Bushra Zahid Qureshi Urdu Novels

Yaaran Naal Baharan Novel By Bushra Zahid Qureshi – Episode 4

Yaaran Naal Baharan Novel By Bushra Zahid Qureshi
Written by Peerzada M Mohin
یاراں نال بہاراں از بشریٰ زاہد قریشی – قسط نمبر 4

–**–**–

“ایک منٹ بھائی انہوں نے انکل کا نام کیوں لیا ہے نکاح تو تیرا اور زینہ کا ہے نا۔۔۔۔۔۔”
معیز نے قاضی صاحب کو بیچ میں روک لیا۔۔۔۔
“بھائی تو چپ کر نا۔۔۔۔۔۔اپنے نکاح میں کرلیو یہ انویسٹیگیشن۔۔۔۔”
ازلان نے اسے چپ کروایا۔۔۔۔
“جی تو بیٹا آپ کو قبول ہے۔ ؟”
قاضی نے ایک بار پھر نکاح کے کلمات ادا کئے۔۔۔۔۔
“جی ہاں قبول ہے۔۔۔۔۔”
“بیٹا کیا آپ کو قبول ہے۔۔۔؟”
“قبول ہے۔۔۔۔”
“کیا آپ کو قبول ہے۔۔۔۔”
“بھائی ایک دفعہ کی بات کیوں نہیں سمجھ آرہی انہیں۔۔۔۔؟”
معیز نے تقی کے کان میں سرگوشی کی۔۔۔۔۔
“ابے چپ رہ جا تھوڑی دیر۔۔۔۔۔”
تقی نے اسے گھورتے ہوئے کہا
“قبول ہے۔۔۔۔۔”
“مبارک ہو آپ کو۔۔۔۔۔”
قاضی صاحب نے مسٹر ہمدانی اور ازلان کو مبارکباد دی۔۔۔۔
“یاہووو۔۔۔۔ ہم جیت گئے۔۔۔۔۔”
ازلان کو خوشی کے مارے سمجھ ہی نہیں آئی کہ اس نے بولا کیا ہے۔۔۔۔۔
“بھائی ہم جیتے نہیں ہیں نکاح ہوا ہے تیرا ورلڈ کپ فائنل نہیں ہے۔۔۔۔۔”
احد نے اسکے گلے لگ کر اسے سمجھایا۔۔۔۔
“ادھر آ بیرووو۔۔۔۔۔!!! مبارک بھئی مبارک۔۔۔۔”
معیز نے اسے کھینچ کر خود میں بھینچ لیا۔۔۔
“بھائی تجھے تو اکیلے میں بتاتا ہوں۔۔۔۔۔”
ازلان نے اسے گھورتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔
“بہت مبارک ہو بھائی۔۔۔۔”
تقی بھی ان تینوں کے ساتھ کھڑا ہوا۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ تینوں زینہ کے پاس ہی بیٹھی اسے چپ کروانے کی کوشش کررہی تھی کہ دروازہ نوک ہوا۔۔۔۔۔۔
“آجائیں۔۔۔۔”
بنش کی آواز پر وہ چاروں طوفان کی طرح اندر داخل ہوئے۔۔۔۔۔۔
“چلو لڑکیوں کمرہ خالی کرو ہمارے بھائی کو بھابھی صاحبہ سے ملنے کا ہے۔۔۔۔۔۔”
احد نے با رعب انداز میں کہا۔۔۔۔۔۔
“کیوں جی۔۔۔ ہم کیوں جائیں جو بات ہوگی ہمارے سامنے ہوگی۔۔۔۔۔”
مومل نے اسی کے انداز میں کہا۔۔۔۔
“ٹھیک ہے میں تو کرلوں گا پھر تم لوگ خود ہی استغفار پڑھوگی۔۔۔۔۔”
ازلان کندھے اچکاتے زینہ کی طرف بڑھا ھو ان تینوں کے پیچھے چھپی تھی۔۔۔۔۔۔
“اچھا اچھا جا رہے ہیں ہم توبہ ہے بڑے ہی بےشرم ہو تم ازلان۔۔۔۔۔۔”
وفا بولتی ہوئی کمرے سے باہر نکل گئی اور وہ سارے بھی باہر کی جانب چل دئیے۔۔۔۔
ان سب کے جانے کے بعد ازلان نے پلٹ کر زینہ کو دیکھا اور نظریں پلٹ کر آنے سے انکاری ہوگئیں۔۔۔۔۔۔۔
وہ قدم قدم چلتا اس تک آیا جو سر جھکائے آنسوں بہاۓ جارہی تھی۔۔۔اور نرمی سے اس کے دونوں ہاتھ تھام لئے تھے۔۔۔۔
“تمہیں پتہ ہے زینی الفاظ ختم ہونا کسے کہتے ہیں۔۔۔۔؟”
اس نے ٹھوڑی سے پکڑ کر اسکا جھکا چہرہ اوپر اٹھایا اور براہ راست اس کی آنکھوں میں دیکھ کر پوچھا۔۔۔۔۔
زینہ نے آنسوؤں کے درمیان سر کو نفی میں ہلایا۔۔۔۔۔
“بالکل ایسے، جیسے آج تمہیں اپنی منکوحہ کے روپ میں دیکھ کر میرے الفاظ ختم ہو گئے ہیں۔۔۔۔۔۔”
ازلان کے منہ سے اپنے لیے یہ الفاظ سن کر اسکی پلکیں رخساروں پر سایہ فگن ہوگئی اور اسکی اس ادا پر وہ دل کھول کر مسکرا دیا۔۔۔۔۔
“بس ٹھیک ہے اب جاو تم۔۔۔۔”
زینہ نے اسے پیچھے دھکیلتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔
“ارےےےے رکو ذرا صبر کرو۔۔۔۔”
اس نے زینہ کے دھکیلتے ہوئے ہاتھوں کو پکڑا اور دوسرے ہاتھ سے اپنی جیب سے ایک مخملی کیس نکال کر اسکے سامنے کیا۔۔ جسے اس نے تھامنا چاہا تو ازلان نے فوراً سے ہاتھ پیچھے کھینچ لیا۔۔۔۔۔۔
“ارے یہ کیا بات ہوئی لڑکی۔۔۔۔!!!! میری محنت کی کمائی ہے میں ہی پہناونگا نا ۔۔۔۔۔”
ازلان نے شوخی سے زینہ کی چھوٹی سی ناک کو دبایا تھا۔۔۔۔۔۔
“جلدی کرو ازلان۔۔۔۔۔۔”
“ازلان نے زینہ کے کانوں میں سے اسکے جھمکے نکالے اور اپنی دی ہوئی سونے کی بالیاں پہنادی۔۔۔۔۔۔
“آہ۔۔۔!!!! اب لگ رہی ہو نہ مسز ازلان ہمدانی۔۔۔۔۔”
ابھی وہ اسکے ذرا قریب ہی ہوا تھا کہ دروازے کے باہر سے آواز سن کر فوراً پیچھے ہٹا۔۔۔۔۔
“بھئی ہم اندر آ رہیں ہیں۔۔۔۔!!!!!”
ان ساروں نے ایک آواز میں کہا اور دھڑام سے دروازہ کھول کر اندر داخل ہوئے۔۔۔ نہیں بلکہ داخل ایک مہذب لفظ ہے وہ تو ایسے گھسے کہ جیسے ارطغرل اپنے ساتھیوں کے ساتھ حملہ کرنے نکلا ہو۔۔۔۔۔۔۔۔
“قسم سے یہ افلاطونز ہمیں چین نہیں لینے دے گے۔۔۔”
ازلان بڑبڑاتا ہوا پیچھے ہٹا۔۔۔۔
“چل رومیو ٹائم ختم نکل اب۔۔۔۔۔۔”
احد نے اسکے کندھے پر ہاتھ جمائے کہا۔۔۔۔۔
“ارےےے ایسے کیسے کل کی شرط بھول گئے کیا۔۔۔۔؟”
مومل نے ان چاروں کا راستہ روکے کہا۔۔۔۔۔
” کک۔۔۔ کونسی شرط بھائیوں تم لوگوں کو کوئی شرط یاد ہے کیا؟”
سدا کے کنجوس معیز نے اپنا سر کھجاتے ہوئے ان تینوں سے پوچھا جنہوں نے صاف انکار کر دیا۔۔۔
“تم لوگوں کو تو میں اچھے سے یاد کرواتی ہوں۔۔۔”
وفا آستینیں چڑھا کر آگے بڑھی۔۔۔۔
“اوکے اوکے یاد آگیا جلدی سے چینج کر کے نیچے پہنچو ہم ویٹ کر رہیں ہیں۔۔۔۔۔”
احد نے گھڑی میں دیکھتے ہوئے کہا۔۔۔۔
“چلو لڑکیوں جلدی کرو۔۔۔۔”
بنش کہتی ہوئی خود ڈریسنگ روم میں گھس گئی۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“Hey Bro Congratulations…..”
وہ چاروں ابھی پورچ میں کھڑے تھے جب سلمان انکے قریب آیا اوع ازلان سے بغلگیر ہوتے ہوئے کہا جبکہ احد نے اسے دیکھ کر غصے سے مٹھی بھینچ لی تھی۔۔۔۔
“تھینکس یار۔۔۔”
ازلان نے بمشکل مسکراتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔
“ارے مومی کیسی ہو یار۔۔۔۔”
سلمان اچانک ہی ازلان سے باتیں کرتے کرتے مومل سے مخاطب ہوا جو ان تینوں کے ساتھ چلتی آرہی تھی۔۔۔۔۔
“اوہ سلمان میں بالکل ٹھیک تم سناؤ بھئی کہاں مصروف آج کل۔۔۔۔؟”
“ہنہہ مجھ سے تو آج تک کوئی بات نہ کی اور اس بندر کے منہ والے آدمی سے دانت نکال نکال کر باتیں کر رہیں ہیں محترمہ۔۔۔۔۔”
مومل کی بات پر احد نے تلملاتے ہوئے سوچا۔۔۔
“میں ٹھیک۔۔۔۔ یار کبھی چکر لگا لیا کرو ہمارے غریب خانے میں بھی۔۔۔۔”
سلمان نے اس کے سر پر ہلکی سی چپت لگائی تھی ۔۔۔ احد سے اب برداشت نہیں ہوا اور وہ غصے سے اسکی جانب بڑھا لیکن ازلان نے اسکا ہاتھ مضبوطی سے پکڑ رکھا تھا۔۔۔۔۔
“مومی چلیں ہمیں دیر ہو رہی ہے۔۔۔۔۔”
احد نے خود کو کمپوز کرتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔
“افف یار مومی ادھر آؤ تم میرے ساتھ۔۔۔۔۔”
سلمان نے مومل کا ہاتھ پکڑتے ہوئے کہا اور یہ لمحہ تھا جب احد کا خود پر قابو رکھنا مشکل ہوگیا اور وہ سلمان کی جانب لپکا۔۔۔۔۔
“ہاتھ چھوڑ اسکا۔۔۔۔۔۔”
احد نے اسکے ہاتھ کو دیکھ کر کہا۔۔۔۔۔
“ایکسکیوز می۔۔۔!! آپ کون ہوتے ہیں مجھے روکنے والے۔۔۔؟”
اب کی بار تو احد کا دماغ گھوم گیا اور اس نے دو چار مکے اس کے منہ پر جڑ دیئے۔۔۔۔۔۔
“سالے رک ابھی بتاتا ہوں کہ کون ہوں میں۔۔۔۔”
احد پاگلوں کی طرح اسے مارے جا رہا تھا اور مومل تو سکتے میں ہی آگئ تھی۔۔۔۔
“احد چھوڑ اسے پاگل ہو گیا ہے کیا۔۔۔۔”
وہ لوگ اسے روکنے کی کوشش کر رہے تھے لیکن اسکے سر پر تو جیسے بھوت سوار ہو گیا تھا۔ اس نے مار مار کر سلمان کی تو حالت بگاڑ دی تھی۔۔۔۔۔
“احد چھوڑو اسے وہ مر جائیگا۔۔۔۔”
مومل کو جب ہوش آیا تو اس نے احد کو روکنے کے لیے کہا۔۔۔۔
“تمہیں بہت فکر ہورہی ہے اسکی یہ بھائی لگتا ہے کیا تمہارا؟۔۔۔۔۔”
احد جنونی انداز میں پوچھا۔۔۔۔
“ہاں وہ میرا کزن ہے دور کا کزن ہے میرا آئی سمجھ؟”
مومل نے بھی اسی کے انداز میں کہا جبکہ سلمان تو موقع پاتے ہی بھاگ نکلا تھا اور وہ سارے کھڑے ان دونوں کی لڑائی دیکھ رہے تھے۔۔۔۔
“وہ دور کا کزن اور میں۔۔۔ میں جو قریب کا منگیتر ہوں وہ کچھ نہیں تمہارے نزدیک۔۔۔؟”
اسکے لفظ”قریب کے منگیتر” پر پیچھے کھڑے ان سب کو ہنسی آگئی جو وہ بڑی مہارت سے چھپا گئے۔۔۔۔۔
“تمہیں کوئی پرواہ ہے میری مسٹر احد؟؟ نہیں۔۔۔۔ کیونکہ تم مجھے کبھی پسند ہی نہیں کرتے تھے انفیکٹ میں تو ایک زبردستی کا رشتہ۔۔۔۔”
احد نے اسکی بات بیچ میں ہی کاٹ دی۔۔۔۔۔۔
“I Love You Damn’it I Really Love You….”
“نہیں رہ سکتا تمہارے بغیر۔۔۔۔
تمہیں کھونے کا سوچ کر ہی میری دنیا رک جاتی ہے۔۔
نہیں ہوتا مجھ سے برداشت جب تم میرے علاوہ کسی اور سے مخاطب ہو۔۔۔۔۔”
احد نے آج پہلی بار مومل کے لیے اپنی محبت کا اظہار کیا تھا اور مومل کی آنکھوں سے آنسوں بہنے لگے۔۔۔۔
“محبت کرتے ہو پھر بھی یہ جانے بنا کہ وہ مجھ سے ایک سال چھوٹا ہے۔۔۔۔۔۔ مجھ نوٹس کے سلسلے میں بات کرتا ہے یہاں تک کہ اسکے پاس تو میرا نمبر بھی نہیں ہے۔۔۔ تم نے مجھ پر شک کیا۔۔۔۔۔۔۔۔ یہ ہے محبت تمہاری احد کہ تم جس سے محبت کرتے ہو اس پر ذرا بھی بھروسہ نہیں۔۔۔۔۔۔۔؟”
مومل کہہ کر وہاں رکی نہیں اور اسکے جانے کے بعد ایک سحر سا ٹوٹا تو احد کو ہوش آیا لیکن جب تک بہت دیر ہو چکی تھی اور اسے اب سمجھ آئی کہ وہ کتنی بڑی غلطی کر بیٹھا ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔

رات کے گیارہ بجے وہ چھ نفوس اس وقت وڈیو کال پر مصروف تھے ان سب کے منہ پر اس وقت بارہ بج رہے تھے۔۔۔ کہ ازلان کی آواز پر ماحول کی خاموشی ٹوٹی۔۔۔۔
“اب۔۔۔؟ اب کیا کرنا ہے۔۔۔؟”
اس کی آواز سے تشویش صاف ظاہر تھی۔۔۔۔
“میں بتارہی ہوں اگر کوئی ایک بھی انکے معاملے میں بولا تو مجھ سے برا کوئی نہیں ہوگا۔۔۔۔”
وفا نے کافی غصے میں کہا۔۔۔۔
“ہاں بالکل ٹھیک کہہ رہی ہے وفا کوئی احد کی مدد نہیں کریگا غلطی اسکی ہے تو منائے گا بھی وہ ہی۔۔۔۔”
معیز نے بھی اپنا حصہ ڈالا۔۔۔
“ہاں بھئی ایک تو اس ذلیل آدمی کی وجہ سے ہمارا ڈنر کینسل ہوگیا۔۔۔۔ ہائے۔۔۔۔ اتنے دنوں بعد کہیں باہر کھانے کا پروگرام تھا۔۔۔۔
تقی نے ایک سرد آہ بھر کے کہا۔۔۔۔
“ابے تو تو چپ کر اس کمینے احد کی وجہ سے میں نے اور زینہ نے صحیح سے بات بھی نہیں کی۔۔۔۔”
ازلان کے کہنے پر زینہ نے گھور کر اسے دیکھا۔۔۔۔
” ایکسکیوز می۔۔۔۔ شاید وہ میرے بھائی ہوتے ہیں۔۔۔؟”
بںش نے ایک آئبرو اچکاتے ہوئے ان دونوں سے کہا۔
“اوۓ بنی تم بھی سن لو احد کی کوئی مدد نہیں کرنی تمہیں آئی سمجھ۔۔۔۔؟”
وفا نے بنش کو دھمکاتے ہوئے کہا۔۔۔۔
“ہ ہاں ہاں میں بھی نہیں کروں گی کوئی مدد ہادی بھائی کی ۔۔۔۔۔۔”
بنش نے ڈرتے ڈرتے کہا۔۔۔۔۔
“چلو بس ڈن ہوگیا احد جس کے پاس بھی آئے کسی نے مدد نہیں کرنی اسکی۔۔۔۔۔”
معیز نے حتمی انداز میں کہا۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
رات کو بنش اپنے روم میں بیٹھی تھی جب دروازہ نوک ہوا۔۔۔۔۔
“آجائیں ہادی بھائی۔۔۔”
اسے پتہ تھا کہ اس وقت کون ہو سکتا ہے۔۔۔۔ وہ دروازہ کھول کر اندر داخل ہوا۔۔۔۔۔
“بنی تم بھی ناراض ہو مجھ سے۔۔۔۔؟”
احد نے اسکے برابر بیٹھتے ہوئے کہا۔۔۔۔
“نہیں بھائی میں نے کیوں ناراض ہونا ہے جسکا دل توڑا ہے اس سے پوچھے یہ سوال۔۔۔۔۔”
بنش نے احد کی طرف دیکھ کر کہا۔۔۔
” ہاں نا۔۔۔۔۔ اسی لیے تو تمہارے پاس آیا ہوں تم بولو نا اس سے کہ احد بہت شرمندہ ہے اسے معاف کردو پلیزززززز۔۔۔۔۔۔۔”
احد نے پلیز کو لمبا کھینچتے ہوئے اپنا مدعا بیان کیا۔۔۔۔
“کیوں بھئی میں کیوں کہوں اسکو ہرٹ میں نے کیا تھا کیا؟؟ خود کریں جاکر مجھ سے نہ کہیں۔۔۔۔”
بنش نے احد کو ٹکا سا جواب دے دیا۔۔۔۔
“ہنہہ تم تو ہو ہی نہیں کسی کام کی بس ہر وقت چوکلیٹ کھلوا لو۔۔۔۔ موٹی۔۔!!! میں ازلان سے کہہ دونگا۔۔۔”
احد اسکے بال بکھراتے ہوئے باہر کی جانب چل دیا۔۔۔
“واٹ۔۔۔۔!! میں موٹی۔۔؟؟ خود ہونگے ہاتھی نہیں بلکہ سانڈ بلکہ آہ۔۔۔۔۔۔۔”
بنش نے اسکو پیچھے سے تکیہ کھینچ کر مارا لیکن وہ باہر جا چکا تھا اور وہ بس تلملا کر رہ گئی۔۔۔۔
اچانک کچھ یاد آنے پر اٹھی اور ازلان کا نمبر ڈائل کیا۔۔۔۔
“ہاں بنی بولو۔۔۔۔”
ازلان نے فون کان سے لگاتے ہوئے کہا۔۔۔
“ازلان میرا کام ہوگیا اب تمہاری باری ہے بھائی کا فون آتا ہوگا تمہارے پاس۔۔۔۔”
بنش نے اپنی بات بول کر کال کاٹ دی۔۔۔
تھوڑی دیر بعد وہی ہوا جس کا اندازہ بنش نے لگایا تھا۔ ازلان کے فون پر احد کی کال آئی۔۔۔
“ہاں بول ۔۔۔”
ازلان نے لہجے کو روکھا سوکھا بنایا۔۔۔
“جانی تیری ایک ہیلپ چاہیے۔۔۔”
احد نے مسکینوں کی طرح کہا۔۔۔۔
“میں تیری ناراض محبوبہ کو نہیں مناؤنگا تو نے معاملہ بگارا ہے تو تُو ہی سنبھال بائے۔۔۔۔”
ازلان نے اپنی اپنی کہی کر فون بند کردیا اور احد فون کو دیکھتا رہ گیا۔۔۔۔
“سالے کوئی بھی مدد نہیں کریگا اب کل معیز اور تقی سے کہوں گا۔۔۔۔”
احد بڑبڑاتے ہوئے بیڈ پر لیٹ گیا۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
صبح وہ پورچ میں کھڑے بنش کے آنے کا انتظار کر رہا تھا اور آسمان کو دیکھتے ہوئے مومل کو منانے کے منصوبے بنا رہا تھا اتنے میں بنش کی آواز پر خیالوں کی دنیا سے لوٹٹا۔۔۔۔۔
“چلیں بھائی۔۔۔۔؟”
بنش بولتی ہوئی فرنٹ سیٹ کا دروازہ کھول کر بیٹھ گئی۔۔۔
“کیوں مومی نہیں چلے گی آج۔۔۔؟”
اس نے متفکر انداز میں کہا شاید آج پہلی بار احد نے مومل کے لیے مومی کا لفظ استعمال کیا تھا جس پر بنش کو خوشی ہوئی لیکن اس نے ظاہر نہ کیا۔۔۔۔
“نہیں اب وہ وفا کے ساتھ ہی جایا کرے گی۔۔۔”
بنش کے کہنے پر احد نے غصے سے گاڑی کا دروازہ بند کیا اور تیزی سے گاڑی کو روڈ پر ڈالا۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ لوگ کینٹین میں بیٹھے ٹیبل کو بجا رہے تھے اتنے میں معیز اترے ہوئے چہرے کے ساتھ آتا نظر آیا۔۔۔
“اوئے بنی اسے کیا ہوا ہے۔۔۔”
زینہ نے اسے کہنی مار کر متوجہ کیا جو ٹیبل بجاتے ہوئے تقی کے گانے کو میوزک دے رہی تھی۔۔۔۔
“مجھے کیا پتہ۔۔۔۔ رکو معلوم کرتی ہوں۔۔۔”
بنش نے کہتے ہی معیز کو مخاطب کیا جو اب کرسی کھینچ کر بیٹھ چکا تھا۔۔۔۔
“او۔۔۔ دیوداس تمہیں کیا غم لگ گیا اب۔۔۔؟”
معیز نے ایک نظر اسے دیکھا پھر اداسی سے کہا۔۔۔
“میں نے۔۔۔۔ میں نے ابھی لائبہ کو میسج کیا کہ آج یونی کیوں نہیں آئی۔۔۔۔”
وہ مصنوعی آنسوں پونچھتے ہوئے بتانے لگا۔۔۔۔
“پھر کیا ہوا۔۔۔”
تقی نے چائے میں بسکٹ ڈبوتے ہوئے کہا۔۔۔۔
“آگے سے میسج آیا کہ۔۔۔۔ کہ۔۔۔۔”
معیز اب تو بالکل ہی رونے والا ہوگیا تھا۔۔۔۔
“کہ۔۔۔؟؟”
ان سب نے تجسّس سے پوچھا۔۔۔
“کہ۔۔۔ میں لائبہ کی دوست بات کر رہی ہوں لائبہ نے سرف کھا لیا ہے۔۔۔۔۔۔۔”
اس نے بولتے ہی اپنا سر ٹیبل پر ٹکا دیا۔۔۔
“ہیں سرف کھا لیا۔۔۔۔؟”
وفا نے حیرانی سے پوچھا۔۔۔
“ہاں نا۔۔۔۔۔ اب دو منٹ کی خاموشی اختیار کرو سارے میری لائبہ کے اعزاز میں۔۔۔۔”
اس نے ادب سے ہاتھ باندھ کر سر جھکا لیا اور وہ سارے اس عجیب وغریب بات کو ہضم کرنے میں لگے تھے۔۔۔اتنے میں معیز کے موبائل پر ایک میسج کی ٹون بجی۔۔۔۔
“اففف یار یہ علینہ بھی نا دو منٹ کی خاموشی بھی نہیں کرنے دے گی مجھے لائبہ کے لیے چلو میں نکلتا ہوں۔۔۔۔ ہائے۔۔۔۔۔!!! بڑا افسوس ہوا ۔۔۔۔”
معیز نے سر جھکا کر کہا۔۔۔۔
“بھائی دھیان رکھیو کہہ کہیں یہ والی اپنا منہ لوٹے میں نہ پھنسالے۔۔۔۔”
ازلان نے ہنستے ہوئے کہا
“ابے کچھ نہیں ہوتا چل میں نکلا اب۔۔۔۔۔”
معیز بولتا ہوا نکل گیا اور وہ لوگ اس کی حرکتوں پر سر پیٹ کر رہ گئے۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آج مومل یونی نہیں آئی تھی اورکلاس کے بعد وہ لوگ یونی گراؤنڈ میں کھڑے تھے کہ احد ان کے پاس آیا اس سے پہلے کہ وہ کچھ بولتا معیز نے دائیں جانب اور تقی نے بائیں جانب گردنیں موڑ لیں۔۔۔۔
“نہ بھائی اپنا مسئلہ خود سنبھال۔۔۔۔۔”
دونوں نے ایک ساتھ کہا۔۔۔۔
ان سے جواب سن کر اس نی وفا اور زینہ کی طرف دیکھا جو پوری کی پوری پیچھے مڑ گئیں تھیں۔۔۔۔۔
“دیکھلوں گا تم سب کو اللّٰہ بچائے اتنے ذلیل دوستوں سے نوازا ہے توبہ توبہ۔۔۔۔”
احد زور زور سے دوہائی دینے لگا ۔۔۔۔۔۔
“بھائی اب بھی کچھ نہیں بولے گا کیا ایک ہفتے بعد ہماری تو یونی ختم پھر کیسے منائے گا اسے۔۔۔۔”
ازلان نے پتے کی بات کی تو وہ سوچ میں پڑ گیا۔۔۔۔
“بھائی سوچ کیا رہا ہے جا نا۔۔۔۔۔”
تقی نے اسے دھکا دے کر کہا تو وی ہوش میں آیا اور پھر وہیں سے ہی دوڑ لگادی۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مومل اس وقت اپنے روم میں بیٹھی تھی جب اسے باہر سے گٹار کی دھن سنائی دی وہ جلدی سے کھڑکی کی طرف لپکی نیچے جھانکا تو وہ صاحب اس کے لان کی کرسی پر بیٹھے ایک ٹانگ کو اوپر میز پر رکھے اسی کی طرف دیکھ رہے تھے۔۔۔
مومل نے ایک غصیلی نظر اس پر ڈالی اور کھڑکی کے پردے برابر کرتی واپس اپنی جگہ پر بیٹھ گئی۔۔۔۔
اب اسکے گانے کی آواز بھی صاف سنائی دے رہی تھی۔۔۔۔

“مانا ہم سے ہوگئی، چھوٹی سی اک خطا
ہنس دو نا تم ذرا، دونہ ہم کو تم سزا ۔۔۔۔

مانا ہم سے ہوگئی، چھوٹی سی اک خطا
ہنس دو نا تم ذرا، دو نہ ہم کو تم سزا۔۔۔

تم جو ہنس پڑے تو، اب ہم بھی مسکرائیں۔۔۔۔
آؤ مل کے ساتھ گائیں، دل سے دل بھی ملائیں

ہے ہے، موسو موسو ہاسی، دیو ملائے لائے
موسو موسو ہاسی، دیو ملائے۔۔۔۔

ذرا مسکرا دے، مسکرا دے، ذرا مسکرا دے، اے خوشی
ہے موسو موسو ہاسی ، دیو مالائے لائے
موسو موسو ہاسی دیو ملائے۔۔۔۔۔

اس کے گانا ختم کرنے پر مومل نے اپنی کھڑکی پر رکھے گھملے میں سے ایک پتھر اٹھایا اور ایک کاغذ پر
“میں نے نہیں ماننا” لکھ کر پتھر پر کاغذ لپیٹ کر اس کی جانب اچھال دیا اور خود واپس پیچھے ہوگئی۔۔۔
“آؤچ۔۔۔۔۔!!”
پتھر احد کے سر پر لگا تھا لیکن وہ کافی چھوٹا تھا اس لیے اسے چوٹ نہیں آئی۔۔۔۔۔۔
کاغذ پر لکھی تحریر پڑھ کر اس نے مسکرا کر نفی میں سر ہلایا اور گٹار تھام کر واپس شروع ہو گیا۔۔۔۔۔

کبھی کبھی آدتی زندگی میں یونہی کوئی اپنا لگتا ہے
کبھی کبھی آدتی وہ بچھڑ جائے تو اک سپنا لگتا ہے۔۔۔

ایسے میں کوئی کیسے اپنے آنسوؤں کو بہنے سے روکے
اور کیسے کوئی سوچ دے Everything gonna be ok

کبھی کبھی تو لگے زندگی میں نہ ہے خوشی اور نہ ہے مزہ
کبھی کبھی تو لگے ہر دن مشکل اور ہر پل اک سزا۔۔۔۔۔۔

ایسے میں کوئی کیسے مسکرائے،کیسے ہنس دےخوش ہوکے
اور کیسے کوئی سوچ دے Everything gonna be ok

سوچ ذرا جانِجاں تجھ کو ہم کتنا چاہتے ہیں
روتے ہیں ہم بھی اگر تیری آنکھوں میں آنسوں آتے ہیں

گانا تو آتا نہیں ہے مگر پھر بھی ہم گاتے ہیں
اے آدتی بعد کبھی تو سارے جہاں میں اندھیرا ہوتا ہے

لیکن رات کے بعد ہی تو سوہرا ہوتا ہے۔۔۔۔
یے آدتی ہنسدے ہنسدے ہنسدے ہنسدے تو ذرا
نہیں تو بس تھوڑا تھوڑا تھوڑا تھوڑا مسکرا۔۔۔۔۔۔

دوسرا گانا ختم کرکے اس نے اوپر دیکھا جہاں وہ پھر سے کچھ پھینکنے والی تھی اسے دیکھ کر احد نے چلاتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔
“مان جاؤ پلیز مومی۔۔!!!!”
“کبھی نہیں۔۔۔۔”
اوپر سے ایک اور پتھر آیا ۔۔۔۔
“یہ تم میرے اوپر پتھر کیوں برسا رہی ہو؟”
احد نے اپنا بازو سہلاتے ہوئے کہا جہاں ابھی ابھی پتھر لگا تھا۔۔۔۔۔
“میرے پتھر میری مرضی۔۔۔۔۔”
اب کی بار پتھر لگنے سے پہلے ہی اس نے کی کرلیا تھا۔۔۔۔۔۔
“میں بھی تو تمہارا ہوں اگر ٹانگ ٹوٹ گئی تو کیا لنگڑے احد سے شادی کروگی۔۔۔۔۔؟”
احد نے اسے ایموشنل بلیک میل کرنے کی کوشش کی۔۔۔
“تم سے شادی کرے گی میری جوتی۔۔۔!!!”
اب کی بار کاغذ پر غصے والی ایموجی بنی تھی۔۔۔۔
“ٹھیک ہے اس سے بھی کرلیتے ہیں لیکن پہلے یہ پتھر مارنا بند کرو یار۔۔۔”
احد نے شوخی سے کہا۔۔۔۔۔
“نہیں کروں گی۔۔۔۔۔”
“مان جاؤ یار اریجیت سنگھ کی پوری ایلبم ختم کردی میں نے تمہارے لئے۔۔۔۔۔”
اس نے بے بسی سے کہا۔۔۔۔
“ان میں سے اریجیت کا ایک بھی گانا نہیں ہے۔۔۔”
سامنے سے ٹکا سا جواب بلکہ پتھر آیا۔۔۔۔۔
“اچھا اسکا بھی گالوں گا لیکن تم منہ سے کیوں نہیں بول رہی۔۔۔۔۔؟”
“کیونکہ میں تم سے بات نہیں کر رہی ہوں۔۔۔۔۔”
اس کے اس معصومانہ جواب پر احد دل سے مسکرا دیا تھا۔۔۔۔۔۔
“اچھا یہ گانا صرف تمہارے اور میرے لیے دل سے۔۔۔۔۔۔ اور ہاں یہ واقعی اریجیت بھائی کا ہے۔۔۔۔۔”
احد کے کہنے پر وہ مسکرا دی تھی لیکن وہ ناراض تھی تو فوراً مسکراہٹ چھپا گئی۔۔۔۔۔۔

“ہم تیرے بن اب رہ نہیں سکتے، تیرے بنا کیا وجود میرا
تجھ سے جدااگر ہوجائینگےتو خود سےہی ہو جائیں گے جدا

کیونکہ تم ہی ہو، اب تم ہی ہو، زندگی اب تم ہی ہو۔۔۔
چین بھی میرا درد بھی ، میری عاشقی اب تم ہی ہو۔۔۔

تیرا میرا رشتہ ہے کیسا اک پل دور گوارا نہیں۔۔۔۔۔۔۔۔
تیرے لیے ہر روز ہیں جیتے تجھ کو دیا میرا وقت سبھی

کوئی لمحہ میرا بہ ہو تیرے بنا،
ہر سانس پہ نام تیرا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ابھی وہ گا ہی رہا تھا کہ مومل اوپر سے نیچے آچکی تھی اور سینے پر ہاتھ باندھےاسے ہی دیکھ رہی تھی جو ابھی تک اسکی کھڑکی کو ہی تکے جا رہا تھا۔۔۔۔۔۔۔

“کیونکہ تم ہی ہو، اب تم۔۔۔۔۔۔”
مومل نے اسے بیچ میں ہی روک دیا۔۔۔
“او مسٹر بس کرو رلانے کا ارادہ ہے کیا ۔۔۔؟”
مومل کی آواز پر اس نے مڑ کے دیکھا جہاں مومل آنکھوں میں آنسوں سمیٹے اسے ہی دیکھ رہی تھی۔۔۔۔۔۔
“تم۔۔۔ تم نیچے کب آئی۔۔۔۔؟”
اس نے حیرانی سے پہلے مومل کو دیکھا پھر کھڑکی کو جہاں ابھی تھوڑی دیر پہلے وہ کھڑی تھی۔۔۔۔۔
“جب آپ جناب اریجیت سنگھ بنے ہوئے تھے۔۔۔۔”
اس نے اپنی ناک رگڑتے ہوئے کہا۔۔۔۔
“ہاں تو مان جاؤ نا۔۔۔۔ دیکھو مجھے منانا بھی نہیں آتا اور ان بے غیرتوں نے میری مدد بھی نہیں کی۔۔۔۔”
“احد کے کہنے پر وہ کھلکھلا کر ہنس پڑی تھی۔۔۔۔
“احد تمہیں واقعی نہیں آتا منانا۔۔”
مومل نے ہنسی کے درمیان کہا۔۔۔۔
“اتنے پیار سے تو منایا ہے اور کہسے مناتے ہیں بھلا۔۔۔؟”
احد نے منہ بسورتے ہوئے کہا۔۔۔۔
“نہ کوئی چوکلیٹس ، نہ کوئی پھول اور نہ ہی کوئی کارڈ ایسے مناتے ہیں کیا ۔۔۔۔”
اس نے انگلیوں پر کنتے ہوئے اسے بتایا۔۔۔۔
“نہیں تو بندے کو منانے سے پہلے اپنی جیب کا بھی خیال رکھنا چاہیے یا نہیں۔۔۔۔۔”
احد نے شرارت سے کہا جس پر مومل نے بےبسی سے اسے دیکھا تھا۔۔۔۔۔
“میں ابھی تک مانی نہیں ہوں ویسے۔۔۔۔۔”
مومل کہہ کر پلٹی ہی تھی کہ کسی آواز کے تحت واپس پلٹی اور سامنے کا منظر دیکھ کر حیران رہ گئی۔۔۔۔۔
وہاں وہ ساتوں موجود تھے کسی کے ہاتھ میں چوکلیٹس کسی کے ہاتھ میں پھولوں کا گلدستہ اور کسی کے ہاتھ میں غبارے تھے جن پر بڑا بڑا “I’m Sorry” لکھا تھا ۔۔۔۔۔جبکہ احد تو نیچے گٹھنوں کے بل ہاتھ میں وہی انگھوٹی لئے بیٹھا تھا جو مومل اس دن غصے میں چھوڑ گئی تھی۔۔۔۔
“تو اب بتائیے مس مومل فرقان کیا آپ مجھ جیسے بدتمیز، بدلحاظ اور مار پیٹ کرنے والے شخص سے شادی کریں گی۔۔۔۔؟ اور ہاں اس بار اپنے پورے دل سے راضی ہوں اور نہ ہی کسی زبردستی کا شکار ہوں۔۔۔۔۔”
احد کے کہنے پر مومل نے ہنستے ہوئے اپنا ہاتھ آگے کر دیا جسے تھام کر اس نے اسکی مخروطی انگلیوں میں اپنے نام کی انگھوٹی پہنادی۔۔۔۔۔۔
“اور ہاں اس بندر سے بھی سوری کرلوں گا میں۔۔۔۔”
احد نے منہ بگاڑتے ہوئے کہا جس پر مومل نے اسے گھورا تھا۔۔۔۔۔
“ابے پہلے اس سلّو بھائی کو ڈھونڈ تو لے وہ تو یونی ہی نہیں آیا جب سے۔۔۔۔۔”
ازلان کے کہنے پر سب کھلکھلا کر ہنس دئیے۔۔۔۔
“مومی اگر تم یہ چوکلیٹ ساری نہیں کھاؤ گی تو میں لے لوں تھوڑی سی۔۔۔۔”
تقی نے دانتوں کی بھرپور نمائش کرتے ہوئے کہا۔۔۔۔
“کیوں بھئی آج گلوکوز نہیں پیا جو اب اسکی چوکلیٹس بھی تم کو کھانی ہے۔۔۔۔۔”
وفا نے اسکے پاؤں پر اپنا پیر رکھتے ہوئے کہا۔۔۔۔
“اففف پٹاخہ ہٹاؤ یار پاؤں ساری پولش خراب کردی اتنے دنوں بعد کی تھی میں نے۔۔۔۔”
تقی اسکے دوپٹے سے اپنے جوتے صاف کرنے لگا۔۔۔۔
“اوووو تمہارا دماغ ٹھکانے ہے میرا نیا دوپٹہ خراب کردیا بدتمیز گلوکوز کی بوتل۔۔۔۔۔۔”
وفا بولتے ہی اسکے پیچھے بھاگی جو پہلے ہی دوڑ لگا چکا تھا اور پیچھے وہ سارے بس تاسف سے سر جھٹکتے رہ گئے۔۔۔۔۔

–**–**–
جاری ہے
——
آپکو یہ ناول کیسا لگا؟
کمنٹس میں اپنی رائے سے ضرور آگاہ کریں۔

About the author

Peerzada M Mohin

Leave a Reply

This function has been disabled for Online Urdu Novels.

%d bloggers like this: