک کو گیم سے فرصت نہیں ہے ایک کو کال سے فرصت نہیں ہے عجیب دوستیں ملتی ہیں ۔۔۔ہنہ۔۔ وہ اپنی دھن میں دونوں کو سناتی جا رہی تھی کہ ایک بار پھر سامنے سے آتے انسان سے ٹکڑا گئ ۔۔۔
آااااا۔۔۔۔
یار اس کی کمی تھی بس سوری سوری میں پہلے ہی لیٹ ہو رہی ہوں اگر آپ نے بھی سوری کرنا ہے تو میں نے سوری ایسپٹ کی۔۔۔
ارے سنیں تو میڈم میری بات سنیں ۔۔۔۔
جبکہ پریشے ہوا کے گھوڑے پہ سوار جا چکی تھی۔۔۔۔
ابے یار علی تو پھر ٹکریں ماڑتا پھر رہا ہے کیا بنے گا تیرا۔۔۔
وہ تینوں ہی ہنس پڑے تھے۔۔۔۔
میری غلطی نہیں تھی اس بار وہ میڈم اپنے نوٹس بھی بھول گئ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
چل کوئ نہیں جب پتا چلے گا تو خود ہی ڈھوںڈ لے گی ابھی چل کہ کچھ کھاتے ہیں۔۔۔۔ بڑی بھوک لگ رہی ہے۔۔۔
شیری کھانے کے علاوہ بھی کچھ سوچ لیا کر۔۔۔
سوچ لوں گا ابھی کے لیے چلیں ہمیشہ کی طرح اس بار بھی کوئ اثر نہیں لیا تھا شہریار نے۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جیسے ہی وہ کلاس لے کہ نکلی سامنے ہی ارسلہ اور انوشے کھڑی تھی۔۔۔۔۔
انو دیکھ وہ ہماری طرف ہی دیکھ رہی ہے بلکہ گھور رہی ہے اب تو گئ ہم کام سے میں تو جا رہی ہوں یہاں سے۔۔۔۔
جنگلی بلی ہو کہ ڈر رہی ہو کچھ نہیں ہوتا سنبھال لیں گی ہم۔۔۔۔
لیکن جیسے جیسے پریشے قریب آ رہی تھی ویسے اس کے منہ اترا ہوا لگ رہا تھا۔۔۔۔
جنگلی بلی یار اس کے منہ کے زاویے عجیب سے کیوں ہیں ۔۔
مجھے کیا پتا یار یہ تو اسی سے پتا چلے گا۔۔۔
ارسلہ انوشے گھاس پہ بیٹھتے ہوئے پریشے نہ کہا اس کا لہجہ بھیگا ہوا تھا ۔۔۔۔
کیا ہوا پری سب تھیک ہے نہ۔۔۔
کچھ تھیک نہیں ہے جو نوٹس کاپی کرائے تھے وہ کہیں گم۔ہو گئے۔۔۔۔
کیسے گم ہو گئے کلاس میں رکھ کہ بھول گئ کیا۔۔۔ ارسلہ نے تشویش سے پوچھا۔۔۔
نہیں یار کلاس میں جا کہ دیکھا تو تھے ہی نہیں میرے پاس۔۔۔۔
ایک منٹ اچانک سے کچھ یاد آنے پر وہ اچھل ہی پڑی تھی۔۔۔
کیا ہو گیا۔۔۔۔۔دونوں نے حیرانی سے پوچھا
یار تمہیں یاد ہے کچھ دن پہلے ایک لڑکے سے ٹکڑ ہوئ تھی آج پھر اسی لڑکے سے ٹکڑا گئ تھی مجھے لگتا ہے اسی کے پاس ہیں اب میں کہاں سے ڈھونڈو اسے۔۔۔۔۔۔
اچھا اچھا اب رونے نہ بیٹھ جانا میں پانی لے کے آتی ہوں تمہارے لیے۔۔۔۔
پری پری پری مسئلہ حل ہو گیا وہ وہ لڑکا کینٹین پہ بیٹھا ہے ۔۔
ارسلہ کینٹین سے پانی لینے گئ پانی لے کہ واپس ہی آ رہی تھی کہ اس نے علی اور اس کے دوستوں کو بیٹھے دیکھا اور وہیں سے دوڑ لگا دی۔۔۔۔۔۔
کیا واقعی چلو جلدی چلو۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔علی کیوں پرشان ہو رہا ہے یار آ جائے گی خود لینے وہ تو کھا بڑے مزے کہ سموسے ہیں ۔۔۔ عاصم نے سموسے سے دو دو ہاتھ کرتے ہوئے کہا۔۔۔۔
تو کھا بلکہ ٹھونس مجھے نہیں کھانا۔۔۔۔
پتا نہیں تجھے کیا ہو گیا ہے جب سے وہ لڑکی ٹکڑائ ہے نہ تیرے سے الگ ہی دنیا میں رہنے لگ پڑا ہے ۔۔۔ارسلان نے کہا۔۔۔۔
“”تم لوگ نہیں سمجھ سکتے کیونکہ مجھے خود بھی سمجھ نہیں آ رہا تھا مجھے کیا ہو گیا ہے کیوں میرا دل اس کی طرف کچھا چلا جاتا ہے نا جانے دن میں کتنی دفعہ چھپ کہ اسے دیکھتا ہوں لیکن دل کو سکون نہیں ملتا ایک عجیب سی کششش ہے اس میں ۔۔ مجھے لگتا ہے اگر وہ مجھے مل نہ سکی تو میں پاگل ہو جاؤں گا میں ۔ میں مر جاؤں گا ۔۔۔””
ابے او مجنون کی اولاد بس کر وہ پیچھے کھڑی سب سن رہی ہے عاصم نے علی کے کان میں سرگوشی کی۔۔۔۔
ایک دم سے کرسی سے اٹھ کے پیچھے دیکھا علی تو تو گیا آج کلمہ پڑھ لے ۔۔۔۔۔۔
جبکہ پریشے ہی حالت بھی کچھ عجیب سی تھی اسے سمجھ نہیں آ رہا تھا کہ یہ کیا سنا اس نے۔۔۔۔
جی کوئ کام تھا آپ کو عاصم نے علی کی حالت کو سمجھتے ہوئے بات کا آغاز کیا۔۔۔۔
جی پریشے کے نوٹس ان صاحب کے پاس آ گئے ہیں وہی لینے آئے انوشے نے فورن سے کہا ۔۔۔۔
جی جی وہ یہ رہے عاصم نے نوٹس انوشے کی طرف بڑھاتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔
شکریہ بہت بہت ۔۔۔
چلو پری ارحم ویٹ کر رہے ہیں۔۔۔۔
وہ تقریبا گھسیتٹے ہوئے پریشے کو لے کہ جا رہی تھی۔۔۔
کیا ہو گیا آج لیٹ کیوں ہو گئ دونوں۔۔۔
ہاں نوٹس لے رہی تھی انوشے نے جواب دیا ۔۔۔۔
سارے راستے پریشے خاموش رہی ۔۔۔۔۔
لو آ گیا گھر اللہ حافظ ملتے ہیں رات کو۔۔۔۔
جبکہ وہ بنا کوئ جواب دیے اندر چلی گئ۔۔۔
اونوش اسے کیا ہوا سب تھیک تو ہے نہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہاں بس اس کے سر میں درد ہے انوشے نے اصل بات بتانا مناسب نہیں سمجھی۔۔۔۔۔۔
اچھا چلو اب بتاؤ کہاں جانا ہے ۔۔۔۔۔
کیا مطلب کہاں جانا ہے گھر جانا ہے اور کہاں جانا ہے۔۔۔۔۔
نہ نہ ہم جائیں گیں کھانا کھانے تمہارے فیورٹ ریسٹورنٹ ۔۔۔۔۔۔
نہیں ارحم بھائ کو پتا چل جائے گا۔۔۔
ہاہا تمہارا بھائ اسلام آباد گیا ہے دو دن کے لیے اور یہ دو دن تم ہمارے گھر رہو گی ۔۔۔۔۔۔۔
اب چلیں بہت بھوک لگ رہی ہے۔۔۔۔
اوکے چلیں لیکن کھانا میری پسند کا ہو کا۔۔۔۔
اوکے جان۔۔۔۔
انوشے مسکرانے لگ پڑی۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ارے بس بھی کر دو پری پچھلے آدھے گھنٹے سے تم ادھر سے اُدھر چکر لگا رہی ہو ۔۔۔۔
“کیسے بس کر دوں انوشے کیسے”۔۔۔۔ مجھے پتا نہیں کیوں اس کی آواز عجیب سی لگی جیسے .. جیسے وہ سچ کہ رہا ہو ۔۔۔۔۔ یہ آواز یہ باتیں اس کے دل سے نکل رہی ہوں۔۔۔۔ وہ خود کچھ نہیں کہ رہا تھا جو بھی کہ رہا تھا اس کا دل کہ رہا تھا۔۔”
“انوشے مجھے کچھ اچھا نہیں لگ رہا مجھے لگ رہا ہے وہ مجھے برباد کر دے گا ” اس کا کہا ہر لفظ سچ لگ رہا ہے ۔۔۔
ادھر بیٹھو اور پانی پیو ۔۔۔
پیو پانی اور ریلیکس ہو جاؤ تم کچھ زیادہ ہی سوچ رہی ہو ایسا کچھ نہیں ہے یہ لڑکے ایسے ہی ہوتے ہیں انکے لہے سب ٹائم پاس ہوتا ہے اور کچھ نہیں ایسی ہی باتیں کر کہ لڑکیوں کو بےوقوف بناتے ہیں ۔۔”
تو کیا لالا بھی ٹائم پاس کر رہے ہیں وہ تم سے جو بھی کہتے ہیں جھوٹ بولتے ہیں۔۔۔۔۔
کیسی باتیں کر رہی ہو ارحم ایسے نہیں ہیں ” اور ویسے بھی دو دفعہ اس انسان سے ملی ہو تم اور اتنا کیوں سوچ رہی ہو”
تم۔بھی تو لالا سے پہلی دفعہ ملی تھی اور پاگل ہو گئ تھی ۔۔۔۔
“تو کیا تم کہنا چاہتی ہو تم اس کے پیچھے پاگل ہو ہی ہو” ۔۔
نہیں میں ایسا نہیں کہ رہی پر میں کیا کروں اس کی آواز میرے کانوں میں گونج رہی ہے اس کا کہا گیا ہر لفظ سچ لگ رہا ہے۔۔۔۔
چھوڑو پریشے ابھی ان سب چیزوں کے لیے ٹائم نہیں ہے ابھی پیپرز پہ توجہ دو لاسٹ سیمسٹر ہے ویسے بھی کل یونی جانا ہے اس کے بعد گھر ۔۔۔تو سب بھول جاؤ گی ریلکیس ہو جاؤ۔۔۔۔
دھک دھک۔۔۔۔
آ جائیں ۔۔۔۔
بی بی جی کھانا لگ گیا ہے سب آپ کو بلا رہے ہیں۔۔۔
اچھا تم جاؤ ہم آتے ہیں انوشے نے کہا۔۔۔
“چلو اٹھو جا ؤ فریش ہو کہ آؤ۔۔ اور نارمل ہو جاؤ اب پتا ہے نہ۔تمہارے لالا کو فورن پتا لگ جائے گا تم پرشان ہو۔۔۔””
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
رات بھر پریشے سو ہی نہ پائ اس کے کانوں میں علی کی کہی گئ باتیں گونجتی رہی ۔۔ ” کہنے کو ایک لڑکی کے لیے خاص کر اس لڑکی کہ جو یونی جاتی ہو ایک عام سی باتیں ہیں کیونکہ ہر موڑ پہ ایسے کئ لڑکے ملتے ہیں جو ایسی باتیں کرتے ہیں لیکن وہ یہ بات سمجھنے سے قاصر تھی کہ علی کی باتوں کو اتنا سرئیس کیوں لے رہی ہے۔۔۔۔۔”
لگتا ہے پریشے کا موڈ نہیں ہے یونی کو الوداع کہنے گا ارسلے نے مزاق اڑاتے ہوئے کہا۔۔۔۔
” نہیں ایسی بات نہیں ہے بس تھکی ہوئی ہوں اس لیے۔۔ اور یہ انوش کدھر ہے ۔”
پتا نہیں کہ کے گئ تھی دو منٹ میں آتی ہوں ۔۔۔
بس پھر گھنٹہ بھول جاؤ کہ کوئ انوشے نام کی لڑکی بھی ہے۔۔۔
ہاہا سہی کہا “”
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ان کے اگزیمز شروع ہو چکے تھے ہر کوئ اس قدر بزی تھا کہ اسے اپنی بھی خبر نہ تھی ۔۔۔
پریشے علی کی باتوں کو بھی بھول گئ تھی بلکہ وہ خود کو بھی بھول گئ تھی کیونکہ پڑھائ کہ معاملے میں بہت سخت تھی وہ۔۔۔
“ہیلو ہیلو یار انوش کہاں ہو”،،،
اپنے گھر ہوں پڑھ رہی ہوں اور کہاں ہونا ہے بس کل لاسٹ پیپر پھر آزادی اور ہم اس آزادی کو سلیبڑیٹ کریں گیں ارحم کے ساتھ۔۔۔۔ ”
انونشے یار تم خوش ہو رہی ہو اور میری سانسیں اکھڑ رہی ہیں ۔۔”
کیا ہوا پری طبیعت تو تھیک ہے نہ۔۔۔انوشے نے تشویش سے پوچھا۔۔۔۔
ہاں،،تھیک ہے بس ایسا لگ رہا ہے جو کچھ یاد کیا ہے سب بھول چکی ہوں میرا پیپر اچھا نہیں ہو گا اور میں فیل ہو جاؤں گی اس نے روہانسی ہو کہ کہا”
اف پری اف وہ سہی معنی میں سر پکڑ کہ بیٹھ گئ تھی۔۔۔۔
تم ہر پیپر میں یہی کرتی ہو اور پھر تمہارا ریزلٹ بھی ہم سے اچھا آتا ہے ۔۔۔پتا نہیں کیا مصیبت ہے رکھ رہی ہوں فون پڑھنا ہے مجھے۔۔۔۔”
ہائے فون رکھ دیا کتنی بد تمیز ہے یہ۔۔۔
“چلو ایک بار پھر ریوائز کر لیتی ہوں لیکن پری میڈم پندرہ منٹ سو چکی تھی جہاں اب ان کی آنکھ صبح الارم سے ہی کھلنے تھی۔۔۔”
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
چلو جان چھوٹی اب مزے ہی مزے ہائے ایسا لگ رہا ہے جیسے منو بوجھ سر سے اتر گیا ہو۔۔۔ “جیسے ہی کلاس سے تینوں نکلی ارسلہ دھرام سے گراوںڈ بیٹھ گئ بلکہ گرنا کہیں تو بہتر ہو گا۔۔”
ہاں سہی کہا اب چلو یار کچھ کھاتے ہیں بہت بھوک لگی ہے۔۔۔۔
اب ان کا رخ کینٹین کی طرف تھا۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
شکر یار جان چھوٹی وہ چاروں کینٹین میں کرسیوں پہ بیٹھے آزادی انجوائے کر رہے تھے۔۔۔۔
میری سپنوں کی رانی کب آئے گی تو۔۔
ہائے رت مستانی کب آیے گی تو ۔۔
چلی آاا ہوو چلی آاا
جبکہ شہریار اور ارسلان ٹیبل پہ ہی دھلوکی بجا کہ گانے میں مست تھے۔۔
” ابے او بے سرو بس کر دو یار بس دو یہ مجھے اپنی آزادی کا جشن نہیں ماتم لگ رہا ہے” ،،، علی نے کہا
اتنے میں وہ تینوں بھی کیںٹین میں داخل ہوئ اور بلکل ان کے ٹیبل کے سامنے والے ٹیبل پہ بیٹھ گئ ۔۔ ،،
اچھاااا اگر ہم اتنے ہی بے سرے لگ رہے ہیں تو چل تو سنا دے گانا منا لے اپنی پسند کا جشن۔۔۔،،،
ہاں کیں نہیں تیرے سے اچھا گا لیتا ہوں۔۔۔
تو سنا نہ چل شاباش جان کہ اونچی میں بولا تاکہ ان تک آواز آ جائے۔۔۔
” او اتنا چیخ کیوں رہا ہے کان کے پردے پھارنے ہیں کیا۔۔۔””
کچھ نہیں کچھ نہیں مجھے لگا اتنے شور میں آواز نہیں آ رہی ہو گی تجھے۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
انوشے ارسلہ چلو کہیں اور چلتے ہیں اتنا شور ہے یہاں ۔۔۔
” چپ کر کہ بیٹھ جاؤ پری سننے دو اس کی آواز اتنا جو اترا رہا ہے۔۔”
ہاں پری چپ کر کی بیٹھی رہو بلکہ سموسے کھاؤ۔۔ ساتھ برگر بھی کھا لو،،
اور وہ جس کی ڈھرکنیں اس انسان کی آواز کی سن کہ تیز ہو رہی تھی انہیں کو سنبھال نہیں پا رہی تھی۔”
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
چل علی شروع ہو جا۔۔۔
پر یار میں گیٹار کہ بغیر نہیں گا سکتا۔۔۔ اس نے منہ بناتے ہوئے کا۔۔۔
“آپ یہ لے لیں میرا گیٹار ویسے تو میں کسی کو ہاتھ نہیں لگانے دیتا لیکن آپکی آواز پہلے بھی سنی ہے بہت پیاری ہے اس لیے آپ یہ لے لیں۔۔۔”
وہ ان کا جونئیر تھا جو آج زندگی میں پہلی دفعہ اپنا گیٹار کسی کو دے رہا تھا۔۔۔
ہر طرف سے ہوٹنگ شروع ہو گئ۔۔۔
گو علی گو۔۔
“”کیسے ۔۔جیوں گا کیسے ۔۔۔ بتا دے مجھ کو۔۔ تیرے بنا۔
کیسے جیوں گااااا کیسے۔۔۔۔۔۔ بتا دے مجھ کو۔۔۔
تیرے بنا۔۔
تیرا میرا جہاں ۔۔ لے چلوں میں وہاں ۔۔ کوئ تجھ کو نہ مجھ سے چرا لے۔۔۔
رکھ لوں آنکھوں میں کھولوں پلکیں نہ میں ۔۔۔
کوئ تجھ کو نہ مجھ سے چرا لے””
غیر ارادی طور پہ وہ مڑا اور پریشے کو دیکھ کہ اس کی زبان کو بریک لگ گیا۔۔۔
” پریشے جو اس کے آواز کے جادو میں کھوئ ہوئ اب اس کا یوں دیکھنا اسےمزید پرشان کر رہا تھا۔۔۔۔”
ارسلہ ۔ انوشے ۔ چلو بھائ آ گئے ہیں ۔۔ وہ بس یہاں سے جانا چاہتی تھی اقر فوری طور پہ یہی بہانا سمجھ آیا اسے۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ابے تم لوگ بتا نہیں سکتے تھے وہ سن رہی ہے لعنت تم جیسے دوستوں پہ کمینوں۔۔۔
” یار مجھے لگا اسے بھی تیری آواز سننی چاہیے “، ارسلان نے بھاگتے ہوئے کہا۔۔۔
چپ کر جا کمینے چھوڑوں گا نہیں آج تم لوگوں کو۔۔۔
یار کیسا کمینا ہے تو مجنون بن کہ پھر رہا تھا ہم نے تو تیرا بھلا سوچا۔۔۔۔۔
شیری تو تو پکا قتل ہو گا آج میرے ہاتھوں۔۔۔۔
” اب سین یہ تھا کہ ارسلان شہریار اور عاصم آگے آگے بھاگ رہے تھے جبکہ علی ان کے پیچھے پیچھے تھا اور پوری یونی تماشہ دیکھنے والوں میں سے تھی۔۔”
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اس بات کو گزرے دو ماہ ہو چکے تھے ان کا ریزلٹ بھی آ گیا تھا سب نے اچھے “اے گریڈ” سے پاس کیا تھا ۔۔
لیکن پریشے ابھی بھی اس واقعے کے زیر اثر تھی نہ وہ علی کو بھولی تھی اور نہ ہی اس کی کہی گئ باتوں کو۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یار علی کیا مسئلہ کیا ہے اب بس بھی کر دے دو مہینوں سے مجنون بنا پھرا رہا ہے ۔۔ جاتا کیوں نہیں ہے اس کے گھر ساری انفارمیشن تو ہے تیرے پاس ۔۔ کیا آنٹی کا مسئلہ ہے تو میں سمجھاؤں گا انہیں ۔۔۔۔
آج پھر ارسلان علی کے گھر آیا ہوا تھا وہ مسلسل اسے سمجھا رہا تھا جب کہ اس کا دماغ کہیں اور تھا۔۔۔۔”
” علی تیرے ساتھ ہوں میں اب تو نے میری بات کو اگنور کیا نہ آلٹے ہاتھ کی لگاؤں گا ایک بس کر یہ تماشے اب۔۔”
“یار تو کہتا ہے اس کے گھر جاؤں لیکن میں نہیں جاؤں گا میں پہلے اس سے ملنا چاہتا ہوں بات کرنا چاہتا ہوں اس کی مرضی پوچھنا چاہتا ہوں ۔۔ اور رہی بات ماما کی تو وہ کبھی بھی میری پسند پہ اعتراض نہیں کریں گی”
اچھا چھوڑ چل اٹھ میرے ساتھ چل کچھ شاپنگ کرنی ہے میں نے اور تو نہ نہ کرتا رہے آج میں نے کوئ نہیں سننی تیری چل چل اٹھ۔۔۔۔
“” اچھا میں چینج کر لوں میں یا وہ بھی نہ کروں””
کر لے کر لے ۔۔۔
“علی کے ساتھ صرف اسکی ماں رہتی تھی بہن بھائ تھے نہیں باپ بھی جب وہ سات سال کا تھا تو فوت ہو گیا تھا علی کی ماں ہی اس کی باپ بھی تھی ماں بھی تھی۔۔۔۔
ارسلان سے اس کی دوستی بچپن سے پی تھی اور دونوں ایک ہی محلے میں رہتے تھے۔۔۔۔۔ علی کی ماں شائستہ ایک کالج میں ٹیچر تھی ۔۔۔۔۔”
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پریشے پریشے اٹھو یار میں چوپیس گھنٹے سوتی ہی رہتی ہو کوئ کام بھی کر لیا کرو۔۔۔
وہ کمرے میں داخل ہوتی ہی چیخ پڑی تھی۔۔۔۔۔
ارسلہ کراچی گئ ہوئ تھی ۔۔۔۔
یار کیا مسئلہ ہے تمہارا ہر دوسرے دن آ جاتی ہو سکون کوئ نہیں کیا تمہیں ۔۔۔۔۔
تمہیں کیا مسئلہ ہے اپنے ہونے والے سسرال آتی ہوں ۔۔۔۔۔
“ابھی ماما کو بتاتی ہوں میں ۔۔ ماما ماما آپ کی بہو مل گئ ۔۔۔۔۔”
یار چپ کر جا اللہ کا واسطہ چپ کر جا کیوں مروانا ہے ۔۔۔۔ہاہا اب نکلی نہ ہوا۔۔
اللہ پناہ دے تم سے بدتمیز لڑکی۔۔۔۔
“اب بتاؤ کیوں آئی ہو میرا دماغ کھانے ”
ہاں وہ شاپنگ پہ جانا تھا میں نے بھائ کی سالگرہ آ رہی ہے نہ گفٹ لینا ہے ۔۔۔۔
اچھا ہو گیا میں نے بھی کچھ چیزیں لینی تھی۔۔۔
۔۔پھر اٹھ تیار ہو۔۔
ہاں بس دو منٹ ۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ارحم بیٹا اگر تم آج گھر پہ ہو ہی سہی تو زرا ہم سے بھی بات کر لو آمنہ بیگم نے ارحم کو چائے کا کپ پکراتے ہوئے کہا۔۔۔”
“” ہاں جی برخدار کیا ارادہ ہے شادی کا یا ساری زندگی کنوارا رہنا ہے”” چوہدری نواز نے کہا”
لگتا ہے آج سچ سن کہ رہ گئے یہ لوگ چل پھر بسم اللہ کر ارحم نے دل ہی دل میں سوچا۔۔
ہاں جی بابا سوچ رہا ہوں اب کر لوں شادی ۔۔۔۔
ہاں تو تھیک ہے میں ابھی بھائ صاحب کو کال کرتی ہوں کہ ہم عنایہ کا رشتہ لینے آ رہے ہیں آمنہ بیگم نے کہا۔۔۔!
” ماما ماما نہیں عنایہ سے شادی نہیں کرنی ”
تو پھر کس سے کرنی ہے بیٹا آپ نام بتاؤ چوہدری نواز نے پیار سے لیکن ارحم کی بات سن کہ ان کا پارہ ہائ ہو گیا!!!
“وہ بابا میں ارسلہ سے شادی کرنا چاہتا ہوں “”
کیا تمہارا دماغ تو خراب نہیں ہو گیا تم بھول گئے کیا ہم اپنی ذات میں اپنے خاندان میں شادیاں کرتے ہیں تم نے ایسا سوچ بھی کیسے لیا “””
لیکن بابا دیکھیں اب ایسی رسومات کا روایات کا زمانہ نہیں رہا یہ پرانی روایات ہیں ان کا کوئ فائدہ نہیں ہے موو آن کریں بابا یہ سب فضول ہیں ۔۔۔”!
تمہاری ہمت کیسی ہوئ ہماری روایات کو فضول کہنے کی ہاں کیسے ہوئ ہمت تمہاری وہ چیخ پڑے زندگی میں پہلی دفعہ وہ اتنا اونچا بول رہے تھے۔۔۔۔”
” تمہاری شادی عنایہ کے ساتھ ہی ہو گی بس یہ میرا آخری فیصلہ ہے “”
بابا کیا آپ اپنی روایات کے پیچھے اپنی اولاد کی خوشیاں قربان کر دیں گیں ۔۔۔
ہاں کردوں گا کیونکہ مجھے اپنی روایات بہت پیاری ہیں۔۔۔
ارحم نے تاسف نے اپنے باپ کی طرف دیکھا۔۔۔
“””تو پھر تھیک ہے بابا میرے پاس اور بھی کئ راستے ہیں شادی تو صرف ارسلہ سے کروں گا اور مخالفت کی صورت میں آپ سے بغاوت بھی کر جاؤں گا میں روایات کے بھینٹ نہیں چڑھنے والا”””
کہتا ہوا گھر سے باہر نکل گیا۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔علی یہ دیکھ یہ شرٹ کتنے اچھی ہے نہ ۔۔۔
اوئے ادھر مر یار اُدھر کیا ہے ۔۔
“وہ جو خاموش دکان کے ایک کونے میں بیٹھا تھا مجبورا آنا ہی پڑا اسے”
ٹھاہ!! اور ایک بار پھر ساری چیزیں دھرام نیچے گری۔۔۔
“”اندھے ہو گئے ہو کیا نظر نہیں آتا ۔۔۔۔۔ وہ جو اچانک سے چزیں گرنے سے پرشان ہو گئ تھی یہ بھی نہ دیکھ پائ کہ سامنے والا انسان ہے کون””
کیا بات ہے بھائ آپ نے تھیکا لے لیا ہے کیا بار بار ایک ہی لڑکی سے تکڑانے کا ۔۔۔۔
نہیں وہ سوری میں معذرت کرتا ہوں میں نے دیکھا نہیں علی کو سمجھ نہیں آ رہا تھا وہ اس سیچوئیشن میں کیا کرے۔۔۔۔۔۔
اور پریشے جو سامان اٹھا رہی علی کی آواز سے اس کے ہاتھ کپکپانے لگے جو علی کے نظرں سے اوجھل نہیں ہوئے تھے۔۔۔۔۔۔۔۔!
پری اب اٹھ بھی جا چل پہلے کچھ کھا لے پھر باقی کی شاپنگ کرتے ہیں ۔۔۔۔اور آپ مسٹر تھوڑا ٹکڑیں مارنا کم کر دیں انوشے بیک وقت دونوں سے مخاطب ہوئ اور پریشے کا ہاتھ پکڑ کے چل دی۔۔۔۔”””
“” ارسل میرے بھائ میری مدد کر میری اس سے ملاقات کرا دے پلیز میری مدد کر “””
اچھا اچھا حوصلہ کر وہ ضرور کسی فوڈ پوائنٹ پہ گئیں ہو گی آ دیکھتے ہیں۔۔۔۔
” پری کیا کھانا ہے جلدی بول۔۔۔
کچھ بھی آرڈر کر دے یار ۔۔۔۔
اچھا رک میں کرتی ہوں آرڈر۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ابے وہ دیکھ وہ بیٹھی ہیں چل چل کہ بات کریں
۔۔ لیکن ہم بات کیا کریں گے ۔۔۔
یہ تیرا مسئلہ ہے ملاقات کرا رہا ہوں نہ میں ۔۔۔
لو بھئ آ گیا کھانا ۔۔۔
انو یہ کھانا ہم دونوں کے لیے تو نہیں لگ رہا ۔۔
۔۔ ہاں ارحم بھی آ رہے ہیں پتا نہیں کہ رہے تھے ابھی ملو لازمی میں نے کہا ہم مال میں ہیں وہی آ جائیں
۔۔ اچھا تم بیٹھو میں واشروم سے آئ ۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہیلو میڈم ۔۔۔ ارسلان نے کہا
ارے آپ لوگ کیا پھر سے ٹکڑ مارنے کا ارادہ ہے ہاہاہا۔۔۔
۔۔ارے نہیں بس ایک مدد چاہیے تھی آپ سے۔۔۔
مجھ سے کیسی مدد۔۔۔
،،وہ یہ میرا دوست ہے نہ یہ آپکی دوست کے عشق میں مبتلا ہے ان سے بات کرنا چاہتا ہے ۔۔۔
اچھا تو میں کیا مدد کروں اس میں ۔۔۔۔ انوشے نے کہا
۔۔ آپ بس ایک ملاقات کرا دیں اس مجنون کی۔۔۔
ہاہا ہاہا ادھر پریشے ہلکان ہو رہی ہے اُدھر یہ۔۔
ہمم تو بات یہ ہے کہ آج تو بات نہیں ہو سکتی کیونکہ میڈم جی کے بھائ آ رہے ہیں بلکہ وہ آ گئے۔۔۔
“”ارحم نے دور سے ہی انوشے کو ان لڑکوں کے ساتھ دیکھا تو اس کے اعصاب تن گئے اور پریشے بھی وہاں نہیں تھی ضرور چھیڑ رہے ہوں گے ابھی پوچھتا ہوں”
آپ میرا نمبر رکھ لیں اوکے ۔۔
کیا ہوا انوش تھیک تو ہو نہ یہ تمہیں چھیڑ رہے تھے۔۔
ہاہا نہیں ارحم کلاس فیلو ہیں ( اس نے جان بوجھ کے جھوٹ بولا) کافی ٹائم بعد دیکھا تو بس سلام دعا کر دی ۔۔۔
اسلام علیکم ! ارسلان نے ہی پہل کی ۔۔۔
واعلیکم اسلام! ارحم نے لاپروائ سے جواب دیا
اوکے ہم چلتے ہیں اللہ حافظ علی نے کہا ۔۔۔۔ اسے کچھ اچھا نہیں لگ رہا تھا۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

Read More:  Mushaf Novel By Nimra Ahmed – Episode 33

–**–**–
جاری ہے
——
آپکو یہ ناول کیسا لگا؟
کمنٹس میں اپنی رائے سے ضرور آگاہ کریں۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

%d bloggers like this: