Bushra Zahid Qureshi Urdu Novels

Yaaran Naal Baharan Novel By Bushra Zahid Qureshi – Last Episode 10

Yaaran Naal Baharan Novel By Bushra Zahid Qureshi
Written by Peerzada M Mohin
یاراں نال بہاراں از بشریٰ زاہد قریشی – آخری قسط نمبر 10

–**–**–

وہ ابھی لاونج میں بیٹھی تھی جب وہ ازلان کے ساتھ باتیں کرتا ہوا اندر داخل ہوا وہ اسے دیکھ کر ایک لمحہ رکی پھر دونوں کے پاس پہنچ کر سلام کیا۔۔۔۔۔

“السلام وعلیکم۔۔۔۔۔۔ کہاں تھے تم دونوں!؟”
وفا نے جانچتی نظروں سے سوال کیا۔۔۔۔۔

“واعلیکم السلام۔۔۔۔!!”
تقی جواب دے کر بظاہر موبائل پر مصروف ہوگیا جبکہ کان تو وفا اور ازلان کی طرف ہی تھے۔۔۔۔۔

“یار بس ایک کام یاد آگیا تھا وہ ہی کرنے گئے تھے۔۔۔۔ ایک منٹ میں ذرا آتا ہوں۔۔۔۔۔”
ازلان جواب دے کر موبائل پر کچھ ڈائل کرتا باہر نکل گیا۔۔۔۔۔

“کیسے ہو تقی۔۔۔۔۔؟”
اس نے جب سے لاتعلق کھڑے تقی سے دھیمی آواز میں پوچھا۔۔۔۔

“ہمم فائن تم کیسی ہو وفا؟”
وفا کو لگا کہ وہ مجبوری میں وہاں کھڑا ہے اس۔سے پہلے وہ جاتا وفا خود ہی اس سے معزت کرتی زینہ کے ساتھ کچن میں چلی گئی۔۔۔۔۔۔۔۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

احد!! یہ کون ہے جسکو تم نے ‘محبوبہ’ کے نام سے سیو کر رکھا ہے!!”
وہ اسکے موبائل پر محبوبہ کالنگ لکھا دیکھ کر تپ ہی گئی تھی۔۔۔۔۔

“مومی یار مجھے نہیں پتہ لو خود ہی بات کرلو۔۔۔”
احد نے کہتے ہوئے فون کا اسپیکر آن کیا۔۔۔۔

سامنے والے کی توقع کے عین مطابق فون مومل نے ہی اٹھایا تھا۔۔۔۔۔

“ہیلو کون بات کر رہا ہے۔۔۔۔۔؟”
مومل نے طیش کے عالم میں بولا۔۔۔۔

“جی ہیلو۔۔۔۔۔!!! مجھے میرے محبووووووب سے بات کرنی تھی۔۔۔۔۔”
سامنے والے نے اپنی آواز کو قدرے زنانہ بناکر محبوب کو کافی لمبا کھینچتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔

“کس محبوب کی بات کر رہی ہیں محترمہ!؟”
مومل نے تشویش سے پوچھا۔۔۔۔

“ارےےےے وہی محبوب جو کل تک مجھ سے شادی کا دعوے دار تھا اور آج تمہارے پہلو میں کھڑا ہے۔۔۔۔۔”
اس کی بات سن کر جہاں مومل کے چہرے پر ہوائیاں اڑ گئی وہیں احد نے غصّے سے اس کے ہاتھ سے موبائل لے کر کہا۔۔۔۔

“ازلان۔۔۔!؟”
اس کے پکارنے کی دیر تھی کہ فون سے ازلان نے بےساختہ کہا۔۔۔۔۔
“ہاں جانی بول؟”

پھر زبان دانتوں میں دبا کر جلدی سے فون کاٹ دیا۔۔۔۔۔

“لو دیکھ لی میری محبوبہ۔۔۔!؟”
احد نے اس کے دونوں بازوؤں کو تھام کر اپنے سامنے کھڑا کیا۔۔۔۔۔

“ہممم۔۔۔!!!”
مومل نے نظریں جھکا کر انگلیاں مڑوڑتے ہوئے کہا۔۔۔۔

“ادھر میری آنکھوں میں دیکھو۔۔۔۔!!”
اس نے مومل کا چہرہ ٹھوڑی سے پکڑ کر اوپر کیا اور براہِ راست اس کی آنکھوں میں جھانکتے ہوئے کہا۔۔۔۔

“جانتی ہو مومل!؟ جب سے میں نے ہوش سنبھالا ہے تب سے ہمیشہ تمہیں ہی اپنے لئے سوچا ہے۔۔۔۔ میری زندگی میں جو جگہ تمہاری ہے کبھی کوئی بھی نہیں لے سکتا میرے دل کی کتاب بس ایک ہی بار کھلی تھی اور اس میں جھلی حروف میں تمہارا نام لکھ دیا گیا ہے اب دنیا کی کوئی بھی طاقت اس کتاب کو دوبارہ نہیں کھول سکتی اور میں خود تو کبھی نہیں کھولوں گا۔۔۔۔۔۔ یو نو!! میں کورس بکس بھی سال میں ایک بار ہی کھولتا تھا اور یہ تو ویسے بھی عشق کی کتاب ہے دل سے قریب اور عقل سے بالاتر۔۔۔۔۔۔۔۔”
وہ اپنے الفاظ کے ساتھ جیسے اس کے کانوں میں رس گھول رہا تھا اور وہ اس کے کندھے پر سر ٹکائے اس آواز کو سن رہی تھی جو اس کے لیے دنیا کی سب سے سحر انگیز آواز تھی۔۔۔۔۔۔۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

آج انکے نکاح کو ایک مہینہ ہو چلا تھا اور اس وقت وہ چھ افلاطون وڈیو کال پر مصروف دکھائی دیتے تھے اور ہمیشہ کی طرح جن کا مسئلہ حل کرنا تھا وہ دونوں ہی اس اہم میٹنگ (کال) کا حصہ نہیں تھے۔۔۔۔۔۔۔
“یار یہ سب کچھ ایسے کب تک چلے گا!؟”
مومل نے پریشانی کے عالم میں کہا۔۔۔۔۔

“یار مومل ابھی بنائی ہے چائے اب تمہیں اس میں بھی مسئلے ہو رہے ہیں۔۔۔۔”
ازلان نے اپنے ہاتھ میں پکڑے چائے کے کپ کو دیکھتے ہوئے کہا۔۔۔۔

“ابے سالے وہ اس معاملے میں بات نہیں کر رہی۔۔۔۔اسکے کہنے کا مطلب یہ ہے کہ آخر کب ختم ہوگی ان لڑکیوں کی یونی اور جلدی سے ہمارا گھر بس جائے۔۔۔۔۔ ہے نا مومی یہی کہہ رہی تھی نا تم!؟”

معیز نے اپنے طور پر جیسے بہت پتے کی بات کی۔۔۔۔

“جی نہیں میں وفا اور تقی کے مسئلے پر بات کر رہی تھی۔۔۔۔”
مومل نے ان دونوں کو باری باری دیکھتے ہوئے کہا۔۔۔

“یار انکا کیا مسئلہ ہے لڑکا لڑکی راضی ہیں ہاتھ پکڑ کر کروادو نکاح دونوں کا۔۔۔۔۔۔”
اب کے احد بھی گفتگو کا حصہ بنا۔۔۔۔۔

“یہی تو مسئلہ ہے وفا اپنی گلٹ کی وجہ سے کچھ کہہ نہیں پا رہی اور تقی تو اس دن کی بے عزتی کے بعد وفا سے بات ہی نہیں کرتا۔۔۔۔۔”
بنش نے جیسے مسئلہ ان سب کے گوش گزارا۔۔۔۔۔

“تو اب ہمیں کیا کرنا چاہیے۔۔۔۔۔!؟”
معیز بھی جلدی سے سیدھا ہو کر بیٹھا۔۔۔۔

“ان دونوں کو کہیں ایسی جگہ چھوڑنا ہوگا جہاں وہ اکیلے میں تسلی سے اپنی بات کر سکیں۔۔۔۔۔”
مومل نے مسئلے کا حل پیش کیا۔۔۔۔۔

“ہممم یہ تو ٹھیک ہے لیکن اب ایسی جگہ کہاں سے لائیں گے ہم۔۔۔۔۔!؟”
احد نے اپنا سوال ان کے سامنے رکھا۔۔۔۔

“پکنک۔۔۔۔۔!!!!”
زینہ نے کچھ سوچتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔

“واہ۔۔۔۔ واہ لڑکی واہ کیا آئیڈیا دیا ہے واہ۔۔۔۔ یہ ہوئی نا میری بیوی والی بات۔۔۔۔۔”
ازلان بالکل اسی طرح زینہ کی تعریف کی جس طرح انکی پہلی ملاقات میں کی تھی۔۔۔۔۔

“بھائی حوصلہ رکھ بھابھی کی پوری بات تو سن لے پہلے۔۔۔۔”
معیز نے ازلان کو دیکھتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔

“ہاں تو میں کہہ رہی تھی کہ ہمیں کہیں پکنک پر جانا چاہیے۔۔۔۔۔”
زینہ نے اپنی بات کہہ کر ان سب کے تاثرات جاننا چاہے۔۔۔۔۔

“ہمم انٹرسٹنگ۔۔۔۔!!!”
معیز نے اپنی ٹھوڑی کے نیچے ہاتھ ٹکا کر کہا۔۔۔۔

“ہم۔۔۔ہم ایسا کرتے ہیں سنڈے کو ہم سب شہر کے قریب کہیں کیمپنگ کرتے ہیں کیا کہتے ہو۔۔۔۔۔؟”
ازلان نے اپنا آئیڈیا پیش کیا۔۔۔۔۔

“واہ۔۔۔!!! یہ مست آئیڈیا ہے بھئی۔۔۔۔۔”
احد نے اپنی رضامندی ظاہر کی۔۔۔۔۔

“اوکے تو ڈن ہوگیا سنڈے کو ہم کیمپنگ کرنے جائیں گے اور وہیں بون فائر بھی ہوگا۔۔۔۔!!!”
ازلان نے حتمی لہجے میں کہا۔۔۔۔

“لیکن وفا کو کون منائے گا۔۔۔۔؟”
زینہ نے تشویش سے پوچھا۔۔۔۔

“ارے اسکو منانا میرے سر ہے تم لوگ تیاریاں کرو۔۔۔۔”
مومل کے کہنے پر سب نے پلین کو حتمی شکل دے کر کال ختم کردی۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ ابھی سو کر اٹھی تھی اور ناشتے کی غرض سے سیڑھیاں اتر کر لاونج تک آئی تو سامنے مومل کو صوفے پر بیٹھا پایا۔۔۔۔ ایک پل کو وہ ٹھٹھکی پھر آگے بڑھ کر اسے گلے لگالیا۔۔۔۔

“کیا بات ہے آج ہماری یاد کیسے آگئی آپ کو۔۔۔۔۔؟”
وفا نے شوخی سے کہا لیکن مومل کو اسکا چہرہ کچھ ستا ہوا سا لگا۔۔۔۔۔۔

“شکر کرو کہ آگئی تم تو یونی کے علاوہ بات ہی نہیں کرتی۔۔۔۔۔”
مومل نے اسے طعنہ دیتے ہوئے کہا۔۔۔

“یار کیا کروں تمہیں تو پتا ہے نا اتنے اسائنمنٹ ہوتے ہیں یونی کے بس اسی میں بزی رہتی ہوں۔۔۔۔”
اس نے ہچکچاتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔

“اچھا چھوڑو اسے ، میں تمہیں یہ بتانے آئی تھی کہ کمنگ سنڈے ہم سب کیمپنگ کر رہے ہیں تو تم آجانا ٹھیک ہے؟؟”
مومل نے جیسے اسے اطلاع دی۔۔۔۔

“یار میں نہیں آ سکتی سوری۔۔۔۔”
وفا نے صاف انکار کر دیا۔۔۔۔۔

“کیوں بھئی اب کیا مسئلہ ہے تمہیں۔۔۔!؟”

“بس۔۔۔ وہاں پر وہ بھی ہوگا اور میں اسکا سامنا نہیں کرنا چاہتی۔۔۔۔!!”
وفا نے حتمی لہجے میں کہا۔۔۔۔۔

“تم سامنا کرنا نہیں چاہتی یا اب اس سے نظریں نہیں ملا سکتی!؟”
مومل نے لگی لپٹی رکھے بغیر کہا۔۔۔۔۔

اس کی بات پر وفا کے آنکھوں سے بے اختیار آنسوں جاری ہوگئے تھے۔۔۔۔۔

“مومی وہ اب مجھ سے محبت نہیں کرتا۔۔۔۔۔ وہ اگنور کرتا ہے مجھے۔۔۔۔ جہاں میں ہوتی ہوں وہاں آنے سے بھی اجتناب کرتا ہے۔۔۔۔۔”
وہ روتے ہوئے مومل کو سب کچھ بتا رہی تھی۔۔۔۔

“وفا!! محبت کبھی ختم نہیں ہوتی وہ تو وقت کے ساتھ ساتھ اور مضبوط ہو جاتی ہے کیا پتہ اس بار تقی تمہارے قدم بڑھانے کا انتظار کر رہا ہو۔۔۔۔۔ اسے مزید انتظار مت کرواؤ ہو سکے تو جلد از جلد اسے اپنی فیلنگس کے بارے میں بتادو اس سے پہلے بہت دیر ہو جائے۔۔۔۔۔۔”
مومل اپنی بات کرکے رکی نہیں کیونکہ وہ جانتی تھی اب وفا ضرور آئے گی۔۔۔۔۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
توقع کے عین مطابق وفا کے ساتھ ساتھ تقی بھی ان سب کے ساتھ کیمپنگ کے لیے پہنچا تھا۔۔۔۔۔ وہ ایک لکڑی کا پتلا سا تختہ تھا اور اس کے نیچے ایک تیز رفتار جھیل بہہ رہی تھی جس جگہ انہیں کیمپنگ کرنی تھی اس کے لیے انہیں وہ واحد لکڑی کا تختہ ہی پار کرکے جانا تھا۔۔۔۔۔اب وہ سارے اس ترتیب سے اس تختے کو پار کر رہے تھے کہ سب سے آگے احد اور سب سے پیچھے تقی تھا جبکہ درمیان میں ازلان اور معیز کے ساتھ وہ سب لڑکیاں تھی۔۔۔۔۔
وہ سب بڑی احتیاط سے اس تختے پر قدم قدم چل رہے تھے کہ اچانک ہی تختے پر پڑے کنکر پر وفا کا پیر پڑا۔۔۔۔۔۔اس سے پہلے کہ وہ گرتی تقی نے پیچھے سے اسکا بازو تھام کر کھینچا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔

“سنبھل کر چلیں مس! ہر بار آپ کو گرنے سے بچانے کے لیے میں نہیں ہوں گا۔۔۔۔۔”
وہ کہہ کر وفا کے پیچھے ہی تختے سے دوسری طرف اترا تھا اود لمبے لمبے ڈگ بھرتا آگے کی جانب چل دیا۔۔۔۔۔ جبکہ پیچھے وفا نے اپنے امڈتے آنسوؤں کو بے دردی سے رگڑا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

وہ سب لوگ ادھر اُدھر آگ جلانے کے لئے لکڑیاں اکھٹی کرنے گئے تھے جبکہ وفا اور تقی کیمپ کے اندر رکھے سامان میں سے کھانے کا انتظام کرنے کے لیے وہیں رکے تھے یا انہیں جان بوجھ کر وہاں چھوڑا گیا تھا۔۔۔۔۔۔۔

“ت۔۔تقی مجھے تم سے کچھ کہنا ہے۔۔۔۔۔!”
وفا جو کب سے اس سے بات کرنے کے لیے ہمت جمع کر رہی تھی آخر کار بول ہی اٹھی۔۔۔۔۔

“ہمم کہو۔۔۔!”
اس نے ایک سرسری سی نظر وفا پر ڈالتے ہوئے کہا۔۔۔

“تم مجھے اگنور کیوں کر رہے ہو!؟”
وفا نے معصومیت سے پوچھا۔۔۔۔۔

“ہائے۔۔۔۔!!!! ایسا کرنا ہی تو میری مجبوری ہے۔۔۔”
وہ ایسا بس سوچ ہی سکا۔۔۔۔۔

“نہیں تو!! تمہیں کوئی غلط فہمی ہوئی ہوگی۔۔۔۔”
وہ کہہ کر آگے بڑھ رہا تھا جہاں اب وہ سب لکڑیاں زمین پر رکھ کر آگ جلانے ہی والے تھے لیکن پیچھے سے وفا کی آواز سن کر اس قدم زنجیر ہوگئے تھے۔۔۔۔۔

“سوچا تھا مل کر بنائیں گے ایک چھوٹا سا گھر
ہوگا ایک باورچی خانہ جہاں ہو بس لال لال چقندر
کھائیں ہم روزانہ پیزا اور زنگر
کیا خوب مزے ہوں جب ہاتھ میں ہو انڈے والا برگر
بنانا تم میرے لیے ایک چائے کی پیالی
چسکیاں بھرتے گزارے ہم شام سہانی
کیوں تلو میں پکا کر صحت مند کروں تمہیں
جب لگے ہر چیز میزان میں اچھی
جس دن اماں پکائیں کریلے اور ٹینڈے
وہ دن ہوگا ہمارا آؤٹنگ ڈے
بیٹھے ہونگے ہم سمندر کنارے
مزے سے کھائیں گے مکئی کے دانے
میٹھی تو ہوتی ہے لبِ شیریں
لیکن آئی پریفر قرشی جامِ شیریں
میرے ساتھ مل کر چھیلنا تم مٹڑ
او مسٹر تقی!! وِل یو بی مائی لائف پارٹنر۔۔؟”

اس کی اس انوکھی سی نظم سن کر وہ پلٹا تھا لیکن ایک بار پھر حیرت سے نیچے بیٹھی وفا کو دیکھا جو ہاتھ میں انگھوٹھی لی ہوئی تھی۔۔۔۔

“دیکھو منع مت کرنا میں نے بہت دل سے اپنے لئے یہ رنگ خریدی ہے۔۔۔۔۔۔”
وہ بھیگی آنکھوں کے ساتھ اس کو شادی کے لیے پروپوز کر رہی تھی جبکہ وہ سب پیچھے کھڑے انکی لو سٹوری کی ہیپی اینڈنگ انجوائے کر رہے تھے جب ہی معیز کی آواز نے فضا میں پھیلی اس خوشگوار خاموشی کو توڑا۔۔۔۔۔

“جانی ہاں کردے ورنہ اس پٹاخہ نے تیرے منہ پر ہی مار دینی ہے یہ رنگ۔۔۔۔۔”
اس کے کہنے پر تقی نے ہاتھ بڑھا کر اسے نیچے سے اٹھایا تھا اور اسکے گھٹنوں پر لگی مٹی کو صاف کرکے اس کے عین مقابل کھڑا ہوا۔۔۔۔۔

“مسٹر تقی تو پہلے سے ہی مس وفا کے تھے بس آپ نے سمجھنے میں ذرا تاخیر کردی۔۔۔۔۔”
تقی نے اس کے آنسوؤں کو پوچھتے ہوئے اس کے ہاتھ سے رنگ لے کر اس کی انگلی میں پہنائی تھی اور پیچھے ان سب کی طرف سے بھرپور ہوٹنگ کی گئی تھی۔۔۔۔۔۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کل ان سب کی بارات کا فنکشن رکھا گیا تھا جبکہ آج ان چاروں لڑکیوں کی’ کانووکیشن سیریمنی’ تھی۔۔۔۔۔ اور آج ان سب کا ہمیشہ کے لیے یونی سے تعلق ٹوٹ جانا تھا لیکن اسی یونیورسٹی کی وجہ سے ان کے درمیان جو دوستی محبت اور عقیدت کا رشتہ قائم ہوا تھا وہ شاید انکی سانسوں کی ڈوری سے بندھ گیا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔

وہ چاروں لڑکیاں الگ الگ پوز میں تصویریں بنوا رہی تھیں جب ہی اچانک وہ چاروں نجانے کہاں سے نمودار ہوئے اور ان کے سروں سے ٹوپیاں اتار کر اپنے سروں پر جمالی اسکے ساتھ ساتھ وہ جانے کیا کیا حرکتیں کر رہے تھے اور ان حسین مناظر کو سامنے کھڑا فوٹوگرافر اپنے کیمرے میں قید کر رہا تھا۔۔۔۔۔

جب وہ آٹھوں افلاطونز پوری یونی گھوم پھر کر تھک گئے تو ہمیشہ کی طرح اپنے کینٹین والے (اڈے) پر ڈیرہ جماکر بیٹھ گئے ۔۔۔۔۔۔۔۔

“اففف یار کیا دن تھے یونی کے بھی۔۔۔۔۔”
مومل نے ایک سرد آہ بھر کر کہا۔۔۔۔۔

“ہائے۔۔۔۔ ہماری وہ نوٹنکیاں۔۔۔۔۔!!!”
بنش اور زینہ نے ہنستے ہوئے کہا۔۔۔۔۔

“چل ہادی کوئی اچھا سا گانا سنا اپنی یادوں کو ری کریئیٹ کرتے ہیں ہم۔۔۔۔۔۔”
تقی نے احد سے کہا اور پھر ہمیشہ کی طرح کینٹین کی ٹیبل بجا کر بیک گراؤنڈ میوزک بجانا شروع کی اور پھر احد کے ساتھ وہ ساتوں بھی گانا شروع ہو گئے۔۔۔۔۔۔۔۔

“پرانی جینز، اور گٹار،
محلے کی وہ چھت ،اور میرے یار۔۔۔۔۔

وہ راتوں کو جاگنا۔۔۔۔۔۔”

(وہ سب منان ہاؤس کے ٹیرس پر بیٹھے رت جگے کی پلیننگ کر رہے تھے۔۔۔)

“صبح گھر جانا کود کے دیوار۔۔۔۔۔”

(اچانک ٹیرس کی ریلنگ پھلانگ کر معیز نے اندر چھلانگ لگائی تھی۔۔۔۔۔)

“وہ سیگریٹ پینا ، گلی میں جاکے۔۔۔۔”

(اس نے کینٹین کی منڈیر پر بیٹھتے ہوئے سگریٹ کا ایک کش بھر کر ازلان کی طرف بڑھایا۔۔۔۔)

“وہ کرنا دانتوں کو گھڑی گھڑی صاف۔۔۔۔۔۔ “

“پہنچنا کالج ہمیشہ لیٹ۔۔۔۔۔
وہ کہنا سر کا ‘گیٹ آؤٹ فرام دی کلاس۔۔۔'”

(“گیٹ آؤٹ فرام مائ کلاس۔۔۔۔”
“سر ہم پہلے کب اندر ہیں۔۔!؟”
“تم لوگ جاتے ہو یا۔۔۔۔۔” )

“وہ باہر جاکے ہمیشہ کہنا ،
یہاں کا سسٹم ہی ہے خراب”

“وہ جاکے کینٹین میں ٹیبل بجا کے
وہ گانے گانا یاروں کے ساتھ۔۔۔۔۔”

(کینٹین کی ٹیبل بجا کر بیک گراؤنڈ میوزک بجانا شروع کی اور پھر احد کے ساتھ وہ ساتوں بھی گانا شروع ہو گئے۔۔۔۔۔۔۔۔)

“بس یادیں، یادیں ، یادیں رہ جاتی ہیں
کچھ چھوٹی، چھوٹی باتیں رہ جاتی ہیں
بس یادیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔!!!”

“وہ پاپا کا ڈانٹنا، وہ کہنا ممی کا چھوڑے جی آپ
تمہیں تو بس نظر آتا ہے، جہاں میں بیٹا میرا ہی خراب۔۔۔”

(اوہو۔۔۔۔ بس بھی کریں میرے بچے کے پیچھے ہی پڑ گئے آپ تو۔۔۔۔”
شائستہ بیگم نے انہیں ہاتھ جھلاتے ہوئے روکا تھا۔۔۔۔)

“وہ کھڑکی سے جھانکنا،وہ لکھنا لیٹر انہیں بار بار”

(مومل نے اپنی کھڑکی پر رکھے گھملے میں سے ایک پتھر اٹھایا اور ایک کاغذ پر
“میں نے نہیں ماننا” لکھ کر پتھر پر کاغذ لپیٹ کر اس کی جانب اچھال دیا اور خود واپس پیچھے ہوگئی۔۔۔)

“وہ دینا تحفے میں، سونے کی بالیاں۔۔۔۔”

(ازلان نے زینہ کے کانوں میں سے اسکے جھمکے نکالے اور اپنی دی ہوئی سونے کی بالیاں پہنادی۔۔۔۔۔۔)

“وہ لینا دوستوں سے پیسے ادھار!!!!!!!!”

(“میں تو آج والٹ ہی نہیں لایا ہادی ابھی ادھار دیدے بعد میں دیدوں گا واپس۔۔۔۔”
معیز نے اس کے ہاتھ میں پکڑا والٹ جھپٹ کر وفا کے ہاتھ میں تھما دیا)

“”بس یادیں، یادیں ، یادیں رہ جاتی ہیں
کچھ چھوٹی، چھوٹی باتیں رہ جاتی ہیں
بس یادیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔!!!”

گانا ختم کرنے کے بعد ان سب کے درمیان ایک طویل خاموشی چھا گئی تھی۔۔۔۔ ہر ایک کی آنکھوں میں یادوں کے چراغ روشن تھے۔۔۔۔۔۔ کسی نے بھی ایک دوسرے کو مخاطب کرنے کی کوشش نہیں کی تھی۔۔۔۔ وہ سب ہی اپنے بیتے ہوئے چھ سالوں کی دوستی کے یادگار لمحات یاد کر کے کبھی ہنس پڑے تھے تو کبھی کسی کی آنکھ چھلک پڑتیں۔۔۔۔۔

دنیا کی بھیڑ میں بہت سے ایسے لوگ ملیں گے جو آپ کا سب سے بہترین دوست ہونے کا دعویٰ کریں گے لیکن حقیقت میں محسن تو وہ ہیں جو باتوں سے نہیں بلکہ اپنے افعال سے آپ کو اپنا ہونے کا احساس دلائے، جو مشکل گھڑی میں آپ سے آگے اور خوشی کے لمحات میں آپ کو آگے رکھیں۔۔۔۔ سمجھنا تو ہمیں چاہیے کہ کون آپکا اپنا ہے اور کون آپ کو اپنا کہہ کر آپ کی جڑیں کھوکھلی کر رہا ہے۔۔۔۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
(ختم شد)

–**–**–
ختم شد
——
آپکو یہ ناول کیسا لگا؟
کمنٹس میں اپنی رائے سے ضرور آگاہ کریں۔

About the author

Peerzada M Mohin

Leave a Reply

This function has been disabled for Online Urdu Novels.

%d bloggers like this: