Tere Ishq Nachaya Novel by Hafsa Rahman – Episode 4

0
تیرے عشق نچایا از حفصہ رحمن – قسط نمبر 4

–**–**–

وہ دونوں فوڈ کورٹ میں بیٹھے تھے ۔۔۔۔
جی بولیں اب کیا کہنا ہے آپ نے آپ کے پاس صرف دس منٹ ہے ۔۔۔
۔۔۔ دیکھیں پری میں زیادہ لمبی بات نہیں کروں گا اور نہ کوئ جھوٹ بولوں گا نہ یہ کہوں گا کہ میں آپ کہ لیے چاند تارے توڑ کہ لا سکتا ہوں میں صرف اتنا کہوں گا میں آپ سے محبت کرتا ہوں سچے دل سے محبت کرتا ہوں اور یہ صرف الفاظ نہیں حقیقت ہے میں لفظی محبت نہیں کرتا نہ میں باتیں پڑوں گا اور نہ وقت آنے پہ مکر جاؤں گا میں اپنی ماما کو آپ کہ گھر بیجھنا چاہتا ہوں اس محبت کو پاکیزہ رشتہ کی صورت میں لانا چاہتا ہوں اگر آپ اجازت دیں تو میں کل ہی ماما کو لے آؤں گا باقی آپ کی مرضی مجھے مزید کچھ نہیں کہنا یہ میرا نمبر ہے اگر آپ کا دل سچ تسلیم کرے میری باتوں کو تومجھے بتا دیجیے گا ورنہ میں انتظار کروں گا ساری زندگی انتظار کرتا رہوں گا اللہ حافظ۔۔۔
وہ جا چکا تھا اسے گئے پندرہ منٹ ہو گئے تھے جبک وہ اپنی جگہ پہ ویسے کی ویسی ہی بیٹھی رہ گئ۔۔۔
۔۔ تم یہاں بیٹھی ہو کہاں کہاں نہیں ڈھونڈا میں نے تمہیں۔۔۔
۔۔انوش تم۔ایسا کیسے کر سکتی ہو کیوں تم مجھے جان بوجھ کہ اس جہنم میں پھینک رہی ہو جس سے نکلنا ممکن نہیں کیوں تم نے اسے بلایا کیا تم بہیں جانتی تمہاری اور لالا کی شادی کیسے ہو رہی ہے کیا تم بھول گئ ہو کل کو وہ رشتہ لے آتا ہے تو میری گھر والے کیا ردعمل ظاہر کریں گے کیوں کیا ایسا ۔۔۔۔
،،سوری پری میں کیا کرتی اس نے جس طرح التجا کی مجھ سے رہا نہیں گیا وہ تم سے محبت کرتا ہے پریشے ۔۔۔
۔۔۔۔کرتا ہے تو میں کیا کروں کیا تم ہمارے بارے میں کچھ نہیں جانتی کیا ۔۔ کیا بھول گئ ہو چاہے وہ مر کہ بھی دکھا دے بابا کبھی اسے قبول نہیں کریں گے بابا نے تمہیں قبول کیا کیونکہ تم انکی وارث کی بیوی ہو جو آگے ان کے خاندان کی نسل چلائے گی وہ لالا کو کھونا نہیں چاہتے کیونکہ بابا کہ بزنس کا لوس ہو جائے گا اگر لالا چلے گئے تو… تم صرف یہ دیکھ رہی ہو کہ میری شادی ہو رہی ہے
بس اور اسی میں خوش ہو تم ۔۔۔۔
پرشے کیا تم علی کو پسند کرتی ہو ۔۔۔
۔۔۔ میرے پسند کرنے نہ کرنے سے کچھ نہیں ہوتا جو حقیقت ہے اس کا سامنا کرو میں جانتی ہو اگر میں علی کی طرف بڑھاتی ہوں تو صرف تباہی ہو گی اور کچھ نہیں اس لیے سنبھالا ہوا ہے خود کو میں نے اور بہتر یے وہ بھی یہ بات سمجھ جائے۔۔
اور کیسے سمجھے گا وہ یہ بات تم نے اسے کچھ بتایا کچھ کہا ۔۔۔
۔۔ نہیں میں نے کچھ نہیں کہا اور نہ ہی کچھ کہنا ہے اس نے کہا وہ ساری زندگی میری کال کا انتظار کرے گا اور میں جب اسے کال نہیں کروں گی خود ہی سمجھ جائے گا۔۔۔
۔۔۔پریشے تم ہی کہتی ہو نہ اس کی باتیں سچ لگتی ہیں مجھے ۔۔ مجھے لگتا وہ ایک ایک لفظ دل سے کہ رہا ہے تو کیا تمہیں لگتا ہے کچھ عرصے بعد وہ تمہیں بھول جائے گا۔۔۔ کبھی بھی نہیں ۔۔۔
مجھے گھر جانا ہے چلو۔۔۔۔دیر ہو رہی ہے۔۔
پریشے کب تک حقیقت سے منہ موڑو گی۔۔۔
۔۔ جب تک ہو سکا اب مزید کوئ بات نہیں ہو گی اس بارے میں۔۔۔۔(ڈراویور پہلے انوشے کو ڈراپ کرنا)
،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،
آج ارحم اور انوشے کا ولیمہ تھا ۔ رخصتی بلکل سادگی سے ہوئ تھی جبکہ ولیمہ انہوں نے دھوم دھام سے کیا۔۔۔
انوشے سفید اور بلیو کنٹراس کے عروسے جوڑے میں سٹیج میں دلہن بنی بیٹھی تھی ساتھ ہی ارحم تھری پیس سوٹ مین بیٹھا تھا ہر کوئ انکی جوڑی کی تعریف کر رہا تھا۔۔۔
ارسلہ اور پریشے مہمانوں کو سنبھال رہی تھی ۔۔۔
ارسلہ دیکھ ادھر بھی کھانے بیٹھ گئ ہے اٹھ جا یار بس کر دے ۔۔۔
آپی آپی پریشے آپی آپ کو وہ ادھر ایک آنٹی بلا رہی ہیں اس بچے نے ہال کے بیک سائیڈ کی طرف اشارہ کرتے ہوئے کیا۔۔۔۔
اچھا بچے میں جانتی ہوں آپ جاؤ کھانا کھاؤ۔۔۔
ارسلہ موٹی جنگلی بلی بیٹھی رہ ادھر ہی میں آتی ہوں ۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یہاں تو کوئ آنٹی نہیں وہ پچھلے دس منٹ یہاں وہاں دیکھ رہی تھی لیکن اسے کوئ آنٹی نظر نہیں آ رہی تھی کہ اچانک سے کسی نے اس کے کندھے پہ ہاتھ رکھا وہ ایک دم ڈر کہ پیچھے مڑی تو سامنے علی کو کھڑا پایا۔۔
ہاہاہا آپ وہ آنٹی تھے ہاہاہاہا
وہ ہنس رہی اور علی اسے ہنستے دیکھ اسکی ہنسی کے سحر میں کھو گیا تھا ۔۔۔
تقریبا پانچ منٹ ہنسنے کے بعد اسے اپنی سیچوئیشن کا احساس ۔۔۔
میں چلتی ہوں ماما ڈھونڈ رہی ہوں گی ۔۔۔
علی کو ایک دم ہوش آیا۔۔
دس منٹ صرف دس منٹ بات سن لیں میری ۔۔۔
بولیں ۔۔۔
آپ نے جواب نہیں دیا ابھی تک ۔۔
۔۔ ابھی سے تھک گئے آپ نے تو کہا تھا میں ساری زندگی انتظار کر سکتا ہوں …
ہاں کر سکتا ہوں انتظار کروں گا اس امید کے ساتھ کہ کبھی تو آپ میرے حق میں فیصلہ دیں گی ۔۔
۔۔میں آپ کے حق میں فیصلہ نہیں دے سکتی مجھے بغاوت پہ مجبور نہ کریں خدا کا واسطہ ہے میرے گھر والے کبھی نہیں مانے گیں صرف تباہی مچے گی آپ بھول جائیں مجھے آپکے لیے میرے لیے دونوں کے لیے یہی بہتر ہے میرا خاندان میرا گھر میرے والدین میری روایات مجھ اس سب بھی اجازت نہیں دیتی ۔۔۔
کتنی آسانی سے کہ دیا آپ نے ایسا لیکن میری بات آپ بھی سن لیں میں کبھی بھی نہیں بھولوں گا آپ کو زندگی بھر انتظار کرتا رہوں گا زندگی بھر اور ایک دن آئے گا جب آپ خود میرے حق میں فیصلہ دیں گی
مجھے ماما بلا رہی ہیں میں چلتی ہوں
۔۔ پریشے آخر کب تک آپ مجھ سے بھاگے گیں۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ارحم انوشے کی شادی کو دہ ہفتے گزر چکے تھے ۔۔ وہ دونوں لندن گھومنے گئے ہوئے تھے ۔۔اس دوران پریشے کمرے میں بند ہو کہ رہ گئ تھی اس کا دل اسے بغاوت پہ مجبور کرتا تھا جبکہ دماغ اس حق میں نہیں تھا ۔۔۔
بلآخر دل جیت گیا اور پریشے نے علی کے دیے گئے نمبر پہ میسج کر ہی ڈالا۔۔
۔۔ میں آپ ملنا چاہتی ہوں آدھے گھنٹے بعد مال میں اسی جگہ ملیں گے جہاں پہلے ملے تھے میسج کر کہ تیار ہونے چلی گئ۔۔
ماما ماما میں زرا باہر جا رہی ہوں ارسلہ سے ملنے تھوڑی دیر ہو جائے گی پرشان نہیں ہونا آپ نے ۔
اچھا تھیک ہے بیٹا آرام سے جانا ۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ارسلان کہاں ہے تو جلدی سے گھر آ جا میرے ۔۔
او بھائ کیا ہوا بڑا خوش ہو رہا ہے ۔۔۔
یار پریشے نے بلایا ہے مجھے ملنے کے لیے میں بتا نہیں سکتا میں خوش ہوں ۔۔۔اب جلدی سے گھر آ جا جانا ہے لیٹ نہیں ہونا۔۔۔
۔۔ابے او عاشق تو ہی جا میں کیوں کباب میں ہڈی بنوں چول انسان چل جا بند کر فون اور جا لیٹ نہ ہو ۔۔۔
اچھا اچھا بائے۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سوری سوری تھوڑی لیٹ ہو گئ ٹریفک بہت تھا۔۔
کوئ بات نہیں اس عشق میں انتظار بھی حسین لگتا ہے ۔۔ آپکو اس بات کا یقین ہوتا ہے اس انتظار کے بعد خوشیاں ہی خوشیاں ہیں۔۔۔ بولیں سب خیریت تو ہے ایسے اچانک بلایا۔۔۔
۔۔۔۔علی آپ جیت گئے میں ہار گئ ۔۔ میں ہار گئ اس دل سے ۔۔ آپکی محبت سے میں ۔۔۔
میں اتنا عرصہ دل اور دماغ کے درمیاں لڑتی رہی دماغ کہتا تھا چھوڑ دو سب دل کہتا تھا جب محبت ہو گئ ہے تو کیا پیچھے ہٹنا اور آخر کار دل جیت گیا۔۔
مجھے نہیں پتا کب کیسے محبت ہو گئ آپ سے بہت کوشش کی کہ رک جاؤں سمنبھال لوں اس دل کو لیکں وہ کہتے ہیں نہ دل ہے کہ مانتا نہیں ۔۔
مجھے آپ سے محبت ہو گئ ہے اور اب اس محبت کو چھپانا اس سے انکار کرنا ممکن نہیں میرے لیے آپ نے سچ کہا تھا خود آؤ گی میرے پاس اور میں آ گئ آپ کی کہی گئ باتوں نے کہیں کا نہیں چھوڑا مجھے خود سے محبت کرنے کو مجبور کر ہی ڈالا آپ نے ۔۔۔
علی میں محبت کرتی ہوں میں محبت کرتی ہوں اور بے پناہ محبت کرتی ہوں آپ سے (وہ کسی جادو کے اثر میں اپنی محبت کا اقرار کر رہی تھی وہ آج کھل کے بول رہی تھی وہ جو بھی بول رہی تھی دل سے بول رہی تھی جیسے اسے علی کی کہی گئ دل سے کی گئ باتین لگتی تھی ۔۔)
پری تم جانتی نہیں ہو کتنی بڑی خوشی دی ہے آج تم نے مجھے میں بیان نہیں کر سکتا کتنی شدت سے اس پل کا انتظار تھا مجھے اللہ کبھی اپنے بندوں کو مایوس نہیں کرتا میری دعائیں قبول ہونے کا وقت ہو گیا ہے ۔۔۔
تو پھر کب لے کہ آؤں ماما کو وہ بس میرے دفعہ کہنے پہ چل پڑی گی۔۔۔
ام پرسوں لالا اور انوشے واپس آ رہے ہیں اس کے بعد کبھی بھی آ جائیں کیونکہ لالا ہوں گے تو وہ کچھ غلط نہیں ہونے دیں گیں ۔۔۔
چلیں پھر اس سنڈے ڈن کرتے ہیں ۔۔
اوکے ڈن اب میں چلتی ہوں کافی ٹائم ہو گیا ہے ۔۔
میں ڈراپ کر دوں کیا۔۔
نہیں نہیں ڈراوئیور کے ساتھ آئ ہوں اسی کے ساتھ جاؤں گی۔۔۔
چلو پھر اللہ حافظ خیال رکھنا میری محبت ۔۔۔
اور وہ دونوں آنے والے وقت کو سوچتے سوچتے گھر کو چل پڑے لیکن کہتے ہیں نہ جیسا سوچتے ہیں ویسا ہوتا نہیں۔۔۔
ہائے رے یہ قسمت۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بابا میں اندر آ جاؤں کیا
جی بچے آ جاؤ
مجھے آاپ سے بات کرنی تھی بابا
ہاں بولو بچے کیا بات ہے
۔۔بابا وہ علی میرا یونی فیلو ہے وہ وہ رشتہ لے کہ آنا چاہتا ہے آاااپ ایک دفعہ اس سے مل لیں وہ بہت اچھا ہے وہ آااپ کو بھی اچھا لگے گا صرف صرف ایک دفعہ اس سے مل لیں۔۔۔
(وہ سر جکھائے مسلسل بول رہی تھی اس بات سے انجان کہ چوہدری واز کا چہرہ غصے سے بھر چکا تھا )
بکواس بند کر اپنی وو اتنے زور سے چلائے کہ پریشے کو لگا جیسے کسی نے سارا خون نچوڑ لیا ہو۔۔
کیا ہوا بابا سب تھیک تو ہے ۔۔ آواز سن کہ ارحم انوشے اور آمنہ بیگم بھی کمرے میں آ گئ تھی
یہ یہ تمہارے نقش قدم پہ چل پڑی ہے مجھے کہ رہی ہے میرا رشتہ آ رہا ہے سب تمہاری لگائ گئ آگ ہے تمہاری دیکھا دیکھی اتنی ہمت آ گئ اس میں میرے سامنے بول رہی ہے یہ اس کی میں جان لے لوں گا۔۔۔
۔۔۔ بابا بس کریں انوش تم اسے یہاں سے لے کہ جاؤ اور بابا میں اپنی بہن کی خوشیاں تباہ ہونے نہیں دوں گا وہ جہاں چاہے گی جیسے چاہے گی اس کی شادی ایسے ہی ہو گی۔۔۔
دیکھ رہی ہو تمہاری اولاد کیا گل کھلا رہی ہے
۔۔سہی کہ رہ رہا ہے ارحم نواز ہم کب تک روایات میں آ کہ اپنی اولاد کی خوشیاں خرب کریں گیں ۔۔
“”کون سی روایات تمیاری اولاد نے کبھی ان کی قدر کی ہے ارحم نے اپنی مرضی کی اب پریشے بھی “”
وہ بلکل تھیک کر رہے ہیں ان کو حق ہے ان کی زندگی اپنی مرضی سے جینے کا ۔۔۔
تو مجھ سے کوئ توقع نہ رکھنا کسی قسم کی اور یاد رکھو ہو گا وہی جو میں چاہوں گا۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پری یہ سب کیا ہے کیا کرتی پھر رہی ہو یہ زرا شرم نہیں آئ یہ سب کرتے ہوئے ہاں ۔۔ کون ہے وہ بتاؤ ابھی تانگیں توڑ کہ ہاتھ میں دے دوں گا اس کی ہمت کیسی اس کی تمہارے دماغ میں یہ سب فتور بھرنے کی کون ہے وہ بتاؤ مجھے ۔ پریشے میں تم سے کچھ پوچھ رہا ہوں کون ہے وہ جواب دو مجھے ۔۔۔
بس کریں ارحم کیوں اتنا چلا رہے ہیں ہاں ۔۔۔
تم اس معاملے میں مت پڑو تمہارا کوئ لینا دینا نہیں ہے اس میں ۔۔۔
لیکن نہیں تم بتاؤ کون ہے وہ تمہیں پتا ہو گا سب بتاؤ مجھے ۔۔۔
ارحم بس کر دیں بس بہن ہے وہ آپکی حق رکھتی ہے اپنی مرضی سے اپنا لائف چوز کرنے کا جیسے آپ حق رکھتے تھے بلکل اسی طرح یہ بھی حق رکھتی ہے ۔۔۔
۔۔بس کر دو مجھے نہ بتاؤ کیا کرنا ہے کیا نہیں اگر اتنا ہی شریف کا بچا ہے وہ رشتہ لے کہ کیوں نہیں آیا ۔۔۔
لالا وہ آج آ رہا ہے اپنی ماما کے ساتھ۔۔
تم بکواس بند کرو اپنی منہ توڑ دوں گا میں تمہارا۔۔
ارحم بس حد میں رہیں اپنی وہ ایک شریف کا بچا ہے تبھی آ رہا ہے رشتہ لے کہ نہیں تو وہ عام لڑکوں کہ طرح چلاتا چکر اور وقت آنے پہ چھوڑ دیتا لیکن اس نے ایسا نہیں کیا۔۔
۔۔۔ تو پھر کہاں تھا اتنا عرصہ وہ اب کیوں یاد آیا اسے ہاں ۔۔
لالا پہلے وہ میری مرضی جاننا چاہتا تھا۔۔۔
میں نے تم سے کہا چپ رہو۔۔۔
۔۔۔””لالا میں نے کچھ غلط نہیں کیا میرا یقین کریں میں نے کچھ نہیں کیا وہ برا نہیں ہے ایک دفعہ صرف ایک دفعہ اس سے مل لیں پلیز میری ساری امیدیں آپ سے ہیں لالا بابا کبھی میرا ساتھ نہیں دیں گیں وہ برا نہیں ہے لالا ایک ایک دفعہ آپ اس سے مل لیں اس کے جو آپ کا فیصلہ ہو گا مجھے منظور ہو گا۔۔۔۔۔”
ارحم پری تھیک رہی ہے ماما آپ کچھ بولیں نہ پلیز۔۔۔
ارحم جیسے تمہیں حق تھا اپنی خوشیاں حاصل کرنے جا بلکل اسی طرح اسے بھی حق ہے جب اس نے تمہارا ساتھ دیا تو تم اس کا ساتھ کیوں نہیں دے سکتے بھائ تو بہنوں کی ڈھال ہوتے ہیں اس موقع پہ اسے اکیلا کیسے چھوڑ سکتے ہو ۔۔۔۔
۔۔۔تھیک ہے بلا لو اسے مل لیتے ہیں ۔۔
لالا وہ آج شام آ رہے ہیں۔۔۔
تو پھر یہاں کیا کر رہی ہو جاؤ تیاری کرو۔۔۔
شکریہ لالا آپ ہمیشہ میرا ساتھ دیتے آئیں ہیں ارحم کے گلے لگے وہ مسلسل وہ رہی تھی۔۔
۔۔۔ اچھا بس بڑا رو لیا اب جاؤ ۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یار ارسلان کچھ سمجھ نہیں آ رہا کیا پہنوں میں میں بہت پیارا لگنا چاہتا ہوں
ہاہاہا یار تو لڑکی تھوڑی ہے جو اتنی ٹینشن لے رہا ہے کچھ بھی پہن لے اچھا لگتا ہے ۔۔۔
علی بیٹا جلدی کرو اور اتنا انتظار کروانا ہے ۔۔
بس ماما ہو گیا تیار بالوں کو سیٹ کرتے ہوئے بولا۔۔
چلیں میں ریڈی ہوں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ماما ماما وہ لوگ آ گئے چلیں ۔۔
او ہیلو کدھر چپ کر کہ ادھر بیٹھو جب ماما بلائیں گی تب آنا آئ سمجھ ۔۔۔
اچھا یار عجیب بات ہے یہ ۔۔
بیٹھو چپ کر کہ یہاں میں دیکھتی ہوں
اسلام علیکم!
وعلیکم اسلام ! تم تو وہی ہو نہ جو مال میں ملے تھے اس دن۔۔۔
جی جی بھائ وہی ہوں بڑی تیز یاداشت ہے (آخری جملہ منہ میں کہا گیا تھا)
اچھا تو اس سسلے کیں وہاں موجود تھے موصوف ہاں ارحم نے علی کے ساتھ بیٹھتے ہوئے کہا۔۔
۔۔۔ بھائ وہ میں۔۔۔
ہاہا بس کرو وہ میں وہ میں کرنا ۔۔۔
ارے آمنہ بیگم ہمارے درمیان تو بات چیت ہوتی رہے گی پریشے کو بلائیں ہم ملنا چاہتے ہیں اس سے ۔۔۔علی کی والدہ نے کہا۔
۔ جی جی کیوں نہیں جاؤ انوشے پری کو بلا لاؤ۔۔
پریشے نیچے نہیں آئ گی اور نہ ہی آپ لوگوں سے ملے گی ہم آپ لوگوں میں اپنی بیٹی کی شادی ہر گز نہں ہونے دیں اس لیے آپ لوگ ابھی اسی وقت چلیں جائیں یہاں سے ۔۔ (چوہدری نواز کی آواز اس قدر اونچی تھی پریشے آرام سے ساری بات سن سکتی تھی)
انوشے یہ بابا کیا کہ رہے ہیں میں ان کو ایسا نہیں کرنے دوں میں روکتی ہوں جا کہ بابا کو۔۔
۔۔ پریشے رک جاؤ نہ جاؤ نیچے۔۔۔
لیکن وہ نیچے آ چکی تھی۔۔
بابا یہ آپ کہ رہے ہیں ایک دفعہ آرام سے بیٹھ کہ بات کر لیتے ہیں ۔۔۔
۔۔تم چپ کرو ارحم اور آپ لوگ ابھی تک گئے نہیں آرام سے کہا گیا سمجھ نہیں آتا یا پھر دھکے دے کہ باہر نکالوں نکل جائیں میرے گھر سے اور دوبارہ یہاں کا رخ مت کیجیے گا۔۔۔
چلو علی بہت ہو گیا یا ابھی اور بھی بےعزتی کروانی ہے میری چلو یہاں سے۔۔
۔۔ماما دو منٹ رک جائیں انکل ایک دفعہ میری بات سن لیں پلیز صرف ایک دفعہ۔۔۔
بابا ایک دفعہ علی کی بات سن لیں ایسا نہ کریں میرے ساتھ۔۔۔
تم دفعہ ہو جاؤ اپنے کمرے میں
۔۔اور تم لوگ نکلو میرے گھر ورنہ میں چوکیدار کو بلوا لوں گا نکل جاؤ یہاں سے۔۔۔
چلو علی بہت ہو گیا ۔۔۔
رک جائیں میری بات سنیں ایک دفعہ بیٹھ کہ بات کر لیتے ہیں وہ دہائیاں دیتی رہ گئ اور وہ لوگ واپس چلے گے۔۔۔
۔۔۔پری سنبھالو خود کو وہ لوگ چلیں گیں ہیں ۔۔۔ چلو اندر چلو۔۔۔
انوش بابا ایسے کیسے کر سکتے ہیں میرے ساتھ اندر آتے ہوئے پریشے نے کہا۔
۔۔۔ بند کرو یہ رونا دھونا ایک ہفتہ ہے تمہارے پاس تیاری کر لو میں تمارا شاہان کے ساتھ نکاح پڑھوا کہ بھیج رہا ہون تمیں ملتان ۔۔۔۔
بابا آپ ایسا ہر گز نہیں کر سکتے میں یہ نکاح کبھی نہیں کروں گی شادی کروں گی تو صرف علی سے بس۔۔
۔۔۔۔بند کرو بکواس اپنی لگائے نہ دو ٹھپر عقل ٹھکانے آ جائے گی اب میں اس گھر میں ان لوگوں کا ذکر نہ سنوں بہت کر لی نرمی میں نے۔۔۔
لوں گی میں نام ایک بار نہیں ہزار بار لوں گی مارنا ہے تو مارے میں لوں گی نام بتائیں آپ کیا کروں میں ہاں میں بھی بھائ کی مرنے لگ جاؤں تب مان جائیں گے بتائیں۔۔۔۔۔
۔۔۔”تمہاری میت بھی میرے سامنے پڑی ہوئ نہ تب بھی میں مانوں گا میں نے فیصلہ سنا دیا اگلے ہفتے تمہارا نکاح ہے تو تمہارا نکاح ہو گا ۔۔۔۔”
لالا لالا بابا کو روک لیں پلیز میری مدد کریں میں مر جاؤں گی ایسا نہ کریں میرے ساتھ لالا بابا کو روک لیں۔۔۔۔
۔۔انوشے اسے کمرے میں لے کہ جاؤ میں بابا سے بات کرتا ہوں ۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہاں بھئ برخدار کب واپس آنے کہ ارادے ہیں تم واپس آ جاؤ میں پریشے کی شادی کر رہا ہوں تمہاری پھوپھو کی طرف۔۔۔۔
کیا بابا لیکن اتنی جلدی کیوں کر رہے ہیں ۔۔۔
۔۔ارے میرے بیٹے تمہاری پھوپھو نے کہا ہے اگر ہم اپنی بیٹی دیں گیں تو تمہاری بیٹی لیں گیں اور میرے بیٹے کی خواہش تو پوری کرنی تھی نہ مجھے ۔۔۔
کیا واقعی بابا آپ سچ کہ رہے ہیں آپ بہت اچھے ہیں میں پرسوں ہی واپس آ رہا ہوں۔۔۔۔
خیر سے آؤ میرے بچے ۔۔۔
فون بند کر کہ سامنے دیکھا تو ارحم کھڑا تھا ۔۔۔
۔۔۔۔ بابا آپ پچتائیں گیں بری طرح پچتائیں ۔۔۔ کہتے ساتھ ہی کمرے سے نکل گیا۔۔۔
۔۔۔ میں جو کر رہا ہوں بلکل تھیک کر رہا ہوں ۔۔۔۔۔
کبھی کبھار آپ اپنی ضد کی وجہ سے بہت کھو دیتے ہیں۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ارسلان علی نے کھانا کھایا ۔
۔۔۔ نہیں آنٹی دروازہ بھی نہیں کھولا ابھی تک اتنی کوشش کر لی سب بے سود۔۔۔
علی بچے دروازہ کھولو مجھ سے بات کرو ۔۔۔
۔۔۔۔ ماما ۔۔۔۔۔
میرا بچا شکر دروازہ تو کھولا دو دن سے کمرے میں بند ہو کیا حال کر دیا اپنا۔۔۔
ماما میں بہت شرمندہ ہوں بہت زیادہ میری وجہ سے انہوں نے اتنا برا بھلا کہا آپ کو مجھے معاف کر دے۔۔۔
۔۔۔۔ میرا بیٹا چپ کرو ایسا کون روتا ہے اور میں بلکل بھی نہیں ناراض اپنے بچے سے وہ لوگ ہی ایسے ہیں ۔۔۔بھول جاؤ انہیں۔۔۔
ماما میں پریشے کو نہیں بھول سکتا میں اس کے بغیر مر جاؤں گا میں سچ کہ رہا ہوں میں اس کے بغیر مر جاؤں گا ماما آپ کچھ کریں نہ کچھ کریں آپ ۔۔۔
۔۔۔ بس چپ چپ کرو نہ رو تمہیں ایسے دیکھ کہ مجھے تکلیف ہوتی ہے چپ کر جاؤ ۔۔۔۔
کھانا کھاؤ اور سو جاؤ ۔۔۔۔
ماما کچھ کریں نہ پلیز ۔۔۔
سو جاؤ شاباش۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔آنٹی میں اب چلتا ہوں گھر والے پرشان ہو رہے ہوں گے ۔۔۔
علی سو گیا۔۔
جی آنٹی بہت مشکل سے سویا ہے ۔۔۔
ارسلان بیٹا تم میرے ساتھ چلو گے ۔۔۔
کہاں جانا ہے آنٹی۔۔
۔۔۔ پریشے کے گھر اس کے باپ کی منت کروں گی مجھ سے میرے بیٹے کی یہ حالت دیکھی نہیں جا رہی۔۔۔۔
آنٹی آپ روئیں نہیں میں چلتا ہوں آپ کے ساتھ۔۔۔
تھیک ہے میں چادر لے کی آتی ہوں۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پریشے کچھ کھا لو پلیز دو دن سے بھوکی ہو مسلسل روئ جا رہی ہو بس کر دو۔۔۔
۔۔۔۔۔ انوش میں خود کے ساتھ یہ ظلم نہیں ہونے دوں گی میں مر جاؤں گی میں خدکشی کر لوں گی۔۔۔
کیا بکواس کر رہی ہو کیوں حرام موت مرنا چاہتی ہو۔۔
۔۔۔ تم بتاؤ میں کیا کروں پھر میں چپ چاپ یہ سب ہونے دوں کیا۔۔۔
ہیلو لیڈیز کیا ہو رہا ہے ۔۔۔
ارے ارے یہاں تو ندیاں بہ رہی ہیں میری بہن رخصتی میں ابھی چار دن باقی ہیں چلو چپ کرو باقی کا رخصتی پہ رو لینا۔۔۔۔ اور بتاؤ کیا کیا تیاری کی ۔۔۔۔۔میں نے جیسے ہی تمہاری شادی کا سنا فورن ٹکٹ کروئ اور آ گیا ۔۔۔۔
اچھا چلو میں ابھی جا رہا ہوں کہیں واپس آ کہ ساری تفصیل پوچھوں گا ۔۔۔۔
۔۔۔ کاش لالا کبھی آپ نے اپنی ذات سے نکل کہ بھی کچھ سوچا ہوتا۔۔۔۔
اچھا چھوڑو اسے کھانا کھا لو پلیز۔۔۔۔
۔۔ نہیں کھانا لے جاؤ اسے ۔۔۔۔۔
انوشے بی بی آپ کو ارحم صاحب بلا رہے ہیں ۔۔۔
پری تم یہ کھانا ختم کرو میں آتی بات سن کہ۔۔
۔۔۔۔ سنو ۔۔۔
جی بی بی یہ کھانا واپس لے جاؤ ٹھنڈا ہو گیا ہے۔۔
۔۔۔ اچھا بی بی جی میں گرم کر لاتی ہوں۔۔۔
ہممممم
۔۔۔۔ جیسے ہی ملازمہ کمرے سے نکلی اس بے فٹ سے دروازہ بند کر دیا۔۔۔۔
سنو ملازمہ جیسے ہی وہ پریشے کہ کمرے سے نکلی سامنے چوہدری نواز کھڑے تھے۔۔۔
ایک۔کام کرو جلدی سے کمرہ لاک کر دو پریشے کا اور جب تک میں نہ کہوں کمرہ نہ کھولنا۔۔۔
لیکن کیوں صاحب جی۔۔
زیادہ چو چراں نہ کر جیسا کہا ہے ویسے کر اور کسی کو خبر نہیں ہونی چاہیے اس بات کی۔۔۔
(چوہدری نواز نے علی کی والدہ کو گھر کہ دروازے پہ دیکھ لیا تھا تبھی کمرہ لاک کروا دیا)
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

Read More:  Ishq Mein Mar Jawan Novel By Hifza Javed – Last Episode 30

–**–**–
جاری ہے
——
آپکو یہ ناول کیسا لگا؟
کمنٹس میں اپنی رائے سے ضرور آگاہ کریں۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

%d bloggers like this: