Bushra Zahid Qureshi Urdu Novels

Yaaran Naal Baharan Novel By Bushra Zahid Qureshi – Episode 2

Yaaran Naal Baharan Novel By Bushra Zahid Qureshi
Written by Peerzada M Mohin
یاراں نال بہاراں از بشریٰ زاہد قریشی – قسط نمبر 2

–**–**–

“تو سفر میرا۔۔۔
ہے تو ہی میری منزل۔۔

ابھی اس نے گانا شروع ہی کیا تھا کہ سارا گراؤنڈ اس کے ساتھ ساتھ گانے لگا ۔۔اور وہ گٹار کے تاروں کے ساتھ ساتھ مومل کے دل کے تار بھی چھیڑ گیا تھا۔۔۔

“تو سفر میرا۔۔۔
ہے تو ہی میری منزل۔۔۔
تیرے بنا گزارا۔۔۔
اے دل ہے مشکل۔۔۔۔۔۔

تو میرا خدا۔۔۔
تو ہی دعا میں شامل۔۔۔۔
تیرے بنا گزارا۔۔۔
اے دل ہے مشکل۔۔۔۔۔۔

مجھے آزماتی ہے تیری کمی۔۔۔
میری ہر کمی کو ہے تو لازمی۔۔۔
جنون ہے میرا۔۔۔۔
بنوں میں تیرے قابل۔۔۔۔
تیرے بنا گزارا۔۔۔۔۔
اے دل ہے مشکل۔۔۔۔۔

یہ روح بھی میری۔۔۔۔
یہ جسم بھی میرا۔۔۔۔۔
اتنا میرا نہیں۔۔۔
جتنا ہوا تیرا۔۔۔۔۔

تو نے دیا ہے جو۔۔۔۔۔
وہ درد ہی سہی۔۔۔۔۔
تجھ سے ملا ہے تو۔۔۔
انعام ہے میرا ۔۔۔۔

میرا آسمان ڈھونڈے تیری زمین۔۔۔
میری ہر کمی کو ہے تو لازمی ۔۔۔

زمین پہ نہ سہی۔۔۔۔۔
تو آسماں میں آمل۔۔۔۔۔
تیرے بنا گزارا۔۔۔۔۔
اے دل ہے مشکل۔۔۔۔۔

اس نے گانا ختم کیا تو پورا گراؤنڈ تالیوں اور احد کے نعروں سے ایک بار پھر گونج اٹھا۔۔۔۔۔
احد نے ان ساتوں کو دیکھا جو سب کے ساتھ مل کر اسکا نام پکار رہے تھے۔۔۔ اس نے سب کو اپنی طرف متوجہ کروایا اور اسٹینڈ پر لگے مائک کو ہاتھوں میں لے کر کہا۔۔
“I dedicate this song to my best friends my everything ‘THE AFLATOONS….’ “
اور ایک بار پھر گٹار کو ہاتھ میں پکڑے گانا شروع کیا۔۔۔

“سب سے مہنگی ہے۔۔۔
چلتی رہتی ہے۔۔۔۔
رکتی نہیں دوستی۔۔۔۔
تیری میری ایسی دوستی۔۔۔

تیرے لیے۔۔۔۔۔
میرے لیے۔۔۔۔۔۔
سب کے لیے۔۔۔۔۔
دوستی۔۔۔ دوستی۔۔۔
ہو ہر جگہ ایسی دوستی۔۔۔۔

جب ہمدم ملے۔۔۔
سب کچھ ملے۔۔۔۔
کرنا نہیں پھر تم شکوے گلے۔۔۔
ہو ہو۔۔۔۔ ہو۔۔۔۔۔۔

کچھ لے کے جاتی ہے۔۔۔
دے کے جاتی ہے۔۔۔
ہمیشہ۔۔۔۔۔
دوستی۔۔۔۔۔ دوستی۔۔۔۔
تیری میری ایسی دوستی۔۔۔۔۔

دکھ سکھ سہتی ہے۔۔۔
پل پل بہتی ہے۔۔۔
دیکھو۔۔۔۔۔
دوستی۔۔۔۔ دوستی۔۔۔۔
تیری میری ایسی دوستی۔۔۔۔

یادیں بھی ہیں۔۔۔۔
سپنے بھی ہیں۔۔۔۔
غیروں میں یہاں کچھ اپنے بھی ہیں۔۔۔
ہو ہو۔۔۔۔ ہو۔۔۔۔

جب ان ساتوں سے برداشت نہیں ہوا تو وہ سارے اسٹیج پر چڑھ گئے اور ایک دوسرے کے ہاتھ میں ہاتھ ڈال کر ایک ساتھ گانے لگے۔۔۔۔

“سب سے مہنگی ہے۔۔۔
چلتی رہتی ہے۔۔۔۔
رکتی نہیں۔۔۔۔۔
دوستی۔۔۔۔ دوستی۔۔
تیری میری ایسی دوستی۔۔۔۔۔

گانا ختم ہونے کے بعد ازلان نے احد کے ہاتھ سے مائک اچکا اور سب کو اپنی طرف متوجہ کروایا۔۔۔۔
“SO GUYS THERE ARE ONLY TEN SECONDS ARE LEFT IN AHAD’S BIRTHDAY SO LET’S START THE COUNTDOWN WITH ME……”
10
09
08
ازلان نے کاؤنٹڈاون شروع کیا تو سب اس کے ساتھ ساتھ دہرانے لگے۔۔۔۔
05
04
03
02
01
“HAPPY BIRTHDAY AHAD……!!!!!!!”
پوری یونیورسٹی نے احد کو برتھڈے وش کی اور پھر ان آٹھوں نے مل کر کیک کٹنگ کی اور احد کو اسنو اسپرے سے نہلانے بعد ان سب نے کیک کے ساتھ انصاف کیا جس میں سے آدھے سے زیادہ کیک تقی اپنی گود میں لے کر وہی اسٹیج پر ہی بیٹھ گیا۔۔۔جبکہ بنش ہاتھ میں کیمرہ پکڑے ایک ایک منظر کو اس میں قید کر رہی تھی۔۔۔۔
اور پھر اسی طرح اس یادگار شام کا اختتام ہوا۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“ارے یار گاڑی کا ٹائر پنکچر کیسے ہوگیا۔۔۔؟”
وہ لوگ صبح یونی جانے کے لیے نکل رہے تھے تب ہی احد نے گاڑی کے ٹائر کو پنکچر دیکھا۔۔۔
“افف بھائی ابھی چینج کریں گے تو کلاس مس ہوجانی ہے۔۔۔”
بنش نے احد کو ٹائر نکالتے دیکھا تو بول اٹھی۔۔۔ اتنے میں مومل بھی وہاں آچکی تھی۔۔۔
“السلام وعلیکم۔۔۔ کیا ہوا بنی کوئی مسئلہ ہے۔۔؟”
مومل نے پہلے سلام کیا پھر احد کی طرف اشارہ کرتے ہوئے کہا جو ٹائر کو دیکھ رہا تھا۔۔۔
” کچھ نہیں یار ٹائر پنکچر ہوگیا ہے گاڑی کا۔۔۔”
بنش نے اپنی جمائی ہاتھ سے روکتے ہوئے کہا۔۔۔
“تو اب۔۔۔؟”
مومل نے تشویش سے پوچھا۔۔
“تو اب یہ کہ ہم نے یونی پوائنٹ (بس) سے جانا ہے تو اس کے لئے ہمیں اسٹاپ تک جانا ہوگا۔۔۔۔”
جواب بنش کے بجائے احد کی طرف سے آیا تھا۔۔۔
“اوکے چلو پھر۔۔۔”
وہ لوگ پوائنٹ کے انتظار میں اسٹاپ پر کھڑے تھے کہ احد کی نظر مومل پر پڑی کا ڈوپٹہ بار بار سر سے پھسل رہا تھا۔۔
“بنش ڈوپٹہ صحیح سے لو گر رہا ہے سر سے تمہارے۔۔۔۔”
اس نے کہا بنش سے تھا لیکن اشارہ مومل کی طرف تھا۔۔۔
“بھائی کیا ہوگیا ہے صحیح سے تو لیا ہوا ہے۔۔۔”.
بنش نے اپنے دوپٹے کو دیکھ کر کہا۔۔۔
جبکہ مومل جو احد کا اشارہ سمجھ چکی تھی جلدی سے اپنا گرتا ڈوپٹہ واپس سر پر جمایا۔۔اور احد کو دیکھا جس کے لب پل بھر کو مسکراہٹ میں ڈھلے تھے۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“بھائی ہم اس میں جائیں گے۔۔؟”
بنش نے حیرانی سے اس چیز کو دیکھا جو اوپر سے نیچے تک اسٹوڈنٹس سے بھری پڑی تھی۔۔۔۔
“میرے خیال سے تو یہی ہے وہ شاہکار جس کا تھا ہمیں انتظار۔۔۔۔۔”
احد نے بھی تبصرہ کیا۔۔۔
“لیکن ہم اس میں چڑھے کیسے؟”
ابھی احد کچھ کہنے ہی والا تھا کہ پوائنٹ واپس چلنے لگا۔۔۔
“ارےےے وہ سب بعد میں سوچنا پہلے چڑھو اس میں۔۔۔”
احد کے چلانے پر وہ تینوں اس بس سے ملتی جلتی عجیب سی سواری میں چڑھ تو گئے لیکن کچھ ایسے کہ بنش کا ایک پاؤں پوائنٹ کی آخری سیڑھی پر اور دوسرا باہر کی ٹھنڈی ہوا سے لطف اندوز ہو رہا تھا۔۔جبکہ مومل پوائنٹ کے اندر دونوں پاؤں رکھنے میں کامیاب تو ہوگئی تھی لیکن اس کے بعد اس کی آنکھوں کے سامنے اندھیرا چھا گیا۔۔۔۔
نہیں نہیں آپ غلط سمجھ رہے ہیں۔۔۔وہ اندھیرا کسی بےہوشی کی وجہ سے نہیں بلکہ پوائنٹ میں اسٹوڈنٹس کا ہجوم ہی اتنا تھا کہ اسے بس ایک لڑکی کے سر کے علاوہ کچھ نظر ہی نہیں آرہا تھا۔۔۔۔
ارے یہ تو پھر بھی کھلی جگہ تھی لڑکوں کے ایریا میں تو قیامت کا سماں تھا۔۔۔۔اور اس مشکل گھڑی میں ہمارے احد بھائی سپائیڈر مین کی طرح دونوں ہاتھوں سے بس کے دروازے کا ہینڈل تھامے پورے کے پورے باہر جھول رہے تھے۔۔۔۔۔اور اسے بھی اپنی خوش قسمتی سمجھ رہا تھا کیونکہ ابھی ایک اور اسٹاپ سے بھی اسٹوڈنٹس نے اسی پوائنٹ (.) نامی سواری میں چڑھنا تھا۔۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جب وہ تینوں یونیورسٹی پہنچے تو انکی حالت ایسی تھی کہ وہ پوائنٹ سے نہیں کسی رولر کوسٹر سے آرہے ہوں۔۔۔ احد کے بال ہوں کھڑے تھے کہ مانو چڑیا ابھی گھونسلہ چھوڑ کر اڑی ہو۔۔۔ مومل کی پونی ٹیل ڈھیلی ہوچکی تھی جبکہ بنش کی چوٹی میں سے بینڈ کو ہوا اڑا لے گئی تھی۔۔۔۔۔ جب وہ اپنی گینگ کے پاس پہنچے تو سب انہیں ایسے دیکھ (گھور) رہے تھے کہ انسان نہیں ایلیئن دیکھ لیا ہو۔۔۔۔
“بھائی خیریت کیا راکٹ سے لینڈ ہوئے ہو۔۔۔؟”
ازلان نے حیرانی سے پوچھا۔۔۔۔
“ہاں اپنا پوائنٹ راکٹ سے کم بھی نہیں تھا۔۔۔۔۔”
احد نے ہنستے ہوئے اپنے بالوں میں انگلیاں چلاتے ہوئے انہیں صحیح کیا۔۔۔۔
“بنی کیا جلدی جلدی میں چوٹی کو بینڈ لگانا بھول گئی ہو کیا۔۔۔؟”
زینہ نے اس کے بالوں کی طرف اشارہ کیا۔۔۔۔
“نہیں بہن ہوا میں اڑ گیا ہے وہ۔۔۔ اففف اب کیا کروں آخری کلاس تک تو سارے بال کھل جانے ہیں۔۔۔”
بنش نے بالوں کو دیکھتے ہوئے کہا جو آدھے سے زیادہ کھل چکے تھے۔۔۔۔
“اوئے بگز بنی یہ لگالو آج ہی لائبہ کے سر سے نکالا تھا۔۔۔”
معیز نے اپنی جیب سے کیچر نکال کر اسکی جانب اچھالا جسے اس نے سرعت سے کیچ کر لیا۔۔۔۔۔
“ویسے تو میں اس لائبہ کی کسی چیز کو ہاتھ نہ لگاؤں لیکن مجبوری ہے تو لگا ہی لیتی ہوں۔۔۔”
بنش نے منہ چڑاتے ہوئے بالوں کو جوڑے کی شکل میں باندھ لیا۔۔۔۔
“اب چلو بھئی ورنہ پروفیسر نے گھسنے نہیں دینا کلاس میں۔۔۔۔”
وفا نے ان سب کو گھورتے ہوئے کہا اور پھر سب کلاس کی جانب چل پڑے۔۔۔۔۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“سر مے وی کم اِن۔۔۔؟؟”
احد کے کہنے پر سر کے بورڈ پر چلتے ہاتھ تھمے تھے۔۔۔
“نو۔۔۔!!!”
سر نے ناک سے کرخت آواز میں کہا۔۔۔۔
“سر پلیز سر۔۔”
اب کی بار ازلان نے کہا تھا۔۔۔
“نو۔۔۔ تم لوگ پورے ساڑھے سات منٹ لیٹ ہو۔۔۔”
سر نے گھڑی میں ٹائم دیکھتے ہوئے اسی لہجے میں کہا۔۔۔
اور نا چاہتے ہوئے بھی ان لوگوں کے چہرے پر مسکراہٹ آگئی جسے وہ بڑی مشکل سے روکنے کی کوشش کر رہے تھے۔۔۔
“سر۔۔۔”
تقی کے کہنے پر تو سر سیخ پا ہی ہوگئے۔۔
“روز تم چاروں لیٹ آتے ہو آج کیا بہانہ ہے تم لوگوں کے پاس۔۔۔؟”
سر نے درشتگی سے کہا۔۔۔
“سر ہم پھنس گئے تھے۔”
“سر میں گر گیا تھا۔”
“ٹریفک بہت تھا سر۔۔”
“سر وہ پوائنٹ۔۔۔۔۔”
چاروں نے الگ الگ بہانے بنا ڈالے۔۔۔۔
“گیٹ آؤٹ فرام مائ کلاس۔۔۔۔”
اب کی بار تو ان چاروں کو اپنی ہنسی روکنا محال ہو گیا۔۔۔
“سر ہم پہلے کب اندر ہیں۔۔
“تم لوگ جاتے ہو یا۔۔۔۔۔”
اس سے پہلے کہ وہ کچھ اور کہتے اور ان کی ہنسی کا فوارہ چھوٹتا ان چاروں نے سرپٹ دوڑ لگائی۔۔۔۔
اور تھورا آگے پہنچ کر وہ لوگ پاگلوں کی طرح ہنسے جارہے تھے کہ احد کی نظر نوٹس بورڈ پر پڑی۔۔۔۔
“ابے یہ کیا ہے۔۔۔؟”
اس نے ہونقوں کی طرح بورڈ پر دیکھتے ہوئے کہا۔۔۔
“یار ازلان غور سے دیکھیو یہ وہ تو نہیں ہے نا جو میں سمجھ رہا ہوں۔۔۔۔؟”
تقی نے بسکٹ کھاتا ہاتھ روک کر ازلان سے کہا۔۔۔۔
“نہیں یار یہ نہیں ہو سکتا۔۔۔۔”
ازلان نے بے یقینی کے عالم میں کہا۔۔۔
“بھائی یہ ہوچکا ہے اور یہ سچ ہے کہ اگلے مہینے سے ہمارے فائنل ایگزامس ہیں۔۔۔۔”
احد نے خود کو سنبھالتے ہوئے کہا وہیں معیز نے بھی اپنا ساؤنڈ سسٹم آن کیا۔۔۔۔
“ہم پر یہ کس نے گرین رنگ ڈالا
بے فکری نے ہماری ہمیں مار ڈالا۔۔۔”
بھائی بس کر ایسی سٹویشن میں بھی تجھے گانا ہے وہ بھی غلط۔۔۔۔”
ازلان نے معیز کو ایک مکا جڑا۔۔۔۔۔
اب وہ چاروں کینٹین کی منڈیر پر لائن سے بیٹھے اپنی قسمت پر ماتم کر رہے تھے۔۔۔۔
“بھائی سمندر جتنا سلیبس ہے۔۔۔”
ازلان نے سگریٹ کا کش بھر کر احد کی طرف بڑھایا۔۔۔۔
“ہم معصوم دریا جتنا پڑھ پاتے ہیں۔۔۔”
احد نے بھی ایک کش بھر کر سگریٹ معیز کو پکڑائی۔۔۔
“مجھے تو بالٹی بھر یاد ہوتا ہے۔۔۔۔”
معیز نے بھی کش بھر کر آگے بڑھایا۔۔۔
“جوس کے گلاس جتنا پیپر میں لکھ سکتا ہوں۔۔۔”
تقی نے سگریٹ کو نیچے پھینک کر اپنے جوتے کی نوک سے مسل دیا۔۔۔
“چلو بھر نمبر ملینگے اور تم چاروں اسی میں ڈوب کر مر جانا۔۔۔۔”
وفا کی آوار پر ان چاروں نے پیچھے مڑ کر دیکھا جہاں وفا کے ساتھ وہ تینوں بھی کھڑی تھی۔۔۔۔۔
“استغفراللّہ وفا شبھ شبھ بولو۔۔۔۔”
تقی نے دل پر ہاتھ رکھ کر وفا سے کہا۔۔۔۔۔
“چل بھائی کوئی اپنا نہیں ہے یہاں آجا ہم نالے میں اپنا گھر بسائیں۔۔۔ شاپر پہنے گے نیلے رنگ کا وہ بھی ٹچ بٹن لگاکر۔۔۔ اصل سکون تو نالے میں ہی ہے۔۔۔۔”
معیز نے تقی کے کندھے پر ہاتھ رکھ کر مصنوعی آنسوں پونچھے۔۔۔۔
“آئے ہاۓ بھائی تو ہی رہ لے نالے میں مجھے تو وہاں کچھ کھانے کو بھی نہیں ملنا ۔۔۔۔”
تقی کو سب سے پہلے کھانا یاد رہا۔۔۔۔
“تم لوگ تھوڑی دیر چپ رہو گے ہمیں افسوس تو کرنے دو تم لوگوں سے۔۔۔۔”
مومل نے ان دونوں کو گھورتے ہوئے کہا۔۔۔۔
“ہائے میں تو فیل ہونے والی ہوں قسم سے کچھ نہیں پڑھا میں نے۔۔۔۔”
زینہ نے اپنے آنسو پونچھتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔
“بہن تم آخری بار کب ہنسی تھی تم کو دیکھ کر تو وہ گانا یاد آتا ہے۔۔۔۔۔
“رونی سی صورت۔۔۔۔
آنکھوں میں آنسوں۔۔۔۔
ہر موقع پر وہ بہاۓ۔۔۔۔
معیز نے گانے کو توڑ مڑوڑ کر پیش کیا۔۔۔۔
“آۓہاۓ۔۔۔۔”
اس کے کہنے پر سب نے یک زبان آگے کی لائن گائ تھی۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اگلا پورا ہفتہ ان لوگوں کا پڑھائی میں گزرا۔۔۔
تمام لڑکیاں خوب دن رات ایک کرکے پڑھنے میں مصروف رہیں۔۔۔
احد نے میوزک کو تھورے ٹائم کے لیے چھوڑا ہوا تھا۔۔۔
ازلان نے چائے کی چسکیاں لیتے لیتے اور ورلڈ کپ کے تمام میچز دیکھتے ہوئے تھوڑی بہت پڑھائی بھی کرلی تھی۔۔۔۔
معیز نے تو اردو ادب کے تمام اشعار کو اپنے موزے اور آستینوں کو حفظ کروالیا تھا۔۔۔ زیادہ نہیں بس ایک موزے پر دس دس اشعار لکھے گئے تھے۔۔۔۔
جبکہ تقی کو کھانے سے فرصت ملتی تو وہ کبھی کبھی پڑھ بھی لیتا تھا۔۔۔۔
غرض ان آٹھوں کے لیے ایک ہفتہ امتحان میں گزارنا خاصہ مشکل ثابت ہوا تھا۔۔۔۔۔
آج انکا آخری پیپر تھا ازلان اور احد ابھی پیپر دے کر نکلے تھے جبکہ معیز اور تقی ابھی پیپر کر رہیں تھے۔۔۔۔
“اور بھائی اب تو آخری سال ہے یونی میں کب بولے گا لڑکی سے؟”
احد کے اچانک سوال پر ازلان نے ایک دم سے گردن اسکی جانب موڑی۔۔۔۔
“کک۔۔۔کیا بول رہا ہے بھائی کونسی لڑکی۔۔۔ ؟”
ازلان نے خود کو کمپوز کرنے کی ناکام کوشش کی۔۔۔۔۔
“بھائی میں بھی جانتا ہوں اور تو بھی جانتا ہے پھر بات لمبی کرنے کا مقصد۔۔۔؟”
احد نے لگی لپٹی رکھے بغیر کہا۔۔۔
“بھائی میں زینی سے محبت کرتا ہوں اب سے نہیں جب اسے پہلی بار دیکھا تھا تب سے اسکی ہر وقت آنسوں سے بھری آنکھیں میرے دل میں ہلچل مچا دیتی ہیں۔۔۔ مجھے۔۔۔مجھے ایسا لگتا ہے کہ میں ان گہری آنکھوں سے کلین بولڈ ہو جاؤں گا۔۔۔ بھائی اسکی باتیں میرے دل کی تمام وکٹیں اڑا دیتی ہیں۔۔۔۔ میرا دل چاہتا ہے کہ یہ پاور پلے کبھی ختم نہ ہو۔۔۔۔ بس اس دل کی پچ پر ہمیشہ اسی کی بیٹنگ جاری رہے اور میں کبھی اسے آوٹ نہ ہونے دوں۔۔۔۔”
ازلان نے جذبات سے چور لہجے میں اپنی کمینٹری احد کے گوش گزاری۔۔۔۔
“بھائی یہ ساری باتیں تو مجھے کیوں بتا رہا ہے جاکر زینہ سے بول۔۔۔”
“بھائی مجھے ڈر لگتا ہے کہ اگر وہ مجھے پسند نہ کرتی ہوئی تو۔۔۔۔”
“ابے سالے جب تک تو بولے گا نہیں تب تک کیسے پتہ چلے گا کہ اس کے دل میں بھی کرکٹ کا ماحول ہے یا نہیں۔۔۔۔”
احد نے تپے ہوئے لہجے میں کہا۔۔۔
“بھائی ایک دو دن تک ہمت جمع کرکے کہہ دونگا۔۔۔”
اس کی بزدلی پر احد اپنا سر پیٹ کر رہ گیا۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آج بالآخر ازلان نے زینہ کو پروپوز کرنے کا ارادہ کر لیا تھا
ابھی وہ چاروں لڑکیوں کا ہی انتظار کر رہے تھے جو لیب میں پریکٹیکل کے لیے گئیں ہوئی تھی۔۔۔۔
“بھائی کب آئے گی مجھے کہیں میری بات سن کر منہ پر چھکا نہ لگادے۔۔۔۔
“ازلان ادھر اُدھر چکر لگاتے ہوئے سوچ رہا تھا۔۔۔”
اتنے میں وہ چاروں بھی وہاں تک آپہنچی تھیں۔۔۔
“اوۓ افلاطونوں ایسے بندروں کی طرح کیوں کھڑے ہو۔۔۔۔کسی نے کچھ کہا ہے کیا…..؟”
وفا نے آستینوں کو اوپر چڑھاتے ہوئے کہا۔۔۔۔
“ارے نہیں پٹاخہ ایسا کچھ بھی نہیں ہے ۔۔۔”
تقی نے برگر ٹھونستے ہوئے کہا۔۔۔
“تمہیں۔۔۔ تمہیں کتنی دفعہ کہا ہے کہ پٹاخہ نہ بولا کرو مجھے یو گلوکوز کی بوتل۔۔۔”
وفا نے اس کے اوپر مکوں کی برسات کردی تھی۔۔۔۔
“سنو تم لوگ بعد میں لڑلینا پہلے ازلان کی بات سن لو۔۔۔۔”
احد نے ان دونوں کو گھورتے ہوئے کہا جو ہمیشہ کی طرح پھر لڑنے کے لیے پر تول رہے تھے۔۔۔۔
“زینہ میں۔۔۔۔ مجھے تم سے کچھ کہنا ہے۔۔۔۔”
“ہاں بولو ازلان سن رہی ہوں میں۔۔”
زینہ نے پریشانی سے کہا۔۔۔۔
“مس زینہ شاہ۔۔!!! میں تم سے بہت محبت کرتا ہوں اور مجھے تم سے شادی کرنی ہے۔۔۔ کیا تم بھی مجھ سے شادی کروگی۔۔۔؟”
ازلان اپنی بات کہہ کر پرامید نظروں سے زینہ کو دیکھ رہا تھا۔۔۔۔
جبکہ زینہ کی تو اچانک ہی ہنسی چھوٹ گئی اور پھر قہقہوں میں تبدیل ہو گئی۔۔۔۔
سب اسے حیرانی سے دیکھ رہے تھے جبکہ ازلان تو اس کو ہنستے ہوئے دیکھ کر مبہوت ہی ہوگیا۔۔۔۔
“بھائی یہ تو عجیب لڑکی ہے جب ہنسنا ہوتا ہے تو آنسوں بہارہی ہوتی ہے اور اب ایموشنل سین تھا تو قہقہے لگا کر ہنس رہی ہے۔۔۔”
معیز نے تقی کے کان میں سرگوشی کی۔۔۔
“زینی ۔۔۔۔ تم ہنس کیوں رہی ہو جواب تو دو میری بات کا۔۔۔۔”
ازلان نے زینہ کو کہا دودھیا چہرہ ہنس ہنس کے لال ہوگیا تھا ۔۔۔۔
“ازلان ہاہاہاہا۔۔۔۔ میں۔۔میں جان بوجھ کر۔۔۔۔ہاہاہا ۔۔۔ نہیں ہنس رہی ہوں ۔۔۔۔ آئ ایم ہاہاہا۔۔۔۔ رئیلی سوری ہاہاہا۔۔۔”
زینہ نے ہنسی کے درمیان کہا جبکہ آنکھوں میں ایک بار پھر آنسوں جمع تھے۔۔۔۔
“اففف یار یہ صحیح کہہ رہی ہے آج پریکٹیکل کرتے ہوئے اس نے لافنگ گیس (nitrous oxide) انہیل کرلی تھی اور اب گیس اپنا اثر دکھا رہی ہے۔۔۔۔۔”
مومل نے کہا تو ازلان کی جان میں جان آئی۔۔۔۔
“تو اب۔۔۔؟ کیا تم مجھ سے شادی نہیں کروگی زینی؟”
ازلان نے زینہ کو ایک بار پھر مخاطب کیا جو ہنس بھی رہی تھی اور رو بھی رہی تھی۔۔۔۔
“از۔۔ازلان ہاہاہا میں تم سے ہاہاہا شادی کرنے کو تیار ہوں۔۔۔ ہاہاہا۔۔۔۔۔۔”
زینہ نے آنسوں پونچھتے ہوئے سر کو زور زور سے اثبات میں ہلاتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔
“مان گئی مان گئی لڑکی مان گئی معیز نے چلا چلا کر اعلان کیا اور پھر ازلان نے ہنستی ہوئی زینہ کی بائیں ہاتھ کی تیسری انگلی میں ایک نازک سی انگھوٹی پہنائی تھی۔۔۔۔۔
“یار لیکن یہ دوبارہ ٹھیک کیسے ہوگی۔۔۔؟”
احد نے تشویش کا اظہار کیا۔۔۔۔
“ارے ابھی کچھ دیر میں گیس کا اثر ختم ہو جائے گا پھر نارمل ہوجاۓ گی۔۔۔۔۔”
مومل کے بتانے پر سب نے سکون کا سانس لیا اور ازلان اور زینہ کو مبارکباد بھی دی۔۔۔۔۔

رات کو بنش اپنے روم میں بیٹھی ٹی وی دیکھ رہی تھی جب احد اندر داخل ہوا اور اس کے ہاتھ سے ریموٹ چھین کر چینل تبدیل کیا اور ایک نیوز چینل پر روکا۔۔۔۔
“بھائی یار کیا مسئلہ ہے۔۔۔۔”
بنش نے منہ بسورتے ہوئے کہا۔۔۔
“ششش۔۔۔ دیکھو تو کون آرہا ہے۔۔۔”
احد نے اسکی نظر ٹی وی کی جانب کی جہاں کوئی ٹاک شو چل رہا تھا اور مہمان کوئی بڈھا سا آدمی تھا۔۔۔
“مجھے کیا پتہ کون ہے اور آپ کب سے یہ فضول ٹاک شوز دیکھنے لگے۔۔۔؟”
بنش نے ناسمجھی سے پوچھا۔۔۔
“ارےےے غور سے دیکھو یہ بڈھا جانا پہچانا نہیں لگتا۔۔۔”
اب کی بار بنش نے اس آدمی کو غور سے دیکھا تو ایک دم سے احد کی طرف مڑی۔۔۔
“بھائی یہ۔۔۔ یہ تو معیز ہے۔۔۔۔۔ یہ یہاں کیسے پہنچا۔۔؟”
بنش نے حیرانی اور بےیقینی کے ملے جلے تاثرات سے کہا۔۔۔
“وہ لمبی کہانی ہے ابھی تم دیکھو اسے۔۔۔”
اب وہ پوری طرح سے ٹی وی کی جانب متوجہ تھے۔۔۔جہاں اینکر معیز کا تعارف کروارہا تھا۔۔۔
“جی تو ناظرین آج کے ہمارے مہمان پاکستان کے قابل ترین سائنسدان ڈاکٹر عبدالحدید خان۔۔۔۔۔۔”
اس کے نام پکارنے پر بنش نے احد کو ناسمجھی سے دیکھا۔۔۔
“ہیں!!! پر اسکا نام تو معیز ہے۔۔۔”
“ارے تم دیکھو تو سہی۔۔۔”
احد نے پھر بنش کو کہا جس سے چند منٹ خاموش بیٹھا نہیں جارہا تھا۔۔۔۔
“السلام وعلیکم ڈاکٹر صاحب۔۔۔ کیسے مزاج ہیں آپ کے؟”
اینکر نے معیز کو مخاطب کرتے ہوئے کہا
“اااا۔۔۔ وہ سانس رک جاتی ہے کبھی کبھی اور پھیپھڑے کام کرنا چھوڑ دیتے ہیں اور کبھی کبھی گھٹن کا احساس ہوتا ہے باقی میں فٹ ہوں۔۔۔”
معیز نے اپنی آواز کو ایسا تبدیل کیا کہ بنش تو بنش احد بھی گنگ رہ گیا۔۔۔۔
“اچھا آج کل کیا کر رہے ہیں آپ۔؟”
اس نے پھر سوال پوچھا۔۔۔
“ااا۔۔۔ ایک خفیہ پروجیکٹ پر کام کر رہے ہیں۔۔۔”
معیز نے بھی فل سائنسدانوں والے انداز میں کہا۔۔۔
“نہیں مطلب کس قسم کا خفیہ پروجیکٹ ہے یہ؟؟”
اینکر نے ٹھوڑی پر ہاتھ رکھ کر سوال کیا۔۔۔
“خفیہ خفیہ ہوتا ہے وہ کسی کو بتایا نہیں جاتا۔۔۔ جب تیار ہوجائیگا تب دیکھ لینا”
معیز بتانے کے موڈ میں نہیں لگ رہا تھا۔۔۔
“ارے بھئی وہ تو پتہ ہے کہ خفیہ ہے پر عوام جاننا چاہتے ہیں کہ ایسا کونسا خفیہ پروجیکٹ ہے۔۔۔”
اب کی بار اینکر تھوڑی سختی سے بولا ۔۔۔۔
“اچھا تمہیں بتا رہا ہوں بتانا نہیں کسی کو۔۔۔ ہیں؟”
معیز لائیو شو میں بیٹھ کر یہ بات کر رہا تھا جبکہ گھر پر بیٹھے ان ساتوں کا ہنس ہنس کے برا حال تھا۔۔۔
“ہم چار ہزار گز کے پلاٹ پر اپنا مکان بنا رہیں ہیں۔۔۔۔”
معیز نے سرگوشی کے سے انداز میں کہا جس پر اینکر نے اپنا سر پیٹ لیا۔۔۔
“میں سمجھا آپ کسی نیوکلیئر پروجیکٹ کی بات کر رہے تھے۔۔۔”
“نہیں نہیں۔۔ دیکھو اب کوئی نیو پر کام نہیں کرتا سب اولڈ پر کر رہے ہیں اور نیو کو کلئیر کرنے کے چکر میں ہیں۔۔۔۔”
اسکی یہ والی بات پر جہاں ان سب کے ہنس ہنس کے پیٹ میں بل پڑ گئے تھے وہیں اینکر کا تو دماغ ہی گھوم گیا اور اس نے ٹاپک چینج کرنے میں ہی بہتری سمجھی۔۔۔
“اچھا آپ بیس سال امریکہ میں رہےکیا کرتے تھے وہاں۔۔؟”
“جی ہاں ہم بیس سال رہے تھے وہاں سب سے پہلے تو ہم کھو گئے۔۔ کسی کو مل کر ہی نہیں دیے۔۔۔”
“آپ نے کیا کیا اتنے عرصے وہاں۔۔ ؟”
“کس نے؟”
معیز بھی اینکر کو تپانے کے موڈ میں تھا۔۔
“ارے بھئی آپ نے اور کس نے۔۔۔”
“اچھا تو ہم نے پہلے چوڑے پائنچے کی پتلون بنائی جسکا نام رکھا پینٹا۔۔۔۔۔”
“آپ نے پتلون کا نام پینٹا رکھا؟”
“ہاں پہلے پینٹا رکھا پھر وہ ہمیں کچھ پسند نہیں آئی پھر ہم نے ایک دکان بنائی اور اسکا نام رکھا گون۔۔۔۔ تو وہ پینٹاگون بن گیا۔۔۔”
“اچھا پھر کیا کیا آپ نے؟”
اینکر نے دانت پیستے ہوئے کہا۔۔۔
“پھر ہم نے سوچا ڈراۓ کلیننگ کا تو ہم نے کہا کہ واشنگ پاؤڈر بنایا جائے تو ہم نے واشنگ پاؤڈر بنایا اور اسکا نام رکھا کلین ٹن۔۔۔”
“کیا کیا دوبارہ بتائیں ذرا۔۔۔”
اسے لگا کہ اسکے سننے میں کوئی غلطی ہو گئی ہے۔۔۔
“بھئی یا تو تم بہرے ہو یا میرے بولنے میں مسئلہ ہے میں نے کہا واشنگ پاؤڈر کا نام کلین ٹن رکھا۔۔ ”
“تو امریکہ والوں کو نام پسند نہیں آیا انہوں نے بند کروا دیا۔۔۔۔”
“بھائی مجھے لگتا ہے اب اسے دھکے دے کر نکالیں گے سٹوڈیو سے۔۔۔”
بنش نے احد سے کہا۔۔۔
“ہاہاہا لگتا تو ایسا ہی ہے۔۔۔”
احد نے بھی ہنستے ہوئے کہا۔۔۔
“پھر ہم نے ڈراۓ کلیننگ کی دکان کھولی اور بھئی اسکا نام رکھا ‘واشنٹگٹن ڈی سی’ پتہ نہیں مجھ سے کیا دشمنی تھی امریکہ والوں کو اسے بھی بند کروادیا کہ یہ تو ہمارے شہر کا نام ہے حالانکہ ڈی سی سے میری مراد ڈراۓ کلینرز تھی۔۔۔۔”
پھر انگریزوں نے نکال دیا ہمیں وہاں سے اور ہم پاکستان میں سائنس دان بن گئے۔۔۔”
“اچھا جی ناظرین اب ہمیں اجازت دے آپ سے پھر ملاقات ہو گی اللّٰہ حافظ۔۔۔”
اینکر نے جلدی جلدی شو ختم کیا اور اسکی جانب متوجہ ہوا۔ جو اپنی موچھیں نکال رہا تھا۔۔۔۔
“تم نے میرے سیاسی شو کو کامیڈی بنادیا۔۔۔”
اینکر نے آگ بگولہ ہوتے ہوئے کہا ۔۔۔
“ہاں وہ سب تو ٹھیک ہے لیکن میرے پیسے۔۔۔۔۔”
معیز نے دانت نکالتے ہوئے کہا۔۔۔۔
“پیسے۔۔۔ ابے سالے تیری وجہ سے میری نوکری داؤ پر لگ گئی ہے اور تجھے پیسے چاہیے۔۔۔۔ رک ابھی دیتا ہوں تیرے پیسے۔۔۔۔ سیکیورٹی!!!! سیکیورٹی!!!!”
اس کے چلانے پر گارڈز بھاگتے ہوئے آئے تھے۔۔۔۔۔
“اس آدمی کو دھکے دے کر نکالو یہاں سے فوراً۔۔۔۔۔”
اس سے پہلے گارڈز اسے نکالتے وہ پہلے ہی نو دو گیارہ ہو گیا تھا۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ابھی وہ اسٹوڈیو سے نکلا ہی تھا کہ اسکا موبائل بجنا شروع ہوگیا اور وہی افلاطونی فوج کا فون تھا۔۔۔۔
“ابے سالے کیا تباہی مچا کر آرہا ہے تو۔۔۔”
تقی نے چینختے ہوئے کہا۔۔۔۔
“اوۓ کمینے کان پھاڑے گا کیا میرے۔۔۔ سارے دن کے کھانے کی طاقت ہمارے اوپر نکالیو۔۔۔۔۔”
احد نے فون کان سے ہٹاتے ہوئے کہا۔۔۔۔
“ابے بھائی میں معصوم تو شو دیکھنے گیا تھا سالوں کا مہمان نہیں آیا تو مجھے گھسیٹ کر بٹھادیا ہاٹ سیٹ پر۔۔۔۔”
“بھائی تو تو پہلے ہی ہاٹ ہے اب تو جل کر راکھ ہو گیا ہوگا۔۔۔۔”
ازلان نے ہنستے ہوئے کہا اور اسکی بات پر سب نے جاندار قہقہ لگایا۔۔۔۔
“اور تم نے وہاں بھی اپنی دو نمبر اردو سے ٹاک شو کو کامیڈی سرکس بنادیا۔۔۔”
اب کی بار بنش نے بھی اپنا حصہ ڈالا۔۔۔۔
” ہاں تو میں کیا کرتا میں نے اس سے بولا بھی کہ میری اردو خداب ہے تو اس نے مجھے امریکن ہی بنا ڈالا۔۔۔۔”
اسکی بات پر ایک بار پھر ان لوگوں کی ہنسی چھوٹ گئی تھی۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اگلے دن چاروں کلاس میں بیٹھے ہوئے تھے کہ اچانک احد کو کیا سوجھی اس نے ان چاروں کی طرف جھکتے ہوئے گانا شروع کیا۔۔۔۔۔
“سن۔۔۔”
“سنا۔۔۔”
ازلان نے آگے کی لائن گائی۔۔۔۔۔
“ہاتھی کا انڈہ لا۔۔۔۔۔۔”
جی ہاں یہ لائن ہمارے معیز نے ہی گائی تھی جس پر وہ چاروں اپنا منہ پھاڑ کر ہنسے تھے۔۔۔۔۔۔
“یہ کیا ہورہا ہے پیچھے۔۔۔۔؟”
سر نے اپنا چشمہ ناک پر رکھ کر کہا۔۔۔۔۔۔
“سر ۔۔۔۔۔۔۔ ہاہاہا”
ازلان کھڑا ہو کر سر کو بتا ہی رہا تھا کہ ان تینوں کے ہنسنے کی وجہ سے وہ بھی سر کے سامنے ہنس پڑا۔۔۔۔
“گیٹ آؤٹ فرام مائی کلاس ناؤ۔۔۔۔۔۔۔”
سر نے اتنی زور سے کہا کہ کلاس کی دیواروں نے بھی اپنے ہاتھ جوڑ لیے تھے۔۔۔۔اور وہ چاروں بھی اپنے بیگز اٹھا کر وہاں سے رفو چکر ہو گئے تھے۔۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“ابے ہاتھی کا انڈہ لا کیا ہوتا ہے بے۔۔۔۔۔۔”
احد نے ہنس ہنس کر کہا۔۔۔۔۔
“بھائی میں تو اپنے بچپن سے ہی ہاتھی کا انڈہ لا بولتا ہوں۔۔۔ ”
“اوو بھائی آتی کیا کھنڈالہ ہوتا ہے جنگلی۔۔۔۔۔”
“What….!!!!! My whole life was a lie yaar…”
“بھائی تیری لائف تو ہر گانے کے معاملے میں لاۓ ہے۔۔۔”
تقی نے بھی ٹکڑا دیا۔۔۔۔
“یارررررر۔۔۔۔۔۔ اب نہیں ہوتا مجھ سے مزید انتظار میری شادی کرواؤ بھئی۔۔۔۔۔۔۔۔”
اچانک سے ازلان کی آواز ان کے کانوں سے ٹکرائی۔۔۔۔۔
“بھائی تجھے کس نے کاٹ لیا جو اچانک شادی کی پڑ گئی ہے۔۔۔۔۔”
تقی نے اس کو دیکھ کر کہا۔۔۔۔
“نا بھائی تیری محبوبہ نے تربیلا ڈیم بہا دینا ہے شادی کا سن کر ہی۔۔۔”
معیز نے اسکو منع کیا۔۔۔۔
“بھائی لڑکی کو پٹانا میرا کام ہے اب بس کرنی ہے مجھے شادی۔۔۔۔”
ازلان نے حتمی فیصلہ سنایا۔۔۔۔
“لیکن بھائی لڑکیاں تو میں اعلیٰ پٹاتا ہوں۔۔۔۔۔”
معیز نے فرضی کالر کھڑے کئے۔۔۔۔
“ابے گدھے۔۔۔۔۔ اپنی لڑکی کو تو میں ہی پٹاؤنگا نا۔۔۔۔۔”
ازلان نے اسکو ایک چپٹ رسید کی۔۔۔۔۔۔۔
“جا منالے اپنی پارو کو آرہی ہے وہ ۔۔۔۔”
احد نے ان چاروں کو دیکھتے ہوئے کہا جو ہاتھوں میں کتابیں اٹھائے چلی آرہی تھی۔۔۔۔۔
“پارو۔۔۔ اوہ آئی مین زینہ مجھے تم سے کچھ بات کرنی ہے۔۔۔۔”
ازلان نے زینہ کو دیکھتے ہوئے کہا
“اکیلے میں۔۔۔۔!!!!”
پیچھے سے تقی نے فرائز کھاتے ہوئے کہا۔۔۔جس پر ان سب نے اسے گھورا تھا۔۔۔۔
“ہاں کہیں اور چل کر بات کرتے ہیں یہاں ان نمونوں نے کچھ کہنے نہیں دینا۔۔۔۔”
“اوکے چلو۔۔۔۔۔”
ان دونوں کے جانے کے بعد مومل نے تشویش سے کہا۔۔۔
“اسے کیا بات کرنی ہے زینی سے وہ بھی اکیلے میں۔۔۔۔۔”
“چل جائے گا پتہ تم اپنے ذہن پر زور نہ دیا کرو۔۔۔۔”
احد نے شرارت سے کہا جس پر اس نے اپنے ہاتھ میں پکڑی موٹی کتاب اس کے کندھے پر ماری تھی۔۔۔۔۔”
“مومی دو منٹ بات سننا۔۔۔۔”
ابھی احد کچھ کہتا کہ کسی لڑکے کے منہ سے مومل کا نام سن کر پیچھے مڑ کر دیکھا۔۔۔۔
“اوہ سلمان آتی ہوں ویٹ۔۔۔۔۔”
وہ اس کی جانب بھاگتی ہوئی گئی اور ازلان پیچھے کھڑا دیکھتا ہی رہ گیا۔۔۔۔۔
“بنی یہ کون ہے۔۔۔۔۔۔”
احد نے بنش نے پوچھا۔۔۔۔
“بھائی یہ مومی کے دور کا کزن ہے ہماری ہی کلاس میں ہوتا ہے۔۔۔ ”
“اوہ تو اس دور کے کزن کی ایک آواز پر محترمہ بھاگی بھاگی چلی گئیں۔۔۔۔۔”
احد بس سوچ ہی سکا تھا۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“بولو کیا کہنا تھا تمہیں۔۔۔۔”
زینہ نے ازلان کو مخاطب کرتے ہوئے کہا۔۔۔
“میں بس یہ کہنا چاہتا ہوں کہ مجھے تم سے فوراً شادی کرنی ہے بس۔۔۔۔۔”
ازلان نے اسکی آنکھوں میں دیکھ کر ایک ہی سانس میں پوری بات کہہ ڈالی۔۔۔۔
“تم پاگل ہو گئے ہو ازلان ایسا کیسے ہو سکتا ہے۔۔۔”
زینہ نے بھی اس کی آنکھوں میں دیکھ کر کہا تھا۔۔۔۔
“کیوں نہیں ہوسکتا۔۔۔۔ میں تم سے محبت کرتا ہوں اور تم بھی جب مجھ سے محبت کرتی ہو تو کیوں نہیں ہوسکتا بھلا۔۔۔۔؟”
“ازلان ابھی تو میری پڑھائی بھی ختم نہیں ہوئی اور اتنی بھی کیا جلدی ہو رہی ہے تمہیں۔۔۔۔”
زینہ کی آنکھیں بولتے بولتے ایک بار پھر بھیگ گئیں تھیں۔۔۔۔
“تو میری جان میں کونسا رخصتی کا کہہ رہا ہوں میں تو بس ابھی نکاح کرنا چاہتا ہوں۔۔۔۔اور رہی بات جلدی کی۔۔۔ تو ہاں بہت جلدی ہے مجھے اپنا بنانے کی تمہیں۔۔۔”
ازلان نے اس کے آنسوں پونچھتے ہوئے کہا۔۔۔
“چلو اب جلدی جلدی ہاں بولو میرا میچ شروع ہونے والا ہے بھئی۔۔۔۔”
ازلان نے گھڑی میں دیکتے ہوئے کہا جس پر زینہ ہنس پڑی۔۔۔
“اوکے آئی ایم ریڈی!!! کل بھیج دینا اپنے پیرنٹس کو۔۔۔”
زینہ نے دھیمی آواز میں کہا۔۔۔
“چھکاااا۔۔۔۔۔۔۔”
ازلان نے اتنی اونچی آواز میں کہا کہ ان سے کچھ فاصلے پر کھڑے ان ساتوں کو باآسانی سنائی دیا۔۔۔۔
“مبارک ہو مان گئی ہے لڑکی۔۔۔۔۔”
احد نے اسکی آواز سن کر کہا۔۔۔۔
“ہیں کیا مطلب ہے اس بات کا۔۔۔؟”
بنش نے ناسمجھی سے احد کو دیکھا۔۔
“اسکا مطلب یہ کہ تیاریاں شروع کرو لڑکیوں ہمارے بھائی کی شادی ہے رے۔۔۔۔۔۔۔۔”
معیز نے بولنے کے ساتھ ہی یونی گراؤنڈ میں بھنگڑے ڈالنے شروع کر دئیے۔۔۔۔۔
“ارے بھئی ایسے کیسے ابھی تو زینہ نے پڑھائی بھی ختم نہیں کی۔۔۔ رکو ابھی پوچھتی ہوں اس سے تو میں۔۔۔۔”
وفا تو آستینیں چڑھا کر آگے چل دی کہ مومل نے اسے ہاتھ سے کھینچ کر پیچھے کیا۔۔۔۔۔
“ارے پاگل ہو گئی ہو کیا وفا کیوں پھاپھے کٹنی پھوپھو کا رول پلے کرنا ہے تمہیں۔۔۔۔۔۔ جو چل رہا ہے نہ چلنے دو ۔۔۔۔ ”
مومل کے کہنے پر وفا بھی وہیں رک گئی۔۔۔
“ویسے پٹاخہ تمہیں آخر مسئلہ کیا ہے شادی سے۔۔۔۔”
تقی کی زبان میں کھجلی پیدا ہوئی۔۔۔۔
“بس ہے مسئلہ میرا دل چاہتا ہے کہ ہر شادی کو رکوا دوں میں۔۔۔۔ اور تم سے کتنی دفعہ کہا ہے کہ مت کہا کرو مجھے پٹاخہ۔۔۔۔”
وفا نے جارحانہ انداز میں اس کی جانب قدم بڑھائے۔۔۔
“ارے تم تو ناراض ہی ہوگئی اچھا نہ سوری مس وفا چودہری۔۔۔۔”
اسکے قدم اپنی جانب بڑھتے دیکھ کر تقی سیدھا لائن پر آگیا مبادا وہ سارا غصہ اس پر ہی نہ نکال دے۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اگلے دن ازلان مسٹر اینڈ مسز حمدانی کے ساتھ زینہ کے گھر پہنچا۔۔۔۔۔
“بابا میں آپ کو بتا رہا ہوں کہ تاریخ لئے بغیر آپ نے ہلنا نہیں ہے اپنی جگہ سے۔۔۔۔”
ازلان نے مسٹر حمدانی کو وارن کرتے ہوئے کہا۔۔۔
“بیٹا جی ہم آپ کے باپ ہیں یا آپ ہمارے۔۔۔۔؟”
انہوں نے ایک آئبرو اچکاتے ہوئے کہا۔۔۔
“نہیں مطلب بابا میں تو التجا کر رہا ہوں آپ سے۔۔۔۔۔۔”
ازلان انکی بات پر تار کی طرح سیدھا ہوا۔۔۔۔
“گڈ اب کا ہوگیا تو ہم شاہ صاحب سے بھی کچھ بات کرلیں۔۔۔۔؟”
“جی جی بالکل کریں۔۔۔۔”
ازلان فوراً سیدھا ہوکر صوفے پر ٹکا۔۔۔۔۔
“شاہ صاحب!! ہم آپ سے کچھ مانگنا چاہتے ہیں۔۔۔۔”
مسٹر حمدانی نے بات کا آغاز کیا۔۔۔ اور وہیں ازلان کا موبائل بجا۔۔۔۔
“ابے فون کو اسپیکر پر لگا ہم سب نے تیرے سسر کی بات سننی ہے۔۔۔”
احد کی آواز کان میں گونجی تھی۔۔۔۔
“کون سب ۔۔۔؟”
ازلان نے دبی دبی آواز میں کہا۔۔۔
“ہم سب۔۔۔۔!!!”
جواب ان ساتوں افلاطونز کی طرف سے آیا تھا۔۔۔
“زینی تم بھی ہو یہاں۔۔۔۔”
ازلان نے ناسمجھی سے پوچھا ۔۔۔
“ہاں تو میں بھی تو سنوں بابا کیا جواب دیتے ہیں۔”
زینہ نے شرارت سے کہا۔۔۔
“ابے اب کیا ساری بات یہیں نکال دوگے کیا اسپیکر کر فون کو ۔۔۔۔”
معیز نے بےچینی سے کہا۔۔۔۔۔۔
“اچھا میں اسپیکر کرتا ہوں لیکن تم لوگوں نے ایک لفظ نہیں کہنا۔۔۔۔۔۔”
ازلان نے ان سب کو وارن کرتے ہوئے فون اسپیکر پر لگایا۔۔۔۔۔
“بھائی صاحب میری تو ایک ہی بیٹی ہے بڑے نازوں سے پالا ہے ہم نے اسے ۔۔۔بہت حساس بچی ہے ہماری۔۔۔۔۔
اگر زینہ بیٹی راضی ہے تو مجھے بھی کوئی اعتراض نہیں اس رشتے پر۔۔۔۔۔”
شاہ صاحب نے بیٹی کی خوشی کو ترجیح دی۔۔۔
“شاہ صاحب ہمیں بس تاریخ دے دیں باقی کام تو یہ نالائق پہلے ہی کرچکا ہے۔۔۔۔”
مسٹر حمدانی نے ازلان کو گھورتے ہوئے کہا جو ہاتھ میں موبائل پکڑے سر جھکائے بیٹھا تھا۔۔۔۔۔
“میرے خیال سے اگلے مہینے کی دس تاریخ کیسی رہے گی۔۔۔۔؟”
مسز حمدانی نے شاہ صاحب اور انکی بیگم کی جانب دیکھ کر انکی رائے جاننی چاہی۔۔۔۔
“بسم اللّٰہ جی بسم اللّٰہ ہمیں کوئی اعتراض نہیں ہے۔۔۔۔”
شاہ صاحب خوشی سے کہا۔۔۔۔۔
“یاہووووو۔۔۔!!!!!!!”
ابھی وہ آپس میں مبارک سلامت ہی کر رہے تھے کہ ازلان کے موبائل سے ان سب کی آواز گونجی۔۔۔۔
“ازلان یہ سب کیا تھا بیٹا۔۔۔۔۔؟”
مسز حمدانی نے اسے گھورتے ہوئے کہا۔۔۔۔
“ماما وہ دوست تھے۔۔۔۔۔”
ازلان نے جھینپتے ہوئے فوراً فون کٹ کیا کہ وہ افلاطونز جذبات میں آکر کچھ ایسا ویسا نہ بول دیں اور اسکا بسا بسایا رشتہ ٹوٹ جائے۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

–**–**–
جاری ہے
——
آپکو یہ ناول کیسا لگا؟
کمنٹس میں اپنی رائے سے ضرور آگاہ کریں۔

About the author

Peerzada M Mohin

Leave a Reply

This function has been disabled for Online Urdu Novels.

%d bloggers like this: