Bushra Zahid Qureshi Urdu Novels

Yaaran Naal Baharan Novel By Bushra Zahid Qureshi – Episode 6

Yaaran Naal Baharan Novel By Bushra Zahid Qureshi
Written by Peerzada M Mohin
یاراں نال بہاراں از بشریٰ زاہد قریشی – قسط نمبر 6

–**–**–

“ی۔۔یہ دوستی ہم نہیں توڑیں گے
توڑیں گے د۔۔دم مگر تیرا ساتھ نہ چھوڑیں گے

اب وہ اسکے ہاتھوں میں سر دئیے ٹوٹے ہوئے الفاظ میں گا رہا تھا۔۔۔۔۔

میری جیت تیری جیت،
تیری ہار میری ہار
سن ائے میرے یار

میرا غم تیرا غم،
تیری جان میری جان
ایسا اپنا پیار۔۔۔۔۔

ج۔۔جان پہ بھی کھیلیں گے،
تیرے لیے لے لیں گے۔۔۔۔
سب سے دشمنی۔۔۔۔

یہ دوستی ہم نہیں توڑیں گے،
توڑیں گے دم مگر تیرا ساتھ نہ چھوڑیں گے۔۔۔

اس کے بعد اسکا ضبط بھی جواب دے گیا اور شاید ازلان کی ضد بھی وہ اسکے ہاتھ پر سر رکھے پھوٹ پھوٹ کر رو رہا تھا جب اسے ازلان کے ہاتھوں میں ذرا سی جنبش محسوس ہوئی اس نے وہیں سے سرپٹ دوڑ لگائی اور ڈاکٹر کو بلایا تھا۔۔۔۔
“ڈ۔۔۔ڈاکٹر اس نے۔۔۔ اس نے ہاتھ ہلایا تھا م۔۔میں نے دیکھا تھا۔۔۔۔۔”
وہ خوشی اور ضبط کے مراحل بڑی مشکل سے کاٹ رہا تھا۔۔۔۔
اسکی بات پر جہاں ڈاکٹر اندر لپکے وہیں وہ سب بھی سیدھے کھڑے ڈاکٹر کے باہر آنے کا انتظار کر رہے تھے۔۔۔۔۔

وہ پندرہ منٹ کا انتظار ان سب کو پندرہ سال جتنا لمبا لگا تھا۔۔۔۔ اور پھر بلآخر ڈاکٹر چہرے پر مسکراہٹ لئے ان تک آئے۔۔۔۔
“Alhamdulillah!! He is out of danger now… You can meet him in few minutes….”
ڈاکٹر مسکرا کر احد کے کندھے پر ہاتھ رکھ کر چل دئیے اور وہ سب خوشی اور تشکر سے ایک دوسرے کو دیکھ رہے تھے جبکہ زینہ تو وہیں اپنے رب کے حضور سجدہ ریز ہوئی تھی۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اس وقت وہ چھ نفوس ہسپتال کے روم میں کھڑے تھے جبکہ ازلان ابھی بھی بیڈ پر لیٹا ہوا تھا۔۔۔۔ اس کی نظر اپنے سراہنے کھڑی زینہ پر پڑی جو بنا پلک جھپکائے آنکھوں میں ڈھیروں آنسوں سمیٹے اسے ہی دیکھ رہی تھی۔۔۔۔۔
ازلان نے بغور اس کا جائزہ لیا اور پھر مسکراتے ہوئے اسکا ہاتھ تھاما تھا۔۔۔۔
“کیا ہے یار بس کرو دیکھو ٹھیک ہوں میں۔۔۔۔”
ازلان نے اس کی حالت دیکھتے ہوئے کہا جو دو دن میں صدیوں کی بیمار لگ رہی تھی۔۔۔
“اگر تمہیں کچھ ہو جاتا تو۔۔۔”
اس نے آنسوں پونچھتے ہوئے کہا۔۔۔۔
“تو کیا۔۔۔ تم رخصتی سے پہلے ہی بیواہ اور ہماری بریانی پکی تھی۔۔۔۔”
جواب ازلان کے بجائے ہمیشہ سے بھوکے تقی کی طرف سے آیا تھا جس پر زینہ نے پھل کی ٹوکری میں سے ایک سیب کھینچ کر اسے مارا لیکن وہ پہلے ہی کیچ کر چکا تھا۔۔۔۔۔
“شکریہ بھابھس۔۔۔!!”
اس نے سیب والا ہاتھ ہوا میں اٹھا کر کہا اور وہ اسکے بھابھس کہنے پر مسکرادی۔۔۔۔
وہ لوگ ابھی باتیں ہی کر رہے تھے کہ ازلان کو اسکی کمی شدت سے محسوس ہوئی۔۔۔۔
“معیز اس کمینے سے بول آ جائے اندر۔۔۔ جب خون دیتے ہوئے نہیں ہچکچایا تو اب کیوں نظریں چرا رہا ہے۔۔۔۔؟”
ازلان کی بات پر جہاں وہ سب چونکے تھے وہیں باہر کھڑے احد کو بھی حیرت کا شدید جھٹکا لگا۔۔۔۔
“ابے تجھے کیسے پتہ کہ ہادی نے خون دیا تجھے۔۔۔؟”
تقی نے حیرت سے پوچھا۔۔۔۔
“ابے اب تو رگیں بھی چینخ چینخ کے بتا رہی ہیں کہ کسی ذلیل شخص کا خون دوڑ رہا ہے ان میں۔۔۔۔”
ان سب کے قہقہوں سے ہسپتال کا پورا روم گونج اٹھا تھا۔۔۔۔اسی دوران احد بھی روم میں داخل ہوا اور ازلان کو صحیح سلامت دیکھ کر وہ پل بھر میں اس تک پہنچا اور اسکے پٹیوں میں جکڑے وجود سے لپٹ گیا۔۔۔۔
“اہم۔۔۔ جانی بس کر میری بیوی بھی ہے یہاں۔۔۔ کیا سوچے گے سب لوگ۔۔۔۔”
ازلان نے پرشوخ انداز میں مصالحت کی جس پر ایک بار پھر ان آٹھوں کے زندگی سے بھرپور قہقہے پورے کاریڈور میں گونجے تھے اور باہر سے گزرتے ہر شخص نے ان کے پاگل ہونے کی تصدیق کی تھی۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ازلان کو ہاسپٹل سے ڈسچارج ہوئے ایک ہفتہ گزر گیا تھا وہ ابھی بھی بیڈ ریسٹ پر تھا البتہ اس کی حالت میں پہلے سے کافی زیادہ بہتری آئی تھی۔۔۔۔۔
آج عید میلاد النبی صلی اللّٰہ علیہ وسلم کا تہوار تھا اور وہ سب آج ازلان کے گھر دھاوا بولنے والے تھے۔۔۔
“یار معیز آج کا کیا سین ہے پھر۔۔۔؟”
احد نے خود کو آئینے میں ایک آخری نظر دیکھتے ہوئے اسپیکر پر لگے فون پر موجود معیز سے پوچھا۔۔۔۔
“یار کیا مطلب ‘کیا سین ہے’۔۔۔۔ وہی ہوگا جو ہر سال کرتے ہیں۔۔۔۔”
معیز نے کندھے اچکاتے ہوئے کہا۔۔۔۔
“ٹھیک ہے پھر اپنی بائیک لے آنا۔۔۔ گاڑی میں صحیح طرح مال پر فوکس نہیں ہوتا۔۔۔۔”
احد نے اسے سمجھاتے ہوئے کہا۔۔۔
“اوکے باس۔۔۔ لڑکیوں کو ازلان کے گھر چھوڑ کر ہم تین نکلتے ہیں مشن پر۔۔۔۔۔”
معیز نے جوگرز کے تسمے باندھتے ہوئے کہا اور کال کٹ کر دی گئی۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اس وقت ازلان اپنے گھر کے لاؤنچ میں بیٹھا ان سب کا انتظار کر رہا تھا جب اسے دروازے سے لڑکیاں آتی دکھائی دی۔۔۔۔۔ لیکن اس کی نظر تو زینہ پر ہی اٹک گئی تھی وہ اچانک ہی صوفے سے اٹھا جب وہ تقریباً بھاگتی ہوئی اس تک آئی اور اس کے لڑکھڑاتے وجود کو تھام کر واپس صوفے پر بٹھایا تھا۔۔۔۔۔۔
“اوو ہیرو دھیان سے ذرا منکوحہ کو دیکھ کہ ہوش کھو بیٹھے ہو کیا۔۔۔۔۔۔”
وفا نے اس کو گھورتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔
“ارے واہ تم لوگ تو ربیع الاول کی لائٹس کی طرح چمک رہی ہو۔۔۔۔۔”
ازلان نے شوخی سے کہا۔۔۔۔۔
“کیا مطلب ہے اس بات سے تمہارا…!؟”
مومل نے ایک ائبرو اچکاتے ہوئے پوچھا۔۔۔۔۔
“اہم۔۔۔۔ نہیں کچھ نہیں بھابھی میرا مطلب تھا اچھے لگ رہے ہیں آپ سب۔۔۔۔”
ازلان نے فوراً بات سنبھالی مبادا وہ چاروں اسے واپس ہسپتال نہ پہنچا دیں۔۔۔۔۔
“اور یہ تینوں منحوس کہاں ہیں۔۔۔”
اس نے ادھر اُدھر نظریں دوڑاتے ہوئے پوچھا۔۔۔۔
“پتہ نہیں بھائی کسی مشن کا کہہ رہیں تھے معیز سے فون پر۔۔۔۔”
بنش نے کچھ یاد کرتے ہوئے کہا تھا۔۔۔۔
“کیا۔۔۔ یہ لوگ میرے بغیر ہی وہاں چلے گئے۔۔۔۔۔ یا اللّٰہ میں کیا کروں اب۔۔۔۔۔”
ازلان نے اتنی زور سے دہائیاں دی کہ وہ چاروں بس دیکھتی ہی رہ گئیں۔۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“ابے ہادی ناگن چورنگی چل وہاں بہت مال ہوتا ہے اس وقت۔۔۔۔”
تقی جو بائیک پر احد اور معیز کے بیچ میں دبا ہوا تھا اس نے بڑے جوش سے کہا تھا۔۔۔۔۔۔
“ابے تو جب سے ادھر اُدھر ڈوڑا رہا ہے ہمیں دوپہر سے بس شربت ہی شربت پی رہے ہیں ہم۔۔۔۔۔
“معیز نے اسکے کندھے پر ایک مکا جڑا تھا۔۔۔۔۔
“ابے میں کہہ رہا ہوں نا ناگن چورنگی پر بڑا والا لنگر لگتا ہے آج تو بریانی پکی ہے ہماری۔۔۔۔”
بریانی کا نام لیتے ہی تقی کے منہ میں پانی بھر آیا۔۔۔۔
وہ لوگ ابھی ناگن چورنگی کے روڈ پر ہی تھے کہ احد کو ایک بڑا سا ٹرک آتا ہوا دکھا جس میں کئی دیگیں رکھی ہوئی تھی۔۔۔۔۔
“ابے وہ دیکھ بریانی آرہی ہے۔۔۔۔”
احد نے پیچھے مڑ کر کہا لیکن وہ دونوں تو پہلے ہی ٹرک کی جانب لپک چکے تھے۔۔۔۔۔
ٹرک سے دو لڑکے بریانی کے چھوٹے چھوٹے شاپر ایسے لوگوں کی طرف اچھال رہے تھے کہ وہاں جیتو پاکستان کا سیٹ لگا ہو اور لوگ بھی جھپٹتے ہوئے اپنے فہد مصطفیٰ کا خوب ساتھ دے رہے تھے۔۔۔۔۔۔
بلآخر تقی کے ہاتھ ایک شاپر لگ ہی گیا لیکن یہ کیا ابھی وہ پوری طرح سے خوش بھی نہیں ہوا تھا کہ کسی نے اس کے ہاتھ سے بھی بریانی جھپٹ لی اور وہ بیچارہ ارے ارے ہی کرتا رہ گیا۔۔۔۔۔۔
احد جو بائیک سٹارٹ کر کے ان دونوں کا انتظار کر رہا تھا انہیں ایسے خالی ہاتھ منہ لٹکائے دیکھ کر اسکا قہقہ بے ساختہ تھا۔۔۔۔۔
“کیا ہوا مل گئی بریانی۔۔۔”
اس نے انہیں تپانے کے لیے کہا تھا جبکہ انکی حالتں تو ایسی تھی کہ ابھی کوئی گلے لگالے تو رو پڑے۔۔۔۔۔۔
وہ گھر کے لیے نکل ہی رہے تھے جب معیز کی کمر پر کچھ بڑے زور سے لگا تھا۔۔۔۔۔
“اوو بھائی روکو ذرا روکو۔۔۔۔۔”
پولیس انسپکٹر اب سامنے سے آکر ایک ڈنڈا احد کو مارا تھا۔۔۔۔
“آہ۔۔۔۔۔ کیا ہوگیا بھائی ہمیں کیوں مندر کے گھنٹے کی طرح بجا رہے ہو۔۔۔۔۔”
اس نے اپنا بازو سہلاتے ہوئے کہا تھا۔۔۔۔۔
“اوئے۔۔۔۔ تم لوگوں کو معلوم نہیں کہ ڈبل سواری پر پابندی ہے آج۔۔۔۔؟”
اس نے ان دونوں کو گھورتے ہوئے کہا جبکہ تقی کے اوپر اس کی نظر نہیں پڑی تھی۔۔۔۔۔۔
“بھائی صاحب ہم تین ہیں۔۔۔۔۔”
تقی کی آواز ان دونوں کے درمیان میں کہیں سے آئی تھی۔۔۔۔۔
“چلو لڑکوں چلان بھرو اب پورے پانچ ہزار روپے۔۔۔۔”
انسپکٹر کا منہ کھلتے ہی پانچ ہزار نکل گئے۔۔۔۔۔
“ابے یہ تو اپنی توند سے بھی زیادہ رقم مانگ رہا ہے۔۔۔۔۔”
معیز نے اسکی بڑی سی توند کو دیکھتے ہوئے احد سے کہا تھا۔۔۔۔
“بھائی کیا بول رہے ہو ادھر لنگر کھانے کے پیسے نہیں ہیں اور آپ نے پانچ ہزار ہی مانگ لئے۔۔۔۔”
تقی نے بےبسی سے کہا۔۔۔۔
“چلو بھائیوں اپنی اپنی جیبیں خالی کرو۔۔۔۔”
احد نے کہتے ہوئے اپنی جیب سے پورے ایک ہزار ایک سو روپے بمشکل نکالے۔۔۔۔۔
جبکہ اسکی بات پر عمل کرتے ہوئے معیز اور تقی نے بھی اپنی شرٹ اور پینٹ کی ساری کی ساری جیبیں خالی کی۔۔۔۔پھر کہیں جاکر انکے پاس سے کل دو ہزار دو سو دس روپے نکلے اور انسپکٹر اسی کو غنیمت جان کر نکل گیا جبکہ وہ تینوں خالی دامن رہ گئے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“ہائے۔۔۔۔
نہ لنگر ملا نہ بریانی صنم،
نہ ادھر کے رہے نہ اُدھر کے ہم۔۔۔۔”
معیز نے ایک بار پھر شعر کو بری طرح سے زخمی کیا تھا اور اس بار کسی نے اسکی اصلاح نہیں کی کیونکہ شاید اس شعر سے زیادہ زخمی وہ خود تھے اس وقت۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

وہ پانچوں اس وقت ازلان کے گھر کے بڑے سے لاؤنج میں صوفے پر آڑھے ترچھے بیٹھے پزا اور کولڈ ڈرنکس سے بھرپور انصاف کر رہیں تھے تو انہیں دروازے کے پار سے وہ تینوں آتے دکھائی دئیے۔۔۔۔
جیسے ہی تقی نے اندر قدم رکھا ان پانچوں نے اپنے ہاتھوں میں پکڑا پزے کا آخری بائٹ اپنے اپنے مونہوں میں ٹھونسنے کے انداز میں ڈالا اور انکی یہ حرکت بھکڑ تقی کی زیرک (ندیدی) نگاہوں سے بچ نہ سکی وہ تقریباً گرتا پڑتا ان لوگوں تک پہنچا لیکن جب تک وہ پزا پر فاتحہ بھی پڑھ چکے تھے اور بیچارہ تقی ایک بار پھر خالی ہاتھ بلکہ خالی پیٹ رہ گیا۔۔۔۔
“ارے ظالم لوگوں تم سب نے اکیلے اکیلے پزا ٹھونس لیا۔۔۔”
تقی نے اپنے دل پر صدمے سے ہاتھ رکھتے ہوئے زمین پر گرنے کے انداز میں بیٹھتے ہوئے کہا۔۔۔۔
“نہ۔۔نہ میری جان کولڈرنک بھی اور برگرز بھی جو ہم تیرے آنے سے پہلے ہی ہضم کرچکے ہیں۔۔۔۔۔”
ازلان نے پزے سے بھرے منہ سے کہا۔۔۔۔
“اور میں اکیلا کہاں تھا یہ ساری لڑکیاں بھی میرے ساتھ تھی الحمدللہ۔۔۔۔”
اس نے پورے بتیس دانتوں کی نمائش کرتے ہوئے ان چاروں کی طرف اشارہ کیا جو اسکے دیکھنے پر بانچھیں پھیلائے مسکرا دی تھیں۔۔۔۔
“بدتمیزوں تھوڑا ہمارا بھی خیال کرلیتے۔۔۔ ہم بھوکے پیاسے لوٹے ہیں۔۔۔۔۔”
اس نے مظلوموں والی شکل بنائی جس پر ازلان نے اسے ایک طنزیہ مسکراہٹ سے نوازا۔۔۔۔
“آئے ہائے ہائے ہائے۔۔۔۔۔ بھئی واہ۔۔۔۔ مزہ ہی آگیا ایک دم سے دل لبِ شیریں جیسا کردیا واہ واہ۔۔۔۔۔ اور نہ جاؤ میرے ساتھ یہ ہی ہونا تھا آہا۔۔۔۔”
ازلان نے پاگلوں کی طرح ہنستے ہوئے ان کا مذاق اڑایا۔۔۔۔۔
تقی تو ان سب کو ایسے دیکھ کر پیچ و تاب کھا کر رہ گیا جبکہ احد اور معیز تو لٹے پٹے جواریوں کی طرح صوفے پر پیر پھیلا کر بیٹھ گئے تھے۔۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ ایک عالیشان عمارت کا بڑا سا کمرہ تھا جسکی ایک ایک چیز اپنے مالک کے اعلیٰ ذوق ہونے کی گواہی دے رہی تھی۔۔۔۔
گلاس ڈور کے بالکل سامنے ہی ایک آفس چیئر الٹی گھومی ہوئی تھی جس پر بڑے بڑے جھلی حروف میں
“مسٹر عبدلاحد منان” لکھا ہوا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
احد کو ازلان کے ساتھ پارٹنر شپ کئے تین مہینے گزر چکے تھے اور اسکی شراکت داری “حمدانی گروپ آف انڈسٹریز” کے لیے کافی زیادہ نفع بخش ثابت ہوئی تھی۔۔۔۔۔۔
احد واقعی میں بہت دلجمعی سے اس کمپنی کے سارے معاملات و واقعات بخوبی سرانجام دے رہا تھا جبکہ ازلان صاحب کو اس کے آنے سے کافی فری ہینڈ مل گیا تھا اسے میچ اور زینہ کے ساتھ آؤٹنگ سے فرصت ملتی تو ہفتے میں دو تین بار آفس کا چکر لگا جاتا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اس وقت احد کرسی کا رخ موڑے دیوار گیر کھڑکی سے باہر دیکھ رہا تھا کہ معیز بغیر دستک دیئے ہڑبڑاتا ہوا اندر داخل ہوا۔۔۔۔۔۔
“ا۔۔۔۔۔احد۔۔۔۔!!”
پھولے ہوئے سانس سے اسے مخاطب کرکے وہ اپنی سانسیں ہموار کرنے لگا۔۔۔۔۔
احد نے کرسی گھما کر اسے تذبذب سے دیکھا۔۔۔۔۔
“او بھائی خیریت ہے نا۔۔۔۔؟”
احد نے اسے ایسی حالت میں دیکھ کر تشویش سے پوچھا۔۔۔۔
“بھائی۔۔۔۔۔ مجھے۔۔۔”
وہ شاید اپنی بات کہتے ہوئے ہچکچا رہا تھا۔۔۔۔
“کیا ہوا بھائی تجھے۔۔۔۔؟”
اب کے احد کو بھی پریشانی نے آن گھیرا تھا۔۔۔۔
“مجھے پیار ہوگیا ہے۔۔۔۔”
معیز ایک سانس میں پوری بات کہہ کر اسکا ردعمل دیکھنے کا انتظار کر رہا تھا۔۔۔۔۔
“بس۔۔۔۔ اتنی سی بات!!؟ بھائی یہ کوئی نئی بات تو نہیں ہے تجھے تو ہر ہفتے ہی پیار ہوجاتا ہے۔۔۔۔”
احد نے ہلکے پھلکے انداز میں کہا۔۔۔۔
“بھائی تو سمجھ نہیں رہا مجھے شادی کرنی ہے۔۔۔۔”
معیز اسکا اتنا ٹھنڈا ری ایکشن دیکھ کر صدمے سے کہا۔۔۔
“اووو۔۔۔۔۔!!!! ہاں تو یہ بھی تیرا اس سال کا دسواں شادی کا فیصلہ ہے۔۔۔۔”
احد نے او کو لمبا کھینچتے ہوئے اطمینان سے جواب دیا۔۔۔
“بھائی سمجھنے کی کوشش کر۔۔۔ میں کبھی بھی یہ مسئلہ لے کر تیرے پاس نہ آتا لیکن اس بار میں واقعی سیریس ہوں اور لڑکی تجھ سے ریلیٹڈ ہے تو مجھے مجبوراً یہاں آنا پڑا۔۔۔۔”
معیز نے قدرے سنجیدگی سے سارا مسئلہ احد کے گوش گزارا۔۔۔
“ہیں۔۔۔!؟ مجھ سے ریلیٹڈ۔۔۔؟؟ کون ہے بے۔۔۔؟”
اس نے آنکھیں سکیڑ کر اس سے پوچھا۔۔۔۔
“ب۔۔ بھائی دراصل وہ۔۔۔ وہ ہمارے ہی گروپ کی ہے۔۔۔۔”
معیز نے تھوک نگلتے ہوئے کہا۔۔۔۔
احد کو جیسے ہی اس کی بات سمجھ آئی وہ طیش کے عالم میں اس تک پہنچا اور نہ آؤ دیکھا نہ تاؤ یکہ بعد دیگرے معیز کے منہ پر مکے برسانے شروع کر دیئے۔۔۔۔
“سالے۔۔۔ تیری ہمت بھی کیسے ہوئی میری عزت پر بری نظر ڈالنے کی۔۔۔۔”
احد کے سر پر تو مانو خون سوار تھا۔۔۔۔۔
“یار میں یہ بات بنش سے کہہ کر ہماری اتنے سالوں کی دوستی خراب نہیں کرنا چاہتا تھا اس لیے پہلے میں نے اس کے بھائی کی رضامندی جاننا زیادہ ضروری سمجھا۔۔۔۔”
اس نے اپنا گریبان احد کی سخت گرفت سے چھڑواتے ہوئے کہا۔۔۔
اس کی بات سن کر وہ ایک بار پھر اس پر لپکنے ہی لگا تھا کہ کچھ سوچتے ہوئے اگلے لمحے ہی پیچھے کو ہوا۔۔۔۔
“کیا کہا تو نے ابھی۔۔۔۔۔؟”
احد نے ناسمجھی سے اسکی طرف دیکھتے ہوئے پوچھا۔۔۔۔
“یہی کے میں اگر ڈائریکٹ یہ بات بنی سے کرتا تو ‘ تو مجھے اسکے سامنے ہی اس طرح ذلیل کر دیتا۔۔۔۔”
معیز نے اپنے منہ کی طرف اشارہ کرتے ہوئے کہا جہاں سے خون کی پتلی سی لکیر بہہ رہی تھی۔۔۔۔
“واٹ۔۔۔!؟؟؟ بنش۔۔۔۔!!! سیریسلی۔۔۔؟؟؟”
احد اسکی بات سن کر ایک لمحے کے لیے بھونچکا رہ گیا۔۔۔۔
“ہاں تو۔۔۔۔؟ ایک منٹ تو کیا سمجھا۔۔۔؟”
معیز نے پہلے اداسی پھر اسکی آنکھوں میں جھانکتے ہوئے پوچھا۔۔۔۔۔
“اہم۔۔۔۔۔ ک۔۔۔ کچھ نہیں۔۔۔ جانے دے یار۔۔۔۔”
اس نے نظریں چراتے ہوئے کہا۔۔۔
“اوئے۔۔۔۔ تجھے لگا کہ میں مومی۔۔۔۔؟”
معیز نے اسے بازو سے پکڑ کر اپنے سامنے کیا۔ جس پر وہ شرمندگی سے نظریں جھکا گیا۔۔۔۔۔
“دور فٹے مونہہ۔۔۔۔۔ مطلب ایسے ہی تو نے میرے منہ پر ڈینٹ مار دیا اور میرا جبڑا بھی ہلا ڈالا بےغیرت۔۔۔۔۔۔۔!!!!!”
معیز نے دانت پیستے ہوئے اپنے منہ پر ہاتھ رکھا۔۔۔۔
“اچھا جانے دے نا۔۔۔۔ چل یہ لے صاف کرلے اپنا منہ۔۔۔۔”
احد کو اپنی غلطی کا احساس ہوا تو اسکے کالر سے نادیدہ گرد صاف کی اور اپنی جیب سے رومال نکال کر اس کی جانب بڑھایا جسے اس نے اسے گھورتے ہوئے تھاما تھا۔۔۔۔۔
“اب بتا کیا لے گا چائے یا ٹھنڈا۔۔۔۔؟”
احد نے انٹرکام کا ریسیور اٹھاتے ہوئے اسکی جانب دیکھا جو اب کرسی سنبھال چکا تھا۔۔۔۔۔
“تیری بہن اور میری محبت، بنش منان۔۔۔۔۔”
اطمینان سے بازوؤں کو سینے پر لپیٹے وہ ایک بھائی سے اسکی بہن کے لیے اظہارِ محبت کر رہا تھا۔۔۔۔
اسکی بات پر پہلے تو احد کو غصہ آیا لیکن پھر اس کے عنابی ہونٹوں پر ہلکی سی مسکراہٹ ابھر کر معدوم ہوئی۔۔۔۔
“جانی دیکھ مجھے کوئی اعتراز نہیں بس میری ایک چھوٹی سی شرط ہے۔۔۔۔”
احد نے ریسیور واپس رکھتے ہوئے اسی کے انداز میں کہا۔۔۔۔
“مجھے تیری ہر شرط منظور ہے۔۔۔”
“اچھا۔۔۔!! تو شرط یہ ہے کہ تجھے پہلے میری بہن کو منانا پڑیگا اور اس کے علاوہ اپنے سارے چکروں کو دی اینڈ کرنا ہوگا۔۔۔۔۔ اگر مجھے آئیندہ کسی لڑکی کے ساتھ دکھا تو انجام کا ذمیدار تو خود ہے۔۔۔۔۔”
احد نے کہتے ہی اسکی جانب دیکھا۔۔۔۔۔
“تو مجھے دھمکی دے رہا ہے۔۔۔؟”
اس نے ایک آئبرو اچکا کر کہا۔۔۔۔
“نہیں میرے جگر تجھے باور کروا رہا ہوں۔۔۔۔”
“بتا منظور ہے شرط؟”
احد نے اسکی حالت پر لطف اندوز ہوتے ہوئے پوچھا۔۔۔۔
“منظور ہے سالے۔۔۔۔۔”
معیز نے اسے گھورتے ہوئے کہا۔۔۔۔
“تو دیر کس بات کی ہے جانی ادھر آ جھپی پا۔۔۔۔۔”
اس نے معیز کو کھینچ کر خود میں بھینچ لیا۔۔۔۔
“ابے موٹے چھوڑ دے میرا دم گھوٹے گا کیا سالے چھوڑ۔۔۔۔”
معیز نے اسکی گرفت میں مچلتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“ازلان ہم دونوں کہاں جا رہے ہیں۔۔۔۔؟”
ازلان سڑک پر زور و شور سے گاڑی بھگا رہا تھا جب زینہ نے تجسس سے اس سے پوچھا۔۔۔۔۔
“ڈئیر ہم دونوں نہیں بلکہ ہم آٹھوں افلاطون جا رہیں ہیں۔۔۔۔۔”
اس نے پیچھے کی طرف اشارہ کرتے ہوئے کہا جہاں معیز کی گاڑی میں وہ چھ نفوس ہلہ گلہ کرتے ہوئے آ رہے تھے ۔۔۔۔۔
” ان سب کو معلوم ہے کہ ہم کہاں جا رہے ہیں؟”
زینہ نے سر کو شیشے سے باہر نکال کر دیکھا جہاں ان تینوں نے بھی اپنے ہاتھ ہوا میں بلند کرکے” تھمبز اپ” کا نشان بنایا تھا۔۔۔
“تم لڑکیوں کے علاوہ سب کو پتہ ہے۔۔۔۔”
اس نے سامنے دیکھتے ہوئے کہا جس پر زینہ بس اسے دیکھتی ہی رہ گئی۔۔۔۔۔۔۔
اچانک ہی مومل کو ایک جگہ بڑا بڑا
“Welcome ToNational Stadium Karachi”
لکھا نظر آیا جس پر اسکا دماغ ہی گھوم گیا۔۔۔۔۔
“کیا۔۔۔۔۔!!! تم لوگ ہمیں یہاں۔۔۔۔۔ اسٹیڈیم میں میچ دیکھنے لائے ہو۔۔۔۔”
جہاں مومل اور بنش کا موڈ سخت آف ہو گیا تھا وہیں وفا کی تو خوشی کے مارے آنکھیں چمک اٹھی تھی۔۔۔۔۔
“یار واقعی میں ہم یہاں لائیو میچ دیکھنے آئے ہیں۔۔۔۔۔!!!
OMG…. I’m So Excited….
مجھے تو لگا تھا صبح کے اس وقت تم لوگ ہمیں کسے بورنگ سپاٹ پر لے جاؤ گے ۔۔۔”
وفا تو یک دم ہی فریش ہوگئی تھی۔۔۔۔۔
“ازلان میں اندر نہیں جانے والی یار میں نے آج تک کبھی کرکٹ ٹی وی پر بھی نہیں دیکھا اور تم ہمیں یہاں لائیو میچ دکھانے لے آئے تو۔۔۔۔۔”
زینہ اسٹیڈیم کے باہر لائن میں کھڑی اس سے کہہ رہی تھی “کراچی کنگز” کی شرٹ پہنے مختلف اینگلز سے سیلفیز لے رہا تھا۔۔۔۔۔۔
“ارے زینی تمہیں پتہ نہیں ہے آج” پی ایس ایل “کا فائنل ہے اور اتنا مزہ آئے گا نا کہ پوچھو ہی مت۔۔۔”
ازلان نے مین گیٹ پر کھڑے گارڈ کو چیکنگ کرواتے ہوئے کہا۔۔۔۔
“ارے۔۔۔۔ بنش اپنے کھردرے پیر زمین پر نہ رکھو زمین میلی ہو جائے گی۔۔۔۔۔۔”
بنش اندر کی جانب بڑھ رہی تھی کہ اچانک ہی معیز وہاں آ
دھمکا۔۔۔۔
“کیا۔۔۔۔ کیا کہا تم نے میرے پیر کھردرے؟؟ ہاں زمین میلی ہو جائے گی۔۔۔۔؟؟”
بنش غصے میں اسکی طرف بڑھ ہی رہی ہوتی ہے کہ احد نے اسے بیچ میں روک دیا۔۔۔۔
“ارے بنی اسکا مطلب اپنے ‘مخملی’ پیروں کو زمین پر نہ رکھو ‘تمہارے پیر’ میلے ہوجائے گے۔۔۔۔۔”
اس نے دانت پیستے ہوئے معیز کی تصیح کی۔۔۔۔
“ہاں۔۔۔۔ بالکل یہ ہی جو ہادی نے کہا۔۔۔۔”
معیز کے دانت نکال کر کہنے پر وہ محض اسے گھور کر آگے بڑھ گئی۔۔۔۔۔
“بھائی یہ چپس وغیرہ تم نہیں لے جا سکتی اندر۔۔۔”
ایک گارڈ نے تقی کے ہاتھ میں پورا کھانے پینے کا سامان دیکھ کر وہیں توک دیا۔۔۔۔
“کیا کہہ رہے ہو لالہ ہم اندر بھوک کے مارے مر جائے گی۔۔۔۔”
تقی نے اسی کے انداز میں رونی صورت بنا کر کہا۔۔۔۔
“نہ بچے نہ ہم تم کو یہ سب کچھ نہیں لے جانے دے گا اندر۔۔۔۔”
خان صاحب بھی شاید نہ چھوڑنے کی قسم کھا کر آئے تھے۔۔۔۔
“بھائی جانے دے میچ شروع ہوجانا ہے جلدی چل۔۔۔۔۔”
احد نے اس کو سمجھاتے ہوئے کہا۔۔۔۔
“ارے ایسے کیسے جانے دوں بھئی میری بھوک کا ساتھی ہے اس میں۔۔۔۔”
تقی نے شاپر کو مزید سختی سے پکڑ لیا۔۔۔۔
“ابے تو چل اندر وہاں بہت کچھ ملے گا کھانے کو۔۔۔۔۔”
ازلان نے اسے تقریباً گھسیٹ کر وہاں سے ہٹایا اور وہ بھی کھانے کا نام سن کر اس کے ساتھ ہی چل دیا۔۔۔۔۔۔۔

“یار بنی صحیح سے لو میری پکچر۔۔۔۔”
مومل نے اسے کوئی بیسویں بار ٹوکا تھا جو نجانے کب سے آڑھے ترچھے پوز بنا کر اپنی سیلفیز لے رہی تھی۔۔۔۔۔
“افف ادھر دکھاؤ میں تو آہی نہیں رہی اس فریم میں۔۔۔۔”
وفا نے جھنجھلاتے ہوئے اپنے ہاتھ میں پکڑے سارے 6 اور 4 کے پلے کارڈز برابر بیٹھے تقی کی جھولی میں ڈال دیئے جو بیچارہ ایک گھنٹے سے اس کھانے کو ڈھونڈ رہا تھا جس کا احد نے اسے چونا لگایا تھا۔۔۔۔۔
“ابے یہاں تو ‘تپال دانیدار’ کے علاوہ کچھ نظر ہی نہیں آرہا۔۔۔۔”
تقی نے صدمے سے نڈھال ہوتے جگہ جگہ چائے کے اسٹالز دیکھتے ہوئے سارے کارڈز احد کو تھما دئیے جو میچ کے انتظار میں پشت پیچھے کرسی پر ٹکائے کافی پرجوش نظر آ رہا تھا۔۔۔۔
جبکہ ازلان نے ان تینوں کی طرح ہی کراچی کنگز کی جرسی پہننے کے ساتھ ساتھ اپنے دونوں گالوں پر کراچی کے آفیشل رنگوں لال اور نیلے سے پینٹ بھی کروایا تھا۔۔۔۔۔
وہ وہاں آرام سے بیٹھا اسٹیڈیم میں بجتے نغموں سے لطف اندوز ہو رہا تھا کہ پیچھے سے کسی لاہور کے سپورٹر نے اس کی تیاری پر چوٹ کرتے ہوئے جملہ کسا۔۔۔۔
“ہارپک!!! نیلا Toilet اور لال باتھروم کے لیئے۔۔۔۔۔”
لاہوری کی اس بات پر ان آٹھوں کا دماغ ایک ساتھ 360 ڈگری پر گھوما اور اس سے بھی پہلے وہ سارے برق رفتاری سے پیچھے گھومے اور یک زبان ہوکر چلانے کے انداز میں بولے۔۔۔۔
“لاہور,لاہور ہے اور کراچی اسکا شوہر ہے۔۔۔۔”
ان سب کے ایک ساتھ بولنے پر وہ لڑکا ایک لمحے کو سٹپٹا ہی گیا۔۔۔۔
اگلے ہی لمحے اس لاہوری نے ایک جاندار نعرہ بلند کیا۔۔۔۔
“پاکستان۔۔۔۔۔۔۔!!!!”
اسکے اس نعرے کے بعد ان سب نے بھی یک جاں ہوکر اسے مکمل کیا۔۔۔۔
“زندہ باد!!!!!”
چاہے آپس میں جتنے بھی اختلافات ہوں لیکن یہ بات سچ ہے کہ پاکستان کے لیے ہر شہر کے لوگ ایک ساتھ کھڑے تھے۔۔۔۔ ہار جیت تو کھیل کا حصہ ہے چاہے کوئی بھی شہر کی ٹیم جیتے، جیت تو پاکستان کی ہی پکی تھی۔۔۔۔۔۔

وہ آٹھوں اسٹیڈیم کے انکلوجر (تماشائیوں کے بیٹھنے کی جگہ) میں بیٹھے اس سنسنی خیز میچ کے شروع ہونے کا انتظار کر رہے تھے جو ازلان کے بقول کافی مزیدار ہونے والا تھا۔۔۔ لیکن اس کے شروع ہونے کے دور دور تک کوئی امکان نظر نہیں آرہے تھے۔۔۔۔
“یار ہم پچھلے ایک گھنٹے سے یہاں بیٹھے خوار ہو رہے ہیں یہ میچ شروع کب ہوگا۔۔۔۔”
معیز سے جب مزید انتظار نہ ہوا تو آخر شدید بیزاری کے عالم میں ازلان سے پوچھ ہی بیٹھا۔۔۔۔۔
“ارے۔۔۔۔۔ ابھی کہاں ابھی تو ٹیمیں آئی ہیں۔۔۔۔ آدھے گھنٹے بعد ٹاس ہوگا پھر اسکے آدھے گھنٹے بعد میچ شروع ہوگا۔۔۔”
ازلان نے بھی اسٹیڈیم کے منظر سے خوب لطف اندوز ہوتے ہوئے اطمینان سے جواب دیا۔۔۔۔
ازلان کے اس پر سکون لہجے پر معیز کے ساتھ ساتھ ان سب نے بھی اسکی طرف غصے اور حیرت سے دیکھا۔۔۔۔
“ازلان آر یو سیرئیس!؟ مطلب کل ہمارا اتنا امپورٹنت ٹیسٹ ہے اور تم صبح دس بجے سے ہمیں یہاں بٹھا کر مزید ایک گھنٹے انتظار کرنے کا کہہ رہے ہو؟”
مومل نے تڑپ کر اس سے کہا جو بیچاروں والی شکل بنائے بیٹھا تھا۔۔۔۔۔
“ہائے اللّٰہ جی۔۔۔۔۔ میں تو فیل ہو جاؤں گی۔۔۔”
ہمیشہ کی طرح زینہ نے ٹشو سے آنکھیں پونچھتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔
اس لمحے ازلان کا شدت سے دل چاہا کہ معیز کا گلہ دبا دے۔۔۔ نہ وہ ایسا سوال پوچھتا نہ ہی یہ نوبت آتی۔۔۔۔۔۔
بالآخر امپائر کے ساتھ انہیں نیلی اور ہری جرسی میں کراچی اور لاہور کے کپتان آتے نظر آئے۔۔۔۔۔
ان سب کی نظریں بالکل سامنے لگی بڑی سی اسکرین پر جمی تھیں جہاں ابھی کچھ دیر بعد ٹاس ہونا تھا۔۔۔۔۔
زینہ نے جب سامنے دیکھا تو دیکھتی ہی رہ گئی اسکرین پر ایک نہایت ہی ڈیسنٹ نظر آنے والا شخص دکھائی دے رہا تھا۔۔۔ اس نے کہنی کے ٹہوکے سے ازلان کو مخاطب کیا اور کا‏فی رازدارانہ انداز میں سرگوشی کی۔۔۔۔۔
“یہ۔۔۔یہ کون ہے۔۔۔۔؟”
اس نے اسکرین کی جانب اشارہ کرتے ہوئے کہا۔۔۔۔
“یہ ہماری ٹیم کا کپتان ہے ۔۔۔۔”
ازلان نے سامنے ہی دیکھتے ہوئے کہا ۔۔۔
“اچھا۔۔۔ کیا نام ہے اسکا؟”
زینہ نے لہجے کو سرسری بنا کر پوچھا ۔۔۔
“عماد وسیم”
“یہ تم کیوں اتنا پوچھ رہی ہو ویسے…؟”
اس نے زینہ سے جانچتی نظروں سے پوچھا۔۔۔
“نہیں یار میں تو بس۔۔۔۔۔”
وہ ابھی کچھ بولنے ہی لگی تھی کہ اسے ازلان کے رویہ میں تھوڑی جلن محسوس ہوئی۔۔۔۔۔
“ویسے پرسنیلٹی اچھی بندے کی۔۔۔۔”
زینہ نے نچلا لب دانتوں میں دبا کر اپنی بے ساختہ امڈتی مسکراہٹ کو روکا۔۔۔۔۔
“کوئی نہیں بس ایویں ہی ہے۔۔۔۔ کھیلنا تو آتا ہے نہیں اسے۔۔۔”
ازلان کا دل ایک دم ہی میچ سے اچاٹ ہوگیا۔۔۔۔
جبکہ زینہ اسکے رویے سے کافی محظوظ ہو رہی تھی۔۔۔۔۔
تقریبا آدھے گھنٹے بعد میچ شروع ہوا۔۔۔۔ ایک دو سنگل رن کے بعد جب لاہور قلندرز کے کسی پلیئر نے 6 لگایا تو معیز زور سے چلایا۔۔۔۔
“گول۔۔۔۔۔۔۔”
اس کے چینخ اتنی بلند تھی کہ تقریبا اوپر نیچے کے لوگوں نے اسے حیرانی سے دیکھا جو شاید کرکٹ کو فٹبال سمجھ بیٹھا تھا۔۔۔۔
“ابے گول نہیں چھکا لگایا ہے اس نے چھکا اور یہ اپنی ٹیم نہیں تھی ۔۔۔”
احد نے اس کے کندھے پہ مکا جڑتے ہوئے کہا۔۔۔۔
“ارے ہاں ہادی ایک ہی بات ہے۔۔۔”
معیز نے ہاتھ جھلاتے ہوئے کہا۔۔۔ جبکہ احد بس اسکا اور بنش کا مستقبل سوچ کر ہی رہ گیا۔۔۔۔
ابھی کچھ دیر کا وقفہ تھا جب ان لوگوں کو تقی کی سیٹ کے پاس سے چر چر کی آواز آئی۔۔۔۔
“ابے او۔۔۔ یہ کیسی واہیات آوازیں نکال رہا ہے بے تو!؟”
ازلان نے اسے حیرانی سے دیکھتے ہوئے پوچھا۔۔۔۔
“ابے میں آواز نہیں شاپر نکال رہا تھا۔۔۔۔”
تقی نے اپنی جیکٹ کی خفیہ جیب سے ایک نیلے رنگ کا شاپر برآمد کرتے ہوئے اسے فاتحانہ انداز میں دیکھ کر کہا۔۔۔۔۔۔
“اوئے۔۔۔۔ یہ کب لائے تم۔۔۔!؟”
وفا نے اس کے ہاتھ سے چپس کا پیکٹ جھپٹتے ہوئے پوچھا۔۔۔۔
جبکہ تقی کے پاس سے ملنے والے اس شاپر نے سب کی بھوک کو ہوا دی تھی۔۔۔۔
“کیا ہے بے ایسے کیوں دیکھ رہا ہے۔۔۔۔؟”
تقی نے معیز کو دیکھتے ہوئے کہا جو اس کے شاپر کو ندیدوں کی طرح دیکھ رہا تھا۔۔۔۔
“کوکومو مجھے بھی دو۔۔۔!!!”
اس سے پہلے وہ شاپر پیچھے کرتا معیز اس پر جھپٹتا مارتے ہوئے کوکومو اچک گیا۔۔۔۔ باقی چیزوں کے ساتھ بھی ایسا ہی کچھ ہوا جب تقی کچھ سنبھلا تو اسکے ہاتھ میں خالی شاپر اسے منہ چڑا رہا تھا۔۔۔۔۔
اس نے آس پاس نظر گھمائی تو معیز اور بنش کو دیکھ کر رکا جو ایک کوکومو کے پیکٹ پر بحث کر رہے تھے۔۔۔۔
“یہ لو بنی یہ تم کھالو۔۔۔”
“نہیں معیز مجھے بھوک نہیں تم کھالو پلیز۔۔۔”
اسی اسنا میں تقی نے معیز کے ہاتھ سے پیکٹ واپس اچکا اور پورے بتیس دانتوں کی نمائش کرتے ہوئے کہا۔۔۔۔
“تم دونوں کو ہی بھوک نہیں ہے پر مجھے بہت زور کی ہے تو تھینکس فار دس مائی ڈئیر فرینڈز۔۔۔۔!”
تقی کی بات پر وہ ارے ارے ہی کرتے رہ گئے جبکہ وہ کھا پی کر اب تھوڑے سکون میں تھا۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میچ اب اپنے اختتامی مراحل میں داخل ہو چکا تھا اور اس وقت کراچی کا کپتان کریز پر موجود تھا اب کے ازلان سے زیادہ پرجوش زینہ نظر آرہی تھی اور وہ پورے زور و شور سے کراچی اور اس کے لئے بھرپور نعرے بازی کر رہی تھی۔ اسکا اتنا جوش دیکھ کر ازلان تو جی بھر کر بد مزہ ہوا جبکہ کچھ لمحے پہلے والا جوش اب کہیں جھاگ کی طرح بیٹھ چکا تھا۔۔۔۔۔۔۔

بالآخر میچ ختم ہوا اور کراچی کنگز کو ٹرافی دے دی گئی لیکن یہاں تو زینہ نے عجیب رٹ لگا رکھی تھی کہ اسے عماد کے ساتھ ایک سیلفی لینی ہے پہلے تو ازلان نے اسے بہت منع کیا لیکن پھر جب وہ ضد پر اتر آئی تو چارو ناچار ازلان اسے سیلفی لینے کے لیے اپنے ساتھ کراؤڈ کو چیرتے ہوئے اس تک پہنچا کیونکہ ازلان حمدانی، زینہ ازلان حمدانی کی کوئی بات نہیں ٹال سکتا تھا اور اس بار تو خواہش بھی خود زینہ کی طرف سے کی گئی تھی وہ چاہ کر بھی اسے منع نہیں کر سکتا تھا۔۔۔۔۔
کچھ ہی دیر میں زینہ چہرے پر بچوں جیسی خوشی سجاتے ہوئے آئی اور اس کے چہرے کی ہنسی نے ازلان کو بھی مسکرانے پر مجبور کر دیا تھا۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
رات آٹھ بجے وہ لوگ اپنے گھر پہنچے تو ان لڑکیوں کے سر پر تو خوف کے سائے لہرا رہے تھے کیونکہ کل صبح انکا ٹیسٹ تھا اور اپنی حرکتوں کو سائیڈ پر رکھ کر وہ بہت قابل اسٹوڈنٹس تھیں، لیکن اب ان چار سال کی عزت اس آخری سال میں جاتی ہوئی نظر آرہی تھی۔۔۔۔۔۔
وہ گروپ کال پر لگی ٹیسٹ سمجھنے کی کوشش کر رہی تھیں لیکن جرنل کھولنے پر انہیں ایسا لگا کہ “یار یہ کیا چائنیز لکھی ہوئی ہے کچھ سمجھ نہیں آ رہا”
“یار رکو میں ہادی بھائی سے سمجھنے کی کوشش کرتی ہوں۔۔۔۔”
بنش کہتے ہوئے ایک لمحے کی بھی دیر کئے بغیر احد کے کمرے میں داخل ہوئی اور وہ جو ابھی ابھی نہا کر نکلا تھا اسے جا لیا۔۔۔۔
“ہادی بھائی کل ہمارا ٹیسٹ ہے اور ہمیں کچھ سمجھ نہیں آ رہا اگر آپ سمجھا دیتے تو۔۔۔۔۔”
بنش نے معصومیت سے آنکھوں کو پٹپٹاتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔
“دیکھو لڑکیوں اس معاملے میں مجھے کچھ نہیں پتا تم لوگ معیز سے رابطہ کرو۔۔۔۔ ”
احد نے اپنے تئیں کافی مخلصانہ مشورہ دیا تھا جس پر وہ اسے دیکھتی رہ گئی۔۔۔۔۔۔
“ہیں۔۔۔!؟ وہ۔۔۔ وہ چھٹکو سمجھا دیگا؟”
بنش نے ناسمجھی سے احد کو دیکھا۔۔۔۔۔
“ارے ہاں ہاں وہ ایکسپرٹ ہے اس سب میں…”
احد کے کہنے پر اس نے معیز کو کال کی جس نے بنش کا نام دیکھ کر پہلی رنگ پر ہی کال پک کر لی تھی۔۔۔۔۔
“آپ نے کی ہمارے فون پر کال یہ خدا کی قدرت
کبھی ہم اپنے آپ کو دیکھتے ہیں، کبھی اپنے فون کو”

معیز نے بغیر سامنے والے کی بات سنے ہمیشہ کی طرح اچھے بھلے شعر کو لنگڑا لولا کرکے واپس کیا تھا۔۔۔۔۔۔
“اہم۔۔۔۔ اہم۔۔۔۔۔”
جب اسپیکر سے ایک کی جگہ تین تین لڑکیوں کی آواز سنی تو سٹپٹا کے فون پر نام پڑھا جہاں گروپ کال پر بنش کے ساتھ 3+ بھی لکھا تھا اس نے اپنا ماتھا پیٹ لیا۔۔۔۔۔
“تمہارا ہو گیا تو اب میں بھی بول دوں کچھ۔۔۔۔؟”
بنش نے شدید تپنے والے انداز میں کہا تھا۔۔۔۔
“نہیں۔۔۔۔ میرا مطلب ہے ہ۔۔ ہاں کہو تم کیا کہہ رہی تھی۔۔۔”
معیز نے سنبھلتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔
“ہمارا کل ٹیسٹ ہے اور ہماری بالکل بھی تیاری نہیں تو تم ہمیں سمجھا دوگے؟؟”
نہایت سنجیدگی سے بنش نے اپنا مدعا بیان کیا۔۔۔۔
“لو۔۔۔ بس اتنی سی بات دیکھو سب سے پہلے ایک اسکوائر سائز کا پیپر لو اور اسکے بھی 4 حصے کرلو۔۔۔۔۔”
ابھی وہ آگے بتانے ہی لگا تھا کہ مومل نے اسے بیچ میں ہی روک دیا۔۔۔۔
“ایک منٹ۔۔۔ ایک منٹ یہ تم کیا سمجھا رہے ہو ہمیں!؟”
مومل کے اس طرح پوچھنے پر معیز کو لگا کہ یہ طریقہ انہیں مشکل لگا اس لئے اب وہ دوسرا راستہ بتا رہا تھا۔۔۔۔۔
“دیکھو ویسے بھی کووِڈ کا زمانہ ہے ایک ماسک لو اور اسکی اندر سب چھاپ لو۔۔۔۔۔”
“بھائی یہ کیا بتا رہا ہے۔۔۔”
بنش نے جھنجھلاتے ہوئے احد کو دیکھا جو اسپیکر پر لگے فون پر انکی باتیں کافی انجوائے کر رہا تھا۔۔۔۔
“دیکھو کل تک تو اتنی ہی فاسٹ سروس کام آئے گی سمجھ تم سب کو ویسے بھی نہیں آنا اس لیے جو وہ بتا رہا ہے غور سے سنو اور عمل بھی کرو۔۔۔۔”
احد نے اسے بہت آرام سے سمجھایا جس پر ان تینوں کے چہرے سفید پڑ گئے تھے جبکہ وفا یہ سب آئیڈیاز اپنی نوٹ بک پر خوشی خوشی اتار رہی تھی۔۔۔۔
“ہاں تو اگر ان دونوں طریقوں سے کام نہیں بنا تو میرے پاس موزے والا آئیڈیا بھی ہے۔۔۔۔۔”
معیز نے خوشدلی سے آفر دی۔۔۔۔
“ن۔۔نہیں نہیں اتنے پیارے پیارے کارآمد آئیڈیاز ہی کافی ہیں شکریہ۔۔۔۔”
زینہ نے ڈرتے ڈرتے کہا اس کی تو سانس ابھی سے ہی رک گئی تھی نجانے کل کیا حشر کرنا تھا اس نے۔۔۔۔
“اوکے تو پھر میں نکلا۔۔۔۔
Best of luck for tomorrow
اللّٰہ حافظ ایوری ون۔۔۔۔”
معیز نے کہہ کر فون بند کردیا۔۔۔۔
“اب تو اللّٰہ ہی حافظ ہے ہمارا۔۔۔”
ان چاروں نے یک زبان کہا تھا۔۔۔۔۔

–**–**–
جاری ہے
——
آپکو یہ ناول کیسا لگا؟
کمنٹس میں اپنی رائے سے ضرور آگاہ کریں۔

About the author

Peerzada M Mohin

Leave a Reply

This function has been disabled for Online Urdu Novels.

%d bloggers like this: