Bushra Zahid Qureshi Urdu Novels

Yaaran Naal Baharan Novel By Bushra Zahid Qureshi – Episode 7

Yaaran Naal Baharan Novel By Bushra Zahid Qureshi
Written by Peerzada M Mohin
یاراں نال بہاراں از بشریٰ زاہد قریشی – قسط نمبر 7

–**–**–

اگلی صبح بنش سب کے ساتھ ڈائننگ ٹیبل پر بیٹھی ناشتہ کر رہی تھی جب احد آفس کے لیے نک سک سا تیار ،سیڑھیاں اترتا ہوا ان تک پہنچا سب کو سلام کرنے کے بعد وہ بنش کی پونی ٹیل میں مقید بالوں کو کھینچتا ہوا اس کے ساتھ والی کرسی سنبھال چکا تھا۔۔۔۔
“یار بھائی نہیں تنگ کریں صبح صبح پہلے ہی کافی ٹینشن ہے مجھے۔۔۔”
اس نے شدید ناگواری سے احد کو دیکھتے ہوئے کہا۔۔۔
“اور بیٹے آپ کو کافی ٹینشن کیوں ہے ذرا وضاحت کیجئیے۔۔۔”
احد کے بولنے سے پہلے ہی منان صاحب کی رعب دار آواز ہال میں گونجی۔۔۔
“ک۔۔۔ کچھ نہیں بابا ٹیسٹ کی وجہ سے بس۔۔۔”
بنش نے بمشکل تھوک نگل کر کہا۔۔۔۔
“تیاری نہیں کی کیا آپ نے؟”
ان کے سوال پر جہاں بنش کو پانی پیتے پیتے پھندا لگا وہیں احد کا قہقہہ بے ساختہ تھا۔۔۔۔
اس کے ہنسنے پر منان صاحب نے اچھنبے سے اس کی طرف دیکھا۔۔۔۔
“ارے بابا تیاری تو بہت اچھی ہے اسکی بس اسے اپنی صلاحیتوں پر بھروسہ ہی نہیں ہے۔۔۔۔”
احد کی بات پر وہ سر جھٹک کر رہ گئے لیکن بنش اسکے بوٹ پر اپنا پیر مارتی ہوئی کھڑی ہوئی۔۔۔۔
“چلیں بھائی مومی باہر ویٹ کر رہی ہے۔۔۔”
اپنی بات کہہ کر اس نے سب کو سلام کرکے بھاگنے کے انداز میں گیٹ عبور کیا مبادا والد صاحب پھر کوئی تفتیش شروع نہ کردیں۔۔۔۔۔

وہ چاروں کلاس میں آگے پیچھے بیٹھی ٹیسٹ پیپر حل کرنے میں مصروف تھیں کہ سر کی بھاری آواز سے کلاس کا گہرا سکوت ٹوٹا۔۔۔
“رول نمبر 56۔۔۔!”
سر کا کہنا تھا کہ زینہ کے ہاتھ سے پین چھوٹ گیا اور وہ کرنٹ کھا کر کھڑی ہوئی۔۔۔۔۔
“س۔۔۔سر میں نے کچھ نہیں کیا۔۔۔ م۔۔۔۔میرے موزوں میں کچھ نہیں ہے قسم سے۔۔۔۔۔”
وہ بے ربط جملے ادا کر رہی تھی جبکہ اسکی بات پر جہاں سر نے تشویش سے اسے گھورا وہیں ان تینوں نے بھی اپنے اپنے سر اٹھا کر اسے پریشانی کے عالم میں اس کو دیکھا۔۔۔۔۔
“زینہ یہ کیا کہہ رہی ہیں آپ۔۔۔؟”
سر نے اپنے ہاتھ میں پکڑا پین روسٹرم پر رکھا اور اپنی ناک پر موجود عینک کو مزید نیچے کھسکاتے ہوئے پوچھا۔۔۔۔
ابھی وہ کچھ بولنے ہی لگی تھی کہ برابر بیٹھی وفا نے اسکی کرتی کو کھینچتے ہوئے سرگوشی کے انداز میں کہا۔۔۔۔
“یار سر اٹینڈنس مارک کر رہے ہیں پریزنٹ بولو۔۔۔۔”
وفا کی بات پر وہ سیدھی ہوئی اور سر کو دیکھتے ہوئے کہا۔۔۔
“زینہ شاہ پریزنٹ سر۔۔۔۔!”
وہ دم سادھے سر کی اگلی بات کی منتظر تھی جب انہوں نے ‘سِٹ ڈاؤن’ کہا تو اس کے ساتھ ساتھ ان تینوں کی بھی جان میں جان آئی۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“یار قسم سے زینہ آج تم ہم چاروں کو پھنسا دیتی۔۔۔”
کلاس روم سے باہر نکلتے ہوئے مومل نے اسے گھورتے ہوئے کہا تھا۔۔۔۔۔
“نہیں مطلب ڈائریکٹ یہ کون بولتا ہے کہ ہاں بھئی دیکھو میرے موزوں میں چیٹنگ کا سامان چھپا ہے۔۔۔۔؟”
بنش کو بھی اس پر سخت قسم کا غصہ تھا۔۔۔
“ہماری مس زینہ ازلان شاہ۔۔۔”
وفا کے کہنے پر وہ وہ چاروں ہنس پڑی تھی۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“جانی فری ہے۔۔۔؟”
آج احد آفس نہیں آیا تھا اور وہ اس وقت اپنے آفس روم میں بیٹھا چند فائلز کو ترتیب دے رہا تھا کہ موبائل کی اسکرین پر احد کا میسچ ابھرا۔۔۔۔
“ہاں میری جان تو نے جو دس ،دس فائلوں کو میرے حوالے کر رکھا ہے نا بس انہی کے ساتھ چِل آؤٹ کر رہا تھا۔۔۔”
ازلان نے مصنوعی اسمائل والے اموجی کے ساتھ احد کو طنزیہ انداز میں ریپلائے کیا۔۔۔۔
“یار سب کام چھوڑ کر جلدی یہاں پہنچ بہت اہم بات کرنی ہے تجھ سے۔۔۔۔۔”
احد کا میسج دیکھ کر وہ ایک منٹ کے لیے بوکھلا ہی گیا تھا۔۔۔۔
“ابے یہاں کہاں آؤں جگہ کا نام تو بتا۔۔۔۔”
تھوڑے وقفے کے بعد اس نے احد کو میسج کیا۔۔۔۔
احد نے لوکیشن سینڈ کر کے اسے فوراً پہنچنے کا کہا تو وہ بھی آفس سے جلدی میں نکل گیا۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ ایک فلیٹ نما کمرہ تھا جو پوری طرح سے اندھیرے میں ڈوب رہا تھا ازلان وہاں پہنچ کر حیرت سے اس جگہ کو دیکھ رہا تھا جو یقیناً اس نے پہلے کبھی نہیں دیکھی تھی۔۔۔۔
“احد۔۔۔۔!!!”
اس نے اندھیرے کمرے میں ادھر اُدھر دیکھتے ہوئے احد کو پکارا۔۔۔۔۔
اس سے پہلے وہ ہاتھ بڑھا کر سوئچ آن کرتا اس کے منہ پر کافی زور سے کوئی چیز آ کر لگی جسے وہ فوری طور پر پہچان نہ سکا۔۔۔۔۔
اس کے بعد ایک، دو، تین، چار اور نجانے اسے اندھیرے میں کیا کیا آکر لگ چکا تھا اور پھر ایک ساتھ ساری بتیاں روشن کر دی گئیں اور پورا کمرہ روشنیوں میں نہا گیا۔۔۔۔۔
“ Happy Birthday To You
Happy Birthday To You….
Happy Birthday Dear Azlaan…
Happy Birthday To You……”
سامنے کا منظر دیکھ کر ازلان کو اپنی آنکھوں پر یقین نہیں آیا۔۔۔۔
وہاں ایک بڑی سی ٹیبل پر مختلف تحائف اور کیک رکھے گئے تھے۔۔۔۔ جبکہ ہر چیز کو سیاہ اور سنہرے رنگ کی تھیم میں سجایا گیا تھا ان تینوں لڑکوں نے بلیک جبکہ لڑکیوں نے گولڈن رنگ زیب تن کر رکھا تھا اور ازلان تو اس وقت رنگوں میں نہایا ہوا تھا کیونکہ اس پر انڈے، ٹماٹر اور جو جو ان سب کے ہاتھ لگا سب اس کے اوپر برسا دیا تھا۔۔۔۔۔
ابھی وہ اس دلکش منظر کے سحر سے نہیں نکلا تھا کہ ان لوگوں نے اس پر سنو اسپرے کرنا شروع کر دیا اور وہ بس ارے ارے ہی کرسکا۔۔۔۔
جب اسے اپنے چہرے پر کسی الگ چیز کا گمان ہوا تو وہ ایک دم پیچھے ہٹا۔۔۔۔
“ابے تقی۔۔۔ یہ میرے منہ پر کیا لگایا ہے تو نے۔۔۔۔؟”
اس نے برہمی سے تقی کو گھورتے ہوئے پوچھا۔۔۔۔۔
“بھائی ان لوگوں نے سارے اسپرے پہلے بک کرلئے تھے تو میں اپنی شیونگ کریم لے آیا۔۔۔۔”
تقی نے دانت دکھاتے ہوئے معصومیت سے جواب دیا۔۔۔۔
“کیا۔۔۔!؟”
ازلان کو حیرت کا شدید جھٹکا لگا۔۔ ۔۔
“دیکھ نا بھائی دونوں وائٹ کلر کے ہیں کسی کو کیا پتہ چلے گا۔۔۔۔”
“ابے عقل کے دشمن۔۔۔۔ آدھی موچھ اڑا دی تو نے میری۔۔۔۔۔!!”
ازلان نے صدمے سے کہا۔۔۔
“چل کوئی نہیں اب پوری اڑا دینا تو۔۔۔۔”
تقی کے کہنے پر اس نے کچھ سوچتے ہوئے کہا۔۔۔
“ہاں یار جانے دیتے ہیں تو جھپی پا۔۔۔۔”
کہتے ہی وہ انڈے، ٹماٹر اور “شیونگ کریم” کے ساتھ اس کے گلے لگ کیا اور اب وہ سارے ان دونوں کی حالت پر پاگلوں کی طرح ہنس رہے تھے۔۔۔۔۔
“چلو اب جلدی سے کیک کاٹ لو کیا ہمیں بھوکا مارنے کا ارادہ ہے۔۔۔؟”
مومل کے کہنے پر وہ سب کیک کی طرف بڑھے۔۔۔
احد نے احتیاط سے اس پر موم بتیاں لگا کر روشن کیا پھر ازلان کو چھری پکڑا کر وہ سب پیچھے ہٹ گئے۔۔۔۔
“ارے تم سب بھی کاٹو نا مل کر۔۔۔۔”
ازلان نے خوشی خوشی انہیں آفر کی۔۔۔
“ارے نہیں تو کاٹ ہم تیری بجائے گے۔۔۔۔”
معیز کے کہنے پر بنش نے اسے کہنی سے ٹہوکا دیا۔۔۔۔
“اسکا مطلب ہم تالیاں بجائیں گے تم کاٹو۔۔۔”
بنش نے بروقت بات سنمبھالی۔۔۔۔۔
“اوکے۔۔”
ازلان کندھے اچکا کر کیک کی طرف جھکا۔۔۔۔۔
ابھی وہ سارے پیچھے ہٹنے کو تھے کہ ازلان ایک بار پھر رکا۔۔۔۔
“اب کیا ہوا۔۔۔۔!؟”
اب کے وفا نے بے چینی سے پوچھا۔۔۔۔
“وہ ہیپی بڈّے کون گائے گا۔۔۔۔؟”
اس نے اپنی گردن پر ہاتھ رکھ کر کہا۔۔۔
“بھائی ہم گاتے ہیں نہ تو کاٹ لے قسم سے بہت بھوک لگ رہی ہے۔۔۔”
تقی نے اس کے سامنے ہاتھ جوڑتے ہوئے کہا۔۔۔۔
“اچھا گاؤ میں کاٹ رہا ہوں۔۔۔۔۔۔”
وہ کہتے ہی ایک بار پھر چھری اٹھا چکا تھا اور وہ سب پھر سے پیچھے کو کھسکے۔۔۔۔۔
اور بالآخر ازلان نے کیک پر چھری چلادی لیکن۔۔۔۔۔
جیسے ہی اس چھری نے کیک کو چھوا اندر کچھ “پھٹ” کی آواز سے پھٹا اور باہر کھڑے ازلان کو پورے کا پورا بھگو گیا تھا۔۔۔۔
اب وہ سب پیچھے کھڑے ہنسے جا رہے تھے کیونکہ وہ دراصل کوئی کیک نہیں ایک غبارے کے اندر اچھا خاصا پانی بھر کر اسے اوپر سے چوکلیٹ سے ڈھک دیا گیا تھا جس پر “ہیپی برتھڈے ازلان” لکھا گیا تھا۔۔۔۔۔
“یار۔۔۔۔۔ یہ کیا تھا اب۔۔۔۔؟؟”
ازلان نے چڑچڑے لہجے میں کہا۔۔۔۔
“ہمارا پیار تھا جانِ من۔۔۔۔”
معیز نے اپنی ازلی ٹھڑک کا بھرپور مظاہرہ کرتے ہوئے کہا۔۔۔۔
“اصل کیک یہاں ہے۔۔۔۔”
زینہ نے فریج میں سے کیک نکال کر اس ٹیبل پر رکھ دیا۔۔۔
“نہیں یار زینی تم بھی کاٹو میرے ساتھ مجھے ان گدھوں پر ذرا بھروسہ نہیں۔۔۔۔”
ازلان نے زینہ کا ہاتھ پکڑ کر ان تینوں کو گھورتے ہوئے کہا۔۔۔۔
پھر ان سب کی بھرپور تالیوں میں ازلان اور زینہ نے کیک کاٹ ہی دیا اور ہمیشہ کی طرح اس بار بھی آدھا کیک تقی کے حصے میں گیا۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ سب اپنے اپنے گھروں کو روانہ ہو رہے تھے کہ ان کے کانوں سے معیز کی آواز ٹکرائی۔۔۔۔
“رکو بھائیوں اور انکی بہنوں۔۔۔ میرا مطلب بھابھیوں۔۔۔۔”
معیز نے بروقت تصحیح کی۔۔۔۔
“مجھے ایک بہت ضروری بات کرنی ہے۔۔۔۔”
اس نے تھوڑا جھجھکتے ہوئے کہا۔۔۔۔
“کرو پھر۔۔۔۔”
احد نے اسکا کندھا دباتے ہوئے کہا۔۔۔۔
“بھائی مجھے بنش سے شادی کرنی ہے۔۔۔۔”
وہ ایک ہی سانس میں احد کو دیکھتے ہوئے روانی میں بول گیا جو احد کے علاوہ ان سب کے سروں کے اوپر سے گزر گیا۔۔۔
“بھائی پہلی بات میں بنش نہیں یہ ہے۔۔۔”
احد نے اسکا رخ بنش کی طرف کیا۔۔۔
“اور دوسری بات کہ اس طرح بولے گا تو بنش کیا اسکا بھائی بھی نہ مانے۔۔۔۔”
احد نے اسکے کھڑے کھڑے پروپوز کرنے پر کہا تھا۔۔۔۔
“اوہ سوری۔۔۔۔ ایک منٹ ذرا۔۔۔”
وہ کہتے ہوئے سامنے ٹیبل پر لگے گولڈن رنگ کے غبارے کو نکال کر بنش کے سامنے دو زانو بیٹھ گیا جس پر وہ گھبرا کر ذرا پیچھے کو ہوئی تھی۔۔۔۔۔
“جی تو مس بگز بنی۔۔۔۔ وِل یو بی مائی گولڈن ہنی۔۔۔؟”
اس نے گولڈن غبارے کو اس کی جانب بڑھاتے ہوئے جواب طلب نگاہوں سے اس کی طرف دیکھا جس نے فوراً ہی احد کو دیکھا تھا جبکہ وہ سب اس وقت ہوٹنگ کرنے میں مصروف تھے۔۔۔۔
“ہاں کہہ دو بنی اس کے “فالحال سنگل” ہونے کی گواہی میں دیتا ہوں۔۔۔۔۔”
احد نے اپنے سر کو اثبات میں ہلاتے ہوئے کہا۔۔۔۔
“اوکے لیکن میری دو شرائط ہیں۔۔۔۔”
بنش نے اسکے ہاتھ سے غبارہ تھام لیا تھا۔۔۔
“یار کیا تم بہن بھائی بات کرنے سے پہلے شرطیں رکھ دیتے ہو۔۔۔۔”
معیز نے منہ بگارتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔
“کوئی بات نہیں اگر شرط نہیں ماننی تو شادی بھی نہیں ہوگی۔۔۔۔”
بنش نے غبارے کو ہوا میں چھوڑ کر بازوؤں کو سینے پر لپیٹ کر کہا۔۔۔۔
“ارے منظور ہے نا بتاؤ تم۔۔۔۔”
معیز نے بدک کے کہا مبادا وہ اپنی بات سے مکر نہ جائے۔۔۔۔
“ہاں تو پہلی شرط یہ ہے کہ تمہیں سب سے پہلے میرے ابا کو منانا ہوگا جوکہ اتنا آسان نہیں۔۔۔۔”
اس نے اپنے چہرے پر آئی لٹ کو کان کے پیچھے کرتے ہوئے کہا۔۔۔
“ارے اس میں کیا بات ہے دیکھ لیں گے پاپا جی کو بھی۔۔۔”
معیز نے چہرے پر ایک دلکش مسکراہٹ سجائے کہا۔۔۔
“یاد رہے کہ بابا آرمی آفیسر رہ چکے ہیں اگر کوئی بات انہیں پسند نہیں آئی تو وہ تمہیں اڑا بھی سکتے ہیں۔۔۔”
بنش نے بھی اسی کے انداز میں مسکراتے ہوئے کہا۔۔۔۔
“ارے تمہاری اس مسکراہٹ پر ایسی ہزاروں جانیں قربان لڑکی۔۔۔۔”
معیز کے کہنے پر احد نے سر پیٹ لیا۔۔۔۔
(اسکی ٹھڑک کا کچھ نہیں ہو سکتا)
“میرے ساتھ اتنی چیزی لائنز بولنے کی کوشش مت کرنا اور دوسری شرط سنو اب۔۔۔۔”
بنش نے جارحانہ تیور لیے کہا۔۔۔
“ہ۔۔ہاں بتاؤ۔۔۔”
معیز جو کب سے گٹھنوں پر بیٹھا تھا اب نیچے فرش پر ہی بیٹھ چکا تھا۔۔۔۔۔
“دوسری شرط یہ کہ اگر بابا مان گئے تو تم شادی سے ٹھیک ایک رات پہلے مجھے کوئی اچھی سی غزل سناؤ گے۔۔۔۔ منظور ہے۔۔۔؟”
بنش نے ایک ائبرو اچکا کر اسے دیکھا۔۔۔۔
“ارے کوئی بات ہی نہیں کیا میر غالب، کیا مرزا تقی میر ، کیا جون سینا سب کی ایک ایک نظم سناؤ گا تم دیکھو بس۔۔۔۔۔”
معیز نے اتنے پرجوش لہجے میں شاعروں کا بیڑہ غرق کیا کہ بنش نے صدمے سے دل تھام لیا۔۔۔۔
“مرزا غالب، میر تقی میر اور جون ایلیا کی غزلیں ہیں نظمیں نہیں۔۔۔۔”
“ہاں وہ سب ٹھیک ہے اب میں یہ پہنا سکتا ہوں۔۔؟”
معیز نے ہاتھ میں پکڑی بلیک کلر کی ربن کو آگے بڑھاتے ہوئے پوچھا۔۔۔۔
“یہ کیا ہے۔۔۔”
بنش کے ساتھ ساتھ ان سب کو بھی اچھنبا ہوا۔۔۔۔
“وہ جلدی جلدی میں رنگ گھر پر بھول آیا اس لئے یہ۔۔۔
اپنا ہاتھ دکھاؤ۔۔۔۔”
اس نے پہلے وضاحت کی پھر نرمی سے بنش کا ہاتھ پکڑ کر بلیک ربن اسکی انگلی سے باندھ دی۔۔۔۔۔۔
“Now I Can Say You’re Mine……”
اس نے زمین سے اٹھتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“بات ہو سکتی ہے۔۔؟”
موبائل کی اسکرین نے اجازت چاہی۔۔۔۔۔
“اس وقت۔۔۔!؟”
سامنے سے اسی جواب کی توقع تھی۔۔۔۔۔۔
“نہیں دس سال بعد۔۔۔۔”
احد نے چڑ کر جواب دیا۔۔۔
“اچھا اچھا کرلو۔۔۔۔۔”
مومل نے سنبھلتے ہوئے کہا۔۔۔
تھوڑی ہی دیر میں موبائل کی رنگ ٹون بجی اور مومل نے فون پک کیا۔۔۔۔۔۔
“کہو کیا بات کرنی تھی۔۔۔”
مومل نے اشتیاق سے پوچھا۔۔۔۔

“میں کل بابا سے شادی کی بات کروں گا۔۔۔”
احد نے نرمی سے بات کو مومل کے گوش گزرا۔۔۔۔
“بنش اور معیز کی؟”
مومل کے معصومیت سے پوچھنے پر احد نے بے ساختہ اپنا سر پیٹ لیا۔۔۔۔۔
“میں اپنی اور تمہاری شادی کی بات کر رہا تھا۔۔۔”
احد کی بات پر وہ چند ثانیے خاموش رہی۔۔۔
“کیا تمہاری خاموشی کو میں انکار سمجھوں؟”
احد نے اسکے کچھ نہ کہنے پر پوچھا۔۔۔۔
“اب میں نے ایسا کب کہا۔۔۔۔۔”
مومل جلدی میں بول گئی پھر زبان کو دانتوں میں دبا گئی۔۔۔۔۔
“لیکن بنی اور معیز۔۔۔۔”
وہ کہتے کہتے ایک لمحے کو رکی تھی۔۔۔۔
“ہاں ہاں لگاتا ہوں انکی کشتی بھی پار۔۔۔”
احد کے کہنے پر مومل خوشی سے چہک کر بولی۔۔۔
“کیا۔۔۔!!؟ سچ میں۔۔۔؟ یار میں بہت خوش ہوں بنش کے لیے۔۔۔۔”
“ہاں میں پہلا بھائی ہوں جو خود اپنی بہن کی سیٹنگ کروا رہا ہوں۔۔۔۔”
“اوکے اللہ حافظ خیال رکھنا اپنا۔۔۔”
احد نے ہنستے ہوئے کہا تو مومل نے بھی اللّٰہ حافظ کہہ کر فون بند کر دیا۔۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آج شام اسے بنش کے بابا سے ملاقات کرنے جانا تھا اور ازلان اور تقی اس وقت اس کے کمرے میں کھڑے فوجیوں والے آداب سکھا رہیں تھے۔۔۔۔
“یار تو یہ پہن لے قسم سے انکل نے دیکھتے ہی بنش کا ہاتھ تیرے ہاتھ میں سونپ دینا ہے۔۔۔۔۔۔”
ازلان نے فوجیوں والی وردی اسے تھماتے ہوئے کہا۔۔۔۔
“نہیں یار سب سے پہلے یہ اردو لغت پکڑ اور سارے الفاظ یاد کرلے۔۔۔۔ سنا ہے انکل کی اردو کافی ہائی لیول کی ہے۔۔۔۔۔”
تقی نے اسکے ہاتھوں میں ڈکشنری پکڑاتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔
“کیا ہوگیا یار میں سسر منانے جارہا ہوں یا فوجی بننے۔۔۔۔؟”
معیز جب سے ان دونوں کی باتیں سن رہا تھا اب تو جھنجھلا ہی گیا تھا۔۔۔۔۔
“یار تو سب چھوڑ بس افلاطونز کا روایتی کام نہ بھولنا۔۔۔۔۔”
تقی نے اسکے ہاتھوں سے وردی اور ڈکشنری لے کر اسکا فون اسکی جیب میں ڈالتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔
“بھائی تو بولتا ہے تو ابھی سے اسپیکر آن کر دیتا ہوں راستے کا ٹریفک بھی سن لینا۔۔۔۔۔”
معیز نے تپے ہوئے لہجے میں کہا۔۔۔۔۔
“تم لوگوں کا ہوگیا تو میں نکلوں۔۔۔۔!؟”
اس نے ایک آئبرو اٹھاتے ہوئے ان دونوں سے استفسار کیا۔۔۔۔۔
“ارے جا۔۔۔۔ جا میرے چیتے جی لے اپنی زندگی۔۔۔۔۔”
ازلان نے ڈرامائی انداز میں اپنے آنسوں پوچھتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔
“ہنہہ۔۔۔۔سستا ایکٹر۔۔۔۔۔”
معیز کہہ کر باہر کی جانب بڑھ گیا۔۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ ایک بڑی سی راہداری تھی جہاں سے ملازم کے کہنے پر وہ گزرتے ہوا ایک کشادہ کمرے میں داخل ہوا جس کی آرائش و زیبائش سے وہ ڈرائنگ روم معلوم ہوتا تھا۔۔۔۔۔
کمرے کی دیواروں کے ساتھ آٹھ سیٹر صوفے رکھے گئے تھے جبکہ انکے درمیان ایک شیشے کی ٹیبل پڑی تھی جس پر خوبصورت اور نفیس شو پیس تھے۔۔۔۔
سامنے دیوار پر ایک بڑی سی تلوار لٹکی تھی جو شاید منان صاحب کی “سورڈ آف آنر” تھی جبکہ اسکے بالکل سامنے دیکھو تو ایک دیوار گیر شیشے کے شوکیس میں تقریباً چھہ، سات ہر سائز کی بندوقیں نصب کی گئیں تھیں جنہیں دیکھ کر معیز نے بے ساختہ تھوک نگلا اور ایک صوفے پر ٹک گیا۔۔۔۔

ابھی تھوڑی دیر ہی گزری تھی کہ منان صاحب اپنی پوری شان و شوکت لئے ڈرائنگ روم میں داخل ہوئے انکے ساتھ ہی مسز منان اور احد بھی داخل ہوئے۔۔۔۔
اور ساتھ ہی کانفرنس کال پر وہ سب بھی موجود تھے لیکن اس بار فون احد کا تھا۔۔۔۔
منان صاحب کچھ کہنے ہی لگے تھے کہ وہ جھٹ سے اپنی نشست سے اٹھا اور سیدھا ہاتھ ماتھے کو چھوتے ہوئے ایک پاؤں زمین پر شدت سے مارا اور تقریباً چلانے کے انداز میں کہا۔۔۔۔۔
“السلام وعلیکم سر۔۔۔!!!”
جبکہ پیر زمین پر مارنے کی وجہ سے شدید تکلیف کا بھی احساس ہوا۔۔۔۔
اسکی اس حرکت پر جہاں منان صاحب نے اپنے کانوں میں انگلیاں ڈال کر سماعت بحال کی وہیں کال پر موجود ان سب کا قہقہہ بے ساختہ تھا۔۔۔۔۔
“برخوردار غالباً یہ کوئی فوج کا مورچہ یا واہگہ بارڈر نہیں ہے۔۔۔”
منان صاحب نے اپنی بھاری آواز میں کہا۔۔۔
“جانتا ہوں سر۔۔۔۔۔!!!!!”
معیز پھر سے اسی انداز میں چلایا۔۔۔۔
“میرا کہنے کا مقصد تھا کہ آپ شائستہ لہجے میں گفتگو کیجیے۔۔۔۔”
منان صاحب اسے سمجھاتے ہوئے کہا۔۔۔۔
“لیکن انہیں تو میں اپنے ساتھ لایا ہی نہیں۔۔۔۔ ”
معیز نے پریشانی کا اظہار کیا۔۔۔۔
“کسے نہیں لائے۔۔۔؟”
انہوں نے اچھنبے سے پوچھا۔۔۔۔
“اپنی ماما کو۔۔۔۔”
اس نے بھی اسی انداز میں کہا۔۔۔
“لیکن بیٹا آپ نے ابھی سے کیوں لانا تھا اپنی والدہ کو۔۔۔۔؟”
اب کی بار مسز منان نے بھی گفتگو میں حصہ لیا۔۔۔
“ارے آنٹی سر نے کہا نا ابھی کہ شائستہ سے گتفگو کرو۔۔۔۔ میری ماما ہی تو شائستہ ہیں۔۔۔۔ ”
معیز کے کہنے پر احد کے ساتھ ساتھ ان سب نے اپنے سر پیٹ لئے۔۔۔۔ جبکہ منان صاحب نے اپنے قہقہے کا گلہ گھونٹا۔۔۔۔۔
“جی تو آپ کیا کرتے ہیں۔۔۔؟”
انہوں نے بات کا رخ موڑا۔۔۔
“انکل آج کل تو ‘جسٹ چِلنگ’ کرتا ہوں۔۔۔”
معیز نے کافی پر جوش لہجے میں انہیں اپنے خیالات سے آگاہ کیا۔۔۔
احد اسے آنکھوں آنکھوں میں کچھ کہنا چاہ رہا تھا لیکن وہ موصوف تو شاید اس وقت بھی چلنگ فرما رہے تھے۔۔۔۔۔
“اہم۔۔۔۔۔ میرا خیال ہے کہ اب ہمیں لنچ کرلینا چاہیے۔۔۔۔”
منان صاحب کہتے ہوئے اپنی جگہ سے اٹھ کھڑے ہوئے۔۔۔۔
ان کے انداز سے احد کو خطرے کی بو محسوس ہوئی۔۔۔۔
ڈائننگ ہال میں پہنچ کر معیز کرسی کے پاس ادب سے کھڑا ہو گیا اور منان صاحب اور مسز منان کے بیٹھنے کے بعد خود بھی کرسی سنبھالی۔۔۔۔
معیز کی یہ حرکت منان صاحب کی نگاہوں سے مخفی نہ رہ سکی۔۔۔۔
لنچ کے دوران بھی وہ پہلے ساری ڈشز ان کی طرف بڑھاتا رہا جبکہ کھاتے وقت منہ سے ایک لفظ بھی ادا نہ کیا۔۔۔۔۔
منان صاحب اپنی کرسی سے اٹھ کر واپس ڈرائنگ روم کی طرف چل دئیے اور ان کے پیچھے وہ تینوں بھی ڈرائنگ روم میں داخل ہوئے۔۔۔۔
سب لوگ بے چینی سے انکے فیصلے کا انتظار کر رہے تھے کہ فضا میں موجود خاموشی کو ان ہی کی آواز نے توڑا۔۔۔۔
“لڑکے میں لگی لپٹی رکھے بغیر صاف بات کرنے کا حامی ہوں۔۔۔۔”
وہ چند لمحے کو رکے اور انکی بات پر معیز کو اپنا دل بند ہوتا محسوس ہوا۔۔۔۔
“بظاہر تو مجھے آپ میں ایسی کوئی خوبی نہیں دکھی جس کی بنیاد پر میں اپنی بیٹی کا رشتہ آپ سے منصوب کردوں۔۔۔۔”
معیز کے ساتھ ساتھ وہ سب بھی دم سادھے انکی بات سن رہے تھے۔۔۔۔
“لیکن کوئی ایسی برائی بھی نہیں ملی جس کو جواز بنا کر میں اس رشتے کو منع کروں۔۔۔۔”۔
“ہاں البتہ ایک چیز ہے جس نے مجھے آپ سے متاثر ہونے پر مجبور کر دیا ہے اور وہ ہے آپکے اخلاق۔۔۔۔”

“I Must Say That Your Mother Has Brought You Up Very Well….”

(تمہاری ماں نے بہت اچھی تربیت کی ہے تمہاری)۔

“اس لئے میں ان عظیم خاتون سے ملنا چاہوں گا۔۔۔
کل اسی وقت اپنے والدین کو لے آئیے گا۔۔۔ مجھے یہ رشتہ منظور ہے۔۔۔۔۔
کہتے ہوئے وہ مسکرا کر معیز کے بغلگیر ہوئے جبکہ وہ سارے بھی خوشی سے جھوم اٹھے تھے۔۔۔۔۔۔۔۔۔

وہ اپنے روم میں بیٹھی چھت کو دیکھتے ہوئے مسکرا رہی تھی اس بات سے بے خبر کہ اس کے دونوں بھائی پچھلے دس منٹ سے اسے یہ حرکت کرتے ہوئے دیکھ رہے تھے۔۔۔۔۔
“نہ عالی نہ۔۔۔۔ نہ دیکھ میرے بھائی تجھ سے سہا نہیں جائے گا۔۔۔۔۔۔”
احد کے کہنے پر وہ بے ساختہ چونکی تھی، جو عالیان کی آنکھوں پر ڈرامائی انداز میں ہاتھ رکھے کھڑا تھا۔۔۔۔۔۔ بنش کو اپنی بے اختیاری پر جی بھر کے غصہ آیا تھا۔۔۔۔۔
“کیا۔۔۔۔؟”
اس نے اپنی خفت چھپاتے ہوئے دونوں آنکھوں کو اٹھا کر اپنے بھائیوں کو دیکھا۔۔۔۔۔
“لو بھلا ہم بھی تو یہی سوچ رہے کے کیا ہوگیا ہماری بگز بنی کو تھوڑی دیر پہلے تک تو چنگی بھلی تھی۔۔۔۔۔”
عالیان نے اپنی آنکھوں پر سے احد کا ہاتھ ہٹاتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔
“عالی۔۔۔! کچھ مت بولو میں بڑی بہن ہوں تمہاری۔۔۔۔”
بنش نے چڑتے ہوئے کہا۔۔۔۔
“اوئے بس ایک سال چھوٹا ہوں میں زیادہ اترانے کی ضرورت نہیں ہے۔۔۔۔”
عالیان نے فرضی کالر جھٹکے۔۔۔۔
“بھائی۔۔۔۔ آپ اس گینڈے کو کچھ بول کیوں نہیں رہے ہیں۔۔۔۔”
بنش نے احد کو دیکھتے ہوئے کہا جو انکی روز کی لڑائی کو بھرپور انجوائے کر رہا تھا۔۔۔۔
“عالی۔۔۔ بس کر بھائی بچی کی جان لے گا کیا۔۔۔؟
ویسے تمہیں معیز کے علاوہ کوئی نہیں ملا اس دنیا میں۔۔۔۔؟”
پہلی بات عالیان سے کہہ کر وہ پھر سے اس کی جانب مڑا۔۔۔۔
“جی نہیں میں نے اس کے علاوہ کسی کو دیکھا ہی نہیں۔۔۔۔”
بنش نے ایک ادا سے کہا۔۔۔ جبکہ اس کی بات سن کر عالیان نے اپنے کانوں پر ہاتھ رکھ لئے۔۔۔۔
“توبہ توبہ۔۔۔ بھئی میں نے کانوں میں انگلیاں ڈال دیں ہیں۔۔۔۔۔”
“تم تو رکو ذرا۔۔۔۔”
بنش اس کے پیچھے شیشے کا واس لے کر بھاگی لیکن وہ اس سے پہلے ہی اپنی شکل گھم کر چکا تھا۔۔۔۔۔
“بنی۔۔۔۔”
احد کے پکارنے پر اس نے مڑ کر اسے دیکھا۔۔۔۔
“جی۔۔۔۔؟”
اس نے جواب طلب نظروں سے اسے دیکھا۔۔۔۔
“مطلب میں یہ سوچ رہا تھا کہ وہ شعر کیسے پڑھے گا۔۔۔۔
کبھی بیڈ پر، کبھی میٹ پر
کبھی اس کے گھر، کبھی اپنے گھر
غمِ عاشقی تیرا شکریہ
میں ادھر اُدھر نکل گیا۔۔۔۔۔۔

جب تک بنش کو اسکی بات سمجھ آئی وہ کمرے سے بھاگ چکا تھا اور وہ پیچھے تلملاتی رہ گئی۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

آج اتوار تھا تو وہ آفس نہیں گیا۔۔۔ دوپہر دو بجے وہ انگڑائیاں لیتے ہوئے سیڑھیاں اتر رہا تھا، شائستہ بیگم لاونج کے صوفے پر بیٹھی اخبار پڑھ رہی تھیں کہ معیز اچانک سے ان کے گٹھنے پر اپنا سر ٹکا گیا۔۔۔۔۔
” بیٹے خیریت ہے۔۔۔!! آج اتنی جلدی اٹھنے کا اتفاق کیسے ہوا۔۔۔۔؟”
سامنے صوفے پر بیٹھے شیخ صاحب نے اسے طنزیہ انداز میں کہا، اور وہ جھٹ سے شائستہ بیگم کی گود سے اٹھا تھا۔۔۔۔۔
“بس بابا اور نیند نہیں آ رہی تھی تو اٹھ ہی گیا۔۔۔”
اس نے اپنے دانتوں کی نمائش کرتے ہوئے کہا۔۔۔۔

“بابا مجھے ایک بہت ضروری بات کرنی ہے آپ دونوں سے۔۔۔۔”
معیز نے تھوڑے وقفے کے بعد تذبذب سے شیخ صاحب کو دیکھتے ہوئے کہا۔۔۔۔
“ہاں بیٹا کہو ہم سن رہے ہیں۔۔۔”
شائستہ بیگم نے اس کے کندھے پر ہاتھ رکھ کر کہا۔۔۔
“وہ میں بنش سے شادی کرنا چاہتا ہوں۔۔۔”
وہ ایک سانس میں پوری بات کہہ گیا۔۔۔۔
“بنش۔۔۔ احد کی بہن۔۔۔؟؟”
انہوں نے کچھ سوچتے ہوئے اس سے پوچھا۔۔۔۔
“جی وہ ہی۔۔۔ آج اس کے بابا نے آپ دونوں کو ڈیٹ ڈسکس کرنے کے لیے بلایا ہے۔۔۔۔”
“تم ان سے مل چکے ہو؟”
شائستہ بیگم نے اچھنبے سے پوچھا۔۔۔
“جی کل ہی ملا ہوں۔۔۔”
اس نے مختصراً ساری بات انکے گوش گزار دی۔۔۔
“تو بیٹے اتنی جلدی کیا تھی ہمیں بتانے کی آرام سے رخصت کروا لاتے نا پہلے بچی کو۔۔۔”
شیخ صاحب تو سیخ پا ہی ہوگئے تھے۔۔۔۔
“اوہو۔۔۔۔ بس بھی کریں میرے بچے کے پیچھے ہی پڑ گئے آپ تو۔۔۔۔”
شائستہ بیگم نے انہیں ہاتھ جھلاتے ہوئے روکا تھا۔۔۔۔
“اچھا ہمیں ہماری بہو کے بارے میں تو بتاؤ ذرا۔۔۔ کیا بہت پیاری ہے۔۔۔؟”
انہوں نے تجسّس کے عالم میں اس سے پوچھا۔۔۔۔
“پیاری؟ ارے ماما وہ تو بہت خوف صورت ہے۔۔۔۔”
معیز نے بنش کا چہرہ ذہن کے پردے پر سجاتے ہوئے کہا۔۔۔۔ جہاں شائستہ بیگم نے اسے گھورا وہیں شیخ صاحب کا قہقہہ اسکے ‘خوف صورت’ کہنے پر بے ساختہ تھا۔۔۔۔۔
” خوبصورت ہوتا ہے۔۔۔۔”
شیخ صاحب نے اپنی ہنسی کو کنٹرول کرتے ہوئے کہا جس پر وہ خجل ہو کر رہ گیا۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“ماما میں نے کہا ہے نا آپ سے نہیں کرنی مجھے کوئی شادی چھوڑ دیں میرا پیچھا۔۔۔۔۔”
وفا نے فریحہ صاحبہ کو دیکھ کر چلانے کے انداز میں کہا۔۔
“بیٹے یہ زندگی بہت لمبی ہے تمہارا میرے علاوہ اور کوئی نہیں ہے میرے بعد کیا ہوگا تمہارا۔۔۔۔؟”
انہوں نے اس کو سمجھانے کی ایک حقیر سی کوشش کی۔۔۔۔
“کی تھی نا آپ نے بھی شادی کیا ہوا؟ چھوڑ گیا نا وہ شخص بھی آپ کو؟ اکیلے ہی جی رہیں ہے نا اب؟ میں بھی جی لوں گی اکیلے۔۔۔۔۔”
وفا نے بے دردی سے اپنے امڈ آنے والے آنسوؤں کو رگڑا اور اوپر کی جانب بھاگ گئی۔۔۔۔۔
فریحہ صاحبہ نے اپنے آنسوؤں کو روکنے کی کوشش نہیں کی تھی۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“یار بنی اب تو اس ربن کو اتاردو اب تو تمہاری ساسوں ماں خود رنگ پہنا گئیں ہیں تمہیں۔۔۔”
زینہ نے اس کی انگلی میں اسی ربن کو دیکھا جو معیز نے اسے باندھی تھی پھر اس انگھوٹی کی طرف اشارہ کرتے کہا جو کچھ دیر پہلے معیز کی والدہ پہنا کر گئی تھیں۔۔۔۔
اس وقت منان ہاؤس میں افلاطونوں کی فوج اکھٹی تھی معیز کے علاوہ وہ سب ہی وہاں موجود تھے معیز بھی تھوڑی دیر پہلے اپنے پیرنٹس کو گھر چھوڑنے کی غرض سے نکلا تھا۔۔۔۔۔۔
“بچوں تیاریاں شروع کردیں آپ سب آج سے ٹھیک ایک مہینے بعد ہم نے احد، مومل اور بنش، معیز کی شادی کی ڈیٹ فکس کردی ہے۔۔۔۔۔۔”
کوئی بمب ہی تھا جو زینب بیگم ان سب کے سروں پر پھوڑ کے گئیں تھیں۔۔۔۔۔
“ہیں۔۔۔!؟ بھائی یہ گیا کہہ گئیں آنٹی۔۔۔۔؟”
تقی نے گلاب جامن سے بھرے منہ سے کہا۔۔۔۔
“ہائے۔۔۔۔ میرے صبر کا پھل دے کر گئیں ہیں۔۔۔”
احد آنکھیں بند کرتے ہوئے کھل کر مسکرایا تھا۔۔۔۔۔
“یار ہم کہاں سے بیچ میں آگئے۔۔۔۔؟”
مومل جو ابھی صدمے سے نکلی تھی منہ بسور کر بولی۔۔۔۔۔
“ہم تو شروع سے ہی تھے محترمہ بیچ میں تو یہ ازلان اور معیز گھسے ہیں۔۔۔۔”
احد نے اسے باور کرانے والے انداز میں کہا۔۔۔۔
“او بھائی میں تو پچھلے ایک سال سے بس نکاح پر رکا ہوا ہوں پہلے میری رخصتی کرواؤ۔۔۔۔”
ازلان احتجاج کرتے ہوئے زمین پر ہی چوکڑی مار کے بیٹھ گیا۔۔۔۔
“ابے سالے تیری نہیں زینی کی رخصتی کرنی ہے۔۔۔۔”
تقی نے اس کی تصحیح کرتے ہوئے کہا۔۔۔
“اور ویسے بھی رخصتی تو تم چاروں کی ایک ساتھ ہی کروانی ہے ہم لڑکوں نے۔۔۔۔”
اب کی بار احد نے ان چاروں لڑکیوں کو دیکھتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔
“ابے ہاں تقی تیرا کیا سین ہے کب کرنی ہے تو نے وفا سے شادی۔۔۔۔۔؟”
معیز جو ابھی مین گیٹ سے داخل ہوا تھا احد کی بات اچکتے ہوئے بول پڑا جس پر تقی کے چہرے پر تو ہوائیاں اڑ رہی تھیں جبکہ وفا اپنے نام پر ایک دم ٹھٹکی تھی۔۔۔۔۔
“ایک منٹ۔۔۔ یہ میری بات ہورہی ہے یہاں۔۔۔؟”
وفا نے ایک آئبرو اچکاتے ہوئے آنکھوں میں چنگاریاں لئے تقی سے وضاحت چاہی۔۔۔۔
“بھائی بتا دے شرما کیوں رہا ہے۔۔۔۔؟”
اب کی بار ازلان نے بھی اپنا حصہ ڈالنا ضروری سمجھا جبکہ وہ سارے منہ پر ہاتھ رکھے وفا کے ردعمل کا انتظار کر رہے تھے۔۔۔۔
“وف۔۔۔وفا کبھی کہنے کی ہمت نہیں ہوئی۔۔۔ ہاں مجھے تم سے بہت محبت ہے اب سے نہیں جب یونی میں پہلی بار تمہارا وہ مرچوں والا سینڈوچ کھایا تھا بس اسی نے میرے دل کی دھڑکنوں میں ایک تلاطم پیدا کردیا۔۔۔ بلیو می وفا۔۔۔! میں تم سے شاد۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
تقی کی بات بیچ میں ہی رہ گئی جب لاونج میں ایک زور دار تھپڑ کی آواز گونجی۔۔۔۔۔ وفا کا ہاتھ بے اختیار اٹھا اور تقی کے چہرے پر پانچ انگلیوں کے نشانات چھوڑ گیا۔۔۔۔۔
“تم۔۔۔۔ تمہاری ہمت بھی کیسے ہوئی میرے بارے میں ایسی گھٹیا بات سوچنے کی۔۔۔۔ ارے تم سارے مرد ایک جیسے ہوتے ہو۔۔۔۔ وہ رضوان چودہری ایک بیٹی پیدا ہونے پر میری ماں کو تنہا چھوڑ گیا۔۔۔۔ اور اب تم نے بھی مجھے دوستی کے نام پر دھوکہ دیا ہے۔۔۔۔”
وفا ہضیانی کیفیت میں چلّا رہی تھی، رورہی تھی اور بیک وقت ہی تقی کا دل عجب بےدردی سے کاٹ رہی تھی وہ سب دم سادھے بس اسے سن رہے تھے۔۔۔

“آج سے میرے اور تمہارے درمیان ‘میرے نزدیک’ جو ‘دوستی’ کا رشتہ تھا میں اس رشتے سے تمہیں آزاد کرتی ہوں۔۔۔۔ ہوسکے تو دوبارہ اپنی شکل نہ دکھانا مجھے۔۔۔۔۔”
وفا بول کر رکی نہیں جبکہ تقی بھی اپنی اتنی بےعزتی پر خفت کے ساتھ سرخ چہرہ لئے گھر سے باہر نکل گیا اور کسی نے ان دونوں کو روکنے کی کوشش نہیں کی تھی۔۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وقت کا کام گزرنا ہے اور وہ اپنی تمام تر رعنائیوں کے ساتھ گزر ہی رہا تھا آج ان کی لڑائی کو دو ہفتے گزر گئے تھے تقی تو دوبارہ زندگی کی طرف لوٹ گیا تھا لیکن اب اس کے چہرے پر وہ پہلے جیسی چمک نہیں رہی تھی۔۔۔۔۔ یا شاید یہ ان سگریٹوں کا اثر تھا جو ان دنوں اس نے بےشمار پی تھیں۔۔۔۔۔
اس وقت وہ کسی چائے کے ہوٹل پر بیٹھا کئی سگریٹیں پھوکنے کے بعد اب ہاتھ میں چائے کی پیالی تھامے کسی غیر مرئی نکتے پر غور کر رہا تھا کہ پیچھے سے کسی نے اس کے کندھے پر زور دار مکا جڑ دیا اس سے پہلے اس کے ہاتھ میں موجود چائے کی پیالی گرتی ازلان نے جلدی سے اسے اچک کر خود پینی شروع کر دی۔۔۔۔۔
وہ پیچھے مڑا جہاں وہ تینوں تیوریاں چڑھائے اسے ہی گھور رہے تھے۔۔۔۔
وہ یک دم ہی کرسی سے اٹھ کھڑا ہوا۔۔۔۔۔
“ابے تجھے ہوش ہے ہم نے کتنا ڈھونڈا ہے تجھے، اور تو یہاں بیٹھے چائے کی چسکیاں لے رہا ہے وہ بھی میرے بغیر۔۔۔۔۔۔”
ازلان نے اس کے سر پر ایک چپت لگاتے ہوئے خالی کپ ٹیبل پر رکھا۔۔۔
“ابے یہ چھوڑ اور یہ دیکھ اس بےغیرت نے سگریٹ بھی پی ہے ہمارے بغیر۔۔۔۔۔”
معیز نے مصنوعی آنسوں پونچھتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔
“اوئے ہیرو ایک لڑکی کی جدائی سے مجنوں کیوں بن گیا ہے۔۔۔۔؟”
احد نے کرسی گھسیٹ کر بیٹھتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔
“ارے کوئی مجنوں نہیں بنا میں، جانتا ہوں وہ بھی محبت کرتی ہے مجھ سے بس اعتبار نہیں ہے اسے۔۔۔۔۔”
تقی نے ایک دلکش مسکراہٹ چہرے پر سجاتے ہوئے کہا۔۔۔۔
“تو اب کیا کرے گا تو؟”
ازلان نے دوسری ٹیبل سے ایک کرسی گھسیٹ کر تجسّس سے پوچھا۔۔۔۔

“کیا کرنا ہے انتظار کروں گا بس۔۔۔۔”
اس نے ایک سرد آہ بھرتے ہوئے کہا۔۔۔۔

“ابے ایسے تو پھر بال سفید ہو جانے ہیں۔۔۔۔”
معیز کو کرسی نہ ملی تو نیچے زمین پر ہی بیٹھ گیا۔۔۔
“تو کیا کروں میں؟”
اس نے ان تینوں کی طرف دیکھتے ہوئے مدد طلب کی۔۔۔۔
“ابے جب لڑکی نہیں مان رہی تو، تو بھی بھرم دکھا اسے۔۔۔۔”

“مطلب میں اسے ایٹیٹیوڈ دکھاؤں!؟”
تقی نے پرسوچ انداز میں کہا۔۔۔۔

“ہاں بھائی اپنا بھی کوئی Swag ہے یا نہیں۔۔۔۔ ہاں بھائیوں کیا کہتے ہو۔۔۔۔”
احد نے کرسی سے اٹھ کر ان تینوں سے جواب مانگا جس پر سب ہی نے رضامندی ظاہر کی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔

وہ اپنے روم میں نجانے کتنے گھنٹوں سے بیٹھی تھی۔۔۔ اچانک اسے اپنے پیچھے سے فریحہ بیگم کی آواز سنائی دی۔۔۔۔
“جب محبت نہیں کرتی اس سے تو کیوں اتنے دنوں سے خود کو کمرے میں بند کر رکھا ہے۔۔۔۔؟”
انہوں نے اسے کریدنے کی کوشش کی۔۔۔۔

“میں ک۔۔۔کسی سے محبت نہیں کرتی م۔۔۔مجھے دنیا کے ہر م۔۔۔۔مرد سے نفرت ہے۔۔۔۔۔”
وہ اٹکتے ہوئے بے ربط لہجے میں کہہ رہی تھی۔۔۔۔

“پہلے یہ تو فیصلہ کرلو۔۔۔۔کسے تسلی دے رہی ہو مجھے یا اپنے آپ کو۔۔۔۔۔”
وہ اٹھ کر چلیں گئیں اور پیچھے وفا کو اپنے الفاظوں میں الجھا گئیں تھیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

وفا کو اپنی کی گئی غلطی کا احساس تھا اور وہ اس پر کسی حد تک شرمندہ بھی تھی جبکہ اس نے تقی کا موازنہ اپنے باپ سے بھی کیا تھا اور وہ اب تقی کے لئیے شاید کوئی جذبہ بھی رکھتی تھی جس کا احساس اسے اتنے دن تقی سے بات نہ کرکے شدت سے ہوا تھا لیکن وہ مردوں پر کبھی بھی اعتبار نہیں کرسکتی تھی یا شاید وہ اعتبار کرنے سے ڈرتی تھی۔۔۔۔ وہ کئی دنوں سے اسی الجھن کا شکار تھی۔۔۔۔۔ بنش اور مومل کے بےپناہ اسرار پر وہ شادی میں شرکت کیلئے راضی تو ہو گئی تھی پر وہ تقی کا سامنا نہیں کرنا چاہتی تھی جو بہرحال ناممکن تھا۔۔۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

–**–**–
جاری ہے
——
آپکو یہ ناول کیسا لگا؟
کمنٹس میں اپنی رائے سے ضرور آگاہ کریں۔

About the author

Peerzada M Mohin

Leave a Reply

This function has been disabled for Online Urdu Novels.

%d bloggers like this: