Bushra Zahid Qureshi Urdu Novels

Yaaran Naal Baharan Novel By Bushra Zahid Qureshi – Episode 8

Yaaran Naal Baharan Novel By Bushra Zahid Qureshi
Written by Peerzada M Mohin
یاراں نال بہاراں از بشریٰ زاہد قریشی – قسط نمبر 8

–**–**–

آج ان دونوں کی مہندی کی رسم تھی اور وہ دونوں گلابی اور ہرے رنگ کے کمبنیشن کے غرارے میں ہلکے پھلکے میک اپ میں کانوں اور ہاتھوں میں گیندے کے پھولوں کے گہنے سجائے وہ دونوں ہی غذب ڈھا رہیں تھیں۔۔۔۔۔
“کیسی لگ رہی ہوں میں۔۔۔۔”
ان دونوں نے کمرے میں نگرانی کرتے عالیان کی طرف دیکھتے ہوئے پوچھا۔۔۔۔۔

“میں نہیں بتاؤں گا۔۔۔۔۔!!!”
عالیان نے شوخی سے کہا۔۔۔۔۔

“ہنہہ نہ بتاؤ ہم بھی مرے نہیں جارہے۔۔۔۔”
بنش نے تپ کر کہا اور جانے کو مڑی کہ عالیان کی آواز پر مڑ کر اسے دیکھا۔۔۔۔

“قسم سے تم دونوں کو دیکھ کر ایک شعر یاد آگیا۔۔۔۔
بھئی عرض کیا ہے۔۔۔۔۔

جنکی صورت دیکھ کر چاند بھی چھپ جائے۔۔
ارے توبہ۔۔۔ایسی صورت کسی کو نا دیکھائیں”

وہ کہہ کر کمرے سے بھاگ گیا اور وہ دونوں منہ کھولے ایک دوسرے کو ہی دیکھتی رہ گئی۔۔۔۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

وہ نارنجی اور ہرے رنگ کی انگھرکہ اسٹائل کی فراک کے ساتھ ہرا چوڑی دار پاجامہ پہنے بنش اور مومل کے کمرے کی طرف جا رہی تھی اچانک اس کی کلائی ستون کے پیچھے کھڑے ازلان کے ہاتھ میں آگئی۔۔۔۔۔

“چہرے پہ مرے زُلف کو پھیلاؤ کسی دن
کیا روز گرجتے ہو برس جاؤ کسی دن”

ازلان نے ایک نظر اس کے سراپے پر ڈالتے ہوئے کہا جبکہ کلائی ابھی تک اس کے ہاتھ میں ہی تھی۔۔۔

“ازلان چھوڑو کوئی دیکھ لے گا ہمیں یہاں۔۔۔۔”
زینہ نے ادھر اُدھر نظریں گھماتے ہوئے کہا۔۔۔۔

“ارے دیکھتا ہے تو دیکھلے میں اپنی بیوی سے بات
کر رہا ہوں کوئی غیر تھوڑی ہے۔۔۔۔۔”
ازلان نے منہ بناتے ہوئے کہا۔۔۔۔

“پھر بھی ایسے اچھا نہیں لگتا شرم کرلو تھوڑی۔۔۔”
زینہ نے ڈپٹ کر کہا۔۔۔۔

“تو پھر کیسے اچھا لگتا ہے بیگم صاحبہ۔۔۔۔”
ازلان نے اسکی کلائی چھوڑ کر ٹھوڑی پر ہاتھ جماتے ہوئے کہا۔۔۔۔

“ارے پرے ہٹو کتنی چیپ باتیں کرتے ہو تم۔۔۔۔۔”
زینہ اسے دھکیلتے ہوئے سائیڈ سے نکلنے لگی تھی کہ ازلان نے ایک بار پھر اس کی کلائی کو تھاما تھا۔۔۔۔۔

“ارے یہ تو پہنتی جاؤ لڑکی۔۔۔۔”
اس نے اسکا ہاتھ اوپر اٹھا کر اس میں پیلے رنگ کے گجرے پہنا دئیے۔۔۔۔۔۔۔

“شکریہ۔۔۔۔ بہت خوبصورت ہیں یہ۔۔۔۔”
زینہ نے اپنے ہاتھوں کو دیکھ کر کہا۔۔

“تم سے زیادہ نہیں۔۔۔۔۔”
ازلان نے اسے چھیڑتے ہوئے کہا۔۔۔

“افففف۔۔۔ تمہارا کچھ نہیں ہو سکتا۔۔۔۔”
وہ کہہ کر بھاگنے کے انداز میں وہاں سے نکلی مبادا وہ پھر اسکا ہاتھ پکڑ لے جبکہ وہ اسکے اس طرح بھاگنے پر دل کھول کر مسکرایا تھا۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

وہ پیلے اور ہرے رنگ کے سادہ سے شلوار قمیض میں دوپٹے کو سلیقے سے شانوں پر پھیلائے کھلے بالوں کے ساتھ کانوں میں موجود ائیررنگ کو ٹھیک کرتی ہوئی گھر میں داخل ہورہی تھی کہ سامنے سے موبائل پر کچھ دیکھتے ہوئے تقی سے بری طرح ٹکرائی۔۔۔۔

“اوہ سوری۔۔۔۔۔”
وفا نے سنبھلتے ہوئے کہا۔۔۔

“ہممم اٹس اوکے۔۔۔۔”
تقی جو ایک لمحے کے لیے اسے دیکھ کر کھو سا گیا تھا اس کے سوری کہنے پر زبردستی لہجے کو سرد بناتے ہوئے کہا اور سائیڈ سے نکلتے ہوئے باہر کی جانب چل دیا اور پیچھے اسکے اس رویہ پر وفا کے دل کو کچھ ہوا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

“بھائی دیکھ آج تو نہا لے آج مہندی ہے تیری!!!”
اس وقت تقی معیز کے کمرے میں کھڑا اسے نہانے کے لئے منانے کی کوششیں کر رہا تھا جو وہ کوئی نہ کوئی بہانہ بنا کر ٹال دیتا تھا۔۔۔۔۔

“برو میں جسٹ ابھی نہایا ہوں مجھے ضرورت نہیں ہے نہانے کی۔۔۔۔”
اس نے ہاتھ جھلاتے ہوئے ایک اور بہانہ بنایا۔۔۔

“ہاں جانتا ہوں تیرا ابھی بھی پچھلا جمعہ تھا اٹھ فوراً۔۔۔۔ کیا بنی کو آج ہی بے ہوش کرے گا۔۔۔۔”
تقی نے اسے گھسیٹنے کے انداز میں باتھروم میں دھکا دے کر باہر سے لاک لگا دیا مبادا وہ واپس باہر نہ آجائے۔۔۔۔

“بس پانچ منٹ ہیں تیرے پاس ازلان کی اتنی بار کالز آچکی ہیں اور ایک یہ ہے گندا میلا نہا کر نہیں دے رہا۔۔۔۔”
تقی غصے میں بڑبڑاتا ہوا بیڈ پر گرنے کے انداز میں بیٹھا تھا۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

“بنی، مومی جلدی کرو نیچے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
وہ ابھی کہتی ہوئی کمرے میں داخل ہوئی کہ ان دونوں کو موبائل پر سیلفیز لیتے دیکھ کر خود بھی بیچ میں گھس گئی۔۔۔۔۔۔

“ہائے اللّٰہ جی! مجھے بھی تو لو۔۔۔۔۔۔۔”
زینہ اپنا دوپٹہ کندھے پر ڈال کر انکے فریم میں داخل ہوئی۔۔۔۔۔۔۔

“تم لوگوں کا دماغ تو نہیں خراب؟ نیچے انکل آنٹی کب سے تم دونوں کا پوچھ رہے ہیں اور دیکھو ذرا انہیں۔۔۔۔۔۔”
جہاں وفا ان تینوں کو ڈانٹ رہی تھی وہیں وہ تینوں اسے دیکھ کر شاک کی کیفیت میں تھے۔۔۔۔۔

“وفا تم کب آئی۔۔۔۔۔؟”
جب صدمے سے باہر آئی تو وہ تینوں اس سے لپک کر گلے لگی تھیں۔۔۔۔۔۔

“کیا مطلب ہے اس بات کا۔۔۔۔!؟ مجھے آنا ہی تھا۔۔۔۔۔۔ اب تم دو نمونیا روز روز تھوڑی نا شادی کروگی۔۔۔”
وہ چہرے پر زبردستی مسکراہٹ لاتے ہوئے بولی۔۔۔۔

“اچھا اب چلو نیچے لڑکے والے آگئے ہیں۔۔۔۔۔۔”
اس سے پہلے وہ کچھ کہتیں وفا نے موضوع بدل دیا اور ان دونوں کو نیچے لے جانے کے لئے آگے بڑھ کر بنش کے دوپٹے کا ایک پلو اٹھا کر ماتھے سے تھوڑا نیچے لا کر چہرے کو ڈھانپ دیا۔۔۔۔۔۔

“بھائی یہ غلط ہے وہ اب اتنی پیاری لگا کرے گی تو مجھ سے نہیں کیا جائے گا اگنور اسے ۔۔۔۔۔”
تقی نے اسٹیج پر اپنے برابر بیٹھے ازلان سے مظلوموں والی شکل بناتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔

“بھائی تو اسکو بالکل اسی طرح اگنور کر جس طرح نہ کھانے کے خیال کو کرتا ہے ضرور افاقہ ہوگا۔۔۔۔۔ اسمائل۔۔۔۔”
ازلان نے دانت نکوستے ہوئے کہا جبکہ تقی کچھ کہنے ہی والا تھا کہ اس کے اچانک کیمرہ سامنے کرنے پر پکچر خراب ہونے کے ڈر سے ایک دم سیدھا ہو کر بیٹھ گیا۔۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
معیز اور احد ایک جیسے کرتے پر مختلف رنگوں کی واسکٹ پہنے کسی ریاست کے بے تاج بادشاہ ہی لگ رہے تھے۔۔۔۔۔۔۔۔
جب لان کے گیٹ پر قدم رکھتی ہوئی بنش اور مومل نظر آئی تو معیز نے احد کے کان میں سرگوشی کی۔۔۔۔۔۔۔

“اوئے دیکھ آگئی تیری بہن۔۔۔۔۔!!!”

“ہاں دیکھ تیری بھابھی بھی آرہی ہے ساتھ۔۔۔۔”
احد نے بھی جیل سے سیٹ کئے گئے بالوں پر ہلکا سا ہاتھ پھیرتے ہوئے معیز کے کان میں سرگوشی کی۔۔۔۔۔

“ہاں زینہ بھابھی بھی آرہی ہے۔۔۔۔۔۔”
معیز نے اسے چڑانے کے انداز میں کہا لیکن جب تک وہ دونوں قدم قدم چلتی اسٹیج تک آگئیں اور احد اپنا جواب بعد پر چھوڑ کر آگے کی جانب بڑھا۔۔۔۔۔

احد نے اپنا ہاتھ آگے بڑھایا ہی تھا کہ مومل سے پہلے زینہ اور وفا نے اپنی ہتھیلی آگے پھیلا دی۔۔۔۔۔۔

“کیا۔۔۔۔!؟”
احد نے ایک آئی برو اچکا کر ان دونوں کو اچھنبے سے دیکھا۔۔۔۔۔

“یہ ہماری اسپیشل رسم ہے کہ ہم دلہن کا ہاتھ تب تک دلہے کو نہیں سونپے گے جب تک دلہا اپنی جیب ہلکی نہ کردے۔۔۔۔۔۔۔۔ تو منی پلیز۔۔۔۔!!!”
وفا نے آنکھیں پٹپٹا کر احد سے کہا۔۔۔۔۔۔

“کتنے پیسے چاہیے۔۔۔۔!؟”

احد جلد بازی میں اپنا ہاتھ ابھی جیب تک لے کر ہی گیا تھا کہ وہ تینوں تڑپ کر آگے بڑھے۔۔۔۔۔۔

“ارے بھائی یہ کیا کر رہا ہے تیری حق حلال کی کمائی کیا فالتو کی ہے جو ان غریبوں پر لٹا رہا ہے۔۔۔۔۔”
ازلان نے احد کا بڑھتا ہوا ہاتھ جلدی سے پکڑ کر کہا۔۔۔۔۔

“چلو زینی ہٹو سامنے سے جمعرات کو آنا۔۔۔ ابھی ہمارے بھائی کو بھابھی سے ملنے دو۔۔۔۔۔۔”
تقی نے وفا کو یکسر نظر انداز کرتے ہوئے زینہ سے کہا۔۔۔۔

“ارے ایسے کیسے ہٹ جائیں ہم تو اپنی لڑکی کا ہاتھ نہیں دے رہے تمہارے دوست کو۔۔۔۔۔۔”
جواب زینہ کے بجائے وفا کی طرف سے آیا تھا۔۔۔

“یار بنی ان لوگوں کو چھوڑو تم تو اوپر آؤ۔۔۔۔”
معیز نے بیزاریت سے کہتے ہوئے اپنے سامنے کھڑی بںش کو ایک سیڑھی اوپر کھینچا تو سب کی توجہ ان دونوں کی طرف ہوئی جبکہ ان کی لاتعلقی کا فائدہ اٹھا کر احد نے بھی مومل کو ایک پل میں اوپر کھینچا تھا۔۔۔۔

“یہ۔۔۔۔ یہ چیٹنگ ہے ہمیں ہمارا نیگ دو۔۔۔۔!!!”
وفا نے ایک بار پھر تپتے ہوئے کہا۔۔۔۔

“ازلان۔۔۔۔!!! تم ان دونوں کو کچھ کہہ کیوں نہیں رہے۔۔۔۔؟”
زینہ نے غصے سے ازلان کا ہاتھ پکڑ کر کہا۔۔۔۔

“میں کیوں کہوں بھئی میرے یار ہیں دونوں۔۔۔۔!”
اس نے گردن اکڑا کے کہا۔۔۔۔

“اور میں بیوی ہوں تمہاری۔۔۔!!!”
زینہ نے ایک جملے میں اسے بہت کچھ باور کرایا تھا۔۔۔

“بھائی دیدے عزت کا معاملہ ہے جانی۔۔۔۔۔”
ازلان نے ان دونوں کو ملتجی لہجے میں کہا۔۔۔

“میں تو آج والٹ ہی نہیں لایا ہادی ابھی ادھار دیدے بعد میں دیدوں گا واپس۔۔۔۔”
معیز نے اس کے ہاتھ میں پکڑا والٹ جھپٹ کر وفا کے ہاتھ میں تھما دیا اور احد اس کی فل اسپیڈ میں کی گئی کاروائی کو منہ کھولے دیکھتا رہ گیا۔۔۔۔

“آجا جگر تیرا منہ کالا کروں۔۔۔۔!!!”
تقی نے میز پر سے ایک ہلدی کا باؤل اٹھا کر ازلان کو دیا جبکہ دوسرا اپنے ہاتھ میں اٹھا کر ان دونوں کی طرف بڑھے۔۔۔۔۔

“نہیں مجھے نہ لگانا مجھے اس کی اسمیل سے الرجی ہے۔۔۔۔!!!!”
معیز چینختا ہوا پیچھے کو ہوا۔۔۔

“ارے۔۔۔۔۔ ایسے کیسے چھوڑ دیں تجھے!!!!”
تقی نے کہتے ساتھ ہی اس کے منہ کو کالا تو نہیں البتہ پیلا ضرور کردیا تھا اور منہ کے ساتھ ہی اسکا سفید کرتا بھی پوری طرح سے پیلا ہوچکا تھا جبکہ اس کے برابر والے صوفے پر بیٹھا احد تو خوب مزے لے لے کر ازلان سے ہلدی لگوارہا تھا بلکہ یہ کہنا درست ہوگا کہ وہ ہلدی سے نہا رہا تھا جبکہ ایک دو انگلیاں تو اس نے مومل کے گال پر بھی لگادی تھیں جسے اس نے میک اپ خراب ہونے کے ڈر سے فوراً ہی ٹشو سے صاف کرلیا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔
اسٹیج سے نیچے سب مہمان بھی ان افلاطونوں کی شرارتوں پر محظوظ ہو رہے تھے۔۔۔۔جبکہ ان کے والدین نے بے ساختہ ان کی بلائیں اتاری تھیں۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

وہ ساتوں، مہمانوں کے جانے کے بعد رات کے ایک بجے منان ہاؤس کے ٹیرس پر ڈیرہ جمائے چوکڑی مار کر نیچے فرش پر ہی بیٹھے رت جگے کی پلیننگ کر رہے تھے جبکہ معیز تو چھینک چھینک کر بے حال ہوتا ہوا اپنے گھر کو گیا تھا۔۔۔۔۔

“یار احد کچھ اچھا سا سنا دے آج تو یہ رات تیری ہے۔۔۔!!”
ازلان نے شوخی سے کہتے ہوئے سائیڈ پر رکھا اسکا گٹار اسے تھمایا تھا۔۔۔۔۔

“میں صرف اس شرط پر گاؤں گا کہ جس لفظ پر میں رکا وہیں سے مومی نے دوسرا گانا سنانا ہے۔۔۔۔۔
کہئیے محترمہ شرط منظور ہے۔۔۔؟”
احد نے نظروں کا رخ مومل کی جانب کرتے ہوئے جواب طلب نظروں سے اسے دیکھا۔۔۔۔

“اوہ۔۔۔۔!!! چیلنج!!!؟”
بنش نے ایک آئبرو اٹھا کر احد کو دیکھا۔۔۔۔

“جو تم سمجھو”
احد نے بھی جواباً کندھے اچکاتے ہوئے کہا۔۔۔۔

“مجھے منظور ہے۔۔۔”
مومل نے بھی اسی کے انداز میں کہا تو احد نے مسکراتے ہوئے اپنا گٹار سنبھالا۔۔۔۔۔

جس روز سے دیکھا ہے اس کو،
ہم شمع جلانا بھول گئے۔۔۔

دل تھام کے ایسے بیٹھے ہیں،
کہیں آنا جانا بھول گئے۔۔۔۔۔

اب آٹھ پہر ان آنکھوں میں،
وہ چنچل مکھڑا رہتا ہے۔۔۔۔

میرے سامنے والی کھڑکی میں،
ایک چاند کا ٹکڑا رہتا ہے۔۔۔۔۔۔

افسوس ہے کہ وہ ہم سے،
کچھ اکھڑا اکھڑا رہت۔۔۔۔۔۔

ابھی سب اسکی آواز کے سحر سے نہیں نکلے تھے کہ سامنے بیٹھی مومل نے اپنا گانا شروع کیا۔۔۔۔۔۔

تو آتا ہے سینے میں، جب جب سانسیں لیتی ہوں،
تیرے دل کی گلیوں سے، میں ہر روز گزرتی ہوں

ہوا کے جیسے چلتا ہے تو، میں ریت جیسے اڑتی ہوں
کون تجھے یوں پیار کرے گا، جیسے میں کرتی ہوں

اس نے اپنا گانا ختم کرنے کے بعد ایک جتاتی نظر سے احد کو دیکھا اور وہ بھی سراہے بغیر نہ رہ سکا تھا۔۔۔۔۔ ابھی وہ دوبارہ گانے کے لئے گٹار اٹھا ہی رہا تھا کہ ٹیرس کی ریلنگ کے نیچے سے انہیں کسی کے گانے کی آواز سنائی دی۔۔۔۔

بھیگی بھیگی سڑکوں پہ میں ،
تیرا انتظار کروں۔۔۔۔۔۔

دھیرے دھیرے دل کی زمیں کو میں
تیرے ہی نام کروں۔۔۔۔۔

وہ سارے اسی شش و پنج میں تھے کہ یہ کون گنگنا رہا ہے اسی اسناد میں معیز ریلنگ پھلانگ کر ٹیرس پر کودا اور اسے دیکھ کر سب شاک کی کیفیت میں مبتلا ہو گئے۔۔۔۔۔۔
کوئی کچھ کہتا اس سے پہلے ہی اس نے ہاتھ اٹھا کر سب کو خاموش رہنے کا اشارہ کیا اور اپنے گانے کو جاری رکھا۔۔۔۔۔۔۔

خود کو میں یوں کھو دوں۔۔۔۔
کہ پھر نہ کبھی پاؤں۔۔۔۔

ہولے ہولے زندگی کو۔۔۔۔۔۔
اب تیرے حوالے کروں۔۔۔۔۔

ثناء مرے۔۔۔۔ ثناء مرے۔۔۔۔۔

“ابے کونسی ثناء کو ٹھکانے لگانے کی بات کر رہا ہے تو۔۔۔۔۔”
معیز جو لرکس بھول جانے کے ڈر سے جلدی جلدی گانے کو ختم کر رہا تھا احد کے ٹوکنے پر ایک لمحے کو رکا۔۔۔۔۔

“بھائی قسم لےلے میں اس والی ثناء کو واقعی نہیں جانتا وہ تو گانے میں سنگر خود ہی ثناء کو کھینچ کے لایا تھا۔۔۔۔۔۔”
معیز نے ڈرتے ڈرتے اسے وضاحت دی تھی۔۔۔۔۔

“سالے وہ صنم رے، صنم رے بول رہا تھا۔۔۔!!!”
ازلان نے چبا چبا کر کہتے ہوئے اس کی عقل پر ماتم کیا تھا۔۔۔۔۔

“بھائی کیوں پھنسا رہا ہے مجھے، میں کسی صنم کو نہیں جانتا بنش میرا یقین کرو۔۔۔۔۔”

اس کی چھینکوں کی وجہ لال ناک اور اس کے معصومیت سے اسے اپنی بے گناہی کا یقین دلاتے دیکھ کر بنش کو بے اختیار اس پر ہنسی آئی تھی۔۔۔۔

“مجھے پتا ہے معیز اور تم یہ بتاؤ یہ کس طرح اینٹری دی ہے تم نے ہاں!؟”
بنش نے اچھنبے سے اس کی طرف دیکھ کر پوچھا۔۔۔۔۔

“یار نیچے سب انکل، آنٹیز بیٹھے تھے اب میں دلہا ہوکر ایسے اوپر آتے اچھا تو نہیں لگتا نا۔۔۔؟ بس اسی لئے پائپ کو پکڑ کر یہاں تک پہنچا ہوں۔۔۔۔”

معیز نے فرضی کالر جھٹکتے ہوئے کہا جس پر وہ سب ایک بار پھر ہنسنے لگے تھے جبکہ بنش نے اپنا سر تھام لیا تھا۔۔۔۔۔۔

“چلو بنش اب تمہاری باری۔۔۔۔۔”
مومل نے اسکی کندھے کو تھپکتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔

“میں کہاں سے آگئی بیچ میں تم لوگوں کا کمپٹیشن چل رہا تھا۔۔۔۔۔”
بنش نے ہچکچاتے ہوئے وضاحت کی۔۔۔۔

“ایک ، دو، تین۔۔۔۔۔”
بنش کے کہنے پر سامنے بیٹھے لڑکوں نے کاؤنٹ ڈاؤن شروع کر دیا تو چارو ناچار اسے گانا ہی پڑا۔۔۔۔۔

“میں نے چاہی عشق کی گلی، بس تیری آہٹیں ملیں
میں نے چاہا ، چاہوں نہ تمہیں پر میری ایک نہ چلی

عشق میں نگاہوں کو ملتی ہیں منزلیں
پھر بھی کیوں کر رہا دل تیری خواہشیں

دل میری نہ سنے ، دل کی میں نا۔۔۔۔۔۔۔۔”

بنش کا گانا بھی بیچ میں رہ گیا اور ازلان وہیں سےاپنا چائے کا کپ نیچے رکھ کر سامنے رکھا ڈھول بجاتے ہوئے شروع ہوا۔۔۔۔۔

“ایک گرم چائے کی پیالی ہو
کوئی اسکو پلانے والی ہو۔۔۔

چاہے گوری ہو یا کالی ہو۔۔۔۔۔۔”

اسکے آگے وہ گا نہیں سکا کیونکہ زینہ نے سامنے رکھا چائے کا کپ اٹھا کر اسکے منہ پر اچھالا تھا۔۔۔۔۔۔

“تم نے مجھے کالی کہا!!؟؟”
وہ صدمے سے اسے دیکھ رہی تھی…

“ن۔۔نہیں یار میں تو گانا گا رہا تھا۔۔۔۔۔”
ازلان نے مصالحت سے اپنی شرٹ پر گری چائے کو دیکھتے ہوئے کہا۔۔۔

“ضرورت نہیں ہے کچھ کہنے کی۔۔۔۔۔!”
وہ شعلہ جوالہ بنی اس پر برس رہی تھی۔۔۔۔

“اچھا گانا تو گاؤ نا میں نے کبھی تمہیں گاتے نہیں سنا۔۔۔۔۔”
ازلان نے اسکے ہاتھ میں پکڑا چائے کا کپ سائیڈ پر رکھ کر کہا۔۔۔۔۔

“مجھے نہیں آتا کوئی گانا میں غزل سناؤں گی۔۔۔”
زینہ نے حتمی انداز میں کہا۔۔۔.

“اوئے ہوئے ہوئے ہوئے!!!!!! چلو بھئی سب خاموش ہو جاؤ ہماری بیگم صاحبہ غزل سنانے لگیں ہیں۔۔۔۔”

اس کے کہنے پر سب نے زبردست ہوٹنگ کی تھی اور ارشاد ارشاد کے نعروں نے پوری فضاء کو پر رونق بنا دیس تھا جب زینہ نے گلہ کھنگار کے پہلا شعر پڑھا۔۔۔۔۔

نگاہوں کے تصادم سے عجب تکرار کرتا ہے
یقین کامل نہیں لیکن، گماں ہے پیار کرتا ہے

لرز جاتی ہوں میں یہ سوچ کر،کہیں کافر نہ ہو جاؤں
دل اس کی پوجا پر بڑا اصرار کرتا ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

–**–**–
جاری ہے
——
آپکو یہ ناول کیسا لگا؟
کمنٹس میں اپنی رائے سے ضرور آگاہ کریں۔

About the author

Peerzada M Mohin

Leave a Reply

This function has been disabled for Online Urdu Novels.

%d bloggers like this: