Tere Ishq Nachaya Novel by Hafsa Rahman – Last Episode 5

0
تیرے عشق نچایا از حفصہ رحمن – آخری قسط نمبر 5

–**–**–

صاحب جی وہ جو دو دن پہلے مہمان آئے تھے وہ خاتون پھر آ گئ ہیں میں نے منع بھی کیا ہے لیکن وہ ضد کر رہی ہیں کہ آپ سے ملے بغیر نہیں جائیں گی ۔۔(چوکیدار نے آ کہ کہا)
تھیک ہے وہیں دروازہ پہ کھڑا رکھو آ رہا ہوں ۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پریشے کمرے میں مسلسل ادھر سے اُدھر ٹہل رہی تھی اچانک کسی خیال کہ تحت کھڑکھی کہ پردے ہٹائے تو سامنے کا منظر دیکھ کہ حیران ہو گی ۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آپ پھر آ گئ پچھلی بار کی بےعزتی بھول گئ چلی جائیں واپس دوبارہ مت آئیے گا۔
۔۔۔ دیکھیں ایک دفعہ میری بات سن لیں بچوں کی خوشی کا سوال ہے ایک دفعہ اس معاملے پہ غور تو کریں بچوں کے ساتھ ایسا ظلم نہ کریں۔۔۔۔
۔۔۔چلی جائیں یہاں سے اور ہاں سن لیں شادی کر رہا ہوں اپنی بیٹی کی تم جیسے کم ذات لوگوں میں کبھی بھی اپنی بیٹی کی شادی نہ کروں اب نکل جاؤ یہاں سے ۔ چوکیدار نکالو انہیں یہاں سے اور اگر دوبارہ نظر آئے تو گھر میں گھسنے نہ دینا۔۔۔۔…
……………
یہ تو علی کی ماما ہیں بابا انہیں نکال۔رہیں گھر سے بابا رک جائیں وہ بھاگتی ہوئ دروازہ کی طرف ۔۔ یہ۔دروازہ کیون نہیں کھل رہا کھولو اسے بابا دروازہ کھولیں انوش ماما ارحم دروازہ کھولیں اللہ کا واسطہ دروازہ کھولیں وہ پاگلوں کیطرح دروازہ بجا رہی ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یہ آوازیں کیسی ہیں ۔۔۔
ماما پریشے کی آواز ہے یہ میں دیکھتی ہوں۔۔۔
۔۔پریشے کیا ہوا ۔۔۔
انوش دروازہ کھولو انوشے نیچے علی کی ماما آئیں ہیں بابا انہیں گھر سے نکال رہے تھے انوشے دروازہ کھولو۔۔۔
۔۔۔۔یہ دروازہ کس نے لاک کیا ہے میں ابھی دیکھتی ہوں۔۔
انوشے رک جاؤ یہ دروازہ نہیں کھلے گا جس دن نکاح ہے اس دن دروازہ کھلے گا اس سے پہلے کسی نے دروازہ کھولنے کی کوشش کی تو مجھ سے برا کوئ نہیں ہو گا۔۔۔۔
۔۔۔۔۔ بابا آپ یہ اچھا نہیں کر رہے۔
میں بلکل تھیک کر رہا ہوں میرے کاموں میں مداخلت نہ کرو تم۔۔۔۔
۔۔۔نہیں بابا آج نہیں میں چپ نہیں رہوں گا آج … ہمیشہ آپ نے شاہزر کا ساتھ دیا اس کی ہر بات مانی اس نے ابھی بات منہ سے نکالی اور فورا پوری ہو گئ اس کی خواہش مجھ سے تو بس آپ اپنے بزنس کو کو منافع پہنچا رہے ہیں میری شادی بھی اسی لیے تسلیم کی تاکہ میں یہاں سے چلا نہ جاؤں اور آپ کہ بزنس کو کچھ ہو نہ جائے اچھے سے جانتا ہوں بابا شاہزر کوئ بزدنس ڈیل کے پیچھے نہیں گیا تھا آوارہ گردی کرنے گیا تھا یہ بھی جانتا ہوں پری کی شادی شاہزر کی خواہش کے پیچھے کروا رہے ہیں کیونکہ پھوپھو ایک بیٹی لے ایک دے کا حساب لگائ بیٹھی ہیں آپ نے ہمیشہ شاہزر کو ہم پہ فوقیت دی ہمیشہ اس کی ہر خواہش پوری کی اور اب بھی اس کی خواہش کے پیچھے اپنی بیٹی کی خوشیوں کی پرواہ بھی نہیں کر رہے بابا آپ یہ جو سب کر رہے ہیں بہت غلط کر رہے ہیں آپ پچتائیں گیں بابا ۔۔۔ ایک فیصلہ آپ نے کیا پری کی شادی کا ایک فیصلہ میں کرتا ہوں جس دن پری یہاں سے رخصت ہو گی اسی دن میں اور میری بیوی بھی یہ گھر چھوڑ جائیں ماما ہمارے ساتھ چلنا چاہیں تو ہم حاظر ہیں ۔۔۔
ارحم بیٹا یہ کیا کہ رہے ہو یوں گھر ٹوٹا نہیں کرتے ایسا نہیں کرتے۔۔۔
ماما ایسا ہی کرتے ہیں بابا نے مجھے مجبور کر دیا اس سب کے لیے اب میرا فیصلہ اٹل ہے ۔۔۔۔
۔۔ ہاں ہاں جاؤ ابھی جاؤ میرا بیٹا شاہزر میرا بزنس سنبھالے گا دیکھنا تم سے بھی زیادہ منافع پہنچائے گا یہ کیوں میرے بچے۔۔۔
۔۔ جی بلکل بابا ایسا ہی ہے۔۔۔۔
بابا اتنی بڑی زیادتی کی آپ نے میرے ساتھ میں کبھی معاف نہیں کروں گی آپ کو کبھی نہیں ۔۔۔۔(کہتے ساتھ ہی پریشے نے خود کو کمرے میں بند کر دیا )
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کل پریشے کا نکاح تھا اس نے ابھی تک خود کو کمرے میں بند رکھا ہوا تھا ۔۔
انوشے پیکنگ کر لی ساری ۔۔
۔۔۔ جی کر لی آپ بھی چیک لیں کچھ رہ نہ گیا ہو آپ کا۔۔
بیٹا ارحم یہ کیا کر رہے ہو ایسا نہ کرو میرے ساتھ اس گھر کے ساتھ ہمیں چھوڑ کہ نا جاؤ آمنہ بیگم ارحم کے سامنے ہاتھ جوڑے کھڑی تھی مل۔۔۔
ماما پلیز مجھے نہ روکیں ۔۔ ادھر بیٹھے میری بات سنیں
ہاتھ پکڑ کہ بیڈ پہ بٹھایا ۔۔۔۔
دیکھیں ماما بابا جو بھی کیا بہت غلط کیا انہیں لگتا ہے اگر میں چلا گیا تو شاہزر سب سنبھال لے گا وہ بہت سمجھدار ہے جبکہ ماما ایسا نہیں ہے شاہزر کو ابھی بہت وقت چاہیے میرے جیسا بننا کے لیے آپ بھی ہمارے ساتھ چلیں بابا کو احساس ہونا چاہیے روایات خاندان کے نام پہ انہوں نے شاہزر کی ہر خواہش پوری کی میری اور پری کی خوشیوں کو تباہ کر دیا یہ تو میں تھا لڑ جھگڑ کہ انوشے سے شادی کر لیکن وہ لڑکی ہے بہت حساس ہے وہ نہ لڑ سکتی ہے نہ مر سکتی ہے اس لیے اس نے خاموشی سے سب قبول کر لیا یہ مجھ سے برداشت نہیں ہو رہا میں یہاں مزید رک سکتا جب ماں باپ اولاد کو سدھارنے کے لیے بہت کچھ کر سکتی ہے تو بعض اوقات اولاد کو بھی ایسے کام۔کرنے پڑ جاتے ہیں آپ ہمارے ساتھ چلیں پلیز ۔۔۔
۔تھیک ہے میں بھی تمہارے ساتھ چلوں گی میں اپنی پیکنگ کر لوں انوشے بیٹا پری کو دیکھ لو ۔۔۔
۔۔۔۔ جی امی میں دیکھتی ہوں۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
شکر ہے ارسلان بیٹا تم سب آ گئے علی کا دل بہل جائے گا میں بہت پرشان ہوں اس لیے۔۔۔
آنٹی علی ہے کہا شہریار نے پوچھا۔۔
بیٹا اپنے کمرے میں ہے نکلتا ہی نہیں ہے باہر۔۔۔
ہم دیکھتے ہیں کب تک نہیں نکلتا باہر ۔۔
علی او علی چل باہر نکل ورنہ میں اور عاصم تیری بینڈ بجا دیں گیں چل باہر آ ۔۔۔
اوئے شیری تجھے مزہ آتا لڑائ جھگرے میں مجھے نہیں مجھے نہ گھسیٹ بیچ میں ۔۔۔
چپ کرو تم۔دونوں۔
آنٹی کیا آپ نے علی کو بتا دیا پریشے کا کل نکاح ہے ۔۔۔
۔۔ علی جو ان سب کی آوازیں سن کے نیچے اتر رہا تھا وہیں کا وہیں رہ گیا ۔۔۔
نہیں بیٹا میں کیسے بتاؤں اسے وہ مر جائے گا یہ سن کہ وہ برداشت نہیں کر پائے گا۔۔۔
آنٹی اگر اسے بعد میں پتا چلا تو شاید اب بچ جائے وہ لیکن تب برداشت نہیں کر پائے گا ہمیں بتا دینا چاہیے ۔۔۔
جی آنٹی ارسل تھیک رہا ہے ان دونوں نے بھی کہا۔۔۔
۔۔ میرے میں ہمت نہیں ہے بتانے کی خود ہی بتا دو تم لوگ۔۔۔
کسی کو کچھ بتانے کی ضرورت نہیں ہے میں نے سب سن لیا ہے۔۔
۔۔۔ علی ہم۔تجھے بتانے ہی والے تھے ہمیں غلط نہ سمجھنا اب تک اس لیے نہیں بتایا تو پرشان نہ ہو جائے۔۔۔
۔۔ اب کون سا خوش ہوا ہوں خیر چلو کہیں باہر چلتے ہیں میرا دم۔گھٹ رہا ہے یہاں ۔۔۔
ہاں ہاں کیوں نہیں چلو چلتے ہیں۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پری کچھ کھا لو تھوڑا سا پلیز تم نے اس دن سے کچھ نہیں کھایا ۔۔
یہی احسان مانو دروازہ کھول دیا ہے۔۔۔
پری پلیز خود کو یوں اذیت مت دو ۔۔
۔۔۔انوش ایک آخری کام کرو گی میرا ۔۔۔
ہاں بولو میری جان بھی حاظر ہے۔۔۔
۔۔۔ میری علی سے بات کروا دو آخری دفعہ پلیز ۔۔
۔۔ پریشے وہ کام کیوں کہتی ہو جو ممکن نہیں کسی کو پتا چل گیا تو۔۔۔
انوش خدا کے لیے ایک آخری بات بات کروا دو۔۔۔۔
اچھا تھیک ہے میں نمبر ڈائل کرتی ہوں۔۔۔
۔۔۔۔۔یہ لو بیل جا رہی ہے۔۔۔
ہیلو ہمیشہ کی طرح بھاری آواز ابھری ۔۔۔
علی کی آواز سن کہ پریشے ساکت ہو گئ وہ کچھ بولنے کے قابل ہی نہیں رہی ہمیشہ یہ شخص پریشے جو خاموش کرا دیتا۔۔۔
۔۔۔ پری یہ تم ہو نہ مجھ سے بات کرو کچھ تو بولو تم کیسی ہو ۔۔۔
آااااپ تھیک ہیں بامشکل وہ بول پائ
تم تھیک ہو یہ بتاؤ تم تھیک ہو تو میں بھی تھیک ہوں (دونوں کی آنکھوں میں مسلسل آنسو بہ رہے تھے)
علی میرا نکاح ہے کل۔۔
کس ٹائم ہے نکاح ۔۔
شام چار بجے۔۔
اور رخصتی
شام چھ بجے۔۔۔
۔۔ تھیک ہے ادھر تم رخصت ہونا اِدھر میں اس دنیا سے رخصت ہو جاؤں گا۔۔۔
فون بند ہو چکا تھا۔۔
۔۔ علی میری بات سنیں آپ ایسا کچھ نہیں کریں گیں علی علی علی ۔۔۔۔
پری کیا ہو گیا ہے فون بند ہو چکا ہے ۔۔۔
۔۔انوش پھر کرو فون جلدی کرو۔۔۔
۔۔پری کیا ہو گیا ہے سب تھیک ہے کیا اس کا فون بند جا رہا ہے۔۔
انوش انوش مجھے علی کے پاس جانا یا مجھے مار دو میں یہ نکاح نہیں کر سکتی میرے حال پہ رحم کرو وہ اس کے گلے بلک بلک کے رو رہی تھی۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آج پریشے کا نکاح تھا سرخ رنگ کے عروسی جوڑے میں ملبوس ہاتھوں میں مہندی لگی ہوئ نفاست سے میک اپ کیا ہوا بلکل تیار کھڑی تھی ۔۔۔
روپ ٹوٹ کر آیا تھا اس پہ لیکن وہ ایک زندہ لاش کی مانند لگ رہی تھی ۔۔
اللہ بری نظر سے بچائے پری بہت پیاری لگ رہی ہو۔۔
۔۔۔ انوشے میں علی کے لیے ایسا تیار ہونا چاہتی تھی ۔۔۔
پری یہی تمہاری قسمت ہے اسے قبول کر لو ۔۔
۔۔ قسمت بھی عجیب کھیل کھیلتی ہے سپنے کسی اور چیز کی دکھاتی ہے خواہش کی اور جیز کی کرواتی ہے اور جب باری آتی ہے تو ملتا کچھ اور ہے۔۔۔۔
پری بچے تم تیار ہو مولوی صاحب آ رہے ہیں ۔۔
جی لالا ۔۔۔
۔۔جبکہ ارحم اپنی سوہنی سی بہن کو دیکھتا ہی رہ گیا ایسا لگ رہا تھا جیسے کوئ پری زمین پہ اتر آئ ہو بلکل اپنے نام کی طرح ۔۔
اللہ تمہارے نصیب اچھے کرے بچے اب جو ہو رہا ہے اسے دل سے قبول کر لو ۔۔۔
اور کر بھی کیا سکتے ہیں لالا۔
۔۔۔ چلو مولوی صاحب آ رہے ہیں ۔۔۔
۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پریشے ولد چوہدری نواز کیا آپ کو شاہان ولد چوہدری اسلم سے نکاح قبول ہے ۔
مولوی صاحب دوسری دفعہ دہرا رہے تھے یہ الفاظ
پری بچے بولو کچھ۔۔
۔۔۔ تھیک ہے ادھر تم رخصت ہونا اِدھر میں دنیا سے رخصت ہو جاؤں گا۔۔۔
پریشے ولد چوہدری نواز کیا آپ کو شاہان ولد چوہدری اسلم سے نکاح قبول ہے۔۔
۔۔ تھیک ہے ادھر تم رخصت ہونا اِدھر میں دنیا سے رخصت ہو جاؤں گا۔۔۔
اِدھر میں دنیا سے رخصت سے ہو جاؤں گا ۔
علی کے الفاظ اس کے کانوں میں گونج رہے تھے ایسا لگ رہا تھا جیسے وہ بلکل اس کے پاس کھڑا اس کے کان میں سرگوشی کر رہا ہو۔۔
۔۔ ادھر تم رخصت ہونا اِدھر میں دنیا سے رخصت ہو جاؤں گا۔۔۔
علی نہیں تم مجھے چھوڑ کہ نہیں جا سکتے وہ مسلسل بڑبڑا رہی ہو۔۔۔
لالا مجھے جانے دیں مجھے علی کے پاس جانا ہے مجھے مت روکیں۔۔
وہ ارحم سے ہاتھ چھڑاتی بھاگتی ہوئ کمرے سے نکلی۔۔
۔۔۔ شاہزر پکڑو اسے ہماری عزت کا جنازہ نکال دے گی۔۔
بابا اسے جانیں دیں وہ نہیں رکے گی اسے مت روکیں آج۔۔
۔۔ تم بکواس بند کرو ارحم سب تمہاری دی گئ چھوٹ ہے یہ ۔
شاہزر پکڑو اسے….
پریشے رک جاؤ میں کہ رہا ہوں رک جاؤ تم ایسا نہیں کر سکتی ۔۔۔
وہ گیٹ پہ کھڑا اسے جانے سے روک رہا تھا۔۔
لالا میں خدا کا واسطہ دیتی ہوں آپ کو مجھے جانے دیں پلیز میرے پہ رحم کریں۔۔
۔۔۔۔ شاہزر ہٹ جاؤ راستے سے اسے جانے دو۔۔
نہیں بھائ ہر گز نہیں یہ چلی گئ تو میری شادی کیسے ہو گی۔۔
۔۔۔ شاہزر میں کہ رہا ہوں راستے سے ہٹ جاؤ اسے جانے دو ارحم نے اچانک پسٹل نکال لی ۔۔
بھائ یہ آپ اچھا نہیں کر رہے ۔۔۔
پری جاؤ اسے جلدی ۔۔
وہ دیوانہ وار سڑکوں پہ بھاگ رہی تھی اسے کچھ سمجھ نہیں آ رہا تھا وہ کہاں جائے ۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بھائ صاحب یہ کیا گل کھلایا ہے آپ کی بیٹی کی اگر یہی سب کرنا تھا تو ہمیں کیوں بے عزت کرنے کے لیے بلایا ۔۔۔
جا رہے ہیں ہم اور اب کبھی یہاں واپس نہیں آؤں گی۔۔
پھوپھو رک جائیں پلیز رک جائیں ۔۔
تم چپ کرو پہلے میں سوچ رہی تھی اگر پریشے بس تھیک طریقے سے بس گئ ہمارے گھر اور تمہارے باپ نے ہماری ساری ڈیماںڈیں پوری کر دی تو ہم تمہاری شادی اپنی بیٹی سے کروائیں اور اب تو یہ کبھی بھی ممکن نہیں ہو سکتا ۔۔۔چلو شاہان اسلم صاحب بہت بے عزتی ہو گئ۔۔۔
۔۔۔۔۔ بابا آپ بہت برے ہیں آپ کی وجہ سے میری شادی نہیں ہو سکے گی میں جا رہا ہوں یہاں سے آپ بہت برے ہیں ۔۔۔
۔۔شاہزر میرا بچا رک جاؤ میری بات سنو دیکھو میں سب تھیک کر دوں گا میں تمہاری شادی کرواؤں گا پھر تم میرے بزنس کو بھی سنبھالو گے۔۔۔
نہیں رکو گا اب میں یہاں جا رہا ہوں۔۔
۔۔۔ انوشے ماما چلیں ہم بھی نکلتے ہیں امید ہے میری بہن اپنے اصل مقام تک پینچ جائے گی ۔۔۔۔۔
ارحم تم لوگ رک جاؤ مجھے اکیلا مت چھوڑو میرا بزنس کون سنبھالے گا ہمارء روایات اس کی اجازت نہیں دیتی۔۔
۔۔۔ بابا اپنے ہونہار بیٹے کو بلائیں نہ وہ سنبھالے گا یہ گھر بھی آپکو بھی اور آپ کے بزنس کو بھی۔۔۔۔
۔۔۔ چلیں انوش ماما ۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔سب مہمان بھی آہستہ آہستہ جا چکے تھے اس بڑے سے گھر میں صرف اور صرف چوہدری نواز رہ گئے تھے ۔۔۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ مسلسل سڑکوں پہ بھاگ رہی تھی اسے کچھ سمجھ نہیں آ رہا تھا وہ کیا کرے وہ کہاں جائے ۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پری دیکھو کبھی تمہارا دل کیا مجھے سرپرائز دینے کا تو نہ جب بحریہ ٹاؤں میں آؤ گی نہ تو سامنے سٹور ہو گا جب اس سٹور میں جاؤ گی نہ تو کہنا علی کا گھر کونسا ہے تو وہ کہے گا کون وہ ایٹیٹیوڈ مین تو تم کہنا ہاں ہاں وہی تو وہ تمہیں لے آئے گا ہمارے گھر۔۔۔
۔۔۔۔ ہاہاہاہا پہلی بات ہے میں آپکو ایسا سرپرائز کیوں دوں آپ خود آئیں گیں نہ مجھے لینے ۔۔۔۔
اور آپ ایٹیٹیوڈ مین کب سے ہو گئے ہاہاہاہاہاہاہا
ہنس کیوں رہی ہو میں کوئ جوک تو نہیں سنایا۔
ہاہاہاہاہا آپ ایٹیٹیوڈ مین تو نہیں ہیں ۔۔
ہاں میں ہوں بس تمہارے سامنے ہار گیا میں۔۔۔
ہاہاہاہاہا۔
۔۔ تم ہنس لو میں کال بند کر رہا ہوں۔۔۔
ہاہاہا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہاہاہا آپ ایٹیٹیوڈ مین وہ بے اختیار کہ گئ
علی میں آ رہی ہوں وہ چلتے چلتے پوچھتے پوچھتے علی کے بتائے گئے علاقے میں آ ہی گئ تھی۔۔
۔۔ سٹور سٹور کہاں ہے۔۔۔
وہ رہا ۔۔۔
وہ بھاگتی ہوئ اندر گئ لوگ اسے اس حالت میں دیکھ کہ باتیں بنا رہے تھے کوئ کچھ کہ رہا تھا تو کوئ کچھ لیکن اسے پرواہ نہیں تھی ۔۔
علی علی کا گھر کونسا ہے اس نے کاؤنٹر پہ جا کہ پوچھا۔۔
وہ ایٹیٹیوڈ مین ۔۔
جی جی وہی ۔۔
آپ پریشے ہیں کیا ۔۔۔
جی میں ہی ہوں۔۔
۔۔۔ ارے واہ آپ آ گئ وہ روز مجھ سے پوچھتا تھا اس کا خیال تھا ایک دن پریشے نامی لڑکی آئے گی بنا بتائے سرپرائز دینے اور آپ آ گئ میں آپ کو لے کہ جاتا ہوں۔۔
وہ خاموشی کے ساتھ چل رہی تھی ۔۔۔
جیسے ہی دروازے پہ پہنچے عجیب سی رونے کی آہ و بکا کی آوازیں آ رہی تھی ۔۔
یہ یہ کیسی آوازیں ہیں کیا ہوا ہے ۔۔۔
وہ شخص اسے دروازے پہ چھوڑ کہ مردوں کے جمگھنتے میں گھس گیا اور وہ سمجھنے کی کوشش کر رہی تھی یو کیا رہا ہے۔۔
۔ ۔۔۔ کچھ ہی فاصلے پہ ارسلان کھڑا نظر آیا اسے۔۔۔
ارسلان بھائ یہ یہ کیا ہو رہا ہے یہ کیسا شور ہے علی کہاں ہے اسے کہیں میں آ گئ ہوں۔۔
ارسلان اس سجی سنوری دلہن کو دیکھ رہا تھا جس کے لیے وہ آئ وہ تو اس دنیا سے جا چکا تھا۔۔ ۔
۔۔۔ ہائے علی تم نے بہت جلدی کر دی جانے میں۔
۔۔۔۔۔ کیا ہوا ہے کچھ بتائیں علی کہاں ہیں۔۔۔
پریشے علی نے اپنی جان لے لی ۔۔۔
۔۔ کیا کیا کہ رہے ہیں آپ یہ کیسا ہو سکتا ہے ۔۔
وہ دیوانہ وار بھاگتی ہوئ گھر کہ اندر گئ تو سامنے ہی علی کی میت پڑی تھی.
۔۔۔۔ “”علی علی یہ کیا کیا تم نے یہ کیا کر دیا اٹھو دیکھو میں آ گئ ہوں میں آ گئ ہوں سب کچھ چھوڑ کہ تمہارے لیے آ گئ ہوں علی اٹھو اٹھو نہ چلو اٹھ جاؤ دیکھو دیکھو میں تیار ہوئ ہوئ ہوں سب کہ رہے تھے بڑی پیاری لگ رہی ہوں اٹھو نہ دیکھو مجھے بتاؤ کیسی لگ رہی ہوں میں ۔۔ میں بلکل ویسی تیار ہوئ ہوں جیسے تم چاہتے تھے چلو اب اٹھو ہم دونوں کہ ایک ہونے کا وقت ہو گیا ہے اب اٹھو بھی مجھے ایسے مزاق نہیں پسند تم اب ایٹیٹیوڈ دکھا رہے ہو اچھا میں نارض ہو کہ واپس چلی جاؤں گی اٹھ جاؤ مجھے اور نہ ستاؤ اٹھ جاؤ نہ علی تم ایسا نہں کر سکتے میرے ساتھ تم مجھے ایسے چھوڑ کہ نہیں جا سکتے تم نے کہا تھا میں ہر قدم پہ تمہارے ساتھ ہوں گا تو پھر یہ کیا ہے ہاں بتاؤ مجھے تم نے کہا تھا میں ساری زندگی انتظار کر سکتا ہوں تمہارو اور تم چند گھنٹے میرا انتظار نہیں کر سکے تم نے کہا تھا میں بڑی بڑی باتیں نہیں بناتا تو یہ کیا کیا ہے ہاں یہ کوئ چھوٹی حرکت کی ہے تم نے تم مجھے ایسے حال میں چھوڑ کہ کیسے جا سکتے ہو بس یہ یہ تھی تمہاری محبت چلو اٹھو اب بس کرو بس کرو نہ۔۔۔””
آنٹی آنٹی علی آپکا لادلا ہے نہ ہر بات مانتا ہے اسے کہیں اٹھ جائیں ایسا نہ کرے میرے ساتھ ۔۔۔
علی اٹھ جاؤ اپنی امی کی بات سن لو اٹھ جآؤ ۔۔
۔۔۔ وہ کبھی علی کی میت کے پاس جاتی تو کبھی اس کی والدہ سے پاس جاتی ۔۔۔
وہ رو رہی تھی علی کی منتیں کر رہی تھی وہاں موجود ہر انسان کو رلا رہی تھی۔۔۔۔
کچھ ہی دیر بعد علی کو قبرستان لے کہ جانے لگے تو وہ بھی چپ کر کہ اٹھی اور علی کی چاڑپائ کہ ساتھ چلنے لگی جیسے اسے آخر تک الوداع کہ رہی ہو وہاں موجود کسی بھی انسان میں اس کو روکنے کی ہمت نہ تھی ۔۔۔
۔۔۔۔ وہ قبرستان تک علی کے ساتھ قبرستاب کے دروازے پہ رک کہ وہیں سے علی کو منوں مٹی تلے جاتے دیکھ رہی تھی۔۔
یہاں تک کہ علی مٹی تلے دفن ہو چکا تھا لوگ جا چکے تھے ہر طرف گیرا اندھیرا چھا چکا تھا۔۔۔۔لیکن وہ وہیں کی وہیں بیٹھی اپنے پیارے کی قبر کو دیکھ رہی تھی۔۔۔
۔۔۔۔ کڑیے اتھے کی کر رہی ہاں او وہ اس حالات اتھو چلی جا دیہے ہنیرا ہو گیا اتھے رہنا تھیک نہیں تیرے واسطے اتھو چلی جا وہ گورگن تھا اسے یہاں سے جانے کا کہ رہا تھا۔۔۔
۔۔۔علی میں نے کہا تھا نہ تم مجھے برباد کر دو گے کہیں کا نہیں چھوڑو گے اور دیکھا تم نے مجھے کہیں کا نہیں کا نہیں چھوڑا علی ۔۔۔
دہیے لگدا کسی پیارے نوں کھویا اے تو لیکن دہیے اتھے رہنا تھیک نہیں تیرے واسطے تو چلی جا اتھو
۔۔چند لمحے تو وہ اس گوگن کو دیکھتی رہی جو دن میں لا تعداد لوگوں کو زمین میں دفن کرتا ہو گا۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دو دن سے وہ مسلسل چل رہی تھی زندہ لاش بنی اسے کوئ فکر نہیں تھی کہ وہ گھر سے دلہن کے روپ میں نکلی تھی ابھی تک اسی حلیے میں اسے کہیں اپنا ٹھکانہ نہیں مل تھا نہوہ چل چل کہ تکھی جیسے بے حس ہو گئ ہو۔
۔۔ تیرے عشق نچایا کر تھیا تھایا۔۔
۔۔ تیرے عشق نچایا کر تھیا تھیا۔۔
کہیں سے آوازیں آ رہی تھی یہ آوازیں اس کہ دل پہ عجیب کیفیت طاری کر رہی تھی ان آوازوں کا تعاقب کرتی وہ چلتی جا رہی تھی وہ نہیں چل رہی تھی اس کے پیر خود بخود چل رہے تھے۔۔
۔۔۔ پندرہ منٹ کی مسافت کے بعد وہ ان آوازوں کا تعاقب کرتی اس مقام پہ پہنچی جہاں سے آوازیں آ رہی تھی تو سامنے ایک دربار موجود تھا جہاں کچھ لوگ اپنی خوبصورت آواز میں اس کلام کو پڑھ رہے تھے تو کچھ لوگ اس کلام پہ جھوم رہے تھے ایسے جیسے وجد طاری ہو گیا ہو لمبے لمبے کپڑے بال بکھرے ہوئے حلیے سے فقیر لگ رہے تھے پریشے بھی وہیں بیٹھ کہ یہ سب دیکھنے لگ پڑی وہ گھنٹوں ٹکٹی باندھ کہ ان فقیروں کو جھومتے دیکھتی رہتی۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اس بات کو گزرے چار مہینے ہو چکے تھے
ارحم انوشے اور آمنہ بیگم امرکہ شفٹ ہو گئے ان کا خیال تھا پریشے علی کے ساتھ خوش ہے انہیں نے مڑ کہ واپس خبر نہ لی..
شاہزر گھر سے جانے کے بعد جب دوستوں کے پاس رہنے کے لیے گیا وہ نشہ کرتے تھے اسے بھی نشہ کی عادی بنا کہ چوریاں وغیرہ کرواتے پندرہ دن پہلے ہی وہ پولیس کے ہاتھوں چھڑھ گیا اور اب جیل میں سڑ رہا ہے ۔۔
۔۔۔۔ چویدری نواز کو بزنس میں بہت بڑا لاس ہوا انکا سارا بزنس ختم ہو گیا جس کا ان کو اتنا بڑا دھچکا لگا کہ انہیں فالج کا اٹیک ہوا اور وہ انکے جسم کا ایک حصہ ساری زندگی کہ لیے مفلوج ہو گیا اب وہ اولڈ ہاؤس میں اپنی باقی کی زندھی گزار رہے ہیں۔۔۔
جب چوہدری نواز کو اٹیک ہوا انہیں لوگ ہسپتال لے کہ آئے کچھ عرصہ ہسپتال والوں نے رکھا جب ان کا کوئ ولی وارث نہ آیا تو ہسپتال والوں نے انہیں اولڈ ہاؤس منتقل کر دیا۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
علی کی والدہ علی کے جانے کے بعد بلکل اکیلی ہو گئ تھی اس لیے ارسلان انہیں اپنے گھر لے کہ آیا چونکہ ارسلان کے والدین بھی نہیں تھے اس لے اب ارسلان ہی ان کا بیٹا تھا۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔
اس تمام عرصہ پریشے اسی دربار میں رہی اگر کسی نے کھانے کو دے دیا تو تھیک ورنہ ہفتہ ہفتہ بھوکی رہتی تھی ۔۔
۔۔ایک خاتون جو کہ وہیں رہتی تھی انہوں نے اتنی مہرنای کی اس کا عروسی جوڑا تبدیل کروا دیا اور اس کے زیور وغیرہ محفوظ کر دیے بعض اوقات اس کے لیے کھانا بھی لے آتی اور گھنٹوں بیٹھ کہ باتیں کرتی جس کے جواب میں پریشے صرف دیکھتی رہتی اسے۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ارسلان بیٹا یہاں دربار پہ گاڑی روکنا میں چادر چڑھا دیتی ہوں اپنے علی کے لیے دعا مانگتی ہوں ۔۔۔
ارسلان اور علی کی والدہ کسی کام سے سلسلے سے یہاں سے گزر رہے تھے
۔۔۔ جب وہ لوگ واپس جانے لگے تو ارسلان کی نظر پریشے پہ پڑی تو وہ نظر ہٹانا ہی بھول گیا۔۔۔
کیا ہوا بیٹا چل کیوں نہں رہے۔۔۔
آنٹی وہ پریشے ہے نہ۔۔
۔۔۔ ہاں بیٹا ہے تو وہی مجھے لگا تھا شادی وغیرہ ہو گئ یو گی یہاں کیا کر رہی ہے یہ۔۔
۔۔۔ لمبا گھیر دار فراک بال بکھڑے ہوئے ایسے جیسے عرصے سے کنگھی نہیں کی سفید نرم چہرہ کوئ اور ہی رنگ اختیار کر گیا تھا۔۔
……….
چیتھی مڑی وے تبیبا نہی تے میں مر گئیاں
تیرے عشق نچایا کر تھیا تھیا تھیا تھیا
تیرے عشق نچایا کر تھیا تھیا تھیا تھیا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کلام کی آواز سارے دربار میں گونج رہی تھی
پریشے پہ پھر سے وہی سحر طاری ہو گیا تھا جو اس کلام۔کو سنتے ہی طاری ہو جاتا تھا۔
۔۔۔
پریشے بیٹا تم یہاں کیا۔کر رہی ہو بیٹا گھر جاؤ اپنے یہ کیا حلیہ بنایا ہوا ہے چلو اٹھو تمہارے گھر چھوڑ دوں میں
۔۔ کونسا گھر میرا گھر تو یہی ہے نہ جہاں میں اور علی رہتے ہیں ۔۔۔
بیٹا علی اس دنیا سے چلا گیا ہے وہ یہاں کیسے آ سکتا ہے۔
۔۔وہ آپ کو نظر نہیں آتا وہ مجھے نظر آتا ہے وہ دیکھیں بلا رہا ہے وہ مجھے وہ بلا رہا ہے میں جاتی ہوں اس کے پاس وہ بلا رہا ہے۔۔
۔۔۔وہ بھاگتی ہوئ ان لوگوں میں شامل ہو گئ جو کلام پہ جھوم رہے تھے۔
مست قلندر تھیا تھیا
عشق نچایا تھیا تھیا
اس عشق دی جھنگی دی مور بلندا
سانوں کعبہ تے قبلہ سوہنا یار دسیندا
سانوں گھائل کر کہ فر خبر نہ لئ آ
تیرے عشق نچایا تیرے عشق نچایا کر تھیا تھیا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
چلیں آنٹی اب یہی اس کا آصل مقام ہے ہائے علی تیری محبت نے واقعی اسے کہیں کا نہیں نہ چھوڑا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ ایک ہاتھ ہوا میں بلند کیے ایک ہاتھ کمر میں رکھے اپنی دنیا میں مست جھوم رہی تھی اور گنگنا رہی تھی۔۔۔
تیرے عشق نچایا کر تھیا تھیا تھیا
تیرے عشق نچایا کر تھیا تھیا تھیا تھیا
تیرے عشق نچایا کر تھیا تھیا تھیا تھیا۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

Read More:  Harma Naseeb Na Thay By Huma Waqas – Episode 8

–**–**–
ختم شد
——
آپکو یہ ناول کیسا لگا؟
کمنٹس میں اپنی رائے سے ضرور آگاہ کریں۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

%d bloggers like this: