Tere Ishq Nachaya Novel by Hafsa Rahman – Episode 3

0
تیرے عشق نچایا از حفصہ رحمن – قسط نمبر 3

–**–**–

اب بتائیں ارحم کیا بات ہے (کھانے سے فارغ ہونے کے بعد انوشے نے پوچھا جبکہ پریشے خاموش بیٹھی تھی)
انوش آج بابا نے شادی کے بارے میں پوچھا اور میں نے انہیں تمہارا نام بتا دیا
۔۔ کیا ارحم پھر بابا نے کیا کہا ۔۔۔
اور پھر ارحم نے انہیں ساری بات بتا دی ۔۔
۔۔کیا لالا آپ نے بابا کو ناراض کر دیا ۔ پریشے نے پرشان ہوتے ہوئے کہا۔۔
انوش پریشے وہ اپنی اولاد کی خوشیوں کو روایات پہ ترجیح دے رہے ہیں ۔۔۔
” تو اب کیا ہو گا ” آپ کیا کریں گیں لالا۔۔۔
کروں گا تو میں انوش سے شادی چاہے مجھے بابا کے خلاف ہی کیوں نہ جانا پڑے۔۔۔۔
بھائ مجھے ڈر لگ رہا ہے نہ کریں وہ جو علی کی وجہ سے پرشان تھی اب ارحم کی وجہ سے مزید پرشان ہو گئ تھی
اچھا اب چلو کافی لیٹ ہو گیا ہے اور پری پرشان نہ ہو سب تھیک ہو جائے گا۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اس بات کو گزرے کافی دن ہو گئے تھے گھر والوں کے درمیان عجیب سا کچھاؤ رہتا تھا نہ کوئ کسی سے سہی سے بات کرتا اور نہ پہلے جیسی کوئ بات رہی تھی۔۔
پریشے تیار ہو جاؤ جلدی سے تمہارے ماموں کے گھر جانا ہے ۔۔۔
۔۔کیوں ماما کیوں جانا ہے ادھر ۔
ارحم کے لیے عنایہ کا ہاتھ مانگنے جانا ہے تمہارے بابا نے کہا ہے
۔۔ ماما آپ لالا کے ساتھ ایسے کیسے کر سکتی ہیں۔۔
“میں کچھ نہیں کر رہی جو کر رہے ہیں تمہارے ابا کر رہے ہیں انہوں نے ہی حکم جاری کیا ہے یہ اور تم اچھے سے جانتی ہو وہ ایک دفعہ جو بات کہ دیں کر کہ لیتے ہیں”
لیکن ماما۔۔۔
لیکن ویکن کچھ نہیں اٹھو تیار ہو ۔۔
“مجھے نہیں جانا ایسی جگہ جہاں میری بھائ کی خوشیوں کو خاک میں ملایا جائے آپ لوگ جائیں شوق سے”
نہ جاؤ اپنے باپ کو جواب دہ خود ہونا “””
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ماما بابا کہاں ہیں آپ لوگ۔۔۔
پری ماما بابا کہاں ہے وہ جو لاؤنج میں بیٹھی ارحم۔کو مسلسل کال کر رہی تھی شاہزر نے پوچھا۔۔۔
“یاد آ گئ آپ کو گھر والوں کی یا اب بھی کوئ کام کی غرض سے آئیں ہیں وہ نہ چاہتے ہوئے بھی تلخ ہو گئ تھی کیسا بھائ تھا جو بھائ کی پرشانی تک نہیں جانتا تھا””
کیا ہو گیا ایسے بات کیوں کر رہی ہو ۔۔۔
کوئ کام تھا آپ کو ۔۔۔۔
“ہاں میں یہ بتانے آیا تھا تین مہینوں کے لیے امریکہ جا رہا ہوں جس پراجیکٹ کو حاصل کرنے کے لیے ہم دن رات محنت کر رہے تھے وہ آخر کار ہمیں مل ہی گیا”
اچھا بتاؤ نہ ماما بابا کہاں ہیں۔۔۔
وہ ماموں کے گھر گئے ہیں لالا کے لیے عنایہ کا ہاتھ مانگنے ۔۔
“ارے واہ یہ تو بہت اچھی بات ہے چلو پھر میں وہیں ان سے مل لوں گا لالا سے بھی آفس میں مل لیا تھا اللہ حافظ اپنا خیال رکھنا۔”
۔۔شاہزر ہمیشہ سے ایسا ہی تھا اپنی ذات میں گم کسی دوسرے کے معاملات جاننے کی کبھی کوشش ہی نہیں زیادہ تر وقت وہ آفس اور دوستوں کے ساتھ گزارتا تھا۔۔
شاہزر لالا کہیں سے بھی آپ ہمارے بھائ نہیں لگتے وہ بس سوچتی رہ گئ۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کیا ہو گیا پری اتنی کالز کیوں کی میٹنگ میں بزی تھا گھر میں داخل ہوتے ارحم نے پوچھا۔۔۔
وہ لالا ماما بابا ۔۔۔
کیا ہوا ماما بابا کو نظر کیوں نہیں آرہے۔۔
۔۔ اتنے میں پورچ مین گاڑی رکنے کی آواز آئ۔۔
آپ خود ہی پوچھ لیجیے گا لالا۔۔۔
۔۔۔ چوہدری نواز کسی بات پہ ہنستے ہوئ اندر آ رہے تھے کہ ان کی نظر ارحم پہ پڑی۔۔
ارے برخدار بہت بہت مبارک ہو ہم آپ کا رشتہ تہ کر آئیں ہیں عنایہ کے ساتھ۔۔۔
ایک دم ارحم کے چہرے پہ سنجدیگی چھائ اور پھر غصے میں تبدیل ہو گئ
“بابا آپ یہ کیسے کر سکتے ہیں کیسے میری خوشیوں کا قتل کر سکتے ہیں آپ ابھی ماموں کو کال کریں اور یہ رشتہ ختم کریں ورنہ میں اپنی جان لے لوں گا”
تمیز سے بات کرو ارحم ہم تمہارا رشتہ تہ کر آئیں ہیں اور وہیں تمہاری شادی ہو گی بس یہ آخری فیصلہ ہے میرا۔۔۔
۔۔ تو پھر آپ اپنے بیٹے کو بھول جائیں ۔۔ گاڑی کی چابیاں اٹھاتا باہر نکل آیا۔۔
لالا لالا رک جائیں میری بات سنیں لالا رک جائیں وہ ارحم کے پیچھے بھاگی تھی لیکن وہ گاڑی بھگاتا جا چکا تھا۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ماما رات کا ایک بج رہا ہے لالا ابھی تک نہیں آئے پریشے نے روتے ہوئے کہا۔۔۔
میں کیا کروں پری میں کہا پتا کروں کچھ سمجھ نہیں آ رہا نواز آپ پتا کریں نہ بچوں سے بحث ہو جاتی ہے لیکن ایسا نہ کریں پلیز ۔۔۔۔۔
۔۔آمنہ بیگم وہ کوئ بچہ نہیں ہے جب جی بھر کہ آوارہ گردی کر لے گا تب واپس آ جائے گا اور جو ہم کر رہے ہیں بلکل تھیک کر رہے ہیں اس کی ضد ایسے ہی ختم ہو گی کہتے ساتھ کمر مین چلے گے۔۔
ماما میں عدیل بھائ سے پوچھو انہیں پتا ہو اگر نہیں پتا تو کہیں سے پتا کر کہ دیں گیں۔۔۔۔
ہاں بیٹا جلدی کرو یہ خیال پہلے کیوں نہیں آیا۔۔
۔۔۔۔ ہیلو ہیلو عدیل بھائ اس کی آواز کپکپا رہی تھی۔۔
کیا یوا پریشے یہ تم ہو نہ اتنی رات کو کال کیوں کی اور گبھرائ ہوئ کیوں ہو اتنا بتاؤ سب تھیک تو ہے نہ۔۔۔
وہ عدیل بھائ لالا رات سے گئے ہوئے ہیں ابھی تک واپس نہیں آئے وہ بہت غصے میں گھر سے نکلے تھے آپ آپ پتا کریں نہ لالا کا۔۔۔۔
کیا پہلے کیوں نہیں بتایا مجھے تم پرشان نہ ہو میں پتا کرتا ہوں۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ کب سے سڑکوں پہ بلا وجہ گاڑی چلا رہا تھا۔۔
بابا ایسے کیسے کر سکتے ہیں کیا انہیں میری خوشیاں نہیں عزیز تھیک ہے اگر ایسا ہے تو پھر میں کل ہی انوشے سے نکاح کروں گا اس کے بعد جو ہو گا دیکھا جائے گا۔۔۔۔
سوچتے سوچتے اسے اندازہ ہی نہیں ہوا کہ اس نے گاڑی کی سپیڈ بہت تیز کر دی اندازہ تب ہوا جب سامنے آتی بوڑھی خاتون کو بچانے کے لیے گاڑی ٹرک سے جا ٹکرائ۔۔۔۔
یا اللہ پریشے میرا دل بہت گبھرا رہا ہے میرا بچہ خیر خیریت سے ہو۔۔۔۔
پریشے تم کن سوچوں میں گم ہو بہ میری بات کا جواب دے رہی ہو نہ فون اٹھا رہی ہو کب سے فون بج رہا ہے تمہارا ۔۔
ہیلو عدیل بھائ ۔۔
پریشے میں آ رہا ہوں تم لوگوں کو لینے آنٹی انکل کو کہا تیار رہیں ۔۔۔
لیکن عدیل بھائ ہوا کیا ہے کچھ تو بتائیں سب تھیک تو ہے۔۔
پریشے ارحم کا ایکسیڈنٹ ہو گیا ہے وہ ہاسپٹل میں ہے میں آ رہا ہوں لینے تم لوگ تیار رہو۔۔۔
عدیل نے کال کاٹ دی تھی لیکن وہ ابھی تک فون کو کان کے ساتھ لگائے بیٹھی تھی۔۔
پریشے کیا ہوا ایسے کیوں بیٹھی ہو کیا کہ رہا تھا عدیل بولو بھی ۔۔۔
۔۔ امی لالا کا ایکسیڈنٹ ہو گیا ہے عدیل بھائ ہمیں لینے آ رہیں ہیں بہت ہمت کر کے وہ بتا پائ۔۔۔
ہائے میرا بچہ اللہ پتا نہیں کس حالت میں ہو گا ۔۔۔
امی آپ رنے کے بجائے جا کہ بابا کو بتائیں جن کی فضول ضد کی وجہ سے لالا زندگی موت کے درمیان لڑ رہے ہیں اور تیار ہو عدیل بھائ پہنچنے والے ہوں گے کہتے ساتھ کمرے میں شال لینے بھاگی۔۔۔
پریشے کی آواز اتنی اونچی تھی کہ چوہدری نواز نے باخوبی سنی تھی۔۔۔
نواز نواز جلدی کریں میرا بیٹا میرا بیٹا ہسپتال میں ہے آمنہ بیگم کمرے میں آتے ہی بول پڑی۔۔
کچھ نہیں ہوتا آپ کے بیٹے کو سب ڈرامہ بازی ہے وہ صرف مجھے راضی کرنا چاہتے ہیں۔۔
“نواز میں آپ کو بتا رہی ہوں اگر میرے بیٹے کو کچھ بھی ہوا تو میں زندگی بھر آپ کو معاف نہیں کروں گی اور اگر میرا بیٹا بچ جاتا ہے تو پہلی فرصت میں اس کا نکاح انوشے سے کرواؤں گی اس کے لیے چاہے آپ مجھے گھر سے نکال دیں میں اپنے بیٹے کو نہیں کھو سکتی ”
ماما چلیں جلدی کریں عدیل بھائ آ گئے ہیں۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سارے راستے خاموشی کا راج رہا عدیل نے انوشے کو بھی پک کر لیا تھا تاکہ وہ ان سب کو حوصلہ دے سکے جب کہ انوشے کی اپنی حالت خراب تھی جس سے عدیل انجان تھا۔۔۔۔۔۔۔
عدیل بھائ آپکو کیسے پتا چلا لالا کا۔۔
میں گزر رہا تھا اس کو ڈھونڈتے ہوئے کہ میری نظر پڑی ایک کار ایکسیڈنٹ ہوا ہوا تھا جب پاس جا کہ دیکھا تو ارحم تھا پھر میں نے فورن اسے ہوسپٹل شفٹ کروایا اور پھر تم لوگوں کو بتایا ۔۔۔
تو ڈاکٹر نے کیا بتایا لالا کو زیادہ چوٹیں تو نہیں آئیں ۔۔۔
پریشے میں ابھی کچھ نہیں نتا سکتا جب ہم پہنچے تو ہی ڈاکٹر سے بات ہو سکے گی۔۔۔
وہ سب ہوسپٹل پہنچ چکے تھے ارحم آی سی ہو میں تھا۔۔۔
عدیل بیٹا یہ ڈاکٹر کچھ بتا کیوں نہیں رہے وہ باہر کیوں نہیں آتے ہمیں کچھ تو بتائیں۔۔
آنٹی آپ سمبھالیں خود کو سب تھیک ہو گا ڈاکٹرز علاج کر رہے ہیں
۔۔۔ مریض کے ساتھ کون ہیں ڈاکٹر نے باہر نکلتے پوچھا۔۔
جی ہم ہیں عدیل نے کہا کیسی حالت ہے ارحم کی وہ تھیک تو ہے نہ
“دیکھیں فلحال ہم کچھ نہیں کہ سکتے انہیں بہت زیادہ چوٹیں آئ ہیں سر پہ بھی کافی چوٹیں آئ ہیں اگر انہیں اگلے چوبیس گھنٹوں میں ہوش نہیں آتا تو ہم کچھ نہیں کہ سکتے”
ڈاکٹر جا چکا تھا ۔۔
امی امی امی سنبھالیں خود کو
پریشے میرا ارحم اسے بچا لو اسے کہو اٹھ جائے وہ وہ تمہاری بات سنتا ہے نہ اسے کہو نہ تھیک ہو جائے۔۔
امی سب تھیک ہو گا سنبھالیں خود کو وہ دونوں ماں بیٹی ایک دوسرے کے گلے لگ کے رو پڑی تھی۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
چوبیس گھنٹوں بعد ارحم کو ہوش آ گیا تھا یہ چوبیس گھنٹے سب کے لیے گزارنا اتنا مشکل تھا جتنا ننگے پیر کوئلوں پہ چلنا ہوتا ہے۔۔۔
“شکر ارحم بھائ آپ کو ہوش آ گیا کچھ اندازہ بھی ہے آپ کو کتنا پرشان ہو گئے تھے ہم زرا خیال نہیں آیا آپ کو ہمارا کتنے برے ہیں آپ میں آپ سے کبھی بات نہیں کروں گی””
ہاہا پری جان اب تھیک ہوں میں
آپ آپ ہنس لیں میں نہیں کروں گی بات ۔۔۔۔
اچھا اچھا معاف کر دو رو تو نہیں مجھے تکلیف ہو رہی ہے ۔۔۔۔
امی آپ گھر چلی جائیں تھک گئ ہوں گی میں تھیک ہوں اب۔۔
نہیں میں نہیں جاؤں گی مجھے پنے بیٹے کے پاس رہنا ہے ۔۔۔
امی لالا تھیک کہ رہے ہیں آپ اب گھر چلی جائیں عدیل بھائ چھوڑ آئیں گے
۔۔ہاں کیوں نہیں ویسے بھی آفس جانا ہے مجھے ۔۔۔
تھیک ہے ابھی تو میں جا رہی ہوں لیکن شام کو پھر واپس آ جاؤں گی ۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پریشے انوش کہاں ہیں مجھے منے کیوں نہیں میں جانتا ہوں رات بھر وہ یہیں ہو گی اور روتی رہی ہو گی پھر مجھے ملنے کیوں نہیں آئ
۔۔ لالا باہر بیٹھی آنسو بہا رہی ہے ابھی بھی میں لے کہ آتی ہوں۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
انوشے چلو اٹھو لالا بلا رہے ہیں وہ ملنا چاہتے ہیں تم سے چلو اٹھو
۔۔پری مجھے نہیں جانا پلیز وہ میری وجہ سے اس حالت میں پہنچ گئے میں کیسے ان کے سامنے جاؤں۔
انوشے پاگل نہیں بنو نہیں تو لالا خود آ جائیں گے تمہیں ملنے ۔۔
اچھا جا رہی ہوں ۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یار انوش بس کر دو اب نہ رو اور پلیز تکلیف ہو رہی ہے مجھے تمہیں ایسے دیکھ کہ ۔۔ (وہ پچھلے آدھے گھنٹے سے ارحم کے کندھے پہ سر رکھے رو رہی تھی)
“ارحم اپ بہت گندے ہیں بہت میں کبھی آپ سے بات نہیں کروں گی ایسا کون کرتا ہے بھلا زرا سا بھی خیال نہیں آیا آپ کو میرآ اگر آپکو کچھ ہو جاتا تو کیا ہوتا میرا ”
انوش میں کیا کرتا بابا کی باتوں سے اتنا پرشان ہو گیا تھا کہ بس کچھ سمجھ ہی نہیں آئ۔۔ بابا کیا بابا مجھے ملنے آئے کیا انہوں نے میرا پوچھا۔۔
نہیں ارحم انہوں نے ایک دفعہ بھی نہیں پوچھا۔
،،دیکھا انوش انہیں اپنی اولاد نہیں عزیز ،،
ارحم آپ پرشان نہ ہوں سب تھیک ہو جائے گا ابھی آپ بس جلدی سے تھیک ہو جائیں۔۔
اہم اہم میں اندر آ جاؤں کیا یا ابھی اکچھ رہا ہے ۔۔۔
پری آ جاؤ آ جاؤ۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
شام کو آمنہ بیگم ملنے آئ تو انہوں نے پریشے اور انوشے کو گھر بیجھ دیا ۔۔۔۔۔
ارحم میرا جان میرا بچا کیسی طبیعت ہے اب درد تو نہیں ہو رہا ۔۔۔۔
نہیں ماما میں تھیک ہوں بابا نہیں آئے ۔۔۔
بیٹا انہیں اپنی اولاد کی خوشیاں نہیں عزیز میں نے بات کی تھی لیکن ان کا جواب وہی ہے جو پہلے تھا ۔۔۔۔
ماما وہ ایسا کیوں کر رہے ہیں میرے ساتھ ارحم نے مایوس کے ساتھ کہا۔۔۔
“بیٹا میں نے ایک بات سوچی ہے کہ ہم جلد سے جلد تہمارا اور انوشے کا نکاح کر دیتے ہیں پھر جو گا دیکھا جائے گا اس بارے میں عدیل سے بھی بات کر لیتے ہیں”
ہاں جی میں آ گیا کیا بات کرنی ہے مجھ سے اور تو کمینے اک دفعہ تھیک ہو جا ماڑ ماڑ میں تیری ٹانگ پھر سے توڑ دون گا۔۔
۔۔ہاہا ابھی جو ہم تجھے بتانے جا رہے ہیں اس کے بعد تو پکا میری دوسری ٹانگ بھی توڑ دے گا۔۔۔
کیا بات ہے آنٹی سب تھیک ہے نہ۔۔۔
ہاں بیٹا سب تھیک ہے اور پھر آمنہ بیگم نے ساری بات بتا دی ۔۔۔۔
ہمممم کمینے ایک دفعہ مجھے بتاتا تو سہی ہم مل کے انکل کو منا لیتے۔۔۔
کیا بتاتا کہ میں تیری بہن کو پسند کرتا ہوں اور تو مدد کر میری اپنے بہن کے سسر کو منانے میں۔۔۔
بک بک نہ کر پہلے ہی ٹوٹا پڑا ہے مزید ٹوڑ دوں گا۔۔۔۔۔
ہاہا ہاہا ہاہا دیکھا ماما کہ رہا ہے یہ
۔۔اچھا بس کرو دونوں اور عدیل بیٹا بتاؤ آپ کیا خیال ہے ۔۔
ہم آنٹی ایک بات تو جو میری بہن کے لیے یہاں پہنچ سکتا ہے وہ اسے خوش رکھنے کے لیے کچھ بھی کر سکتا ہے لیکن اگر انکل نہ مانے تو۔۔
۔۔عدیل ایک دفعہ نکاح ہو جائے اس کے بعد اگر بابا نے گھر سے نکال بھی دیا تو پرشانی کی بات نہیں ہے میں نے فلیٹ لے رکھا ہے ہم وہیں رہیں گیں بس تم سب کا ساتھ چاہیے۔۔۔۔
.. ارحم میں تمہارے ساتھ ہوں بے فکر رہو ۔۔۔
بس پھر نکاح کا بندوبست کرو عدیل میں جلد از جلد یہ کام کرنا چاہتا ہوں۔۔
۔۔ ابے او لنگڑے پہلے تھیک تو ہو جا ہاں۔۔۔
ہا ہا تم سب میرے ساتھ ہو تو بس میں تھیک ہوں۔۔
تو بس پھر عدیل بیٹا تم مجھے گھر چھوڑ دو اور نکاح کی تیاری کرو اور میں انوشے پریشے کو لے کہ آتی ہوں۔۔۔
۔۔ ماما اپنی بہو کو پیارا سا تیار کروئیے گا۔۔۔۔
ہاہاہا
چلیں آنٹی ۔۔
ہاں بیٹا چلو اور تم ارحم آرام کر لو تھوڑا سا اب۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یہاں سائن کر دو انوشے
اور پھر اس نے کانپٹے ہاتھوں کے ساتھ سائن کر دیے
۔۔ نکاح ہو چکا تھا دونوں جہان پرشان تھے وہیں خوش بھی تھے ۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ارحم کو گھر آئے دس دن ہو چکے تھے وہ اب کافی بہتر تھا چل پھر بھی لیتا تھا۔۔۔
چوہدری نواز سارا دن کمرے میں رہتے تھے نہ وہ کسی سے بات کرتے تھے نہ ہی ان سے کوئ ان کو پتا تو چل گیا تھا ارحم کے نکاح کا لیکن وہ خاموش تھے۔۔۔
بابا میں اندر آ جاؤں کیا ۔۔۔۔
آ جاؤ …
بابا آپ ناراض ہیں کیا مجھ سے ۔۔۔۔
نہیں میں کون ہوتا ہوں ناراض ہونے والا میرا کیا تعلق تم لوگوں سے ۔۔۔
۔۔ بابا پلیز ایسا نہ کہیں ہمیں بہت عزیز ہیں آپ۔۔
اگر عزیز ہوتا تو یہ سب نہ کرتے میری مرضی کے خلاف نکاح کیا میری بیوی میری بیٹی کو میرے خلاف کیا۔۔۔۔
۔۔ بابا ہم سب آپ سے بہت پیار کرتے ہیں مجھ سے غلطی ہو گئ ہے معاف کر دیں ۔۔۔
بیٹا جی آپ نے سوچ سمجھ کے غلطی کی ہے اب مجھ سے کیا چاہتے ہو آپ ۔۔۔
بابا معاف کر دیں میں آپ کو زیادہ دیر ناراض نہیں کر سکتا مجھے کہیں سکون نہیں آ رہا پلیز معاف کر دیں۔ وہ رو رہا تھا ہاں ارحم نواز بہادر انسان رو رہا تھا ۔۔۔
چوہدری نواز باپ تھے چاہے کتنے ہی سخت دل کیوں نہ ہو فورن اٹھ کہ بیٹے کو گلے لگا لیا بس میرا بچا اتنا بڑا ہو کہ رو رہا ہے۔۔۔۔
۔۔ بابا معاف کر دیں پلیز اور انوشے کو اپنی بہو تسلیم کر لین پلیز۔۔۔
تھیک ہے لیکن میری ایک شرط ہے رخصتی سادگی سے ہو گی ہم نہیں چاہتے خاندان والے باتیں بنائیں ہم پہ ۔۔۔
۔۔ تھیک ہے بابا منظور ہے ۔۔۔۔
اور پھر سب کی مرضی سے رخصتی کی تاریخ تہ کر دی گئ عدیل نے تھوڑا بہت احتجاج کیا مہندی وغیرہ جس پہ یہ تہ پایا عدیل لوگ اپنے گھر میں چھوٹا سا مہندی کا فنکشن کر سکتے ہیں۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پریشے یار جلدی کر اب اور کتنی دیر ہے ڈھیر ساری شاپنگ کرنی ہے اور ٹائم بلکل نہیں ہے ۔۔۔
وہ پچھلے آدھے گھنٹے سے پریشے کا انتظار کر رہی تھی جس کی تیاری ہی مکمل نہیں ہو رہی تھی۔۔۔۔
۔۔ ہم تھوڑی دیر میں مال کے لیے نکل رہے ہیں تم بھی پہنچ جانا۔۔۔ (علی کو میسج کیا جو اس تمام عرصے میں روز ہی میسج کر کہ پوچھتا تھا اور آخر کار آج وہ دن آ گیا جس کا وہ شدت سے انتظار کر رہا تھا)
۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اوئے ارسلان کہاں ہے تو دس منٹ سے میرے گھر پہنچ وہ اپنی سنا کے کال بند کر چکا تھا۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
چلو چلو انوش جلدی کرو ہمیشہ ہمیشہ لیٹ کروا دیتی ہو۔۔
اللہ کیسی خاتون ہو لیٹ خود کروایا اور الزام مجھ پہ۔۔۔
ہاہا میڈم جی خاتون آپ بننے والی ہیں میں نے سنا ہے جن کی شادی ہو جاتی ہے وہ خاتون بن جاتی ہے ۔۔۔
غلط سنا ہے جس نے بھی سنا ہے اب چلو اور یار یہ تمہارے شاہزر لالا نہیں نظر آ رہے شادی پہ نہیں آئیں گے کیا۔۔۔
۔۔ نہیں ان کو ان کا بزنس زیادہ پیارا ہے ہم سے۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
انوش یہ دیکھ یہ غرارہ کیسا ہے ۔۔
ہم اچھا ہے تم اور بھی دیکھو میں بس دو منٹ آئ ۔۔۔
۔۔ اچھا جلدی آنا۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تم جو آئے زندگی میں بات بن گئ
سپنے تیری چاہتوں کہ سپنے تیری چاہتوں کہ ۔دیکھتی ہوں دن ہے سونا اور چاندی رات بن گئ ۔۔۔
وہ اپنی دھن میں گاتی کپڑے دیکھ رہی تھی جب کسی نے پیچھے سے اسے پکارا جس کی آواز سن کہ پریشے کی زبان کو تو بریک لگی ہی لگی ہاتھ پیر بھی پھولنے لگ پڑے ۔۔۔۔
مجبورا پیچھے مڑنا پڑا اسے۔۔
آااپ یہاں۔۔۔
جی میں کیا مجھے دس منٹ مل سکتے ہیں میں بات کرنا چاہتا ہوں آپ سے کب سے ملنا چاہ رہا تھا لیکن کوئ موقع ہی نہیں مل رہا تھا۔۔۔
۔۔ سوری میں آپ سے بات نہیں کر سکتی خود کو سنبالتے ہوئے کہا ۔۔۔
پلیز صرف دس منٹ میری بات سن لیں پلیز ۔۔۔۔
اوکے صرف دس منٹ ۔۔۔
(پتا نہیں کیا سوچ کہ اس نے ہاں کہ دی)
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

Read More:  Yaaram by Sumaira Hameed – Episode 17

–**–**–
جاری ہے
——
آپکو یہ ناول کیسا لگا؟
کمنٹس میں اپنی رائے سے ضرور آگاہ کریں۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

%d bloggers like this: