Bushra Zahid Qureshi Urdu Novels

Yaaran Naal Baharan Novel By Bushra Zahid Qureshi – Episode 9

Yaaran Naal Baharan Novel By Bushra Zahid Qureshi
Written by Peerzada M Mohin
یاراں نال بہاراں از بشریٰ زاہد قریشی – قسط نمبر 9

–**–**–

اسے معلوم ہے شاید، میرا دل ہے نشانے پر ۔۔۔
لبوں سے کچھ نہیں کہتا، نظر سے وار کرتا ہے

میں اس سے پوچھتی ہوں خواب میں، مجھ سے محبت ہے
پھر آنکھیں کھول دیتی ہوں، وہ جب اظہار کرتا ہے”

زینہ نے آخری شعر پڑھ کر اپنی آنکھیں کھول دیں جبکہ وہ سارے واہ واہ کے بھرپور نعرے لگا رہے تھے۔۔۔۔

“ہائے اب تم پر مرتے ہیں تو کیا مار ہی ڈالو گی ظالم لڑکی!!!!”
ازلان نے با آواز بلند اسے چھیڑنے کے انداز میں کہا تھا جس پر وہ بے ساختہ جھینپی تھی۔۔۔۔

“اوئے ہادی اپنا گٹار تو دینا ذرا۔۔۔۔”
وہ سب ازلان اور زینہ کی طرف متوجہ تھے جب ہی تقی نے احد سے گٹار لینے کے لیے ہاتھ بڑھایا۔۔۔۔

“تو بجائے گا۔۔۔۔!؟”
احد نے ایک آئبرو اٹھا کر تعجب سے پوچھا کیونکہ وہ سب ہی جانتے تھے کہ تقی کو نہ گانا آتا ہے نہ بجانا۔۔۔۔

“ہاں تو اور کیا دے نا جانی۔۔۔۔”
اس نے ایک بھرپور نظر وفا کے لاتعلق وجود پر ڈالی اور گٹار تھام کر دھن بجانی شروع کی۔۔۔۔۔۔

وہ اتنا کمال بجا رہا تھا کہ وفا کے ساتھ ساتھ وہ سب بھی حیرت سے اسے دیکھ رہے تھے۔۔۔۔۔

جب اس نے گانا شروع کیا تو اس کی آواز میں ایک درد واضح نمایاں تھا جو کم از کم وفا سے مخفی نہیں تھا۔۔۔۔

“اک دور تھا مجھ سے بھی زیادہ
ان کو فکر تھی میری۔۔۔۔۔

کہتے تھے مجھ سے، رخصت نہ ہوں گے
مل کر دوبارا کبھی

اب تو غیروں سے میرا حال پوچھا جاتا ہے
یہی درد دل میرے دل کو رلاتا ہے۔۔۔۔”

وفا پہلو بدلتے ہوئے کن انکھیوں سے اسے دیکھ رہی رہی تھی جو کمال ضبط سے اسے اپنی آواز کے سحر میں جکڑے ہوئے تھا۔۔۔۔۔۔

“وفا نے بے وفائی ، بے وفائی، بے وفائی کی ہے
“وفا نے بے وفائی ، بے وفائی، بے وفائی کی ہے
“وفا نے بے وفائی ، بے وفائی، بے وفائی کی ہے
“وفا نے بے وفائی۔۔۔۔۔۔۔”

وہ آگے بھی کچھ گا رہا تھا لیکن وفا اسکے جذبات کی مزید تاب نہ لا سکی ایک لمحے میں دونوں کے ضبط کا بندھن ٹوٹا تھا اور دونوں کی آنکھ سے ایک موتی ٹوٹ کر گال پر پھسل گیا تھا۔۔۔۔۔۔ جبکہ سب دم سادھے اس کی سحر انگیز آواز کو سن رہے تھے بس یہی لمحہ تھا وفا ایک جھٹکے سے اٹھی اور اس کے اٹھنے پر سب نے نظر اٹھا کر اسے دیکھا تھا۔۔۔۔

“اوکے اب مجھے چلنا چاہیے میرا ڈرائیور باہر آگیا ہے۔۔۔۔۔”
وفا نے مہارت سے اپنے آنسوں چھپاتے ہوئے کہا۔۔۔۔

“یار وفا۔۔۔۔۔ آج تو یہیں رک جاتی!!!”
بنش نے اسے روکنا چاہا لیکن وہ بہانہ بنا کر تیزی سے ٹیرس کا دروازہ عبور کر گئی اور پیچھے تقی بھی سر جھٹک کر مسکرا دیا تھا۔۔۔۔۔۔

اور اسی طرح اس شبِ موسیقی کا اختتام ہوا جو کچھ لوگوں کے لیے یادگار اور چند ایک کے لئے درد ناک بن گئی تھی۔۔۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

آج بظاہر تو کوئی فنکشن نہیں تھا لیکن وہ سارے آج بھی منان ہاؤس میں براہ جمان تھے ابھی تھوڑی دیر پہلے ہی وہ سب اپنے گھروں کو لوٹے تھے احد ان سب کو سی آف کرنے کے بعد سیڑھیاں چڑھتے ہوئے اپنے روم میں جارہا تھا پھر کسی احساس کے تحت بنش کے کمرے کی جانب مڑ گیا۔۔۔۔۔۔

“یار بنی۔۔۔۔۔ نہیں کرونا شادی میں کیا کرونگا تمہارے بغیر۔۔۔۔۔۔”
احد نے ابھی ڈور ناب پر ہاتھ ہی رکھا تھا کہ اندر سے آتی عالیان کی آواز پر وہیں رک گیا۔۔۔۔

“اوئے۔۔۔۔۔ ادھر دیکھو، تم۔۔۔ تم رو رہے ہو!؟ یہ کیسے ہو سکتا ہے آج تک جو موٹا عالی مجھے تنگ کرتا رہتا تھا آج وہ میری وجہ سے رو رہا ہے۔۔۔۔۔ ہادی بھائی دیکھا آپ نے!؟”

بنش نے ماحول کی آسودگی ختم کرنے کے لیے احد کو گفتگو کا حصہ بنایا جو کب سے باہر کھڑا ضبط کے مراحل طے کر رہا تھا۔۔۔۔۔
بنش کے پکارنے پر وہ ایک لمحہ کو ٹھٹھکا پر اپنے آنکھوں کے کنارے رگڑتا ہوا اندر داخل ہوا۔۔۔۔

“بنی یار۔۔۔۔۔۔۔!! تیکو ہر بار کیسے پتا چل جاتا ہے کہ میں باہر ہوں۔۔۔۔۔!؟”
اس نے اندر داخل ہوتے ہوئے پوچھا۔۔۔۔

“بس میکو چل جاتا ہے پتہ آپ بچپن سے یہ کام کرتے آ رہے ہیں اب تو کچھ چینج کرلیں۔۔۔۔”

بنش نے کمر اکڑاتے ہوئے کہا جس پر وہ دونوں بے ساختہ ہنس دیئے تھے۔۔۔۔۔

“یار تو کیوں جا رہی ہے میں نہیں کروں گا اب تنگ۔۔۔۔۔”
عالیان نے ایک بار پھر روتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔

“یار ابھی کہاں جا رہی ہوں ابھی تو گریجویشن میں ایک مہینہ باقی ہے پھر ہم چاروں نے ایک ساتھ ہی رخصت ہونا ہے۔۔۔۔۔”
اس نے خود پر قابو پا کر کہا۔۔۔۔

“میں اکیلے کیسے رہوں گا اس کمرے میں۔۔۔!؟”
عالیان نے پھر احتجاج کیا۔۔۔۔۔

“لو بھئی اچھا ہے نا میں چلی جاؤں گی یہ پورا کمرہ تمہارا ہوجائیگا ، تمہاری چیزوں پر اب کوئی اپنا حق نہیں جتائے گا اور۔۔۔ اور ہادی بھائی کو اب کوئی چاکلیٹس لانے کے لیے تنگ نہیں کرے گا۔۔۔ اور۔۔۔۔۔ ”
اس کے آگے وہ نہیں کہہ سکی احد نے آگے بڑھ کر اسے اور عالیان کو کسی چھوٹے بچے کی طرح گلے سے لگایا تھا اور جانے کتنے ہی پل ان تینوں نے اپنے آنسوں بہاتے گزارے تھے۔۔۔۔۔۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آج ان دونوں کا نکاح تھا آج احد کو بھی معیز کے گھر سے ہی تیار ہو کر حال میں پہنچنا تھا وہ سارے باتھرُوم کے باہر لائن لگائے کھڑے تھے جبکہ نیچے سے احد تولیے سے اپنے بال رگڑتا کمرے میں داخل ہوا۔۔۔۔۔

“ابے تم دونوں یہاں کیوں کھڑے ہو تیار نہیں ہونا کیا۔۔۔۔!؟”
احد نے ان دونوں کو باتھروم کے باہر ایسے کھڑے دیکھا تو تشویش سے پوچھا۔۔۔۔۔۔

“ابے یہ منحوس تقی پچھلے آدھے گھنٹے سے نہا رہا ہے پتا نہیں سارے بوڈی پارٹس کو نکال کر رگڑ رہا ہے سالا۔۔۔۔۔۔ میں نے کہا بھی تھا میرا نکاح ہے مجھے جانے دے لیکن نہیں گھس گیا اندر۔۔۔۔۔ میرا کیا تھا میں نے بس دو مگے پانی ڈال کر بال گیلے کرنے تھے آجاتا دو منٹ میں اب دیکھ اسے کب سے گھسا ہے اندر ذلیل آدمی۔۔۔۔۔۔”

احد نے تو جیسے غبارے میں پن کردی تھی جو کب سے برداشت کر رہا تھا اس کے چھوٹے سے سوال پر پھٹ ہی گیا تھا۔۔۔۔۔۔

“بھائی نیچے دوسرا باتھروم کس لئے بنوایا تھا تم نے جب ادھر ہی خوار ہونا تھا تو۔۔۔۔!؟”
احد نے بھی اسی کے انداز میں کہا۔۔۔۔

“اوئے!!! تو نے پہلے کیوں نہیں بتایا ہٹ راستے سے۔۔۔۔!!!”
وہ احد کو دھکا دے کر تیزی سے کمرے سے باہر نکلا تھا اور اس کے جاتے ہی تقی نے باتھروم کے دروازے سے اپنا سر باہر نکال کر کہا۔۔۔۔

“گیا کیا وہ۔۔۔۔!؟”
“ہاں اب نکل باہر جب سے خواری کروا رہا میری۔۔۔۔”
اس کے پوچھنے پر ازلان نے اسے باہر نکالتے ہوئے کہا۔۔۔۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آج ان دونوں نے ایک ہی رنگ کا عروسی لباس زیب تن کر رکھا تھا اگر کوئی دور سے انہیں دیکھتا تو بنش اور مومل میں فرق نہیں کر پاتا۔۔۔۔۔
دونوں ہی اپنی اپنی جگہ بے حد حسین لگ رہیں تھیں جبکہ وفا اور زینہ بھی مخالف پر بجلیاں گرانے کے ارادے رکھی ہوئی تھیں۔۔۔۔۔
وہ دونوں اس وقت مومل کے روم میں تھیں جبکہ نکاح کا انتظام نیچے لان میں کیا گیا تھا دونوں بادشاہ آج اپنی اپنی ملکہ کو اپنا بنانے کے لیے پوری شان و شوکت کے ساتھ اپنی تمام تر وجاہت لیے ان حسیناؤں کے دربار میں داخل ہوچکے تھے۔۔۔۔ ان ہی کے آگے آگے تقی اور ازلان بھی ڈھول کی تھاپ پر بھنگڑے ڈالتے ہوئے اندر داخل ہوئے تھے۔۔۔۔۔۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ گبھراہٹ کے مارے کمرے کے نجانے کتنے ہی چکر کاٹ چکی تھی جب اس کی والدہ کمرے میں داخل ہوئی۔۔۔۔۔

“مومل بیٹے ادھر آؤ میرے پاس۔۔۔۔”
ان کے پکارنے پر وہ قدم قدم چلتی ان کے پاس ہی نیچے بیٹھ گئی۔۔۔۔

“کیسی لگ رہی ہوں میں۔۔۔۔!؟”
“میری بیٹی تو ہمیشہ ہی پیاری لگتی ہے۔۔۔۔”
“ماما آج بابا یہاں ہوتے تو کتنے خوش ہوتے نا۔۔۔۔؟”
وہ انکے گٹھنے پر اپنا سر ٹکا گئی تھی۔۔۔۔۔
” بیٹے وہ ابھی بھی بہت خوش ہوں گے۔۔۔”

“کاش وہ اتنی جلدی نہ جاتے کاش، وہ ابھی بھی ہمارے ساتھ ہوتے۔۔۔۔۔۔”
کتنے ہی آنسوں اس کی آنکھ سے پھسل کر انکی گود میں جذب ہوئے تھے۔۔۔۔۔۔

“اچھا بس!!! اب صاف کرو یہ آنسوں، ابھی قاضی صاحب آتے ہوں گے تھوڑی دیر تک یہ آگے کرو۔۔۔۔”

وہ اسکے دوپٹے کا گھونگھٹ اٹھا کر آگے کرتی کمرے سے چلی گئیں۔۔۔۔۔

کچھ دیر بعد گواہان کی موجودگی میں قاضی صاحب ان دونوں سے انکے جواب لے کر دولہوں سے انکی مرضی جاننے کے لیے کمرے سے نکل گئے اور پیچے ان دونوں نے بھی ایک دوسرے کے گلے لگ کر مبارکباد دی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

“یار یہ مولوی صاحب کب آئے گے کب سے اندر گئے ہوئے ہیں۔۔۔۔۔”
احد نے بے چینی سے اندر کی طرف دیکھتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔
“میرے بھائی صبر کر ذرا دو دو لڑکیوں سے پوچھنا ہے ٹائم تو لگے گا نا۔۔۔۔”
ازلان نے اسے تسلی دیتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔

“بھائی۔۔۔۔ اگر لڑکی نے انکار کر دیا تو!؟”
معیز نے اپنا خدشہ ظاہر کیا۔۔۔۔۔

“ابے نہیں کیا منع وہ دیکھ سامنے آگئے وہ لوگ۔۔۔۔”
تقی نے اس کی توجہ سامنے مبذول کرائی جہاں قاضی صاحب کے ساتھ عالیان اور منان صاحب چلتے آ رہے تھے۔۔۔۔۔

“ہائے اب جان میں جان آئی۔۔۔۔”
احد نے سکون کا سانس لیا۔۔۔۔۔
قاضی صاحب پہلے معیز کے برابر بیٹھ کر کہنا شروع ہوئے۔۔۔۔۔

“معیز شیخ ولد عارف شیخ آپ کو بنش منان ولد عبدالمنان قریشی سے باعوض دولاکھ سکہ رائج الوقت حق مہر کے نکاح قبول ہے۔۔۔۔؟”

قاضی صاحب کہہ کر اس کے جواب کے لیے رکے۔۔۔

“Yeah! Sure Why Not?”

معیز نے نہایت اطمینان سے جواب دیا۔۔۔۔۔

“ابے ڈھکّن یہ کیا بول رہا ہے قبول ہے بول۔۔۔۔”
برابر بیٹھے احد نے اسے کہنی مار کر کہا۔۔۔۔

“اوہ سوری! سوری! ہاں جی قبول ہے۔۔۔۔۔”

قاضی صاحب نے ایک بار پھر سے وہی سوال دہرایا۔۔۔

“قبول ہے۔۔۔۔۔”
جواباً اس نے بھی نہایت شائستگی سے کہا۔۔۔

جب انہوں نے تیسری مرتبہ وہی سوال پوچھا تو معیز کی تو بس ہی ہوگئی۔۔۔۔۔

“بھئی انکل یہ آپ سب سے تین بار کیوں پوچھتے ہیں جب دو بار ہاں بولا تو تیسری بار انکار تھوڑی نہ کریں گے۔۔۔۔۔”
اس نے چڑتے ہوئے کہا جس پر وہ اسے گھورتے ہی رہ گئے۔۔۔۔
“ابے کیوں لمبی کر رہا ہے۔۔۔۔ قبول ہے بول تاکہ میرا نمبر آئے۔۔۔۔۔۔”
احد نے ملتجی لہجے میں اس سے کہا۔۔۔۔
“اوکے قبول ہے مجھے۔۔۔۔۔”

معیز کے کہتے ہی ہر طرف مبارک سلامت کا شور اٹھا اور پھر احد کا نکاح بھی باخیر و عافیت پڑھوا دیا گیا۔۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

وہ چاروں مومل کے کمرے میں بیٹھی تھیں جب باہر سے لڑکوں کی آواز آئی۔۔۔۔۔

“چلو لڑکیوں دروازہ کھول دو ہمیں اپنی بیویوں سے ملنا ہے۔۔۔۔۔۔۔!!!!”
احد اور معیز نے باآواز بلند اعلان کیا۔۔۔۔۔

“اوئے ابھی دروازہ نہ کھولنا ایک منٹ رکو۔۔۔۔”
زینہ کو دروازے کی جانب بڑھتے دیکھ کر وفا نے کہا جس پر سب نے ناسمجھی سے اسے دیکھا۔۔۔۔۔

“یہ گھونگھٹ نکالو اپنے اپنے۔۔۔۔”
وفا نے حکم صادر کیا جس پر عمل کرتے ہوئے ان دونوں نے اپنے گھونگھٹ آگے کئے۔۔۔۔۔۔

“اوکے ڈن۔۔۔۔!! چلو زینی اب کھولو دروازہ۔۔۔۔۔”
وفا کے کہنے پر اس نے دروازہ کھولا اور وہ چاروں ایٹم بمب کی طرح زمین پر گرے تھے۔۔۔۔۔۔

“اففف لڑکی بتاتی تو اچانک ہی دروازہ کھول دیا۔۔۔۔”
ازلان نے اپنا ماتھا سہلاتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔

“اب یہ کیا فلم ہے۔۔۔۔!؟”
معیز نے دونوں دلہنوں کو ایک جیسے لباس میں گھونگھٹ ڈالے دیکھا تو بوکھلا ہی گیا۔۔۔۔۔

“ابے ان میں سے میری والی کونسی ہے۔۔۔!؟”
احد نے آنکھیں سکیڑ کر انہیں دیکھتے ہوئے کہا۔۔۔۔

“یہ ہی تو پتا کرنا ہے دلہے میاں۔۔۔۔۔”
وفا نے شوخی سے کہا۔۔۔۔۔

“ہیں!؟ کیا!!!؟”
معیز نے اچھنبے سے پوچھا۔۔۔۔۔

“اب ان میں سے جو تمہاری ہے اسکو ڈھونڈ لو۔۔۔ ”
زینہ نے کندھے اچکاتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔

“لو!!! اس میں ڈھونڈنا کیسا مجھے پتا ہے یہ ہی ہے میری مومی۔۔۔۔”
احد نے دونوں میں سے ایک کا ہاتھ پکڑ کر کہا۔۔۔۔

“اہم۔۔۔۔ بھائی یہ میں ہوں۔۔۔۔!!!”
گھونگھٹ کے اندر سے بنش کی آواز سن کر اس نے کرنٹ کھا کر اسکا ہاتھ چھوڑا اور دوسری والی کس ہاتھ پکڑنے سے پہلے گھونگھٹ اٹھا کر مومل ہونے کی تصدیق کی۔۔۔۔۔۔۔

“ہاں میرا مطلب یہی ہے میری مومی۔۔۔۔۔”
اب کے احد نے اسکا ہاتھ تھامتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔

“بنش تم ذرا چینج کرکے نیچے تو آنا ہمیں کہیں جانا ہے۔۔۔۔۔”
معیز نے ایک ہاتھ سے ماتھے پر آئے بالوں کو پیچھے کرتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔

“لو بھلا کہاں جانا ہے اب ہمیں!؟”
بنش خود ہی اپنا گھونگھٹ اٹھا کر بول اٹھی۔۔۔۔

“اٹس آ سیکریٹ ڈئیر۔۔۔۔!!!! میں نیچے ویٹ کر رہا ہوں پہنچو جلدی۔۔۔۔۔۔”
وہ کہہ کر کمرے سے باہر نکل گیا اور بنش بھی چینج کر کے اسی کے ساتھ نکلی تھی۔۔۔۔۔۔

“اب آپ سب کمرے سے باہر جانے کا کیا لیں گے!؟”
احد نے طنزیہ انداز میں کہا۔۔۔۔

“جو آپ خوشی سے دیدیں۔۔۔!!!”
جواباً ازلان نے دانت دکھاتے ہوئے کہا۔۔۔۔

“اچھا نا جارہے ہیں بس تو فری ہوجایا کر فوراً”
احد کو غصے میں آگے بڑھتا دیکھ کر وہ سارے جلدی سے باہر نکلے تھے۔۔۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

وہ شام کے وقت غروبِ آفتاب سے ذرا پہلے سمندر کی لہروں کے شور کے درمیان ، دو بڑے بڑے پتھروں پر بیٹھے موسم کا لطف اٹھا رہے تھے جہاں ہلکی پھلکی سی پھوار بھی موسم کو مزید دلکش بنا رہی تھی۔۔۔۔وہیں سرخ گٹھنوں سے ذرا نیچے کو آتی فراک میں اپنے کھلے سیاہ بالوں کو بار بار کان کے پیچھے کرتے وہ اسے منظر کا حصہ ہی معلوم ہو رہی تھی۔۔۔۔۔

“تمہیں پتا ہے بنش میں یہاں کافی بار آچکا ہوں لیکن آج سے پہلے یہاں آ کر خود کو کبھی اتنا پرسکون محسوس نہیں کیا جتنا آج تمہارے ساتھ کر رہا ہوں۔۔۔۔۔۔
وہ اسکا ہاتھ تھامے بڑی عقیدت سے اپنے دل کا حال اس کے گوش گزار رہا تھا۔۔۔۔۔

“اچھا!؟ پہلے کس کے ساتھ آئے تھے۔۔۔۔ لائبہ کے ساتھ یا علینہ کے!؟”
اس نے نچلا لب دانتوں میں دبائے شرارت سے کہا۔۔۔۔۔
“نہیں یار وہ کہاں ملی۔۔۔۔۔ میں تو سحر کے ساتھ آیا تھا یہاں پر۔۔۔۔۔۔”

معیز نے اطمینان سے انگڑائی لیتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔

“واٹ۔۔۔!!!؟ اب یہ سحر کون ہے۔۔۔۔”
بنش نے غصے سے اسکی طرف دیکھتے ہوئے کہا۔۔۔۔

“اففف یار مزاق کر رہا تھا ادھر آؤ تم۔۔۔۔”
معیز نے کہتے ہی برابر بیٹھی بنش کو اپنے ساتھ لگایا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ان سب کو باہر نکالنے کے بعد وہ دروازہ لاک کرکے اس کی طرف پلٹا تھا۔۔۔۔۔۔
“السلام وعلیکم!!! کیا حال ہیں محترمہ!؟”
احد نے اسکا مہندی اور چوڑیوں سے بھرا ہاتھ اٹھا کر لبوں سے لگایا تھا۔۔۔۔۔۔۔
ابھی وہ کچھ کہنے ہی والا تھا کہ اسکا فون بج اٹھا۔۔۔۔ اس نے وہ نمبر دیکھا تو اسے پہچان نہ سکا البتہ اس کے موبائل میں یہ نمبر ‘محبوبہ’ کے نام سے سیو تھا۔۔۔۔۔ یہ دیکھ کر تو مومل کا دماغ بھگ سے اڑ گیا اور اس نے احد کا موبائل اس کے ہاتھ سے لے کر کال ریسیو کی۔۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

“معیز تمہیں یاد ہے میں نے کہا تھا کہ تم ہمارے نکاح کے دن مجھے ایک غزل سناؤ گے۔۔۔۔؟”
بنش نے اسکے کندھے پر سر رکھ کر کہا۔۔۔

“ہاں بالکل یاد ہے مجھے۔۔۔۔۔”
معیز نے اقرار کیا۔۔۔۔

“ہاں تو سناؤ نا جلدی سے پھر۔۔۔۔۔۔”
اسکے کہنے پر اس نے سامنے دیکھا جہاں ایک ٹھیلے کے پیچھے تقی اور ازلان اپنے ہاتھ میں ایک چھوٹا سا وائٹ بورڈ اور مارکر لیے کھڑے تھے۔۔۔۔۔ اس کے اشارے پر انہوں نے ایک شعر بورڈ پر لکھ کر اسکے سامنے کی جسے دیکھ کر اس نے پڑھنا شروع کیا۔۔۔۔۔۔

“میں خیال ہوں لاریب کا
مجھے سوچتی حنا ہے۔۔

سر آئینہ میری ماہم ہے
پس آئینہ فاطمہ ہے۔۔۔۔

میں نایاب کے دست طلب میں ہوں تو
صنم کے حرف دعا میں ہوں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

میں نصیب ہوں بنش کا
مجھے مانگتی مناہل ہے

وہ بار بار اسے بورڈ پر لکھ لکھ کر دکھا رہے تھے جبکہ اسکے پڑھنے پر سامنے بیٹھی بنش کا چہرہ دھواں دھواں ہوگیا تھا۔۔۔۔۔

“بتاؤ پھر کیسی لگی غزل ؟؟؟”
معیز نے فرضی کالر کھڑے کرتے ہوئے پوچھا۔۔۔۔

“یہ۔۔۔۔۔یہ غزل تھی یا تم نے میرا مزاق اڑایا ہے ہاں!؟”
بنش نے صدمے سے کہا۔۔۔۔۔

“واٹ!؟ یہ کیا کہہ رہی ہو تم یہ غزل نہیں تھی کیا!؟”
اب کے جھٹکہ لگنے کی باری معیز کی تھی۔۔۔۔۔
اس نے پیچھے دیکھا جہاں سے اب وہ دونوں ایسے غائب ہوئے تھے جیسے گدھے کے سر پر سے سینگ۔۔۔۔
اس نے جی بھر کے دونوں کو گالیو سے نوازا پھر بھاگتا ہوا بنش کے پیچھے گیا جو لمبے لمبے ڈگ بھرتی آگے کی طرف جارہی تھی۔۔۔۔۔

“بنش۔۔۔۔۔!!! رکو یار۔۔۔۔”
وہ اسکے پیچھے پیچھے دوڑ رہا تھا جو کسی کی سننے کے موڈ میں نہیں تھی۔۔۔۔۔

“یار آئی ایم رئیلی سوری معاف کردو پلیز۔۔۔۔”
وہ آخر کار اس کے تعقب میں کامیاب ہو ہی گیا تھا۔۔۔۔ اس کے پاس پہنچ کر ایک ہاتھ سے کان پکڑے اور دوسرے سے اسکا ہاتھ تھام کر وہ نیچے ریت پر ہی دوزانو بیٹھ گیا تھا۔۔۔۔۔
تھوڑی دیر اسکی آنکھوں میں دیکھنے کے بعد وہ کچھ کہنا شروع ہوا۔۔۔۔۔۔

“یہ شام کے سائے،
پھر رات کا منظر،
سمندر کی لہریں،
میں اور تم۔۔۔۔۔

یہ ریت سنہری،
اور شہر کراچی،
سمندر کی لہریں،
میں اور تم۔۔۔۔۔۔

یہ برسات کا موسم،
وہ مٹی کی خوشبو،
سمندر کی لہریں،
میں اور تم۔۔۔۔۔

یہ پیروں کے چھاپے،
ایک دوجے کا ہاتھ تھامے،
سمندر کی لہریں،
میں اور تم۔۔۔۔۔۔”

کہنے کے بعد اس نے اپنا کان چھوڑ کر کرتے کی جیب سے ایک مخملی کیس نکال کر اسکے سامنے کیا جبکہ دوسرے ہاتھ سے ابھی بھی بنش کا دایاں ہاتھ تھام رکھا تھا۔۔۔۔۔

“مجھے پتہ ہے کہ یہ بہت ہی بیکار سی شاعری تھی لیکن یقین کرو اگر تم سکھاؤ گی تو روز کوئی نہ کوئی غزل سنایا کروں گا قسم سے۔۔۔۔۔”
وہ کہتے ہوئے کیس کھول کر اس میں سے ایک نازک سی بریسلیٹ نکال کر اسکی کلائی میں پہنا گیا تھا جبکہ بنش جو کب سے اپنا رخ دوسری طرف موڑے کھڑی تھی اس کے لہجے میں اپنے لئے اتنی محبت دیکھ کر اس کی ناراضگی جھاگ کی طرح بیٹھ گئی تھی۔۔۔۔۔

“آئندہ کبھی میرے سامنے کسی دوسری لڑکی کا نام لیا نا تو اپنے پیروں پر کھڑے ہونے کے قابل نہیں رہو گے۔۔۔۔۔!!”
بنش نے اپنا ہاتھ کھینچ کر اسے بھی نیچے سے اٹھایا تھا۔۔۔۔۔۔

“یار اب تو میرے باپ دادا کی توبہ جو میں نے اپنی بیوی کا نام بھی لیا تو۔۔۔۔۔!!”
اس نے بنش کو چڑانے کے لیے کہا پھر جب اس نے غصے سے معیز کو دیکھا تو اس نے ہنستے ہوئے بنش کو اپنے ساتھ لگایا تھا جواباً وہ بھی سر جھٹک کر مسکرادی۔۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

–**–**–
جاری ہے
——
آپکو یہ ناول کیسا لگا؟
کمنٹس میں اپنی رائے سے ضرور آگاہ کریں۔

About the author

Peerzada M Mohin

Leave a Reply

This function has been disabled for Online Urdu Novels.

%d bloggers like this: